قومی

کرکٹ کی بہتری کیلئے عمران خان سے رہنمائی.

نجم سیٹھی نے کرکٹ کی بہتری کیلئے عمران خان سے رہنمائی کی درخواست کر دی ہ تفصیلات کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے سربراہ نجی سیٹھی نے نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ عمران خان کی پاکستان کرکٹ کیلئے دی گئی خدمات سب قبول کرتے ہیں۔نجم سیٹھی نے عمران خان سے درخواست کی ہے کہ وہ آگے آئیں اور پاکستان میں کرکٹ کی بہتری کیلئے اپنا کردار ادا کریں۔ اگر کرکٹ کے معاملات میں آگے بڑھ کر ان کی رہنمائی کریں تو وہ انہیں خوش آمدید کہیں گے

داعش نے ایسا ظلم کیا کہ کوئی بھی سن نہ سکے

عراق اور شام میں سرگرم جنگجو گروپ ’داعش‘ نے دارلحکومت دمشق کے قریب سے اغواءکیے گئے 344مزدوروں میں سے 175کو قتل کردیاگیاجبکہ 144بھاگ نکلنے میں کامیاب ہوگئے تاہم 22مزدوروں کے بارے میں تاحال معلوم نہیں ہوسکا۔ سکائی نیوز نے شامی فوج کے حوالے سے بتایاکہ 175مزدوں کوقتل کردیااوریہ شایدداعش کی طرف سے اب تک کی سب سے زیادہ سویلین ہلاکتیں ہیں ۔ نیوزایجنسی ’SANA‘ نے وزارت انڈسٹری کے حوالے سے بتایاکہ مقامی لوگوں کی طرف سے سیمنٹ پلانٹ سے 250کارکنان کے لاپتہ ہونے کی اطلاع کے بعدوزارت انڈسٹری نے بتایاکہ مزدوروں اور کنٹریکٹرز کو جہادیوں نے اغواءکیاجبکہ سیمنٹ کمپنی نے اپنے ملازمین کیساتھ رابطہ منقطع ہونے پر کو آگاہ کیا۔ عربی ٹی وی چینل ’المدین ٹی وی ‘ نے بتایاکہ 140ملازمین بھاگنے میں کامیاب ہوگئے ، داعش نے فیکٹری کا کنٹرول حاصل کیا جبکہ باغیوں اور شام کی سرکاری فوج کی لڑائی کی وجہ سے علاقہ دوحصوں میں بٹ چکا ہے ۔ دوسری طرف برطانوی اخبار ’انڈیپنڈنٹ ‘ کے مطابق البادیہ سیمنٹ فیکٹری میں کام کرنے والے 300مزدوروں کو دمشق کے شمال مشرقی علاقے سے اغواءکیاگیاتھا اور دمیرکے قریب ایسے علاقے میں لے جایاگیاجہاں رواں ہفتے کے آغاز میں شامی افواج اورباغیوں میں لڑائی ہوئی جبکہ مالک کا ملازمین سے رابطہ منقطع ہوگیا۔

قومی اسمبلی میں پرویز رشید کے خطاب کے دوران اپوزیشن کی ہنگامہ آرائی

قومی اسمبلی میں پرویز رشید کے خطاب کے دوران اپوزیشن کی ہنگامہ آرائی اور شور شرابہ،ایوان مچھلی بازار بن گیا (ن) لیگ کے ارکان کے گو عمران خان اور تحریک انصاف کے ارکان کے گو نواز گو کے نعرے ،سپیکر نے اجلاس ملتوی کرنے کی دھمکی دے کر ارکان کو خاموش کرادیا.
عمران خان کے خلاف آج الیکشن کمیشن میں چندے کی رقم میں خرد برد کا کیس چل رہا ہے،چندے کا معاملہ ہو تو کورٹ کے پیچھے چھپتے ہیں، شوکت خانم کی خرد برد کا ذکر کیا جائے تو عمران خان کینسر کے مریضوں کے پیچھے چھپتے ہیں، چیلنج کرتا ہوں کہ 3 ملین ڈالر کی رقم جو عمران خان نے آف شور کمپنی میں لگائی تھی وہ آج تک شوکت خانم کی بیلنس شیٹ پر موجود نہیں،
نواز شریف کے صاحبزادوں نے آف شور کمپنی بنا کر کوئی غیر قانونی اور غیر اخلاقی کام نہیں کیا، آف شور کمپنیوں کو حاصل مراعات پاکستان کے صنعتی زونز کو حاصل ہیں، نواز شریف نے اپنے بچوں پر الزام لگنے پر انہیں احتساب کےلئے پیش کیا، ہر کسی کو انکوائری کمیشن پر اعتبار نہیں تو اس کے لئے سپریم کورٹ کا راستہ کھلا ہے، اپوزیشن کی تنقید سے لگتا ہے کہ ان کے لیڈر گنگا اور جمنا سے دھل کر آئے ہیں ، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر پرویز رشید کا قومی اسمبلی میں خطاب.

