قومی

کلبھوشن کیس: پاکستان نے جواب الجواب عالمی عدالت انصاف میں جمع کرادیا

اسلام آباد: پاکستان نے بھارتی خفیہ ایجنسی ’را‘ کے دہشت گرد کلبھوشن جادھو کیس میں اپنا جواب الجواب عالمی عدالت انصاف میں جمع کرادیا ۔

ترجمان دفتر خارجہ محمد فیصل کے مطابق پاکستان کی جانب سے ڈائریکٹر انڈیا فاریحہ بگٹی نے ڈوزیئر جمع کرایا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ہیگ میں پاکستانی سفارتخانے کے افسر وسیم شہزاد بھی ان کے ہمراہ تھے۔

سفاری ذرائع کے مطابق ہیگ کی عالمی عدالت میں جمع کرائے گئے چار سو صفحات پر مشتمل جواب میں بھارت کے تمام اعتراضات کو مسترد کیا گیا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی جواب اٹارنی جنرل کی سربراہی میں ماہرین کی ٹیم نے مرتب کیا ہے۔

یہ پاکستان کی جانب سے جواب الجواب میں پہلا جواب ہے جبکہ کیس میں عالمی عدالت میں جمع کرائے گئے جوابات میں مجموعی طور پر دوسرا جواب ہے۔

سفارتی ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کی جانب سے جواب میں بھارتی سوالات پر تفصیل سے جواب دیا گیا ہے۔

اس سے پہلے پاکستان نے بھارتی دہشت گرد کمانڈر کلبھوشن کے کیس میں اپنا جواب 13دسمبر 2017 کو جمع کرایا تھا۔

کلبھوشن کی گرفتاری

واضح رہے کہ کلبھوشن جادھو کو 3 مارچ 2016 کو بلوچستان کے علاقے سے گرفتار کیا گیا تھا، اس پر پاکستان میں دہشت گردی اور جاسوسی کے سنگین الزامات ہیں اور بھارتی جاسوس نے تمام الزامات کا مجسٹریٹ کے سامنے اعتراف بھی کیا ہے۔

رواں برس 10 اپریل 2017 کو کلبھوشن جادھو کو جاسوسی، کراچی اور بلوچستان میں تخریبی کارروائیوں میں ملوث ہونے پر سزائے موت سنائی گی تھی۔

لیکن بھارت کی جانب سے عالمی عدالت میں معاملہ لے جانے کے سبب کلبھوشن جادھو کی سزا پر عمل درآمد روک دیا گیا ہے۔

بھاشا ڈیم متاثرین کی چیف جسٹس سے واجبات کی ادائیگی کی درخواست

دیامر بھاشا ڈیم کے متاثرین نے چیف جسٹس ثاقب نثار سے ڈیم کی تعمیر کے لیے حاصل کی گئی زمین کا معاوضہ ادا کیے جانے کی یقین دہانی کی درخواست کردی۔

چیف جسٹس نے گلگت بلتستان کا دورہ کیا جہاں ڈیم کے لیے حاصل کی گئی زمین کے مالکان نے ان سے ملاقات کی اور انہیں متعلقہ انتظامیہ کی جانب سے واجبات کی ادائیگی کے لیے درخواست پیش کی۔

جسٹس ثاقب نثار نے زمین مالکان کو معاملہ قانون کے مطابق حل کرنے کی یقین دہانی کرائی۔

گلگت بلتستان کے عوام نے چیف جسٹس کا والہانہ استقبال کیا اور انہیں اپنے مسائل سے متعلق درخواستیں پیش کیں۔

واضح رہے کہ 4 جولائی کو سپریم کورٹ نے دیامر بھاشا اور مہمند ڈیمز کی فوری تعمیر کے آغاز کے لیے ہدایات جاری کی تھیں اور عوام، بالخصوص بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے اس مقصد کے لیے عطیات دینے کی درخواست کی تھی۔

اس کے علاوہ چیف جسٹس نے عطیات دینے کے عمل کا آغاز کرتے ہوئے ڈیمز کی تعمیر کے لیے اپنی طرف سے 10 لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا تھا۔

اسٹیٹ بینک کے نائب گورنر شمس الحسن کا کہنا تھا کہ عطیات جمع کرانے کے لیے اسٹیٹ بینک کے تمام فیلڈ دفاتر، کمرشل بینکوں اور مائیکروفنانس بینکوں میں اکاؤنٹس کھولے جاچکے ہیں۔

