Home » 2019 » August » 05

Daily Archives: August 5, 2019

بھارتی جارحیت کی صورت میں پاکستان منہ توڑ جواب دے گا، قومی سلامتی کمیٹی

اسلام آباد: بھارت کی جانب سے کلسٹر بم حملے کے بعد صورتحال پر غور کے لیے وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس ہوا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس ہوا جس میں وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی، وزیردفاع پرویز خٹک، وزیر داخلہ اعجاز شاہ، وزیراعظم آزاد کشمیر، وفاقی وزیر برائے امور کشمیر، معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان اور  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، ایئرچیف، نیول چیف سمیت ڈی جی آئی ایس آئی نے شرکت کی۔

وزیراعظم کی زیر صدارت اجلاس میں قومی سلامتی کمیٹی بھارتی فوج کے کشمیر میں کلسٹر بم کے استعمال کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر غور کیا گیا۔

بعدازاں اجلاس کا اعلامیہ جاری کردیا گیا جس میں کہا گیا ہے کہ بھارت کی جانب سے کلسٹر بموں کے استعمال اور دہشتگردانہ کارروائیاں قابل تشویش ہیں جب کہ بھارتی عزائم خطے اور بین الاقوامی لائن آف کنٹرول کی جغرافیائی حیثیت تبدیل کرنے کی مذموم کوشش ہے۔

اعلامیہ کے مطابق شہری آبادی پر کلسٹر بموں کا استعمال پاکستان کو اشتعال دلانے کی سازش ہے تاہم کسی بھی بھارتی جارحیت کی صورت میں پاکستان منہ توڑ جواب دے گا، پاکستانی قوم متحد ہے اور اپنی مسلح افواج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔

اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ  پاکستان کشمیریوں کی اخلاقی اور سفارتی حمایت جاری رکھے گا جب کہ  پاکستان کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی قراردادوں کے زریعے چاہتا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نے آج قومی سلامتی کا اجلاس طلب کرلیا ہے، قومی سلامتی کا اجلاس وادی نیلم میں بھارت کی جانب سے کلسٹر بم حملے کے تناظر میں طلب کیا گیا جس میں قومی سلامتی کے امور زیر غور آئیں گے اور بھارتی فوج کے کشمیر میں کلسٹر بموں کے استعمال کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر غور کیا جائے گا