اسلام آباد قومی اسمبلی میں وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر پرویز رشید کے خطاب کے دوران اپوزیشن کی ہنگامہ آرائی اور شور شرابہ،(ن) لیگ کے ارکان نے گو عمران خان اور تحریک انصاف کے ارکان نے گو نواز گو کے نعرے لگائے، جب وزیر اطلاعات نے کہا کہ عمران خان شوکت خانم کے چندے کی رقم آف شور کمپنی میں لگانے کے ذکر پر کینسر کے مریضوں کے پیچھے چھپتے ہیں اور پارٹی چندے میں خرد برد کے مقدمے میں عدالت کے سٹے آرڈر کے پیچھے چھپتے ہیں تو پی ٹی آئی کے ارکان نو نو کے نعرے لگاتے ہوئے اپنی نشستوں پر کھڑے ہو گئے، جس پر میاں منان نے گو عمران گو اور شیریں مزاری و دیگر نے گو نواز گو کے نہرے لگائے، سپیکر ایاز صادق نے اجلاس ملتوی کرنے کی دھمکی دے کر ارکان کو خاموش کرایا، قبل ازیں پرویز رشید نے اپنے خطاب میں کہا کہ نواز شریف کے صاحبزادوں نے آف شور کمپنی بنا کر کوئی غیر قانونی اور غیر اخلاقی کام نہیں کیا، آف شور کمپنیوں کو حاصل مراعات پاکستان کے صنعتی زونز کو بھی حاصل ہیں، نواز شریف نے اپنے بچوں پر الزام لگنے پر انہیں احتساب کےلئے پیش کر دیا، ہر کسی کو انکوائری کمیشن پر اعتبار نہیں تو اس کے لئے سپریم کورٹ کا راستہ کھلا ہے۔ پرویز رشید نے کہا کہ اپوزیشن کی تنقید سے لگتا ہے کہ ان کے لیڈر گنگا اور جمنا سے دھل کر آئے ہیں، پانامہ پیپرز میں (ن) لیگ اور وزیراعظم نواز شریف اور ان کے خاندان کے خلاف کسی غیر قانونی اور غیر اخلاقی کام بارے ایک لفظ بھی درج نہیں ہے، پانامہ پیپرز میں ان کمپنیوں کے نام ہیں جو آف شور کمپنی کے طور پر رجسٹرڈ ہیں، آف شور کمپنی رجسٹر کرانا عالمی قوانین کے تحت کوئی غیر قانونی نہیں، پاکستان میں بھی وہ سہولتیں موجود ہیں جو آف شور کمپنیوں کو حاصل ہوتی ہیں، جس آف شور کمپنی بارے ہنگامہ برپا ہے، اس بارے پیپرز میں کوئی تبصرہ نہیں ہے کہ اس نے کوئی غیر قانونی کام کیا، نواز شریف کے صاحبزادوں نے اپنے نام سے کمپنی رجسٹرڈ کرائی ہے، اپنا نام چھپایا نہیں، جس نے غیر قانونی کام کیا ہو، وہ اپنے نام سے آف شور کمپنی نہیں بناتا، 99ءکے کوبعد حسن اور حسین کو زبردستی پاکستان سے جلا وطن کیا گیا، حالانکہ وہ پاکستان میں رہنا اور اپنا کیریئر شروع کر نا چاہتے تھے، پہلے الزام لگایا جاتا تھا کہ شریف خاندان حکومت میں رہتے ہوئے بڑے میگا پراجیکٹس کے کمیشن سے اپنے کاروبار کو فروغ دیتے ہیں، یہ الزام نصیر اللہ بابر نے شہباز شریف پر لگایا کہ شہباز شریف نے کوریا سے موٹروے کا کمیشن حاصل کیا اور پھر اسی ایوان میں نصیر اللہ بابر کو شہباز شریف سے معافی مانگنا پڑی، اپوزیشن نے پانامہ لیکس کو تنقید کا موقع جانا، آج تک کسی نے خود کو احتساب کےلئے پیش نہیں کیا، نواز شریف نے الزام لگنے پر اپنے بچوں کو بھی احتساب کے لئے پیش کر دیا، عمران خان کے خلاف آج بھی الیکشن کمیشن میں چندے کی رقم میں خرد برد کا کیس چل رہا ہے اور ہائی کورٹ سے سٹے لے رکھا ہے اگر چندے کا معاملہ ہو تو کورٹ کے پیچھے چھپتے ہیں اور اگر شوکت خانم کی خرد برد کا ذکر کیا جائے تو عمران خان کینسر کے مریضوں کے پیچھے چھپتے ہیں، میں چیلنج کرتا ہوں کہ 3 ملین ڈالر کی رقم جو عمران خان نے آف شور کمپنی میں لگائی تھی وہ آج تک شوکت خانم کی بیلنس شیٹ پر موجود نہیں ہے، کمیشن ریٹائرڈ جج کی سربراہی میں بنایا جا رہا ہے، ریٹائرڈ جج کا تجربہ اس کا اثاثہ ہوتا ہے، پانامہ پیپرز میں جس کمپنی کا نام آیا ہے اس کمپنی نے پاکستان کے کسی مفاد کو نقصان نہیں پہنچایا، جن لوگوں کی خواہش ہے کہ یہ مقدمہ سپریم کورٹ میں چلے ان کے لئے راستہ کھلا ہے وہ عدالت عظمیٰ سے رجوع کر سکتے ہیں، دھاندلی کے الزامات پر سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی سربراہی میں کمیشن بنا تھا، تحریک انصاف نے اس کے فیصلے کو بھی تسلیم نہیں کیا تھا اگر سپریم کورٹ کا کمیشن اس معاملے میں بناتا تو بھی یہ اعتراض کرتے۔(

