Home » 2019 » September » 03 (page 3)

Daily Archives: September 3, 2019

بھارت اور افغانستان کے لئے جاسوسی کرنے والا ایجنٹ گرفتار

پشاور: ایف آئی اے نے بھارت اور افغانستان کے لئے جاسوسی کرنے والے ایجنٹ کو گرفتار کرلیا۔

پشاور میں ایف آئی اے کے ڈپٹی ڈائریکٹر عمران شاہد نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ ایف آئی اے نے 22 اگست کو طورخم میں ایک شخص کو پکڑا جس کے پاس افغان پاسپورٹ بھی تھا اور وہ پاسپورٹ کے ذریعے 5 مرتبہ بھارت بھی گیا تھا،  پکڑے گئے شخص کی شناخت عمرداؤد کے نام سے ہوئی اور یہ  خیبرپختون خوا کے ضلع کرک کا رہائشی ہے۔

ڈپٹی ڈائریکٹر ایف آئی اے نے بتایا کہ ، عمر داؤد بھارت اور افغانستان سے مدد ملتی تھی اور یہ افغانستان اور بھارت کی ایجنسیوں کے لیے کام کررہا تھا، افغانستان نے اسے نوکری بھی دے رکھی تھی، افغان پاسپورٹ پر یہ متعدد بار بھارت گیا اور اس نے وہاں کی مختلف یونیورسٹیوں اور ٹی وی چینلز کو انٹرویو دیا جس میں اس نے ملک اورسیکیورٹی اداروں کے خلاف زہر اگلا۔

دوپہر کی نیند کا ایک اور بہترین فائدہ سامنے آگیا

قیلولے کی عادت زندگی کو خوش باش بنانے میں مدد دیتی ہے۔

یہ بات برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

ہارٹ فورڈ شائر کی تحقیق میں دوپہر کو مختصر نیند اور خوشی کے درمیان ایک مختصر تعلق دریافت کیا گیا۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ ویسے تو دوپہر کی مختصر نیند صحت کے لیے متعدد فوائد کی حامل ہے جیسے تخلیقی صلاحیتوں میں اضافہ اور امراض قلب سے تحفظ وغیرہ، مگر یہ عادت زندگی میں خوشی بڑھانے کا باعث بھی بنتی ہے۔

درحقیقت قیلولے کی عادت زندگی سے اطمینان کا احساس دلاتی ہے۔

خیال رہے کہ قیلولہ سنت نبوی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم بھی ہے جس کے متعدد فوائد سائنس عرصے سے تسلیم کررہی ہے۔

اس تحقیق میں شامل ٹیم کا کہنا تھا کہ ماضی میں تحقیقی رپورٹس میں یہ بات سامنے آچکی ہے کہ دوپہر کو 30 منٹ تک نیند سے توجہ مرکوز کرنے، تخلیقی صلاحیتوں میں اضافے اور ذہن کو تیز کرنے میں مدد ملتی ہے، مگر نئے نتائج سے عندیہ ملتا ہے کہ اس سے خوشی کا احساس بھی بڑھ جاتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ سائنسدان عرصے سے کہہ رہے ہیں کہ دوپہر کو زیادہ وقت تک سونا مختلف امراض کا خطرہ بڑھا سکتا ہے اور ہمارے نتائج سے بھی یہ ثابت ہوتا ہے۔

اس تحقیق کے دوران ایک ہزار افراد سے ایک آن لائن سروے کے دوران قیلولے کے حوالے سے مختلف سوالت پوچھے گئے اور ان سے ہیپی نیس اسکور دینے کا بھی کہا گیا۔

نتائج سے معلوم ہوا کہ 30 منٹ تک قیلولہ کرنے والے زندگی میں زیادہ خوش باش ہوتے ہیں جبکہ دوپہر کو نہ سونے والے حیران کن طور پر زیادہ دیر تک قیلولہ کرنے والوں سے زندگی میں خوش ہوتے ہیں۔

اس سے قبل جولائی میں سامنے آنے والی ایک امریکی تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ دوپہر کو 15 سے 30 منٹ کی نیند ذہنی ہوشیاری، یادداشت، ذہنی صلاحیت کو بڑھانے جبکہ مزاج کو خوشگوار بنانے میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔

تحقیق کے مطابق قیلولہ لوگوں کے ذہن کے لیے بہت اچھا ہوتا ہے کیونکہ یہ اس کی صفائی کا کام کرتا ہے۔

