Home » 2018 » July » 08

Daily Archives: July 8, 2018

جانئے آج آپ کا دن کیسا رہے گا

حمل:
21 مارچ تا 21 اپریل

بسلسلہ کاروبار اپنی ذاتی سکیموں کو عملی شکل دیں ، کافی فائدہ ہو سکتا ہے، ملازمت میں حسب منشاء تبدیلی ہو سکتی ہے، دوستوں سے وابستہ توقعات پوری ہو سکتی ہیں، گھریلو ماحول تسلی بخش رہے گا۔

ثور:
22اپریل تا20 مئی

مذہب سے دلچسپی بڑھ سکتی ہے، والدین سے فائدہ ہو سکتا ہے، مقدمہ کا فیصلہ منشاء کے مطابق ہو سکتا ہے، کوئی نئی رشتہ داری بھی قائم ہو سکتی ہے، سفر شوق سے کیجئے نتیجہ توقع کے مطابق ہو سکتا ہے۔

جوزا:
21مئی تا 21 جون

اپنی اعلیٰ صلاحیتوں کو بروئے کار لایئے وقت آپ کا ساتھ دے سکتا ہے اور آپ بہت کچھ حاصل کر سکیں گے، دیرینہ آرزوئوں کی تکمیل ہو سکے گی، بسلسلہ جائیداد آپ کی دیرینہ خواہشات پوری ہو سکتی ہیں۔

سرطان:
22جون تا23جولائی

بعض اہم ترین الجھے ہوئے مسائل حل ہو سکیں گے، پرانی سکیموں کو عملی شکل دینے کی کوشش کریں، کاروبار نو کے آغاز کا بھی موقع مل سکتا ہے، چند خاص لوگوں کے ساتھ تعلقات قائم ہو سکتے ہیں۔

 

اسد:
24جولائی تا23اگست

کسی کے ساتھ بھی جھگڑا فساد نہ کریں ورنہ آپ کے خلاف کوئی مقدمہ قائم ہو سکتا ہے بزرگ روحانی سے وابستہ توقعات پوری نہ ہو سکیں گی، گھریلو سکون حاصل ہو سکے گا۔

سنبلہ:
24اگست تا23ستمبر

شریک حیات اور سسرال والوں کو راضی رکھنے کی کوشش کیجئے اسی میں آپ کا فائدہ ہے، کاروبار وسعت اختیار کر سکتا ہے، اخراجات کم کریں کے کچھ بچاتے رہیں تاکہ برے وقت یہ آپ کے کام آ سکے۔

میزان:
24ستمبر تا23اکتوبر

بزرگان روحانی کی خدمت کر لیں اس کا آپ کو بہتر صلہ ملے گا، رشتہ داروں کے ساتھ تعلقات مزید مضبوط ہو سکتے ہیں، بسلسلہ تعلیم شاندار کامیابی حاصل ہو سکے گی۔

عقرب:
24اکتوبر تا 22نومبر

جذباتیت کے دائرے سے باہر نکل آیئے ورنہ آپ کے کسی غلط فیصلے کی وجہ سے پورا گھر بلکہ خاندان متاثر ہو سکتا ہے، کوئی مخالف آپ کے خلاف سازش کر سکتا ہے، محتاط رہ کر وقت گزاریں۔

قوس:
23نومبر تا22دسمبر

اگر آپ کو کسی مشترکہ کاروبار میں شمولیت کا چانس ملے تو ضرور استفادہ کریں، بزرگان روحانی سے توقع کے مطابق روحانی فیض حاصل ہو سکے گا، گھریلو ماحول قدرے بہتر رہے گا۔

جدی:
23دسمبر تا20جنوری

آپ بعض اہم معاملات میں منشاء کے مطابق کامیابی حاصل نہ کر پائیں گے لیکن اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ آپ ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے رہیں، اس طرح زیادہ نقصان ہو گا۔

دلو:
21جنوری تا19فروری

گھریلو زندگی کو خوشگوار بنانے کے سلسلے میں یہ عرصہ آپ کے لئے بہت ہی اہم ثابت ہو سکتا ہے، غیر شادی شدہ حضرات کا رشتہ بھی طے پا سکتا ہے۔

حوت:
20 فروری تا 20 مارچ

جائیداد کے الجھے ہوئے مسائل حل ہو سکتے ہیں، ہو سکتا ہے کہ آپ کو مطلوبہ مکان یا پلاٹ مل جائے، صحت جسمانی گاہے بگاہے خراب ہو سکتی ہے، علاج کی جانب سے غفلت نہ برتیں۔