عمران خان اتوار کو سرکاری ٹی وی پر قوم سے خطاب کریں گے۔

پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے کہا گیا ہے کہ عمران خان اتوار کو سرکاری ٹی وی پر قوم سے خطاب کریں گے۔پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے حکومت کو جاری مراسلے میں کہا گیا ہے کہ عمران خان اتوار کی شام قوم سے خطاب کریں گے اس لئے سرکاری ٹی وی پر ان کے خطاب کے لئے تمام تر انتظامات مکمل کئے جائیں۔ مراسلے میں کہا گیا ہے کہ پی ٹی وی ایک سرکاری ادارہ ہے جو قوم کے ٹیکس سے چلتا ہے لہذا اس پر ہر شہری کا اتنا ہی حق ہے جتنا کہ وزیراعظم نواز شریف اور ان کے خاندان والوں کا ہے۔<br/> تحریک انصاف کی جانب سے جاری مراسلے میں مزید کہا گیا کہ پی ٹی وی پر پاناما لیکس کے حوالے سے ہونے والی بحث نہیں دکھائی گئی جب کہ حکومتی وزراء کی جانب سے فلاحی ادارے شوکت خانم کے حوالے سے جو پروپیگنڈا کیا گیا اسے براہ راست دکھایا گیا۔ پاکستان تحریک انصاف کے چیرمین کو بھی اجازت دی جائے تاکہ وہ وزیراعظم کی طرح شوکت خانم پر لگائے جانے والے الزامات کے حوالے سے قوم کو آگاہ کر سکیں۔<br/> واضح رہے کہ چند روز قبل تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کے پرسنل سیکرٹری نعیم الحق کی جانب سے پی آئی ڈی میں بھی پریس کانفرنس کی گئی تھی جو کسی بھی سیاسی جماعت کے غیر منتخب رکن کی جانب سے پی آئی ڈی میں پریس کانفرنس کرنے کا پہلا واقعہ تھا

