Home » Author Archives: Admin (page 3)

Author Archives: Admin

مصر، چرچ حملوں میں ملوث 6 خودکش بمبار گرفتار

قاہرہ: مصر کی سیکیورٹی فورسز نے ایک کامیاب آپریشن کے دوران چرچ پر حملوں میں ملوث دو خواتین سمیت 6 خود کش حملہ آوروں کو حراست میں لے لیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق قاہرہ پولیس نے ہفتے کے روز چرچ پر کیے گئے ناکام حملے میں ملوث ملزمان کو حراست میں لینے کا دعویٰ کیا ہے، گرفتاریاں انٹیلی جنس اداروں کے تعاون سے چھاپہ مار کارروائی کے دوران عمل میں آئیں۔

چھاپے کے دوران دہشت گردوں سے بڑی تعداد میں اسلحہ اور آتش گیر مواد بھی برآمد ہوا ہے جب کہ خود کش حملوں میں استعمال ہونے والی 6 بارود سے بھری جیکٹس بھی برآمد ہوئی ہیں۔ گرفتاریاں ہفتے کے روز ایک چرچ پر ناکام حملے کے بعد عمل میں لائی گئیں۔

چرچ حملے کا مرکزی ملزم 29 سالہ عمر مصطفیٰ دہشت گرد سیل کا انچارج ہے اور تربیت یافتہ خود کش بمباروں کی کھیپ تیار کرنے کی ذمہ داری بھی اسی شخص کی ہے، عمر مصطفیٰ کے دہشت گرد سیل ہی کے ایک خود کش بمبار نے ہفتے کے روز ورجن میری کے چرچ پر ناکام حملہ کیا تھا۔

واضح رہے کہ قالیوبیہ موسٹورڈ چرچ میں ہفتے کے روز منعقدہ ایک دعائیہ تقریب کو دہشت گرد نشانہ بنانے چاہتے تھے تاہم سیکیورٹی فورسز کے روکنے پر ایک خود کش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اُڑا لیا تھا۔ سیکیورٹی فورسز کی بروقت کارروائی سے چرچ میں موجود لوگ محفوظ رہے تھے۔

بھارت میں استانی سے زیادتی کرنے والے پادریوں نے گرفتاری دے دی

کولام: بھارتی ریاست کیرالہ میں خاتون ٹیچر کو مسلسل ایک سال تک زیادتی کا نشانہ بنانے والے مزید 2 پادریوں نے خود کو قانون کے حوالے کر دیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق شادی شدہ خاتون ٹیچر کو بلیک میل کر کے ایک سال تک مسلسل زیادتی کا نشانہ بنانے والے مزید دو پادریوں نے سرنڈر کر دیا ہے۔ ’فادر ابراہام ور گھیسے‘ نے تھرو ولا مجسٹریٹ کورٹ اور ’فادر جیسی جارج‘ نے کرائم برانچ آفس میں خود کو پیش کر دیا۔

قبل ازیں زیادتی کیس میں ملوث تیسرے ملزم فادر جانسن میتھیو کو ان کی رہائش گاہ سے گرفتار کیا جا چکا ہے جب کہ چوتھے ملزم فادر جاب میتھیو نے کولام پولیس اسٹیشن میں خود گرفتاری دے دی تھی۔

خاتون ٹیچر نے مالن کارا آرتھوڈوکس چرچ میں ’کنفیشن‘ ( فادر کے سامنے غلطیوں کا اعتراف کرنے کا عمل) انجام دیا۔ تاہم چرچ کے پادریوں نے خاتون کے گناہوں کے اعتراف کو بلیک میلنگ کے لیے استعمال کیا اور ڈرا دھمکا کر کئی بار زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔

ٹیچر نے اپنے شوہر کو صورت حال سے آگاہ کیا جس پر مئی کے پہلے ہفتے میں خاتون ٹیچر کے شوہر نے باقاعدہ شکایت درج کرائی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ آرتھوڈوکس چرچ کے 4 پادری اہلیہ کو مختلف اوقات میں زیادتی کا نشانہ بناتے رہے ہیں۔

چرچ نے شکایت موصول ہونے کے بعد چاروں پادریوں کو ذمہ داریوں سے سبکدوش کر کے مقدمے کا فیصلہ آجانے تک تمام اعزازات واپس لے لیے ہیں۔ اگر چاروں پادریوں پر جرم ثابت ہو گیا تو چرچ مستقل طور پر رکنیت ختم کرسکتا ہے۔

یورپی سیاح کا پاکستان کے یوم آزادی پر انوکھا ’کی کی‘ اسٹائل

ملک کے درمیان سرحدوں کا تعین تو ہوتا ہے مگر جب کوئی دنیا کو دیکھنے نکلتا ہے تو اس کے لیے یہ لکیریں بے معنی ہوجاتی ہیں۔

