انٹر ٹینمنٹ

مہیش بھٹ کا پاکستان میں فلم بنانے پر غور.

لاہور: ہندوستان کے نامور فلم پروڈیوسر اور ہدایت کار مہیش بھٹ نے کہا ہے کہ وہ پاکستان میں قیام کے دوران ایک پنجابی فلم بنانے کے امکانات پر غور کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ وہ ایک پاکستانی پروڈکشن ہاؤس کی مدد سے مشترکہ طور پر دونوں ملکوں میں اس فلم کو بنا سکتے ہیں۔مہیش نے جمعہ کو یہاں ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ فلم ’دشمن‘ فنکاروں، تکنیکی، موسیقی اور دیگر شعبوں کے لحاظ سے ایک مشترکہ پروکشن ہو گی۔اداکار ہمایوں سعید نے مہیش کو ہفتہ کے روز اپنی فلم ’جوانی پھر نہیں آنی‘ کے پریمئیر پر دعوت دی تھی۔ پریس کانفرنس میں ہندوستانی سکرین رائٹر شگفتہ رفیق اور پنجابی فلم پروڈیوسر ونے بھاردواج بھی موجود تھے۔مہیش بھٹ نے کہا کہ وہ حیران ہیں کہ بولی وڈ فلمیں سری لنکا میں فلمائی جا سکتی ہیں تو کراچی اور لاہور میں کیوں نہیں؟ ان کے مطابق ہندوستانی چینل زندگی نے پاکستانی ٹیلی ویژن آرٹس کی انڈیا میں مارکیٹ بڑھائی ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ لولی وڈ اداکارہ میرا نے ان سے فون پر رابطہ کیا تھا اور فلم میں کوئی کردار ادا کرنے کی درخواست کی۔ ’اس وقت میرے پاس میرا کیلئے کوئی کردار موجود نہیں لیکن میں مستقبل میں میرا کی اس درخواست پر غور کروں گا۔اپنی پنجابی فلم کے حوالے سے انہوں نے لاہور میں ٹی وی اور فلمی اداکاروں کے ساتھ میٹنگ رکھی ہیں۔مہیش بھٹ نے کسی اداکار کا نام نہ لیتے ہوئے بتایا کہ انہوں نے ٹی وی کے کچھ بڑے اداکاروں سے فلم میں کام کرنے کے لیے بات چیت کی ہے تاہم وہ کسی پنجابی فلم میں اداکاری کرنے سے گریزاں ہیں۔

فیس بک نے نیا کام شروع کر دیا۔

فیس بک کے بیشتر صارفین جانتے ہیں کہ سماجی رابطے کی یہ ویب سائٹ آپ کے بارے میں بہت کچھ جانتی ہے اور وہ اس معلومات کو کمپنیوں کو فراہم کرتی ہے مگر اب اس سے بھی آگے جاکر کام کرنے والی ہے۔جی ہاں فیس بک اب چاہتی ہے کہ وہ آپ کے بارے میں یہ بھی جانے کہ ویب سائٹ سے ہٹ کر آپ کیا کرتے ہیں۔فیس بک نے رواں ہفتے اعلان کیا تھا کہ وہ صارفین کے لائکس اور شیئر بٹن سمیت دیگر سوشل سرگرمیوں کا ڈیٹا اکھٹا کرنا شروع کرے گی تاکہ آپ کی نیوز فیڈ پر صارف کی پسند کے اشتہارات لگائے جاسکیں۔یہ سلسلہ آئندہ ماہ سے شروع ہوگا اور اس کے لیے آپ کی ویب سرفنگ کی عادات، پروفائل کی تفصیلات اور آن لائن دنیا میں سرگرمیوں کی معلومات کو اشتہارات کے لیے استعمال کی جائے گی۔فیس بک کے گلوبل ڈپٹی چیف اسٹیفن ڈیڈمین نے اپنے بلاگ میں لکھا کہ ہمیں توقع ہے کہ اس سے لوگوں کو نظر آنے والے اشتہارات مزید مفید ہوں گے اور ان کو اچھا تجربہ ہوگا۔خیال رہے کہ فیسبک نے ایک سال ققبل ہی معلومات اکھٹا شروع کردی تھی اور اب وہ صارفین کی ویب سرفنگ عادات کے ڈیٹا کو واضح شکل دینے میں مصروف ہے۔تاہم فیس بک کا کہنا ہے کہ ڈیٹا کو اکھٹا کرنا کوئی نئی بات نہیں اور اکثر بڑی ویب سائٹس اپنے وزیٹرز کی ویب عادات کی معلومات کو جمع کرتے ہیں۔فیس بک پر اشتہارات سے بچنے کے لیے آپ سیٹنگ کے پیج پر جاکر ایڈ کے ٹیب میں اس کو روک سکتے ہیں مگر سماجی رابطے کی اس ویب سائٹ کو اپنی معلومات جمع کرنے سے روکنا بہت مشکل ہے۔

