صحت

پی جی ٹرینی ڈاکٹروں کو 70 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ دینے کی سمری منظور

لاہور : وزیر اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے بغیر تنخواہ کام کرنے والے 900 سے زائد پی جی ٹرینی ڈاکٹروں کو فوری طور پر 70 ہزار روپے سے زائد ماہانہ تنخواہ دینے کی سمری منظور کرلی۔

وزیر اعلیٰ پنجاب نے سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر نجم احمد شاہ کو ہدایت کی ہے کہ تمام ہسپتالوں میں پی جی ٹرینی ڈاکٹرز کو فوری طور پر تنخواہ ادا کرنے کا عمل شروع کیا جائے۔

اس وقت پنجاب میں 900 سے زائد پی جی ٹرینی ڈاکٹر ہسپتالوں میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔ محکمہ سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر نے اس حوالے سے حکم جاری کر دیا۔

فیس بُک سے دماغی بیماریوں کی تشخیص اورعلاج

کیمبرج، برطانیہ: بین الاقوامی طبّی جریدے ’’دی لینسٹ سائیکاٹری‘‘ میں شائع ہونے والی ایک تازہ رپورٹ کے مطابق دماغی بیماریوں کی تشخیص اور(ممکنہ طور پر) علاج میں فیس بُک پر کسی شخص کی سرگرمیوں سے خاصی مدد لی جاسکتی ہے۔

یونیورسٹی آف کیمبرج، برطانیہ میں نفسیاتی علاج (سائیکاٹری) کی ماہر ڈاکٹر بیکی انکسٹر اور ان کے ساتھیوں نے 2004ء میں فیس بُک کی ابتداء سے لے کر آج تک اس سوشل میڈیا ویب سائٹ پر ہونے والی چیدہ چیدہ سرگرمیوں کا جائزہ لیا؛ جبکہ سوشل میڈیا پرکئے گئے سابقہ مطالعات بھی استعمال کئے۔

تفصیلی تجزیئے کے بعد انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ فیس بُک پراسٹیٹس اپ ڈیٹس، کمنٹس، شیئرز، لائکس، فرینڈ، ان فرینڈ اورایسی دوسری سرگرمیوں کو مدنظررکھتے ہوئے کسی شخص میں ڈپریشن (اضمحلال) اورشیزوفرینیا (اسکیزوفرینیا) جیسی نفسیاتی بیماریوں کی نہ صرف بروقت تشخیص کی جاسکتی ہے بلکہ ان کا ممکنہ علاج بھی کیا جاسکتا ہے۔

سوشل میڈیا کا استعمال مسلسل بڑھتا جارہا ہے جہاں ہرعمر، ہر طبقے اور ہر طرح کی سوچ رکھنے والے افراد اپنے خیالات کا اظہار بڑی آزادی سے کرسکتے ہیں۔ البتہ ماہرین کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا پر اظہارِ خیال کی یہی آزادی جس میں دوست بنانے، رائے دینے، دوسرے کی بات آگے پہنچانے اور پسند یا ناپسند جیسے شخصی رجحانات شامل ہیں، ہمارے سامنے کسی بھی فرد کی شخصیت کو آئینے کی طرح صاف کردیتے ہیں۔

جائزے میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ لوگ نفسیاتی معالج کو اپنے بارے میں جو کچھ بھی بتاتے ہیں اس کے مقابلے میں ان کی کہیں زیادہ معلومات سوشل میڈیا پر ان کی متواتر سرگرمیوں کی بنیاد پر حاصل کی جاسکتی ہیں؛ اور یہ بات خاص طور پر نوجوانوں کےلئے درست ہے۔

بیکی انکسٹرکہتی ہیں کہ اس طرح سوشل میڈیا پر کسی شخص کی سرگرمیاں نفسیاتی ماہرین کے بہت کام آسکتی ہیں۔ مثلاً اگر کوئی شخص ڈپریشن کا مریض ہو تو وہ تواتر سے ایک خاص انداز میں اپنا اسٹیٹس اپ ڈیٹ کرتا رہے گا، دوسروں کی پوسٹوں پر اس کا ردِعمل بھی اسی مخصوص انداز کے تابع ہوگا جبکہ وہ ڈپریشن کا پتا دینے والی پوسٹس خاصے تواتر سے شیئر بھی کرائے گا۔ سوشل میڈیا پر اس شخص کی یہ تمام سرگرمیاں مجموعی طور پر نہ صرف ڈپریشن کی کیفیت کا پتا دیں گی بلکہ اس کے نفسیاتی معالج کی رہنمائی بھی کریں گی تاکہ وہ درست سمت میں اس کا علاج بھی کرسکے۔

