Home » 2019 » September » 07

Daily Archives: September 7, 2019

پاکستان کشمیریوں کوکبھی تنہا نہیں چھوڑے گا، آرمی چیف

راولپنڈی: آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ کا کہنا ہے کہ کشمیرتکمیل پاکستان کا نا مکمل ایجنڈا ہے اورپاکستان کشمیرکوکبھی بھی حالات کے رحم وکرم پرتنہا نہیں چھوڑے گا۔

آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ نے جی ایچ کیومیں یوم شہدا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ قیام پاکستان سے لے کر بقاء پاکستان کا سفر ہمارے شہدا کی قربانیوں سے سجا ہوا ہے، پاکستان کی بنیادوں میں شہیدوں کا لہو شامل ہے، جب بھی ضرورت پڑی وطن کے بیٹوں نے لبیک کہا، جب تک ہمارے پاس ایسے والدین موجود ہیں جو وطن پر جان قربان کرنے والے سپوت پیدا کرتے ہیں تب تک پاکستان کو کوئی قوت نقصان نہیں پہنچا سکتی۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاکستان امن و سلامتی کا پیغام دیتا ہے اوریہ پیغام پورے خطے اور دنیا کے لیے ہے۔

آرمی چیف نے اپنے خطاب میں کشمیرمیں جاری بربریت سے متعلق کہا کہ کشمیرمیں ریاستی دہشتگردی عروج پرہے، کشمیر تکمیل پاکستان کا نا مکمل ایجنڈا ہے۔ کشمیر پاکستان کی شہہ رگ ہے، پاکستان کشمیرکوکبھی بھی حالات کے رحم و کرم پرتنہا نہیں چھوڑے گا جب کہ کشمیریوں پر ظلم ہمارے صبر کا امتحان ہے۔ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے، کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں عالمی تنظیموں کیلیے لمحہء فکریہ ہیں۔

کرنٹ کے باعث 35 میں سے19 اموات کی ذمہ دار کے الیکٹرک قرار

اسلام آباد / کراچی: نیپرا کی تحقیقاتی ٹیم نے کرنٹ لگنے کے 35 میں سے 19 واقعات میں اور بجلی کی طویل بندش پر کراچی الیکٹرک کو ذمہ دارقرار دیا ہے۔ 

کراچی میں حالیہ بارشوں کے باعث کرنٹ لگنے سے اموات اور طویل لوڈ شیڈنگ پر نیپرا کی تحقیقاتی ٹیم نے اپنی رپورٹ اتھارٹی کو جمع کرادی اور نیپرا نے کراچی الیکٹرک کمپنی کے بارے میں تحقیقاتی رپورٹ جاری کردی ہے۔

رپورٹ کے مطابق کراچی میں کرنٹ لگنے سے ہونے والی 35 اموات میں سے 19 افراد کی موت کا ذمہ دار کے الیکٹرک کو قرار دیا گیا ہے. رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بجلی کے طویل بریک ڈاؤن کی ذمہ داربھی کے الیکٹرک ہی ہے۔

نیپرا حکام کے مطابق قیمتی جانی نقصان پر کےالیکٹرک کو شوکاز نوٹس جاری کردیا گیا ہے اور  کے الیکٹرک کےخلاف قانونی کارروائی بھی ہوگی۔

 