اینڈرائیڈ فون کا پاس ورڈز توڑنا کوئی مشکل کام نہیں. نئی تحقیق

آسٹن:  ہم اپنے اینڈرائیڈ فون کی سکرین لاک کرکے کہیں بھی رکھ دیتے ہیں اور مطمئن ہو جاتے ہیں کہ اب کوئی بھی ہمارا فون استعمال نہیں کر سکتا اور ہماری پرائیویسی میں مخل نہیں ہو سکتا لیکن محققین کی ایک نئی ریسرچ نے نئے اینڈرائیڈ ورژن کے حامل فونز کے صارفین کو تشویش میں مبتلا کر دیا ہے۔ اس نئی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اینڈرائیڈ کے نئے ورژن والے موبائل فونز کا پاس ورڈز توڑنا کوئی مشکل کام نہیں اور جب سکرین لاک ہو تو اسے آسانی سے توڑا جا سکتا ہے۔ لاک سکرین پر ”کیمرے“ کی آپشن موجود ہوتی ہے۔ اسے کلک کرکے کیمرہ آن کریں اور اس کے بعد پاس ورڈ کی جگہ پرکوئی بھی طویل فقرہ یا متعدد الفاظ لکھ دیں جس سے سکرین کا لاک کھل جائے گا اور آپ کا اینڈرائیڈ فون ”ہوم سکرین“ پر چلا جائے گا۔ یونیورسٹی آف ٹیکساس کے ماہرین نے اینڈرائیڈ فونز کی اس خامی سے اس خدشے کا بھی اظہار کیا ہے کہ کوئی ہیکرآپ کے اینڈرائیڈ فون میں وائرس کے ذریعے Malware (جاسوسی کاسافٹ ویئر) انسٹال کرکے آپ کا ذاتی ڈیٹا چوری کر سکتا ہے۔ ماہرین کے مطابق یہ خرابی اینڈرائیڈ لالی پاپ5.0یا اسے سے جدید ورژنز میں پائی گئی ہے۔ تحقیقاتی ٹیم کے رکن جان گورڈن کا کہنا تھا کہ جب ان اینڈرائیڈ ورژنز کے موبائل فونز میں ایک ایپلی کیشن کھلی ہو اور ساتھ ہی طویل پاس ورڈ داخل کر دیا جائے تو سسٹم اس کا بوجھ برداشت نہیں کر سکتا اور ہوم سکرین پر چلا جاتا ہے۔ جان گورڈن نے اینڈرائیڈ فون کو ہیک کرنے کا طریقہ تفصیل سے بتاتے ہوئے کہا کہ آپ تجربے کے طور پر اپنے اوپر بتائے گئے ورژنز کے اینڈرائیڈ فون کی پاس ورڈ بار میں جتنی گنجائش ہو اتنے الفاظ لکھ ڈالیں، جب موبائل فون مزید الفاظ کی گنجائش نہ ہونے کا میسج دے تب ان تمام الفاظ پر ٹیپ (Tap)کرکے سیلیکٹ کریں اور کاپی کر لیں۔ اس کے بعد سکرین کو دائیں طرف سکرول کریں، یہاں آپ کو کیمرے کا آئیکون نظر آئے گا، اسے دبا کر کیمرہ آن کردیں۔ کیمرہ آن ہونے کے بعد اوپر سے نیچے سویپ (Swap)کرکے نوٹیفکیشن ڈرار کھولیں اور اس میں موجود سیٹنگز کی آپشن کو کھولیں۔ سیٹنگز کو کھولنے پر آپ کے سامنے ایک پاس ورڈ بار نمودار ہو گی، اپنا کاپی کیا ہوا طویل پاس ورڈ اس میں پیسٹ (Paste) کردیں ۔ کچھ ہی لمحوں میں کیمرہ خودبخود بند ہو جائے گا اورآپ کا فون ہوم سکرین پر چلا جائے گا۔

