Home » 2019 » September » 05

Daily Archives: September 5, 2019

کشمیر ہماری شہہ رگ ہے کسی بھی حد تک جائیں گے، ترجمان پاک فوج

راولپنڈی: ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی ہٹلر کے پیروکار ہیں اور بھارت خطے میں نئی جنگ کے بیج بورہا ہے جبکہ کشمیر پر ڈیل ہماری لاشوں سے گزر کر ہوگی۔

ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے خطے میں عالمی طاقتوں کے مفادات ہیں، لیکن جس کے جو بھی مقاصد ہیں وہ پاکستان کو نظرانداز کرکے پورے نہیں ہوسکتے، بھارت میں ہٹلر کے پیروکار نریندر مودی کی حکومت ہے، ہمارا خطہ طاقت کی عالمی کشمکش کا مرکز ہے، بھارت کو پتہ ہے کہ پاک فوج مغربی سرحد سے فارغ ہورہی ہے، اس لیے وہ خطے میں نئی جنگ کا بیج بورہا ہے، بھارت چاہتا ہے کوئی ایسا کام کریں پاکستان بھرپور جواب نہ دے سکے۔

میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال خطے کے امن کے لیے بہت بڑا خطرہ بن چکی ہے، مودی حکومت نہرو کے نظریے سے منہ موڑ چکی ہے اور نازی نظریے پر قائم ہے، یہ وہی نظریہ ہے جس نے گاندھی اور گجرات میں مسلمانوں کو قتل کیا، بھارت میں مسلم اور دیگر اقلیتیں ہندو انتہا پسندی کی سوچ کی شکار ہیں، پاکستان نے پچھلے بیس سال میں دہشت گردی کے ناسور کو ختم کیا، اس دوران بھارت نے ہماری توجہ ہٹانے کیلئے مشرقی سرحد پر بلااشتعال کارروائیاں کیں۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کشمیریوں کو پیغام دینا چاہتا ہوں کہ ہماری سانسیں ان کے ساتھ چلتی ہیں، آخری گولی، آخری سپاہی اور آخری سانس تک کشمیر کے ساتھ ہیں، ہم ان کے ساتھ کھڑے تھے، کھڑے ہیں اور کھڑے رہیں گے، کشمیر ہماری شہ رگ اور ایک عالمی تنازع ہے، بدقسمتی سے عالمی طاقتوں نے مسئلہ کشمیر میں دلچسپی نہیں دکھائی، کشمیریوں کی نسل کشی کی جا رہی ہے، خصوصی حیثیت ختم کرنے کا مقصد یہ ہے کہ کشمیر کی جغرافیائی صورتحال کو اس طرح تبدیل کیا جائے کہ کشمیری وہاں نہ رہ سکیں۔

امریکا کے دورے اور کشمیر پر ڈیل سے متعلق سوال کے جواب میں ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ یہ آپ سوچ بھی کیسے سکتے ہیں کہ کشمیر پر ہم کوئی بھی ڈیل کرلیں گے، کشمیر پر ڈیل ہماری لاشوں سے گزر کر ہوگی، کشمیر ہماری رگوں میں خون کی طرح دوڑتا ہے، اگر 72 سال سے موقف سے پیچھے نہیں ہٹے تو اب کیوں ہٹیں گے، کشمیر کے لیے کوئی بھی قدم اٹھائیں گے اور کسی بھی انتہا تک جائیں گے چاہے اس کی کوئی بھی قیمت چکانی پڑے، کشیر پر کوئی سودے بازی اور کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا، کشمیر ہمیں اپنی جان سے زیادہ عزیز ہے۔

میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ کسی بھی قسم کے حالات کے لیے تیار ہیں، بھارت جان لے کہ جنگیں صرف ہتھیاروں اور معیشت سے نہیں لڑی جاتیں، جنگ لڑنا جنگ کا حصہ ہوتا ہے، جنگ سے پہلے اور دوران قومی طاقت اپنا کردار ادا کرتی ہے، سارے منصوبے تیار ہیں، فوج اپنے منصوبے پریس کانفرنس میں نہیں بتاتی، قوم اطمینان رکھے، کیا کرنا ہے یہ آپ کو پتہ ہے، کیسے کریں گے یہ ہم پر چھوڑ دیں۔

ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال میں پہل سے متعلق سوال کے جواب میں ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کہ ہماری نوفرسٹ یوز کی کوئی پالیسی نہیں، ہماری پالیسی ڈیٹرنس (دفاع) کی ہے، اس کے لیے جو بھی اس کا استعمال ہے ریاستی پالیسی کے مطابق ہوگا، اگر بھارت پہلے استعمال کرتا ہے تو یاد رکھے کہ پہلے کے بعد دوسرا بھی آتا ہے۔

اسرائیل سے تعلقات دوبارہ استوار کرنے سے متعلق سوال کے جواب میں ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ اسرائیل کو تسلیم کرنے سے متعلق باتیں پروپیگنڈا ہے جس کا مقصد کڑے وقت میں قوم کو کمزور کرنا ہے، جس حالت میں ہم ہیں، قوم کو ایک ہونے کی ضرورت ہے اور ہم ایک ہیں۔

سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے وزرائے خارجہ پاکستان پہنچ گئے

 اسلام آباد: سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے وزرائے خارجہ پاکستان پہنچ گئے جو اعلیٰ قیادت سے ملاقاتیں کریں گے اور اس دوران مسئلہ کشمیر بھی زیر بحث آئے گا۔

سعودی وزیر مملکت برائے خارجہ امور عادل الجبیر آج ایک روزہ دورے پر اسلام آباد پہنچ گئے جب کہ متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ عبداللہ بن زاید بن سلطان النہیان بھی ان کے ساتھ ہی ہیں۔ دونوں وزرائے خارجہ ایک ہی  جہاز میں اسلام آباد کے نور خان ایئربیس پہنچے جہاں وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے ان کا استقبال کیا۔

سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے وزرائے خارجہ اپنے مختصر دورے میں اعلیٰ قیادت سے ملاقاتیں کریں گے اور اس دوران مسئلہ کشمیر بھی زیر بحث آئے گا۔ مہمان وزرائے خارجہ پہلی ملاقات وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی سے دفتر خارجہ میں کریں گے، اس کے علاوہ وزیراعظم عمران خان اور آرمی چیف سے بھی ملاقاتیں کریں گے، دونوں وزرائے خارجہ کا دورہ پاکستان کل 4 سے 5 گھنٹوں پر محیط ہوگا جس کے دوران دوطرفہ تعلقات، خطے کی مجموعی صورتحال اور مقبوضہ کشمیر میں حالیہ بھارتی اقدامات  پر بات چیت کی جائے گی۔

ادھر وزیراعظم عمران خان نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کو فون کرکے مسئلہ کشمیر پر تبادلہ خیال کیا ہے اور انہیں وہاں کی تازہ ترین صورت حال سے آگاہ کیا ہے۔ دونوں رہنماؤں کے درمیان دو ہفتوں میں یہ تیسرا رابطہ ہے۔

وزیراعظم کا گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس سے متعلق آرڈیننس واپس لینے کا فیصلہ

 اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس سے متعلق آرڈیننس واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس سے متعلق آرڈیننس واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے، وزیراعظم نے یہ فیصلہ قرض معاف کرنے سے متعلق حالیہ تنازعے کے باعث شفافیت کو یقینی بنانے کے لیے کیا۔

وزیراعظم آفس کے مطابق وزیراعظم کی اٹارنی جنرل کو معاملے پر سپریم کورٹ سے رجوع کرنے کی ہدایت کی ہے جب کہ وزیراعظم قوم کو بتانا چاہتے ہیں کہ عدالت جانے سے فیصلہ خلاف آنے کا بھی خطرہ ہے، عدالت جانے سے حکومت کو پوری رقم واپس ملنے یا کھو جانے کا بھی خدشہ ہے جب کہ آرڈیننس جاری کرنے کا مقصد عدالت کے باہر مذاکرات کے ذریعے 50 فیصد رقم وصول کرنا تھا۔

وزیراعظم آفس کے مطابق فیصلہ خلاف آنے سے حکومت پر ری فنڈ کی مد میں 295 ارب کا بوجھ پڑنے کا امکان ہے، معاملہ عدالت میں ہونے کی وجہ سے 417 ارب روپے کی رقم پھنسی ہوئی تھی جب کہ سپریم کورٹ نے جی آئی ڈی سی کو منسوخ کردیا تھا، سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف وفاقی حکومت کی نظرثانی درخواست بھی مسترد ہوئی،  سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد نئی قانون سازی کی گئی جو مختلف ہائی کورٹس میں چیلنج ہوئی۔