اس کی مثال یورپی سیاح ایوا بیانکا زو بک ہیں جو اب تک 44 ممالک کی سیر کرچکی ہیں مگر ان کا پسندیدہ مقامات میں پاکستان بھی موجود ہے اور یہاں ان کی سیاحت کے دوران ایک ویڈیو وائرل بھی ہوئی۔

اب ان کی پاکستان کے یوم آزادی کے حوالے سے ایک ویڈیو سامنے آئی ہے اور وہ بھی تیزی سے وائرل ہورہی ہے۔

درحقیقت انہوں نے دنیا کا پہلا ‘ائیرپلین کی کی چیلنج’ پی آئی اے کی ائیرہوسٹس کے انداز سے کیا ہے۔

فیس بک اور انسٹاگرام پر شیئر اس ویڈیو کے کیپشن میں انہوں نے لکھا کہ پاکستان کے یوم آزادی کے جشن کو پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائنز کے ساتھ کی کی اسٹائل میں گزارنے کا فیصلہ کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ کی کی کار جمپ اب پرانی ہوچکی، تو یہ ہے کہ پہلا حقیقی ائیرپلیس ورژن۔

وہ گلگت بلتستان کی خوبصورتی سے بہت زیادہ متاثر ہوئیں

اس سے قبل ان کی کے ٹو بیک کیمپ ٹریکنگ کی ویڈیو بھی وائرل ہوئی تھی جبکہ شمالی علاقہ جات میں ان کی کئی ویڈیوز بھی انٹرنیٹ پر گردش کرتی رہیں۔

ایوا کی پیدائش پولینڈ کی ہے مگر ان کی زندگی کا بیشتر حصہ برطانیہ میں گزرا، مگر اب وہ دنیا کی سیاحت پر نکلی ہوئی ہیں اور اس حوالے سے ان کا اپنابلاگ بھی ہے۔

کراچی میں گھڑسواری کرتے ہوئے

کچھ عرصے پہلے ایک انٹرویو کے دوران انہوں نے بتایا تھا ‘ پاکستان آنے سے پہلے مجھے ہر ایک کہتا تھا کہ وہاں خیال رکھنا، وہ بہت خطرناک ملک ہے خصوصاً خواتین کے لیے، لہذا مجھے کسی اور جگہ چلے جانا چاہئے، مگر میں نے یہاں کی جو تصاویر دیکھیں وہ انتہائی زبردست تھین اور میرا خیال تھا کہ یہ اپنی طرز کا منفرد تجربہ ہوگا، یہ سچ ہے کہ اکیلے آتے ہوئے میں کچھ نروس تھی اور مجھے اندازہ نہیں تھا کہ یہاں کیسے حالات کا سامنا ہوگا’۔

سوات کی سیاحت کرتے ہوئے
۔

تاہم یہاں آمد کے بعد پاکستان کے بارے میں ان کے خیالات مکمل طور پر بدل کر رہ گئے ‘یہاں آنے کا فیصلہ بطور سیاح کیے جانے والے چند بہترین فیصلوں میں سے ایک ثابت ہوا، مجھے یہاں کے لوگوں اور میڈیا کے بارے میں جو کچھ بتایا گیا تھا وہ سب غلط نکلا، یہاں کی قدرتی خوبصورتی، تاریخ اور لوگوں نے مجھے متاثر کیا، مجھے خوشی ہے کہ میں انہیں دنیا کے سامنے پیش کرسکی اور پلیٹ فارمز جیسے انسٹاگرام اور یوٹیوب وغیرہ سے اس کے بارے میں تصور بدلنے میں مدد کرنے لگی’۔