محققین نے بتایا کہ اگر لوگ قیلولے کو عادت بنالیں تو وہ معلومات کو زیادہ تیزی اور موثر طریقے سے ذخیرہ، برقرار اور یاد کرنے میں کامیاب رہتے ہیں۔

تحقیق میں مزید بتایا گیا ہے کہ دوپہر کی یہ مختصر نیند ذہنی صلاحیت پر زبردست مثبت اثرات مرتب کرتی ہے۔

تاہم سب سے ضروری امر یہ ہے کہ دوپہر کی نیند مختصر یعنی آدھے گھنٹے سے زیادہ نہ ہو کیونکہ وہ ذہن کے لیے فائدے کی بجائے نقصان دہ ثابت ہوتی ہے۔

پانی اور پاپ کارن قبض سے نجات کے لیے فائدہ مند

قبض کی بیماری کا سامنا اکثر افراد کو ہوتا ہے اور انہیں اپنی زندگی اس کی وجہ سے بہت مشکل محسوس ہونے لگتی ہے۔

قبض ذیابیطس جیسے مرض کی بھی ایک بڑی علامت ہوسکتا ہے۔

ایک تحقیق کے مطابق ذیابیطس سے ہٹ کر کچھ اقسام کے کینسر لاحق ہونے کی صورت میں بھی قبض کی شکایت اکثر رہنے لگتی ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ اگر آپ کو اکثر قبض کی شکایت رہتی ہے تو اسے عام سمجھ کر نظر انداز مت کریں۔

تاہم قبض کا علاج تو آپ کے اپنے کچن میں بھی موجود ہے۔

چند عام اور مزیدار چیزوں کو کھانا اس تکلیف سے نجات دلانے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔

پاپ کارن

آلو کے چپس کی بجائے اگر آپ سادے پوپ کارن کو ترجیح دیں تو منہ چلانے کی خواہش کے ساتھ ساتھ قبض سے بھی بچ سکیں گے، طبی ماہرین کے مطابق یہ جسم کی فائبر کی ضروریات پوری کرنے کا آسان ذریعہ ہے، کیونکہ ان کی کچھ مقدار میں تین گرام فائبر ہوتی ہے۔

آلو بخارے

آلو بخارے فائبر سے بھرپور پھل ہے اور یہ وہ جز ہے جو آنتوں کے افعال کو بہتر کرکے قبض کو ختم کرنے میں مدد دیتا ہے، ایک آلو بخارے میں ایک گرام فائبر ہوتا ہے جو کہ جسم کے لیے مناسب مقدار ہے، اسی طرح اس میں موجود دیگر اجزاءبھی نظام ہضم کے مسائل پر قابو پانے کے لیے موثر ثابت ہوتے ہیں۔

پانی

فائبر اور ورزش کے ساتھ ساتھ مناسب مقدار میں پانی پینا بھی قبض کی شکایت میں کمی لانے کے لیے ضروری ہے، پانی آنتوں کے افعال کو بہتر بنانے کے لیے ضروری ہے، اگر آپ کا جسم پانی کی کمی کا شکار ہوگا تو قبض کا خطرہ بھی اتنا زیادہ بڑھ جائے گا۔

مالٹے

طبی ماہرین مالٹوں کو بھی قبض سے نجات دلانے کے لیے بہترین قرار دیتے ہیں کیونکہ یہ بھی فائبر سے بھرپور پھل ہے جبکہ کیلوریز بھی بہت کم ہوتی ہیں، اسی طرح ترش پھلوں میں فلیونول نامی جز بھی ہوتا ہے جو کہ قبض کشا کا کام کرتا ہے۔

جو

فائبر کے حصول کے لیے جو بہترین ہے، اس کے ایک کپ میں دو گرام انسولیبل جبکہ دو گرام سولیبل فائبر موجود ہوتا ہے، انسولیبل فائبر کھانے کو معدے سے جلد آنتوں میں پہنچانے میں مدد دیتا ہے جبکہ فائبر کی دوسری قسم پانی میں تحلیل ہوکر جیل جیسا میٹریل بناتی ہے جو کہ قبض کے خلاف موثر ہے۔

