Home » 2019 (page 4)

Yearly Archives: 2019

گوگل سرچ کے اس نئے فیچر کو آزما کر دیکھا؟

انگلش ایسی زبان ہے جس میں الفاظ کے لکھنے اور بولنے کے تلفظ میں بہت زیادہ فرق ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ بیشتر افراد کے لیے ان کو بولنا بھی مشکل ہوتا ہے۔

تاہم اب گوگل نے آپ کے لیے الفاظ کے تلفظ کو سیکھنا آسان بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔

جی ہاں دنیا کے مقبول ترین سرچ انجن میں ایک نیا فیچر متعارف کرایا گیا ہے جو صارفین کو مشکل الفاظ کے درست تلفظ سے آگاہ کر ے گا۔

گوگل کے مطابق یہ فیچر اسپیچ ریکیگنیشن ٹیکنالوجی کو استعمال کرکے حروف کے ٹکڑے کرکے ساﺅنڈ بائٹ بنائے گا اور پھر مشین لرننگ ٹیکنالوجی کو استعمال کرے بتائے گا کہ اس کا درست تلفظ کیا ہے۔

آپ کو بس How do you pronounce [word] سرچ بار پر ٹائپ کرکے کلک کرنا ہوگا، جس کے بعد آپ کے سامنے درست تلفظ کا آڈیو کلپ آجائے گا۔

یہ فیچر انگلش میں دستیاب ہے اور اسپینش ورژن بہت جلد متعارف کرایا جائے گا۔

گوگل کی جانب سے ڈکشنری کی وضاحت میں تصاویر کا اضافہ بھی کیا ہے جو کہ انگلش حروف اسم جیسے اورنج سے شروع ہوتا ہے، اس فیچر کو بتدریج تمام زبانوں کے ترجمے تک توسیع دی جائے گی۔

گوگل نے یہ واضح نہیں کیا کہ وہ الفاظ کے تلفظ کے لیے کس سے مدد لے رہا ہے یعنی آکسفورڈ انگلش ڈکشنری یا کچھ اور۔

تلفظ جاننے والے فیچر میں گوگل نے ایک اور اضافہ بھی کیا ہے یعنی جب آپ سرچ کرلیں تو اپنے فون پر گوگل اسسٹنٹ ان ایبل کرکے اس لفظ کو فون کے مائیکروفون پر بولیں، جس پر اسسٹنٹ فیڈبیک دیتے ہوئے بتائے گا کہ یہ درست ہے یا نہیں۔

راک کو بھی اپنا خود کا ‘سپر ہیرو’ مل گیا

اگر یہ کہا جائے کہ اس وقت ہولی وڈ میں سب سے زیادہ کامیاب سپر ہیرو فلمیں بنائی جارہی ہیں تو غلط نہیں ہوگا، کیوں کہ ایسی ہی سپر ہیرو پر مبنی فلمیں سب سے زیادہ کمائی کررہی ہیں۔

کیا آپ جانتے ہیں کہ دنیا کی اب تک کی سب سے زیادہ کمائی کرنے والی فلم ‘ایونجرز اینڈ گیم’ ہے جو رواں سال ریلیز ہوئی تھی۔

اس فلم میں ہولی وڈ فلمز کے کئی سپر ہیروز ایک ولن کے خلاف اکٹھے ہوئے تھے۔

اینتھونی روسو اور جوائے روسی کی ہدایات میں بننے والی اس فلم نے دنیا بھر میں 2 ارب 79 کروڑ 80 لاکھ ڈالر سے زائد کا بزنس کیا۔

شاید یہی وجہ ہے کہ ہر اداکار اس وقت اپنے کیریئر میں کوئی نہ کوئی سپر ہیرو کردار ادا کرنے کے خواہش مند ہیں۔

ان میں سے ایک نامور اداکار ڈیوائن جونسن بھی ہیں، جنہیں دنیا ‘دی راک’ کے نام سے جانتی ہے۔

طویل عرصے سے رپورٹس تھی کہ ڈیوائن جونسن جلد ایک سپر ہیرو کا کردار نبھاتے نظر آئیں گے اور اب اداکار نے خود اپنے سپر ہیرو کردار کا پہلا پوسٹر اور فلم کی ریلیز کی تاریخ مداحوں کے ساتھ شیئر کردی۔

ایکشن کی دنیا کا حصہ بنتے ہوئے سپر ہیرو کردار ‘بلیک ایڈم’ جلد سامنے آنے والا ہے، جو کوئی اور نہیں بلکہ ڈیوائن جونسن نبھاتے نظر آئیں گے۔

اداکار نے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر اپنی فلم کا پوسٹر شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ان کا یہ سپر ہیرو کردار 2021 میں سینما اسکرینز پر ڈیبیو کرے گا۔

انہوں نے مزید لکھا کہ ‘جیسے سب ہی بچے سوچتے ہیں، مجھے بھی اپنے بچپن میں ایک سپرہیرو بننے کی خواہش تھی، جس کے پاس شاندار طاقتیں ہوں، جو ہمیشہ لوگوں کو برائی سے بچائے’۔