شیزوفرینیا اور دوسری دماغی بیماریوں میں مبتلا افراد کا معاملہ بھی کچھ اسی طرح کا ہے۔ غرض یہ کہ نفسیاتی امراض/ دماغی بیماریوں کی تشخیص اور ممکنہ علاج کے ذیل میں سوشل میڈیا ایک غیرمعمولی مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔ البتہ اس کےلئے نفسیاتی معالجین کو مناسب تربیت فراہم کرنا بھی ضروری ہوگا تاکہ وہ اپنے پاس آنے والے کسی نفسیاتی مریض کے سوشل میڈیا اکاؤنٹ کا کس طرح جائزہ لیں اور بیماری کی نوعیت، شدت اور ضروری علاج کا تعین بھی کرسکیں۔

آلودگی سے ہائی بلڈ پریشر کا خطرہ

ماہرین کا کہنا ہے کہ طویل عرصے تک فضائی طور پر آلودہ شہروں میں رہنے والے افراد میں بلند فشار خون میں مبتلا ہونے کا خدشہ بڑھ جاتا ہے۔

بدترین فضائی آلودگی کا شکار 10 ممالک 

اس تحقیق کے لیے طبی و سائنسی ماہرین نے یورپ میں رہائش پذیر 41 ہزار افراد کا تجزیہ کیا۔ تحقیق کے بعد انہوں نے نتائج پیش کیے کہ شہروں میں مختلف اقسام کی آلودگی وہاں کے رہائشیوں میں ہائی بلڈ پریشر کا خطرہ بڑھا دیتی ہیں۔

ماہرین نے واضح کیا کہ اس میں صوتی یعنی شور کی آلودگی کا بھی ایک بہت بڑا ہاتھ ہے جو بلند فشار خون کا باعث بنتی ہے اور اس کی وجہ سے قبل از موت واقع ہوسکتی ہے۔

کیا آپ خاموشی کے فوائد جانتے ہیں؟

تحقیق کے لیے 5 یورپی شہروں ناروے، سوئیڈن، ڈنمارک، جرمنی اور اسپین کے رہائشیوں کا 5 سے 9 برس تک جائزہ لیا گیا۔ اس کے ساتھ ساتھ اس شہر کی ہفتہ وار بنیاد پر ہوا کے معیار کا بھی جائزہ لیا گیا۔

ماہرین نے دیکھا کہ وہ علاقے جن میں ہوا کا معیار خراب ہوگیا اور اس میں آلودہ عناصر بڑھ گئے اس علاقے کے رہائشیوں میں ہائی بلڈ پریشر کی ابتدائی علامات ظاہر ہونا شروع ہوگئیں۔

آلودگی سے سڑکوں اور پلوں کی تعمیر ممکن

ماہرین نے واضح کیا کہ شور کی آلودگی اور فضائی آلودگی نے مجموعی طور پر خون کے بہاؤ پر خطرناک اثرات مرتب کیے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل بھی کئی بار فضائی آلودگی کے انسانی صحت پر خطرناک اثرات کے بارے میں آگاہ کیا جاچکا ہے۔

اس سے قبل ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ فضائی آلودگی انسانی دماغ پر اثر انداز ہوتی ہے اور یہ مختلف دماغی بیماریوں جیسے الزائمر وغیرہ کا سبب بن سکتی ہے۔ ریسرچ کے مطابق ایک دماغی اسکین میں فضا میں موجود آلودہ ذرات دماغ کے ٹشوز میں پائے گئے تھے۔

ایک اور تحقیق کے مطابق فضائی آلودگی ان لوگوں پر خاص طور پر منفی اثرات ڈالتی ہے جو کھلی فضا میں کام کرتے ہیں جیسے مزدور اور کسان وغیرہ۔ ماہرین کے مطابق یہ کھلی فضا میں کام کرنے والے افراد کی استعداد کو متاثر کرتی ہے اور ان کی کارکردگی میں کمی واقع ہوجاتی ہے