چاول

ایک تحقیق کے مطابق جو لوگ زیادہ چاول کھانے کے عادی ہوتے ہیں ان میں قبض کا خطرہ 41 فیصد تک کم ہوتا ہے، اس کی کوئی واضح وجہ تو نہیں بتائی گئی مگر ممکنہ طور پر چاول میں موجود فائبر اس حوالے سے مددگار ہوتا ہے۔

پالک

پالک نہ صرف فائبر سے بھرپور ہوتی ہے بلکہ میگنیشم کے حصول کا بھی بہترین ذریعہ ہے، یہ منرل آنتوں کے لیے ضروری ہوتا ہے اور فضلے کو صاف کرنے کا کام کرتا ہے۔

بیج

بیج میں نشاستہ پایا جاتا ہے جو کہ آنتوں کے لیے ضروری ہوتا ہے، یا یوں کہہ لیں کہ قبض کشا کا کام کرتا ہے جبکہ غذائی نالی میں بیکٹریا کے توازن میں بھی مدد دیتا ہے۔ تاہم ان کا زیادہ استعمال پیٹ میں گیس اور اس کے پھولنے جیسے مسائل کا باعث بن سکتا ہے۔

دہی

دہی میں بیکٹریا یا پرو بائیو ٹکس کی مقدار کافی زیادہ ہوتی ہے جو کہ معدے کے لیے اچھے ثابت ہوتے ہیں، یہ نہ صرف غذائی نالی کے نظام کے لیے فائدہ مند ہوتے ہیں بلکہ آنتوں کی کارکردگی کو بھی بہتر بناتے ہیں۔

سعودی عرب میں پہلی مرتبہ طلبا کو خواتین اساتذہ تعلیم دیں گی

ریاض: سعودی عرب میں اب خواتین ٹیچرز بھی طلبا کو پڑھا سکیں گی اس سے قبل خواتین اساتذہ صرف طالبات کے لیے مختص تھیں۔

سعوی خبر ایجنسی مطابق وزارت تعلیم نے ملک بھر میں 14 ہزار 60 سرکاری اسکولوں میں اب خواتین اساتذہ طلبا کو بھی تعلیم دے سکیں گی۔ طلبا کی ابتدائی سیشن میں 4 سے 5 سال اور بعد ازاں 6 سے 8 سالہ طلبا ہوں گے جنہیں خواتین ٹیچر تعلیم دیں گی۔

ولی عہد محمد بن سلمان کے وژن 2023 کے تحت روایت پسند سعودی عرب میں کئی نمایاں تبدیلیاں سامنے آرہی ہیں، خواتین کو گاڑی چلانے کے علاوہ ملازمتوں اور اکیلے سفر کرنے کی اجازت بھی مل گئی ہے جب کہ ثقافتی طائفوں کی آمد اور سینما ہال بھی کھولے جا رہے ہیں۔

