Home » 2018 » July » 05

Daily Archives: July 5, 2018

جانئے آج آپ کا دن کیسا رہے گا

حمل:
21 مارچ تا 21 اپریل

یقینا آپ نے گزشتہ دیے گئے ہمارے پرخلوص مشوروں پر عمل کرنے کی کوشش کر ڈالی ہو گی اب آپ خود ہی فیصلہ کر لیں کہ نتائج بہتر نکلے کہ نہیں۔ جتنا وقت بھی ہنستے کھیلتے گزر جائے غنیمت ہے۔

ثور:
22اپریل تا20 مئی

چند واقعات آپ کے رشتہ داروں کو بھی راہ راست پر لا سکتے ہیں اور وہ آپ کے حقوق آپ کے حوالے کرنے پر خود بخود آمادہ ہو سکتے ہیں، آپ کے اخراجات بھی ضرورت سے کچھ زیادہ ہی رہیں گے۔

جوزا:
21مئی تا 21 جون

بفضل خدا آپکا دامن خوشیوں سے بھرا رہے گا، جو کچھ آپ متذکرہ عرصے کے دوران گنوا بیٹھیں گے وہ ہی دوبارہ حاصل کر سکیں گے بس شرط اتنی ہے کہ آپ ہمت نہ ہاریں اور ہر مشکل کا ڈٹ کر مقابلہ کرتے رہیں۔

سرطان:
22جون تا23جولائی

ماضی میں آپ نے اپنی اعلیٰ صلاحیتوں کے بل بوتے پر بہت کچھ کیا جسکے نتیجے میں ہر کام آپکی مرضی کے مطابق ہوا لیکن اب ایسا نہیں، صلاحیتوں سے بھی اسی صورت میں فائدہ ملتا ہے جب وقت ساتھ دے۔

 

اسد:
24جولائی تا23اگست

آپ اپنے مذہب میں خصوصی دلچسپی لیں عبادت الٰہی کے ساتھ دکھی لوگوں کی مدد کرنا بھی اپنا شعار بنا لیں تاکہ پریشانیوں کے لمحوں میں کسی کی دعائیں آپ کے لیے نجات کا سبب بن سکے۔

سنبلہ:
24اگست تا23ستمبر

اس میں کوئی شک نہیں کہ آپ کے یہ جذبات قابل قدر ہیں اگر آپ ہزار سال قبل پیدا ہوتے تو شاید آپ کے یہ اعلیٰ کارنامے تاریخ کے کسی صفحے پر درج ہو جاتے لیکن اب اس کی امید نہیں رکھی جا سکتی ۔

میزان:
24ستمبر تا23اکتوبر

حالات کی مناسبت سے یہ مشورہ ضرور دیں گے کہ زندگی کی اکثر راہیں غیر متوازن ہوتی ہیں اور ان راہوں پر جذباتی اور جلد باز قسم کے گھوڑے بری طرح گر جاتے ہیں۔کیا آپ بھی ایسا ہی چاہتے ہیں۔

عقرب:
24اکتوبر تا 22نومبر

ہوش میں آ کر حالات کا تجزیہ کر لیں اپنے ضمیر کا گلا نہ دبائیں کہ یہی آپ کے بچائو کا واحد ذریعہ ہے اپنے اندرونی حقیقی احساس کو جاگتا رہنے دیں، جائیداد کے سلسلے میں فائدہ ہو سکتا ہے۔

قوس:
23نومبر تا22دسمبر

آپ جسے پسند کرتے ہیں ضروری نہیں کہ وہ بھی آپ کو چاہے، اگر کوئی محبت کا دعویدار ہے تو پھر اسے ایک خوبصورت خواب سمجھ کر بھلا دیں محبت حسب سابق آپ کو راس نہ آ سکے گی۔

جدی:
23دسمبر تا20جنوری

آپ صرف اپنے جذبات اور مزاج پر کنٹرول کرنے کی کوشش کریں، یاد رکھیں کہ بدی کے اندھیروں کو نیکی کا چراغ جلا کر بھگایا جا سکتا ہے، آپ ان حقائق کو سامنے رکھ کر کوشش کریں۔