لاہور کی سیر بھی کرچکی ہیں

اداروں میں اصلاحات نئی حکومت کی ترجیح ہونی چاہیے

adaria

تحریک انصاف اور اور ق لیگ نے پنجاب میں سپیکر اور ڈپٹی سپیکر اور وزیراعلیٰ کے انتخاب میں کامیابی یقینی بنانے کیلئے حکمت عملی شروع کردی۔ اس ضمن میں تحریک انصاف اور ق لیگ کے رہنماؤں کے درمیان گزشتہ روز ایک ملاقات ہوئی جو بڑی اہمیت کی حامل قرار پائی، ق لیگ اور پی ٹی آئی نے ن لیگ کے تمام منصوبوں کا آڈٹ کرانے اور نیا بلدیاتی نظام لانے کا اعلان بھی کیا ہے۔ اداروں میں اصلاحات کی اشد ضرورت ہے اس کے بغیر اداروں کی ترقی ممکن نہیں۔ سابق حکومت نے جو منصوبے بنائے ہیں ان میں کرپشن کی باز گشت ہر سو سنائی دے رہی ہے اس کا آڈٹ ضرور ہونا چاہیے لیکن انتقامی کارروائی سے گریز کرنا چاہیے۔ پی ٹی آئی اور ق لیگ کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ شریف خاندان نے پنجاب میں تمام اداروں کو تباہ کر دیا ہے ہم کے پی کے طرز پر پنجاب میں پولیس سمیت دیگر اداروں میں اصلاحات لائیں گے اور شر یف خاندان کی کر پشن کو قوم کے سامنے بے نقاب کر یں گے ۔تحر یک انصاف کے مر کزی قائدین جہانگیر خان ترین ’عبد العلیم خان اور اسحاق خاکوانی نے لاہور میں (ق) لیگ کے صدر چوہدری شجاعت حسین ‘چوہدری پرویز الٰہی اور طارق بشر چیمہ سمیت دیگر سے گلبر گ میں انکی رہائش گاہ پر ملاقات کی جس پنجاب اسمبلی میں سپیکر ‘ڈپٹی سپیکر اور وزیر اعلیٰ کے انتخاب میں کامیابی کے حوالے سے حکمت عملی طے کی گئی اور (ق) لیگ کی قیادت نے اس حوالے سے کیے جانیوالے اقدامات کے بارے میں تحر یک انصاف کے قائدین کو آگاہ کر دیا ہے ۔(ق) لیگ کی قیادت کے ساتھ سپیکرسمیت دیگر عہدوں پرپنجاب میں ہونیوالے الیکشن کے حوالے سے بات چیت کی گئی ہے اور انشاء اللہ ہم تمام عہدوں پرکامیابی حاصل کر لیں گے اور پنجاب کو بھی خیبر پختونخواہ کی طر ح مکمل طور پر تبدیل کر دیں گے اور پولیس سمیت تمام شعبوں میں ریفار مز لائیں گے ۔ تحریک انصاف اقتدار میں آکر پنجاب میں شہبا زشر یف کے10سالہ دور حکومت میں بننے نہ صرف تمام منصوبوں اور محکموں کا آڈٹ کر یں گے بلکہ پنجاب میں ایک ایسا بلدیاتی نظام لائیں گے جہاں اختیارات کو نچلی سطح پر منتقل کیا جائیگا تاکہ لوگوں کے مسائل انکے گھر کی دہلیز پر حل ہوسکے اس کیلئے پنجاب اسمبلی میں تمام ضرور قانون سازی بھی کی جائیگی اور پنجاب میں ایک نئے دور کا آٖغاز ہوگا۔ (ق) لیگ کے چوہدری پرویز الٰہی نے کہا کہ شہباز شر یف کی حکومت نے 10سالوں میں صوبے کا بیڑہ غر ق کر دیا ہے صحت تعلیم سمیت تمام شعبوں کا جو حال ہے وہ قوم کے سامنے ہیں اور جہاں تک بلدیاتی نظام کا تعلق ہے تو موجودہ بلدیاتی نظام میں بلدیاتی نمائندوں کے پاس کوئی اختیارات نہیں بلکہ سب کچھ حکومت اور وزیرا علیٰ کے پاس ہے مگر ہم نے جیسے پہلے عوام کی امنگوں کے مطابق ایک بلدیاتی نظام دیا اب بھی ایک نیا بلدیاتی نظام لائیں گے ۔ جو بھی وزیر اعلیٰ ہو ق لیگ اور پی ٹی آئی کو اسکے ساتھ ملکر چلنا ہی وقت کی ضرورت ہے ۔شہبازشر یف شیخ چلی جیسے منصوبوں کے ذریعے پنجاب کو تباہ کر چکے ہیں کیونکہ انکے لیے انسانیت کی نہیں اپنے من پسند منصوبوں کی زیادہ اہمیت ہے ۔پی ٹی آئی کی حکومت کو کئی چیلنجز کا سامنا ہے اس نے اپوزیشن کو ساتھ لے کر چلنے کی جو راہ اختیار کی ہے یہ اس امر کی عکاس ہے کہ پی ٹی آئی حکومت اپوزیشن کے تحفظات کو دور کرے گی اور سیاسی جماعتوں کو ساتھ لے کر چلے گی تاکہ جمہوریت مستحکم ہو۔ ماضی میں حکومت اور اپوزیشن کے درمیان تناؤ کی کیفیت نے جمہوریت کو ہی کاری ضرب لگائی، وقت کا یہ تقاضا ہے کہ نئے رجحان اور میلان کے ساتھ جمہوریت کو مستحکم کیا جائے اور درپیش چیلنجز سے نکلنے کیلئے مشترکہ جدوجہد کی جائے۔وطن عزیز کو اس وقت کئی مسائل کا سامنا ہے جن سے نکلنے کیلئے سیاسی تدبر اوربصیرت کے ساتھ ساتھ اپوزیشن کو ساتھ لے کر چلناانتہائی ضروری ہے، برداشت کا جمہوری کلچر اپنا کر ہی اچھی روایت کی قائم کی جاسکتی ہے۔

