Home » Author Archives: Admin (page 20)

Author Archives: Admin

سرمایہ پرستی کا شاخسانہ !

دیکھا جائے تو زندگی کے ہر شعبے میں انقلابی اصطلاحات کی ضرورت ہے اگر چہ اس دور میں عام آدمی ان اصطلاحات کو ایک فریب ہی سمجھتا ہے لیکن موجودہ سرمایہ دارانہ نظام میں یہ وقت کی ضرورت بھی ہے اور تقاضا بھی ۔جس طرح غریبی دور کرنے کے افسانے سنائے جاتے ہیں سماجی برائیوں کے خاتمے کی بات کی جاتی ہے اور سرمایہ دارانہ نظام کے استحکام کیلئے غریبی دور کرنے کے نام پر دنیا کے غریب ممالک کو زبردستی سرمایہ دارنہ نظام کے سرکل میں داخل کیا جارہا ہے ۔سرمایہ دارانہ نظام انسانوں کو ایسے حال پر رکھتا ہے کہ دیکھنے میں وہ معزز انسان نظر آئے لیکن اندر سے وہ کھوکھلا ہو چنانچہ اس سلسلے میں وقتاًفوقتاً غریبی دور کرنے کے اعلانات بھی ہوتے رہتے ہیں لیکن عملی اقدامت اٹھانے سے عموما گریز کیا جاتا ہے اور یہ اعلانات اپنی جگہ صحیح ہیں کہ غربت کی وجہ سے انسان کے جسم میں خون ہی نہ رہا تو اسے چوسا کس طرح جائیگا ؟ اس ظاہری طور پر غریبی دور کرنے کے اعلانات اور ہمارے سیاسی لیڈروں اور حکومتی اعلانات وغیرہ سب عالمی سرمایہ دارانہ نظام کی حصہ معلوم ہوتاہے اور ایسی پالیسیاں بنائی جاتی ہیں کہ عام آدمی اپنی معاشی ضروریات اور اخراجات پورا کرنے کیلئے وہ جانور وں کی طرح محنت کرتا ہے اور وہ خوشحالی کی چمک حاصل کرنے کیلئے اپنی ذندگی کی انتہائی ئی قیمتی لمحات کچھ ایسے طریقے سے ضائع کرتا ہے کہ وہ سوچنے اور شعور حاصل کرنے کے لمحات کو کو بھی اپنے پاس نہیں پاتا ہے ۔ یہ حقیقت ہے کہ زندگی ایک بار ملتی ہے اس لئے اس کا لطف اٹھانا چایئے اور کامیاب لوگ بھی وہ ہوتے ہیں جو بھر پور انداز میں زندگی گزارنے کا ہنر جانتے ہیں جیسے ہمارے لیڈر حضرات اور خواتین جو سیاست میں ہیں جن کے پاس دولت بھی ہوتا ہے اور شہرت بھی ، زندگی کی حرکت ان میں بھرپور نظر آتی ہے اور یہ ذہین اور فطین بھی ہوتے ہیں ان کا دماغ کمپیوٹر کی طرح کام کرتا ہے اور الیکشن کے دنوں میں ان کو عوام کی بھیڑ اچھی لگتی ہے یہ موقع شناس ہوتے ہیں اور اپنی زبان اور بیان سے عام آدمی کو اپنا گرویدہ بنالیتے ہیں اور معاملہ فہمی اور روشن دماغی کی وجہ سے وہ مشہور ہوتے ہیں اور عام آدمی بے چارہ تو ہمیشہ دھکے اور سرمایہ داروں کے مکے کھاتا ہے اور ووٹ کا حق استعمال کرتے ہیں اور ضرورت پڑ نے پر سرمایہ داروں کی کال پر سڑکوں پر نکلتے ہیں اور اس نشے میں بعض اوقات وہ خود کش بمبار کا نشانہ بن کر ان کے پرخچے بھی اٹھ جاتے ہیں ۔ سرمایہ داریت جسے کمرشلزم کا نام دیا جاتا ہے اس نے عام آدمی کیلئے خوش مزاجی اور زندہ دلی کو معدوم جنس بنادیا ہے ، بس اب تو نفسا نفسی ہے اورافراتفری ہے اور ہنگامہ خیزی ہے اور تیز رفتار زندگی کے دوڑ نے اکثریت کیلئے خوش دلی کو نایاب اور کمیاب بنادیا ہے اور سرمایہ دار کی قسمت میں کامیابی ہی کامیابی ہے۔عام آدمی تو نہ خوشی سے شادی کرسکتا ہے اور نہ بیوی کو رکھ سکتا ہے ا ور نہ چھوڑ سکتا ہے اسی ضرورت کو مد نظر رکھ کر ویانا میں طلاق میلے کی داغ بیل رکھی گئی ہے اور اسی طرز ممکن ہے کہ اس نوعیت پر آسان اور سستے طور پر خودکشی کرنے کے طریقے سکھانے کیلئے بھی میلے منعقد کئے جائینگے جس کے نتیجے میں ذندگی کا خاتمہ ممکن ہوسکے گا۔چونکہ انسان فطری طور پر جدت پسند ہے اور وہ نئی نئی ایجادات کرتا ہے اور اختراعات کا عمل کرتا ہے اور جدید نظریات کی بنیاد رکھ کر ذندگی کی گاڑی چلاتا ہے اور یہ بھی فطری تقاضہ ہے کہ انسان امیر ہو یا غریب وہ کچھ رومانی طبیعت بھی رکھتا ہے اور صنف مخالف کیلئے محبت کے معاملے میں بھی وہ سیلانی طبیعت کے مالک ہوتا ہے اور بعض اوقات اس کے دل میں دوسری شادی کی خواہش بھی پیدا ہوتی ہے ، عام طور پر اس فطری خواہش کو پورا کرنے کیلئے وہ شادی بھی عموما جلدی کرلیتا ہے اور ذندگی کی گاڑی چلانا شروع کرلیتا ہے اور اگر کوئی اچھی سے بیوی صابر اور شاکر بیوی مل گئی تو پھر وارے نیارے ہیں ۔ اگرچہ یہ بھی حقیقت ہے کہ نئے دور کے تقاضوں کا انکار ممکن نہیں ہے اور تخلیقی صلاحیتوں کے اندر نکھار پیدا کر کے ترقی کے منازل کو طے کیا جاسکتا ہے لیکن دور حاضر میں سائنسی ترقی اور مادی ضروریات اور معاشی اور اقتصادیات کے نئے نئے ڈھنگ اور ذرائع ابلاغ کے تنوع کے ساتھ دنیا میں اب کافی تبدیلی آگئی ہے اور اس تبدیلی کے ساتھ انصاف اور عدل کے معیار بھی بدل گئے ہیں ذندگی کی برق رفتاری نے انسان کو شارٹ کٹ راستہ اختیار کرنے پر مجبور کردیا ہے انسان مشینی دور میں مشین کی گراری کی طرح زندگی گزارنے پر مجبور ہے اور جو حقائق ہیں وہ بھت تلخ ہیں اقتصادی ترقی کی بجائے تباہ کاری کا گراف بلند ہوا ہے اور یہ ایک ایسی حقیقت ہے جو چھپانے سے چھپنے والا نہیں ہے ، انسانیت غربت کی چکی میں پس رہی ہے ایسے حالات میں اگر کنواروں کے گھر میں اگر ایک کنوارے نے شادیانے بجا بھی دئے تو کیا ؟ کل اسے مہنگائی کا عفریت، ٹیکسوں کا جدید بظام،غیرملکی سرمایہ کاری کے نام پر ملٹی نیشنل کمپنیوں کا عمل دخل ،نجکاری کے نام پر قومی دولت کو ہڑپ کرنے کے منصوبے، برآمدات کو بڑھانے کے نام پر ملکی کرنسی کی قیمت کم کرنے کے اعلانات ،اور عالمی اداروں سے قرض لے کر ملک چلانے کے کے طور وطریقے؟اور ایسی صورت میں کیا وہ ترقی کی منازل اور رفعت کی مکو پالے گا؟ یہ ایک کڑوا سوال ہے جس کا جواب آپ نے دینا ہے!۔