دلو:
21جنوری تا19فروری

آپ تو اعلیٰ صلاحیتوں کے مالک ہیں معمولی دشواری آپکے راستے کی دیوار نہیں بن سکتی ہمت نہ ہاریں اور پھر پورے اعتماد کے ساتھ وہی کریں جس کا کہ پروگرام عرصہ سے بنا رکھا ہے۔

حوت:
20 فروری تا 20 مارچ

اپنے مزاج کی اس گرمی کو کم کرنے کی کوشش کیجئے جس کی وجہ سے ہر دور میں آپ کو دشواریوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے آپ کا یہ غصہ آپ کو ہمیشہ ہی اپنے حقیقی ہمدردوں سے دور رکھتا ہے۔

 

انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کی حتمی فہرست جاری

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے عام انتخابات میں حصہ لینے والے قومی و صوبائی اسمبلی کے تمام امیدواروں کی حتمی فہرست جاری کر دی۔

ای سی پی کی جانب سے جاری کی گئی فہرست کے مطابق قومی اسمبلی کے لیے 3 ہزار 675 امیدوار اور چاروں صوبائی اسمبلیوں کے لیے 8 ہزار 895 امیدوار انتخابات میں حصہ لیں گے۔

خیال رہے کہ لاہور، رحیم یار خان اور راجن پور کے امیدواروں کے نام عدالتوں میں کیسز کے باعث اس فہرست میں شامل نہیں ہیں۔

خیبرپختونخوا سے انتخاب لڑنے والے امیدواروں کی حتمی فہرست

اسلام آباد اور پنجاب سے قومی اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

سندھ سے قومی اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

بلوچستان سے قومی اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

ای سی پی نے کے پی، پنجاب، سندھ اور بلوچستان کی صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے لیے انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کی فہرست بھی جاری کردی ہے۔

خیبر پختونخوا اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

پنجاب اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

سندھ اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

بلوچستان اسمبلی کے امیدواروں کی حتمی فہرست

نوازشریف کی ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ چند روز تک مؤخر کرنے کی درخواست

لندن: سابق وزیراعظم نوازشریف نے احتساب عدالت سے ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ چند روز تک مؤخر کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ بزدل آمر کی طرح بھاگنے والا نہیں بلکہ کمرہ عدالت میں کھڑا ہوکر فیصلہ سننا چاہتا ہوں۔ 

لندن میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف کا کہنا تھا کہ ساری دنیا میرے خلاف مقدمات اور انتقامی کارروائیوں سے واقف ہے، میں نے جس مشن کا جھنڈا اٹھایا ہے وہ آسان نہیں لیکن میں ووٹ کو عزت دینے کے لیے ہر قربانی دینے کے لیے تیارہوں۔

’’ بزدل ڈکٹیٹر نہیں جو بھاگ جاؤں ‘‘

نوازشریف نے کہا کہ بزدل ڈکٹیٹر نہیں جو بھاگ جاؤں، قوم کے ساتھ ہوں اور قوم میرے ساتھ کھڑی ہے اور میں عوام کے درمیان رہ کر اور انہیں گواہ بنا کر کمراہ عدالت میں کھڑا ہوکر اپنے کیس کا فیصلہ سننا چاہتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میرا ملک ہے، اپنے ملک پر جان نچھاور کرنے والا بندہ ہوں، اہلیہ وینٹی لیٹر پرہیں، جیسے ہی اہلیہ کی طبیعت ٹھیک ہوتی ہے فوری واپس جاؤں گا۔

’’ فیصلہ چند دن محفوظ رکھنے سے انصاف مجروح نہیں ہوتا ‘‘

قائد مسلم لیگ (ن) نے احتساب عدالت سے ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ چند روز تک موخر کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ فیصلہ چند دن محفوظ رکھنے سے انصاف مجروح نہیں ہوتا جب کہ ہماری عدالتوں میں کئی کئی ماہ فیصلے محفوظ رکھنے کی روایت موجود ہے جس سے قومی خزانے کو کروڑوں کا نقصان ہوا۔