ملتان میں انسدادپولیو مہم کا تیسرا دن

ملتان میں 4 روزہ انسداد پولیو مہم کا سلسلہ آج تیسرے دن بھی جاری ہے ، محکمہ صحت کی موبائل ٹیمیں گھر گھر جا کر بچوں کو پولیو کے قطرے پلا رہی ہیں۔

ضلع ملتان میں گزشتہ روز سے شروع ہونے والی 4 روزہ انسدادپولیو مہم کے دوران 8 لاکھ 11 ہزار 411 پانچ سال سے کم عمر بچوں کو انسداد پولیو کے قطرے پلائے جا رہے ہیں۔

1730 موبائل ٹیمیں گھر گھر جا کر بچوں کو انسداد پولیو کے قطرے پلا رہی ہیں ۔ اس کے علاوہ سرکاری اسپتالوں ، بس اڈوں ، ہوائی اڈوں اور ریلوے اسٹیشنز پر بھی پولیو کاؤنٹرز بنائے گئے ہیں۔

مولی کے وہ فوائد جن سے ہم اب تک لاعلم تھے

موسم سرما کی آمد آمد ہے اوراس موسم میں ہری بھری سبزیاں بھی وافر مقدار میں مارکیٹ میں موجود ہوتی ہیں اوران ہی میں سے ایک ہے مولی گوکہ لوگ اسے سلاد بنانے کے دوران استعمال کرتے ہیں لیکن اس کے انتہائی حیرت انگیز طبی فوائد ہے شاید جن سے ہم اب تک لا علم تھے لیکن ہم آپ کو بتارہے ہیں ان کے فوائد۔

1- مولی میں فاسفورس ، کیلشیم اور وٹامن سی کے ساتھ فولاد کی بھی کافی مقدار پائی جاتی ہے۔

2- مولی پتھری کے مرض کے لئے ایک مفید سبزی ہے اس کے کھانے سے پتھری کے مرض میں مبتلا مریضوں کو افاقہ ہوتا ہے، اس کے روزانہ کھانے سے پتھری گھل کر ریزہ ریزہ ہو کو پیشاب کے ذریعے نکل جاتی ہے۔

3- مولی بواسیر کے مرض میں بھی مبتلا مریضوں کے لئے انتہائی کارآمد سبزی ہے، بواسیر کے مرض میں مبتلا مریض کو اس کا رس روزانہ کی بنیاد پرپلائیں تو اس بیماری سے چھٹکارہ حاصل کیا جاسکتا ہے۔

4- یرقان کے مرض میں مبتلا مریضون کو مولی کے پتوں کا رس نکال کراس میں چینی ملاکر  پلائیں توبہت جلد یرقان کا خاتمہ ہو جائے گا۔

5- مولی جگر اورتلی کے مرض میں بھی مبتلا مریضوں کے افاقے کا ایک ذریعہ ہے جب کہ پیشاب کے مرض میں بھی مبتلا مریضوں کے لئے انتہائی مفید  ہے۔

6- مولی قبض کشا بھی ہے اور اس کے کھانے سے آنتوں کی حرکتیں تیز ہوجاتی ہیں جو قبض میں مبتلا مریضوں کے لئے افاقے کا سبب بنتی ہے۔

ملتان: نشتر اسپتال میں مزید ایک مریض میں ڈینگی وائرس کی تصدیق

ملتان کے نشتر اسپتال میں زیر علاج مزید ایک مریض میں ڈینگی وائرس کی تصدیق ہو گئی ہے جبکہ 4مریضوں میں ڈینگی وائرس ثابت نہیں ہوا ہے۔

ملتان کے نشتر اسپتال میں ڈینگی کے شبہے میں لائے گئے مریضوں میں وزیرستان کی رومان میں ڈینگی بخار ثابت ہو گیا ہے جبکہ خانیوال کے آصف، مظفر گڑھ کے ڈاکٹر امداد، ملتان کے ڈاکٹر یاسراور خانیوال کے شاہد کی رپورٹ منفی آ گئی ہے۔