کلسٹر بموں کا استعمال ، بھارت ہوش کے ناخن لے

حالیہ دنوں میں پاکستان کے عالمی برادری کےساتھ استوار ہوتے نئے تعلقات کے بعد مودی انتظامیہ انگاروں پر لوٹنے لگی ہے ۔ اسکا ثبوت کنٹرول لائن پر اس کی وحشیانہ بمباری سے ملتا ہے جس میں اب بھارتی فورسز کلسٹر بم استعمال کرنے لگی ہیں ۔ کلسٹربموں کے ٹھوس شواہد بھی سامنے ;200; چکے ہیں ۔ بھارتی فوج نے آزاد جموں و کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے نزدیک ;200;باد شہریوں کو کلسٹر بم کے ذریعے نشانہ بنایا ہے جو جنیوا اور عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی ہے ۔ پاک فوج کے تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر)کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں بتایا گیا ہے کہ30اور31جولائی کی درمیانی شب وادی نیلم پر بھارتی فورسز نے شیلنگ کے دوران کلسٹر بم کا استعمال کیا ۔ جسکے نتیجے میں ایک4سالہ بچے سمیت2 شہری شہید جبکہ11زخمی ہوگئے تھے، جن کی حالت تشویشناک ہے ۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ جنیوا کے کلسٹر ایمونیشن کنونشن کے تحت عام شہریوں پر کلسٹر بم کا استعمال ممنوع ہے ۔ بھارت کا جنگی جنون تمام بین الاقوامی قوانین کے منافی ہے جو بھارتی فوج کے اصل کردار اور اخلاقی قدر کو کھول کر دنیا کے سامنے لاتا ہے ۔ بین الاقوامی قوانین کی کھلم کھلا خلاف ورزی پر ;200;ئی ایس پی آر نے بجا طور پر بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ بھارت کی جانب سے کلسٹر ہتھیاروں کے استعمال کا نوٹس لے ۔ ادھر وزارت خارجہ نے بھی اس خلاف ورزی پر عالمی برادری سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت کی جانب سے ایل او سی پر کلسٹر بم کا استعمال کرکے جینواکنونشن کی کھلی خلاف ورزی کی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کلسٹر بم کا استعمال کرکے بہت خطرناک کھیل کھیل رہا ہے،ایسی کارروائیوں سے خطے کے امن کو شدید خطرات لاحق ہیں ۔ بلاشبہ جرمنی کے شہر ڈبلن میں 2008 میں منظور ہونے والے کنونشن کے تحت کلسٹر بموں کی تیاری، ذخیرہ کرنے، منتقلی اور استعمال پر پابندی عائد ہے اور دنیا کے 100 سے زائد ممالک اس کنونشن پر دستخط کر چکے ہیں ۔ کلسٹر بم ایک ایسا بڑا بم ہوتا ہے جسکے اندر مزید چھوٹے چھوٹے بم ہوتے ہیں ،اس بم کے علاقے میں گرنے کے بعد اس سے نکلنے والے چھوٹے بم وسیع علاقے میں پھیل کر تباہی و بربادی پھیلا دیتے ہیں ۔ دفاعی ماہرین کے مطابق ایک کلسٹر بم کے اندر مزید2000ہزار تک چھوٹے بم موجود ہو سکتے ہیں ۔ ان بموں کا استعمال1940کی دہائی میں شروع ہوا اور عام شہری ;200;بادی نے اسکی بھاری قیمت چکائی ۔ جس پر ریڈ کراس نے تشویش کا اظہار کیا اور یو این سے اس سفاکی کو روکنے کا مطالبہ کیا ۔ 2007 میں ناروے نے ’اوسلو پراسیس‘ کے نام سے کلسٹر بموں کا استعمال روکنے کی کوششوں کا ;200;غاز کیا ۔ کم و بیش ایک سال سے زائد عرصہ کی کوشش سے3 مئی 2008کو جرمنی کے شہر ڈبلن میں کنونشن ;200;ن کلسٹر امیونیشنزمنظور ہوا ۔ اب یہ عالمی برادری پر ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ نوٹس لے ۔ وزارت خارجہ نے عندیہ دیا ہے کہ وہ اس معاملے کو اقوام عالم کے سامنے رکھے گا تاہم دریں اثناء ضروری ہے کہ وہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو خصوصی مراسلہ لکھے ۔ صدر ٹرمپ پہلے ہی تنازعہ کشمیر کے حل میں اپنی دلچسپی کا اظہار کر چکے ہیں ، ایک نہیں دو بار انہوں نے ثالثی کی پیشکش کی ہے ۔ لوہا گرم ہے امریکی انتظامیہ کو حقائق سے پوری طرح ;200;گاہ رکھا جائے ۔ صرف یہی نہیں کہ بھارت نے پہلی بار کسی عالمی معاہدے کی ساکھ خاک میں ملائی ہے بلکہ یو این کی کشمیر پر جملہ قراردوں کو پچھلے ستر سال سے جوتی کی نوک پر رکھے ;200; رہا ہے ۔ ایل او سی پر پاکستان اور بھارت کے مابین ایک معاہدہ موجود ہے مگر شر پسند مودی حکومت وحشی پن پر اتر ;200;ئی ہے ۔ لائن آف کنٹرول اور ورکنگ بانڈری پر بھارتی فوج نے رواں برس اب تک ایک ہزار8سو24مرتبہ جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے متعدد شہریوں کو شہید کیا ہے ۔ بھارت کا یہ باولا پن خطے کےلئے خطرناک ہے ۔ دو ایٹمی قوتوں میں تناوَ جنوبی ایشیا کو کسی نئے بحران سے دوچار کر سکتا ہے ۔ قبل ازیں رواں سال فروری میں پیدا ہونے والی کشیدگی نے عملی طور بڑے تصادم کی صورتحال پیدا کر دی تھی ۔ ایک بار پھر مودی انتظامیہ اس بند گلی کی جانب بڑھ رہی ہے ۔ اس وقت مقبوضہ وادی میں خوف کا عالم ہے اور چند دن کے اندر تیس ہزار کے لگ بھگ مزید فوجی کشمیر اتارے جا چکے ہیں ، کشمیر مکمل طور پر غیر یقینی صورت حال سے دوچار ہے ۔ وادی سے ہندو یاتریوں ، سیاحوں اور غیرکشمیری طلبا کو واپس لوٹنے کے حکم سے عوام اور سیاسی حلقوں میں کھلبلی مچی ہوئی ہے جسکا اظہار جموں و کشمیر کے سابق وزیرِ اعلیٰ کے ٹوئیٹس سے بخوبی ہوتا ہے ۔ جموں و کشمیر کے سابق وزیرِ اعلیٰ عمر عبداللہ کا کشمیر کی صورت حال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہنا ہے کہ کشمیر کی موجودہ صورت حال کےلئے فوج اور ایئر فورس کو الرٹ کرنے کا مطلب کیا ہے ۔ یہ35 اے یا حد بندی کے متعلق نہیں ہے ۔ اگر اس طرح کا الرٹ واقعی جاری کیا جاتا ہے تو اس کا مطلب کوئی بالکل ہی مختلف چیز ہے ۔ گذشتہ کئی ہفتوں سے کشمیر میں عام لوگ کسی بڑی کارروائی کے امکان سے خوف کی گرفت میں ہیں ۔ مودی حکومت کے بعض اعلانات اور جنگی پیمانے کی فوجی نقل و حرکت سے افواہوں کو تقویت مل رہی ہے ۔ حقیقت یہ ہے کہ بھارت کے ;200;ئین کے تحت کشمیر کو حاصل خصوصی حیثیت کو ختم کئے جانے کا ہر حربہ استعمال کیا جا رہا ہے،یہ اطلاعات بھی ہیں کہ مودی حکومت نے ہندو اکثریت والے جموں خطے کو علیحدہ ریاست جبکہ مسلم اکثریتی علاقے نئی دہلی کے زیرانتظام خطے قرار دینے کا فیصلہ کیا ہے، تاہم جو بھی ہے یہ ایک خطرناک کھیل ہے ۔ سابق بھارتی وزیراعظم من موہن سنگھ نے مودی حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ کوئی ایسا فیصلہ نہ کرے جس سے بحران مزید پیچیدہ ہوجائے ۔ سابق بھارتی وزیراعظم کا مشورہ ہوشمندی کی علامت ہے جبکہ مودی حکومت ہوش کے ناخن لینے سے عاری محسوس ہوتی ہے ۔

حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی کا فکر انگیز پیغام

مقبوضہ جموں و کشمیر میں سیاسی جدوجہد کرنے والی سب سے بڑی تنظیم آل پارٹیز حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے جھنجوڑ دینے اپنے ایک پیغام میں بھارتی حکومت کی جانب سے وادی میں پرتشدد کارروائیاں شروع کرنے کے خدشے کا اظہار کرتے ہوئے مسلمان برادری سے مدد کی اپیل کردی ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر ہم سب مار دئیے گئے اور آپ خاموش رہے تو اللہ کے سامنے جواب دہ ہونا پڑے گا ۔ سماجی رابطے کی ویب ساءٹ ٹوءٹر پر اپنے پیغام میں سید علی گیلانی نے کہا کہ اس دنیا میں بسنے والے تمام مسلمان اس ٹوءٹ کو ہماری زندگیاں بچانے کے لیے پیغام کے طور پر لینا چاہیے ۔ سید علی گیلانی نے کہا کہ بھارت، انسانی تاریخ کی بدترین نسل کشی کرنے والا ہے، اللہ ہ میں محفوظ رکھے ۔ سید علی گیلانی کے پیغام نے نہایت ہی سنجیدہ سوال کو جنم دیا ہے اور اس یہ بھی واضح ہو رہا ہے کہ کشمیر کی صورتحال کس نہج تک جا پہنچی ہے ۔ مسلم ورلڈ کے نمائندہ پلیٹ فارم او آئی سی کو اس سے سلسلے میں آگے بڑھنا ہو گا ۔ کشمیریوں کی نسل کشی کا مودی پلان اگر عمل میں آگیا تو پھر مظلوم کشمیریوں کے خون کابوجھ پوری امت مسلمہ پر ہوگا ۔ یہی وقت ہے کہ ہم آواز ہو کر بھارت کو مشترکہ پیغام دیا جائے ۔