’’ 25 جولائی کا فیصلہ قوم کی تقدیر بدلے گا ‘‘

نوازشریف نے کہا کہ پاکستان میں بدترین حالات ہیں لیکن جیپوں والوں سمیت عوام کا راستہ روکنے والے عبرت کا نشان بننے والے ہیں اور 25 جولائی کو قوم فیصلہ سنائے گی اور یہ فیصلہ قوم کی تقدیر بدلے گا۔ انہوں نے کہا کہ میری نااہلی کے بعد جو کچھ ہوتا رہا ہے اس کے بعد اب کچھ بھی ہوسکتا ہے جب کہ ابھی تومیرے خلاف مزید دو ریفرنسزپر کارروائی جاری ہے۔

’’ جیل جانے کے لیے تیار ہیں ‘‘

دوسری جانب لندن میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ جو کچھ پاناما ٹرائل کے حوالے سے ہورہا ہے سب قوم کے سامنے ہے، جس طرح پاناما کیس کو چلایا گیا  اس سے سب کچھ واضح ہے، ہم ڈرنے والے نہیں ہیں اور اگر جیل ہوتی ہے تو میں اس کے لیے بھی تیار ہوں  کیونکہ 70 سالہ ملکی تاریخ میں  جو کسی نے نہیں کیا اس کام کو کرنے کا بیڑا ہم نے اٹھایا، اور جانتے ہیں کہ اس کی ہمیں قیمت اٹھانے پڑے گی اور ہم قیمت ادا کررہے ہیں۔

’’ الیکشن سے قبل پاکستان واپس پہنچ جائیں گے ‘‘

مریم نواز نے الیکشن بائیکاٹ کی قیاس آرائیوں کو رد کرتے ہوئے واضح کیا کہ بائیکاٹ کا سوچ بھی نہیں سکتے، الیکشن بائیکاٹ کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، ہم آخری بال تک مقابلہ کریں گے اور یقین ہے آخر میں فتح مسلم لیگ (ن) کی ہی ہوگی۔ والدہ کی صحت کے حوالے سے انہوں نے بتایا کہ ڈاکٹرز نے کل والدہ کی سرجری کی ہے اور امید ہے وہ جلد ہوش میں آجائیں گی، ہم لندن میں کلثوم نواز کی خراب طبیعت کے وجہ سے موجود ہیں الیکشن سے قبل پاکستان واپس پہنچ جائیں گے۔

شفاف انتخابات کا یقین ہے لیکن کچھ “ادائیں” ضرور نظر آئیں گی، فضل الرحمان

اسلام آباد: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ  شفاف انتخابات کا یقین ہے لیکن کچھ “ادائیں” ضرور نظر آئیں گی۔

اسلام آباد میں مولانا فضل الرحمان نے متحدہ مجلس عمل کی مرکزی سپریم کونسل کےاہم اجلاس کے بعد سراج الحق، ساجد نقوی، اویس نورانی سمیت دیگر رہنماؤں کےساتھ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا کہ شفاف انتخابات کا یقین ہے لیکن کچھ “ادائیں” ضرور نظر آئیں گی جب کہ نیب اور عدالتوں کو چاہئے کہ وہ انتخابات پر اثر انداز ہونے سے گریز کریں۔

فضل الرحمان نے (ن) لیگ یا پی پی سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ ایم ایم اے (ن) لیگ یا پیپلز پارٹی سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ بھی کرسکتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پوری یکسوئی اور نئے عزم کے ساتھ انتخابی میدان میں اتر رہے ہیں چاروں صوبوں میں متفقہ امیدواروں کی فہرست مرتب کرلی ہے ، ملک بھر سےایم ایم اے کی جانب سے قومی اسمبلی کے 191، صوبائی نشستوں پر 404 اور 35 خواتین امیدواروں کو جنرل نشستوں پر میدان میں اتاریں گے۔

ختم نبوت شق کی تبدیلی کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری

اسلام آباد ہائی کورٹ نے الیکشن ایکٹ 2017 میں ختم نبوت کے حلف نامے کی شق میں تبدیلی کے کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا جس میں کہا گیا کہ وزارت قانون نے جان بوجھ کر شق کو تبدیل کیا تاکہ احمدیوں کو فائدہ پہنچایا جاسکے۔

