Home » کالم » نہتے بے گناہ کشمیریوں پر بھارتی فورسز کی بربریت

نہتے بے گناہ کشمیریوں پر بھارتی فورسز کی بربریت

کشمیریوں پر بھارتی فورسز کی بربریت کی انتہا ہو گئی ہے۔ فورسز آزادی کا اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق حق مانگنے والوں کے خلاف ظلم و جبر کا ہر ہتھکنڈا اور حربہ آزما رہی ہیں۔جولائی 2016ء میں برہان مظفر وانی کی بہیمانہ تشدد میں شہادت کے بعد جہاں کشمیریوں کی تحریک حریت کو مہمیز ملی وہیں بھارتی فورسز بھی انسانیت کی دھجیاں اڑاتی نظر آئیں۔نہتے کشمیریوں کیخلاف پیلٹ گنوں کا استعمال کیا گیا جس سے سینکڑوں کشمیری شہید‘ بچوں اور خواتین سمیت دس ہزار سے زیادہ زخمی ہوئے ان میں سینکڑوں عمر بھر کیلئے بینائی سے محروم ہو گئے۔ دنیا نے پیلٹ گنوں کے استعمال کی مذمت کی تو فوج نے مرچی گیس کا استعمال شروع کر دیا اور کچھ عرصہ بعد پیلٹ گنیں پھر استعمال ہونے لگیں۔ اس کے ساتھ ہی کیمیائی ہتھیاروں کے نہتے کشمیریوں کیخلاف استعمال کی خبریں بھی آ رہی ہیں۔کشمیریوں پر ہونے والے مظالم پر اقوامِ متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوترش اور او آئی سی کے سیکرٹری جنرل یوسف بن احمد العثیمین بھی بول پڑے۔ نیویارک سے جاری بیان میں سیکرٹری جنرل گوترش نے کہا ہے کہ کشمیر میں حالات دیکھ رہے ہیں، وہ بہت تشویشناک ہیں۔ غزہ کے شہری ہوں یا کشمیر کے، ان کی حفاظت ہونا چاہیے۔ ہلاکتیں کہیں بھی ہوں ان کی تحقیقات ہونا چاہیے۔ انہوں نے عالمی ادارے کے ارکان ممالک پر زور دیا کہ مسائل حل کرنے کیلئے راستے تلاش کریں۔دوسری جانب او آئی سی کے سیکرٹری جنرل یوسف بن احمد العثیمین نے کہا ہے کہ عالمی برادری مسئلہ کشمیر کا پر امن حل نکالنے کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔ بھارت فیکٹ فائنڈنگ مشن کو کشمیر جانے کی اجازت دے۔ کشمیری عوام سے یکجہتی اور زخمیوں کی جلد صحتیابی کیلئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ انہی بھارتی مظالم کے خلاف او آئی سی نے انسانی حقوق کی پامالی کے خلاف ایک قرارداد منظور کی ہے۔ بھارت کشمیریوں کیخلاف جس طرح مظالم ڈھا رہا ہے یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی نہیں‘ کشمیریوں کی نسل کشی اور انسانیت کے خلاف جرم ہے۔ بھارت صرف مذمتی قراردادوں سے براہ راست پر نہیں آ سکتا۔ معصوم کشمیریوں پر ظلم کے پہاڑ ڈھائے جارہے ہیں۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں دہشت گردی کررہا ہے۔گجرات میں مسلمانوں کے قتل عام کی تاریخ اب مقبوضہ کشمیر میں دہرائی جارہی ہے۔ بھارتی حکومت دہشت گردی بدترین کی مثال قائم کررہی ہے۔ بھارتی حکمرانوں کی پشت پناہی سے ایل او سی پر حالات خراب تر ہو رہے ہیں۔اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیرمیں بھارت کی جانب سے کشمیریوں کے خون سے کھیلی گئی ہولی کا فوری نوٹس لے اور اسے لگام ڈالے۔ پاکستان کی تمام سیاسی جماعتیں مسئلہ کشمیرپرمتحدہیں جبکہ برادر اسلامی ممالک نے کھل کر پاکستان کے موقف کی حمایت کی ہے۔