Home » Author Archives: Admin (page 9)

Author Archives: Admin

یقین ہے فلم ’’باجی‘‘عوام کے دلوں میں اپنی جگہ بنا لے گی، میرا

نامور پاکستانی اداکارہ میرا کا کہنا ہے کہ پاکستان میں فلموں کی بحالی میں حکومت کو تعاون کرنا چاہیے۔

اداکارہ میرا نے اپنی آنےوالی فلم’’باجی‘‘کے لیے امیدظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ میری فلم عوام کے دلوں میں اپنی جگہ بنا لے گی اور عوام کی محبت سے اچھا بزنس کرے گی۔

ان خیالات کا اظہار ادکارہ میرا نے فلم کے ریڈ کار پٹ لانچ کے موقع پر ایکسپریس سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر فلم  کی دیگر کاسٹ میں شامل اداکارہ آمنہ الیاس اور عثمان خالد بٹ بھی موجود تھے۔

میرا کا کہنا تھا کہ ہمار ا مقابلہ کسی سے نہیں پاکستانی عوام ملکی فلمیں دیکھیں گے تو فلم ساز فلمیں بنائیں گے فلم ’’باجی‘‘ ایک شاہکار ہے اس میں کہانی کے ساتھ گانے اور سسپنس ہے۔ میں نے فلم کی تیاری میں بہت محنت کی ہے ایک اداکارہ ہونے کے ناطے فنکار کی عوام سے ملنے والی محبت اس کا قمیتی اثاثہ ہوتی ہے۔

فلم کے ہیرو عثمان خالد بٹ نے کہا کہ ہماری فلموں کی عمر کم ہے لیکن مقابلہ سخت ہے ہمارے ڈرامے دنیا بھر میں مقبول ہیں لیکن جلد ہماری فلمیں عالمی مارکیٹ میں جگہ بنالیں گی۔ ’’باجی‘‘ ایک مکمل فلم ہے اس میں ہر اداکار نے انصاف کیا ہے حکومت کو فلم انڈسٹری کی بحالی کے لئے اقدامات کرنا ہوں گے۔

اگر جنگ ہوئی تو ایران کا خاتمہ کردیں گے، ڈونلڈ ٹرمپ

واشنگٹن: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ وہ جنگ نہیں چاہتے لیکن ایران سے جنگ چھڑی تو وہ اسے نیست و نابود کردیں گے۔

امریکی ٹی وی این بی سی سے خصوصی انٹرویو میں ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ وہ ایران سے جنگ نہیں چاہتے لیکن اگر ایسا ہوا تو ایران نیست ونابود ہوجائے گا، ہم ایران سے بات کرنے کے لیے تیار ہیں لیکن انہیں جوہری ہتھیار کسی صورت بنانے نہیں دیں گے اور اگر وہ پھر جوہری ہتھیار بنانا چاہتے ہیں تو انہیں ایک عرصے تک تباہ حال معیشت کے ساتھ رہنا پڑے گا۔

امریکی صدر نے کہا کہ ایران کی جانب سے امریکی فوجی ڈرون گرائے جانے کے بعد امریکی فوج ایران کے خلاف جوابی کارروائی کے لیے تیار تھی لیکن میں نے کارروائی سے صرف 10 منٹ پہلے انہیں روک دیا کیوں کہ مجھے بتایا گیا کہ کارروائی کے نتیجے میں 150 لوگ مارے جائیں گے۔

خیال رہے ایران نے آبنائے ہرمز کے قریب امریکی ڈرون مار گرایا تھا، امریکی ڈرون گرائے جانے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوچکا ہے اور امریکا نے ایران پر دباؤ بڑھانے کے لیے مشرق وسطیٰ میں نہ صرف بحری بیڑے تعینات کررکھے ہیں بلکہ امریکا نے مزید فوجی مشرق وسطیٰ بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔

واضح رہے گزشتہ ہفتے خلیج اومان میں جاپان اور ناروے کے آئل ٹینکرز کو نشانہ بنایا گیا تھا جس کے بعد امریکا نے دعویٰ کیا تھا کہ یہ کارروائی ایران کی جانب سے کی گئی ہے تاہم ایران نے یہ الزام مسترد کردیا تھا۔

