Home » 2019 » February » 11

Daily Archives: February 11, 2019

حکومت شفاف ہوئی تو ملک تیزی سے ترقی کرے گا، وزیراعظم

دبئی: وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ ترقی کی بنیاد صرف بہتر طرز حکمرانی ہے اور حکومت شفاف ہوئی تو ملک تیزی سے ترقی کرے گا۔

دبئی میں ورلڈ گورنمنٹ سمٹ سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ خوشی ہے کہ اسلامی دنیا میں بھی اس طرح کی کانفرنس ہورہی ہے، 60 کی دہائی میں پاکستان تیزی سے ترقی کررہا تھا اور یو اے ای کی ایئرلائن کو پی آئی اے نے معاونت فراہم کی لیکن بدقسمتی سے پاکستان ترقی کی رفتار برقرار نہیں رکھ سکا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کانفرنس کے شرکاء کو بتانا چاہتا ہوں کہ کرکٹ سے سیاست میں کیسے آیا، یہ بھی بتانا چاہتا ہوں کہ میں پاکستان کے لیے کیا چاہتا ہوں، میری والدہ کا انتقال کینسر کے باعث ہوا تو احساس ہوا پاکستان میں کینسرکا کوئی اسپتال نہیں، کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بعد اسپتال بنانے پرتوجہ دی جب کہ ہم خیرات میں بہت آگے اور ٹیکس دینے میں بہت پیچھے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ جب لوگ اتنے اچھے ہیں توٹیکس کیوں اد انہیں کرتے کیوں کہ ماضی میں ٹیکس حکمرانوں کی عیاشیوں پرخرچ ہوتے رہے اور اسی لیے لوگ ماضی کی حکومتوں پراعتماد نہیں کرتے تھے اور ٹیکس نہیں دیتے تھے ، کرپشن سے ٹیکس کا پیسا چوری ہوتا ہے اس لیے اصلاحات مشکل ہیں مگر ضروری ہیں۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ترقی کی بنیاد صرف بہتر طرز حکمرانی ہے، حکومت شفاف ہوئی تو ملک تیزی سے ترقی کرے گا، معاشی اصلاحات سے سرمایہ کار پاکستان کا رخ کررہے ہیں لہذا دیگر سرمایہ کار بھی پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کا یہ موقع ضائع نہ کریں اور پاکستان میں سیاحت کے سب سے زیادہ مواقع ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کے پاکستان سے تعاون کو سراہتے ہیں اور ہم مالیاتی خسارہ کم کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔

دبئی میں وزیراعظم عمران خان سے ابوظہبی کے ولی عہد کی ملاقات

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان ایک روزہ دورے پر پہنچ گئے جہاں ان سے ابوظہبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زید النہیان نے ملاقات کی۔

وزیراعظم عمران خان ساتویں عالمی سربراہی اجلاس میں شرکت کے لیے ایک روزہ دورے  پر دبئی پہنچ گئے۔ ابوظہبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زید النہیان نے ان کا استقبال کیا۔

بعدازاں دونوں رہنماؤں کے درمیان باضابطہ ملاقات ہوئی جس میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر خزانہ اسد عمر، وزیر اطلاعات فواد چوہدری، وزیر بحری امور علی زیدی، معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز ذوالفقار بخاری اور دیگر اعلیٰ حکام نے بھی شرکت کی۔

دورے کے دوران وزیراعظم نے اپنے  لبنانی ہم منصب سعد الحریری اور ایم ایف کی سربراہ سے بھی الگ الگ ملاقاتیں کیں۔

وزیراعظم عمران خان ورلڈ گورنمنٹ سمٹ سے خطاب کریں گے جس میں مستحکم اورخوشحال پاکستان کے لیے اپنے وژن کواجاگر اورملکی معیشت کے مختلف سیکٹرز میں سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کریں گے۔