ڈیوائن کے مطابق ‘میرے لیے سب کچھ اس وقت تبدیل ہوا جب 10سال کی عمر میں سب سے بڑا سپر ہیرو سپرمین سامنے آیا، میں ہمیشہ سے سپرمین جیسا ہیرو بننا چاہتا تھا، لیکن پھر مجھے احساس ہوا کپ سپرمین وہ ہیرو تھا جو میں کبھی نہیں بن سکتا، کیوں کہ میں تو بہت ضدی تھا، لیکن میرا دل صاف تھا اور میں ایک اچھا بچہ تھا، بس میں ہر کام اپنے انداز سے کرنا چاہتا تھا’۔

انہوں نے لکھا کہ ‘اور اب اتنے سال گزرنے کے بعد میرے بچپن کا وہ خواب پورا ہوگیا، مجھے ڈی سی یونیورس کا حصہ بننے کا اعزاز ملا اور مجھے بلیک ایڈم جیسا کردار آفر کیا گیا’۔

اپنے کردار کے حوالے سے دی راک نے مزید بتایا کہ ‘بلیک ایڈم کے پاس وہی جادو اور طاقتیں ہیں جو سپرمین کے پاس تھی، بس ان میں فرق یہ ہے کہ وہ ضدی ہے اور الگ قسم کا سپر ہیرو ہے، جو اپنے انداز میں لوگوں کی مدد کرتا ہے’۔

ڈیوائن جونسن کا مزید کہنا تھا کہ ‘میں نے اپنے کیریئر میں اب تک ایسا کوئی کردار نہیں نبھایا، میں شکر گزار ہوں اس سفر کے لیے’۔

واضح رہے کہ بلیک ایڈم کردار کا آغاز سپرہیرو فلم ‘شیزام’ کے ساتھ ہوا تھا، اس سیریز میں بلیک ایڈم ایک منفی کردار تھا۔