مسئلہ کشمیر، بین الاقوامی برادری کی خاموشی معنی خیز………

مقبوضہ وادی کی صورتحال انتہائی ابتر ہوچکی ہے، بین الاقوامی میڈیا نے بھی مودی سرکار کے عزائم آشکارا کردئیے ۔ اس کے ظلم و ستم کا بھانڈا اس وقت پھوٹا جب پیلٹ گن کی فائرنگ سے ایک نہتہ کشمیری نوجوان جام شہادت کے رتبے پر فائز ہوا ۔ بھارت کچھ اور شور مچا رہا تھا لیکن بین الاقوامی میڈیا نے واضح بتایا کہ وہ بھارتی ظلم و ستم کی وجہ سے شہید ہوا اسی طرح وہاں پر ہر قسم کی بنیادی سہولیات ناپید ہوچکی ہیں ۔ وزیراعظم پاکستان نے بھی عالمی دنیا کے ضمیر کو جھنجوڑتے ہوئے کہاکہ مقبوضہ وادی کے مظالم پر دنیا کیوں خاموش ہے، جب مسلمانوں پر ظلم ہوتا ہے تو کیا اقوام عالم کی انسانیت مر جاتی ہے، مسلمانوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑے جاتے ہیں ، دنیا بھر میں بسنے والے 1;46;3 ارب مسلمانوں کو کیا پیغام دیا جارہا ہے ۔ عمران خان نے ٹویٹ میں کہا ہندو بالا دستی کے نظریے میں فاشسٹ مودی سرکار کے مقبوضہ کشمیر اور بھارت میں مسلمانوں کے قتل عام و نسل کشی کے مکروہ عزائم پوری دنیا کے سامنے آچکے ہیں ، انسانی حقوق سمیت تمام بین الاقوامی قوانین کی بھارت نے پامالی کی ہے، مقبوضہ وادی کے ہسپتالوں میں طبی سہولیات ختم ہوچکی ہیں ، بنیادی اشیائے ضروریہ کی شدید قلت ہے، مواصلات پر پابندی ہے، وادی کے کشمیریوں کی آواز کو دنیا تک پہنچنے میں رکاوٹیں پیدا کی جارہی ہیں ، انہیں اپنے خاندانوں سے کاٹ دیا گیا ہے، وزیراعظم کی یہ بات بالکل درست ہے کہ وہاں پر اتنی خوفناک اور دل ہلا دینے والی کہانیاں ہیں جن کو نامعلوم انسانی حقوق کی علمبردار تنظی میں اس طرح سن اور برداشت کررہی ہیں ۔ دنیا کے خاموش تماشائی بننے کی وجہ سے بھارت مودی کے اکھنڈ بھارت عزائم کو تقویت مل رہی ہے ۔ وقت تقاضا کررہا ہے کہ دنیا آگے بڑھے اور عملی طورپر اپنا کردارادا کرے لیکن ایسا ہوتا دکھائی نہیں دے رہا اسی وجہ سے وزیراعظم پاکستان نے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ مسئلہ کشمیر کے حوالے سے وہ اپنی خاموشی توڑے ورنہ مودی کا یہ اکھنڈ بھارت کا مبینہ عزم پوری دنیا کو ایک خطرناک جنگ میں جھونک دے گا اور پھر ہر طرف تباہی ہی تباہی ہوگی ۔ ادھروزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت ایف بی آر کا اجلاس ہوا ۔ اجلاس میں وزیراعظم نے کہاکہ ایف بی آر میں اصلاحات اور بدعنوانی کا خاتمہ اولین ترجیح ہے، عوام کے اعتماد کی بحالی سے ٹیکس نیٹ وسیع کرنے میں مدد ملے گی، ایف بی آر کی تمام ٹی میں کسی بھی شخصی ملاقات کی ریکارڈنگ یقینی بنائیں ۔ چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے وزیراعظم کو ایک سالہ کارکردگی سے متعلق تفصیلی بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ رواں مالی سال اگست تک 1579 ارب روپے کا ریونیو اکٹھا کیا جا چکا ہے، جمع کیا جانے والا ریونیو پچھلے سال کے مقابلے میں 14;46;65فیصد زیادہ رہا ہے، رواں سال فائلرز کی تعداد میں 7 لاکھ 85ہزار سے زائد افراد کا اضافہ ہوا ہے، اندرونی محصولات میں بھی 28 فیصد اضافہ ہوا ہے ۔ ٹیکس سرٹیفکیٹ اجراء،ریٹرن اور آڈٹ مراحل کو کمپیوٹرائزڈ کیا جا رہا ہے، عوام الناس کی شکایت کے ازالے کےلئے آن لائن نظام کو بھی مزید موثر بنایا گیا ہے، اب تک زیر التواء دس ارب روپے کے ریفنڈز واپس کئے جا چکے ہیں جبکہ ریفنڈ کی مد میں 17 ارب روپے رواں ماہ کے آخر تک جاری کر دیئے جائیں گے،برآمدات آسان سکیم کے تحت برآمدی نظام کو بھی آسان بنایا جا رہا ہے ۔ دوسری جانب 6ستمبر کے حوالے سے اپنے پیغام میں وزیراعظم نے کہاکہ ہم بحیثیت قوم دشمن کی کسی بھی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لئے تیار ہیں ، میں دنیا کو خبردار کرتا ہوں کہ پاکستان جنگ نہیں چاہتا لیکن ہم سلامتی کو لاحق خطرات سے غافل نہیں رہ سکتے، ہ میں اپنے دلوں کو شہدا کی قربانیوں سے سرشار کرنا چاہیئے ،بھارتی حکومت مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کے پہاڑ توڑ رہی ہے اور کشمیریوں کے حقِ خودارادیت کو دبانے کے لئے ہر حربہ استعمال کیا جا رہا ہے، عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں ظلم بند کرانے کےلئے اپنا کردار ادا کرے ، کوئی شک نہیں کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے اور اس کی حیثیت میں کوئی بھی تبدیلی پاکستان کی سالمیت کے لئے براہِ راست چیلنج ہے ، پاکستانی حکومت اور عوام اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی حمایت جاری رکھیں گے اور کشمیری بھائیوں کو کبھی تنہا نہیں چھوڑیں گے ۔ پاکستان کسی بھی جارحیت کا پوری قوت سے جواب دینے کے لئے تیار ہے اورعالمی برادری جنگ کے تباہ کن اثرات کی ذمہ دار ہوگی ۔ 6 ستمبر ہماری قومی تاریخ میں یکجہتی کی علامت ہے ۔ اس دن ہمارے بہادر سپوتوں نے بے مثال قربانیاں دیں اور افواج نے ثابت کیا کہ پاکستان کا دفاع ناقابلِ تسخیر ہے ۔ 1965 کی جنگ میں پاک فوج نے ثابت کیا کہ عددی برتری کوئی حیثیت نہیں رکھتی اور ;200;ج ہ میں پھر6 ستمبر جیسی صورت حال کا سامنا ہے کیوں کہ ہمارا دشمن لائن ;200;ف کنٹرول کی خلاف ورزیاں کر رہا ہے ۔ مجھے اپنی مسلح افواج کی صلاحیتوں پر پورا اعتماد ہے اور مسلح افواج دشمن کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہیں اور ہماری افواج نے حال ہی میں اعلی پیشہ ورانہ مہارت کا ثبوت دیا ہے ۔ بھارتی حکومت مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کے پہاڑ توڑ رہی ہے اور کشمیریوں کے حقِ خودارادیت کو دبانے کےلئے ہر حربہ استعمال کیا جا رہا ہے، عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں ظلم بند کرانے کے لئے اپنا کردار ادا کرے ۔ کوئی شک نہیں کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے اور اس کی حیثیت میں کوئی بھی تبدیلی پاکستان کی سالمیت کے لئے براہِ راست چیلنج ہے ۔ پاکستانی حکومت اور عوام اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی حمایت جاری رکھیں گے اور کشمیری بھائیوں کو کبھی تنہا نہیں چھوڑیں گے ۔ اپنے ایک اوربیان میں کہاکہ ;200;ج مودی حکومت کی قابض فورسزکامقبوضہ کشمیر کے محاصرے کا33واں روزہے ، بھارتی فورسز کشمیری مردوں ، خواتین اور بچوں کے ساتھ ظلم کررہی ہیں ، محاصرے کی ;200;ڑ میں کشمیریوں کو قتل و زخمی کیا جارہا ہے ، کشمیریوں کو پکڑ پکڑ کر بھارتی جیلوں میں پھینکا جارہا ہے،بھارتی فورسز نہتے کشمیریوں پر پیلٹ گنز کابے دریغ استعمال کررہی ہیں ۔ ادھرایمنسٹی انڈیا نے مقبوضہ کشمیر میں مواصلاتی رابطوں پر پابندی اور لاک ڈاءون کے ایمنسٹی انڈیاخاتمے کی مہم شروع کردی ۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل انڈیا نے مقبوضہ کشمیر کے گورنر ستیاپال ملک کو خط لکھتے ہوئے ریاست سے پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔

آرمی چیف سے سعودی اور اماراتی وزرائے خارجہ کی ملاقات

سعودی اور اماراتی وزرائے خارجہ نے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ملاقات کی اور اس ملاقات میں انہوں نے مسئلہ کشمیر کے حوالے سے پاکستان کی مکمل حمایت کی یقین دہانی کرائی ۔ انھوں نے بھارتی اقدامات کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کو حل کرنے کیلئے مکمل حمایت کی یقین دہانی کرائی ۔ ;200;رمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کوسعودی عرب اوریواے ای کے ساتھ سٹریٹجک اوربرادرانہ تعلقات پرفخرہے، سعودی اورامارتی وزرائے خارجہ نے خطے میں امن واستحکام کےلئے پاکستانی کوششوں کوسراہا،دونوں وزرائے خارجہ کی کشمیر کی صورتحال سے نمٹنے کےلئے تعاون کی یقین دہانی کرائی ۔

مصباح الحق کو پی ایس ایل کے دوران معاوضہ نہیں ملے گا

عباس رضا: ہیڈکوچ و چیف سلیکٹر مصباح الحق کو پاکستان سپر لیگ کے لیے کام کے دوران پی سی بی سے معاوضہ نہیں ملے گا۔

قبل ازیں ہیڈ کوچ مکی آرتھر کو بورڈ کی جانب سے کراچی کنگز کی کوچنگ کی اجازت دے دی گئی تھی، تاہم اس دوران ان کو پی سی بی کی جانب سے دی جانے والی تنخواہ نہیں ملتی تھی، مصباح الحق بھی اگر کسی فرنچائز کے ساتھ وابستہ ہوجاتے ہیں تو پی ایس ایل شروع ہونے سے پانچ روز قبل اور دو روز بعد تک کی تنخواہ وصول نہیں کریں گے۔

یاد رہے کہ مصباح الحق کی ماہانہ تنخواہ 32 لاکھ کے قریب ہے۔ پی سی بی نے دوہری ذمہ داریاں سرانجام دینے والے سابق کرکٹرز کی حوصلہ شکنی کے لیے ایک پالیسی متعارف کرانے کا اعلان کیا تھا لیکن مصباح الحق کے معاملے میں یو ٹرن لیتے ہوئے انہیں پی ایس ایل میں بھی کام کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

کیا آپ 8 گھنٹے سے زیادہ سونے کے عادی ہیں؟

کہتے ہیں کہ کم از کم 8 گھنٹوں کی نیند لینا اچھی صحت کے لیے بہت ضروری ہے لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ بہت زیادہ سونا اچھی صحت کی علامت نہیں بلکہ نہایت خطرناک عمل ہے۔

حال ہی میں سامنے آئی ایک تحقیق میں دعویٰ کیا گیا کہ بہت زیادہ نیند فالج کے دورے کا خطرہ بڑھا دیتی ہے۔

یہ دعویٰ امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

تحقیق کے مطابق کم نیند کے ساتھ ساتھ بہت زیادہ سونے کو بھی عادت بنا لینا جان لیوا ثابت ہوسکتا ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ جو لوگ 8 گھنٹے سے زائد نیند لینے کے عادی ہوتے ہیں ان میں فالج کا خطرہ اوسط دورانیے کے نیند لینے والے افراد کے مقابلے میں دوگنا زیادہ ہوتا ہے۔

تحقیق کے مطابق اسی طرح جو لوگ رات بھر میں 6 گھنٹے سے کم سونے کو عادت بنالیتے ہیں ان میں اس جان لیوا مرض کے دورے کا خطرہ 4 گنا زیادہ ہوتا ہے کیونکہ ان کے دماغ کے مختلف حصوں کو خون کی سپلائی متاثر ہوتی ہے۔

10 ہزار افراد پر ہونے والی تحقیق میں بتایا گیا کہ رات کی اچھی اور مناسب دورانیے کی نیند بہت اہمیت رکھتی ہے مگر بہت زیادہ دیر تک بستر پر رہنا بلڈ پریشر کو بڑھا کر فالج کے خطرے میں 46 فیصد تک اضافہ کردیتا ہے۔

محققین کا کہنا کہ اس کی وجوہات ابھی واضح نہیں ہوسکیں اور اس حوالے سے مزید تحقیق کی ضرورت ہے کہ آخر کیوں بہت زیادہ نیند جان لیوا ثابت ہوتی ہے۔

وزیراعظم اور آرمی چیف لائن آف کنٹرول پہنچ گئے

راولپنڈی: وزیراعظم اور آرمی چیف لائن آف کنٹرول پہنچ گئے جہاں وہ جوانوں اور شہداء کے خاندانوں کے ساتھ بات چیت کریں گے۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق وزیراعظم عمران خان اور آرمی چیف جنرل قمر باجوہ لائن آف کنٹرول پہنچ گئے جہاں وہ جوانوں اور شہداء کے خاندانوں کے ساتھ بات چیت کریں گے، وزیراعظم اور آرمی چیف کے ہمراہ وزیرخارجہ، وزیردفاع اور چیئرمین کشمیر کمیٹی بھی موجود ہیں۔