انہوں نے واضح کیا کہ عطیات، بینکوں میں نقد پیسے جمع کرانے کے علاوہ آن لائن بھی جمع کرائی جاسکتی ہیں۔

عطیات دینے میں کسی مشکل کی صورت میں عوام اسٹیٹ بینک کی ہیلپ لائن 273-727-111 پر رابطہ کر سکتے ہیں، جبکہ کمرشل بینکوں سے بھی ان کی متعلقہ ہیلپ لائنز پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

عوام کو ڈیمز فنڈ کے حوالے سے آگاہی دہنے کے لیے ’ایس ایم ایس‘ بھی بھیجے جارہے ہیں۔

نوازشریف کے ساتھ منشیات فروش سے بھی زیادہ برا سلوک کیا گیا،مریم اورنگزیب

اسلام آباد: مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ اڈیالہ جیل میں نواز شریف کے ساتھ جتنا برا سلوک کیا گیا اتنا کسی منشیات فروش کے ساتھ بھی نہیں ہوتا۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی واپسی پر ایسے فورس تعینات کی گئی جیسے کوئی دہشت گرد آیا ہو حالانکہ صرف دو اہلکار بھی انہیں گرفتار کرسکتے تھے، وہ تو آئے ہی گرفتاری دینے تھے۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف کوجیل میں پہلے دن بستر دیا گیا نہ بیڈ دیا گیا، اتنا برا سلوک تو ڈرگ ڈیلر کے ساتھ بھی نہیں ہوتا ہوگا۔

 مریم نواز کا کہنا تھا کہ نوازشریف کی اپیل کا فیصلہ آج ہی آنا چاہئے تھا، اسے تیس جولائی تک ملتوی رکھنا زیادتی ہے، (ن) لیگ کے بینرز اتارتے ہوئے گاڑیوں کی فوٹیج موصول ہوئیں، ان سب کے باوجود (ن) لیگ 25 جولائی کو اور بھی زیادہ مستحکم ہوکر جیتے گی۔

چیئرمین تحریک انصاف کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ عمران خان اپنی گالیوں کے باعث اب خالی کرسیوں سے خطاب کرتے پھر رہےہیں، انہوں نے جھنگ، سرگودھا اوردیگرشہروں میں جلسوں میں خالی کرسیوں کی تحقیقات کا حکم بھی دیا ہے، انہوں نے جلسوں میں جو زبان استعمال کی اس کی وجہ سے ان پر پابندی عائد کردینی چاہیے۔

’ٹی وی اشتہارات کیلئے پیسے نہیں،فٹ پاتھ پر کنونشن کررہے ہیں‘

کراچی: متحدہ قومی موومنٹ پاکستان (ایم کیو ایم) کے کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ ہمارے پاس ٹی وی اشتہارکے لیے پیسے نہیں اس لیے فٹ پاتھ پر کنونشن کررہے ہیں۔

ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈویلپرز آف پاکستان (آباد) کی ایک تقریب سے سے خطاب کرتے ہوئے خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ کسی مصنوعی طریقے سے ایم کیوایم کوالیکشن سے باہرکرنے کی سازش کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی چلتا ہے تو ملک پلتا ہے لیکن مردم شماری میں شہرکی آدھی آبادی کو ہی غائب کردیا گیا ہے، ورلڈ بینک سے لے کراقوام متحدہ تک کراچی کی آبادی پونے تین کروڑ تسلیم کرتے ہیں مگر مردم شماری میں شہر کی آبادی کو نصف دکھایا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایم کیوایم کے پاس مینڈیٹ رہا لیکن اختیار نہیں ملا، ہمارے پاس ٹی وی اشتہارکے لیے پیسے نہیں اس لیے فٹ پاتھ پر کنونشن کررہے ہیں۔

اس موقع پر ایم کیو ایم رہنما فاروق ستار کا کہنا تھا کہ تعمیر وترقی میں ہاؤسنگ کا بہت بڑا کردارہے،انہوں نے تجویز پیش کی کہ پاکستان میں ہاؤسنگ کے شعبے کو انڈسٹری کا درجہ دیا جانا چاہیے کیوں کہ ہاؤسنگ انڈسٹری 70 چھوٹے چھوٹے شعبوں کی وارث ہے۔

ڈاکٹر فاروق ستار نے دعویٰ کیا کہ اگر ملک کے دیگر سیاسی قائدین کراچی میں دوبارہ مردم شماری کا مطالبہ کریں تو الیکشن کی ضرورت ہی نہیں ہے۔