ڈیوائن جونسن کی فلم ‘بلیک ایڈم’ 22 دسمبر 2021 میں ریلیز ہوگی۔

عالمی سطح پر مسلمان دہشت گردی کا شکار

دہشت گردی کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں لیکن نائن الیون کے بعد ہر واقعے کو اسلام سے جوڑا گیا ۔ آزادی اظہار کا یہ مطلب نہیں کہ کسی کے مذہبی جذبات کو مجروح کیا جائے لیکن یورپ میں مسلمانوں کی مساجد پر بھی حملے ہوئے ۔ 1979 میں سوویت یونین کی جانب سے افغانستان پر حملے کے بعد سے اگست 2019 تک دنیا بھر میں شدت پسندوں کی ;34;دہشت گرد کارروائیوں ;34; کا شکار ہونے والے افراد میں سے 90 فیصد مسلمان ہیں ۔ گزشتہ ہفتے فرانس میں کیے جانے والے ایک تحقیقی مطالعے میں اس امر کی تصدیق کی گئی ہے کہ 89;46;1 فیصد دہشت گرد کارروائیاں مسلم ممالک میں ہوئیں اور اس کا شکار ہونے والے مجموعی افراد میں سے 91;46;2 فیصد مسلمان ہیں ۔ تحقیقی مطالعے پر مشتمل یہ رپورٹ ’پولیٹیکل کرییٹوٹی فاوَنڈیشن‘ کی جانب سے تیار کی گئی ۔ رپورٹ کے مطابق مذکورہ مدت کے دوران شدت پسند تنظیموں نے دہشت گردی کی 33769 کارروائیاں کیں ۔ ان کارروائیوں میں 167096 افراد ہلاک اور 151431 زخمی ہوئے ۔ رپورٹ کے مطابق داعش تنظیم کی جانب سے یورپ کو خون میں نہلا دینے والی کارروائیوں میں سے 54 فیصد فرانس میں انجام دی گئیں ۔ دنیاکے نقشہ کو دیکھا جائے اور غور کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ امریکی اثر و رسوخ والے علاقے ہی دہشت گردی کا شکار ہیں بلکہ اب ان میں سے کئی ممالک خانہ جنگی کی لپیٹ میں آچکے ۔ اسلامی ممالک میں یہ سلسلہ رکتا یا تھمتا نظر نہیں آتا ۔ دہشت گردی کے خلاف صرف مسلمان ہی لڑ ر ہے ہیں ۔ اور دہشت گردی میں صرف مسلمان مر رہے ہیں جو کہ تقریباً 98 فیصد ہیں ۔ امریکا میں ہوئی ایک اسٹڈی کے مطابق امریکی میڈیا میں ایسے حملے کی زیادہ سرگرم طریقے سے رپورٹنگ کرتا ہے، جس میں مجرم مسلمان ہو ۔ تاہم اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ امریکا میں دائیں بازو کے انتہا پسند زیادہ حملوں میں ملوث پائے گئے ہیں ۔ جرائم میں ملوث غیر مسلم افراد کے مقابلے میں مسلمانوں کے بارے میں رپورٹنگ کا تناسب 449 فیصد زیادہ ہے ۔ کرائسٹ چرچ کے حملوں کے دو دن بعد ہی جرمنی میں کچھ میڈیا اداروں میں اس خونریز واقعے کے بارے میں کوئی شہ سرخی تک نظر نہیں آئی ۔ جرمنی میں مسلمانوں کی آبادی پانچ ملین کے قریب ہے ۔ جعفر لکھتے ہیں کہ گزشتہ جمعے وہ جرمنی کی ایک مسجد میں گئے اور نمازیوں سے نیوزی لینڈ میں ہوئے حملے پر ان کا ردعمل دریافت کیا ۔ ان لوگوں نے بتایا کہ وہ خوفزدہ ہیں اور خود کو غیر محفوظ خیال کرتے ہیں ۔ نیوزی لینڈ میں پرامن مسلمانوں کے قتل عام نے ایک بار پھر ثابت کر دیا ہے کہ مسلمان دہشت گرد نہیں بلکہ خود دہشت گردی کا شکار ہیں ۔ حقیقت یہ ہے کہ اس وقت ساری دنیا میں مسلمان مارے جا رہے ہیں ۔ ہ میں ان سب چیزوں کا مقابلہ کرنا ہے جس کے لیے اتحاد و اتفاق وقت کی اہم ترین ضرورت ہے ۔ اس وقت دنیا میں مسلمانوں کی تعداد دو ارب کے قریب ہے لیکن اتنی بڑی تعداد ہونے کے باوجود وہ منتشر ہیں کیونکہ ان کا کوئی ایک متفقہ پلیٹ فارم نہیں ہے جس سے دشمن فائدہ اْٹھانے کی کوشش کر رہا ہے ۔ مسلمانوں کے اندار اتحاد و اتفاق کے فقدان اور باہم دست و گریبان ہونے کی وجہ سے دوسری طاقتیں مسلمانوں کو وحشی اور ظالم قرار دے رہی ہیں جس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ۔ مسلمانوں کے اندر انتشار اور افتراق کی ایک وجہ یہ ہے کہ بیشتر مسلمان ممالک نو آبادیاتی نظام کے زیر تسلط رہے اور نو آبادیاتی تسلط کے خاتمے کے باوجود بیشتر مسلمانوں کے ذہنوں میں اس نظام کے اثرات اب بھی باقی ہیں ۔ ہماری نئی نسل کو جو نصاب پڑھایا جا رہا ہے و ہ نو آبادیاتی دور سے تعلق رکھتا ہے جس کے باعث ہمارے بچے مغرب کے نظام کو تو پڑھتے ہیں لیکن مسلمانوں کے شاندار نظام اور اس کی فیوض و برکات سے نابلد ہیں ۔ اسلامی نظام تعلیم نہ ہونے کے باعث مسلمانوں کے اندر اتحاد و اتفاق کی فضا نہیں پیدا ہو رہی ہے ۔ ہماری جامعات، کالجز اور سکولز کے لیے یہ نہایت ضروری ہو گیا ہے کہ و ہ دینی تعلیم اور مسلمانوں کی تاریخ کو نصاب کا حصہ بنانے کے لیے مشترکہ جدوجہد کریں ۔ اگر ہم اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں ، اسوہ حسنہ پر عمل کریں اور اسلام کی شاندار روایات کو اپنی زندگیوں کا حصہ بنائیں تو کوئی وجہ نہیں کہ مسلمان آج بھی دنیا کی ایک بڑی قوت بن کر نہ اْبھر سکیں ۔ وزیراعظم عمران خان نے ہیوسٹن میں اسلامک سوساءٹی آف نارتھ امریکا (اسنا) کنونشن سے ویڈیو لنک کے ذریعے براہ راست خطاب میں واضح کیا کہ اسلام امن کا مذہب اور امن سے رہنے کا درس دیتا ہے ۔ مسلمان ناصرف اپنے نبی ;248; سے محبت کرتے ہیں بلکہ پہلے آئے تمام انبیائے کرام کا احترام کرتے اور اْن پر ایمان رکھتے ہیں ۔ لیکن یہاں کیوں ہر مسلمان کو شک کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے ۔ کسی ایک شخص کے عمل کو پوری کمیونٹی سے نہیں جوڑا جا سکتا ۔ نائن الیون سے پہلے تو تامل ٹائیگرز دہشت گرد حملے کرتے تھے ۔ دہشت گردی کا کسی مذہب سے کوئی تعلق نہیں ہوتا ۔ کسی ایک شخص کے عمل کو مذہب سے نہیں جوڑا جا سکتا ۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں تمام غیر مسلم اقلیتوں کو ہر قسم کی مذہبی آزادی حاصل ہے جبکہ بھارت میں آج بھی مسلمان اور دیگر اقلیتیں غیر محفوظ اور حقوق سے محروم ہیں ۔ قائد اعظم نے ہندووَں کے رویے کے سبب الگ ملک کی جدو جہد کی تھی جب کہ مودی کا بھارت گاندھی اور نہرو کے بھارت کے برعکس ہے ۔ آج بھارت پر ایک انتہاپسندانہ نظریہ قابض ہو گیا ہے ۔ مودی حکومت مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں کو اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتی ہے ۔ مقبوضہ کشمیر کی قیادت کو حراست میں لیا گیا ہے اور ہزاروں نوجوانوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے ۔ کشمیریوں کو مسلمان ہونے کے علاوہ اس بات کی بھی سزا دی جا رہی ہے کہ وہ پاکستان سے محبت کرتے ہیں اور پاکستان کا حصہ بننا چاہتے ہیں اس لیے آزادکشمیر اور پاکستان کے لوگوں کا یہ فرض ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے بھائیوں اور بہنوں کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کریں اور ان کی تحریک کی کامیابی کے لیے سفارتی اور سیاسی محاذ پر اپنا بھرپور کردار ادا کریں ۔

