صحت

کراچی: ایک ہفتے میں مزید 62 افراد ڈینگی کا شکار

کراچی میں ایک ہفتے کے دوران مزید 62 افراد ڈینگی میں مبتلا ہوگئے،سربراہ انسداد ڈینگی سیل ڈاکٹر مسعود سولنگی کے مطابق شہر میں رواں سال متاثرہ افراد کی تعداد 1773 تک جا پہنچی ہے ۔

ڈاکٹر مسعود سولنگی کے مطابق شہر میں ایک ہفتے کے دوران 5 درجن سے زائد افراد ڈینگی میں مبتلا ہو چکے ہیں اورشہر میں رواں سال متاثرہ افراد کی تعداد ڈیڑھ ہزار سے زائدہوگئی ہے۔

سربراہ انسداد ڈینگی سیل ڈاکٹر مسعود سولنگی نے کہا کہ صوبے بھر میں ڈینگی سے متاثرہ افراد کی تعداد 2175ہوگئی ہے۔ان کے مطابق رواں سال ڈینگی سے 3 ہلاکتیں سامنے آچکی ہیں-

جیکب آباد:خسرے سے 9بچے متاثر، ایک جاں بحق

ڈیوٹی میں غفلت برتنے پر ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر جیکب آبادڈاکٹر سانون شیخ نے مذکورہ یوسی کے ویکسینیٹر زین سرکی اور ٹی ایف سی عبدالشکور دستی کا ڈی جی آفس حیدرآباد تبادلہ کردیا ہے ۔

اس سلسلے میں ڈی ایچ او ڈاکٹر سانون شیخ نے خسرہ کی وبا پھیلنے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ وبا کے بعد مذکورہ علاقے اور گردونواح میں معصوم بچوں کو ویکسین دی جا رہی ہے ۔

سرد موسم میں ذرا سی احتیاط کئی بیماریوں سے بچا سکتی ہے

کراچی میں سرد موسم کی آمد کے ساتھ ہی الرجی اور دمہ سمیت مختلف بیماریاں عام ہوجاتیں ہیں ،ماہرین کے مطابق ذرا سی احتیاط کئی بیماریوں سے بچا سکتی ہے۔

موسم ہوا تبدیل ،گرم ہواؤں کی جگہ ٹھنڈی اور خنکی والی ہواؤں نے ڈالے دیڑے ، سرد موسم کیا آیا بیماریاں بھی ساتھ لایا ۔

ماہرین طب کے مطابق سرد موسم اپنے ساتھ وائرل انفیکشن سمیت کھانسی ،نزلہ ،زکام اور الرجی میں اضافہ کردیتا ہے۔

اب فالج کے مریض اپنے پیروں پر کھڑے ہوسکیں گے

فالج کے مریضوں کے لئے خوش خبری ،اب وہ بھی اپنے پیروں پر کھڑے ہوں گے۔ سائنسدانوں کی تیار کردہ نئی ڈیوائس سےفالج کے مریض اپنی مشکل پر قابوپاسکیں گے۔

جینوا سے جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ڈیوائس کو 2 بندروں میں استعمال کیا گیا،جنہوں نے اسے اپنے فالج زدہ پیروں کے لئے کامیابی سے استعمال کیا۔

دماغ سے کنٹرول ہونے والی یہ ڈیوائس ایک بین الاقوامی ٹیم نے تیار کی ہے اور امید ہے کہ انسانوں کے استعمال کے لئے جلد ہی اس کا تجربہ کیا جائے گا۔

عالمی ٹیم کے ایک رکن کا کہناہے کہ پہلی مرتبہ ہم اس بات کا تصور کر سکتے ہیں کہ مکمل طور پر فالج زدہ انسان دماغ سے چلنے والی اس ڈیوائس کے ذریعے اپنی ٹانگیں استعمال کر سکے گا۔

یہ ڈیوائس دماغ سے ملنے والےسگنل کو ڈی کوڈ کرکے پیر چلانے میں مدد کرے گی۔

یہ ڈیوائس سوئٹزر لینڈ میں تیار کی گئی ہے اور اس کے اہم اجزا کی تیاری میں امریکی یونیورسٹی اور جرمنی کی ایک کمپنی نے حصہ لیا ہے۔

کئی شہروں میں خشک سردی ، شہری مختلف بیماریوں کا شکار

ادھروادی کوئٹہ اور بلوچستان کےمختلف شہروں میں سردی کی لہر نے موسم کو مزید سرد کر دیا ہے، تاہم خشک موسم کے باعث موسمی بیماریوں نے سر اٹھانا شروع کر دیا ہے ۔

کو ئٹہ میں کم سےکم درجہ حرارت ایک ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ قلات میں کم سےکم درجہ حرارت منفی 3 ڈگری سینٹی گر یڈ ،دالبندین میں5ڈگری سینٹی گریڈ، خضدار میں 10اورژوب میں 11ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا ۔

