قومی

حکومت نے پی اے سی کی سربراہی شہباز شریف کو دے کر یو ٹرن لیا، فواد چوہدری

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ اپوزیشن قومی اسمبلی کا اجلاس چلنے نہیں دے رہی تھی اس لئے حکومت نے پی اے سی کی سربراہی شہبازشریف کو دینے کا فیصلہ کرکے یو ٹرن لیا ہے۔

پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے فواد چوہدری نے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی سربراہی کے معاملے پر اڑی ہوئی تھی اور قومی اسمبلی کا اجلاس چلنے نہیں دے رہی تھی۔ حکومت کا اس معاملے پر موقف قانون اور اخلاقیات کے مطابق تھا لیکن اسمبلی اجلاس سے روزانہ واک آؤٹ سے قومی خزانے کو کروڑوں کا نقصان ہورہا تھا۔

فواد چوہدری نے کہا کہ حکومت نے فراغ دلی کا مظاہرہ کرتے ہوئے فیصلہ کیا کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی سربراہی کا فیصلہ اپوزیشن خود کرے اور حکومت اس میں رکاوٹ نہیں ڈالے گی۔ حکومت نے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی سربراہی شہباز شریف کو دینے کا فیصلہ کر کے یو ٹرن لیا ہے۔ اب فیصلہ اپوزیشن کو کرنا ہے کہ وہ کس کو پی اے سی کا سربراہ نامزد کریں گے۔

وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ چھوٹا بھائی بڑے بھائی کی کرپشن کا احتساب کیسے کرے گا۔ اس لئے اخلاقی طور پر شہباز شریف کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی سربراہی کا فیصلہ غلط اقدام ہے۔ انہیں چاہیے کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی سربراہی قبول نہ کریں۔

وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ اپوزیشن قومی اسمبلی کا اجلاس کسی صورت نہیں چلنے دینا چاہتی، پی اے سی کی سربراہی سے متعلق حکومت نے اپوزیشن کا غلط مطالبہ مان لیا ہے تو اب سعد فیق کے پروڈکشن آرڈر جاری نہ ہونے کو جواز بنا کر قومی اسمبلی اجلاس سے واک آ ؤ ٹ کر رہی ہے۔

قومی اسمبلی؛ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری نہ ہونے پر اپوزیشن کا واک آؤٹ

اسلام آباد: مسلم لیگ (ن) کے رکن خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری نہ ہونے پر اپوزیشن کی تمام جماعتوں نے دوسرے روز بھی قومی اسمبلی کے اجلاس کا واک آؤٹ کیا۔

اسپیکر اسد قیصر کی سربراہی میں قومی اسمبلی کا اجلاس ہوا، اجلاس کے دوران اپوزیشن جماعتوں نے خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری نہ ہونے پر احتجاج کیا۔ قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے نکتہ اعتراض پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ہم تین روز سے خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈرز کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ جس پر اسپیکر نے کہا کہ اس حوالے سے ہم نے قانونی مشاورت حاصل کی ہے۔

پیپلز پارٹی کے راجہ پرویز اشرف نے بھی مطالبہ کیا کہ خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری کئے جائیں۔ اس کے ساتھ ہی اپوزیشن کے تمام ارکان ایوان سے واک آؤٹ کرگئے۔

حکومتی اتحاد میں شامل بی این پی مینگل کے سردار اختر مینگل نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہ پروڈکشن آرڈر کا اجرا پارلیمنٹیرین کا حق ہے۔ خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری کئے جائیں۔ ہم نے ہمیشہ اصولوں کی سیاست کی ہے اس وجہ سے 70 سال سے صعوبتیں برداشت کررہے ہیں۔ یہ پارلیمنٹ ہے مغلیہ دربار نہیں ہے۔ اس صورتحال میں یہاں نہیں بیٹھ سکتے۔ اس کے ساتھ ہی اختر مینگل بھی ایوان سے واک آؤٹ کرگئے۔

بعد ازاں وقفہ سوالات سمیت ایوان کی معمول کی کارروائی نمٹائی گئی۔ جس کے بعد اسپیکر اسد قیصر نے قومی اسمبلی کا اجلاس پیر کی شام چار بجے تک ملتوی کردیا۔