تھانوں میں تشدد پر پابندی
پاکستان تحریک انصاف نے حکومت میں آتے ہی پولیس اسٹیشنز میں شہریوں پر تشدد کرنے پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے جو کہ ایک مستحسن اقدام ہے۔ پولیس عوام کی محافظ ہوا کرتی ہے لیکن ہماری پولیس لوگوں کے جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنانے میں ناکام ہے۔ پولیس میں اصلاحات وقت کی ضرورت ہے۔پولیس اسٹیشنز اور تمام قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے شہریوں پر تشدد کرنے پر پابندی ہونی چاہیے، یہ غیر اسلامی اور غیر آئینی ہے، اس سے زیادہ تر غریب لوگ متاثر ہوتے ہیں، تحریک انصاف تھانوں میں شہریوں پر ہر طرح کا تشدد ختم کرنے کا جو اقدام کررہی ہے اس کے دوررس نتائج برآمد ہونگے۔ امید ہے کہ پی ٹی آئی حکومت صحیح سمت میں تمام اقدام اٹھائے گی۔
پی آئی اے کی آڈٹ رپورٹ میں انکشاف
قومی ایئر لائن پی آئی اے کی آڈٹ رپورٹ میں70ارب روپے غائب ہونے کے انکشاف نے تہلکہ مچا دیا ہے۔آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے سپریم کورٹ کے حکم پر قومی ایئرلائین میں مالی بے ضابطگیوں کی چھان بین شروع کر دی اور اس حوالے سے سی ای او پی آئی اے کو خصوصی مراسلہ جاری کر دیا گیا ہے۔ مراسلے میں لکھا گیا ہے کہ وزارتِ خزانہ کی جانب سے پی آئی اے کو فنڈز کی مد میں فراہم کی جانے والی رقم 30.81 ارب روپے ہے جب کہ ایئرلائن کے فنانس ڈیپارٹ کی جانب سے فراہم کردہ حساب کی رقم 23.565 ارب روپے ظاہر کی گئی ہے۔ اس طرح تقریبا 7 ارب روپے غائب ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔ وزراتِ خزانہ کی جانب سے ضمانتوں کی رقم پی آئی اے کی جانب سے 175.086 ارب بتائی گئی ہے جبکہ وزارتِ خزانہ کی جانب سے یہ رقم 177.230 ارب روپے درج کی گئی ہے۔ اس مد میں بھی 2 ارب روپے کا فرق آرہا ہے۔ خصوصی مراسلے میں پی آئی اے انتظامیہ کو 10 سالہ مالی ریکارڈ پیش کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔آڈیٹر جنرل آف پاکستان کا مراسلہ ملنے کے بعد پی آئی اے حکام نے اپنے چیف فنانس آفیسر نیر حیات سے غلط معلومات فراہم کرنے پر وضاحت طلب کرتے ہوئے اظہارِوجودہ کا نوٹس جاری کردیا ہے ۔ نوٹس میں استفسار کیا گیا ہے کہ آڈٹ ٹیم کو فراہم کردہ اعداد و شمار اور ادارے کو ملنے والی رقوم میں فرق کیسے آیا اور آڈیٹر جنرل کی باربار درخواست کے باوجود درست معلومات فراہم کرنے میں ناکامی کی وجہ کیا ہے۔اس بے ضابطگی کا فوری نوٹس لیا جائے اور ذمہ داروں کیخلاف کارروائی کو یقینی بنایاجائے۔
مسافر بس اور سیکورٹی فورسز کی گاڑی میں تصادم
ڈیرہ اسماعیل خان میں مسافر بس اور سیکورٹی فورسز کی گاڑی کے مابین ہولناک تصادم کے نتیجہ میں6ایف سی اہلکارشہید اور26 افراد زخمی ہوگئے۔ شہید ہونے والے اہلکاروں میں فرنٹیئر کانسٹیبلری اور خاصہ دار فورسز کے تین ، تین اہلکار شامل ہیں ، پولیس نے تفتیش شروع کردی ہے۔ خداوند کریم حادثے کے شکار اہلکاروں کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور انکے پسماندگان اور لواحقین کو صبرجمیل عطا فرمائے۔اس حادثے کی فوری تحقیقات کی ضرورت ہے۔

’سوئی دھاگا‘ کا ٹریلر ریلیز

بولی وڈ اداکار ورن دھون اور اداکارہ انوشکا شرما کی جلد ریلیز ہونے والی فلم ’سوئی دھاگا‘ کا پہلا ٹریلر ریلیز ہوگیا۔

اس فلم میں یہ دونوں اداکار نہایت منفرد کرداروں میں نظر آئیں گے، ایسے کردار جو اس سے قبل انہوں نے ادا نہیں کیے۔