مریم نواز کا والد کے ہمراہ جمعہ کو وطن واپس آنے کا اعلان

لندن: مریم نواز نے کہا ہے کہ وہ والد کے ہمراہ جمعہ کو وطن واپس آرہی ہیں جب کہ نیب کا کہنا ہے نوازشریف اورمریم نواز کو پاکستان پہنچتے ہی ایئرپورٹ سے گرفتار کرلیا جائے گا۔

مریم نواز کا اپنی ٹوئٹ میں کہنا تھا کہ ڈاکٹر والدہ کی صحت سے متعلق کچھ نہیں بتارہے کہ وہ کب تک ہوش میں آجائیں گی لیکن ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ جمعہ کو انشااللہ پاکستان واپس پہنچ جائیں گے جب کہ ذرائع کا کہنا ہے کہ نوازشریف اورمریم نواز اسلام آباد ایئرپورٹ پر اتریں گے۔

دوسری جانب لندن میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ ایون فیلڈ ریفرنس کا پورا فیصلہ مفروضات پر دیا گیا اور اس میں صرف نوازشریف کو نشانہ بنایا گیا، فیصلے کے خلاف اپیل کے لیے قانونی راستہ اپنائیں گے اور اگر تحقیقات میں برطانیہ سے مدد مانگی گئی تو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجائے گا کیوں کہ جب برطانیہ نے ٹرسٹ ڈیڈ کو درست قراردے دیا تو پاکستانی عدالت اسے غلط کیسے کہہ سکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ  فیصلے میں کہیں نہیں لکھا کہ کرپشن ہوئی تو سزا کس بات پر دی گئی، نوازشریف اس کیس سے بری ہوئے انہوں نے کوئی کرپشن نہیں کی۔

مریم نواز نے کہا کہ کوئی بھی شخص میری اور بھائی کی ٹرسٹ ڈیڈ کو غلط نہیں کہہ سکتا اور کسی بھی صاف شفاف عدالت سے اتنا کمزور فیصلہ نہیں آسکتا اگر کہا جائے کہ فیصلے میں مضحکہ خیز چیزیں ہیں تو یہ بے جا نہ ہوگا۔

ادھر قومی احتساب بیورو (نیب) نے احتساب عدالت سے نواز شریف، مریم اور کیپٹن صفدر (ر) کے وارنٹ گرفتاری حاصل کرلیے ہیں۔

نیب کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا کہ ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ احتساب عدالت سے حاصل کرلیا ہے اور گرفتاری کے وارنٹ بھی حاصل کرلئے ہیں۔ قانون کے مطابق نواز شریف، مریم نواز، کیپٹن ریٹائرڈ صفدر، حسن اور حسین نواز کی گرفتاری کے لئے لائحہ عمل کی تیاری شروع کردی گئی ہے۔

نیب کا کہنا ہے نوازشریف اورمریم نواز کو پاکستان پہنچتے ہی ایئرپورٹ سے گرفتار کرلیا جائے گا۔

نیب، پی ٹی آئی اور پیپلز پارٹی (ن) لیگ کے خلاف اکٹھے ہوگئے ہیں، شہباز شریف

نارووال: مسلم لیگ (ن) کے صدر میاں شہباز شریف نے کہا ہے کہ نیب، تحریک انصاف اور پیپلز پارٹی والے اکٹھے ہوگئے ہیں اور سیاسی مخالفین مل کر ہمارے خلاف کارروائیاں کررہے ہیں۔

نارووال میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے شہباز شریف نے کہا کہ نیب عدالت نے اس کے خلاف فیصلہ دیا جس نےملک کو ایٹمی طاقت بنایا تھا میں نواز شریف کے خلاف فیصلے کو نہیں مانتا  اور عوام کے سمندر نے آج یہاں جمع ہوکر اس فیصلے کو مسترد کردیا ہے، مجھے امید ہےعوام  شیر پر مہر لگا کر 25 جولائی کو نیب کے فیصلے کو دریا برد کردیں گے۔

پی ٹی آئی چیئرمین کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے شہباز شریف نے کہا کہ عمران خان نے خیبر پختونخوا کا بیڑہ غرق کردیا وہ ملک کیا چلائیں گے، کیا عوام ملک کو الزام خان  کے حوالے کریں گے؟ جس نے پشاور کو کھود ڈالا، عمران خان نے پختونخوا میں بجلی بنانے اور پورے پاکستان میں دینے کا وعدہ کیا تھا لیکن جھوٹا خان کہتا ہے 72 میگا واٹ بجلی پیدا کی اور ہم نے 11 ہزار میگا واٹ بجلی دی۔