چھٹی امن مشقوں کا انعقاد، عالمی امن کیلئے پاک بحریہ کے عزم کا ثبوت

adaria

بدلتی ہوئی عالمی جغرافیائی سیاست بحر ہند میں میری ٹائم ڈائنامکس پر غور و فکر کے عنوان کے تحت نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف میری ٹائم افئیرز کے زیر اہتمام سہ روزہ انٹر نیشنل میری ٹائم کانفرنس منعقد ہورہی ہے، صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی افتتاحی سیشن کے مہمان خصوصی تھے۔ بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے صدر مملکت کا کہنا تھا کہ علاقائی اور غیر علاقائی بحری قوتوں کی موجودگی سے بحر ہند کی اہمیت میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے۔انہوں نے کہا کہ بحر ہند میں امن و استحکام کے حصول کیلئے پاک بحریہ کی کاوشیں قابل ستائش ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمارے بحری تجارتی راستوں کی حفاظت کے لیے پرامن سمندر ناگزیر ہے۔اس موقع پر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بحری افواج کے سربراہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی کا کہنا تھا کہ امن مشق میں تمام ممالک ’امن کے لیے متحد‘ ہونے کے ایک عزم کے ساتھ شرکت کر رہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ پاک بحریہ نے بحر ہند میں علاقائی میری ٹائم سیکیورٹی پیٹرول کے تحت خلیج عدم میں تجارتی جہازوں کی سیکیورٹی کا آغاز کیا ہے۔میری ٹائم سیکٹر کی آگاہی میں نیشنل انسٹیٹیوٹ آف میری ٹائم افیئرز اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ پاک بحریہ کی جانب سے کثیرالقومی بحری مشقوں امن 2019 کا افتتاح جمعہ 8فروری کو ہوا تھا۔پانچ روزہ بحری مشقوں میں دہشت گردی، اسمگلنگ اور بحری قزاقوں سے نبرد آزما ہونے کی مشقیں ہونگی۔ امریکہ، برطانیہ اور جاپان سمیت پینتالیس ممالک کی بحریہ کے مندوبین بحری مشقوں میں شرکت کر رہے ہیں۔ دیگر ممالک میں برازیل، روس، سعودی عرب، نائجیریا، ملائیشیا، لیبیا اور چین کے وفود بھی شامل ہیں۔ شمالی بحیرہ عرب میں پانچ روزہ بحری مشقوں کا مقصد دہشت گردی، اسمگلنگ اور بحری قزاقوں کا مقابلہ کرنے کے لیے کثیر القومی تعاون کو فروغ دینا ہے۔ پاک بحریہ کے مطابق ان مشقوں میں شرکت کے لیے متعدد ممالک نے بحری جہاز اور بحری عملہ بھیجا ہے۔امن مشق 2019 کے حوالے سے پاک بحریہ نے خصوصی نغمے پر بنی ’ہم متحد‘ کی ویڈیو بھی جاری کی ہے۔