نشتر اسپتال انتظامیہ کے مطابق ڈینگی بخار میں مبتلا دو مریض صحتیابی کے بعد اپنے گھروں کو روانہ ہو گئے ہیں، ان مریضوں میں ڈیرہ غازی خان کے غلام عباس اور مظفر گڑھ کے ہاشم شامل ہیں۔

موسم سرما میں مختلف بیماریوں سے بچاؤ کے گھریلو ٹوٹکے

راش یا کھچ کھچ دور کرنے کے لیے خاصا مفید سمجھا جاتا ہے جب کہ ادرک  میں اینٹی بایوٹکس خواص پائے جاتے ہیں۔ اگر آپ کوگلے میں کچھاؤ یا سردi دور کرنا ہے تو ادرک کو پیس لیجئے اوراس میں اتنی ہی مقدارمیں شہد ڈالیں اوردونوں کا مکسچر بنالیجیے۔  اگر آپ کو اس مکسچر کا ذائقہ اچھا نہ لگy توآپ اس میں آدھا گلاس گرم دودھ شامل کرکے اس کے ذائقے کوبہتربنا سکتے ہیں۔

 

ہلدی کا استعمال

ہلدی کا استعمال آپ متعدد طریقوں سے کرسکتے ہیں۔ ہلدی پاؤڈر کو آپ دودھ میں ملا کر بھی لے سکتے ہیں جو آپ کے لیے انتہائی مفید ثابت ہوگا جب کہ ہلدی کی گھٹی کو ایک جانب سے جلا کرنکلنے والے دھوئیں کو بھی سونگھ سکتے ہیں جو کھانسی اور گلے میں درد اور خراش میں یک دم سکون سے گا۔

السی کا بیج

السی کے بیج ہزاروں سالوں سے استعمال کئے جارہے ہیں جو سردی کے موسم میں انتہائی مفید ہے۔ السی کے بیجوں کو پانی میں اتنا ابالیں کے مکسچرگاڑھا ہوجائے۔ مکسچر کے ذائقے کو بہتر بنانے کے لیے شہد اور لیموں کا رس بھی ڈالا جاسکتا ہے۔ اس مکسچر کو آپ دن میں 2 بارلیں جس سے آپ سرد موسم میں ہوجانے والی بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں گے۔

گڑ کا استعمال

گڑ، چینی کی نسبت زیادہ فوائد کا حامل ہے جب کہ موسم سرما میں یہ سب کے لیے بہترین گھریلو دوا ہے۔ پانی میں پسی ہوئی کالی مرچیں ڈال کرابالیں، ابلنے کےبعد اس میں ہلدی اورگڑ کے کچھ ٹکڑے ڈال کراچھی طرح مکس کیجیئے جب تک گڑ پورے طریقے سے گھل نہ جائے۔ یہ مکسچرسرد موسم میں مفید ہونے کے ساتھ ساتھ سینے کے انفیکشن سے چھٹکارا پانے کے لیے بھی نہایت اہم ہے۔

مصالحے والی چائے

مصالحے والی چائے سرد موسم میں آپ کو بہت آرام دیتی ہے جس کے بنانے کا طریقہ بھی انتہائی آسان ہے۔ مصالحے والی چائے بنانے کے لیے پانی میں چائے کی پتی ڈال کرابالیں اور اس میں اپنی پسند کے مطابق ادرک پاؤڈر، لہسن پاؤڈر، دارچینی پاؤڈر یا پسی ہوئی کالی مرچیں ڈالیئے  اور اس میں بغیردودھ ڈالے نوش فرمائیں جب کہ آپ اس میں شہد کا اضافہ بھی کرسکتے ہیں۔

سگریٹ پینے وا لوں کے لیے خوشخبری, پھیپڑوں کی صفائی اور کھانسی ختم کرے

کیا آپ سگریٹ پیتے ہیں؟ کیا آپ گزشتہ کئی سال سے سگریٹ پی رہے ہیں ؟ کیا آپ کسی بڑے اور آلودہ شہر کے رہائشی ہیں؟ اگر ہاں تو اب وقت آگیا ہے کہ آپ اپنے نظامِ تنفس کے لیے کچھ کریں بصورت دیگر کئی بیماریاں آپ کو لاحق ہوسکتی ہیں اور ممکن ہیں کہ کچھ تو آپ کے بدن میں جگہ بنا چکے ہوں۔

