Home » 2018 » July » 12

Daily Archives: July 12, 2018

جانئے آج آپ کا دن کیسا رہے گا

حمل:

21 مارچ تا 21 اپریل

صرف اپنی ہی صلاحیتوں پر بھروسہ کیجیے کسی دوسرے پر بہت کم بھروسہ کرنے کی کوشش کیجیے، دوسروں کی رائے پر چلنے والا فرد بہت کم کامیاب زندگی بسر کرتا ہے، اپنے جذبات کو کنٹرول میں رکھنے کی کوشش کیجیے۔

ثور:
22اپریل تا20 مئی

گھریلو ماحول کو خوشگوار رکھنے کیلیے ہر جائز طریقہ اختیار کریں آپ کیخلاف قریبی عزیز درپردہ سازشوں کا محاذ کھولے رکھیں گے، انکا مقصد صرف یہی ہو گا کہ آپکے شریک حیات گھریلو امور میں دلچسپی نہ لینے پائیں۔

جوزا:
21مئی تا 21 جون

ملازمت کرنے والے حضرات محتاط رہ کر اپنے فرائض انجام دیں، دوست بھی اچھے مددگار ثابت ہو سکتے ہیں، آپ تھوڑی سی کوشش کے بعد اپنا کھویا ہوا کاروباری مقام حاصل کر سکتے ہیں۔

سرطان:
22جون تا23جولائی

کاروبار جس سطح پر چل رہا ہے چلنے دیجئے، معمولی سی تبدیلی بھی نقصان کا موجب بن سکتی ہے البتہ شراکتی کاروبار فائدہ مند ثابت ہو سکتا ہے، کسی اعلیٰ آفیسر کے ساتھ تعلقات استوار ہو سکتے ہیں۔

 

اسد:
24جولائی تا23اگست

شریک حیات سے وابستہ توقع پوری ہو سکتی ہے جس کا کہ کبھی تصور بھی نہ کیا ہو گا، خاصی رقم ملنے کے ساتھ ساتھ حصول جائیداد کے امکانات بھی روشن ہیں، والدین سے فائدہ کی امید رکھی جا سکتی ہے۔

سنبلہ:
24اگست تا23ستمبر

تمام گھریلو الجھنوں کا خاتمہ بآسانی ہو سکے گا، اب آپ یہی کوشش کریں کہ ہر معاملے میں احتیاط برت لیں، قریبی عزیزوں سے فائدے کی توقع رکھی جا سکتی ہے، اپنے اخراجات کم کرنے کی کوشش کیجیے۔

میزان:
24ستمبر تا23اکتوبر

مکان و زمین کی خرید و فروخت سے فائدہ ہو سکتا ہے، عشق و محبت کے معاملات میں بھی بہت زیادہ محتاط رہئے، کوئی نزدیکی سفر بھی آپ کے لیے انتہائی خوشگوار ثابت ہو سکتا ہے۔

عقرب:
24اکتوبر تا 22نومبر

کوئی نیا شخص آپ کا دوست بن سکتا ہے، ان تعلقات کو کاروباری حد تک ہی رہنے دیں، کسی کو بھی اس قدر آگے نہ لائیں کہ پھر پیچھا چھڑانا مشکل ہو جائے ، گھریلو ماحول خاصا خوشگوار ہو سکتا ہے۔

قوس:
23نومبر تا22دسمبر

محبوب سے وابستہ کوئی اہم توقع پوری ہو سکتی ہے لیکن اس سلسلے میں بے صبری کا مظاہرہ ہرگز نہ کیجیے، کسی بزرگ روحانی سے خصوصی فیض حاصل ہو سکتا ہے،آپ بآسانی اپنے مکان کی تعمیر کا کام کر سکیں گے۔

جدی:
23دسمبر تا20جنوری

آپ کی جلد بازی اور غلط قسم کی سکیمیں آپ کو لے ڈوبیں گی لہٰذا اس سلسلے میں اپنے کسی اچھے دوست کی مدد لے لیجئے، شاید وہ اس سلسلے میں آپ کی رہنمائی کر سکے، گھریلو حالات بہتر رہیں گے۔