تقریب سے خطاب میں ایم کیو ایم کے سندھ اسمبلی میں سابق پارلیمانی لیڈر خواجہ اظہارالحسن نے کہا کہ صرف ایک بار ایم کیوایم کو با اختیارحکومت ملی، ہمیں جب بھی موقع ملا شہر کا مقدمہ بھرپور طریقے سے لڑا۔

(ن) لیگ کےامیدواروں پرنیب کے ذریعے دباؤ ڈالا جارہا ہے، شہبازشریف

گوجرانوالہ: سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کےامیدواروں پرنیب کے ذریعے دباؤ ڈالا جارہا ہے جب کہ پنجاب کی نگراں حکومت کا کام (ن)لیگ کے خلاف پرچے کاٹنا ہے اورالیکشن کمیشن کٹھ پتلی بنا ہوا ہے۔

علی پور چٹھہ میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہا کہ 13 جولائی پاکستان کی تاریخ کا سیاہ دن تھا، پہلی بار باپ کے سامنے بیٹی اور بیٹی کے سامنے باپ کو گرفتار کیا گیا ان پر کیا بیتی ہوگی، نوازشریف اہلیہ کو زندگی اور موت کی کشمکش میں چھوڑ کر پاکستان آئے یہ جانتے ہوئے بھی کہ انہیں جیل جانا ہوگا پھر بھی انہوں نے جرأت کی اور پاکستان واپس صرف اپنے عوام کے لیے آئے۔

شہباز شریف نے کہا کہ میں نے کہا تھا 13 جولائی کو نواز شریف کا پرامن استقبال کریں گے میں عوام کا شکر گزار ہوں کہ اس دن ایک گملا بھی نہیں ٹوٹا لیکن پھر بھی (ن) لیگ کی سینئر قیادت اور کارکنوں کے خلاف دہشت گردی کی دفعات کے تحت ایف آئی آر کاٹ دی گئیں، اگر نواز شریف سے محبت کرنا دہشت گردی ہے تو یہ جرم سو بار کریں گے۔

مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہا کہ عمران خان نے کے پی میں 300 ارب روپے کے قرضے لیے اس کے باوجود بہتان خان نے کے پی کا بیڑہ غرق کردیا انہوں نے کوئی ترقیاتی کام نہیں کیا، جو سر سے لے کر پاؤں تک کرپشن میں ڈوبے ہوئے ہیں جن کے خلاف ثبوت بھی موجود ہیں وہ کیک اور پیسٹریاں کھا رہے ہیں، عمران خان نے کرپٹ لوگوں کوٹکٹ دیے ہیں اربوں کی کرپشن کرنے والے بابراعوان عمران خان کی پارٹی میں  بیٹھے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے خلاف کرپشن کا ایک بھی ثبوت نہیں ملا انہوں نے کسانوں کو اربوں روپے کے قرضے دیئے، دیامیر بھاشا ڈیم کی بنیاد رکھی، نوازشریف کی قیادت میں ملک سے اندھیرے دور ہوئے تاہم تمام سازشوں کے باوجود 25 جولائی کو الیکشن جیتیں گے اور 25 جولائی کو شیر پر مہر لگا کر نواز شریف اور مریم کو آزاد کرانا ہے۔

(ن) لیگ جس مقام پر کھڑی ہے یہ اس کی اپنی غلطیوں کا نتیجہ ہے، چوہدری نثار

فتح جنگ: سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ (ن) آج جس مقام پر کھڑی ہے یہ اس کی اپنی غلطیوں کا نتیجہ ہے، دعا ہے اللہ نواز شریف کی مشکلات کم کرے۔

فتح جنگ روڈ پر انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ آج مسلم لیگ (ن) جس مقام پر کھڑی ہے اس میں اس کی اپنی غلطیاں شامل ہیں، اب بھی کہتا ہوں عدلیہ سے محاذ آرائی کے بجائے انصاف مانگا جائے۔ انہوں نے کہا کہ میرا نواز شریف سے 35 سال سے تعلق ہے لیکن لوگوں نے نواز شریف کے کان بھرے کہ نثار صحیح مشورے نہیں دے رہا تاہم میری دعا ہے کہ اللہ نواز شریف کی مشکلات کم کرے۔