ہائی کورٹ نے جسٹس شوکت عزیر صدیقی کی جانب سے تحریر کیا گیا 172 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کیا۔

تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ دین اسلام اور آئین پاکستان مذہبی آزادی سمیت اقلیتوں کے تمام بنیا دی حقوق کی ضمانت فراہم کرتا ہے، ریاست پاکستان کے ہر شہری پر لازم ہے کہ و ہ اپنی شناخت درست اور صحیح کوائف کے ساتھ جمع کرائے۔

جسٹس شوکت صدیقی نے فیصلے میں کہا کہ ’ملک کے ہر شہری کو اختیار ہے کہ وہ جان سکے کہ اہم عہدے کس مذہبی کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے شخص کے پاس ہیں جن میں وہ افراد جو بچوں کے لیے نصاب تیار کرتے ہیں، جو افراد پالیسیاں بنا رہے ہیں ان میں آخری نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت کے حوالے سے بھی علم ہونا چاہیے، ہمارے سفیر جو ہمارے اسلامی نظریے کی نمائندگی کر رہے ہیں اور سب سے اہم وہ جن کے ہاتھوں میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کا دفاع ہم نے دے رکھا ہے، ان سب کے مذہب کا ہمیں علم ہونا چاہیے اور یہ ریاست اور وفاقی حکومت کی ذمہ داری ہے تاہم وہ اسے پورا کرنے میں بری طرح ناکام رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کسی مسلم کو یہ اجازت نہیں کہ و ہ اپنی شناخت چھپائے، بد قستمی سے اس وا ضح معیار کے مطابق ضروری قانون سازی نہیں کی جاسکی جس کے نتیجے میں غیر مسلم اقلیت اپنی اصل شناخت چھپاکر ریاست کو دھوکہ دیتے ہو ئے خود کو مسلم اکثر یت ظاہر کرتی ہے جس سے نا صرف مسا ئل جنم لیتے ہیں بلکہ انتہائی اہم تقاضو ں سے انحرا ف کی راہ بھی ہموا ر ہو جا تی ہے۔

ختم نبوت کے حوالے سے شق میں تبدیلی پر عدالت کا کہنا تھا کہ وزارت قانون میں بل کو ڈرافٹ کرنے والوں نے جان بوجھ کر ایسا کرنے کی کوشش کی تاکہ احمدی کمیونٹی کو فائدہ پہنچایا جاسکے۔

تفصیلی فیصلے میں مزید کہا گیا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کا یہ بیانیہ کہ سول سروس کے کسی سول آفیسر کی اس حوالے سے مز ید شناخت موجود نہیں، ایک المیہ ہے، یہ امر آئین پا کستان کی روح اور تقا ضوں کے منافی ہے۔

جسٹس شوکت صدیقی نے کہا کہ ختم نبو ت کا معاملہ ہمارے دین کی اساس ہے، پارلیمنٹ ختم نبو ت کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کرے، شنا ختی کارڈ، برتھ سرٹیفیکیٹ، انتخابی فہرستوں اور پاسپورٹ کے لئے مسلم اور غیر مسلم کی مذہبی شنا خت کے حوالے سے بیان حلفی لیا جائے، سرکاری، نیم سرکاری اور حساس اداروں میں ملازمت کیلئے بھی بیان حلفی لیا جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ مردم شماری اور نادرا کوائف میں شناخت چھپانے والوں کی تعداد خوفناک ہے، نادرا اور محکمہ شماریات کے ڈیٹا میں قادیانیوں کے حوالے سے معلومات میں واضح فرق پر تحقیقات کی جائیں۔

انہوں نے حکم دیا کہ تعلیمی اداروں میں اسلامیات پڑھانے کیلئے مسلمان ہونے کی شرط لازمی قرار دی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ شناخت کا نہ ہونا آئین پاکستان کی روح کے منافی ہے، الیکشن ایکٹ میں ختم نبوت کے حوالے سے ترمیم کی واپسی حکومت کی جانب سے احسن اقدام ہے۔