سری لنکا میں مسلمان ووٹروں سے بھری 100 بسوں پر فائرنگ

کولمبو: سری لنکا کے شمال مغربی علاقے میں صدارتی انتخاب میں ووٹ دینے کے لیے جانے والے مسلم ووٹروں کی 100 سے زائد بسوں پر مسلح افراد نے فائرنگ کردی۔ اس حملے میں اب تک کسی جانی نقصان کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے۔

واضح رہے کہ سری لنکا میں نئے صدر کے انتخاب کےلیے آج سے ووٹنگ شروع ہوچکی ہے، جس میں صدر میتھری پالاسری کی جگہ سنبھالنے کےلیے حزبِ اقتدار سے سجیتھ پریماداسا اور حزبِ اختلاف سے گوٹابایا راجاپاکسا میں مقابلہ ہے۔

سری لنکن پولیس کے مطابق، یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب سری لنکا کے ساحلی قصبے پوتالام میں رہنے والے اقلیتی مسلم ووٹرز 100 سو سے زائد بسوں میں سوار ہو کر، ایک قافلے کی صورت میں ضلع منار کی طرف جارہے تھے، جہاں انہیں ووٹ ڈالنے تھے۔

شاہراہ پر مسلح افراد نے ٹائر جلا کر راستہ بند کیا ہوا تھا۔ جب بسوں کا قافلہ اس جگہ کے قریب پہنچا تو مسلح افراد نے اندھا دھند فائرنگ شروع کر دی جس سے دو بسوں کو نقصان پہنچا۔ حملہ آور ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے فرار ہوگئے۔

اس سال کے آغاز میں سری لنکا کے ایک مقامی، نام نہاد مسلم شدت پسند گروپ نے ایسٹر کی تقریبات پر حملے کیے تھے، جن کے بعد سے سری لنکا میں مسلمانوں کے خلاف نفرت میں غیرمعمولی اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔ پوتالام کے مسلمان ووٹر پہلے بھی سری لنکن حکومت سے یہ درخواست کرچکے ہیں کہ انہیں ووٹ ڈالنے کےلیے کئی کلومیٹر دور پولنگ اسٹیشنوں میں جانا پڑتا ہے جو ان کےلیے بہت مشکل اور جان جوکھم میں ڈالنے والا کام ہے۔ تاہم سری لنکن حکومت نے اس قصبے میں پولنگ اسٹیشن قائم کرنے سے صاف انکار کردیا۔

ایک الیکشن کمیشن نے سری لنکن حکومت پر کڑی نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ قانون نافذ کرنے والوں کو پہلے سے اندازہ تھا کہ اس طرح کا کوئی واقعہ ہوسکتا ہے لیکن ساری کارروائیاں حملہ ہوجانے کے بعد کی گئیں۔

شین واٹسن پاکستان میں پی ایس ایل کھیلنے کیلیے بے تاب

کراچی: شین واٹسن پاکستان میں پی ایس ایل میچز کھیلنے کیلیے بیتاب ہیں۔

پاکستان کرکٹ کی سب سے بڑی ویب سائٹ www.cricketpakistan.com.pkکے پروگرام کرکٹ کارنر ود سلیم خالق میں شین واٹسن نے کہا ہے کہ پانچویں ایڈیشن کے تمام میچز پاکستان میں کھیلنے کیلیے تیار ہوں،گزشتہ ایونٹ کے فائنل میں کراچی میں شاندار ماحول دیکھا، خود بھی دورے کا خوب لطف اٹھایا اور زندگی میں ایک یادگار وقت گزارا، سیکیورٹی انتظامات بھی بہترین تھے، دوبارہ پاکستان میں کھیلنے کیلیے بیتاب ہوں، جانتا ہوں کہ وہاں میرے پرستاروںکی بڑی تعداد موجود ہے، ان کے سامنے ایکشن میں نظر آنے کیلیے بیتاب ہوں۔

ایک سوال پر آسٹریلوی آل راؤنڈر نے کہا کہ پی ایس ایل ایک مشکل ٹورنامنٹ ہے،کرکٹ خاص طور بولنگ کا معیار بہت شاندار ہے، گزشتہ ایونٹ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کو باصلاحیت نوجوان کرکٹرز اور پاور ہٹرز کی خدمات حاصل تھیں،امید ہے کہ اس بار بھی ٹائٹل کے دفاع میں کامیاب ہوجائیں گے۔