پاکستان 2007 ء سے ان بحری مشقوں کی میزبانی کر رہا ہے جو ہر دو سال بعد باقاعدگی سے منعقد ہوتی ہیں۔پاکستان نیوی ملک کی بحری حدود اور سمندری و ساحلی مفادات کی محافظ اور دفاعی افواج کا حصہ ہے۔یہ1,046کلومیٹر لمبی ساحلی پٹی کے ساتھ ساتھ بحیرہ عرب اور اہم بندرگاہوں و فوجی اڈوں کے دفاع کی بھی ذمہ دار ہے۔پاک بحریہ 1947 میں پاکستان کی آزادی کے بعد وجود میں آئی۔پاکستان کے دفاع کے لیے پاک بحریہ کا بنیادی کردار رہا ہے، خصوصاً 65ء کی جنگ میں اس نے بھارت کی کمر توڑ کر رکھ دی تھی۔یہ جدت اور توسیع کے مراحل سے گزر رہی ہے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بھی اس کا اہم کردار رہا ہے۔ 2001 سے پاک بحریہ نے اپنی آپریشنل گنجائش کو بڑھا کر عالمی دہشت گردی، منشیات سمگلنگ اور قزاقی کے خطرے کا مقابلہ کرنے کی قومی اور بین الاقومی ذمہ داری میں تیزی لائی ہے۔گوادر بندر گاہ اور سی پیک جیسے عظیم منصوبے کے بعد اسکی ذمہ داریوں میں بے پناہ اضافہ ہو گیا ہے کیونکہ سمندری راستے کو پر امن رکھنے کی ذمہ داری اب اس کے کندھوں پر آن پڑی ہے۔پاک بحریہ کے سربراہ نے بھی اس ذمہ داری کو نبھانے کا عزم کرتے کا کہا کہ پاک بحریہ تمام ملکی بندرگاہوں کی حفاظت اور انتظام کی ذمہ دار ہے،دنیا کی90فیصد تجارت سمندری راستوں سے ہورہی ہے، سمندروں میں امن و سلامتی کا قیام مشترکہ ذمہ داری ہے۔ کانفرنس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے مہمان خصوصی صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے بلیو اکانومی اور بحری وسائل کے موثر استعمال کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یہ امر پاکستان کے بہتر مستقبل کے لئے کلیدی اہمیت کا حامل ہے۔ بحر ہند دنیا بھر کیلئے خوراک،میری ٹائم نقل وحمل اور توانائی کی سپلائی کا اہم راستہ ہے اور اس خطے میں موجود بڑی قوتوں کی یہاں موجودگی موجودہ پیچیدہ سیکیورٹی ماحول میں اسکی اہمیت کو مزید بڑھاتی ہے۔صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے یہ بھی کہا کہ امن2019ء کی صورت میں خطے کی اور عالمی بحری قوتوں کے ساتھ مشترکہ مشقیں عالمی امن اور خوشحالی کے لئے پاکستان کے عزم کی مظہر ہیں۔پاکستان خطے کا اہم ملک ہونے کے حیثیت سے خطے کے تمام ممالک کے ساتھ مل جل کر کام کرنا چاہتا ہے تاکہ خطے کی عوام کے لئے امن، استحکام اور معاشی خوش حالی کے مشترکہ مقاصد حاصل کئے جا سکیں‘۔ پاکستان ہمیشہ سے عالمی میری ٹائم کو آپریشن کا خواہاں رہا ہے اور کمبائنڈ میری ٹائم ٹاسک فورس150اور151کا اولین رکن ہونے کے ناطے افرادی اور مادی معاونت کے حوالے سے ان ٹاسک فورسز میں سب سے زیادہ اعانت کرتا رہا ہے۔اسی طرح قومی سطح پر پاک بحریہ ریجنل میری ٹائم سیکیورٹی پیٹرولنگ کا آغاز کر چکی ہے جس کا مقصد بحر ہند کے اہم حصوں کی سیکیورٹی یقینی بنانا ہے۔بلاشبہ یہ بات درست اور بجا ہے کہ روائتی اور غیر روائتی خطرات کو مد نظر رکھتے ہوئے جنگی صلاحیتوں کو بہتر بنانے کی خاطر دنیا بھر کی بحری افواج کو ایک پلیٹ فارم پر اکٹھا کرنا اور چھٹی امن مشق کا انعقاد عالمی امن اور ہم آہنگی کے فروغ کے لئے پاک بحریہ کے عزم کا ثبوت ہے ۔
مرض کے علاج کے لئے اقدامات تیز کئے جائیں
وزیر اعظم عمران خان ننکانہ صاحب کے علاقے بلوکی میں پلانٹ فار پاکستان مہم کے آغاز کے بعد تقریب سے خطاب کرتے ہوئے جس مرض کی تشخیص کی ہے وہ سو فیصد درست ہے کہ ملک کو دو ’این آر اوز‘ نے تاریخی نقصان پہنچایا اور ملک کی موجودہ معاشی زبوں حالی کی وجہ یہی این آر او ہیں۔ایک این آر او جنرل (ر)پرویز مشرف نے سال 2000ء میں نواز شریف کو دے کر انہیں ملک سے باہر جانے دیا گیا اور ان کے کرپشن کے کیس روک دیئے گئے جبکہ دوسری جانب آصف علی زرداری کے سوئس کیس حکومت جیت گئی لیکن این آر او کی وجہ سے اس کیس کو بھی چھوڑ دیا گیا۔عمران خان کا یہ کہنا بھی بجا ہے کہ ان 2 این آر اوز سے طاقتور لوگوں نے سمجھا چوری کوئی بری چیز نہیں، جتنی مرضی چوری کرو اس ملک میں کسی کو نہیں پکڑا جاتا۔ ان این آر او کا نتیجہ یہ ہوا کہ ملک کا قرضہ6 ہزار ارب روپے سے بڑھ کر30ہزار ارب روپے تک پہنچ گیا ہے۔ یہ سب وجوہات اپنی جگہ اور اس مرض کی تشخیص بھی درست ہے ،ان کا تدارک وقت کا تقاضہ ہے لیکن اس وقت ضرورت اس امر کی ہے کہ ملک کو درست سمت پر ڈالنے کے لیے عملی اقدامات تیز کیے جائیں۔اپوزیشن یہی چاہتی ہے کہ حکومت بیان بازی میں الجھی رہے اور اس کی توجہ عملی اقدامات سے ہٹی رہے۔ یہ صورتحال مزید کچھ عرصہ چلتی رہی تو اس کا نقصان حکومت کو ہی ہوگا لہذا حکومت عملی اقدامات کی طرف توجہ دے۔

مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد آپریشن کے نام پر مزید 5 کشمیری شہید