نواز شریف کے خاندان پر کرپشن کا ایک کیس بھی ثابت نہیں کیا جاسکا،شیخ آفتاب

اپوزیشن ملک کی ترقی کا راستہ روکنے کے لئے سڑکوں پر آنا چاہتی ہے، نواز شریف کے خاندان پر کرپشن کا ایک کیس بھی ثابت نہیں کیا جاسکا، دنیا کو اقتصادی راہداری منصوبہ، گوادر پورٹ اور پاکستان میں 46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہضم نہیں ہو رہی، وزیر مملکت شیخ آفتاب احمد کا قومی اسمبلی میں اظہارخیال.
اسلام آباد ۔ وزیر مملکت شیخ آفتاب احمد نے کہا ہے کہ اپوزیشن ملک کی ترقی کا راستہ روکنے کے لئے سڑکوں پر آنا چاہتی ہے، مسلم لیگ (ق) اور پرویز مشرف کی حکومت نواز شریف کے خاندان پر کرپشن کا ایک کیس بھی ثابت نہیں کر سکی، دنیا کو اقتصادی راہداری منصوبہ، گوادر پورٹ اور پاکستان میں 46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہضم نہیں ہو رہی، اس لئے یہ سازشیں کی جا رہی ہیں۔ جمعہ کو قومی اسمبلی میں پاناما لیکس پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے وزیر مملکت شیخ آفتاب احمد نے کہا کہ گزشتہ چند دنوں سے ٹی وی ٹاک شوز میں بحث دیکھ کر افسوس ہوا ہے۔ منفی باتوں کو زیادہ اور اچھے اقدامات کو نظر انداز کیا جانا انتہائی افسوسناک ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم محمد نواز شریف کا خاندان ملک کا ایک بڑا صنعتی خاندان ہے جس کی ایک تاریخ ہے۔ 1988ءسے 2013ءتک اس خاندان نے مسلسل احتساب کا سامنا کیا ہے۔ مشرف دور میں اس خاندان پر کون سا ظلم ہے جو نہیں ڈھایا گیا۔ مسلم لیگ (ق) اور پرویز مشرف کی حکومت محمد نواز شریف کے گھرانے پر کرپشن کا ایک کیس بھی ثابت نہیں کر سکی۔ یہ سب کچھ اس لئے کیا جا رہا ہے کیونکہ دنیا کو پاکستان میں اقتصادی راہداری منصوبہ، ہماری گوادر بندرگاہ اور یہاں 46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہضم نہیں ہو رہی۔ وزیراعظم ملک کو معاشی لحاظ سے مضبوط بنانے اور اندھیروں سے نکالنے کا عزم رکھتے ہیں۔ پاکستان ترقی کے راستے پر گامزن ہو چکا ہے۔انہوں نے کہاکہ اپوزیشن نے سڑکوں پر جانے اور دھرنے دینے کا عندیہ ظاہر کیا ہے، کیا وہ ملک کی ترقی کا راستہ روکنے کے لئے سڑکوں پر آنا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ قائداعظم کے بعد ملک کو نواز شریف کی صورت میں ایک لیڈر ملا ہے ، 2013ءکے الیکشن اور ضمنی انتخابات میں عوام نے مسلم لیگ (ن) پر مسلسل اعتماد کا اظہار کیا ہے۔ اﷲ نے ہمیں ترقی کا راستہ دے دیا ہے تو ہمیں اس کے راستے میں روڑے اٹکانے سے گریزکرنا چاہئے۔

پشاور دھماکہ، ایک شخص جاں بحق

پشاور کے علاقے بدھو ثمر باغ میں دھماکہ ، ایک شخص جاں بحق ، اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ دھماکہ انتہائی زور دار تھا جس کی آواز دور دور تک سنی گئی ، دھماکے کے نتیجے میں ایک شخص جاں بحق اور کئی زخمی ہوگئے جنہیں طبی امداد کیلئے مقامی ہسپتال داخل کرا دیا گیا ، دھماکے کے بعد بم ڈسپوزل سکواڈ اور ریسکیو کی ٹیمیں موقع پر پہنچ گئیں اور انہوں نے جائے حادثہ سے شواہد اکٹھے کر کے تفتیش کا آغاز کر دیا۔ علاقے کی ناکہ بندی کر کے سرچ آپریشن کا بھی آغاز کر دیا گیا ہے۔