اس معاملے کی تحقیقات کے لیے تشکیل دی گئی کمیٹی کے سربراہ راجہ ظفر الحق کمیٹی کی تعریف کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے انتہائی اعلیٰ رپورٹ مرتب کی ہے، رپو رٹ میں معاملے کے تمام پہلوؤں کا انتہائی جامعیت، دیانت داری اور دانش مندی کے ساتھ احا طہ کیا گیا ہے۔

تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ اب یہ پار لیمان پر منحصر ہے کہ وہ اس معا ملے پر مزید غور کر ے۔

سلمان خان اپنے باڈی گارڈ کے بیٹے پر مہربان

ممبئی: بالی ووڈ سلطان سلمان خان نے اپنے باڈی گارڈ شیرا سنگھ کے بیٹے کو فلم انڈسٹری میں ڈیبیو کرانے کا فیصلہ کرلیا۔

سلمان خان فلم نگری میں نئے چہرے متعارف کرانے اور ساتھی اداکاروں کی مدد کرنے کے حوالے سے انڈسٹری میں ایک الگ مقام رکھتے ہیں اور وہ دوستوں کی مدد کے لیے انتہائی قدم اٹھانے سے بھی گریز نہیں کرتے ہیں یہی وجہ ہے کہ سلمان خان نے 18 سال سے سائے کی طرح ساتھ رہنے والے باڈی گاڑد شیرا کے بیٹے کو بھی فلم نگری میں متعارف کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق بالی ووڈ سلطان سلمان خان نے 18 سال سے ساتھ رہنے والے باڈی گارڈ شیرا کے بیٹے ٹائیگر سنگھ کی پیدائش کے موقع پر گود میں اُٹھا کر وعدہ کیا تھا کہ یہ بچہ بڑا ہو کر ہیرو بنے گا اور میں اس کو ہیرو بناؤں گا لیکن سلو میاں کے باڈی گارڈ نے اس بیان کو زیادہ سنجیدہ نہیں لیا اور یہ سمجھ کر بھول گئے کہ سلمان خان نے بچے کو دیکھ کر جذبات اور خوشی میں کہا لیکن دبنگ خان شیرا سے کیا ہوا وعدہ نہیں بھولے اور حال ہی میں انہوں نے ٹائیگر کے ڈیبیو کے حوالے سے بات کی۔

سلو میاں کے قریبی دوستوں کا کہنا ہے کہ سلمان خان اپنے بہنوئی ایوش شرما کی فلم ’لوراتی‘ کی ریلیز کے بعد ٹائیگر سنگھ کو لے کر فلم بنائیں گے اور وہ انہیں ایک ایکشن سے بھرپور فلم میں کاسٹ کریں گے جس میں ان کے مدمقابل ایک نئی اداکارہ کو متعارف کروایا جائے گا۔

واضح رہے کہ سلمان خان کے باڈی گارڈ شیرا کا بیٹا ٹائیگر سنگھ معروف ہدایتکار علی عباس ظفر کے ہمراہ فلم ’ٹائیگر زندہ ہے‘ میں بطور اسسٹنٹ ڈائریکٹر کی خدمت انجام دے چکے ہیں۔

خوفزدہ ہونے والے نہیں جیل جانے کے لیے تیار ہیں، مریم نواز

 لندن: مسلم لیگ(ن)  کی رہنما مریم نوازنے کہا ہے کہ قید سے خوفزدہ ہونے والے نہیں جیل بھی جانے کے لیے تیار ہیں۔

لندن میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ  جو کچھ پاناما ٹرائل کے حوالے سے ہورہا ہے سب قوم کے سامنے ہے، جس طرح پاناما کیس کو چلایا گیا  اس سے سب کچھ واضح ہے، ہم ڈرنے والے نہیں ہیں اور اگر جیل ہوتی ہے تو میں اس کے لیے بھی تیار ہوں  کیونکہ 70 سالہ ملکی تاریخ میں  جو کسی نے نہیں کیا اس کام کو کرنے کا بیڑا ہم نے اٹھایا، اور جانتے ہیں کہ اس کی ہمیں قیمت اٹھانے پڑے گی اور ہم قیمت ادا کررہے ہیں۔