سرینگر: بھارتی فورسز نے مقبوضہ کشمیر میں مظالم کا سلسلہ مزید تیز کرتے ہوئے نام نہاد آپریشن کے نام پر مزید 5 کشمیریوں کو شہید کردیا۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق بھارتی فورسز نے ضلع کلگام کے علاقے کیلام میں کارروائی کی جس کے دوران علاقے کا محاصرہ کرنے کے بعد 5 کشمیریوں کو گولیاں مار کر شہید کردیا۔

قابض بھارتی فورسز کی کارروائی کے خلاف سیکڑوں نہتے کشمیری سڑکوں پر نکل آئے اور شدید احتجاج کیا۔

قابض فورسز نے ایک مرتبہ پھر بربریت کا مظاہرہ کیا اور نہتے شہریوں پر پیلٹ گن کا استعمال اور آنسو گیس کی شیلنگ کی جس کے نتیجے میں 12 افراد زخمی ہوگئے۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مشترکہ حریت قیادت کی کال پر مقبوضہ کشمیر میں کل مقبول بٹ کی برسی پر مکمل ہڑتال کی جائے گی۔

حریت قیادت کا کہنا ہے کہ کشمیر کی آزادی کے لیے عظیم لیڈروں نے بڑی جدوجہد اور قربانیاں دیں، افضل گورو اور مقبول بٹ کی شہادت کشمیر کی تاریخ کا شاندار باب ہیں۔

یاد رہے کہ بھارت نے کشمیری حریت رہنما محمد مقبول بٹ کو دلی کی تہاڑ جیل میں 11 فروری 1984 کو پھانسی دی تھی۔

پاکستان سے تعاون کیلئے تیار ہیں، آئی ایم ایف کی عمران خان کو یقین دہانی

 وزیراعظم عمران خان نے دبئی میں ورلڈ گورنمنٹ سمٹ کی سائیڈ لائن میں عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹین لیگارڈ سے ملاقات کی۔

ملاقات سے متعلق پاکستانی حکام نے کوئی تفصیلات جاری نہیں کیں تاہم آئی ایم ایف کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق کرسٹین لیگارڈے نے ’وزیراعظم سے ملاقات کو اچھی اور سود مند‘ قرار دیا۔

کرسٹین لیگارڈے نے کہا کہ ’ملاقات میں آئی ایم ایف کے امدادی پیکج کے تناظر میں حالیہ اقتصادی پیش رفت اور امکات پر بات چیت ہوئی‘۔

انہوں نے وزیراعظم سے ملاقات میں زور دیا کہ ’آئی ایم ایف پاکستان کے ساتھ تعاون کے لیے تیار ہے‘۔

آئی ایم ایف کے چیف نے کہا کہ کرسٹین لیگارڈ نے کہا تھا کہ پاکستان ’فیصلہ کن پالیسیوں اور اقتصادی اصلاحات کے لیے مضبوط پیکج‘ سے اپنی معیشت کو بحال کرسکتا ہے۔

کرسٹین لیگارڈ نے پاکستان تحریک انصاف کی پالیسی کے بارے میں کہا کہ ’غریبوں کو تحفظ اور مضبوط گورننس کے ذریعے لوگوں کا معیار زندگی بہتر کیا جاسکتا ہے‘۔

کارتک آریان ’لُکا چھپی‘ کے دوران زخمی

بالی وڈ کے نوجوان اداکار کارتک آریان نے فلم ’سونو کے تیتو کی سوئٹی‘ سے ایسی مقبولیت حاصل کی کہ ان کے مداحوں کی فہرست میں تیزی سے اضافہ ہوگیا، اس کے بعد سیف علی خان کی بیٹی و اداکارہ سارہ علی خان نے بھی کارتک کیلئے پسندیدگی کا اظہار کیا اور یوں ان کی جانب مداحوں کی دلچسپی مزید بڑھ گئی۔

بھارتی نیوز سائٹ دکن کرونیکل کی رپورٹ کے مطابق فلم ’لکا چھپی‘ کی عکس بندی آخری مراحل میں ہے جس کا ایک گانا شوٹ کرتے ہوئے کارتک آریان زخمی ہوگئے ہیں۔

گانے کے لیے رقص کرتے وقت کارتک کی ٹانگ میں ایسی چوٹ لگی کے وہ چلنا تو دور کھڑے ہونے کے قابل بھی نہیں رہے تاہم ڈاکٹرز نے انہیں آرام کا مشورہ دیا ہے۔

 کارتک آریان نے اپنے مداحوں کو بتایا کہ یہ ایک معمولی سی چوٹ تھی جو عکس بندی کے دوران لگ گئی لیکن اب ٹھیک ہوں، ایک اداکار کو کچھ رسک لینے پڑتے ہیں ورنہ مزہ نہیں آئے گا چاہے وہ اداکار کے لیے ہو یا ناظرین کے لیے‘۔