دلو:
21جنوری تا19فروری

اپنی سوچوں کو آوارگی کا جامہ نہ پہناتے جایئے آپ انسان ہیں کیا اپنے خیالات پر بھی کنٹرول نہیں کر سکتے، چند دیرینہ امیدیں پوری ہو سکتی ہیں،گھریلو ماحول خوشگوار رہے گا۔

حوت:
20 فروری تا 20 مارچ

محبت کے معاملے میں آپ کی کامیابی یقینی ہے، مکان کی خرید و فروخت فائدہ مند ثابت ہو سکتی ہے، دماغ پر نت نئی پریشانیوں کا غلبہ زیادہ رہے گا، اخراجات بڑھ سکتے ہیں۔

ہمیں سزائیں دینے کا فیصلہ کہیں اور ہوچکا تھا جسے 5 بار تبدیل کرکے سنایا گیا، نوازشریف

لندن: سابق وزیراعظم نوازشریف کا کہنا ہے کہ ہمیں سزائیں دینے کا فیصلہ کہیں اور ہوچکا تھا جسے 5 بار تبدیل کرکے سنایا گیا جب کہانتخابات پر اربوں روپے ضائع کرنے کے بجائے اقتدار کی کرسی پر جس لاڈلے کو بٹھانا ہے بٹھادو۔

لندن میں اپنی صاحبزادی مریم نواز کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف کا کہنا تھا کہ میرا وطن مشکل میں ہے اس لیے اپنے وطن اور لوگوں کے لیے واپس جارہا ہوں، مجھے سیاسی پناہ کی خبریں دینے والے سن لیں، واپس پاکستان آرہا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ جیل کی کوٹھری سامنے دیکھ کر بھی ووٹ کو عزت دو کا وعدہ پورا کرنے جا رہا ہوں۔

نوازشریف کا کہنا تھا کہ میں مقدمہ اس لیے نہیں لڑ رہا تھا کہ مجھے انصاف کی توقع تھی بلکہ اس لیے لڑرہا تھا کہ مجھ سے منسوب جرائم کا سب کو پتہ چل جائے، نیب کورٹ کے جج کو لکھنا پڑا کہ استغاثہ نوازشریف کے خلاف کوئی کرپشن، مالی بدعنوانی، اختیارات کے ناجائز استعمال ثابت نہیں کرسکا لہذا ان الزامات سے ملزم کو بری کرتا ہوں جب کہ ان سب کے باوجود مجھے، بیٹی اور داماد کو سزائیں سنادی گئیں۔

سزائیں دینے کا فیصلہ کہیں اور ہوچکا تھا

مسلم لیگ (ن) کے قائد نے کہا کہ ہمیں سزائیں دینے کا فیصلہ کہیں اور ہوچکا تھا جسے 5 بار تبدیل کرکے سنایا گیا، ان لوگوں نے صرف میری بیٹی کو سزا نہیں سنائی بلکہ پوری قوم کی بیٹیوں کو توہین کی ہے، مجھے تو سزائیں قبول ہیں لیکن مریم نواز کا کیا قصور تھا ، یہ کونسی ممبر قومی و صوبائی اسمبلی یا پھر سینیٹ کی ممبر تھی جب کہ اس کے پاس تو کوئی عہدہ بھی نہیں تھا پھر بھی 8 سال کی سزا سنادی گئی۔