بھارت کی جانب سے کلسٹر بموں کا استعمال عالمی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے، وزیراعظم

اسلام آباد:وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج کی جانب سے کلسٹر بموں کا استعمال عالمی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے لائن آف کنٹرول پر بھارت کی جانب سے معصوم شہریوں پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی فوج کی جانب سے کلسٹر بموں کا استعمال عالمی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے، بھارت 1983 کے کنونشن معائدہ کی خلاف ورزی کررہا ہے، سیکورٹی کونسل عالمی امن اور سلامتی کے خطرے کا نوٹس لے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے لوگوں پر ظلم کی سیاہ رات ختم ہونے کا وقت آن پہنچا ہے، کشمیریوں کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حق خودارادیت کی اجازت ہونی چاہیے، جنوبی ایشیا میں امن کا واحد راستہ مسئلہ کشمیر کا پرامن اور منصفانہ حل ہے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ صدر ٹرمپ نے بھی مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کی ہے جب کہ بھارتی جارحیت کے باعث لائن آف کنٹرول پر صورتحال مزید خراب ہو رہی ہے، کشمیر کی موجودہ صورتحال خطے کے بحران کا سبب بن سکتی ہے۔

حسن علی کی بھارتی کرکٹرز کو اپنی شادی میں شرکت کی دعوت

قومی کرکٹر حسن علی نے بھارتی کرکٹ ٹیم کو اپنی شادی میں شرکت کی دعوت دے دی۔

قومی ٹیم کے فاسٹ بولر کا کہنا ہے کہ بھارتی ٹیم پلیئرز ہمارے کرکٹ فیلو ہیں، میں تمام بھارتی کرکٹ ٹیم کو شادی میں مدعو کرنا چاہوں گا، انہیں بڑی خوشی ہوگی اگر بلیو شرٹس ان کی شادی میں شریک ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ اگر پاکستانی ٹیم میں کسی کو سربالا بنانا پڑے تو شاداب خان ان کی اولین ترجیح ہوگی، وہ 22 سال کا چھوٹا سا بچہ ہے اور میرا بہترین دوست ہے، وہ میرا ساتھ سربالا بنے اور بے شک سلامی کی تمام رقم خود ہی رکھ لے۔

حسن علی کا کہنا تھا کہ اس کے علاوہ قومی ٹیم میں سے کسی اور کو گھوڑے پر بٹھانا پڑا تو فہیم اشرف ان کی ترجیح ہوں گے، ان کے دستیاب نہ ہونے پر ان کی ترجیح فخرزمان یا بابراعظم ہوں گے۔

یاد رہے کہ حسن علی کی شادی 20 اگست کو دبئی میں ہو رہی ہے، ان کی ہونے والی شریک حیات کا نام سامعہ ہے جو کہ غیر ملکی ایئرلائن میں فلائٹ انجینئر ہیں۔ شعیب ملک کے بعد حسن علی دوسرے پاکستانی کرکٹر ہیں جو بھارتی داماد بننے جارہے ہیں۔

اسٹاک مارکیٹ سپورٹ فنڈ ریاستی ضمانت میں تاخیر سے رکاوٹ

کراچی:  اسٹاک مارکیٹ کو بحران کی صورت میں گرنے سے بچانے کیلیے20ارب کے فنڈ کے قیام میں آئی ایم ایف کی شرائط کی وجہ سے ریاستی ضمانت میں تاخیر سے رکاوٹ پیداہوگئی ہے۔

وزارت خزانہ کے حکام نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایاکہ مارکیٹ سپورٹ فنڈ کے قیام کا معاملہ آئی ایم ایف کی شرائط کی وجہ سے تعطل کا شکار ہوگیا۔ کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے 30جولائی کواسٹیٹ انٹرپرائز فنڈ کے قیام کی منظوری دی تھی۔ سرکاری مالیاتی ادارے حکومت سے ریاستی ضمانت مانگ رہے تاکہ رقم ڈوب جانے کی صورت میں خطرات کو کم کیاجاسکے جس کی وجہ سے فنڈ کا قیام تعطل کا شکار ہے۔