باکسرعامرخان اب سعودی عرب کے نوجوان باکسرزکو بھی باکسنگ کا فن سکھائیں گے

پاکستانی نژاد برطانوی باکسر عامرخان اب سعودی عرب کے نوجوان باکسرزکو بھی باکسنگ کا فن سکھائیں گے

عالمی شہرت یافتہ باکسرنے 25 جون کو جدہ میں ٹریننگ کا اہتمام کررکھا ہے جس میں انہوں نے سعودی عرب میں موجود نوجوان باکسرز سے کہا ہے کہ وہ آئیں اور ان کی نگرانی میں بھرپورٹریننگ حاصل کریں۔

عامر خان کا مقابلہ آئندہ ماہ بھارتی باکسرنیرج گویت کے ساتھ شیڈول ہے، یہ مقابلہ 12 جولائی کو جدہمیں ہوگا۔عامر خان نےاعلان کر رکھا ہے کہ وہ بھارتی باکسر کو ہرا کر ورلڈ کپ میں گرین شرٹس کی شکست کا بدلہ لیں گے۔

یاد رہے کہ عامر خان اس سے قبل پاکستانی باکسرز کو بھی باکسنگ کی ٹریننگ دے چکے ہیں۔

 

منہ کا خراب ذائقہ کن مسائل کی نشاندہی کرتا ہے؟

اکثر ایسا ہوتا ہے جب کچھ بھی کھانا اچھا نہیں لگتا جس کی وجہ منہ میں کڑواہٹ یا یوں کہہ لیں کہ منہ کا خراب ذائقہ ہوتی ہے۔

مگر کیا منہ کا یہ خراب ذائقہ کسی قسم کے سنگین عارضے کی علامت بھی ہوسکتا ہے؟

جیسے کڑوا ہوان، عجیب سی کھٹاس یا مٹھاس کا احساس وغیرہ جیسے لاتعداد احساسات اس صورتحال میں محسوس ہوسکتے ہیں۔

اگر ایسا تجربہ ہو تو ذہن میں زور ڈالیں کہ ایسا کب سے ہورہا ہے اور اس کی وجہ کیا ہوسکتی ہے۔

اکثر منہ کے خراب ذائقے کی جو وجوہات ہوسکتی ہیں وہ درج ذیل ہیں۔

منہ پک جانا

منہ پک جانے سے حلق اور سفید میں سفید نشان بن جاتے ہیں اور یہ ایک انفیکشن ہوتا ہے جو ایسے بیکٹریا سے ہوتا ہے جو عام طور پر منہ میں موجود ہوتا ہے اور اس کا کام مدافعتی نظام کو کنٹرول کرنا ہوتا ہے، تاہم مدافعتی نظام کمزور ہوجائے تو یہ بیکٹریا بہت زیادہ تعداد میں بڑھنے لگتا ہے جس سے انفیکشن ہوجاتا ہے، اس میں منہ میں سفید نشانات کے ساتھ ایک علامت منہ کا ذائقہ عجیب ہونا بھی سامنے آتی ہے۔

زنک کی کمی

اگر جسم میں زنک کی کمی ہوجائے تو منہ کا ذائقہ بھی بدل جاتا ہے، تاہم اس کی وجہ کیا ہے، وہ طبی ماہرین تاحال جان نہیں سکے ہیں، تاہم ایک تحقیق کے مطابق اس کی ممکنہ وجہ یہ ہوسکتی ہے کہ زنک ایک ایسے پروٹین کی مقدار بڑھانے میں مدد دیتا ہے جو ذائقے کی حس کو کنٹرول کرتا ہے۔

موسمی نزلہ زکام یا فلو

اگر زبان کا ذائقہ تلخ ہو جبکہ موسمی نزلہ زکام یا فلو کا بھی شکار ہوں تو فکرمند مت ہوں، یہ معمول کی بات ہے، اس طرح کے عام انفیکشن مدافعتی نظام کو چوکنا کردیتا ہے اور وہ پروٹٰن پروڈکشن سے اس سے لڑتا ہے، جس سے منہ کا ذائقہ کڑوا ہوجاتا ہے۔