شین واٹسن نے کہا کہ ٹی ٹین لیگ میں شرکت کا تجربہ اچھا رہا ہے، ایونٹ میں ورلڈکلاس کرکٹرز شریک ہیں،مختصر ترین فارمیٹ جسم پر بھی زیادہ بوجھ نہیں ڈالتا،شائقین بھی لطف اندوز ہوتے ہیں، ہماری ٹیم دکن گلیڈی ایٹرز بہترین کھلاڑیوں پر مشتمل ہے اور اچھا پرفارم کرے گی ۔

واٹسن کو سرفراز کے کم بیک کی پوری امید

شین واٹسن کو سرفراز احمد کے پاکستان ٹیم میں کم بیک کی پوری امید ہے، آسٹریلوی آل راؤنڈر کا کہنا ہے کہ انہوں نے بہترین انداز میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی قیادت کی، ٹیم نے گزشتہ ٹائٹل سے قبل فائنل بھی کھیلے،وہ اچھے کپتان ہی نہیں بلکہ بہترین وکٹ کیپر اور بیٹسمین بھی ہیں،پوری امید ہے کہ ورلڈکلاس کرکٹر کی پاکستان ٹیم میں واپسی ہوگی۔

ٹی 20 ورلڈ کپ پاکستان کو پیس اور باؤنس کا چیلنج درپیش ہوگا

شین واٹسن کا کہنا ہے کہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ میں پاکستان ٹیم کو پیس اور باؤنس کا چیلنج درپیش ہوگا،گرین شرٹس کی مختصر فارمیٹ میںکارکردگی اچھی ہے لیکن آسٹریلوی کنڈیشنز مختلف ہوں گی،خاص طور پر بیٹسمینوں کو پیس اور باؤنس والی پچز سے مطابقت پیدا کرنا ہوگی،پاکستان ٹیم ردھم میں آجائے تو کسی بھی حریف کیلیے مشکلات پیدا کرسکتی ہے۔

شین واٹسن بھی بابراعظم کی صلاحیتوں کے گرویدہ ہوگئے

شین واٹسن بھی بابر اعظم کی صلاحیتوں کے گرویدہ ہوگئے، آسٹریلوی آل راؤنڈر کا کہنا ہے کہ نوجوان بیٹسمین کی خوبی یہ ہے کہ وہ ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں بھی بغیر کوئی خطرہ مول لئے تیزی سے رنز بنانے میں کامیاب ہوجاتے ہیں، شاندار بیٹسمین کی صلاحیتوں پر کسی کو شک نہیں ہونا چاہیے۔

واٹسن نے وہاب کو اپنا فیورٹ پاکستانی کرکٹرز قرار دیدیا

شین واٹسن نے وہاب ریاض کو اپنا فیورٹ پاکستانی کرکٹر قرار دیدیا، آسٹریلوی آل راؤنڈر کا کہنا ہے کہ ورلڈکپ 2015 کا اسپیل آج بھی یاد ہے،میگا ایونٹ میں بڑا مشہور ٹاکرا ہوا تھا،وہاب ریاض کے پاس رفتار کا بڑا ہتھیار ہے، میں ایک بہترین انٹرنیشنل بولر کو اپنا فیورٹ پاکستانی کرکٹر سمجھتا ہوں۔

25 سال بعد موبائل سے ‘ایس ایم ایس’ ختم؟

دنیا بھر میں فیس بک کی زیرملکیت اپلیکشن واٹس ایپ کو ماہانہ ڈیڑھ ارب سے زائد افراد اپنے پیاروں سے رابطے کے لیے استعمال کرتے ہیں کیونکہ اس میں میسجز بھیجنا مفت ہے اور بس انٹرنیٹ درکار ہوتا ہے۔

مگر ایسا لگتا ہے کہ واٹس ایپ کو اپنے سب سے بڑے حریف کا سامنا ہونے والا ہے کیونکہ گوگل نے اینڈرائیڈ فونز میں ٹیکسٹ میسجز کو لگ بھگ واٹس ایپ جتنا ہی بہتر بنادیا ہے۔

گوگل کی جانب سے جمعرات کو بتایا گیا کہ دنیا کے مقبول ترین اسمارٹ فون آپریٹنگ سسٹم پر کام کرنے والے فونز پر گوگل میسجز ایپ کو اہم ترن اپ ڈیٹ کی گئی ہے جو فی الحال امریکا میں متعارف کرائی جارہی ہے۔

اس اپ ڈیٹ کی بدولت صارفین کو متعدد ایسے فیچرز مل سکیں گے جو اس وقت آئی فونز صارفین آئی میسجز یا واٹس ایپ پر استعمال ہوتے ہیں یعنی ریڈ ریسیپٹس اور گروپ چیٹس وغیرہ۔