موبائیل فون کی بیٹری ٹائمنگ بڑھ سکتی ہے۔

اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کی لیتھیم آئن (Li-ion) (جو لیپ ٹاپ، اسمارٹ فونز وغیرہ میں استعمال ہوتی ہیں) کی بیٹریز زیادہ عرصہ تک آپ کا ساتھ دیں تو یہ تجاویز فائدہ مند ثابت ہوسکتی ہیں۔

بیٹری کا استعمال کریں

یہ یاد رکھنا اہم ہے کہ بیٹریاں استعمال نہ کرنے سے بھی خراب ہوتی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بیٹریاں بنانے والی کمپنیاں نہ صرف بیٹری کی زندگی کا ایک دورانیہ بتاتی ہیں بلکہ اپنی بیٹری کے لیے ایک کیلنڈر بھی دیتی ہیں۔

اس لیے بیٹری خریدتے وقت اس بات کو یقینی بنائیں کہ اسے حال ہی میں تیار گیا گیا ہو تاہم اگر تھوڑی پرانی بیٹری پر آپ کو زیادہ ڈسکاونٹ مل رہا ہے تو یہ سودہ بھی نقصان دہ ثابت نہیں ہوگا۔ البتہ اس بیٹری کی مدت کچھ کم ضرور ہوسکتی ہے۔

بیٹری کا درجہ حرارت مناسب رکھیں

بیٹری کے درجہ حرارت کا اس کی زندگی پر گہرا اثر پڑتا ہے۔ لیتھیم آئن بیٹریوں کے لیے بہترین درجہ حرارت 20 سے 25 ڈگری سینٹی گریڈ ہے۔

زیادہ گرم درجہ حرارت پر بیٹریوں کے اندر موجود حفاظتی تہه ٹوٹ جاتی ہے اور اس سے بیٹری کے دورانیے پر اثر پڑتا ہے جبکہ ٹھنڈے درجہ حرارت پر بیٹری کے اندر ہونے والی کیمیائی ری ایکشنز دھیمے ہوجاتے ہیں تو بیٹری کی کارکردگی متاثر ہوتی ہے۔

بیٹری کو 50 فیصد چارج رکھنے کی کوشش کریں

دیگر بیٹریوں کے برعکس لیتھیم بیٹریوں کو بار بار چارج اور ڈسچارج کرنے سے ان پر کوئی خاص اثر نہیں پڑتا۔

جب آپ بیٹریوں کا استعمال نہ کریں تو اس میں 20 فیصد سے کم ہی چارجنگ رہنے دیں کیوں کہ زیادہ چارجنگ ہونے پر یہ جلدی خراب ہوسکتی ہیں۔

تاہم اگر آپ ان کا روزانہ کی بنیادوں پر استعمال کرتے ہیں تو ان کی چارجنگ 50 فیصد کے لگ بھگ رکھنے سے بیٹری کی زندگی میں اضافہ ہوسکتا ہے۔

جلدی چارج کرنے والے چارجر سے پرہیز کریں

کوشش کریں کہ ایسے چارجر کا استعمال نہ کریں جو بیٹریوں کو بہت جلد چارج کردیتے ہیں۔ اس سے بیٹری کا درجہ حرارت بڑھ جاتا ہے اور اسے نقصان پہنچنے کا خدشہ پیدا ہوجاتا ہے۔ اس کے علاوہ غیر معیاری چارجر بھی بیٹریوں کو نقصان پہنچاتے ہیں

نکاح پر نکاح کے مقدمے میں اداکارہ میرا کی ضمانت منظور.

لاہور: لاہور کی ایک مقامی عدالت نے نکاح پر نکاح کے مقدمے میں فلم اداکارہ میرا کی ضمانت منظور کرلی ہے.