اقوامِ متحدہ کی نمائندہ تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کو عالمی دہشتگرد قرار د یتے ہوئے اقوامِ متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں یو این مشن کی نمائندوں تنظیموں کو جانے کی اجازت دی جائے تاکہ بھارت کا بھیانک چہرہ دنیا کے سامنے آسکے۔ گزشتہ روزسانحہ پلوامہ اور شوپیاں میں بھارتی فوج کی درندگی ،سرچ آپریشن کے دوران 20سے زائد افراد کی شہادت جبکہ غائبانہ نماز جنازہ ادا کرنے والوں پر فائرنگ کے سلسلے میں 20سے افراد شہید ہوگئے جبکہ 24گھنٹوں میں دو سو سے زائد افراد زخمی ہوگئے۔بھارتی فوج نے شوپیاں میں ایک درجن سے زائد مقامات کو آگ لگا کر اپنی دہشتگردی کا ثبوت پیش کردیا ہے۔ اقوامِ متحدہ بھارتی حکومت پر انسانی حقوق کی خلاف ورزی کرنے پر عالمی عدالت میں مقدمہ درج کریں ۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے نریندرمودی کو عالمی دہشت گرد قرار دے دیا اور اْنہوں نے اقوامِ متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں یو این مشن کی نمائندوں تنظیموں کو جانے کی اجازت دی جائے تاکہ بھارت کا بھیانک چہرہ دنیا کے سامنے آسکے۔بے پایاں اور صبرآزما جدوجہد کے دوران کشمیری عوام اب تک لاکھوں پیاروں کی جانوں کے نذرانے پیش کرچکے ہیں اور ہر بھارتی ہتھکنڈے پر انکے دلوں میں آزادی کی نئی تڑپ پیدا ہوتی ہے۔ مودی سرکار کے دور میں تو کشمیریوں پر بھارتی مظالم کا سلسلہ اور بھی تیز ہوگیا ہے جبکہ مودی سرکار نے مقبوضہ وادی کے علاوہ پاکستان سے ملحقہ آزاد کشمیر اور شمالی علاقہ جات پر بھی غاصبانہ تسلط کے منصوبے بنانا شروع کر دیئے ہیں جس کے تحت مودی سرکار پاکستان پر عملاً جنگ مسلط کرنے کی تیاریوں میں ہے۔ پہلے شوپیاں اور اسلام آباد (اننت ناگ) میں خون کی ندیاں بہائی گئیں اور اب کولگام میں بدترین دہشت گردی کا ارتکاب کیا گیا ہے۔ شکست خوردہ بھارتی فوج کشمیریوں کی جدوجہد آزادی سے بوکھلاہٹ کا شکار ہو کر بدترین دہشت گردی کا ارتکاب کر رہی ہے۔ دختران ملت سے وابستہ خواتین کو گرفتار کرنے اور ہتھکڑیاں لگا کر عدالت میں پیش کرنے کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ بھارتی فوج کی وحشیانہ قتل و غارت گری ساری دنیا دیکھ رہی ہے مگر افسوسناک امر یہ ہے کہ نام نہاد انسانی حقوق کے علمبردار اداروں اور ملکوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ رہی۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ حکومت پاکستان کشمیریوں کے صحیح وکیل ہونے کا کردار ادا کرے اور سفارتی سطح پر بھرپور تحریک چلاتے ہوئے بھارتی دہشت گردی کو عالمی دنیا کے سامنے بے نقاب کیا جائے۔ او آئی سی مضبوطی سے اس کیس کو بااثر ممالک کے سامنے رکھے اور بھارت کی بربریت سے روکنے کیلئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے۔ اقوام متحدہ نے مسئلہ کشمیر کا حل تجویز کر دیا‘ اس پر عمل کرانے کی ضرورت ہے۔ کشمیریوں کوبے رحم بھارتی بھیڑیوں کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑا جا سکتا۔ آج پوری قوت سے کشمیریوں پر ہونیوالے بھارتی مظالم عالمی برادری کے سامنے رکھنے کی ضرورت ہے۔

About Admin

Google Analytics Alternative