3 منٹ 12 سیکنڈ دورانیے کے اس ٹریلر میں ورن دھون اور انوشکا شرما نے ایک چھوٹے گاؤں سے تعلق رکھنے والے شادی شدہ جوڑے کا کردار ادا کیا۔

ورن دھون ایک سلائی کی دکان پر ملازم کے روپ میں نظر آئے، جس کام میں انہیں کئی مرتبہ مالکان کے ہاتھوں ذلت کا سامنا بھی کرنا پڑا۔

بعدازاں انوشکا شرما کے سمجھانے کے بعد انہوں نے اپنے خود کے کام کا آغاز کیا۔

فلم میں ورون دھون ’موجی‘ نامی درزی جب کہ انوشکا شرما ’ممتا‘ نامی دستکار (کڑھائی کرنے والی) خاتون کا کردار ادا کرتی نظر آئیں گی۔

یاد رہے کہ رواں ماہ کے آغاز میں فلم ساز نے سوئی دھاگا کا پہلا لوگو بھی ریلیز کیا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ ‘سوئی دھاگا’ کا لوگو بنانے کے لیے فلم کی ٹیم نے بھارت کی 15 مختلف ریاستوں کا دورہ کیا۔

فلم کی ٹیم نے لوگو بنانے کے لیے بھارت بھر کے 15 آرٹسٹوں (دستکاروں) کو ڈھونڈ کر نکالا اور انہیں مقامی روایات اور مقبول دستکار کے ذریعے فلم کا لوگو بنانے کی اپیل کی۔

ہدایات کار شرط کتریا اور پروڈیوسر منیش شرما کی اس فلم کو رواں برس 28 ستمبر کو ریلیز کیا جائے گا۔

پرانا پاکستان اور نیا پاکستان”