گوگل رچ کمیونیکشن سروس (آر سی ایس) پر 2016 سے کام کیا جارہا تھا اور اس کے لیے گوگل نے دنیا بھر کے موبائل آپریٹرز اور اسمارٹ فون بنانے والی کمپنیوں سے اشتراک کیا مگر صارفین تک اس کی رسائی موبائل آپریٹرز کی سستی کی وجہ سے تاحال ممکن نہیں ہوسکی۔

آر سی ایس اینڈرائیڈ میں ایس ایم ایس یا شارٹ میسج سروس کی جگہ لے گا جس کو 25 سال سے زائد عرصہ ہوچکا ہے جبکہ صارفین اس پر وائی فائی پر چیٹ، ہائی ریزولوشن تصاویر اور ویڈیوز بھیجنے اور موصول کرنے کی سہولت، ریڈ رسیپٹ، ٹائپنگ انڈیکٹرز گروپ چیٹ اور گروپ چیٹس میں لوگوں کو ایڈ یا نکالنے جیسے فیچرز استعمال کرسکیں گے۔

گوگل کی پراڈکٹ منیجمنٹ ڈائریکٹر سانز آہاری نے ایک انٹرویو کے دوران اعتراف کیا کہ یہ اپ ڈیٹ بہت عرصے پہلے آجانی چاہیے تھی، کیونکہ اس وقت اینڈرائیڈ سسٹم میں ایس ایم ایس پروٹوکول میں صارفین کو جدید فیچرز دسیتاب نہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ موجودہ عہد کے تقاضوں کے مطابق کام کرنے والے فیچرز ہین، یہ درست سمت میں ایک اہم قدم ہے۔

آر سی ایس کو اینڈرائیڈ میسجز ایپ اوپن کرکے ٹرن آن کیا جاسکتا ہے اور مختلف نئے چیٹ فیچرز سامنے آجائیں گے ، اگر آپ کے جاننے والے کے پاس بھی یہ سسٹم ان ایبل ہو تو ٹیکسٹ میسجز خودکار طور پر نئے پروٹوکول استعمال کرنے لگیں گے، تاہم یہ سروس جمعرات کو اپ ڈیٹ کے بعد فی الحال صرف ایک فیصد اینڈرائٰڈ فونز میں دستیاب ہوگی، مگر امریکا بھر میں رواں سال کے آخر تک یہ نئے فیچرز صارفین کو دسیتاب ہوں گے۔

تاہم اس سروس میں اینڈ ٹو اینڈ انکرپشن موجود نہیں اور اس بارے میں سانز آہاری نے کہا کہ یہ ایک پیچیدہ معاملہ ہے اور اس حوالے سے تیکنیکی پیچیدگیوں کا سامنا ہے کیونکہ ہمیں شراکت داروں کے قانونی اور پالیسی معاملات کو بھی دیکھنا ہے۔

آر سی ایس کو گوگل نے رواں سال سب سے پہلے برطانیہ اور فرانس میں متعارف کرایا تھا اور اب امریکا میں اسے پیش کیا گیا ہے۔

سانز آہاری کے مطابق آر سی ایس لانچ ایک بڑا قدم ہے مگر یہ اختتام نہیں بلکہ اسے آگے بڑھایا جائے گا۔

فوٹو بشکریہ گوگل
فوٹو بشکریہ گوگل

آر سی ایس سروس کے لیے بھی واٹس ایپ کی طرح فون نمبر ضروری ہوگا۔

خیال رہے کہ گوگل نے اس حوالے سے گزشتہ سال اینڈرائیڈ میسجز کو متعارف کرایا تھا جس کا مقصد صارفین کو آر سی ایس کی ابتدائی جھلک دیکھنے کا موقع مل سکے اور وہ اسے اپنے فون میں اسٹینڈرڈ ایس ایم ایس ایپ کی جگہ استعمال کرسکیں۔

ایس ایم ایس 160 حروف کی وہ سروس ہے جو کئی دہائیوں سے موجود ہے مگر آج کے فونز زیادہ طاقتور اور صارف زیادہ فیچرز مانگتے ہیں اور یہی چیز واٹس ایپ اور میسنجر کی کامیابی کا باعث بنی۔

اب گوگل اس نئی سروس کے ذریعے انہیں ٹکر دینا چاہتا ہے جس میں دیگر فیچرز کے ساتھ گوگل کے ڈیجیٹل اسسٹنٹ کی خدمات بھی صارف کو حاصل ہوگی۔

بالوں کی خشکی دور کرنے میں مدد دینے والے آسان طریقے

سر میں خشکی بہت عام ہوتی جارہی ہے جس کا نتیجہ تکلیف دہ خارش کی شکل میں نکلتا ہے اور یہ مسئلہ صرف خواتین تک محدود نہٰں بلکہ مرد حضرات کو بھی اس کا سامنا ہوتا ہے اور اس سے بچنے کے لیے نت نئے شیمپوز کا استعمال کرتے ہیں۔

عام طور پر اس کی وجہ بالوں کی صفائی کا زیادہ خیال نہ رکھنا یا جلدی مسائل ہوتے ہیں تاہم گھر سے باہر لوگوں کی موجودگی میں یہ خارش شرمندگی کا باعث بھی بن سکتی ہے خاص طور پر خشکی اور جوئیں باہر نکلنا تو شرم سے پانی پانی بھی کرسکتا ہے۔