صدر مسلم لیگ (ن) کا کہنا تھا کہ عوام 25 جولائی کو شیر پر مہریں لگا کر مخالفین کی ضمانت ضبط کروا دیں گے،  اس بار بھی جیت (ن) لیگ کی ہوگی۔

اللہ تعالیٰ نے جتنے مواقع نوازشریف کو دئیے شاید کسی اور کونہیں ملے، عمران خان

اسلام آباد: چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا کہنا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جتنے مواقع نوازشریف کو دئیے شاید کسی اور کونہیں ملے۔ 

درگاہ گولڑہ شریف میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا تھا کہ میرے 21 سال کھیل کے میدانوں میں گزرے مجھے پتہ ہے کہ میچ جیتنے پر لوگ پرتپاک استقبال کرتے ہیں اور ہارنے پر انڈے مارتے ہیں لیکن میرا اصول ہے کہ جیت پر اپنے پاؤں زمین سے نہ اٹھنے دو کیوں کہ ہار جیت عارضی اور باقی رہ جانے والی ذات اللہ کی ہے، جو اللہ کے حکم پر عمل نہیں کرتا اس کو ذلت اٹھانی پڑتی ہے اللہ کے حکم پر چلیں، سب کچھ اس کے ہاتھ میں ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ اللہ تعالیٰ نے جتنے موقع نوازشریف کودئیے شاید کسی اورکونہیں ملے، گزشتہ روز کے فیصلے سے سب سامنے آگیا، پاکستانی تاریخ میں پہلی دفعہ کل طاقتور کو سزا دی گئی، حسن اور حسین نوازکے اکاونٹس میں تین سو ارب روپے ہیں، پھر کہتے ہیں پاکستان کے شہری نہیں ہیں، گزشتہ دس سال میں پاکستان پر قرضہ 27 ہزار ارب تک پہنچ گیا، کرپشن اور چوری نے ملک کو کھوکھلا کردیا ہے، کیا نوازشریف کے ساتھ کھڑے ہونے والوں نے اللہ کو جواب نہیں دینا؟ ۔ ان کا کہنا تھا کہ لیڈروہ ہوتا ہےجوعوام کاپیسہ عوام پرخرچ کرے، خلفائے راشدین نے عوام کا پیشہ عوام پر خرچ کیا،  چھوٹے طبقہ ریاست کی ذمہ داری ہے ہمیں مل کر تقسیم شدہ ملک کو ہمیں اکٹھا کرنا ہے۔

 

نیب نے نواز شریف،مریم نواز،کیپٹن صفدر کے وارنٹ گرفتاری حاصل کرلیے

اسلام آباد: قومی احتساب بیورو (نیب) نے مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کے وارنٹ گرفتاری حاصل کر لیے۔

یہ پیشرفت اسلام آباد کی احتساب عدالت کی جانب سے ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کو 10 سال، مریم نواز کو 7 سال اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کو ایک سال قید بامشقت کی سزا سنائے جانے کے ایک روز بعد سامنے آئی۔

نیب ترجمان نے کہا کہ اس کے علاوہ بیورو کی ٹیم محمد صفدر کی گرفتاری کے لیے پہلے ہی مانسہرہ روانہ ہوچکی ہے، جبکہ اس سلسلے میں صوبے کی نگراں حکومت سے بھی تعاون کے لیے رابطہ کیا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ نیب نے تفصیلی فیصلے کی کاپی بھی حاصل کرلی ہے جس پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جائے گا۔

ترجمان نے واضح کیا کہ نواز شریف اور ان کے خاندان کے افراد کو کرپشن کرنے پر سزا سنائی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’آمدن کے معلوم ذرائع سے زائد اثاثے بنانے کا جرم این اے او 1999 کے تحت کرپشن اور کرپٹ پریکٹیسز کے زمرے میں آتا ہے۔‘

واضح رہے کہ نیب ترجمان کی طرف سے بظاہر یہ وضاحت فیصلے کے بعدنواز شریف کی پریس کانفرنس کے ردعمل میں کی گئی۔

پریس کانفرنس کے دوران نواز شریف نے چند میڈیا رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ ’مجھے سزا کرپشن پر نہیں سنائی گئی، میں نے ٹی وی پر سنا کہ فیصلے میں لکھا ہے کہ استغاثہ کرپشن کا کوئی الزام ثابت نہیں کرسکی۔

شریف خاندان کے خلاف قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے دائر ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ سناتے ہوئے اسلام آباد کی احتساب عدالت نے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کو 10 سال، ان کی صاحبزادی مریم نواز کو 7 سال جبکہ داماد کیپٹن ریٹائرڈ محمد صفدر کو ایک سال قید بامشقت کی سزا سنائی۔