فائیو-جی نیٹ ورک اور فون سیٹس کا مستقبل ’سیکیورٹی کلیئرنس‘ سے مشروط

سیکیورٹی وجوہات کی وجہ سے فائیو-جی ٹیکنالوجی کی درآمد پر عائد پابندی نے کمپنیوں کو اپنے 5-جی نیٹ ورکس اور موبائل فونز کی سیکیورٹی جانچ پڑتال کرانے کے لیے مجبور کردیا۔ 

موبائل کی دنیا میں 4-جی کے بعد 5-جی نیٹ ورک اپنے قدم جمانے کے لیے تیار ہے لیکن اس سے پہلے چند سیکیورٹی وجوہات کے باعث تاخیر سامنا ہے جسے دور کرنے کے لیے کمپنیاں اپنے فائیو-جی نیٹ ورک اور موبائل فونز کی سیکیورٹی جانچ پڑتال کرانے کے لیے تیار ہوگئی ہیں۔

سیکیورٹی کلیئرنس کے بغیر کئی ممالک نے جدید 5-جی نیٹ ورکس اور موبائل فونز کی درآمد کو روک دیا تھا۔ چین کی معروف کمپنیوں ہواوے اور زید ٹی ای کے فائیو- جی آلات کو سب سے زیادہ مشکلات کا سامنا ہے۔

دوسری جانب انٹرنیٹ کے دلدادہ صارفین بھی 4-جی سے بوریت محسوس کرنے لگے ہیں اور بے تابی سے نئے اور جدید فائیو-جی سیٹس کے منتظر ہیں لیکن سیکیورٹی وجوہات فائیو-جی ٹیکنالوجی اور صارفین کے درمیان گویا ’سماج کی دیوار‘ بن گئی ہے۔

صارفین کی بےتابی اور فون کمپنیوں کی مجبوری کو مدنظر رکھتے ہوئے 8 سو سے زائد نیٹ ورک آپریٹرز رکھنے والی ’جی ایس ایم اے‘ نے غیر جانبدار کمپنی سے فائیو-جی آلات اور فون کی سیکیورٹی کلیئرنس کرانے کی اسکیم متعارف کرائی ہے۔

جی ایس ایم اے پُر امید ہے کہ فائیو-جی کی سیکیورٹی جانچ پڑتال کے بعد دنیا بھر کے ممالک اس ٹیکنالوجی کی راہ میں رکاوٹ نہیں بنیں گے اور سیکیورٹی سند حاصل کرنے والی کمپنیاں بآسانی اپنے فائیو-جی نیٹ ورک آلات اور سیٹس فروخت کرسکیں گی۔

واضح رہے کہ پہلے ہی آسٹریلیا، نیوزی لینڈ اور امریکا میں ہواوے کمپنی کے فائیو-جی  موبائل نیٹ ورک سیٹس پر پابندی عائد ہے اور اب کینیڈا بھی فائیو-جی نیٹ ورک اور موبائل سیٹس پر پابندی عائد کرنے پر سنجیدگی سے غور کر رہا ہے۔ اس وقت فائیو-جی ٹیکنالوجی صرف جنوبی کوریا میں استعمال کی جا رہی ہے جو کہ مقامی طور پر تیار کردہ ہے۔

عالمی مارکیٹ میں سونے کے نرخ بڑھ گئے مقامی مارکیٹوں میں قیمتیں مستحکم

کراچی: عالمی مارکیٹ میں سونے کے نرخ بڑھ گئے جب کہ مقامی مارکیٹوں میں قیمتیں مستحکم رہیں۔

بین الاقوامی بلین مارکیٹ میں فی اونس سونے کی قیمت2ڈالرکے اضافے سے 1321ڈالر کی سطح پر پہنچنے کے باوجودمقامی صرافہ مارکیٹوں میں ہفتے کوفی تولہ اور فی10 گرام سونے کی قیمتیں بغیرکسی تبدیلی کے مستحکم رہیں جس کے نتیجے میں فی تولہ سونے کی قیمت بغیرکسی تبدیلی کے 68150 روپے اور فی 10 گرام سونے کی قیمت بغیرکسی تبدیلی کے 58428روپے پرمستحکم رہی اورچاندی کی قیمتیں بھی برقراررہیں۔