را کے ایجنٹ کے حوالے سے بھارت کی قونصلر رسائی کی درخواست زیر غور ہے‘پاکستان

پاکستان نیوکلیئر سپلائر گروپ میں ممبر شپ کی ا ہمیت کے معیار پر پورا اتر رہا ہے،بھارت نے خطہ میں اسلحہ اور ہتھیاروں کی دوڑ شروع کررکھی ‘ ایرانی صدر کے دورہ پاکستان کے نتائج حوصلہ افزا ہیں‘ دورے کو سبوتاژ کرنے کا تاثر درست نہیں‘ پٹھان کوٹ واقعے کے حوالے سے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم بھارتی معلومات کا جائزہ لے رہی ہے‘ افغانستان میں امن کے لئے طالبان کو مذاکرات پر آمادہ کرنے کی کوشش کرنا چار ملکی رابطہ گروپ کی مشترکہ ذمہ داری ہے.
ترجمان دفتر خارجہ نفیسزکریا کی میڈیا کو ہفتہ وار بریفنگ

اسلام آباد ترجمان دفتر خارجہ نفیسزکریا نے کہا ہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی را کے ایجنٹ کے حوالے سے بھارت کی جانب سے قونصلر رسائی کی درخواست ابھی تک زیر غور ہے‘ پاکستان نیوکلیئر سپلائر گروپ میں ممبر شپ کی ا ہمیت کے معیار پر پورا اتر رہا ہے اور اس کی ممبر شپ حاصل کرنے کے حوالے سے پراعتماد ہے‘ بھارت نے خطہ میں اسلحہ اور ہتھیاروں کی دوڑ شروع کررکھی ہے‘ ایرانی صدر کے دورہ پاکستان کے نتائج حوصلہ افزا ہیں‘ دورے کو سبوتاژ کرنے کا تاثر درست نہیں‘ پٹھان کوٹ واقعے کے حوالے سے قائم مشترکہ تحقیقاتی ٹیم تحقیقات کررہی ہے اور بھارت کی جانب سے دی جانے والی معلومات کا جائزہ لے رہی ہے‘ افغانستان میں امن کے لئے طالبان کو مذاکرات پر آمادہ کرنے کی کوشش کرنا حکومت پاکستان کی ذمہ داری نہیں بلکہ یہ چار ملکی رابطہ گروپ کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔ جمعرات کو ترجمان دفتر خارجہ نفیس زکریا نے اپنی ہفتہ وار میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ گزشتہ ہفتہ واشنگٹن میں اختتام پذیر ہونے والے نیوکلیئر سمٹ پاکستان کے تناظر میںایک اہم ایونٹ تھا اور اس کے نتائج پاکستان کے لئے کئی حوالوں سے اطمینان بخش تھے۔ پاکستان نے سارے عمل میں تعمیری انداز میں شمولیت کی اور پا کستان کے مضبوط قومی نیوکلیئر سکیورٹی سسٹم‘ کمانڈ اور کنٹرول سسٹم اور جامع ایکسپورٹ کنٹرول کو اجاگر کیا جس کو بین الاقوامی سطح پر سراہا جاتا رہا ہے۔ پاکستان 42سال سے ایک محفوط سول نیوکلیئر پروگرام چلا رہا ہے اور اس کے پاس سول نیوکلیئر توانائی پیدا کرنے کے لئے تجربہ‘ انفراسٹرکچر اور افرادی قوت موجود ہے۔ نیوکلیئر سپلائر گروپ نان این پی ٹی ریاستوں کی ممبر شپ کے معاملہ پر غور کررہا ہے۔ انہوں نے امید کا اظہار کیا کہ پاکستان این ایس جی ممبر شپ کی اہلیت کے معیار پے پورا اترتا ہے۔ اس لئے این ایس جی کی جانب سے اصولوں کی بنیاد پر اور غیر امتیازی طور پر بنائے جانے والے معیار پر پورا اترے گا۔ بھارتی خفیہ ایجنسی را کے آفیسر کی گرفتاری اور تحقیقات کے حوالے سے سویڈش تھنک ٹینک نے پاکستانی خدشات کو رپورٹ کیا اور بھارت کی جانب سے ہتھیاروں پر بے تحاشا اخراجات پر بھی رپورٹ کیا۔ انہوں نے حالیہ بارشوں اور سیلاب کے نتیجے میں آزاد کشمیر‘ گلگت بلتستان‘ خیبرپختونخوا‘ پنجاب اور بلوچستان میں ہونے والے جانی اور مالی نقصان پر دکھ کا اظہار کیا۔ بھارتی خفیہ ایجنسی را کے آفیسر کی گرفتاری کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے ایجنٹ تک قونصلر رسائی کا معاملہ ابھی تک زیر غور ہے۔ پاکستان بھارت سے اس حوالے سے 2008 میں کئے گئے سمجھوتے کے تحت غور کررہا ہے۔ قانون نافذ کرنے والے ادارے ایجنٹ کے اعترافی بیان کے تحت تحقیقات کررہے ہیں اور ملوث عناصر کو گرفتار کرنے کی کوششیں کررہے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان دوستانہ اور برادرانہ تعلقات ہیں۔ افغانستان کے پاکستان میں گرفتار ہونے والے ایجنٹ کی تفصیلات کا ابھی علم نہیں۔ ایرانی صدر کے حالیہ دورہ پاکستان کے بارے میں انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران کے درمیان اچھے تعلقات ہیں۔ ایرانی صدر کے دورہ کے بعد تعلقات کو مزید فروغ ملا۔ ایرانی صدر نے کہا کہ پاکستان کی سکیورٹی ایران کی سکیورٹی ہے انہوں نے یقین دلایا کہ ایران اپنی سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال نہیں ہونے دیگا۔ ایرانی صدر کے دورے کے نتائج حوصلہ افزا ہیں۔ایرانی صدرکے دورہ پاکستان کو سبوتاژ کرنے کا تاثر درست نہیں۔ پٹھان کوٹ کے واقعہ کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے جے آئی ٹی (مشترکہ تحقیقاتی ٹیم) نے 27مارچ سے یکم اپریل تک بھارت کا دورہ کیا۔ ٹیم تحقیقات کررہی ہے اور بھارت کی جانب سے دی گئی معلومات کا جائزہ لے رہی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ افغانستان کے امن کے حوالے سے قائم چار ملکی رابطہ گروپ صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے اجلاس طلب کرسکتا ہے۔ طالبان کو مذاکرات کے لئے امادہ کرنے کی کوشش کرنا صرف پاکستان کی ذمہ داری نہیں ہے ۔یہ مشترکہ ذمہ داری ہے پاکستان افغانستان میں امن اور استحکام کے لئے خلوص کے ساتھ کوششیں کررہا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان سانحہ سمجھوتہ ایکسپریس کا معاملہ بھارتی حکومت سے اٹھاتا رہا ہے اور اٹھاتا رہے گا لیکن بار بار وعدوں کے باوجود بھارت نے تحقیقات کے نتائج سے پاکستان کو آگاہ نہیں کیا اور سانحہ کا ماسٹر مائنڈ ابھی تک ضمانت پر ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان نے را کے ایجنٹ کی گرفتاری کا معاملہ پی فائیو‘ یورپی یونین اور عالمی برادری سے اٹھایا ہے جوں جوں تحقیقات آگے بڑھیں گی ۔مزید لائحہ عمل طے کیا جائے گا اور عالمی برادری کو آگاہ کیا جائے گا۔ پاکستان نے گزشتہ سال بھی بھارتی انٹیلی جنس اداروں کی جانب سے پاکستان میں دہشت گردی میں ملوث ہونے کے حوالے سے ثبوت پر مشتمل تین ڈوزئیر اقوام متحدہ میں جمع کراچکا ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بھارتی جیلوں میں قید پاکستانیوںکے حوالے سے بھارت میں پاکستان کا سفارتخانہ اقدامات کررہا ہے اور بھارت سے رابطہ میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے خطے میں اسلحہ اور ہتھیاروں کی دوڑ شروع کررکھی ہے پاکستان اپنے دفاع اور ڈیٹرنس کا حق رکھتا ہے اور خطہ میں اسلحہ کی دوڑ کے خلاف ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا پاک بھارت خارجہ سیکرٹریوں کے درمیان مذاکرات کے حوالے سے دونوں ممالک رابطے میں ہیں اور طریقہ کار پر غور کیا جارہا ہے اور مناسب وقت پر ملاقات متوقع ہے۔

