صحت

انتہائی خطرناک بیماری کی دوا ئی دریافت

میری لینڈ(مانیٹرنگ ڈیسک)امریکی ادارے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن (ایف ڈی اے) نے کینسر کی نئی اور مؤثر ترین دوا استعمال کرنے کی منظوری انتہائی کم وقت میں دے دی جس پر عالمی طبّی حلقے حیرت میں مبتلا ہیں۔ادویہ سازی میں عام طور پر یہ کہا جاتا ہے کہ کسی نئی دوا کے دریافت ہونے سے لے کر اس کی منظوری تک میں کم و بیش 10 سال کا عرصہ اور 80 کروڑ ڈالر خرچ ہوتے ہیں جب کہ کسی بھی نئی دوا یا طریقہ علاج کو منظور کرنے میں ایف ڈی اے بہت وقت لے لیتا ہے لیکن اس ادارے نے کینسر کی نئی دوا کو غیرمعمولی طور پر بہت کم وقت میں منظور کرلیا ہے۔وینیٹوکلاکس (Venetoclax) نامی یہ دوا آسٹریلیا میں طویل تحقیق کے بعد تیار کی گئی ہے جو کینسر کی ایک خاص قسم ’’سی ایل ایل‘‘ (کرونک لمفوٹک لیوکیمیا) کے علاج میں استعمال کی جاتی ہے۔ آسان الفاظ میں یوں سمجھ لیجئے کہ ’’سی ایل ایل‘‘ خون اور ہڈیوں کے گودے میں ہونے والے کینسر کی ایک قسم ہے جو خاصی عام ہے۔وینیٹوکلاکس کی طبّی آزمائشیں امریکا، کینیڈا، برطانیہ، جرمنی، پولینڈ اور آسٹریلیا کے 31 تحقیقی مراکز میں گزشتہ چند سال سے جاری تھیں۔

موسیقی لوگوں کے درمیان فاصلے مٹانے میں بہترین ثابت

نیویارک: ماہرین کے مطابق کسی جگہ پر اگر لوگوں کے موڈ کی مناسبت سے موسیقی چلائی جائے تو ان میں اپنے ساتھیوں سے گھلنے ملنے اور ان کی مدد کرنے کا جذبہ پیدا ہوتا ہے۔

اس سے قبل میوزک کو دماغی رجحانات اور وقتی طور پر جذبات پیدا کرنے کے لیے بھی استعمال کیا جاتا رہا ہے۔ مغربی ممالک میں کئی شاپنگ سینٹرز میں ایسی موسیقی بجائی جاتی ہے جس سے گاہک زیادہ خریداری کرسکیں۔ تخلیق کار ادب، شاعری یا فن تخلیق کرتے ہوئے بھی موسیقی سننا پسند کرتے ہیں.

تاہم ایک نئی تحقیق کے مطابق مختلف اداروں میں موزوں موسیقی وہاں کام کرنے والے افراد کو

ایک دوسرے کے قریب لانے اور ایک دوسرے کی مدد کرنے پر مائل کرتی ہے۔

اس تحقیق کے لیے ایک تجربہ کیا گیا جس میں ایک آفس کے ایک حصہ میں دھیمی آواز میں ہیجان انگیز اور دوسرے حصہ میں اداس شاعری و موسیقی والا گانا چلایا گیا۔

پہلے حصہ میں جہاں ہیجان انگیز موسیقی اور شوخ و شنگ بولوں والا گانا چل رہا تھا وہاں لوگوں نے ایک دوسرے سے مسکراہٹوں کا تبادلہ کیا اور آپس میں ایک دوسرے سے بات بھی کی۔

دوسرے حصہ کے لوگ گانے کے دوران خاموش رہے اور ایک دوسرے سے ضرورت کے تحت انتہائی مختصر بات چیت کی.

ماہرین کے مطابق دراصل موسیقی نے ملازمین کے موڈ پر اثر کیا۔ تیز گانوں نے ان کے موڈ کو بہتر کیا اور وہ سوشل ہو کر آپس میں گھل مل گئے جبکہ اداس گانے سننے والے افراد میں یکدم اداسی اور مایوسی کا رجحان ابھر آیا اور انہوں نے کسی دوسرے شخص کی مدد کرنے یا اس سے بات کرنے سے گریز کیا۔

ماہرین نے واضح کیا کہ صرف موسیقی ہی نہیں بلکہ ہمارے ماحول میں ہر چیز جیسے دیواروں کا رنگ، وہاں کی سجاوٹ، وہاں موجود خوشبو، اور وہاں کی روشنیاں وغیرہ ہمارے موڈ پر اثر انداز ہوتی ہیں اور ہم اس لحاظ سے منفی یا مثبت تاثرات کا اظہار کرتے ہیں.