نظامِ تنفس یا سانس لینے کا نظام پورے جسم میں سب سے زیادہ اہمیت کا حامل ہیں اگر آپ ایک مضبوط اور صحت مند نظامِ تنفس کے مالک نہیں ہیں تو آپ کو بہت سے جسمانی صحت کے مسائل درپیش ہوسکتے ہیں جن میں سر فہرست سانس کی بیماریاں شامل ہیں جن میں استھما‘ پھیپڑوں کی سوجن اور مختلف اقسام کی کھانسی عام ہیں۔

کیونکہ ہمیں آپ کی صحت کا خیال ہے لہذا ہم لائیں ہیں آپ کے لیے ایک ایسا نسخہ جو کہ آپ کے نظامِ تنفس کو بہتر بنائے گا ‘ دھویں سے آلودہ پھیپڑوں کی صفائی کرے گا اور کینسر جیسے موذی سمیت آپ کو متعدد بیماریوں سے محفوظ رکھے گا۔ اور نسخہ بنانے میں اتنا آسان ہے کہ آپ حیران رہ جائیں گے۔

ایک برتن میں پانی لے کر اس میں چینی ملائیں اور ابلنے کے لیے رکھ دیں‘ جب پانی ابلنے لگے تو اس میں لہسن ‘ ادرک اور ہلدی شامل کریں اور پھر تیز آنچ پر پکائیں اور ٹھنڈا ہونے پر فریج میں محفوظ کرلیں۔

کیا آپ سگریٹ پیتے ہیں؟ کیا آپ گزشتہ کئی سال سے سگریٹ پی رہے ہیں ؟ کیا آپ کسی بڑے اور آلودہ شہر کے رہائشی ہیں؟ اگر ہاں تو اب وقت آگیا ہے کہ آپ اپنے نظامِ تنفس کے لیے کچھ کریں بصورت دیگر کئی بیماریاں آپ کو لاحق ہوسکتی ہیں اور ممکن ہیں کہ کچھ تو آپ کے بدن میں جگہ بنا چکے ہوں۔

نظامِ تنفس یا سانس لینے کا نظام پورے جسم میں سب سے زیادہ اہمیت کا حامل ہیں اگر آپ ایک مضبوط اور صحت مند نظامِ تنفس کے مالک نہیں ہیں تو آپ کو بہت سے جسمانی صحت کے مسائل درپیش ہوسکتے ہیں جن میں سر فہرست سانس کی بیماریاں شامل ہیں جن میں استھما‘ پھیپڑوں کی سوجن اور مختلف اقسام کی کھانسی عام ہیں۔

 

کیونکہ ہمیں آپ کی صحت کا خیال ہے لہذا ہم لائیں ہیں آپ کے لیے ایک ایسا نسخہ جو کہ آپ کے نظامِ تنفس کو بہتر بنائے گا ‘ دھویں سے آلودہ پھیپڑوں کی صفائی کرے گا اور کینسر جیسے موذی سمیت آپ کو متعدد بیماریوں سے محفوظ رکھے گا۔ اور نسخہ بنانے میں اتنا آسان ہے کہ آپ حیران رہ جائیں گے۔

ادرک کا ایک چھوٹا ٹکڑ
چار سو گرام کٹا ہوا لہسن
دو چائے کی چمچی ہلدی
ایک لیٹر پانی
چار سو گرام چینی

 

ایک برتن میں پانی لے کر اس میں چینی ملائیں اور ابلنے کے لیے رکھ دیں‘ جب پانی ابلنے لگے تو اس میں لہسن ‘ ادرک اور ہلدی شامل کریں اور پھر تیز آنچ پر پکائیں اور ٹھنڈا ہونے پر فریج میں محفوظ کرلیں۔

 

بہترین نتائج کے لیے دو کھانے کے چمچے صبح نہا ر منہ اور دو چمچے رات سوتے وقت استعمال کرنے سے آپ کا سانس لینے کا نظام متعدد بیماریوں سے بچا رہے گا۔

چمچے رات سوتے وقت استعمال کرنے سے آپ کا سانس لینے کا نظام متعدد بیماریوں سے بچا رہے گا۔

Google Analytics Alternative