جس دن اقتصادی رابطہ کمیٹی نے فنڈ کے قیام کی منظوری دی اسی دن کے ایس ای100 انڈیکس 4308پوائنٹ یعنی 12فیصد گرگیا اور 31666پر بند ہوا جو 41ماہ میں بلند ترین گراوٹ ہے۔ ایس ای سی پی کے چیئرمین فرخ سبزواری کا کہناہے کہ وہ پرامید ہیں کہ اقتصادی رابطہ کمیٹی کی منظوری کے تناظر میںفنڈ ہفتہ 10دن میں قائم ہوجائے گا۔

عارف حبیب لمیٹڈ کے چیف ایگزیکٹو شاہد علی حبیب کا کہناہے کہ آئی ایم ایف نے حکومت کو پابند کیاہے کہ وہ 11611ارب روپے سے زیادہ کی ریاستی ضمانت نہیں فراہم کرسکتی۔ حکومت گردشی قرضے نمٹانے کیلیے سکوک بانڈز کے اجرا، پی آئی اے اور پاکستان اسٹیل ملز جیسے سرکاری اداروں کو قرضوں کے اجرا کیلیے ریاستی ضمانت کی پوری حد استعمال کرچکی ہے۔

اقتصادی امور کے مشیرحماد اظہر کے رابطے میں رہنے والے چند اسٹاک بروکرزآئی ایم ایف کی شرائط کی وجہ سے فنڈ کے قیام میں ناامید ہوچکے ہیں۔ اسٹاک بروکرز ایسوسی ایشن کے جنرل سیکریٹری عادل غفار کاکہناہے کہ ملکی معیشت کی حالت سدھرنے تک اسٹاک مارکیٹ مزید 4/5ہزار پوائنٹ گرجائے گی۔

عقیل کریم ڈھیڈھی کاکہناہے کہ 20ارب روپے کے مارکیٹ سپورٹ فنڈ کے قیام کی کوئی ضرورت نہیں ہے، سرکاری مالیاتی اداروں میں سے کچھ ادارے جنھوں میں مارکیٹ سپورٹ فنڈ میں تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے ان کے پاس سیکڑوں ارب روپے پہلے ہی موجود ہیں۔

اگر مالیاتی ادارے مارکیٹ کو سپورٹ کرنے میں سنجیدہ ہیں تو انھیں انتظار کس بات کا ہے،آج اسٹاک مارکیٹ میں سرمایہ کاری کا بہترین وقت ہے اس وقت اسٹاک مارکیٹ میں رجسٹرڈ کمپنیوں کے شیئرز انتہائی نچلی سطح پر ہیں۔

انھوں نے کچھ مالیاتی اداروں کو حالیہ گراوٹ کا ذمے دار قرار دیا اور کہاکہ مالیاتی اداروں کی جانب سے کئی ارب روپے کے شیئرز کی فروخت کی وجہ سے مارکیٹ گری ہے۔ ایک مالیاتی ادارے نے حالیہ مندی میں 150ارب روپے کے شیئرز فروخت کیے۔

دنیا کا پہلا 64 میگا پکسل کیمرے والا فون

دنیا کا پہلا 64 میگا پکسل کیمرے سے لیس اسمارٹ فون آئندہ ہفتے متعارف کرایا جارہا ہے۔

چینی کمپنی رئیل می نے اعلان کیا ہے کہ وہ 8 اگست کو 64 میگا پکسل کیمرے سے لیس کواڈ کیمرا فون 8 اگست کو متعارف کرا رہی ہے۔

اپنے ایک ٹوئیٹ میں کمپنی نے اسے دنیا کا پہلا 64 میگا پکسل کواڈ کیمرا ٹیکنالوجی فون قرار دیا اور یہ ڈیوائس سب سے پہلے بھارت میں پیش کی جائے گی۔