میرا کے سابق شوہر عتیق الرحمٰن نے اداکارہ کے خلاف نکاح پر نکاح کرنے کا مقدمہ دائر کررکھا ہے، ان کا موقف ہے کہ میرا نے ان کے نکاح میں ہونے کے باوجود کپتان نوید کے ساتھ شادی کی۔

سیشن کورٹ میں جب کیس کی سماعت شروع ہوئی تو اداکارہ میرا عدالت میں موجود نہ تھیں، جس پرفاضل جج نے انہیں پیش ہونے کے لیے صبح 11 بجے تک مہلت دی.

بعد ازاں سماعت کے دوران میرا کے وکیل نے مؤقف اختیار کیا کہ مقدمے کا مدعی عتیق الرحمٰن جعلی نکاح نامے کے ذریعے ان کی موکلہ کو بلیک میل کر رہا ہے اور یہ ساری مہم متعدد سول ایوارڈز یافتہ اداکارہ کوبدنام کرنے کی ایک سازش ہے.

اداکارہ میرا کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ ان کی موکلہ کی ضمانت منظور کی جائے.عدالت نے حکم دیا کہ 50 ہزار کے ضمانتی مچلکے جمع ہونے تک میرا کمرہ عدالت سے باہر نہیں جاسکتیں تاہم کچھ دیر بعد اداکارہ نے مچلکے جمع کرادیئے.

جس پر عدالت نے میرا کی ضمانت منظور کرتے ہوئے کیس کی سماعت یکم اکتوبر تک ملتوی کردی. یاد رہے کہ رواں برس 31 جولائی کو عدالت نے متعدد بار طلب کیے جانے کے باوجود حاضر نہ ہونے پر اداکارہ میرا کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے۔ میرا اور عتیق الرحمٰن کے درمیان جاری تنازع کے بعد میرا نے اس بات کی تردید کی تھی کہ انہوں نےعتیق سے شادی کی ہے۔ عتیق نے میرا پر قتل کرنے کی دھمکیوں اور گھر سے سامان چوری کرنے جیسے الزامات بھی لگائے، دوسری جانب میرا نے بھی عتیق پر ان کو قتل کرنے کے الزامات لگائے۔میرا اور نوید کی شادی کی خبروں کے دوران بھی عتیق نے میڈیا پر آکر میرا پر الزام لگایا تھا کہ وہ اب بھی ان کے ساتھ نکاح میں ہیں جس کے باعث وہ یہ نکاح نہیں کر سکتیں۔

اب اسکائپ سے بھیج سکتے ہیں پسندیدہ ٹی وی یا فلمی لمحات.

اگر تو آپ میسجنگ اپلیکشن اسکائپ کو استعمال کرتے ہیں تو اچھی خبر یہ ہے کہ اس میں ایسے فیچرز متعارف کرائے گئے ہیں جن کے بارے میں مائیکروسافٹ کا دعویٰ ہے کہ صارفین ان سے متاثر ہوئے بغیر رہ ہی نہیں سکیں گے۔اسکائپ بلاگ میں جاری ایک بیان کے مطابق اسکائپ میں اب صارفین چیٹ کے دوران اپنے پسندیدہ ٹی وی یا فلمی لمحات کو بھیج سکتے ہیں۔بیان میں کہا گیا ہے کہ موجیز نامی نئے فیر کے ذریعے صارفین اپنے پسندیدہ ٹیلی ویژن شوز اور فلموں کے مختصر کلپ براہ راست چیٹ پر ڈال سکتے ہیں تاکہ اپنے جذبات کا کھل کر اظہار کرسکیں۔کمپنی کے مطابق موجیز ایسا نیا فیچر ہے جو اسکائپ کو استعمال کرنا پہلے سے بھی زیادہ بہتر تجربہ بنا دے گا۔اس فیچر کو استعمال کرنے کے لیے اموٹیکون (emoticon) بٹن پر کلک کرکے فلم یا کسی ایکسپریشن کو تلاش کریں پھر موجی کا پریویو دیکھیں اور چیٹ میں شیئر کردیں۔اسکائپ کے مطابق اس فیچر میں پرمزاح، مضحکہ خیز اور آئیکون ویڈیوز کو شامل کیا گیا ہے جس کے لیے دنیا بھر کے فلمی اداروں اور ٹی وی چینیلز سے مدد لی گئی۔یہ فیچر ونڈوز، ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر، اینڈرائیڈ اور آئی او ایس ڈیوائسز پر اسکائپ کے تازہ ترین ورژن میں دستیاب ہے۔