مقبوضہ کشمیر میں اسرائیلیوں کے جمتے ہوئے قدم

مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے اور لاک ڈاءون کے بعد بڑی تعداد میں اسرائیلی مقبوضہ کشمیر پہنچ گئے ہیں ۔ علاقے میں دیکھا جا رہا ہے کہ اسرائیلی سیاحوں کی کثیرتعداد اب لیہہ کے سارے علاقہ میں سڑکوں سے لے کر ہوٹلوں تک اور ریستورانوں سے بودھ راہبوں کی خانقاہوں تک ہر جگہ موجود ہیں ۔ لیہہ کے بازاروں اور عام مقامات پر جگہ جگہ لداخی اور عبری (اسرائیلی) زبانیں بولی اور سنی جارہی ہیں ۔ اکثر دکانوں کو بھی اسرائیلی سیاحوں اور گاہکوں کے مزاج کے مطابق ضروریات کے ساز و سامان سے آراستہ کیا گیا ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں مسلسل 30ویں روز بھی سخت کرفیو اور مواصلاتی ذراءع کی معطلی کے باعث وادی کشمیر اور جموں خطے کے پانچ اضلاع میں معمولات زندگی مفلوج ر ہے ۔ 5اگست سے وادی کشمیرکا رابطہ باقی دنیا سے منقطع ہے جب بھارت نے جموں وکشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کردی تھی ۔ اس وقت سے انٹرنیٹ، موبائل اورلینڈ لائن سروسز معطل اورٹی وی نشریات بند ہیں ۔ مودی حکومت نے اسرائیل کے نقش قدم پر چلتے ہوئے مقبوضہ کشمیر میں ہندو آبادکاری کا منصوبہ تشکیل دیا ہے ۔ بھارتی جنتا پارٹی کے رہنما رام مادھو نے کہا ہے کہ منصوبے کے مطابق جموں و کشمیر میں دو سے تین لاکھ ہندوَوں کو ناصرف رہائش بلکہ مکمل سیکیورٹی بھی فراہم کی جائے گی ۔ مقبوضہ وادی کے مسلم اکثریتی علاقے میں ہندو بستیاں آباد کی جائیں گی ۔ مقبوضہ کشمیر میں 1990ء سے ہی اسرائیل فورسز کی تربیت ، سراغرساں امور میں تعاون اور کشمیری حریت پسندوں کے خلاف آپریشن کیلئے بھارتی فوج اور خفیہ ایجنسیوں کے ساتھ تعاون کررہا ہے ۔ اسرائیلی حکومت نے اپنے اس تعاون کو اب مزید مضبوط اور موثر بنانے کا فیصلہ کیا ہے اور اسرائیلی کمانڈوز کی سیاحوں کے روپ میں مقبوضہ کشمیر آمداسی سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔ کشمیری عوام یہ بات اچھی طرح جانتی ہے کہ بھارتی حکمران اسی طرح کشمیر میں مسلمانوں کو بے بس اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتے ہیں جسطرح اسرائیل نے فلسطین میں کیا ہے ۔ بھارتی حکمران کشمیر یوں کے جذبہ حریت کو کمزور کرنے اور اپنی حق پر مبنی جدوجہد آزادی سے دستبردار کرنے کیلئے مکمل طور پراسرائیل کی رہنمائی میں کام کرنا چاہتے ہیں ۔ اب بھارت بھی چاہتاہے کہ کشمیر میں اسرائیل کی موجودگی کو تعلیم، طب، کلچر اور تجارت کی شکل میں مضبوط اور موثر بنایا جائے ۔ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں نہتے کشمیریوں کا خون پانی کی طرح بہانا شروع کردیا اور گزشتہ دنوں مختلف علاقوں میں بیسیوں نوجوانوں ریاستی طاقت کے استعمال سے ابدی نیند سلادیا اور اب انکشاف ہوا ہے کہ پیلٹ گنز اور دیگر ہتھیاروں کے بعد اب بھارت نے مقبوضہ وادی میں اسرائیل ساختہ کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال شروع کردیا جو گھروں کو سیکنڈز میں جلا کر راکھ کردیتے ہیں ۔ پلوامہ میں تین نوجوانوں کی لاشیں کیمیائی ہتھیاروں کے حملے میں جلے ہوئے گھروں کے ملبے سے ملی ہیں ، جو جلنے کی وجہ سے شناخت کے قابل بھی نہ رہیں ۔ بھارت اور اسرائیل جموں و کشمیر اور فلسطین کے مقبوضہ علاقوں پر اپنا اپنا غاصبانہ قبضہ جاری رکھنے کے لئے کشمیری اور فلسطینی مسلمانوں کا خون بہانے میں کسی حد تک بھی جا سکتے ہیں اور انتہا پسند ہنود و یہود کے اس ظالمانہ کھیل میں انہیں امریکہ کی اشیرباد بھی حاصل ہے ۔ غزہ میں جدید ترین اور مہلک ہتھیاروں سے لیس اسرائیلی فوج نے30ہزار فلسطینیوں کے پرامن مارچ پر آتش و آہن کی بارش کر کے متعددافراد کو شہید کر دیا تو اس سے شہہ پا کر بھارتی فو ج نے مقبوضہ کشمیر میں سرچ آپریشن کے نام پر ضلع شوپیاں اور اسلام آباد میں حملے کر کے کشمیری نوجوانوں کو شہید اور دو سو سے زائد کو لہولہان کر دیا جن میں سے کئی کی حالت نازک ہے ۔ بی جے پی بظاہر قوم پرست جماعت ہے‘ مگر اس کے بیشتر رہنما انتہا پسند ہندو تنظیم’’ آر ایس ایس‘‘ (راشٹریہ سویم سیوک سنگھ) سے تعلق رکھتے ہیں ۔ اس تنظیم کے بانی مثلاً دمودر ساورکر‘ ڈاکٹر مونجے‘ ڈاکٹر کیشوہیڈ گوار‘ ایم ایس گوالکر وغیرہ ان یہودی رہنماؤں کے خیالات و نظریات سے متاثر تھے جنہوں نے صہیونیت کی بنیاد رکھی ۔ جس طرح صہیونیت کے بانیوں نے یہ وکالت کی کہ فلسطین صرف یہود کا ہے‘ چنانچہ عربوں کو وہاں سے نکل جانا چاہیے ۔ اسی طرح آر ایس ایس کے رہنماؤں کی بھی خواہش چلی آ رہی ہے کہ مسلمان بھارت سے نکل جائیں یا ’’ہندوسپرمیسی‘‘ قبول کر لیں ۔ یہی نظریاتی مطابقت اسرائیلی اور بی جے پی حکومتوں کو قریب لے آئی ۔ 2014ء میں جب پہلی مرتبہ مودی حکومت برسراقتدار آئی تو اسرائیلی حکمران طبقہ خوشی سے کھل اٹھا ۔ وجہ یہی کہ کانگریس کی بہ نسبت بی جے پی اسرائیلی حکومت کے زیادہ قریب ہے ۔ اس قربت کا عیاں مظاہرہ حالیہ غزہ جنگ کے دوران ملا ۔ کانگریس اور کمیونسٹ پارٹیاں فلسطینیوں پہ اسرائیل کی وحشیانہ کارروائیوں کیخلاف پارلیمنٹ میں قرارداد لانا چاہتی تھیں ، مگر بی جے پی سے تعلق رکھنے والے اسپیکر نے اجازت نہ دی ۔ پچھلے 63 برس میں یہ پہلا موقع تھا کہ بھارتی حکمران طبقہ ظاہری طور پر بھی مظلوم فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی نہ کرسکا ۔

راجہ پرویز اشرف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست مسترد

اسلام آباد: عدالت نے سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست کو مسترد کردیا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہرمن اللہ اور جسٹس محسن اختر کیانی نے سابق وزیراعظم اور رہنما پیپلزپارٹی راجہ پرویز اشرف کی ای سی ایل سے نام نکالنے کی درخواست پر پہلے سے محفوظ فیصلہ سنایا جس میں عدالت نے ان کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ راجہ پرویز اشرف ٹرائل کورٹ سے رجوع کریں۔

واضح رہے کہ راجہ پرویز اشرف نے بیرون ملک جانے کے لیے مشروط اجازت مانگی تھی اور ای سی ایل سے ایک دفعہ نام نکالنے کی استدعا کی تھی۔

 

Google Analytics Alternative