وزیراعظم نے چیک پوسٹوں پر گڈز ٹرانسپورٹ سے بھتہ وصولی کا نوٹس لے لیا

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے چیک پوسٹوں پر گڈز ٹرانسپورٹ سے بھتہ وصولی کا نوٹس لے لیا۔

وزیر اعظم آفس کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ پولیس، ایکسائز، کسٹمز، رینجرز اور ایف سی اہلکاروں کی کراچی طورخم اور کراچی چمن روٹ پر ٹرکوں سے کرایہ وصولی کی شکایات بڑھتی جارہی ہیں، زبردستی کرایہ وصولی سے نہ صرف ذرائع آمدورفت کی کاسٹ میں اضافہ ہوتا ہے بلکہ ملک کی بدنامی بھی ہوتی ہے۔ غیر قانونی طور پر کرایہ وصولی اور بھتہ خوری کمزور نگرانی یا چشم پوشی کی علامت ہے، غیر قانونی کرایہ وصولی یا بھتہ خوری ایکسائز اینڈ ڈیوٹی قوانین پر سوالیہ نشان ہے، بادی النظر میں بھتہ خوری کی پشت پناہی سے حاصل کی گئی رقوم حکام بالا تک جاتی ہے۔

وزیراعظم آفس کی جانب سے کہا گیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے معاملے پر سختی سے نوٹس لیا ہے اور چیک پوسٹوں سے متعلق قوائد ضوابط میں تبدیلی کی ہدایت کی ہے۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی ہے کہ ملک بھر میں چیک پوسٹوں کی تعداد کم کی جائے، تمام ادارے ملٹی ایجنسی مشترکہ چیک پوسٹیں قائم کریں، عملدرآمد نہ ہونے کی صورت میں چیک پوسٹس کے گراونڈ اسٹاف کے خلاف بھرپور ایکشن لیا جائے گا۔ اس کے علاوہ سپروائزری آفیسرز اور وزارتوں میں انتظامی سربراہان کے خلاف بھی کارروائی ہوگی۔