ڈوریں ہلانے والوں کے چہرے بے نقاب ہوں گے

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بڑے صبر و تحمل سے کام لیا لیکن اب زیادہ دیرتک چپ رہنا قوم سے زیادتی ہوگی، اب پردے ڈالنے کا وقت گزرگیا، پردے اٹھانے کا وقت آگیا ہے اور ان لوگوں کے چہرے بے نقاب ہوں گے جو ڈوریں ہلارہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ کون لوگ ہیں جو نوازشریف کو راستے سے ہٹانا چاہتے ہیں، کون لوگ ہیں جنہوں نے نوازشریف کو جیل کی کوٹھڑی تک لانے کے لیے ڈرامہ رچایا جب کہ میرے نکل جانے سے چند دلوں کو ٹھنڈ تو پڑ گئی لیکن اس قوم و ملک کوکیا ملا۔

نوازشریف نے کہا کہ کون ہے جو عوام کی رائے کو کچل کر اپنی رائے مسلط کرنا چاہتے ہیں، کسی کو سیاست سے باہراور کسی کو اقتدار کا تاج پہننانے کے لیے کوششیں کرتے ہیں، اگر آپ نے یہی کچھ کرنا ہے تو آئین کو پھاڑ کر پھینک دو اور بٹھادو جس لاڈلے کو بٹھانا ہے، قومی خزانے کے اربوں روپے کیوں ضائع کرتے ہو۔

فیصلے کہیں اور ہوتے اور صفائیاں سیاستدانوں کو دینی پڑتی ہیں

مسلم لیگ (ن) کے قائد کا کہنا تھا کہ ملکی تاریخ میں کسی کو پھانسی چڑھا دی گئی، کسی کوجیل میں ڈالا اور کسی کو ملک بدرکردیا گیا اور اب تک کوئی وزیراعظم مدت پوری نہیں کرسکا، کیا سب نوازشریف تھے اور ان سب کا جرم کیا تھا، سب کا جرم ایک تھا کہ عوام نے انہیں محبت دی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کسی کی ہوتی ہے لیکن اختیار کسی کا ہوتا ہے، پالیسیاں کوئی اور بناتا ہے، فیصلے کہیں اور ہوتے ہیں، صفائیاں سیاستدانوں کو دینی پڑتی ہیں۔

اب یہ کھیل نہیں چلے گا

سابق وزیراعظم نے کہا کہ پاک فوج کےغازیوں اور شہیدوں کی بے پناہ محبت ہے لیکن اپنے اس مقدس فریضے اور حلف سےغداری کرکے اقتدار کے کھیل کا حصہ بننے والے اور سیاست میں دخل دینے والے شہیدوں، غازیوں سے غداری کرتے ہیں اور وہ مٹھی بھر عناصر ملک و قوم کے ساتھ ساتھ فوج کے وقار کو بھی نقصان پہنچا رہے ہیں تاہم اب یہ کھیل نہیں چلے گا، یہ کھیل بند کردو، ملک و قوم کو سزا نہ دو۔

حکومت نے آصف زرداری کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی تصدیق کردی

نگراں حکومت نے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈالنے کی تصدیق کردی۔

نگراں وزیر داخلہ اعظم خان نے سینیٹ کے اجلاس کے دوران ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے بتایا کہ آصف علی زرداری سے متعلق سپریم کورٹ آف پاکستان کا حکم آیا تھا۔

انہوں نے بتایا کہ ’سپریم کورٹ کے حکم کے بعد آصف علی زرداری کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا گیا ہے‘۔

خیال رہے کہ سینیٹ اجلاس کے دوران پیپلز پارٹی کے خیبرپختونخوا سے تعلق رکھنے والے سینیٹر برہمند تنگی نے آصف علی زرداری کا نام ای سی ایل میں ڈالنے سے متعلق سوال کیا تھا۔

نگراں وزیر داخلہ اعظم خان کی تصدیق کے بعد پی پی پی کے سینیٹر رحمٰن ملک نے آصف علی زرداری کا نام ای سی ایل میں ڈالنے سے متعلق سینیٹ اجلاس کے دوران بات کرنا چاہی تاہم چیئرمین سینیٹ نے انہیں بات کرنے سے روک دیا۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ نے وزارت داخلہ کو سابق صدر آصف علی زرداری اور پی پی پی رہنما فریال تالپور کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی ہدایت کی تھی۔