اس فون میں کمپنی کی جانب سے سام سنگ کے 64 میگا پکسل آئی ایس او سیل جی ڈبلیو 1 سنسر استعمال کیا جائے گا جو کہ رواں سال مئی میں پیش کیا گیا تھا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ سام سنگ نے اب تک یہ سنسر اپنے کسی فون میں استعمال نہیں کیا بلکہ یہ اعزاز چینی کمپنی کے حصے میں آنے والا ہے۔

اس فون کی دیگر تفصیلات تو معلوم نہیں مگر یہ تو واضح ہے کہ اس کے بیک پر 4 کیمروں کا سیٹ اپ دیا جارہا ہے۔

اس سے پہلے شیاﺅمی کی ذیلی شاخ ریڈمی نے بھی گزشتہ ماہ بہت جلد 64 میگا پکسل کیمرے سے لیس فون کو جلد متعارف کرانے کا عندیہ دیا تھا تاہم کسی تاریخ کا اعلان نہیں کیا تھا۔

ان دونوں کمپنیوں کے درمیان بجٹ اسمارٹ فونز کی تیاری کے حوالے سے مسابقت پائی جاتی ہے اور اب یہی دونوں کمپنیاں 64 میگا پکسل کیمرے والے فون متعارف کرانے والی ہیں۔

اس سے قبل شیاﺅمی اور ہواوے نے دنیا کے پہلے 48 میگا پکسل کیمرے والے فونز متعارف کرائے تھے۔