انے روٹی دال مفت

یقین نہ ;200;ئے تو ;200;پ اپنے کسی بھی زرا پرانے میانوالیے دوست سے تصدیق کراسکتے ہیں کہ میانوالی ریلوے اسٹیشن سے باہر نکل کر الٹے ہاتھ نانبائی بازار میں برس ہا برس مشہور غریب ہوٹل ;200; نے روٹی دال مفت کھلاتا رہا ۔ لوگ خوب پیٹ بھر کر روٹی کھاتے، ہوٹل والوں کو بھی دعائیں دیتے اور حکومت کی بھی نیک نامی ہوتی ۔ یہ تو خیر بیتے دنوں کی بات ہے اور گذرے سنہرے دنوں کی طرح ہمارے ذہنوں پرہنوزنقش ہے، لیکن ;200;جکل ہر اخبار ہر چینل پر گرانی کا رونا ہی رویا جاتا ہے بلکہ ماتم کیا جاتا ہے، میڈیا نمائندے منظر کشی کچھ اس مایوس کن انداز میں کرتے نظر ;200;تے ہیں جیسے پوری قوم کا مسئلہ نمبر 1، سو روپے کلو پیاز ,10 روپے کی روٹی اور بیس روپے کا نان ہے ،ویسے روٹی کا نعرہ چھوٹے زرداری کی گلابی اردو میں ذرا زیادہ ہی مزا دیتا ہے ۔ یہ درست ہے کہ ;200;جکل ہر سبزی غیر ضروری طور پر مہنگے داموں فروخت کی جا رہی ہے، تنور والوں نے بلا جواز روٹی بھی مہنگی کر رکھی ہے اور گاہک جب گلہ کرتا ہے تو سبزی والا اوپر سے مہنگی اور تنور والا گیس بل ڈبل اور ;200;ٹے کا مہنگا ہونا جواز پیش کرتا ہے کہہ کر اپنی جان چھڑا لیتا ہے، حکام بالا کسی کو پوچھتے نہیں اور یوں رگڑا جو لگتا ہے وہ ;200;خر میں بے چاری عام عوام کا ۔ قارئن کرام،، پیاز کوئی ایسی سبزی بھی نہیں ہے کہ اس سے وقت کا پہیہ ہی رک جائے، یہی پیاز دس ۔ پندرہ روپے کلو اسی حکومت میں چند ماہ قبل رلتا رہا ہے، روٹی بہر طور ایک ضروری ;200;ءٹم ہے، جو پیٹ تین نہیں تو دو وقت شدت سے مانگتا ہے، اور ظاہر ہے پیٹ کی ;200;گ نہ بجھے تو بھوکا انسان ہو طرف ;200;گ لگانے کو پھرتا ہے ۔ مہنگاء کے توڑ کا بہترین اصول تو یہ ہے جو چیز مہنگی ہو اسے مت خریدو اور اگر اسطرح ;200;دھا معاشرہ بھی سوچنا شروع کر دے تو ان گراں فروشوں کو دن میں تارے نظر ;200;نے لگیں ،کیونکہ ہر سبزی تقریبا دو چار روز میں ہی گلنا سڑنا شروع ہو جاتی ہے اور جب سب کچھ لٹتا دیکھتے ہیں توقیمت خرید ہی پورا کرنے کے لئے دوکاندار اسے لگے مول ہی پھینک دیتے ہیں ۔ سبزی فروش اور دکاندار بھی ہمارے ہی بھائی بند ہیں ، انکی روزی روٹی بھی اسی سے وابستہ ہے، لیکن سبزی فروش اور گراں فروشوں میں زمین ;200;سمان کا فرق ہے ۔ ایک حلال دوسرا حرام، ایک مناسب شرع منافع سے حلال کماتا ہے اور اپنی گذر بسر کرتاہے جبکہ دوسرا راتوں رات امیر ہونے کے چکر میں گاہکوں کا خون چوستا ہے اور چند روپے کی خریدی ہوء اشیا سینکڑوں کے حساب سے بچتا ہے ۔ نہ وہ نیچے والوں نہ اوپر والے سے ڈرتا ہے ۔ ;200;ج کے کالم میں صرف سبزی اور روٹی کی گرانی پر ہی توجہ مبذول رکھتے ہیں ۔ میرے خیال میں پرچون سبزی فروش مہنگائی کا ذمہ دار ہے،،ذاتی مثال پیش کرتا ہوں ۔ میرے اپنے سبزی فارم سے روزانہ ریڑھا بھر کر تازہ سبزی منڈی بھجواتا، لیکن معمولی رقم ملتی ۔ مالی سے گلہ کرتا،اسے شک کی نظر سے دیکھتا ۔ ایک روز چپکے سے بولی کا منظر اپنی ;200;نکھوں سے دیکھا، توڑا بھر سبزی کے دس،بیس روپے لگتے، اور سو ڈیرھ سو کی کل پرچی بنی ۔ اسی سبزی میں سے ایک ٹینڈے کا توڑا جو بولی پر ایک سبزی فروش نے محض پندرہ روپے کا خریدا تھا ۔ اسکے پیچھے اسکے تھڑے پر جا کر اپنے ہی کھیت کے ٹینڈوں بھرا پورا توڑا خریدنے کا اظہار کیا،جسکی کم از کم قیمت اس نے ساٹھ روپے بتائی ۔ یہ منافع تین سو فیصد سے زائد بنتا ہے، سو یہی لوگ ہیں جو کاشتکار کا استحصال کر کے اسکی پیداوار انتہائی سستی خرید کر چند منٹوں بعد اپنی دوکان پر منہ مانگی قیمت وصول کرتے ہیں ، اس میں حکومت کا کوئی لینا دینا نہیں ہے ۔ رہ گئی روٹی تو گندم کا ریٹ گذشتہ کئی سال سے تقریبا ًتیرہ سو روپے فی من ہی چلا ;200;رہا ہے ۔ گندم کی فصل تیار ہو کر جب منڈی میں ;200;تی ہے تو سرکاری سطح پر چھوٹے، سو پچاس بوری والے، کاشتکار کیلئے مناسب انتظام نہ ہونے کی وجہ سے لاکھوں ایسے کسان ;200;ڑھتی کے تھڑے پر اپنا چھ ماہ کا خون پسینہ لا کر ڈھیر کر دیتے ہیں اور چونکہ ہر طرف گندم ہی گندم منڈی میں دستیاب ہوتی ہے اسی لئے سرکاری ریٹ سے کئی گنا کم پر بکتی ہے، اسکا سب سے بڑا خریدار ان دنوں میں فلور ملوں والے، اور اسٹاکسٹ حضرات ہوتے ہیں ، اور یوں یہ دونوں طاقتور طبقے بعد میں کروڑوں کماتے ہیں ۔ ;200;ٹے کا ریٹ سرکاری قیمت خرید پر طے ہوتا ہے،اوپن مارکیٹ میں مچائی ہوئی لٹ پر نہیں اور یوں فلور مل والے اپنی چالاکیوں ،، خصوصا سسٹم کی خامیوں سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ڈبل منافع کماتے ہیں ۔ تندور والے ہر گز گراں فروش اور بلیکیے نہیں ہوتے،گرمی سردی ;200;گ کے سامنے جلتے ہیں ۔ ماسوائے چند حرامخوروں کے تندور والے اکثر سادہ ان پڑھ اور ایماندار لوگ ہوتے ہیں ، اسی لئے کئی سال گیس کے بل نہیں بڑھے اور روٹی عموماًدو تین روپے کی ملتی رہی ۔ میرے خیال میں روٹی کے حالیہ ریٹ میں بڑے اضافے کی وجہ گیس کے نرخوں میں بے پناہ اضافہ ہے ۔ حکام ایک سروے کریں ، تمام کے تمام تندور کم از کم ضلع انتظامیہ کے پاس رجسٹرڈ ہوں ، رجسٹرڈ نمبر کے بغیر گیس کنکشن نہ ملے، رجسٹرڈ نمبر ہر تندور پر واضح طور پر ;200;ویزاں ہو، روٹی کا وزن اور ریٹ مقرر ہو،جس پر قریب ترین سرکاری دفتر کا شکایت نمبر بھی درج، جو رات دن پانچ منٹ کے اندر اندر کاروائی کر سکے، لیکن چونکہ روٹی امیر غریب سب کی بنیادی ضرورت ہے، اس لیئے تمام تندوروں پر گیس پر مناسب سبسڈی دی جائے،بلکہ تندور کے کمرشل گیس کنکشن کو جلد از جلد عام گھریلو کنکشن قرار دیا جائے تو مجھے کامل یقین ہے کہ روٹی پھر سے چار پانچ روپے کی عام دستیاب ہو سکتی ہے ۔ کچھ حکومتوں نے ماضی میں روٹی پر سیاست کی ہے، جو تمام کی تمام واپس انکے گلے پڑیں ، لیکن میری اس تجویز سے نہ سیاست چمکے گی نہ ہی محکمے کو غیر ضرور مالی نقصان ہو گا، ایک ہزار گرام تیار ;200;ٹا (ایک کلو)کی تقریباً 10 روٹیاں پکتی ہیں جنکی لاگت اسوقت تیس سے چالیس روپے اور یہ بکتی 100 روپے کی ہیں ۔ یہ اوپر والے ساٹھ روپے مزدوری اور گیس کی مد میں ;200;تے جو بہت ذیادہ ہیں ۔ یاد رہے یہ صرف ایک کلو ;200;ٹے کا تخمینہ ہے اور ایک عام سا تندور ایک ڈیڑھ بوری روزانہ کا کاروبار کرتا ہے ۔ اسلئے حکومت وقت عوام کی مشکلات کو مد نظر رکھتے ہوئے گیس بلوں پر ایک فلیٹ سبسڈی دیتے ہوئے تمام رجسٹرڈ تندوروں کا ٹیرف عام گھریلو ریٹ پر فکس کرے، تو مجھے یقین ہے کہ روٹی پھر سے چار ۔ پانچ روپے کی عام دستیاب ہو سکتی ہے اور بھلے ، ;200;نے روٹی دال مفت والا سنہرا دور تو شاید پھر سے لوٹایا نہ جا سکے،لیکن اس عوام دوست فیصلے سےحکومت کی نیک نامی میں ضرور خاطر خواہ اضافہ ہو گا ۔