مریم نواز نے الیکشن بائیکاٹ کی قیاس آرائیوں کو رد کرتے ہوئے واضح کیا کہ بائیکاٹ کا سوچ بھی نہیں سکتے، الیکشن بائیکاٹ کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، ہم آخری بال تک مقابلہ کریں گے اور یقین ہے آخر میں فتح مسلم لیگ (ن) کی ہی ہوگی۔

والدہ کی صحت کے حوالے سے انہوں نے بتایا کہ ڈاکٹرز نے کل والدہ کی سرجری کی ہے اور امید ہے وہ جلد ہوش میں آجائیں گی، ہم لندن میں کلثوم نواز کی خراب طبیعت کے وجہ سے موجود ہیں الیکشن سے قبل پاکستان واپس پہنچ جائیں گے۔

عظیم ملک بنانے کاخواب کراچی کے بغیر مکمل نہیں ہوگا، عمران خان

کراچی:  پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ جب تک کراچی میں تبدیلی نہیں آئی گی تب تک پاکستان اٹھ نہیں سکتا اور عظیم ملک بنانے کاخواب کراچی کے بغیر مکمل نہیں ہوگا۔

کراچی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے چیئر مین تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ جب ہم بڑے ہورہے تھے تو ملک کے ادارے مضبوط تھے، 60 کی دہائی میں ملک ترقی کررہا تھا۔ سب تباہی ہمارے سامنے ہوئی ہیں، آج ہم مقروض ہوتے جارہے ہیں، ادارے تباہ ہوگئے ہیں، اداروں کے ساتھ ملک ترقی کرتا ہے لیکن سابق حکمرانوں نے ملک کو تباہ کردیا، آج بنگلا دیش ہم سے آگے نکل چکا ہے، لاہور میں بارش نے ترقی کا پول کھول دیا، لاہور کو جو پیرس بنانا تھا وہ سب قوم کے سامنے آگیا، 30 سال باریاں لینے والوں نے ملک کو تباہ کردیا ہے، قوم مقروض ہو چکی ہے، کبھی ایسی بےروزگاری نہیں تھی۔

عمران خان نے مزید کہا کہ پاکستان کے عوام تبدیلی چاہتے ہیں، مجھے فیصلہ ہوتے ہوئے نظر آ رہا ہے، سب سے بڑا امپائر اللہ تعالیٰ ہے اور اس کا فیصلہ آگیا ہے، اندھیری رات سے نکلنے کےلیے اللہ نے پاکستان کو زبردست موقع دیا ہے، وفاق میں حکومت بنانے کے لیے ہمارے پاس کافی نشستیں ہوں گی، میں اپنے امیدواروں سے کہتا ہوں گلی گلی جائیں اور ریلیاں نکالیں، کبھی اپنے مخالف کو کمزور نہ سمجھیں، اس حوالے سے کرکٹ کی زبان میں کہا جاتا ہے کہ جب تک آخری گیند نہ ہوجائے تو فیصلہ نہیں ہوتا۔

چیئرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ جب تک کراچی میں تبدیلی نہیں آئے تب تک پاکستان نہیں اٹھ نہیں سکتا، عظیم ملک بنانے کاخواب کراچی کے بغیر مکمل نہیں ہوگا، 30 سال سے باریاں لینے والوں کے پاس کراچی کو ٹھیک کرنے کا کوئی حل نہیں، ہماری پہلی باری ہے اور باقی سب 6 باریاں لے چکے۔ ہم ابھی سے منصوبہ بندی کر رہے ہیں کہ کراچی کو کیسے پانی دینا ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ آج کے پی کی پولیس ماڈل پولیس بن گئی پر یہاں یہ نہیں ہوسکا، کراچی پولیس کو غلط استعمال کیا جاتا رہاہے، 6،6 باریاں لینے والے پولیس کو ٹھیک کیوں نہیں کر سکے، شہباز شریف پنجاب پولیس کے ذریعے ہی ماورائےعدالت لوگوں کومرواتے ہیں۔

Google Analytics Alternative