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے نواز شریف پر 80 لاکھ پاؤنڈ (ایک ارب 10 کروڑ روپے سے زائد) اور مریم نواز پر 20 لاکھ پاؤنڈ (30 کروڑ روپے سے زائد) جرمانہ بھی عائد کیا۔

اس کے علاوہ احتساب عدالت نے شریف خاندان کی لندن میں قائم ایون پراپرٹی ضبط کرنے کا حکم بھی دیا۔

منی لانڈرنگ کیس؛ آصف زرداری اور فریال تالپور کے گرد گھیرا تنگ

کراچی: بدعنوانی کے خلاف مہم میں نواز شریف کے خلاف مقدمے کا فیصلہ آنے کے بعد سابق صدر آصف زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور کے گرد گھیرا تنگ ہونا شروع ہوگیا ہے۔

ایف آئی اے نے پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے قریبی ساتھی اور منی لانڈرنگ کیس میں ملوث چیئرمین پاکستان اسٹاک ایکسچینج حسین لوائی کو حراست میں لے لیا ہے۔ حسین لوائی پر 35ارب روپے منی لانڈرنگ کا الزام ہے۔ ایف آئی اے کے مطابق حسین لوائی نے 3 بینکوں کے 29 جعلی اکاؤنٹس کے ذریعے 35 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کی، مذکورہ 29 اکاؤنٹس سے رقم کا لین دین اومنی گروپ کے ملازمین کرتے تھے، اومنی گروپ کے مالک انور مجید ہیں جو بیرون ملک فرار ہونے میں کامیاب ہوچکے ہیں۔

ایف آئی اے نے حسین لوائی کیخلاف مقدمے میں بڑی سیاسی اور کاروباری شخصیات کے ساتھ ساتھ آصف زرداری اور فریال تالپور کی کمپنی کا تذکرہ بھی کیا ہے۔ مقدمے کے متن کے مطابق آصف زرداری اور فریال تالپورکی کمپنی بھی منی لانڈرنگ سے فائدہ اٹھانے والوں میں شامل ہے، زرداری گروپ نے ڈیڑھ کروڑ روپے کی منی لانڈرنگ کی رقم وصول کی۔

مقدمے میں اومنی گروپ کے مالک انور مجید کی کمپنیوں کا بھی ذکر ہے۔ منی لانڈرنگ سے فائدہ اٹھانے والوں میں نزلی مجید، نمرہ مجید، عبدالغنی مجید شامل ہیں۔ ابتدائی طور پر 10 ملزمان کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی جس میں چئیرمین سمٹ بینک نصیر عبداللہ لوتھا، عبدالغنی مجید، اسلم مسعود، محمد عارف خان، نورین سلطان، کرن امان، عدیل شاہ راشدی، طحہ رضا نامزد ملزمان ہیں۔

منی لانڈرنگ سے فائدہ اٹھانے والی کمپنیوں اور افراد کو سمن جاری کرتے ہوئے وضاحت طلب کرلی گئی ہے۔ ایف آئی اے نے 29 اکاؤنٹس کی تمام تفصیلات عدالت میں پیش کردیں جس کے مطابق 6 مارچ 2014 سے 12 جنوری 2015 تک اربوں روپے کی منی لانڈرنگ کی گئی۔

کیپٹن (ر) صفدر کی گرفتاری کے لیے نیب کے چھاپے

ایبٹ آباد:ایون فیلڈ ریفرنس میں احتساب عدالت سے وارنٹ جاری ہونے کے بعد نیب نے کیٹپن (ر) صفدر کی گرفتاری کے لیے کے پی کے میں چھاپہ مار کارروائیاں شروع کردیں۔

ایون فیلڈ ریفرنس میں احتساب عدالت سے سزا پانے والے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے داماد کیپٹن (ر) محمد صفدر کو گرفتار کرنے کے لیے نیب کی ٹیموں نے ہری پور اور ایبٹ آباد میں چھاپے مارے ہیں۔ نیب کے ہمراہ خیبر پختون خوا انتظامیہ اور پولیس بھی موجود ہیں۔ یہ چھاپے محمد صفدر کی رہائش گاہوں پر مارے گئے ہیں تاہم گرفتاری عمل میں نہیں آسکی۔