سپریم کورٹ نے جعلی اکاؤنٹس اور کئی اہم بینکوں کے ذریعے اربوں روپوں کی فرضی ٹرانزیکشنز کے حوالے سے تحقیقات پر ازخود نوٹس لیا تھا اور سماعت کے دوران 35 ارب روپے کی مشکوک ٹرانزیکشنز میں ملوث ہونے پر 3 بینکوں کے صدور اور چیف ایگزیکٹو افسران کے نام بھی ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم دیا تھا۔

دوسری جانب ایف آئی اے نے جعلی بینک اکاؤنٹس سے متعلق کیس میں تحقیقات کے لیے پی پی پی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور کو 11 جولائی کو طلب کیا تھا۔

ایف آئی اے کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے ادارے نے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) بھی تشکیل دے دی، جس کے سربراہ ڈائریکٹر ایف آئی اے سندھ منیر احمد شیخ ہوں گے۔

تاہم پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے شریک چیئرمین اور سابق صدر آصف علی زرداری اور فریال تالپور نے جعلی اکاؤنٹس کیس میں جواب جمع کرایا اور وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کے سامنے پیش ہونے کے لیے الیکشن کے بعد کی مہلت مانگ لی۔

خیال رہے کہ ایف آئی اے اسٹیٹ بینک سرکل نے جعلی اکاؤنٹس کیس میں بیان ریکارڈ کرانے کے لیے دونوں رہنماؤں کو طلب کیا تھا، جس پر آصف زرداری اور فریال تالپور نے ایف آئی اے کے سامنے پیش نہ ہونے کا فیصلہ کیا تھا۔

11 جولائی کو معروف وکیل فاروق ایچ نائیک کی وکلا کی ٹیم کے 2 جونیئر وکیل ایف آئی اے اسٹیٹ بینک کرائم سرکل میں پیش ہوئے اور آصف زرداری اور فریال تالپور کی جانب سے تحریری بیان جمع کروایا۔

تحریری بیان میں موقف اپنایا گیا کہ الیکشن کی مصروفیت کی وجہ سے آصف زرداری اور فریال تالپور پیش نہیں ہوسکتے، لہٰذا انتخابات کے بعد کا وقت دیا جائے، 25جولائی کے بعد پہلے ہفتے میں آصف زرداری اور فریال تالپور ایف آئی اے میں پیش ہوجائیں گے۔

ایک آدمی منی لانڈرنگ پر تالیوں سے استقبال کا کہہ رہا ہے: عمران خان

اسلام آباد: چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا ہےکہ ایک آدمی 300 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کرکے معصوم بن جاتا ہے اور پھر وہ کہتا ہے لاہور آمد پر تالیوں کے ساتھ استقبال کریں۔

اسلام آباد میں انصاف مسیحی برادری کنونشن سے خطاب کرتے ہوئےعمران خان نے کہاکہ پاکستان میں کسی بھی کمزور طبقے کو ان کے حقوق نہیں ملتے، ڈھائی کروڑ پاکستانی بچے اسکول نہیں جاتے، انصاف کی فراہمی ریاست کا فرض ہوتا ہے، جب معاشرے میں قانون کی بالادستی نہیں ہوتی تب کمزور مارا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک آدمی 300 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کرکے معصوم بن جاتا ہے، پھر وہ کہتا ہے لاہور آمد پرتالیوں کے ساتھ استقبال کریں، دنیا کا کوئی وزیراعظم منی لانڈرنگ میں پکڑا جائے وہ شرم سے نہیں نکلتا، منی لانڈرنگ کرنے والے وزیراعظم کو انڈے پڑتے ہیں۔

چیئرمین پی ٹی آئی کا کہنا تھاکہ ریمنڈ ڈیوس نے دن دیہاڑے دوقتل کردیئے لیکن ہمارا قانون اسے پکڑ نہیں سکتا، یہاں کمزور کے لیے کچھ اور طاقتور کے لیے قانون اور ہے، تمام طبقات کے لوگ کہہ رہے ہیں کہ انہیں حقوق نہیں مل رہے۔