سابق وزیر داخلہ کا کہنا تھا میں کسی جماعت کے ٹکٹ کا محتاج نہیں، ساری زندگی ٹکٹ کے لیے درخواست نہیں دی اس بار کیوں دیتا؟ میں ایک بار تھوک لوں پھر چاٹتا نہیں، چاروں نشستوں پر آزاد امیدوار کی حیثیت سے کامیابی حاصل کروں گا۔

چوہدری نثار نے ملک کی اقتصادی صورتحال پرتشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی اقتصادی صورتحال تشویش ناک حد تک خراب ہو چکی ہے، موجودہ صورتحال کا مقابلہ قومی اتحاد سے ممکن ہے جس کا دور دور تک کوئی امکان نہیں۔

کراچی میں انتخابی امیدواروں پر حملوں کا منصوبہ ناکام، 4 دہشتگرد گرفتار

کراچی: کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) نے کارروائی کے دوران کالعدم تنظیم کے 4 مبینہ دہشت گردوں کو گرفتار کرلیا۔

کراچی کے علاقے شاہ فیصل کالونی میں سی ٹی ڈی نے کارروائی کرتے ہوئے کالعدم تنظیم کے 4 مبینہ دہشت گردوں کو گرفتار کرلیا ہے۔ ایس ایس پی سی ٹی ڈی جنید شیخ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا ہے کہ گرفتار ہونے والے دہشت گردوں کی شناخت ابوبکر ، محمد جواد ، ابراہیم اور فہد سے ہوئی ہے ۔ پولیس نے چاروں ملزمان کا تعلق کالعدم تنظیموں تحریک طالبان، لشکر جھنگوی اور انصارالشریعہ سے بتایا ہے۔

ایس ایس پی جنید شیخ کے مطابق گرفتار دہشت گردوں نے افغانستان سے دہشت گردی کی تربیت حاصل کی اور یہ جنوبی وزیرستان میں ایف سی کی متعدد چوکیوں پر حملوں میں بھی ملوث ہیں۔ مبینہ دہشت گرد سولہ ماہ سے کراچی کے علاقے شاہ فیصل کالونی میں واقع ایک  مدرسے میں رہ رہے تھے ۔ انتخابات سے قبل سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں کو نشانہ بنانے کے علاوہ تخریب کاری کی وارداتیں کرنا چاہتے تھے۔

جمہوریت پسند جماعتوں سے وسیع تر میثاق جمہوریت کے لئے تیار ہیں، بلاول بھٹو زرداری

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ہم جمہوریت پسند تمام جماعتوں سے وسیع تر میثاق جمہوریت پر بات کے لئے تیار ہیں۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ میثاق جمہوریت کے حوالے سے نواز شریف اور شہباز شریف کے ساتھ ہمارا تجربہ اچھا نہیں رہا، مسلم لیگ (ن)،نوازشریف اور شہباز شریف نے میثاق جمہوریت پر اعتماد کھویا،ہم جمہوریت پسند تمام جماعتوں سے وسیع تر میثاق جمہوریت پر بات کے لئے تیار ہیں، ضرورت پڑی تو پارلیمنٹ میں آنے والی تمام جمہوریت پسند جماعتوں کے اتفاق رائے کی کوشش بھی کریں گے، ہم کسی صورت بنیادی حقوق پر سمجھوتہ نہیں کریں گے، نواز شریف کو جیل میں بنیادی سہولیات فراہم کی جانی چاہئیں۔

سیاسی قائدین اور امیدواروں کی جانب سے غیر اخلاقی الفاظ کے استعمال پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ میری توجہ پارٹی منشور اور عوامی مسائل پر ہے، میں اپنے مثبت کردار اور نظریات کی مدد سے نوجوانوں کو متاثر کرنا چاہتا ہوں کیونکہ اسی کی بنیاد پر نوجوان طبقہ سیاست، معیشت اور اقتصادیات میں اپنا کردار ادا کرے گا۔ مخالفین پر تنقید انتخابی سیاست کا حصہ ہے لیکن سیاستدان عوام کو آگاہی دینے کے بجائے تشدد کو فروغ دے رہے ہیں۔ ملک گالی گلوچ اور نفرت آمیز سیاست کا متحمل نہیں ہو سکتا۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کی وجہ سے بعض جلسے منسوخ کیے۔ ہمیں دہشت گردی اور انتہا پسندی کے لیے کاغذی کے بجائے عملی پلان اپنانا اور اس پر عمل کرنا ہوگا۔

Google Analytics Alternative