فیس بک کا نیا فیچر متعارف کرنے کا فیصلہ۔

فیس بک کے بانی اور سی ای او مارک زکربرگ نے اپنے سوشل نیٹ ورک پر ‘ڈس لائک’ (Dislike) بٹن کے اضافے کا اعلان کردیا۔کیلی فورنیا مینلو پارک میں فیس بک ہیڈکوارٹرز میں سامعین کے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس بٹن کے ذریعے لوگ ہمدردی کا اظہار کرسکیں گے۔انہوں نے کہا کہ فیس بک اسے تیار کرنے کے بہت قریب ہے تاکہ صارفین اسے آزما سکیں۔خیال رہے کہ صارفین کی جانب سے اس طرح کے بٹن کی اس وقت سے درخواست کی جاتی رہی ہے جب سے 2009 میں ‘لائک’ کا بٹن متعارف کروایا گیا تھا۔زکربرگ نے منگل کو گفتگو کے دوران کہا کہ لوگ ‘ڈس لائک’ بٹن کی درخواست کئی سالوں سے کررہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ سیکڑوں افراد اس بٹن کی درخواست کرچکے ہیں اور آج کا دن خاص ہے کیوں کہ آج میں اس بات کا اعلان کررہا ہوں کہ ہم اس پر کام کررہے ہیں اور اسے آزمانے کے قریب پہنچ چکے ہیں۔فیس بک کے بانی نے کہا کہ وہ ایسی صورت حال نہیں چاہتے کہ لوگ اسے پوسٹس کو نیچا دکھانے کے لیے استعمال کریں۔انہوں نے کہا اس حیرت انگیز بات یہ ہے کہ اس بٹن کو بنانا مشکل ثابت ہوا، ہم اس پر کافی عرصے سے کام کررہے تھے۔اس کے برعکس اس بٹن کو ایسے پوسٹس پر استعمال کیا جائے گا جہاں ‘لائک’ کرنا غیر مناسب ہو جیسے کہ کسی کے انتقال کی پوسٹ۔ڈریکسل یونیورسٹی میں سوشل میڈیا ایکسپرٹ پروفیسر انڈریا فورٹے کے مطابق لوگ فوری طور پر ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کے لیے اس بٹن کا استعمال نہیں کریں گے۔ایک ای میل میں ان کا کہنا تھا کہ وہ شاید اس بٹن کو منفی جذبات کے اظہار کے لیے استعمال کریں یا پھر ان کی ٹائم لائن پر اشتہارات کو ‘ڈس لائک’ کریں تاہم انہوں نے شبہ کا اظہار کیا کہ لوگ اسے لوگوں کی معمول کی پوسٹ پر استعمال کریں گے۔انہوں نے کہا کہ اسے معمولی ناپسندیدگی کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے یا پھر کسی کے انتقال کی صورت یا بڑے نقصان کی خبر پر۔

بھارتی اداکارہ پاکستان آ نے کے لیے بے تاب.

ممبئی : بھارتی فلم انڈسٹری بولی ووڈ کی اداکارہ دیویادتہ نے کہا کہ وہ پاکستانی فلموں میں کام کرنے کی خواہش مند ہیں منفرد موضوع اور مضبوط کردار کی جب بھی پیشکش ہوئی توپہلی ترجیح پاکستانی فلم ہوگی میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ بیرون ملک میں اس مرتبہ پاکستانی فلم دیکھنے کا موقع ملا جس سے اندازہ ہوا کہ اب پاکستان میں فلم سازی کا معیار بہتر ہورہا ہے ان کے بقول وہ وصرف ہندی ہی نہیں بلکہ پنجابی اور دیگر زبانوں میں بننے والی فلموں میں اداکاری کرتی ہوں انہوںنے مزید کہاکہ پاکستانی ڈراموں میں کام کرنے والے فنکاروں کی ایکٹنگ بہت جاندار ہے ۔

Google Analytics Alternative