آج جب کہ قوم اپنا اکہترواں یوم جشن آزادی منا رہی ہے تو ہمیں روایتی طور پر گھسے پٹے نعروں اور دعووں اور اپنے سیاستدانوں، حکمرانوں اور ایلیٹ کلاس کے بیانات قوم کو سنے اور سنانے کے بجائے ہمیں اپنی نوجوان نسل کو یہ بتانے کی ضرورت ہے کہ مملکتِ خداداد پاکستان کیوں اور کس طرح معرض وجود میں آئی پاکستان کے قیام میں وہ کیا محرکات اور اسباب تھے جس کی بنیاد پر پاکستان پہلی دفعہ دنیا کے نقشے پر ایک آزاد و خود مختار ملک کے طور پر ابھرا وہ کیا عوامل کارفرما تھے کہ دین اسلام اور مسلمانیت کا نظریہ اس کی بنیاد بنا بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناحؒ مولانا ابوالکلام آزاد کی طرح کوئی علمائے ھند کے جید عالم دین نہیں تھے مگر انہوں نے برصغیر کے مسلمانوں کو محض اس لئے اکٹھا کر لیا تھا کہ ہندو اور مسلمان صدیوں ایک ساتھ رہنے کے باوجود دو الگ الگ قومیں تھیں اور مسلمان متحدہ ہندوستان میں ایک اقلیت اور ہندو اکثریت میں تھے یہی وہ دو قومی نظریہ تھا جس کی بنیاد پر مسلمان مسلمانوں کی نمائندہ جماعت مسلم لیگ میں شامل ہوئے اور قائداعظم کی غیر متزلزل اور ولولہ انگیز قیادت نے انہیں اپنے لئے الگ ملک حاصل کرنے کی منزل تک پہنچا دیا عظیم فلسفی ،شاعر علامہ محمد اقبال نے اپنے خطبہ الہ آباد میں جو تصور پاکستان کا خواب دیکھا تھا قوم کو بھی بتانے کی ضرورت ہے کہ کس طرح سرسید احمد خان نے مسلمانوں کیلئے اٹھارہویں صدی میں پہلے علی گڑھ مدرسہ اور پھر علی گڑھ یونیورسٹی قائم کرکے تعلیم کے فروغ کی بنیاد فراہم کی تھی مسلمان 1947 سے پہلے کسطرح مظالم کا شکار تھے انگریزوں اور ہندووں کی ملی بھگت اور سازشوں نے کس طرح مسلمانوں کو پسماندگی، غربت اور اندھیروں میں دھکیل رکھا تھا 14 اگست 1947کا سورج جب طلوع ہوا اور پاکستان بن گیا تو ہجرت کرنے والوں پر حملے کیے گئے پاکستان میں آکر آباد ہونے والوں کی پوری پوری ٹرینیں جلا دی گئیں عورتوں اور بچوں کو بھی نہ بخشا گیا پاکستان بنانے والوں نے قربانیوں کی ایک لازوال ایسی تاریخ رقم کی جو رہتی دنیا تک یاد رکھی جائے گی مسلمان ایک سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی مانند ایک قوم بن گئی تھی قائداعظم کی صورت میں قیادت ایسی ملی جنہیں متحدہ ہندوستان کا پہلا وزیراعظم بنانے کی پیشکش کی گئی لیکن انہوں نے انکار کردیا ور ایک علیحدہ ملک حاصل کرنے کے بدلے کوئی سمجھوتہ نہ کیا پاکستان بننے کے بعد پاکستان کے خلاف اپنوں اور غیروں نے سازشوں کی ایسی یلغار شروع کر دی کہ ملک ہی1971 میں دو لخت ہوگیا غداروں نے تحریک پاکستان کے شہیدوں کی روح کو تڑپا کر رکھ دیا قائداعظم کے پاکستان کے حصے بخرے کر دئیے آج تاریخ مسخ کرکے پیش کررہے ہیں پاکستان کے سابقہ حکمرانوں ذوالفقار علی بھٹو، جنرل یحییٰ خان، شیخ مجیب الرحمن جیسے کرداروں اور کارناموں کے قصے کیا گنواوں یہ تاریخ کا حصہ ہیں اڈیالہ جیل میں بند سابق وزیراعظم میاں محمد نوازشریف نے جب ماضی قریب میں وہ وزیراعظم تھے تو انہوں نے کہا تھا کہ ہندوستانی اور ہم پاکستانی ایک ہی ہیں آپ بھی آلو کھاتے ہیں ہم بھی آلو کھاتے ہیں نجانے ہمارے درمیان یہ بس ایک لکیر (بارڈرز)کہاں سے آگئی ” آپ اس سے اندازہ کریں مسلمانوں نے ایک صدی تحریک چلائی لاکھوں لوگ بے گھر ہوئے ہزاروں شہید ہوئے تب جاکر پاکستان بنا اور 1906 میں قائم ہونے والی مسلم لیگ کا ایک سربراہ پوری صدی کے بعد ہندوستانیوں کو خوش کرنے کیلئے یہ کہہ رہا ہے کہ تم اور ہم ایک ہی ہیں بس ایک لکیر کھینچ دی گئی ہے مانا ہندوستان ہمارا ہماسیہ ملک اس سے دوستی ہماری ضرورت ہے وہ پڑوسی ملک ہے لیکن اپنی تاریخ کو تو مسخ نہ کیا جائے جاگیردارانہ نظام کو ختم کرنے کیلئے1948 میں ہندوستان نے زمینوں سے متعلق ایک قانون پاس کیا تھا اور فی کس ایکڑ زمین مالکان کو دی تھیں باقی زمینیں سرکاری تحویل میں لے لی گئی تھیں ہمارے پاکستان میں بدقسمتی سے ایسا قانون نہیں بن سکا تھا جاگیردار اور وڈیرے اقتدار پر قابض ہوگے اور اسی سے ایک ایسا سرمایہ دارانہ جاگیردارانہ اور نظام قائم ہوا کہ امیر امیر تر ہوتا گیا اور غریب غریب تر-سیاست ،دولت اور اقتدار مخصوص خاندانوں کی وارثت بن گئی اور ناعاقبت اندیش حکمرانوں نے کرپشن،بدعنوانی، اقربا پروری سے ملک کی معیشت تباہی اور بچے کھچے پاکستان کی بنیادیں ہلا کر رکھ دی ہیں ایسا ظالمانہ نظام رائج کر دیا گیا ہے کہ 85 فیصد سے زائد افراد غربت اور بے بسی کی زندگی گزار رہے ہیں مہنگائی نے عام آدمی کی کمر توڑ کر رکھ دی ہے لاقانونیت عام ہے علمائے اکرام، پیران عظام سے لے کر حکمرانوں تک سب گویا ریڑھی والا گلی محلے میں بچوں کے کھلونے بیچنے والا، دوائیاں فروخت کرنیوالا جس کو جہاں موقع ملتا ہے دوسرے کی جیب کاٹ رہا ہے اور اپنے ہی بھائی کا خون چوس رہا ہے پاکستانیو یہ ظلم کا نظام ہے اس کو بدلنا ہو گا ۔پاکستان کے قیام کی مخالفت کرنے والوں اور قائداعظم کو برے القابات سے نوازنے والے پاکستان بننے کے بعد اس پر اپنا غلبہ جمانے کی کوشش میں لگ گئے اسلام پسندی کی آڑ میں ملک میں فرقہ واریت عام ہوگئی مذہب اور لسانیت کی بیناد پر بھائی بھائی کا گلہ کاٹنے لگا آج ہمارا ملک یا تو مزہبی انتہا پسندوں کے نرغے میں ہے جو یہ سمجھتے ہیں کہ اس دھرتی پر جینے کا حق صرف ان کا ہے یا پھر اسلام مخالف آزاد لبرل اور سیکولرزم کے نظام کے حامیوں کی یلغار میں ہے جو سمجھتے ہیں مزیب کو نعوذباللہ دیوار پر لگاکر ہم ترقی کرسکتے ہیں یہ دونوں انتہائیں پاکستان اور اہل پاکستان کیلئے زہر قاتل ہیں قائداعظم ایک ایسا پروگریسو اسلامی فلاحی پاکستان بنانا چاہتے تھے جس میں تمام مذاہب اور قومیتوں کے افراد اپنی زندگیاں آزادی سے بسر کر سکیں جہاں سب کیلئے عدل اور انصاف ہو کچھ ایسے ہیں جو اس مملکت خداداد پاکستان کے خلاف باہر بیٹھ کر سازشیں کرتے ہیں لیکن یہ ملک اللہ کی نعمت ہے مادر وطن کے غداروں کا مقدر رسوائی اور ذلت ہے اس سال یوم آزادی ایک ایسے وقت میں منایا جارہا ہے جب قائداعظم کا جان نشین ہونے کا دعویدار عمران خان پاکستان میں الیکشن جیت چکا ہے یہ ایک امید کی ایک کرن ہے سٹیس کو کی حامل اپوزیشن جماعتیں اس کیخلاف گینگ اپ ہوگئی ہیں اسے ناکام کرنے کی کوشش کریں گیں دوسری طرف سرمایہ داروں اور جاگیرداروں کا حصار اور ہجومِ عمران خان کے ارد گرد نظر آتا یے یہ لوگ سٹیس کو کے حامی ہیں لیکن افواج پاکستان، پاکستان کی غریب عوام اور عدلیہ نے ملک کے استحکام اور تعمیر پاکستان اور روشن پاکستان کے لئے یہ نظام بدلنے کیلئے اگر عمران خان کا ساتھ نہ دیا تو یوں ہی حکومتیں بدلتی رہیں گئیں امیر کا کیا ہے وہ ہر حال میں آسودہ ہے ہمارے ملک کی اکثریت غریبوں کی ہے اس ملک کی تباہ حال معیشت اور تباہ شدہ ادارے مضبوط بنانا ہم سب کی ذمہ داری ہے ۔