اس تکلیف سے نجات کے چند سادہ مگر دلچسپ ٹوٹکے بہت مددگار ثابت ہوتے ہیں جو پیش خدمت ہیں۔

ٹی ٹری آئل کو آزمائیں

یہ تیل عام طور کیل مہاسے اور چنبل کے علاج کے لیے استعمال ہوتا رہا ہے اور سائنسی طور پر ورم کش اور جراثیم کش خصوصیات رکھتا ہے، جس سے خشکی سے نجات میں مدد بھی مل سکتی ہے۔ ایک تحقیق میں کے مطابق ٹی ٹری آئل فنگس کی مخصوص اقسام سے لڑنے کے لیے زیادہ موثر ثابت ہوتا ہے۔ ایک اور تحقیق میں خشکی کے شکار 126 افراد پر اس تیل کو آزمایا گیا اور اس کی شدت میں نمایاں کمی ریکارڈ کی گئی جبکہ خارش اور چکنائی کا مسئلہ بھی کم ہوگیا۔ یہ تیل حساس جلد والے افراد میں خارش کا باعث بن سکتا ہے تو اسے ناریل کے تیل کی کچھ مقدار میں مکس کرکے لگانا بہتر ہوتا ہے۔

ناریل کا تیل

اس تیل کے متعدد فوائد ثابت ہیں اور اسے بالوں کی خشکی کے قدرتی ٹوٹکے کے طور پر صدیوں سے استعمال کیا جارہا ہے۔ اس کے استعمال سے جلد کی نمی بہتر ہوتی ہے اور خشکی کی روک تھام ہوتی ہے جو بالوں میں خشکی کو بدترین بناسکتی ہے۔ ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ ناریل کا تیل جلد کی نمی بہتر کرنے کے لیے موثر ہے جبکہ ایک اور تحقیق میں یہ ثابت ہوا کہ یہ تیل ناریل کے تیل کا 8 ہفتے تک استعمال کرنا سر کی خارش پر قابو پانے میں مدد دیتا ہے۔ نہانے سے پہلے تین سے پانچ چائے کے چمچ ناریل کے تیل سے سر کی مالش کریں اور ایک گھنٹے تک لگا رہنے دیں۔ اس کے بعد سر کو شیمپو سے دھولیں، اس کے علاوہ آپ ایسا شیمپو استعمال کرکے بھی اس کی افادیت کو دوگنا بڑھا سکتے ہیں جس میں ناریل کے تیل کا استعمال بھی ہوتا ہو۔

ایلو ویرا جیل

ایلو ویرا یا کوار گندل کا استعمال اکثر جلد پر لگائی جانے والی کریموں اور لوشن وغیرہ میں ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ یہ بالوں کی خشکی سے نجات کے لیے بھی فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔ ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ جراثیم کش اور فنگل کش ہونے کی وجہ سے ایلو ویرا جیل بالوں کی خشکی سے تحفظ فراہم کرسکتا ہے۔ اپنی خارش کو دور بھگانے کے لیے شیمپو سے پہلے ایلو ویرا کے تیل یا جیل کی مالش کریں۔ آلو ویرا میں ٹھنڈک کا عنصر خارش سے نجات دلانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

سیب کا سرکہ

سیب کا سرکہ بھی صحت کے لیے بہت فائدہ مند ہوتا ہے جو انسولین کی حساسیت کو بہتر کرنے اور جسمانی وزن میں کمی لانے میں مدد دے سکتا ہے، اس کے ساتھ ساتھ اسے بالوں کی خشکی سے نجات کے لیے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے۔ اس سرکے میں موجود تیزابیت کے بارے میں مانا جاتا ہے کہ یہ سر سے جلد کے مردہ خلیات کو نکالنے کا عمل متحرک کرنے میں مدد دیتا ہے۔ ایک چوتھائی کپ اس سرکے کو چوتھائی کپ پانی سے بھری اسپرے کی بوتل میں شامل کریں اور سر پر اس سے چھڑکاﺅ کریں۔ اپنے سر پر تولیہ لپیٹ لیں اور پندرہ منٹ سے ایک گھنٹے تک آرام سے بیٹھ جائیں جس کے بعد سر کو معمول کے مطابق دھولیں۔ یہ عمل ہفتہ بھر میں دو بار کرنا خشکی سے نجات دلا سکتا ہے۔

اسپرین بھی مددگار

اسپرین میں موجود ایک جز Salicylic acid ورم کش ہوتا ہے، یہ جز اسپرین کے ساتھ ساتھ متعدد اینٹی ڈینڈرف شیمپوز میں بھی ہوتا ہے، جو خشکی دور کرنے میں مد دیتا ہے۔ ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ Salicylic acid والے شیمپو بالوں کی خشکی ختم کرنے میں زیادہ موثر ہوتے ہیں۔ تو اسپرین سے بھی یہ فائدہ اٹھایا جاسکتا ہے اور اس مقصد کے لیے اسپرین کی 2 گولیوں کو پیس لیں اور اس سفوف کو بال دھونے سے قبل شیمپو میں ملالیں۔ اس مکسچر کو اپنے بالوں پر ایک سے دو منٹ تک لگا رہنے دیں اور پھر اچھی طرح دھولیں، اس کے بعد پھر سادہ شیمپو سے سر کو دھوئیں آپ اس کا اثر دیکھ حیران رہ جائیں گے۔