’پی ٹی آئی نہ ہوتی تو ن لیگ، پی پی پی کی باریاں چلتی رہتیں‘

بعدازاں بورے والا میں جلسے سے خطاب میں عمران خان کا کہنا تھا کہ دو ہفتے رہ گئے ہیں، معلوم نہیں اللہ کو کیا منظور ہے، میرا دل کہہ رہا ہے تبدیلی کا انقلاب آنے والا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نہ ہوتی تو ان ہی دونوں جماعتوں کی باریاں چلتی رہتیں، عوام کے پاس ن لیگ اورپیپلز پارٹی کےعلاوہ کوئی چوائس نہیں تھی۔

عمران خان نے کہا کہ اب ان کے بچے باری لینے کے لئے تیار ہوگئے ہیں، بے بی بلاول نے زندگی میں نوکری نہیں کی، ایک گھنٹہ کام نہیں کیا اور ملک سنبھالنے آگیا۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ مریم نواز کہتی ہے لندن تو کیا پاکستان میں بھی پراپرٹی نہیں جبکہ بھائی کہتا تھا ساری پراپرٹی ہماری ہے۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی سزا پر شہباز اور حمزہ خوشی میں لڈو بانٹ رہے ہیں اور ہاتھ اٹھا کر مجھے دعا دے رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ لوگ قوم کو بھیڑ بکریاں سمجھتے ہیں، پہلے والدین لوٹتے ہیں پھر بچے تیار ہوجاتے ہیں۔

جن کا مکان اپنا نہیں تھا آج ان کے دبئی میں ٹاور ہیں، چیئرمین نیب

کوئٹہ: چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا ہے کہ جن کے پاس 6 مرلے کا مکان نہیں ہوتا تھا آج ان کے دبئی میں ٹاور ہیں کیا ان سے پوچھا نہ جائے کہ اتنا پیسہ کہاں سے آیا۔

کوئٹہ میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ احتساب کے عمل کو احسن طریقے سے مکمل کریں گے، شاہانہ انداز ملک اور عوام کی بربادی کا سبب بنیں گے تاہم اب احتساب بلا تفریق ہوگا اور سب کا ہوگا، اب احتساب پٹواری سے نہیں اوپر سے شروع ہوگا جب کہ کرپشن ختم کرنے کے عمل کو احسن طریقے سے انجام تک پہنچائیں گے۔

چیئرمین نیب نے کہا کہ نیب کوئی انتقامی کارروائی نہیں کررہا، بار بار کہا جاتا ہے کہ نیب کے اقدامات کی وجہ سے بیوروکریسی پریشان ہے، بیوروکریسی ریڑھ کی ہڈی ہے، نیب ہر وقت بیوروکریسی سے تعاون کرے گا، ہماری کوشش ہے کہ بیورو کریسی دبنگ طریقے سے آئین اور قانون کے مطابق فرائض انجام دے۔ ان کا کہنا تھا کہ بیوروکریسی کو یقین دلاتا ہوں کہ کوئی ایسا قدم نہیں اٹھایا جائے گا جس سے آپ کی تذلیل ہو، بیوروکریسی کو کسی ڈر خوف کی ضرورت نہیں تاہم بیوروکریسی اس بات کا خیال رکھے کہ شاہ سے زیادہ شاہ کی وفادار نہ بنے۔

جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ کرپشن دیمک نہیں کینسر ہے اور زوال کی بنیادی وجہ کرپشن ہے جب کہ نیب کی وجہ سے ملک کا کام رک گیا ایسا الزام سمجھ سے باہر ہے، نیب محتاط طریقے سے اپنا کام کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی زمین کو قدرت نے کتنی نعمتوں سے نوازا ہے لیکن سیندک اور ریکوڈک منصوبوں کا کیا حال ہوا سب کے سامنے ہے تاہم اہم ترین منصوبوں کی ناکامی میں ملوث افراد سے پوچھا جائے گا۔