ذرائع کے مطابق  کیپٹن صفدر کی گرفتاری کے لیے ہری پور، ایبٹ آباد اور مانسہرہ میں ٹیمیں تعینات ہیں اور یہ ٹیمیں کیپٹن صفدر کی گرفتاری تک وہیں تعینات رہیں گی۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیر اعظم نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر کو مجرم قرار دیتے ہوئے بالترتیب10 سال، 7 سال اور ایک سال قید بامشقت کی سزا سنائی ہے۔

سزا سنائے جانے کے بعد نیب نے مجرمان کی گرفتاری کے لیے اریسٹ وارنٹ حاصل کرلیے ہیں، نواز شریف اور مریم نواز بیرون ملک ہونے کی وجہ سے نیب کی گرفت میں نہیں آسکے جب کہ کیپٹن صفدر منظر عام سے غائب ہیں۔

یہ اطلاعات بھی ہیں کہ کیپٹن (ر) نے از خود گرفتاری دینے کا فیصلہ کیا ہے جس کے لیے وہ تورغر سے نیب حکام کی طرف روانہ ہوگئے ہیں۔

ختم نبوتؐ حلف نامے سے متعلق راجہ ظفر الحق رپورٹ سامنے آگئی

 اسلام آباد: ختم نبوت ﷺ حلف نامے سے متعلق راجہ ظفر الحق رپورٹ منظر عام پر آگئی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ختم نبوت کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے راجہ ظفر الحق رپورٹ پبلک کرنے کا حکم دیا تھا۔ ختم نبوت حلف نامے میں تبدیلی سے متعلق راجہ ظفر الحق کمیٹی کی 11 صفحات پر مشتمل مکمل رپورٹ منظر عام پر آگئی ہے۔ رپورٹ کے ساتھ پارلیمانی جماعتوں کے اجلاس بلانے کے نوٹیفکیشن بھی لگائے گئے ہیں۔ رپورٹ میں تحقیقاتی کمیٹی نے خامیوں کی نشاندہی کی لیکن باقاعدہ کسی کو ذمہ دار نہیں ٹھہرایا۔

رپورٹ کے مطابق 24 مئی کو پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں الیکشن بل زیر بحث آیا، انوشہ رحمان اور ایم این اے شفقت محمود نے امیدواروں کے مالی معاملات کے حوالے سے بل کو ری ڈرافٹ کیا، انوشہ رحمان کو فارمز کا مسودہ نظر ثانی کے لیے دیا گیا، اور انہوں نے کمیٹی کے اگلے اجلاس میں نظر ثانی شدہ فارم پیش کیا، نظر ثانی شدہ فارم کو جانچ پڑتال کی ہدایت کے ساتھ منظور کیا گیا۔

کمیٹی کے علم میں آیا کہ حلف نامہ فارمز کو سادہ بنانے کے دوران ہی انہیں تبدیل کردیا گیا، 93 ویں ذیلی کمیٹی کے اجلاس کے نکات تمام ممبران کو بھیجے گئے لیکن حلف نامے میں تبدیلی کے حصہ کو نہیں بھیجا گیا، وزیر قانون زاہد حامد نے بطور کنوینئر (سربراہ) تسلیم کیا کہ ڈرافٹ چیک کرنا ان کی ذمہ داری تھی۔

سب سے پہلے 22 ستمبر کو سینیٹ اجلاس میں سینیٹر حافظ حمد اللہ نے یہ معاملہ اٹھایا اور قرارداد پیش کی۔ راجہ ظفر نے سینیٹر حافظ حمد اللہ کی قراداد کی حمایت کی، لیکن سینیٹ میں حلف نامے کے حوالے سے قراداد کی پی ٹی آئی اور پی پی پی نے مخالفت کی۔

معاملہ سامنے آنے پر اسپیکر کی جانب سے تمام پارلیمانی جماعتوں کے سربراہان سے رابطہ کیا گیا، چار اکتوبر کو اسپیکر نے تمام جماعتوں کے سربراہان سے میٹنگ کی،  تمام جماعتیں اس پر متفق ہوئیں کہ حلف نامے کی سیون بی اور سیون سی کو بحال کیا جائے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ زاہد حامد کے استعفیٰ کا مطالبہ بھی پوری ہوچکا اور فارم بھی اپنی اصل شکل میں بحال ہوچکا۔

واضح رہے کہ اسلام آباد کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا تھا کہ ختم نبوت حلف نامے میں ترمیم سوچا سمجھا منصوبہ تھا،اس معاملے کی تفصیلی جانچ پڑتال ضروری ہے، تاہم عدالت کے لیے کسی ایک شخص، جماعت یا گروہ کو ذمہ دار ٹہرانا مشکل ہے۔

Google Analytics Alternative