آرمی چیف کی سندھ کے نوجوانوں کے نمائندہ وفد سے ملاقات اور خطاب

کسی بھی ملک کا حسن اور مستقبل اس کی جمہوریت میں ہی مضمر ہوتا ہے کیونکہ جمہوریت میں جمہور کی آواز سنی جاتی ہے اس کے مسائل حل کیے جاتے ہیں انہیں سہولیات پہنچائی جاتی ہیں اور حکمران عوام کے خادم ہوتے ہیں اس طرح جمہوری ملک ترقی کی راہ پر گامزن ہوجاتے ہیں ۔ جمہوریت چاہے جیسی ہی ہو بہترین ہی ہوتی ہے ۔ اسی سلسلے میں چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سندھ سے آئے ہوئے نوجوانوں کے وفد سے ملاقات کی اور ان سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کا مستقبل جمہوریت اور میرٹ سے ہی وابستہ ہے، یہ تبدیلی کی شروعات ہیں ،کامیابی لہروں کیخلاف چلنے والے کو ملتی ہے، راہ میں رکاوٹیں آتی ہیں ۔ پاکستان کو وہاں لے جائیں گے جہاں حق بنتا ہے، ملکی ترقی کیلئے میرٹ بنیاد ہوگا ، خود کو ایمانداری سے نہ دیکھا تو کوئی مدد نہیں کرے گا، پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر)کی جانب سے جاری بیان کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے راولپنڈی میں سندھ سے آئے نوجوانوں کے وفد نے ملاقات کی، نوجوانوں سے خطاب کرتے ہوئے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ سندھ، پاکستان کی جان ہے، پاکستان بنانے میں سندھ کا بہت اہم کردار ہے،سندھ کے جوان ہمارے بہترین، محنتی، وفادار جوان ہیں ، اگر ہم اپنے آپ کو ایمانداری سے نہیں دیکھیں گے تو کوئی ہماری مدد نہیں کرے گا ۔ جنرل قمرجاوید باجوہ نے کہا کہ ہماری فوج میں میرٹ کا نظام ہے، ہم نے پاکستان کو وہاں لے جانا ہے جو اس کا حق بنتا ہے ۔ یہ سب کو سوچنا پڑے گا کہ ہم نے اگر پاکستان کو آگے لے کر جانا ہے تو میرٹ کی بنیاد پر لے کر جانا ہے کیونکہ محنت کا کوئی نعم البدل نہیں ہے، پاکستان کا مستقبل نوجوانوں کے ہاتھوں میں ہے اور اس کی سمت کا تعین نوجوان بحیثیت رہنما کریں گے،کسی مذہب میں بھی کسی کا حق مارنے کی اجازت نہیں ، اخلاقی قوت فوجی قوت سے زیادہ ہوتی ہے،جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ مجھ سے لوگ پوچھتے ہیں ، امریکہ بھی گیا، وہاں بھی پوچھا کہ کیسے ہم نے دہشت گردی کے خلاف کامیابیاں حاصل کیں ، میں دو باتیں کرتا ہوں ایک تو ہماری مائیں ایسی ہیں جو ملک پر جان نچھاور کرنے والے بچے پیدا کرتی ہیں ،دوسرا ہمارے جوان ایسے ہیں کہ پسینہ مانگتا ہوں تو وہ خون دیتے ہیں ،ہمارے نوجوان بہت مضبوط ہیں جو سمندر کا رخ تبدیل کرسکتے ہیں ،آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان کا مستقبل نوجوانوں کے ہاتھوں میں ہے اور اس کی سمت کا تعین نوجوان بحیثیت رہنما کریں گے ۔ جس سمت میں نوجوان جائیں گے ،پاکستان اسی سمت میں جائے گا ۔ کامیاب آدمی پانی کے رخ کے مخالف چلتا ہے اور اس کی راہ میں بہت رکاوٹیں ہوتی ہیں ۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ میں جب امریکا گیا تو کہا گیا آپ کی فوج نے بہت اچھا کام کیا، آپ نے ملک سے دہشت گردوں کے خاتمہ کرنے میں کس طرح کامیاب ہوئے ۔ انہوں نے پاکستانی ماوں کو خراج تحسین پیش کیا کہ ہماری ماوں کے بچے ملک پر جان نچھاور کرنے کیلئے تیار رہتے ہیں اور ہمارے جوان ایسے ہیں کہ میں ان سے پسینہ مانگتا ہوں تو وہ خون دیتے ہیں ۔ آرمی چیف نے کہا کہ ہماری فوج کا اصول ہے کہ ہمارا افسر ہمیشہ سب سے آگے ہوتا ہے ۔ پاکستان کی مسلح افواج پیشہ وارانہ لحاظ سے دنیا بھر میں ایک مقام رکھتی ہیں اور اپنی صلاحیتوں کا لوہا بھی منوا چکی ہیں ۔ اسی وجہ سے آرمی چیف نے کہاکہ ہماری فوج کا اصول ہے کہ ہمیشہ ہمارا افسر سب سے آگے ہوتا ہے ۔ اس میں کوئی دوسری رائے بھی نہیں کہ جب کمانڈ آگے ہوتی ہے تو پھر پیروکار اس کی پیروی کرتے ہیں ۔