چیئرمین نیب نے کہا کہ ذاتی یا سیاسی انتقام کے پراپیگنڈے کو مسترد کرتا ہوں، اربوں کی کرپشن میں ملوث لوگوں پر پھول نچھاور کیے جاتے ہیں، جن کے پاس 6 مرلے کا مکان نہیں ہوتا تھا آج ان کے دبئی میں ٹاور ہیں، کیا ان سے پوچھا نہ جائے کہ اتنا پیسہ کہاں سے آیا۔ انہوں نے کہا کہ نیب پر سیاسی بنیادوں پر کاروائیاں کرنے کا الزام ہے جس کو مسترد کرتاہوں، نیب کاسیاست سے کوئی تعلق نہیں ہے، جمہوریت کا ہر قدم عوام کی فلاح کے لیے ہوتا ہے، عوام جس کو چاہے اقتدار میں لے آئیں، نیب کا کوئی لینا دینا نہیں تاہم ہمارے ملک میں کرپشن اور کرپٹ لوگوں کی کوئی جگہ نہیں۔

پشاور خودکش دھماکے کے شہداء کی تدفین ، شہر میں سوگ کا سماں

پشاور: گزشتہ روز عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ کے دوران ہونےوالے خودکش حملے میں شہید ہونےوالے 10 افراد کی اجتماعی نماز جنازہ اداکردی گئی ہے جب کہ دہشتگردی کے واقعے کے بعد شہر کی فضا سوگوار ہے۔

گزشتہ روز الیکشن کے سلسلے میں عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ کے دوران خودکش دھماکا ہواتھا جس میں پی کے 78 سے اے این پی کے امیدوار بیرسٹر ہارون بلور سمیت 20 افراد شہید ہوگئے تھے۔ دھماکے میں شہید ہونےوالے 10 افراد کی اجتماعی نماز جنازہ رحمان بابا قبرستان عیسیٰ خیل جنازہ گاہ میں اداکردی گئی۔

ہارون بلور کی نماز جنازہ ادا کردی گئی

دوسری جانب عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما ہارون بلور کی نماز جنازہ وزیر باغ میں ادا کردی گئی ہے، نماز جنازہ کے موقع پر سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے اور خصوصی سیکیورٹی پلان تشکیل دیا گیا۔ بلور ہاؤس سے جنازہ گاہ تک سیکیورٹی کے 3 حصار قائم کئے گئے تھے جب کہ راستے میں تمام عمارات پر ماہر نشانہ باز تعینات تھے۔

جنازہ گاہ اور راستے میں پولیس فورس کی مختلف یونٹس کے 500 جوان تعینات تھے۔ جنازہ گاہ میں داخل ہونے والے تمام دروازوں پر واک تھرو گیٹ نصب تھے جب کہ شرکا کی تلاشی لی جارہی تھی۔ اس کے علاوہ نماز جنازہ کے دوران ڈرون کیمروں کے ذریعے فضائی نگرانی بھی کی گئی۔

شہر کی فضا سوگوار

دہشتگردوں کا نشانہ بننے والے بشیر بلور کے سیاسی وارث ہارون بلور کی بھی دہشتگردوں کے ہاتھوں شہادت پر پشاور کی فضا سوگوار ہے۔ شہر میں اہم کاروباری مراکز اور بازار بند ہیں جب کہ سیاسی سرگرمیاں بھی معطل ہوگئی ہیں۔