کارتک اس وقت اپنی نئی فلم ’لکا چھپی‘ ریلیز ہونے کا انتظار کر رہے ہیں جس میں ان کے ہمراہ اداکارہ کریتی سنن نے مرکزی کردار ادا کیا ہے جو یکم مارچ کو سینما گھروں کی زینت بنے گی۔

فلم ’لکا چھپی‘ ایک رومانوی کامیڈی فلم ہے جس میں محبت اور شادہ شدہ زندگی کے مسائل کی عکاسی دلچسپ انداز میں ہوگی۔

فلم ’ایک لڑکی کو دیکھا تو ایسا لگا‘ کو آسکرلائبریری میں شامل کرنے کا فیصلہ

ممبئی: نامور بالی ووڈ اداکارہ سونم کپور اور انیل کپور کی فلم ’’ایک لڑکی کو دیکھا تو ایسا لگا‘‘ کو آسکرلائبریری میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ 

اکیڈمی آف موشنز پکچرز آرٹس اینڈ سائنس (اے ایم پی اے ایس) ہم جنس پرستی جیسے حساس موضوع پر مبنی بالی ووڈ فلم ’’ایک لڑکی کو دیکھا تو ایسا لگا‘‘ کو آسکر لائبریری میں شامل کرنے کے فیصلے پر غور کررہی ہے۔ اس حوالے سے اے ایم پی اے ایس نے فلم کے ہدایت کار و پروڈیوسر سے آسکرلائبریری میں رکھنے کے لیے فلم کی اسکرین پلے کی کاپی کا مطالبہ کیا ہے۔

فلم میں ہم جنس پرست لڑکی کا مرکزی کردار ادا کرنے والی اداکارہ سونم کپور کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ یہ فلم ان کے لیے بہت خاص ہے، کیونکہ یہ ان کی اوران کے والد انیل کپور کی ایک ساتھ پہلی فلم ہے، اس کے علاوہ فلم میں معاشرے کے افراد کو ایک پیغام دینے کی کوشش کی گئی ہے جس پر بات کرنی ضروری ہے۔

سونم نے کہا میں خوش ہوں کہ میری فلم کو آسکر لائبریری کا حصہ بنائے جانے کا انتخاب کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ میں ان تمام لوگوں کا شکریہ ادا کرنا چاہتی ہوں جنہوں نے میری فلم کو اتنا پیار دیا۔

ترکی کا چین سے حراستی کیمپ بند کرنے کا مطالبہ

انقرہ: ترکی نے چین میں اقلیتی مسلم اویغور برادری کے موسیقار کی حراستی کیمپ میں ہلاکت پر حراستی کیمپوں کو بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق ترکی کے وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر شدید احتجاج کرتے ہوئے چین سے حراستی مراکز بند کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

ترجمان وزرات خارجہ حامی اکسوی نے مزید کہا کہ چینی صوبے سنکیانگ میں مسلم کمیونٹی اویغور کے ساتھ بدترین سلوک کیاجا رہا ہے اور سنگین بنیادی انسانی حقوق میں حالیہ 2 برسوں میں شدت آ گئی ہے۔

ترجمان حامی اکسوی نے کہا کہ اویغور کے کیمپوں اور جیلوں میں تشدد کیا جاتا ہے اور سیاسی و مذہبی نظریات پر برین واشنگ کی جاتی ہے اور یہ معاملہ عالمی سطح پر بھی اجاگر ہونے لگا ہے۔

ترک حکومت کی جانب سے یہ بیان چین کے صوبے سنکیانگ کے حراستی کیمپ میں 8 سال سزا کاٹنے والے موسیقار عبد الرحیم حیات کی ہلاکت کے بعد سامنے آیا ہے۔ ان حراستی کیمپوں میں 10 لاکھ اویغور مسلمانوں کو حراست میں رکھا گیا ہے۔

دوسری جانب چین نے موقف اختیار کیا ہے کہ یہ کیمپ از سرنو تعلیم (Re-Education) کے بحالی مراکز ہیں جہاں لوگوں کو اپنے اجداد کی روایتوں اور نظریات سے جوڑا جاتا ہے۔

واضح رہے کہ اویغور چین کے مغربی علاقے سنکیانگ میں آباد  مسلم آبادی والا علاقہ ہے، یہ لوگ ترکی سے مماثلت رکھنے والی زبان بولتے ہیں اور انہیں ترکی النسل سمجھا جاتا ہے۔

 

Google Analytics Alternative