محکمہ مو سمیا ت کے مطابق آئندہ 24گھنٹوں کےدوران صوبےکے بیشتر علاقوں میں موسم خشک اورسرد رہنےکاامکان ہے۔ملتان میں بھی موسم کی تبدیلی نے شہریوں پر خوشگوار اثرات مرتب کئے ہیں، تاہم خشک سردی کے باعث لوگ موسمی بیماریوں میں بھی مبتلا ہو رہے ہیں ۔

ملتان میں آج صبح کے وقت درجہ حرارت 14 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا جبکہ دن میں زیادہ سے زیادہ درجہ حرارت 30 ڈگری سینٹی گریڈ رہے گا ۔ محکمہ موسمیات کے مطابق موسم میں اب آہستہ آہستہ تبدیلی متوقع ہے اور سردیوں کا آغاز ہو رہا ہے، جس کے ساتھ دھند کا سلسلہ بھی جاری ہے ۔

آج ملتان میں میں دھند کی حد نگاہ 5 سو میٹر رہی، جس سے شہریوں کو آمدورفت میں پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑا، تاہم شہر میں اسموگ کا سلسلہ ختم ہو گیا ہے ۔ دوسری جانب خشک موسم سے شہریوں میں نزلہ ، زکام اور کھانسی جیسی شکایات بڑھ رہی ہیں تاہم پہلی بارش کے بعد ہی موسمی بیماریوں میں کمی آ جائے گی ۔

دانتوں کا خیال اور انہیں مضبوط رکھنے کی آسان ترکیبیں

واشنگٹن: دانتوں کو صاف اور صحت مند رکھنے کے لیے روزانہ دو مرتبہ دانت برش کرنے اور خلال کرنے کے مشورے عام دیئے جاتے ہیں لیکن کچھ سادہ احتیاطی تدابیر ایسی بھی ہیں جنہیں اختیار کرکے آپ اپنے دانتوں کو لمبے عرصے تک محفوظ رکھ سکتے ہیں۔

امریکن ڈینٹل ایسوسی ایشن کے مطابق چند ایسی باتیں ہیں جن پر عمل کرکے آپ اپنے دانتوں کو لمبے عرصے تک محفوظ بناسکتے ہیں۔

ناخن مت چبائیں:

ماہرین کا کہنا ہےکہ ناخن نہ چبائیے کیونکہ اس سے آپ کے جبڑوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے اور دانتوں پر موجود انیمل کی حفاظتی تہہ بھی اُکھڑ سکتی ہے۔

برش آرام سے کریں: 

زیادہ سختی اور شدت سے دانت برش نہ کریں کیونکہ اس سے دانتوں اور مسوڑھوں دونوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ بہتر ہے کہ نرم ریشوں والے ٹوتھ برش سے دانت صاف کریں لیکن دانتوں اور مسوڑھوں پر زیادہ دباؤ نہ ڈالیے۔

دانت مت پیسیں:

دانت پیسنے اور بالائی اور نچلے جبڑوں کو ایک دوسرے پر رگڑنے سے پرہیز کریں کیونکہ اس سے نہ صرف جبڑوں میں درد ہوسکتا ہے بلکہ دانت بھی ٹوٹ سکتے ہیں۔

برف سے پرہیز:

برف چبانے یا چوسنے سے گریز کریں کیونکہ برف کی ٹھنڈک اور سختی دونوں مل کر آپ کے دانتوں کو توڑ بھی سکتی ہیں۔

میٹھی چیزوں سے دور رہیں:

زیادہ میٹھی چیزیں، اسنیکس اور فاسٹ فوڈ سے بچیں کیونکہ ان میں دانتوں کو کمزور بنانے اور تباہ کرنے والے اجزاء کی وافر مقداریں موجود ہوتی ہیں۔

تھر میں مزید 10 افراد ڈینگی میں مبتلا ،تعداد 236 ہوگئی

تھر کے صحرا میں ڈینگی پر قابو نہ پایا جا سکامزید 10 افراد ڈینگی میں مبتلا ہو گئے،گزشتہ 65دنوں کے دوران ڈینگی سے متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد236ہو گئی ہے۔

صحرائے تھر میں ڈینگی کامرض پھیلتا ہی جا رہا ہے، اسپتال ذرائع کے مطابق مٹھی چھاچھرو اور اسلام کوٹ میں مزید 10 افراد ڈینگی کا شکار ہو گئے ہیں جبکہ ضلع کے سرکاری اسپتالوں میں روزانہ درجنوں افراد ڈینگی کے شبہے میں لائے جا رہے ہیں ۔

ڈینگی کا مچھر ضلع کی تمام تحصیلوں کے دیہات تک پھیل چکا ہے اور گزشتہ 65دنوں کے دوران ڈینگی سے متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد200 سے زائد ہوگئی ہے۔

اچھی صحت کےلئے ورزش بہت ضروری

پنسلوانیا: طبّی ماہرین نے مختلف مطالعات کی بنیاد پر واضح کیا ہے کہ ورزش سے صحت کے فوائد حاصل کرنے کےلئے ہمیں کس طرح اسے اپنے معمولات کا حصہ بنانا چاہئے۔