طاقت کے حصول کا سستا ذریعہ, حیران کن تحقیق

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک) سبزیاں ویسے تو انسانی صحت کے لئے بے پناہ فوائد کی حامل ہوتی ہیں مگر ایک سبزی ایسی بھی ہے جو ایک دو نہیں بلکہ کئی ایک فوائد کی حامل ہے۔ ان میں چند فوائدسے آج ہم آپ کو آگاہ کرتے ہیں ۔
ہرے پتوںوالوں یہ سبزی اینٹی آکسڈینٹ ہونے کے ساتھ ساتھ نا صرف کینسر سے بچاؤ بلکہ کینسر کے علاج میں معاون عناصر کا مرکب ہے۔پالک وزن گھٹانے کے لئے بھی ایک انمول سبزی ہے کم کیلوریز کے ساتھ ساتھ وزن یہ سبزی وزن گھٹانے والے وٹامن سے بھی مالا مال ہے ۔اینٹی آکسیڈینٹ سے بھرپور پالک آنکھوں کی صحت اور بینائی کے لئے انمول سمجھی جاتی ہے۔اس کے علاوہ پالک بلڈ پریشر کم کرنے میں بھی بے حد مددگار ثابت ہو تی ہے ۔آئرن کی بھرپور موجودگی کی مدد سے پالک آپ کی ہڈیوں کو مضبوط کرنے میں بے حد ممد و معاون ہے۔

ماہرین کے خیال میں ناخنوں پر موجود سفید چاند کے اثرات, مزید جانیئے

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)ہمارے جسم پر ایسی کئی علامات موجود ہیں جنہیں کبھی ہم نے غور سے نہیں دیکھا ،نہ ان کی اہمیت پر سوچا جیسا کہ بہت سے لوگوں کے ناخن کے نچلے حصے پر سفید داغ سا نظر آتا ہے جو نصف سفید چاند سے مشابہت رکھتا ہے۔متعدد افراد کواس’ ہلال‘ کا پتا ہی نہیں۔ اس کی واضح ، سفید اور صاف شکل میں موجودگی انسان کی اچھی صحت اور مستقل سرگرمی کا پتہ دیتی ہے۔سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ اگر یہ داغ 8 یا 10 انگلیوں پر موجود ہے تو یہ اس بات کا اشارہ ہے کہ مدافعتی نظام اچھی طرح کام کر رہا ہے۔

اس کے مقابلے میں اگر یہ داغ ہلکا اور دھندلی صورت میں ہے تو پھر معاملہ برعکس ہوگا یعنی کہ اس شخص کی صحت اچھی نہیں ہے۔ ایسے انسان کو تھکن اور توانائی کی کمی کا احساس ہوتا ہے۔عموماً ناخن ایک ٹھوس پروٹین ’کيراٹن‘ کے مواد پر مشتمل غلاف ہوتا ہے۔ یہ اسی مواد سے مشابہت رکھتا ہے جو بال اور بقیہ جسم کے حصوں کی کھال کی ساخت میں پایا جاتا ہے۔
اس چاندکا سائنسی نام ‘ لونولہ انگائیس‘ ہے متعدد طبی ذرائع کا اتفاق ہے کہ بہت سے جسمانی اور نفسیاتی امراض اور غذائی قلت کی حالتوں وغیرہ کا ناخنوں کی شکل، رنگ، حجم اور حالت سے گہرا تعلق ہوتا ہے۔ اسی لیے ڈاکٹر صحت کی عمومی جانچ کرتے وقت ناخنوں کے معائنے کو ضروری اقدام سمجھتے ہیں۔

اللہ رب العزت نے جس پھل کی قسم کھائی ، مغرب کے سائنسدان بھی اس کی خصوصیات کے معترف

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)ایک نئے طبی مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ دل کے مریضوں کیلئے زیتون کا تیل کولسٹرول کی دواؤں سے زیادہ مفید ہے۔ معالجین ان دواؤں کو مریضوں کیلئے ایک مؤثر علاج قرار دیتے ہیں۔واضح رہے کہ دیگر تمام اقسام کے تیلوں کو دل کے مریضوں اور خون میں کولسٹرول کی بلند سطح سے دوچار افراد کیلئے سخت مضر قرار دیا جاتا ہے۔برطانوی اخبار ” دی ٹائمز” میں شائع ہونے والے اس اطالوی تحقیقی مطالعے کے مطابق مشرق وسطی کے لوگوں کے غذائی نظام میں زیتون کے تیل کی بڑی مقدار شامل ہوتی ہے لہذا یہ غذائی نظام دل کے دوروں سے جلد وفات کے امکان کواُن لوگوں کے مقابلے میں 37فیصد تک کم کر دیتا ہے جو سرخ گوشت اور مکھن کو اپنے غذائی نظام کی بنیاد بناتے ہیں۔یہ بات پہلے ہی معروف ہے کہ مچھلی ، سبزیاں اور پھل کھانے سے دل کے امراض میں مبتلا ہونے کے امکانات کم ہوجاتے ہیں۔

