Home » کالم » اداریہ » وزیراعظم کا فروغ برآمدات کانفرنس سے خطاب
adaria

وزیراعظم کا فروغ برآمدات کانفرنس سے خطاب

وزیراعظم محمد نواز شریف نے فروغ برآمدات کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ماضی کی حکومتوں نے کچھ نہیں کیا جس کے باعث ملک مسائل کا شکار ہوا،180ارب روپے کے پیکج سے برآمدات میں کئی گناہ اضافہ ہوگا،ماضی کی حکومتوں نے توانائی کے بحران پر بھی توجہ نہیں دی،بجلی کی کمی پر ملک میں جگہ جگہ احتجاج ہوتے تھے،بجلی کی کمی کے باعث بیروزگاری عام تھی۔دہشتگردی کے باعث امن و امان کی صورتحال مخدوش تھی،بجلی کی کمی کے باعث ملک کا ہرشعبہ متاثر ہورہا تھا،ملک کے مستقبل کے بارے میں مختلف قیاس آرائیاں کی جارہی تھیں،ہمارے اقدامات کی بدولت صنعتوں کو بلاتعطل بجلی فراہم ہورہی ہے،ملک کو تاریکی میں دھکیلنے والوں سے پوچھ گچھ ہونی چاہیے۔انہوں نے کہاکہ ایسا ماحول نہ پیدا کیا جائے جس سے مایوسی پھیلے،مایوسی پھیلانے والے چینلز کو عوام نے دیکھنا چھوڑ دیا ہے،میڈیا کی آزادی پر یقین رکھتے ہیں کوئی قدغن نہیں لگانے چاہتے،حکومتی پالیسیوں پر تنقید اصلاح کے پہلو سے کی جانی چاہیے،ملک میں لوڈشیڈنگ میں نمایاں کمی ہوچکی ہے۔ہمارا ہدف سستی اور وافر بجلی پیدا کرنا ہے۔وزیراعظم محمد نوازشریف نے کہاکہ تربیلا اور منگلا سے بھی بڑے بھاشا ڈیم کی تعمیر کا فیصلہ کیا ہے،بھاشا ڈیم سے 4500میگاواٹ بجلی حاصل ہوگی،بھاشا دیم کیلئے 110ارب روپے سے اراضی حاصل کی گئی ہے،سی پیک کے تحت پاور ہاؤس لگایا جائے گا،بھاشا ڈیم ملکی وسائل سے ہی مکمل کیا جائے گا،اربوں ورپے سے ریلوے کی اپ گریڈیشن کی جارہی ہے،اپ گریڈیشن سے ٹرینوں کی رفتار دگنی ہوجائے گی۔ماضی کے مقابلے میں بجلی کی فی یونٹ قیمت4سے5روپے کم ہوئی،بجلی کی پیداوار کیلئے ملکی کوئلے کے استعمال پر خوشی ہے،نیلم جہلم منصوبے سے جلد بجلی کی پیداوار شروع ہوجائے گی،2018میں دس ہزار میگاواٹ بجلی قومی نظام میں شامل ہوگی،مثبت پالیسیوں کے باعث سرمایہ کاروں کو سہولتیں مل رہی ہیں۔توقع ہے آئندہ سال شرح نمو5.5فیصد سے تجاوز کرجائیگی،ملک میں موٹرویز اور ہائی ویز کے جال بچھ رہے ہیں،کراچی،لاہور موٹروے کے مختلف سیکشنزپر کام جاری ہے،ملک میں تبدیلی آرہی ہے،میرپور سے مظفرآباد اور مانسہرہ تک شاہراہ تعمیر کی جائے گی،ایک ہزار ارب روپے کے شاہراہوں کے منصوبوں پر کام جاری ہے،کھیت سے منڈی تک سڑکیں تعمیر کی جارہی ہیں،کراچی سرکلرریلوے کو سی پیک میں شامل کرلیا گیا ہے،گوادر بدل رہا ہے اور ملک کا بہترین علاقہ بن رہا ہے،پیکج کے تاجر برادری پر اچھے تاثرات مرتب ہوں گے،زراعت اور صنعت کی تیز ترین ترقی ہوگی ،معاشی خوشحالی سے جہالت اور بیروزگاری کا خاتمہ ہوگا۔ وزیراعظم کا برآمد کنندگان کیلئے 180 ارب روپے کے پیکیج کا اعلان اس امر کا آئینہ دار ہے کہ حکومت ملکی ترقی و خوشحالی کیلئے کوشاں ہے تاہم ضرورت اس امر کی ہے کہ وزیراعظم کے اعلان کردہ پیکیج پر فوری عملدرآمد کیا جائے تاکہ اس کے دوررس نتائج حاصل کیے جاسکیں ۔ حکومت کو اس وقت کئی چیلنجز درپیش ہیں جس سے نمٹنے کیلئے سیاسی حکمت عملی کی ضرورت ہے ملک میں سیاسی عدم استحکام ترقی میں رکاوٹ کا باعث قرار پاتا ہے ۔ حکومت کو چاہیے کہ وہ وسیع النظری کا عملی مظاہرہ کرے اور سیاسی جماعتوں کو اپنے ساتھ لے کر چلے اور ان کے تحفظات دور کرے تاکہ سیاسی استحکام قائم ہو اور ملک کی تعمیر و ترقی بطریق احسن انجام پائے حکومت بجلی کی لوڈشیڈنگ کی نوید سنارہی ہے لیکن اس وقت غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ عروج پر ہے۔ مہنگائی ، بیروزگاری ، سماجی نا انصافی عام ہے لوگ عدم تحفظ کا سے دوچار ہیں اور ان کا معیار زندگی مسلسل گرتا جارہا ہے ۔ حکومت کو چاہیے کہ وہ انقلابی اقدامات بروئے کار لائے اور ملک کو مسائل کے گرداب سے نکالے حالیہ پیکیج پر کماحقہ عمل درآمد ہوا تو زراعت صنعت ترقی کے راستے پر گامزن ہوگی اور ملک میں خوشحالی کی نئی راہیں ہموار ہونگی اور عوام کے مسائل حل ہونگے۔
آرمی چیف کی زیر صدارت کور کمانڈرز کانفرنس
چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کی زیر صدارت کو کمانڈرز کانفرنس بڑی اہمیت کی حامل قرار پائی اس کانفرنس میں آپریشن ضرب عضب کی کامیابیوں پرجہاں اطمینان کا اظہار کیا گیا وہاں آپریشنل تیاریوں پر بھی غور کیا گیا۔ آرمی چیف نے دہشت گردوں سے کلیئر کرائے گئے علاقوں میں کنٹرول کو مستحکم کرنے اور عارضی بے گھر افراد کی واپسی کی کوششوں میں تیزی لانے کی ہدایت کی۔ آرمی چیف نے کہا کہ فوج قومی سلامتی کیلئے کام کرنیوالے تمام ریاستی اداروں کی مکمل حمایت جاری رکھے گی جبکہ کور کمانڈرز نے آپریشن ضرب عضب پر پیشرفت اور اندرونی سیکیورٹی پر اسکے مثبت اثرات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ فوجی عدالتوں کی کارکردگی اپنی مدت کے دوران قابل تحسین رہی جس کی وجہ سے دہشتگردی میں کمی آئی ۔ کور کمانڈرز نے آپریشن ضرب عضب پر پیشرفت اور اندرونی سیکیورٹی پر اس کے مثبت اثرات پر اپنے اطمینان کا اظہار کیا ۔ انہوں نے عارضی بے گھر افراد کی واپسی کی کوششوں میں تیزی لانے کی بھی ہدایت کی۔ کور کمانڈرز کانفرنس کے شرکاء نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ پاک فوج ہر طرح کے خطرات کا مقابلہ کرنے کیلئے تیار ہے ۔ چیف آف آرمی سٹاف نے بابر تھری میزائل کے کامیاب تجربے پر سٹریٹجک اداروں کی کوششوں پر مبارکباد دی۔ کور کمانڈرز کانفرنس کے شرکاء نے اپنی مدت کے دوران فوجی عدالتوں کی کارکردگی کو سراہا جس کے نتیجہ میں دہشتگردی میں کمی ہوئی۔ کور کمانڈرز میں جس عزم کا اعادہ کیا گیا وہ سابق آرمی چیف کی پالیسیوں کا تسلسل ہے اور ان پالیسیوں پر گامزن ہوکر ہی دہشت گردی سے چھٹکارا حاصل کیا جاسکتا ہے۔ آپریشن ضرب عضب نے دہشت گردوں کی کمر توڑ دی ہے اور ان کا نیٹ ورک تباہ ہوچکا ہے۔ پاک فوج کی قربانیوں کا یہ صلہ ہے کہ ملک میں امن قائم ہورہا ہے اور دہشت گردی کا ناسور جڑ سے اکھڑتا جارہا ہے ۔ آرمی چیف نے بجا فرمایا فوجی عدالتوں کی کارکردگی بے مثال قرار پائی اوردہشت گردوں کو ان کے منطقی انجام تک پہنچانے میں ان عدالتوں کا بڑا عمل دخل رہا ہے۔ مستقبل میں فوجی عدالتوں کی توسیعی ہی ملک و قوم کیلئے نیک شگون قرار پاسکتی ہے ۔ حکومت اور اپوزیشن کو چاہیے کہ وہ فوجی عدالتوں کی توسیعی میں کسی توقف کا مظاہرہ نہ کریں ۔ فوجی عدالتیں دہشت گردی کے خاتمے میں ممدومعاون ہیں اور ان کا کردار لائق تحسین ہے۔ پاک فوج ایک طرف سرحدوں پر کڑی نظر رکھے ہوئے ہے اوردوسری طرف دہشت گردی کیخلاف لڑ رہی ہے ۔ پاک فوج کا کردار قابل رشک ہے اور قابل تقلید بھی۔ ملک کو امن کے راستے پر گامزن کرنے میں پاک فوج نے جو قربانیاں دی ہیں ہم ان کو کبھی بھی فراموش نہیں کر پائیں گے۔

Google Analytics Alternative