اچھی صحت کےلئے ورزش کو بہت ضروری خیال کیا جاتا ہے۔ لیکن روزانہ کتنی اور کس قسم کی ورزش کو معمول کا حصہ بنایا جائے کہ اس سے آپ کی صحت کو فائدہ ہو؟ یہ بات بالعموم واضح نہیں کی جاتی۔

اگر آپ بھی اس بارے میں کسی ابہام یا غلط فہمی کا شکار ہیں تو یہ تحریر آپ ہی کےلئے ہے۔

ٹائپ 2 ذیابیطس کے خطرے میں کمی

اگر آپ چاہتے ہیں کہ بڑی عمر میں ہونے والی ذیابیطس (ٹائپ 2 ذیابیطس) سے محفوظ رہیں یا اس کے اثرات آپ پر کم سے کم ہوں تو آپ کو چاہئے کہ پورے ہفتے میں صرف 30 منٹ کےلئے، ہر بار دس منٹ تک یعنی سات دنوں میں تین مرتبہ، ورزش کریں۔ اس کی سب سے آسان صورت، تیز قدموں سے چہل قدمی (brisk walking) ہے لیکن اگر آپ کسی اور طرح کی جسمانی ورزش کرنا چاہتے ہیں تو اس میں بھی کوئی مضائقہ نہیں۔

سرطان سے بچاؤ

ہفتے میں پانچ دن تک روزانہ صرف 30 منٹ تک تیز قدموں سے چہل قدمی کرنے سے سرطان (کینسر) کا خطرہ بھی بہت کم ہوجاتا ہے۔ اس کےلئے آپ کو خود پر تھوڑا سا جبر ضرور کرنا ہوگا لیکن اس کے مفید اثرات صرف ایک مہینے ہی میں آپ کو اپنی مجموعی صحت پر محسوس ہونے لگیں گے۔

ڈپریشن سے نجات

اسی طرح اگر آپ ہفتے میں پانچ دن تک روزانہ تیز قدموں سے چہل قدمی کا دورانیہ صرف 5 منٹ مزید بڑھاکر 35 منٹ کردیتے ہیں تو ڈپریشن سے بھی محفوظ رہ سکتے ہیں۔ البتہ وہ لوگ جو ڈپریشن میں مبتلا ہیں انہیں اس پر قائل کرنا بہت مشکل ہوگا اس لئے ان کے اہلِ خانہ کو چاہئے کہ پہلے ایک سے دو ہفتے میں انہیں زبردستی مجبور کرکے چہل قدمی کروائیں؛ کیونکہ جب ان میں ڈپریشن کی شدت کم ہونے لگے گی تو وہ خود ہی، اپنی مرضی سے یہ معمول اختیار کرلیں گے۔

ناگہانی موت کا کم تر خدشہ

ویسے تو موت کا کوئی وقت متعین نہیں لیکن طبّی اصطلاح میں ناگہانی موت سے مراد ایسی موت ہے جو بظاہر کسی وجہ کے بغیر، اچانک واقع ہوجائے؛ یعنی مرنے والے میں پہلے سے کوئی بیماری یا تکلیف موجود نہ ہو۔ اس طرح کی ناگہانی موت سے بچنے کےلئے طبّی ماہرین تجویز کرتے ہیں کہ (اگر سہولت میسر ہو تو) ہیلتھ سینٹر/ فٹنس سینٹر جاکر، تربیت یافتہ عملے کے زیرِ نگرانی روزانہ 75 منٹ ورزش کی جائے۔ پورے ہفتے میں 6 دن تک یہ معمول برقرار رکھنے کی صورت میں ورزش کا دورانیہ 450 منٹ بنتا ہے۔

اچھی یادداشت کا حصول

اگر آپ ہفتے میں 6 دن تک روزانہ صرف 20 منٹ تک ’’سانس کی ورزش‘‘ کرتے ہیں تو اس سے آپ کی یادداشت اچھی ہوتی ہے جو آپ کی کارکردگی پر اچھے اثرات مرتب کرتی ہے۔ واضح رہے کہ ’’سانس کی ورزش‘‘ میں تیز قدموں سے چہل قدمی اور دوڑنے سے لے کر خاص انداز کے رقص بھی شامل ہیں جن کا بنیادی مقصد دل کی دھڑکنوں اور سانس لینے کے عمل کو بہتر بنانا ہوتا ہے۔ یہی وہ چیز ہے جس کے اچھے اثرات دماغ پر بھی مرتب ہوتے ہیں۔

بلڈ پریشر پر کنٹرول

ہائی بلڈ پریشر کو ’’خاموش قاتل‘‘ بھی کہا جاتا ہے جو اپنے آپ میں درجنوں امراض کی جڑ ہے۔ البتہ روزانہ صرف 15 منٹ تک (ہفتے میں 6 دن) ہلکی پھلکی جسمانی ورزش کرنے سے نہ صرف ہائی بلڈ پریشر کا خطرہ بہت کم رہ جاتا ہے بلکہ وہ لوگ جنہیں بلڈ پریشر کم رہنے کے باعث کمزوری کی شکایت ہوتی ہے، ان میں بھی دل کی کارکردگی بہتر ہونے سے اس کیفیت میں بہت افاقہ ہوتا ہے۔

Google Analytics Alternative