پالک کے ایسے فوائد کے جان کر آپ بھی حیران رہ جائیں گے

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک) سبزیاں ویسے تو انسانی صحت کے لئے بے پناہ فوائد کی حامل ہوتی ہیں مگر ایک سبزی ایسی بھی ہے جو ایک دو نہیں بلکہ کئی ایک فوائد کی حامل ہے۔ ان میں چند فوائدسے آج ہم آپ کو آگاہ کرتے ہیں ۔
ہرے پتوںوالوں یہ سبزی اینٹی آکسڈینٹ ہونے کے ساتھ ساتھ نا صرف کینسر سے بچاؤ بلکہ کینسر کے علاج میں معاون عناصر کا مرکب ہے۔
پالک وزن گھٹانے کے لئے بھی ایک انمول سبزی ہے کم کیلوریز کے ساتھ ساتھ وزن یہ سبزی وزن گھٹانے والے وٹامن سے بھی مالا مال ہے ۔
اینٹی آکسیڈینٹ سے بھرپور پالک آنکھوں کی صحت اور بینائی کے لئے انمول سمجھی جاتی ہے۔
اس کے علاوہ پالک بلڈ پریشر کم کرنے میں بھی بے حد مددگار ثابت ہو تی ہے ۔
آئرن کی بھرپور موجودگی کی مدد سے پالک آپ کی ہڈیوں کو مضبوط کرنے میں بے حد ممد و معاون ہے۔

چند ایسے خطرناک امراض جو جلد سے ظاہر ہوتے ہیں

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) کہا جاتا ہے کہ آنکھیں روح کی کھڑکیاں ہوتی ہیں مگر انسانی جلد بھی ہمارے جسم کا اہم ترین حصہ ہے یہ ناصرف ہمیں سرد گرم موسم اور محسوس کرنے حس میں مدد دیتی ہے بلکہ جلد کئی ایک خطرناک بیماریوں کے بارے میں پیشگی آگاہی کردیتی ہے مگراس کے لئے آپ کو یہ رپورٹ غور سے پڑھنا ہو گی ۔ بین الاقوامی جریدے ، سائنس ورلڈ رپورٹ کے مطابق جلد سے کئی طرح کے امراض کا پتہ لگایا جا سکتا ہے ۔
کچھ امراض کا پیشگی اشارہ آپ کی جلد کر دیتی ہے ان اشارات میں میں سوزش ، جلد پر خشکی، خارش، سرخ نشانات جو کہ عام طور پر گردن اور کہنیوں کے پاس ظاہر ہوتے ہیں ۔ یہ عام جلدی مرض بھی ہے جو بچوں اور بڑوں دونوں میں کسی بھی وقت ظاہر ہو سکتا ہے مگر اس کے ساتھ ہی ساتھ یہ ذہنی خرابی کی علامت بھی ہوسکتا ہے ۔
ایک امریکی تحقیق کے مطابق ڈپریشن اور ذہنی عارضوں کے شکار افراد کی جلد پر یہ مرض نمودار ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔ تاہم ریسرچ میں یہ بات بھی بتائی گئی ہے کہ جلد کا علاج کروانے سے ان ذہنی امراض میں بھی بہتری آسکتی ہے۔
چنبل نامی جلدی مرض بھی بہت عام ہے اور لوگوں میں اس مرض کو زیادہ سنجیدگی سے بھی نہیں لیا جاتا مگر یہ سنگین طبی مسائل کا پیش خیمہ ثابت ہو سکتا ہے ۔ ماہرین کے مطابق اس مرض کا شکار افراد دل کے امراض کا شکار ہو سکتے ہیں ،ایسے افراد میں سے 58 فیصد افراد دل ، جبکہ 43 فیصد افراد پر فالج کا حملہ ہو سکتا ہے۔
جلدی صحت کے ماہرین کے مطابق چنبل کا مرض جسم میں خون کی ترسیل کرنے والی شریانوں میں خون کے جمنے سے شروع ہوتا ہے اور یہ جمنا ورم کا باعث بنتا ہے دونوں چیزیں آپس میں مل کر سنگین امراض کی وجہ بنتی ہے ۔
گلابی دانوں کے مرض میں پہلے مریض کی جلد سرخ ہوتی ہے اور کے بعد گلابی رنگ کے دانے نمودارہوتے ہیں ۔ ایسے افراد جن کی جلد پر یہ مرض ظاہر ہوتا ہے وہ عام طور پر اس کا علاج نہیں کرواتے مگر جدید طبی تحقیق نے یہ واضح کیا ہے کہ خواتین میں ڈیمنیشیا کے مرض کا خطرہ یہ بیماری 28 فیصد سے بڑھا دیتی ہے اس سلسلے میں یہ بات اہمیت کی حامل ہے کہ اگر اس مرض کی خواتین کی عمر 50 یا 60 برس سے زائد ہو تو اس بیماری کے امکانات میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔
برض انسانی جسم پر نمودار ہونے والے سفید دھبوں والے مرض کا نام ہے ۔ جو دراصل جسمانی دفاعی نظام کی کمزوری کے نتیجے میں جلدی خلیات پر حملہ آور ہونے والے جراثیم جو جلد کو رنگ دینے والے جز میلانن پر حملہ کر کے سفید دھبوں کی صورت میں جلد پر نمودار ہوتا ہے ۔ مگر یہ مرض اس کے ساتھ ساتھ تھائیرائیڈ اور دیگر آٹو امیون امراض کی علامت بھی ہو سکتا ہے ۔
سیاہ رنگ کے گومڑ یا تل عام طور پر جلد پر ظاہر ہونے والے چند عام ترین نشانات میں سے ایک ہیں جن پر کوئی بھی توجہ نہیں دیتا۔ مگر ماہرین کے مطابق بہت نمایاں اور زیادہ سیاہ تل یا گومڑ اگر آپ کی جلد پر نمودار ہوں تو ان کے بارے میں سنجیدگی سے غور کریں اور ڈاکٹر کو چیک اپ کروائیں کیوں کہ جلد کے کینسر کی علامت ہو سکتے ہیں ۔ اس کے علاوہ یہ گومڑ اور تل بریسٹ کینسر ، مثانے اور گردے کے کینسر کا پیش خیمہ بھی ثابت ہو سکتے ہیں ۔
اس کینسر سے بچنے کے لئے ماہرین کے مطابق متحرک رہنا، صحت بخش غذا ، سورج میں کم گھومنا اور الکحل کے استعمال سے اجتناب بے حد ممد و معاون ثابت ہو سکتے ہیں ۔