ذیابیطس

اگر جسم کو بلڈ شوگر کو کنٹرول کرنے میں مشکل کا سامنا ہو تو منہ میں ایک عجیب میٹھا ذائقہ سا محسوس ہونے لگتا ہے، طبی تحقیقی رپورٹس کے مطابق ایسا اسی وقت ہوتا ہے جب کوئی شخص ذیابیطس کا شکار ہو۔

حمل

قے اور متلی سے ہٹ کر حاملہ خواتین منہ میں ایک عجیب میٹالک ذائقے کی شکایت بھی کرتی ہیں، جس کی وجہ جسم میں آنے والی ہارمونز کی تبدیلیاں ہیں، جس سے حس ذائقہ اور سونگھنے کی حس متاثر ہوسکتی ہے۔

ذہنی تناﺅ

ذہنی بے چیی کے نتیجے میں منہ خشک ہونے لگتا ہے جس کے تنیجے میں منہ میں لعاب دہن کی مقدار کم ہوتی ہے، لعاب دہن کھانا ہضم کرنے اور نقصان دہ بیکٹریا سے لڑنے سمیت صحت کے لیے اہم کردار ادا کرتا ہے، تو اس کی ناکافی مقدار کے نتیجے میں منہ کا ذائقہ عجیب ہوجاتا ہے۔

ادویات کا اثر

کچھ مخصوص ادویات کے نتیجے میں منہ کا ذائقہ تلخ، نمکین یا میٹالک ہوسکتا ہے۔

منہ کی ناقص صفائی

ہمارا منہ متعدد اقسام کے بیکٹریا کا گھر ہوتا ہے جن میں سے کچھ صحت کے لیے فائدہ مند اور کچھ نقصان دہ ہوتے ہیں، اگر منہ کی صفائی جیسے دانتوں پر برش اور خلال کا خیال نہ رکھا جائے تو اس سے نقصان دہ بیکٹریا کی مقدار بڑھ جاتی ہے، جس سے بھی منہ کا ذائقہ بدل جاتا ہے، اس کے علاوہ دانتوں اور مسوڑوں کے مختلف مسائل کا سامنا بھی ہوسکتا ہے۔