پی آئی اے کا یوم دفاع کے موقع پر کرایوں میں 10 فیصد کمی کا اعلان

قومی ایئرلائن پی آئی اے نے یوم دفاع پر مخصوص روٹس پر کرایوں میں 10 فیصد کمی کا اعلان کیا ہے۔

قومی ایئرلائن پی آئی اے نے یوم دفاع کے موقع پر کرایوں میں 10 فیصد کمی کا اعلان کیا ہے، کرایوں میں کمی کا اطلاق 6 سے 9 ستمبر تک ہوگا۔

ترجمان پی آئی اے کےمطابق کرایوں میں کمی کا اطلاق اندرون ملک تمام روٹس پر ہو گا اور بیرون ممالک سے وطن واپس آنے والے تمام پاکستانی مسافر بھی اس سے فائدہ اٹھا سکیں گے، تاہم جدہ اور مدینہ منورہ سے آنے والے مسافر اس رعایت سے مستفید نہیں ہو سکیں گے۔

آصف علی اور وہاب ریاض کیریبیئن پریمیئر لیگ میں شرکت کیلیے روانہ نہ ہوسکے

این او سی ملنے کے باوجود آصف علی اور وہاب ریاض کیریبیئن پریمیئر لیگ میں شرکت کے لیے ویسٹ انڈیز روانہ نہیں  ہوسکے۔

لاہور میں جاری پری سیزن تربیتی کیمپ میں شامل بیٹسمین آصف علی کو آج روانہ ہونا تھا لیکن وہ قذافی اسٹیڈیم میں جاری دوروزہ پریکٹس میچ کھیل رہے ہیں، پی سی بی ذرائع کے مطابق آصف علی کو 10 ستمبر تک کیریبیئن پریمیئر لیگ کے مقابلوں میں شرکت کی اجازت دے دی گئی تھی، ان کی ویسٹ انڈیز روانگی میں تاخیر ذاتی وجوہات کی بنا پر ہوئی ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ نے پیسر وہاب ریاض کو بھی کیربیئن پریمیئر لیگ کے لئے این او سی جاری کر دیا ہے – ذرائع کے مطابق پیسر نے اجازت نامہ ملنے کے باوجود ابھی تک لیگ کا حصہ بننے کا حتمی فیصلہ نہیں کیا اور وہ لاہور میں جاری پری سیزن کیمپ میں اپنی ٹریننگ جاری رکھے ہوئے ہیں۔ مزید معلوم ہوا ہے کہ پی سی بی کی طرف سے آصف علی شاداب خان ، شعیب ملک، محمد حفیظ سمیت پانچ دیگر پلیئرز کو این او سی پہلے ہی جاری کیا جا چکا ہے۔

آٹا، چینی، گھی اور دالوں کی قیمتوں میں 20 روپے تک کمی، میگا سبسڈی پیکیج تیار

راولپنڈی: حکومت نے ملک بھر میں 4 بنیادی اشیائے ضروریہ آٹا، چینی، گھی اور دالوں کی قیمتوں میں مناسب کمی اور پھر ان کو استحکام میں رکھنے کیلیے میگا سبسڈی پیکیج کی تیاری شروع کر دی ہے۔

یہ پیکیج یوٹیلٹی سٹورز کے ساتھ ساتھ اوپن مارکیٹ میں بھی ہو گا، اس پراجیکٹ کے تحت وفاقی حکومت صوبائی حکومتوں کے مالی تعاون سے ان تمام بنیادی اشیا کی ترسیل پر سبسڈی دے گی جس کے باعث ان تمام دالوں، چنے سمیت آٹا، گھی ،چینی کی قیمتوں میں10 روپے سے 20 روپے کمی ہو گی۔

تحریک انصاف کے مرکزی نائب صدر زاہد حسین کاظمی نے ’’ایکسپریس‘‘ کو بتایا کے وزیر اعظم عمران خان نے اس پیکیج کی تیاری کے احکامات جاری کر دیے ہیں، انھوں نے بتایا کے اقتصادی بحران پر قابو پا لیا گیا، اب استحکام کی طرف جارہے ہیں۔

Google Analytics Alternative