سرچ آپریشن اور گرفتاریاں

ایس ایس پی آپریشنز جاوید اقبال نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ہارون بلور پر حملے کے حوالے سے کوئی خصوصی انتباہ موجود نہیں تھا، ہارون بلور کو 2 جب کہ دیگر امیدواروں کو 1 پولیس گارڈ دیا گیا تھا، عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ کے لئے پولیس سے رابطہ نہیں کیا گیا تھا، کارنر میٹنگز کیلئے نیا سیکیورٹی پلان تشکیل دیا جا رہا ہے، دھماکے کے بعد سرچ آپریشن میں 30 سے 40 مشتبہ افراد کو حراست میں لیا ہے۔

مقدمے کا اندراج

خودکش دھماکے کی ایف آئی آر تھانہ سی ٹی ڈی میں درج کر لی گئی، گزشتہ روز ہونے والے خودکش دھماکے کا مقدمہ کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) میں اندراج کے لیے تھانہ یکہ توت نے مراسلہ بھجوایا تھا۔  مراسلے میں دہشت گردی اور دیگر دفعات کو شامل کیا گیا تھا، مراسلے کے متن میں کہا گیا تھا کہ خودکش دہشت گرد کا سر اور دیگر جسمانی اعضاء مل گئے ہیں، جو ڈی این اے ٹیسٹ کے لئے بھجوائے جائیں گے۔

جے آئی ٹی تشکیل

آئی جی خیبر پختونخوا محمد طاہر کا کہنا ہے کہ خودکش حملے کی تحقیقات کے لیےجوائنٹ انٹیروگیشن ٹیم (جے آئی ٹی) تشکیل دے دی گئی ہے جس میں 7 افسران شامل ہیں۔ جے آئی ٹی کی سربراہی ڈی آئی جی سی ٹی ڈی کریں گے اور تفتیشی ٹیم سے ایک ہفتہ کے دوران پیر تک رپورٹ طلب کی گئی ہے۔

تحریک انصاف کا سوگ

تحریک انصاف نے پشاور میں خودکش حملے پر ایک روزہ سوگ اور انتخابی مہم روکنے کا اعلان کیا ہے۔ اس حوالے سے پارٹی کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات فواد چوہدری نے اپنے بیان میں کہا کہ عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ پر حملہ نہایت سفاکانہ اور قابل مذمت ہے، ہارون بلور اور عوامی نیشنل پارٹی کے دیگر کارکنان کی شہادتوں سے پورا ملک سوگوار ہے، تحریک انصاف نے بلور خاندان اور عوامی نیشنل پارٹی کی قیادت کیساتھ مکمل اظہار یکجہتی کا فیصلہ کیا ہے اور آج پختونخوا میں اپنی تمام انتخابی سرگرمیاں منسوخ کررہے ہیں،اس کے علاوہ ایک روزہ سوگ کے دوران پختونخوا میں تحریک انصاف کے پرچم بھی سرنگوں رہیں گے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز دھماکا پشاور کے علاقے یکہ توت میں عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ کے دوران ہواتھا۔ عینی شاہدین کاکہنا ہے کہ ہارون بلور تقریب کے مہمان خصوصی تھے وہ اسٹیج کی طرف جارہے تھے کہ حملہ آور نےان کے قریب پہنچ کر خود کو دھماکے سے اڑالیا۔ بم ڈسپوزل اسکواڈ کے مطابق دھماکے میں کم ازکم 8 کلوگرام بارودی مواد استعمال کیاگیا تھا۔ دھماکے میں اے این پی رہنما ہارون بلور سمیت 20 افراد شہید جب کہ 60 سے زیادہ افراد زخمی ہوئے ہیں۔

شہادت سے کچھ روز قبل ہارون بلور کی ایکسپریس نیوز سے گفتگو

ہم غیر معمولی طاقتوں سے لڑرہے ہیں جو مستحکم پاکستان نہیں دیکھ سکتیں، آرمی چیف

راولپنڈی: آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہے کہ ہم غیر معمولی طاقتوں سے لڑرہے ہیں جو ایک مستحکم اور پر امن پاکستان نہیں دیکھ سکتیں۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے ہارون بلور کی شہادت پر ان کے اہل خانہ اور اے این پی سے تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے دہشت گرد حملے کی مذمت کی۔