لوٹ مار سے مسخ شدہ پاکستان کے چہرے کی سرجری

لیجئے ۔ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے باضابطہ طور پر اپنا پہلا مہنگائی اور تنخواہ دار طبقے پر ٹیکسوں سے بھر پوربجٹ 2019-2020پیش کردیاہے ۔ جس پر حزبِ اختلاف کی جانب سے شدید تنقیدوں کے زہریلے نشتر چلائے جارہے ہیں ۔ ایوان میں اپوزیشن اور حکومتی اراکین کی جانب سے کئی دِنوں سے شورشرابے اور چیخ وپکار کا ایک نہ ختم ہونے والا مقابلہ جاری ہے ۔ بظاہر ایسا لگتا ہے کہ موجودہ کھینچاتانی اور ہنگامہ آرائی کے ماحول میں حکومت کا پارلیمنٹ سے بجٹ کی منظوری کرانا ایک مشکل اور کسی بڑے چیلنج سے کم کام نہیں ہے ۔ مگر پھر بھی حکومت پُرعزم ہے کہ یہی بجٹ واضح اکثریت سے پارلیمنٹ سے منظورکرالیاجائے گا اور اِس میں اپوزیشن جماعتوں سے تعلق رکھنے والے اراکین کی بھی بڑی تعداد شامل ہوگی ۔ جو پی ٹی آئی کے پہلے بجٹ کو منظور کرانے میں اہم کردار ادا کریں گے ۔ بہر کیف ،جیسا کہ پچھلے دِنوں وزیراعظم عمران خان اعلان کرچکے ہیں کہ ’’ کابینہ ارکان بجٹ منظوری کی ٹیشن سمیت اپوزیشن کی کسی بلیک میلنگ میں نہ آئیں ،اینٹ کا جواب پتھر سے دیں ،لوٹ مار میں ملوث عناصر پروڈکشن آرڈر کے مستحق نہیں ، کرپشن کیسز میں اندر ہونے والے سیاسی قیدی نہیں جرائم پیشہ افراد ہیں ‘‘ وغیرہ وغیرہ جس کے بعد سے پارلیمنٹ مچھلی بازار سے بھی بدتر صورت حال کا منظر پیش کررہاہے،جِسے دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ جیسے ابھی تک ہم 21ویں صدی میں تو کیا;238; 15ویں صدی میں بھی داخل نہیں ہوئے ہیں ۔ جیسا آج ہمارے ایوانوں میں تہذیب وتمدن اور سیاسی تدبر اور بردباری کا شیرازہ حکومت او رحزبِ اختلاف کی جانب سے بکھیرا جارہاہے اور جمہوریت کا جنازہ دھوم دھام سے روزانہ نکالا جارہاہے ۔ ایسا تو دنیا میں کہیں نہیں ہوتا ہے ۔ مگر میرے دیس پاکستان میں سب چلتا ہے ۔ جمہوری پنڈٹ جمہوریت کی بالادستی اور پاسداری کی آڑ میں جمہوریت کی عزت کو خود ہی تار تار کررہے ہیں ۔ جِسے دیکھ کر ایسا لگتاہے کہ جیسے آج جمہوریت بغیر لباس کے پارلیمنٹ میں اپنی عزت بچاتی پھر رہی ہے ۔ مگر جمہوریت کے رکھوالے ہی تالیاں بجا بجا کر اِسے اپنی ذاتی اور سیاسی مفاداتی لڑائی میں بے پردہ کرکے اِس(جمہوریت) کی بے عزتی اور لاچارگی کا تماشہ بنتا دیکھ کر خوش ہو رہے ہیں ۔ اِس موقع پر راقم الحرف کو یہ کہنے میں کوئی عار محسوس نہیں ہورہی ہے کہ آج پارلیمنٹ میں جمہوریت کی بدنامی کا باعث جمہوریت کی مالا جپنے والے ہی اِس کے لئے سب سے بڑا خطرہ ثابت ہورہے ہیں ۔ جورتجگے کرکے پارلیمنٹ میں گالم گلوچ کے لئے پروگرام ترتیب دیتے ہیں ۔ اور اگلے روز پارلیمنٹ کو مچھلی بازار بنا رہے ہیں ۔ افسوس کی بات ہے کہ آج جتنی رات دن کی محنت سے یہ سیاسی بازی گر ایوان میں ایک دوسرے کو برا بھلا کہنے کے لئے ہوم ورک کرکے آتے ہیں ۔ اگر اتنی توجہ اور محنت یہ لوگ عوامی مسائل کے حل کے لئے کرتے تو پارلیمنٹ میں پی ٹی آئی کے پیش کئے گئے بجٹ 2019-2020پر خوشدلی سے بحث شروع ہوجاتی اور کوئی مثبت نتیجہ نکل چکاہوتا ;234;مگر بڑے دُکھ کے ساتھ یہ کہنا پڑ رہاہے کہ آج نہ حکومت کو عوام سے کوئی دلچسپی ہے ۔ اور نہ اپوزیشن عوامی مسائل کے حل کرنے کے لئے مخلص دِکھائی دیتی ہے ۔ ستر سال سے پرانے حکمرانوں اور سیاستدانوں (سابقہ حکومتوں ) نے اپنے ذاتی اور سیاسی مفادات کے خاطر قومی خزانے سے جیسی لوٹ مار کی ہے یہ اِنہی کا کیا دھرا ہے کہ آج مُلک قرضوں کے بوجھ تلے دب کرچکنا چُور ہوگیاہے ۔ آج جس کی آہو فغاں کوئی سُننے والا نہیں ہے ۔ یہ سابق حکمرانوں اور سیاستدانوں اور اِن کے چیلے چانٹوں کی تیزاب گردی جیسی لوٹ مار ہے کہ جس کی وجہ سے مُلکی خُوبصورتی ، عوام کی خوشحالی اور معاشی استحکام سمیت ہر شعبے ہائے زندگی اور قومی اداروں کا چہرہ مسخ ہوکررہ گیاہے ۔ قومی خرچے سے ایوان تک جانے والے ہمارے حکمران اور سیاستدان ایک دوسرے کو برداشت کرکے ساتھ چلنے کو تیارہی نہیں ہیں ، اپوزیشن جماعتوں کے اراکین مُلک اور عوام کی خیرخواہی کا نعرہ لگا کر اصل میں احتسابی مراحل سے گزرتے سیاستدانوں کو بچانے کے لئے مُلک میں انارکی پھیلانے سے لے کر ہر حد تک جانے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں جس کا مُلک موجودہ حالات میں متحمل نہیں ہوسکتاہے ۔ حالانکہ سب جانتے ہیں کہ آج جو قومی اداروں کی گرفت میں ہیں ;234; اور کڑے احتسابی عمل سے دوچار ہیں ۔ (یا جو آنے والے دِنوں ، ہفتوں اور مہینوں میں احتسابی اداروں اور قانون نافذ کرنے والوں کے ہتھے مزیدآنے اورپکڑے جانے والے ہیں ) اِن کے ساتھ قومی احتسابی ادارے جو کچھ کررہے ہیں یا کریں گے;234; وہ سب سو فیصد درست ہوگا ۔ مگر پھر بھی احتجاج کرنے والوں کی پارٹی پالیسی یہی ہے کہ قومی خزانہ بیدریغ لوٹ کھاکر بھی اپنے رہنماوں کی بے گناہی کا اتنا پرچار کیا جائے کہ ہمارے رہنماء اور کارکنان قومی چور ہو کر بھی اِنہیں کوئی چور نہ کہے ۔ اِسے کہتے ہیں ۔ چوری اُوپر سے سینہ زوری ۔ معاف کیجئے گا،آج اگر جھوٹ بولنے ، قومی خزانہ لوٹ کھا کرڈکار یں لینے اور دنیا بھر میں کرپشن کا ریکارڈ توڑنے کا مقابلہ ہوتا;234;تو سب سے زیادہ انعامات اور ایوارڈز ہماری اپوزیشن جماعتوں سے تعلق رکھنے والے قومی کرپٹ رہنماؤں ، سیاستدانوں ، کارکنان اور مُلک کے حکمرانوں اور اِن کی اولادوں کو ہی ملتے ۔ تاہم پاکستانی قوم خاطر جمع رکھے اور حکومت سے پُر اُمید رہے کہ وزیراعظم عمران خان خطروں اور خطرات سے کھیلنے کے کھلاڑی ہیں ۔ یہ تنخواہ دار طبقے پر اضافی ٹیکسوں کی بھرمار اور مُلک میں غریب عوام پر مہنگائی کا طوفان نازل کرنے والے حالیہ بجٹ کی منظوری کی آزما ئش اور کڑے امتحان والے مراحل سے بھی کامیابیوں سے نکل جا ئیں گے ۔ کیوں کہ وزیراعظم عمران خان کا مصمم ارادہ ہے کہ یہ طاقتورترین قومی لٹیروں نواز و زرداری اور اِن کے چیلے چانٹوں اور حواریوں کو نہیں چھوڑیں گے ۔ اور وزیراعظم اپنے اِسی عزم و ہمت کے سہارے قومی لٹیروں کا کڑا احتساب کرنے اور اِن سے لوٹی ہوئی قومی دولت واپس لانے تک آرام سے نہیں بیٹھیں گے ۔ جیسا کہ وزیراعظم تہیہ کرچکے ہیں کہ اَب یہ ستر سال سے باری باری آنے والے کرپٹ عناصر سے مُلک و عوام اور معیشت کوبچائیں گے اور اِن سے پہنچنے والے نقصانات کے باعث مُلکی خوبصورتی جو ماند پڑچکی ہے اور عوام کی خوشحالی پرجو گہن لگاہواہے اورجیسا مُلکی معیشت کا ماضی میں کرپٹ حکمرانوں نے بیڑاغرق کیا اَب اِس مسخ شدہ مُلکی چہرے کی سرجری کرکے مُلک ،عوام اور معیشت کی خوبصورتی دوبارہ بحال کرنے کے لئے بہتر انداز سے کرپشن سے پاک پاکستان کے چہرے کی سرجری کی جائے تو ہمارا مُلک کرپشن کے داغ دھبوں سے پاک ایک نیا پاکستان بن جائے گا ۔ (ختم شُد)