تبدیلی آگئی ، این اے 245 میں ووٹنگ سے قبل تحریک انصاف کا امیدوار متحدہ میں شامل

عمران خان نے انتخابی مہم کے دوران انہیں ایک فون کال تک نہیں کی، پی ٹی آئی صرف صوبائی حلقہ پی ایس 115 کے انتخاب پر نظر جمائے ہوئے ہے ، تحریک انصاف میں مینجمنٹ نام کی کوئی چیز نہیں ، عہدیدار عمران خان کے نام پر پیسہ بنانے میں مصروف ہیں، نامزد امیدوار امجد اللہ خان کاالزام .
کراچی شہر قائد کے حلقہ این اے 245 پر ضمنی انتخاب کے لیے ووٹنگ سے چند گھنٹے قبل ہی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے نامزد امیدوار نے حریف جماعت ایم کیو ایم میں شمولیت اختیار کرکے پی ٹی آئی کو بڑا دھچکا دے دیا۔ پریس کانفرنس کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے نامزد امیدوار امجداللہ خان نے ایم کیو ایم کے امیدوار کمال ملک کے حق میں دستبردار ہونے کا اعلان کیا۔ امجد اللہ خان نے پی ٹی آئی پر انہیں نظر انداز کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے انتخابی مہم کے دوران انہیں ایک فون کال تک نہیں کی، جبکہ پی ٹی آئی صرف صوبائی حلقہ پی ایس 115 کے انتخاب پر نظر جمائے ہوئے ہے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف میں مینجمنٹ نام کی کوئی چیز نہیں جبکہ عہدیدار عمران خان کے نام پر پیسہ بنانے میں مصروف ہیں۔ عمران خان بہت اچھے انسان ہیں، لیکن پارٹی چلانا ا±ن کے بس میں نہیں، جبکہ پارٹی کو بہت بڑی صفائی کی ضرورت ہے۔امجد اللہ خان کی ایم کیو ایم میں شمولیت کا اعلان س±ن کر پی ٹی آئی کارکنوں کی بڑی تعداد انصاف ہاو¿س پہنچی اور مقامی قیادت پر برس پڑی۔ کارکنوں نے کہا کہ ایسے شخص کو امیدوار کیوں بنایا جس نے آخری وقت میں وفاداری تبدیل کی۔ کارکنوں کے احتجاج اور شور شرابے کے باعث انصاف ہاو¿س میں بلائی گئی پریس کانفرنس ملتوی کر دی گئی اور پی ٹی آئی رہنماو¿ں نے میڈیا کارکنوں سے معذرت کرتے ہوئے انہیں آئندہ کا لائحہ عمل جلد بتانے کا اعلان کیا۔ واضح رہے کہ حلقہ این اے 245 اور پی ایس 115 کی نشستیں ایم کیو ایم کے رکن قومی اسمبلی ریحان ہاشمی اور رکن صوبائی اسمبلی ڈاکٹر ارشد وہرا کے استعفے کے بعد خالی ہوئی تھیں۔ ایم کیو ایم کے دونوں رہنماو¿ں نے پارٹی کی جانب سے 5 دسمبر 2015 کے بلدیاتی انتخابات میں کامیابی کے بعد بلدیاتی حکومت میں اہم ذمہ داریاں دیے جانے کے بعد اسمبلی رکنیت سے استعفیٰ دیا تھا۔ ساڑھے 3 لاکھ سے زائد رجسٹرڈ ووٹروں پر مشتمل حلقہ این اے 245 گزشتہ کئی دہائیوں سے ایم کیو ایم کا مضبوط گڑھ رہا ہے، جہاں سے 2013 کے عام انتخابات میں ریحان ہاشمی نے ایک لاکھ 15 ہزار سے زائد ووٹ لے کر کامیابی حاصل کی تھی۔

Google Analytics Alternative