بھارت کشمیریوں کے بڑے قتل عام کو تیار

پلوامہ واقعہ کے بعد بھارتی فضائی شکست اور اب کلبھوشن کیس میں ناکامی کے بعد بھارتی حکومت انگاروں پر لوٹ رہی ہے ۔ اوپر سے امریکی صدر ٹرمپ نے مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیش کش کر دی جس کا واضح مطلب ہے کہ بھارت کو مقبوضہ کشمیر پر ناجائز قبضے سے ہاتھ دھونے پڑیں گے ۔ اسی لئے بھارت قانونی طورپر کشمیر کے الحاق کو دائمی بنانے اور آرٹیکل 370 کو ختم کرنے کےلئے تگ و دو کر رہا ہے دوسری طرف کشمیر میں مسلمانوں کی اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کےلئے عملی اقدامات بھی کر رہا ہے ۔ وادی میں پہلے سے موجود آٹھ لاکھ فوج کے علاوہ مزید فوج بھیجی گئی ہے ۔ کشمیری نوجوانوں کو بہانے بہانے سے شہید کیا جا رہا ہے ۔ نہتے کشمیری بچوں ، بوڑھوں اور خواتین سے انتہا ئی ناروا سلوک کیا جا رہا ہے ۔ محبوبہ مفتی نے کہا وادی میں بڑی کارروائی ہونے جا رہی ہے ۔ صورتحال کے پیش نظر لوگوں نے خوراک‘ ادویات اور فیول کا ذخیرہ کرنا شروع کر دیا ۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی مزید اتنی بڑی تعداد کے قیام کیلئے سرکاری و نجی عمارتوں پر فوج نے قبضہ کر لیا ہے ۔ 3 لاکھ ہندو یاتریوں کو کشمیر سے نکل جانے کا حکم دیدیا گیا ۔ فوج کے ساتھ تمام پولیس سٹیشنوں ‘ پولیس ڈویژنوں اور پولیس پوسٹوں کو بھی الرٹ کر دیا گیا ۔ جموں میں ہائی الرٹ جاری کیا گیا ہے اور ہوائی اڈوں پر فوجی تنصیبات کو تیار کھا گیا ہے ۔ سرحدی علاقوں میں فوج کی اضافی نفری بھی تعینات کر دی گئی ہے ۔ صبح سے ہی ہوائی اڈے کے اوپر سے ڈرون طیاے گردش کرتے رہے ۔ وادی میں موجود ہزاروں سیاح اور طلبا میں خوف و ہراس پھیل گیا اور واپسی کے لیے قطاریں لگ گئیں ۔ ریاستی حکومت نے ایک روز قبل ہی سیاحوں کو وادی سے چلے جانے کو کہا تھا جس کی وجہ انہوں نے یہ بتائی تھی کہ خفیہ اطلاعات ہیں کہ خطے میں دہشت گردی کا خطرہ ہے ۔ ریاستی حکومت کی ہدایت کے بعد غیرملکیوں سمیت ہزاروں سیاحوں نے سری نگر ایئرپورٹ کا رخ کیا جن میں سے اکثریت کے پاس ٹکٹ بھی نہیں تھے ۔ مقبوضہ کشمیر میں سالانہ مذہبی تہوار امرناتھ یاترا کے باعث ہزاروں افراد موجود تھے جبکہ حکومت کی جانب سے مذہبی تہوار کو بھی منسوخ کردیا گیا ۔ امرناتھ یاتری کے اطراف میں وارننگ سے قبل ہی سیکیورٹی کی کثیر تعداد موجود تھی، اس کے علاوہ جموں کے علاقے میں ہونےوالے ہندءووں کے ایک اور مذہبی میلہ میکائیل ماتا یاترا کو بھی منسوخ کر دیا گیا ہے ۔ کشمیر میں موجود غیرمقامی سینکڑوں طلباء بسوں کے ذریعے واپس جا رہے ہیں ۔ سری نگر کے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کے ایک انتظامی عہدیدار کا کہنا تھا کہ تمام غیرمقامی طالب علم کیمپس سے واپس اپنی ریاستوں کو جاچکے ہیں ۔ کشمیر کے مقامی افراد بھی اس وارننگ سے خوف کا شکار ہیں اور اشیا خورد ونوش، پیڑول اور بینکوں سے پیسوں کے حصول کے لیے متعلقہ اسٹیشنوں کے باہر ان کی لمبی قطاریں لگ گئیں ۔ اسی پر حریت رہنما سید علی گیلانی نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت پر ایس او ایس کال دی اور کشمیریوں کی نسل کشی کے خطرے کا اظہار کیا ہے ۔ سید علی گیلانی نے مسلم امہ کے نام پیغام میں کہا ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں انسانی تاریخ کا سب سے بڑا قتل عام کرنے جا رہا ہے ۔ اگر ہم شہید اور آپ سب مسلمان خاموش رہے تو اللہ تعالیٰ کو جواب دینا ہو گا ۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کی حفاظت فرمائے ۔ مقبوضہ کشمیر میں سیاحوں ‘ غیر کشمیریوں اور طلباء کو واپسی کے حکم پر سیاسی حلقوں میں کھلبلی مچ گئی ۔ میر واعظ نے کشمیریوں سے ایکشن کی اپیل کی ہے ۔ سابق وزیراعلیٰ عمر عبداللہ فکر مند ہیں کہ بھارتی فوج‘ ائرفورس کو الرٹ کرنے کا مطلب کیا ہے ۔ میئر سرینگر جنید عظیم نے کہا ہم سب محصور ہیں ۔ صحافی برکھا دت نے صورتحال کو بحرانی قرار دیا ۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سید علی گیلانی کے بیان کے بعد او آئی سی سے رابطے کا فیصلہ کیا ہے ۔ شاہ محمود قریشی جنرل سیکرٹری او آئی سی کو کشمیر کی صورتحال سے آگاہ کرینگے ۔ پاکستان کشمیریوں کی سفارتی اخلاقی معاونت جاری رکھے گا بھارت اس وقت بوکھلاہٹ کا شکار ہے امریکی صدر کی ثالثی کی یہ پیشکش پربھارت آگے نہیں بڑھ رہا ۔ بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشتگردی کی تازہ کارروائیوں کے دوران بارہمولہ اورشوپیاں کے اضلاع میں مزید 3 کشمیری نوجوان شہید کر دیئے ۔ جموں خطے کے علاقوں وادی چناب اور پیر پنچال میں بھارتی پیراملٹری اہلکاروں کی اضافی تعیناتی سے ان علاقوں میں خوف ودہشت کا ماحول پیدا ہوگیا ہے ۔ لوگ خود کو غیر محفوظ سمجھ رہے ہیں اور انہیں خدشہ ہے کہ کچھ برا ہونے والا ہے ۔ بھارتی پولیس نے جنوبی کشمیر کے قصبوں بیج بہاڑہ اور اسلام آبادسے غلام نبی سمجھی، مختار احمد وازہ اور منظور احمد غازی سمیت کئی حریت رہنماؤں کو گرفتار کرکے مقامی پولیس سٹیشنوں میں نظربند کردیا ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی طرف سے 40 ہزار کے قریب اضافی فوجیوں کی تعیناتی پر شدید غم وغصے کا اظہار کرتے ہوئے سینکڑوں لوگوں نے سڑکوں پر نکل کر زبردست مظاہرے کئے ۔ بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے گولیاں اور پیلٹ چلائے اور آنسو گیس کے گولے داغے جس کے باعث متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔ قابض انتظامیہ نے ضلع شوپیاں موبائل فون اور انٹرنیٹ سروس معطل کر دی ۔ بھارتی فورسز نے ضلع پلوامہ کے کئی علاقوں میں گھروں پر چھاپوں کے دوران متعدد نوجوانوں کو گرفتار کر لیا ۔ میر واعظ عمر فاروق کی سربراہی میں قائم حریت فورم نے جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے غیر قانونی طور پر نظربند چیئرمین محمد یاسین ملک کی نئی دلی کی تہاڑ جیل میں گرتی ہوئی صحت پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے جیلوں میں نظر بند دیگر کشمیریوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے ۔ کشمیر یونیورسٹی کے مختلف شعبوں کے بیسیوں طلباء نے اپنے کیمپس میں جمع ہو کر بھارت کی طرف سے مقبوضہ وادی میں پیدا کی گئی جنگی صورتحال کے خلاف زبردست مظاہر ہ کیا ۔ جموں وکشمیر پیپلز موومنٹ کے چیئرمین میر شاہد سلیم نے بھارتی حکومت کو خبردارکیا کہ جموں وکشمیر کی خصوصی حیثیت کے ساتھ کسی قسم کی چھیڑ چھاڑ کے تباہ کن نتاءج نکلیں گے ۔ بھارتی کانگریس جموں وکشمیر پالیسی پلاننگ گروپ نے بھی وزارت داخلہ اور مقبوضہ کشمیر حکومت کے اقدامات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مودی سرکار کے ارادوں سے متعلق خدشات پیدا ہو رہے ہیں ۔ مقبوضہ کشمیر میں عدم تحفظ اور خوف کا ماحول پیدا ہو رہا ہے ۔ حکومت کوئی ایسا فیصلہ نہ کرے جس سے بحران مزید پیچیدہ ہو جائے ۔ حکمران پارٹی کی غلط پالیسیوں اور جموں و کشمیر کے بارے میں بھارتی آئین کے آرٹیکل 35;65; اور آرٹیکل 370 کو ختم کرنے کے حکومتی ارادوں کے بارے میں جموں و کشمیر میں وسیع پیمانے پر پیدا ہونےوالے خوف و ہراس اور خدشات پر بھی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ تمام اقدامات جموں و کشمیر میں انتشار اور عدم تحفظ کا ماحول پیدا کر رہے ہیں ۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی فائرنگ سے مزید 7 کشمیری نوجوان شہید

سری نگر: مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے ریاستی دہشت گردی کے دوران فائرنگ کرکے مزید 7 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق بھارتی فوج نے ضلع کپواڑہ میں نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران اندھا دھند فائرنگ کی جس کے نتیجے میں مزید 7 کشمیری نوجوان شہید ہوگئے۔ دوسری جانب  ضلع شوپیاں میں سرچ آپریشن کے دوران گھر کے ملبے سے مزید 2 افراد کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

گزشتہ روز بھی قابض بھارتی فوج نے 2 الگ الگ واقعات میں سرچ آپریشن کے دوران ریاستی دہشت گردی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 2 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا تھا، شہید ہونے والے نوجوان مقامی یونیورسٹی کے طالب علم تھے۔

واضح رہے کہ 4 روزقبل بھی بھارتی فوج نے ضلع بانڈی پورہ میں ریاستی دہشت گردی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 4 نوجوانوں کو شہید کردیا تھا اور کل مزید 2 نوجوانوں کو نشانا بنایا گیا جب کہ گزشتہ 4 دنوں میں شہید ہونے والوں کی تعداد 14 ہوگئی ہے۔

Google Analytics Alternative