وزیراعظم میثاق معیشت پر اعتماد میں لیں، آصف زرداری

 اسلام آباد: سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ میں نے 8 سال این آر او نہیں مانگا تو اب کیوں مانگوں گا جبکہ وزیراعظم عمران خان میثاق معیشت پر اپوزیشن کو اعتماد میں لیں۔

سابق صدر آصف زرداری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میثاق معیشت پر وزیراعظم اپنے خیالات کے بارے میں اعتماد میں لیں، وزیراعظم کی تجاویز سامنے آئیں گی تو اپنی جماعت پی پی پی اور اپوزیشن سے بات کریں گے۔

میثاق معیشت پر حکومتی آمادگی سے متعلق سوال کے جواب میں آصف زرداری نے کہا کہ اسپیکر کے کہنے سے کچھ نہیں ہوتا، اسپیکر کسی جماعت سے نہیں بلکہ نیوٹرل ہوتا ہے۔

وزیراعظم کے ایمنسٹی اسکیم اچھوں کے لئے اچھی اور بروں کے لئے بری کے بیان سے متعلق سوال آصف زرداری نے جواب دیا کہ پھر تو ایمنسٹی اسکیم عمران خان کے لئے بری ہوگی۔ این آر او کے بارے میں سابق صدر زرداری نے کہا کہ میں نے 8 سال 3 مہینے این آر او نہیں مانگا تو اب کیوں مانگوں گا۔

زمبابوے حکومت نے حکم عدولی پرزمبابوے کرکٹ بورڈ کومعطل کردیا

زمبابوے حکومت نے حکم عدولی پر زمبابوے کرکٹ بورڈ کو معطل کردیا۔

زمبابوے حکومت نے حکم عدولی پر زمبابوے کرکٹ بورڈ کو معطل کردیا۔ زمبابوے کرکٹ بورڈ کے قائم مقام ایم ڈی گیومورمکونی کوبھی ان کے عہدے سے الگ کردیا گیا۔ زمبابوے کرکٹ بورڈ میں مالی بدعنوانیوں کی انکوائری کرنے والے حکومتی ادارے اسپورٹس اینڈ ری کریشن کمشن نے انتخابات سے روک دیا تھا تاہم زمبابوے کرکٹ بورڈ کے معاملات دیکھنے والے حکام نے ان ہدایات کو نظر انداز کرتے ہوئے انتخابی عمل مکمل کیا۔

نومنتخب صدر نےموقف اختیارکیا کہ زمبابوے کرکٹ بورڈ آئی سی سی کا ممبر ہے اوراس کے معاملات میں حکومت مداخلت کرنے کی مجاز نہیں، جس پرحکومت نے ایکشن لیتے ہوئے بورڈ کی سرگرمیاں کو معطل اورآفیشلز کو فارغ کرکے ایک سات رکنی عبوری کمیٹی قائم کردی ہے۔

رٹیل بزنس: ماجد الفطیم گروپ مزید 40 ارب کی سرمایہ کاری کرے گا

لاہور: ماجد الفطیم ہائپر مارکیٹ گروپ پاکستان میں رٹیل بزنس میں مزید 40ارب روپے کی سرمایہ کاری کرے گا۔

گروپ پاکستان میں 2009 سے اب تک 4 شہروں میں ایک ہائپر مارکیٹ اور 7 سپر اسٹورز میں 8 ارب روپے کی سرمایہ کاری کرچکاہے۔

ماجد الفطیم گروپ کے پاکستان میں کنٹری منیجر گیوٹیگ کم کاکہنا ہے کہ اگلے 10سال میں گروپ پاکستان کے بڑے شہروں میں کاروبار کو توسیع دے گا اور چھوٹے بڑے شہروں میں مجموعی طور پر 50 سپر اسٹور کھولے جائیں گے۔

Google Analytics Alternative