208 ارب روپے کی معافی، وزیراعظم نے نوٹس لے لیا

وزیراعظم عمران خان نے بڑے صنعتکاروں کو ٹیکس معاف کرنے کے حوالے سے میڈیا پر چلنے والی خبروں کا نوٹس لے لیا، وزیراعظم نے وفاقی وزیر برائے توانائی عمر ایوب اور معاون خصوصی ندیم بابر سے تفصیلات مانگ لی ۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ ٹیکس معافی سے متعلق ابہام کو دور کیا جائے اور عوام کو واضح انداز میں بتایا جائے کہ ٹیکس کیوں معاف کیا گیا ہے ۔ معاشی ٹیم 208 ارب روپے معاف کرنے کی مکمل تفصیل قوم کے سامنے رکھے جبکہ 208 ارب روپے معاف کرنے سے متعلق حقائق کو توڑ مروڑ کر پیش کیا جا رہا ہے، گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سرچارج سے متعلق حقائق بتانا ضروری ہے، قومی خزانے کی حفاظت کی ذمہ داری خود لی، کسی کو نہیں نوازا جائے گا ۔ وزیر اعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا ۔ وزیراعظم نے کہا کہ حکومت بھرپور کوشش کر رہی ہے کہ کاروبار ی سرگرمیوں کے لئے ہر ممکن سہولیات فراہم کی جائیں ۔ جب تک کاروبار میں ;200;سانیاں پیدا نہیں ہونگی اس وقت تک معیشت کا پہیہ نہیں چل سکتا ۔ وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نے دن رات ایک کر کے مودی کے بیانیہ کو شکست دی، جب تک کشمیریوں کو حق نہیں ملتا ہم کھڑے رہیں گے،وزیر اعظم مظلوم کشمیریوں کی ;200;واز کو دنیا تک پہنچانے میں کلیدی کردار ادا کر رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ کل یورپی یونین اور اسلامی ممالک کی تنظیم (او آئی سی)کی طرف سے ایک موثر آواز کشمیریوں کی حمایت میں سامنے آئی وفاقی کابینہ کے اجلاس میں 10 نکاتی ایجنڈے پر غور کیا گیا جس میں سے 8 نکات کی منظوری دی گئی جبکہ 2 کو موخرکر دیا ۔ منگل کووفاقی کابینہ کے فیصلوں بارے وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے وفاقی وزیر عمر ایوب اور ندیم بابر کے ہمراہ میڈیا کوبریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ جی ;200;ئی ڈی سی کا مسئلہ عوامی مفاد میں حل کیا، حکومت کو پہلے سال45 ارب روپے حاصل ہوں گے، جی ;200;ئی ڈی سی میں کسی کو کوئی رعایت نہیں دی گئی، کمپنیوں سے فرانزک ;200;ڈٹ کی شرط پر عمل کا کہا گیا ہے ۔

ہیلتھ کارڈ اچھا کام لیکن ہسپتالوں کی حالت زارخراب

ہیلتھ کارڈ اچھا کام ہے لیکن ہسپتالوں کی حالت زار انتہائی خراب ہے ۔ عمران خان خود جا کر اچانک ہسپتالوں کا دورہ کریں تو اُن پر حقیقت حال ;200;شکارہ ہوجائے گی ۔ ہیلتھ کارڈ دینے کا تب ہی فائدہ ہے جب صحت کی سہولیات بھی صحیح طریقے سے فراہم ہونگی ۔ جناب خان صاحب مےں آج بھی اس بات پر قائم ہوں کہ آپ کا وژن اور آپ کی سوچ قائداعظم کی ہے اور مےں اس بات پر پختہ ےقےن رکھتا ہوں ۔ پاکستان مےں پہلی دفعہ قائد اعظم کے ارادوں والا لےڈر آےا ہے لےکن مےں ےہ بات بھی کہنے پر مجبور ہوں کہ ارادے ،ارادے ہی رہتے نظر آرہے ہےں ۔ خان صاحب آپ بلو خےل ہےں ،مےں بھی بلوخےل ہوں ۔ آپ کا آبائی گھر بلوخےل روڈ پر ہے اور مےرا گھر بھی بلوخےل روڈ پر ہے ۔ آپ مےانوالی کی عزت ہےں ،مےانوالی کی شان ہےں ۔ مجھے اچھی طرح یاد آج سے پندہ سولہ سال پہلے آپ میرے ساتھ گاڑی پر سفر کرتے تھے تو راستے میں سڑکوں پر سوئے ہوئے لوگوں کو دیکھ جو ان کے حوالے سے ہمدردی پیدا ہوتی تھی، آج آپ اس کے تحت کام کررہے ہیں گو کہ آپ نے ان کیلئے شیلٹر ہومز بنائیں ہیں ، ان پر ابھی مزید کام کرنے کی ضرورت ہے ۔ آپ نے وعدہ کےا کہ بلکسر تلہ گنگ روڈ بنے گی ۔ جتنے اےکسےڈنٹ ہو تے ہےں اسی وجہ سے ہو تے ہےں ۔

عبدالغنی مجید سمیت 7 ملزمان نے 10 ارب 66 کروڑ روپے کی پلی بارگین کر لی

اسلام آباد: جعلی اکاؤنٹس کیس کے مرکزی کردار عبدالغنی مجید سمیت 7 ملزمان نے نیب سے10 ارب 66 کروڑ روپے کی پلی بارگین کر لی۔