پاکستان زندہ باد اہل پاکستان پائندہ باد

بڑا ، طاقتور اور مہنگا ترین گیلیکسی نوٹ 9 ‎

سام سنگ نے نیویارک میں منعقدہ تقریب کے دوران گیلکسی نوٹ 9 اسمارٹ فون باضابطہ طورپر متعارف کرا دیا ہے۔

اس سمارٹ فون میں 6.4 انچ انفنیٹی بیزل لیس ڈسپلے دیا گیا ہے۔ فون کا بیسک ماڈل 6 جی بی ریم اور 128 جی بی اسٹوریج کے ساتھ ہے البتہ کمپنی کی جانب سے 8 جی بی ریم اور 512 جی بی اسٹوریج والا ماڈل بھی متعارف کرایا گیا ہے ۔اسٹوریج کو ایس ڈی کارڈ کی مدد سے ایک ٹی بی تک بڑھایا جا سکتا ہے ۔ فون کی بیٹری 4000 ملی ایمپیئر آورز کی ہے جو کہ گیلکسی نوٹ اسمارٹ فونز میں اب تک کی سب سے طاقتور ترین بیٹری ہے۔ فون واٹر ریزسٹنٹ اور ڈسٹ پروف ہے۔ نئے اسمارٹ فون میں 12 میگا پکسل کے دو بیک کیمرے دیے گئے ہیں۔نئے سین آپٹیمائزیشن موڈ کو بھی فون میں شامل کیا گیا ہے جو اس چیز کا تجزیہ کرے گا جس پر آپ کیمرہ پوائنٹ کریں گے اور خود کار طریقے سے برائٹنس ، کنٹراسٹ ، سیچوریشن اور وائٹ بیلنس کو ایڈجسٹ کرے گا۔ فون میں ایس پین بھی شامل ہے اور اس میں بلیوٹوتھ کا آپشن بھی دیا گیا ہے۔ پین کو چارجنگ کی ضرورت بھی نہیں۔ ہیڈ فون جیک کو بھی فون کا حصہ بنایا گیا ہے ۔ کمپنی نے اس فون میں ڈیجیٹل اسسٹنٹ بیکسبی کو بھی پہلے سے بہتر بنایا ہے اور اب یہ گوگل کے ڈیجیٹل اسسٹنٹ کے ساتھ بھی کام کر سکے گا۔صارفین اس فون کو بڑی سکرین پر بھی چلا سکیں گے اور اس مقصد کے لیے کمپین خصوصی کنیکٹر بھی متعارف کروائے ہیں۔ اسمارٹ فون کو اوشین بلیو ، لیونڈر پرپل ، میٹالک کاپر اور مڈنائٹ بلیک میں متعارف کرایا گیا۔ فون کو 24 اگست سے فروخت کے لیے پیش کیا جائے گا۔ 128 جی بی اسٹوریج کے ساتھ خون کی قیمت 999 ڈالر اور 512 جی بی اسٹوریج کے ساتھ قیمت 1250 ڈالر ہے۔ یہ سام سنگ کمپنی کا مہنگا ترین فون ہے۔