آرمی چیف کا کہنا تھا کہ ہم غیر معمولی طاقتوں سے لڑرہے ہیں، جو ایک مستحکم اور پر امن پاکستان نہیں دیکھ سکتیں جب کہ ہمارا عزم غیر متزلزل ہے اور انشاء اللہ ہم انہیں شکست دے کر رہیں گے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کی انتخابی مہم کے دوران خودکش دھماکےمیں اے این پی کے مرحوم رہنما بشیر بلور کے بیٹے ہارون بلور سمیت 20 افراد شہید ہوگئے تھے۔

حمزہ علی عباسی کا ڈیموں کی تعمیرکے لیے 3 لاکھ روپے کا عطیہ

کراچی: نامور پاکستانی اداکار اور سماجی رہنما حمزہ علی عباسی نے بھاشا اور مہمند ڈیم کی تعمیر کے لیے ڈیم فنڈ میں 3 لاکھ روپے جمع کرادئیے۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نےملک میں پانی کے بحران کے خدشے کے پیش نظروفاقی حکومت کو فوری طور پر بھاشا  اورمہمند ڈیم کی تعمیر کرنے کے لیے سپریم کورٹ کے رجسٹرار کے نام ایک اکاؤنٹ کھولنے کا حکم دیاتھا اور قوم سےڈیموں کی تعمیر کے لیے اس اکاؤنٹ میں پیسہ جمع کرانے کی بھی اپیل کی تھی۔ چیف جسٹس نےڈیموں کی تعمیر کے لیے خود 10 لاکھ روپے کا عطیہ بھی دیا ہے۔

چیف جسٹس کے اس نیک کام میں حصہ ڈالتے ہوئے نامور پاکستانی اداکار، میزبان اور سماجی رہنما حمزہ علی عباسی نے بھی 3 لاکھ روپے جمع کرائے ہیں جس کا ذکر انہوں نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر کیا۔ انہوں نے لکھا ’’میں نےاپنے حصے کاکام کردیا ہے، اور اب آپ سب لوگوں سے التجا کررہاہوں کہ آپ بھی اس کار خیر میں اپنا حصہ ڈالیں۔ مجھے چیف جسٹس اورسپریم کورٹ پر پورا بھروسہ ہے، انہوں نے یہ فنڈ پاکستان میں پانی کے بحران کی صورتحال کے تحت قائم کیا ہے، مہربانی کرکے آپ سب دیامیر بھاشا ڈیم اور مہمند ڈیم فنڈز میں حصہ ڈالیں۔‘‘

اس کے ساتھ ہی حمزہ علی عباسی نےایک اور ٹوئٹ کرتے ہوئےاس بات کی وضاحت کی کہ ’’میں نے یہ پوسٹ لوگوں کی توجہ حاصل کرنے کے لیے نہیں کی،  بلکہ یہ ٹوئٹ کرنے کا مقصد لوگوں کی توجہ ملک میں پانی کے مسئلے کی طرف مبذول کرانا ہے اور میں اس ٹوئٹ کے ذریعے لوگوں سے درخواست کرنا چاہتا ہوں کہ اس فنڈ میں ضرور حصہ ڈالیں۔‘‘

واضح رہے کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ڈیموں کی تعمیر کے لیے قائم کردہ فنڈمیں اپنی ایک ماہ کی تنخواہ دیں گے جب کہ مسلح افواج کے افسران 2 دن اورسپاہی ایک دن کی تنخواہ اس فنڈ میں دیں گے۔

دوسری جانب حبیب بینک کے سربراہ نے ڈیم کی تعمیر کے لیے 10 کروڑ روپے دینے کا اعلان کیا ہے،اس کے علاوہ اسٹیٹ بینک کے تمام ملازمین نے بھی اپنی دودن کی تنخواہیں ڈیم فنڈ میں دینے کا اعلان کیا ہے۔

Google Analytics Alternative