شاہ رخ خان کی بیٹی کورین اداکار کی محبت میں گرفتار

ممبئی: کروڑوں لڑکیوں کو اپنا دیوانہ بنانے والے بالی ووکنگ شاہ رخ خان کی بیٹی سہانا خان کورین اداکار کی محبت میں گرفتار ہوگئی۔

سہانا خان نے حال ہی میں انسٹاگرام پر لائیو چیٹ کے دوران اپنے چاہنے والوں سے براہ راست بات کی اور ان کے سوالوں کے جواب دئیے۔ دوران گفتگو ایک مداح نے سہانا سے سوال پوچھا ’’آپ کون سے اداکار کے ساتھ  باہر جانا پسند کریں گی؟‘‘ جس کے جواب میں سہانا خان نے کوریا کے معروف اداکار اور گلوکار سوہو کی تصویر شیئر کی اور کہا وہ سوہو کو بہت پسند کرتی ہیں اور اسی کے ساتھ باہر جائیں گی۔

سوہو کا اصل نام کم جون میون ہے اور وہ جنوبی کوریا کے مقبول ترین بینڈ ’’ایگزو‘‘ کے لیڈ سنگر ہیں۔ سوہونا صرف بہترین گلوکار و اداکار ہیں بلکہ سونگ رائٹر بھی ہیں اس کے علاوہ وہ بے حد خوبصورت ہیں۔

واضح رہے کہ  شاہ رخ خان کی بیٹی سہانا خان بھی اپنے والد کی طرح اداکاری کے شعبے میں ہی کیریئربنانا چاہتی ہیں۔ سہانا نے حال ہی میں شیکسپیئر کے ڈرامے ’’رومیوجولیٹ‘‘ میں جولیٹ کا کردارادا کیاتھا جس کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھیں۔

بھارتی الزام تراشیاں اور جارحانہ رویہ خطے کے امن کے لیے نقصان دہ ہے، سیکریٹری خارجہ

اسلام آباد: سیکریٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ کا کہنا ہے کہ بھارتی الزام تراشیاں اور جارحانہ رویہ خطے کے امن کے لیے نقصان دہ ہے۔

سیکریٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ کی جانب سے پاکستان میں تعینات غیر ملکی سفرا کو بریفنگ کا سلسلہ تیسرے روز بھی جاری رہا، تہمینہ جنجوعہ نے تیسرے روز افریقی ممالک کے سفراء کو بریفنگ دی جس کا مقصد پلوامہ حملے کے بعد بھارتی پروپیگنڈے کا جواب اور حکومت پاکستان کا موقف پیش کرنا تھا۔

سیکریٹری خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارت میں جان بوجھ کر پاکستان مخالف جذبات کو ہوا دی جارہی ہے، بھارت پاکستان پر بے بنیاد الزامات لگا رہا ہے، پاکستان پر بغیر تحقیقات اور بنا شواہد الزام تراشیاں بھارت کا پرانا رویہ ہے، بھارتی الزام تراشیاں اور جارحانہ رویہ خطے کے امن کے لیے نقصان دہ ہے۔

واضح رہے کہ سیکرٹری خارجہ اس سے قبل اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل اورغیر مستقل ممالک کے سفراء کو بھی بریفنگ دے چکی ہیں۔

لاہور قلندرز کی قیادت اے بی ڈویلیئرز کو مل گئی

دبئی : لاہور قلندرز کے کپتان محمد حفیظ انجری کے باعث آج پشاور زلمی کے خلاف میچ نہیں کھیل سکیں گے اور ان کی غیر موجودگی میں  اے بی ڈویلیئرز قیادت کے فرائض انجام دیں گے۔

محمد حفیظ گزشتہ روز کراچی کنگز کے خلاف میچ کے دوران انگوٹھے پر چوٹ لگنے کی وجہ سے زخمی ہوگئے تھے اور ابتدائی ٹیسٹ کے بعد انہیں چند روز آرام کا مشورہ دیا گیا ہے۔