دالوں کی پیداوار بڑھانے کے لیے کاشتکاروں کی تربیت کا فیصلہ

اسلام آباد: وفاقی حکومت کی جانب سے دالوں کی پیداوار میں اضافے کے لیے ملک بھر میں 50ہزار سے زائد کاشت کاروں کو تربیت دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

کاشت کاروں کو دالوں کی پیداوار میں اضافے کے لیے تربیت دینے کی صورت میں ٹیکنیکل افرادی قوت کے حصول کے ساتھ ساتھ ملک کے ایک ارب ڈالر کے دالوں کے درآمدی بل میں بھی کمی آئے گی۔ منصوبے کے تحت کاشت کاروں میں بائیو فرٹیلائزر کے سلسلے میں آگہی پیدا کرنے کے علاوہ سالانہ 10سے 15ہزار بائیو فرٹیلائزر مفت میں تقسیم کی جائیں گی جس سے پیداوار میں سالانہ 10سے 20 فیصد اضافہ ہوگا۔

دالوں کی پیداوار میں اضافے کے منصوبے کے تحت ملک بھرمیں کاشت کاروں کی استعداد کار میں اضافے کیلیے تربیتی کورسزکرانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ملک بھر سے 50 ہزار کاشت کاروں کو دالوں کی پیداوار میں اضافے کیلیے تربیتی کورسز کرائے جائیں گے تاکہ ان کاشت کاروں کی استعدادکار میں اضافہ کیا جا سکے۔ دالوں کی پیداوار کے منصوبے کی مجموعی لاگت 2 ارب 59 کروڑ 95 لاکھ روپے سے زائد ہے جس کا مقصد ملک میں دالوں کی پیداوار کے فروغ کیلیے کام کرنا ہے۔

وفاقی حکومت کی جانب سے ملک میں دالوں کی پیداوار میں اضافے کیلیے وفاقی اور صوبائی سطح پر 18پبلک سیکٹر ریسرچ اداروں کو نئی ورائٹیاں متعارف کرانے اور کراپ مینجمنٹ پریکٹس کو فروغ دینے کا ٹاسک دیا جائیگا۔ دستاویز کے مطابق دالوں کی پیداوار میں اضافے کیلیے وزارت غذائی تحفظ و ریسرچ نے منصوبہ حتمی منظوری کیلیے سینٹرل ڈیولپمنٹ ورکنگ پارٹی کو بھیج دیا ہے۔

وزارت قومی غذائی تحفظ وتحقیق کا ادارہ پاکستان ایگری کلچر ریسرچ کونسل منصوبے پر عملدرآمد کرائے گا۔ وفاقی حکومت کی جانب سے ملک میں دالوں کی پیداوار میں کمی کو دیکھتے ہوئے یہ منصوبہ شروع کرنے کا فیصلہ کیا گیا جس پر 10سال کے عرصے میں عملدرآمد کرایا جائے گا۔

اس وقت ملک میں دالوں کی پیداوار میں کمی کے باعث زرعی ملک ہونے کے باوجود پاکستان کو1 ارب ڈالر تک کی دالیں درآمد کرنا پڑتی ہیں، ملک میں دالوں کی پیداوار میں کمی کی وجہ جدید ٹیکنالوجی کا نہ ہونا، پروگریسیو فارمنگ کا نہ ہونا اور انفرااسٹرکچر میں محدود سرمایہ کاری ہے۔

مذکورہ منصوبے پر عملدرآمد کے لیے وفاقی اور صوبائی سطح پر 18پبلک سیکٹر ریسرچ اداروں کو نئی ورائٹیاں متعارف کرانے اور کراپ مینجمنٹ پریکٹس کو فروغ دینے کا ٹاسک دیا جائے گا۔ منصوبے کی تکمیل سے دالوں کی پیداوار میںاضافے کے ساتھ درآمدی بل بھی کم ہو گا۔

دالوں کی پیداوار میں اضافے کے اس منصوبے کے تحت حکومت کی جانب سے کاشت کاروں میں بائیو فرٹیلائزر کے سلسلے میں آگہی پیدا کی جائیگی۔ منصوبے کے تحت کاشت کا روں میں بائیو فرٹیلائزر کے سلسلے میںآگہی پیدا کرنے کے علاوہ سالانہ 10سے 15ہزار بائیو فرٹیلائزر مفت میں تقسیم کی جائیں گی جس سے پیداوار میں سالانہ 10سے 20فیصد اضافہ ہوگا۔

Google Analytics Alternative