بستر پر اسمارٹ فونز کا استعمال صحت کے لیے نقصان دہ

آج کل ہر وقت لوگوں کے ہاتھ میں اسمارٹ فون ہوتا ہے چاہے وہ سونے کے لیے ہی کیوں نہ لیٹے ہوئے ہوں۔

مگر یہ عادت جسم اور دماغ کے لیے نقصان دہ ثابت ہوسکتی ہے۔

یہ انتباہ امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

کیلیفورنیا یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق سونے سے قبل اسمارٹ فونز کا استعمال کرنا سب سے پہلے تو نیند کو متاثر کرتا ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اسمارٹ فون کی اسکرین سے خارج ہونے والی شعاعیں آنکھوں کو متاثر کرتی ہیں اور دماغ کو بتاتی ہیں کہ جاگتے رہو ابھی سونے کا وقت نہیں ہوا۔

اسمارٹ فون ہاتھ میں ہونے سے دماغ نیند کا باعث بننے والا کیمیکل میلاٹونین کی مقدار بڑھاتا نہیں۔

تحقیق کے مطابق اگر آپ کی نیند متاثر ہوتی ہے اور آپ پانچ سے چھ گھنٹے ہی سو پاتے ہیں تو اس کے نتیجے میں دوران نیند جسم کے اندر زہریلے مواد کی صفائی کا عمل مناسب طریقے سے نہیں ہوپاتا۔

یہ زہریلے اثرات پھر جسم کے اندر موجود رہتے ہیں جس کے نتیجے میں توجہ مرکوز کرنے کی صلاحیت متاثر ہوتی ہے، مختصر المدت یاداشت پر اثرات مرتب ہوسکتے ہیں، مسائل کا حل نکالنے کی صلاحیت بھی ناقص ہوسکتی ہے۔

اور ہاں کم نیند کا نتیجہ لوگوں کے اندر نقصان دہ غذا کے استعمال کا رجحان بھی بڑھاتا ہے جس کے نتیجے میں موٹاپے، ذیابیطس اور بلڈ پریشر جیسے امراض کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

محققین کا کہنا تھا کہ لوگوں کو اسمارٹ فونز کے استعمال کا نظام الاوقات طے کرنا چاہئے اور سونے سے کم از کم ایک گھنٹے پہلے اسکرینز کو آنکھوں کے سامنے نہیں لانا چاہئے۔

Google Analytics Alternative