محمد حفیظ کی غیر موجودگی میں جنوبی افریقا سے تعلق رکھنے والے بلے باز اے بی ڈویلیئرز لاہور قلندرز کی قیادت کریں گے۔

تجربہ کار بلے باز اے بی ڈویلیئرز پہلی مرتبہ پی ایس ایل کا حصہ بنیں ہیں اور ابتدائی دو میچز میں ان کی کارکردگی مایوس کن رہی ہے۔

یاد رہے کہ لاہور قلندرز کی ٹیم اب تک ایونٹ میں دو میچز کھیل چکی ہے، ایونٹ کے افتتاحی میچ میں اسلام آباد یونائیٹڈ نے اسے شکست دی جب کہ گزشتہ روز قلندرز نے کراچی کنگز کو 22 رنز سے شکست دی تھی۔

نوبل امن انعام کے لیے صدر ٹرمپ کے نام کی تجویز پر جاپان کی وضاحت

ٹوکیو: جاپانی اخبار نے انکشاف کیا ہے کہ وزیراعظم شنزو آبے نے نوبل انعام برائے امن کے لیے صدر ٹرمپ کا نام خود سے نہیں بلکہ امریکی صدر کی درخواست پر تجویز کیا۔

جاپانی اخبار نے دعویٰ کیا ہے وزیراعظم شنزوآبے نے اس سال کے نوبل امن انعام کے ليے صدر ٹرمپ کا نام خود امریکی صدر کی درخواست اور خواہش پر تجویز کیا ہے۔ جاپانی حکام نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر اخبار کو بتایا کہ اس حوالے سے امریکی صدر کے دعویٰ میں کوئی صداقت نہیں۔

قبل ازیں امریکی صدر ٹرمپ نے دعویٰ کيا تھا کہ جاپانی وزیراعظم نے انہيں شمالی کوريا کے ساتھ مذاکرات شروع کرنے پر نوبل انعام برائے امن کے لیے نامزد کيا ہے اور اس کے لیے وزیراعظم شنزوآبے نے پانچ صفحات پر مشتمل خوبصورت خط تحریر کیا ہے۔

واضح رہے کہ رواں برس کے نوبل امن انعام  کی نامزدگیوں کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے اور جاپانی وزیراعظم نے امریکی صدر کا نامزد تجویز کردیا ہے۔ نوبل انعام کا اعلان رواں برس اکتوبر میں کیا جائے گا۔ قوانین کے تحت کوئی بھی شخص کسی بھی شخص کا تجویز کرسکتا ہے۔

آف ڈاک ٹرمینلز کی من مانی وصولیاں، ٹریڈ سیکٹر میں اضطراب کی لہر

کراچی: کراچی اور پورٹ قاسم کی بندرگاہوں پرآف ڈاک ٹرمینلز کی جانب سے ایل سی ایل کارگو ٹیرف کے عدم اجرا کے باعث ہینڈلنگ اور وہارفیج کی مد میں من مانی  وصولیاں ٹریڈ سیکٹر کے لیے اضطراب کا باعث بن گئی ہیں۔

کراچی میں قائم آف ڈاک ٹرمینلز کی جانب سے چارجزوصولیوں کے باعث درآمدی لاگت میں ہوشربااضافہ ہوا ہے جودرآمدکنندگان کی مشکلات میں اضافے کا باعث بن گیا ہے۔

کراچی کسٹمزایجنٹس ایسوسی ایشن کے جنرل سیکریٹری ارشد خورشید  نے وفاقی وزارت بندرگاہ وجہاز رانی سے مطالبہ کیا کہ وہ آف ڈاک ٹرمینلز کو ایل سی ایل کارگو کے ٹیرف متعارف کرانے کے احکامات جاری کرے تاکہ ٹریڈ سیکٹر میں اضطراب ختم ہو اور کاروباری لاگت میں بھی کمی ممکن ہوسکے۔

 

Google Analytics Alternative