بیکنگ سوڈا کا استعمال

بیکنگ سوڈا بھی بالوں کی خشکی سے نجات کے لیے آسان اور فوری مدد فراہم کرسکتا ہے، بیکنگ سوڈا فنگل سے لڑنے میں مدد دیتا ہے جو خشکی سے علاج میں مددگار عنصر ہے، اسے استعمال کرنے کے لیے بیکنگ سوڈا کو براہ راست گیلے بالوں پر لگا کر سر پر مالش کریں۔ اس کے بعد ایک سے 2 منٹ آرام سے بیٹھ جائیں اور پھر اپنے بالوں کو معمول کے مطابق شیمپو سے دھولیں۔

ذہنی تناﺅ میں کمی لائیں

ذہنی تناﺅ صحت کے متعدد پہلوﺅں پر اثرات مرتب کرتا ہے، یہ عام جسمانی امراض سے لے کر ذہنی صحت کو متاثر کرتا ہے۔ ذہنی تناﺅ کے نتیجے میں طویل المعیاد بنیادوں پر جسمانی مدافعتی نظام بھی متاثر ہوتا ہے۔ کمزور مدافعتی نظام جسم کی مختلف فنگل انفیکشن سے لڑنے کی صلاحیت کم کردیتی ہے جو بالوں میں خشکی کا باعث بنتا ہے۔ ذہنی تناﺅ کو کنٹرول میں رکھنے کے لیے مراقبہ، یوگا، گہری سانسیں لینا وغیرہ مدد دے سکتے ہیں۔

اومیگا تھری فیٹی ایسڈز

اومیگا تھری فیٹی ایسڈز جسم کے لیے بہت اہم ہوتے ہیں جو خلیات کے لیے ہی ضروری نہیں بلکہ دل، مدافعتی نظام اور پھیپھڑوں کے افعال میں بھی مدد دیتے ہیں۔ اومیگا تھری فیٹی ایسڈ جلد کی صحت کے لیے بھی اہم ہیں، جو آئل بننے کے عمل اور ہائیڈریشن کو کنٹرول کرتے ہیں۔ جسم میں اس کی کمی مختلف علامات جیسے خشک بال، جلد اور بالوں کی خشکی کی شکل میں سامنے آتی ہیں، اس سے ہٹ کر بھی اومیگا تھری ورم میں کمی لانے والا جز ہے جس سے بھی خارش اور خشکی میں کمی آسکتی ہے۔ اومیگا تھری فیٹی ایسڈز مچھلی، السی کے بیج، اخروٹ اور دیگر غذاﺅں میں پائے جاتے ہیں۔

مولانا فضل الرحمان نے مارچ کے دوران مذہب کارڈ استعمال کیا، وزیراعظم

 اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان نے اسلام آباد دھرنے کے دوران مذہب کارڈ استعمال کیا۔

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت تحریک انصاف کور کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوا۔ اجلاس میں پنجاب اور خیبر پختونخوا کے وزرائے اعلی اور گورنرز بھی شریک ہوئے۔ اجلاس میں ملکی سیاسی اور معاشی صورتحال اور مہنگائی کنٹرول کرنے سے متعلق اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔

پی ٹی آئی منشور پر عمل درآمد سے متعلق حکمت عملی اور حکومتی معاشی اہداف اور ترقیاتی منصوبوں پر مشاورت ہوئی۔ کور کمیٹی نے تحریک انصاف کے منشور پر عمل درآمد کے لیے تجاویز دیتے ہوئے کہا کہ سیاسی مصلحتوں سے بالاتر ہو کر پارٹی منشور پر عمل درآمد کیا جائے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس میں مولانا فضل الرحمان کے پلان بی سے نمٹنے کے لیے لائحہ عمل پر بھی بات چیت کی گئی اور مولانا فضل الرحمان کی اداروں پر تنقید کی مذمت کرتے ہوئے فیصلہ کیا گیا کہ مولانا فضل الرحمان کی تقاریر پر قانونی چارہ جوئی کی جائے گی۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ مولانا نے آزادی مارچ کے دوران مذہب کارڈ استعمال کیا اور فضل الرحمان نے دھرنے سے کشمیرکاز کو شدید نقصان پہنچایا۔

دریں اثنا وزیراعظم نے میڈیا کے امور دیکھنے کے لیے 5 رکنی کمیٹی قائم کردی، کمیٹی کے ممبران میں فردوس عاشق اعوان، جہانگیر ترین، اسد عمر اور فواد چوہدری شامل ہیں۔

Google Analytics Alternative