ذرائع کے مطابق سندھ حکومت اور اسٹیل ملز کی زمینوں میں خورد برد کا معاملے پر اہم  پیش رفت ہوئی ہے، عبدالغنی مجید سمیت 7 ملزمان نے 10 ارب 66 کروڑ روپے کی پلی بارگین کر لی ہے، پلی بارگین کرنے والے ملزمان میں حماد شاہد، طارق بیگ، محمد اقبال، محمد توصیف،  عامر ، سراج شاہد بھی شامل ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزمان نے 266.175 ایکڑ رقبہ اراضی نیب کو واپس کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے، چیئرمین نیب نے پلی بار کی درخواست منظور کرلی  ہے جو حتمی منظوری کے لئے احتساب عدالت اسلام آباد کے روبرو پیش کی جائے گی۔

مسئلہ کشمیر پر چین کے وزیر خارجہ نے احتجاجاً دورہ بھارت منسوخ کردیا

چین کے وزیر خارجہ نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر بھارت کا سرکاری دورہ منسوخ کردیا تاہم وہ ہفتے کے روز پاکستان آئیں گے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق چین کے وزیر خارجہ وانگ ای کو بھارتی قومی سلامتی کے مشیر اجیت دوول سے ملاقات کے لیے نئی دلی آنا تھا تاہم مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورت حال پر احتجاجاً اپنا دورہ منسوخ کردیا ہے۔

وزیر خارجہ وانگ ای اور قومی سلامتی کے مشیر اجیت دوول چین اور بھارت کی سرحدی تنازع کے حل کے لیے تشکیل دی گئی کمیٹی کے خصوصی نمائندے بھی ہیں اور یہ دورہ بھی سرحدی تنازعات کے لیے ایک اجلاس میں شرکت کے لیے تھا۔

دوسری جانب چینی وزیر خارجہ بھارتی دورے پر پاکستان کے دورے کو ترجیح دیتے ہوئے ہفتے کو اسلام آباد پہنچ رہے ہیں جہاں چین، افغانستان اور پاکستان کے درمیان سہہ فریقی اجلاس میں شرکت کریں گے۔

واضح رہے کہ 5 اگست کو مقبوضہ کشمیر کے خصوصی حیثیت کے خاتمے اور دو حصوں پر تقسیم کے غیر آئینی فیصلے پر چین نے شدید احتجاج کرتے ہوئے بھارت سے اپنے فیصلے کو واپس لینے کا مطالبہ کیا تھا اور مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فوج کے مظالم پر تشویش کا اظہار بھی کیا تھا۔

پلواما حملے پر بھارتی سیکیورٹی فورس نے وزارت داخلہ کے دعوے کا بھانڈا پھوڑ دیا

نئی دلی: بھارت کی سینٹرل ریزرو پولیس فورس  کی محکمہ جاتی رپورٹ میں پلواما حملے پر وزارت داخلہ کی انکوائری رپورٹ کو مسترد کرتے ہوئے تہلکہ خیز انکشاف کیا گیا ہے کہ 14 فروری کو پلواما میں سیکیورٹی اہلکاروں کے قافلے پر حملہ انٹیلی جنس ناکامی کے باعث پیش آیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق 14 فروری کے پلواما حملے میں 44 اہلکاروں کی ہلاکت پر سینٹرل ریزرو پولیس فورس کی جانب سے محکمہ جاتی انکوائری کی رپورٹ منظرعام پر آگئی ہے جس میں وزارت داخلہ کی رپورٹ کو مسترد کرتے ہوئے اعتراف کیا گیا کہ حملہ انٹیلی جنس کی مکمل ناکامی تھا۔

سی آر پی ایف کی تحقیقاتی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حملے سے پہلے کار بم حملے سے متعلق خبردار نہیں کیا گیا اور نہ ہی فورس کے ساتھ احتیاطی اقدامات اٹھانے کے حوالے سے کوئی ان پٹ شئیر کیا گیا تھا البتہ صرف بارودی سرنگ دھماکوں سے متعلق عمومی الرٹ جاری کی گئی تھی تاہم خود کش کار بم دھماکے کی کوئی اطلاع نہیں دی گئی تھی۔

قبل ازیں 14 فروری کے پلواما حملے پر وزارت داخلہ کی جانب سے جاری انکوائری رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ پلواما حملے میں انٹیلی جنس کی ناکامی کا تاثر غلط ہے۔ انٹیلی جنس اداروں کی کارکردگی بہت اچھی اور سمت درست جانب ہے۔

واضح رہے کہ رواں برس 14 فروری کو پلواما میں بھارتی سیکیورٹی فورس کے قافلے پر خود کش کار حملے میں 44 اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔

Google Analytics Alternative