پاکستان کو سعودی امدادی پیکج کے تحت مزید ایک ارب ڈالر کی رقم موصول

کراچی: پاکستان کو سعودی عرب کے امدادی پیکج کے تحت مزید ایک ارب ڈالر کی رقم موصول ہوگئی ہے۔

ترجمان اسٹیٹ بینک کے مطابق پاکستان کو سعودی پیکج کے تحت مزید ایک ارب ڈالر کی رقم موصول ہوگئی ہے، جس کے بعد ملک میں غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر 9 ارب 24 کروڑ ڈالر ہوگئے، جنوری میں ایک ارب ڈالر کی مزید قسط موصول ہوجائے گی، جس سے ذر مبادلہ کے ذخائر کی بہتری میں مدد ملے گی۔

اکتوبر میں وزیراعظم عمران خان نے سعودی عرب کا دورہ کیا تھا۔ اس موقع پر سعودی عرب نے ایک سال کے لیے پاکستان کے اکاؤنٹ میں 3 ارب ڈالر ڈپازٹ رکھنے اور 3 سال تک سالانہ 3 ارب ڈالر کا تیل ادھار پر دینے کے لیے رضامندی ظاہر کی تھی۔
سعودی عرب نے گزشتہ ماہ ایک ارب ڈالر ڈپازٹ کئے تھے اور رواں ماہ مزید ایک ارب ڈالر دپازٹ کردئیے گئے ہیں۔

دوسری جانب معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ سعودی ڈپازٹس سے پاکستان کے اکاؤنٹ میں رکھنے سے پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر پر دباؤ میں کمی آئے گی اور ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قیمت میں استحکام آئے گا۔

سی این جی ایسوسی ایشن کا کل سے سندھ بھر میں گیس اسٹیشنز کھولنے کا اعلان

کراچی: سی این جی ایسوسی ایشن نے کراچی سمیت سندھ بھر میں کل  سے گیس اسٹیشنز کھولنے کا اعلان کیا ہے۔

سی این جی بند ہونے سے کراچی،حیدر آباد اور اندرون سندھ میں آج پانچویں روز بھی معمولات زندگی بری طرح متاثر ہیں، پبلک ٹرانسپورٹ سڑکوں پر انتہائی کم ہے جب کہ  مافیا نے کرایوں میں 50 روپے تک   من مانا اضافہ  کردیا جس سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر وفاقی وزیر پٹرولیم غلام محمد سرور گیس کا مسئلہ حل کرنے کراچی پہنچے جہاں انہوں نے وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سے ملاقات کی جس میں وزیراعلیٰ  نے جلد گیس بحال کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ آئین کے مطابق جس صوبے سے گیس نکلتی ہے پہلا حق اس کا ہے اور جانبدارانہ کارروائیاں آئین کے ساتھ مذاق ہیں۔

دوسری جانب سی این جی ایسوسی ایشن نے کراچی سمیت سندھ بھر میں ہفتے  سے گیس اسٹیشنز کھولنے کا اعلان کیا ہے۔

واضح رہے کہ سوئی سدرن گیس کمپنی نے صوبے بھر میں سی این جی سیکٹر کو گیس کی فراہمی غیر معینہ مدت کے لیے بند کردی تھی،بعد ازاں گیس کا بحران مبینہ طور پر مصنوعی نکلا اور انکشاف ہوا کہ سندھ کی گیس پنجاب کو فراہم کی جارہی ہے۔

پنجاب حکومت سست روی کا شکار ہے، چیف جسٹس

اسلام آباد: چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے ہیں کہ پنجاب حکومت سست روی کا شکار ہے اور ہم ایک کام کہتے ہیں وہ بھی پنجاب حکومت سے نہیں ہوتا۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ اسپتال کیس کی سماعت کی۔ چیف جسٹس کے استفسار پر ڈاکٹر سعید اختر نے عدالت کو بتایا کہ میں نے پی کے ایل آئی سے کوئی تنخواہ نہیں لی، ہم نے 21 کڈنی ٹرانسپلانٹ کئے ہیں اور کینسر کے علاج بھی کئے ہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ گردوں کے آپریشن تو دوسری جگہوں پر بھی ہو رہے ہیں، بنیادی طور پر یہ لیور کا ٹرانسپلانٹ تھا، آپریشن تھیٹر فعال نہیں ہے، 34 ارب روپے میں 5 اسپتال بن جاتے ہیں، یہاں 22 ارب روپے لگا دیئے لیکن لیور ٹرنسپلانٹ کا ایک آپریشن نہیں ہوا۔ ایک بچے کا آپریشن نہیں ہوا جبکہ ڈونر بھی موجود تھا۔ کام ایک نہیں ہوا اور اربوں روپے تنخواہوں کی مد میں چلے گئے۔ 22 ارب روپے کا جوابدہ کون ہے؟

جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ ہمیں یہ سمجھائیں کہ پی کے ایل آئی کے لئے ٹرسٹ کی ضرورت کیا ہے، ٹرسٹ تو ایک خاص تعلق کی وجہ سے سابق وزیر اعلی نے بنایا تھا،کیا ٹرسٹ نے کبھی اپنا مالی حصہ ڈالا ہے؟، جس پر ممبر بورڈ نے عدالت کو بتایا کہ ٹرسٹ نے 165 ملین فنڈز کا حصہ ڈالا ہے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ہم نے گزشتہ سماعت پرپوچھا تھا ٹرسٹ کا کیا کرنا ہے،22 ارب روپے خرچ کر دیئے ساری رقم ایک ٹرسٹ کو دے دی، دو مرتبہ ایڈوکیٹ جنرل نے کہا یہ قانون تبدیل کر رہے ہیں، پہلا سوال یہ ہے کہ ٹرسٹ کو رہنا چاہیے یا نہیں۔ ایڈیشنل سیکرٹری نے عدالت کو بتایا کہ کابینہ کو مکمل پروپوزل بنا کر بھیجی گئی ہے۔

چیف جسٹس نے پنجاب حکومت پراظہار برہمی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ پنجاب حکومت سست روی کا شکار ہے، ہم ایک کام کہتے ہیں وہ بھی پنجاب حکومت سے نہیں ہوتا،پنجاب میں ہیلتھ کیئر کے سارے کام رکے ہوئے ہیں، ابھی تک ہیلتھ کیئر بورڈ نہیں بنا اور بات کرو تو سرخیاں لگ جاتی ہیں۔ سپریم کورٹ نے پی کے ایل آئی کی انتظامی کمیٹی میں سرجن جنرل آف پاکستان کو بھی شامل کرنے کا حکم دے دیا۔

پی سی بی نے پی ایس ایل فور کے شیڈول کا اعلان کردیا

لاہور: پاکستان کرکٹ بورڈ نے پی ایس ایل فور کے لیے شیڈول کا اعلان کردیا۔

پاکستان سپر لیگ کے چوتھے ایڈیشن میں مجموعی طور پر 8 میچز پاکستان میں کھیلے جائیں گے، 14 فروری کو دبئی میں ایونٹ کی افتتاحی تقریب کے ساتھ دفاعی چیمپئن اسلام آباد اور لاہور قلندرز کی ٹیمیں ایکشن میں دکھائی دیں گے۔ پروگرام کے مطابق دبئی ، شارجہ کے ساتھ ابوظہبی بھی اس بار پی ایس ایل میچز کی میزبانی کرے گا۔

لاہور میں 3 اور فائنل سمیت کراچی میں 5 میچز کھیلیں جائیں گے، لاہور میں 9، 10 اور 12 مارچ کو میچز قذافی اسٹیڈیم میں ہوں گے۔ کراچی میں 07 ، 10 ، 12 ، 15 مارچ کو میچز رکھے گئے ہیں جب کہ فائنل 17 مارچ کو کراچی میں ہی کھیلا جائے گا۔

اسمگلنگ اور منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلیے جامع پالیسیاں لارہے ہیں، وزیراعظم

 اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ منی لانڈرنگ اور اسمگلنگ کو روکنے کے لیے پوری قوت سے کارروائی کرنے جارہے ہیں اور اس کے لیے تمام ایجنسیوں کواکٹھا کرکے جامع پالیسی لارہے ہیں۔

اسلام آباد میں پاکستان اکنامک فورم سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ قومی غیرت کے لیے خود انحصاری لازمی ہے، میرا وژن ہے کہ پاکستان خود مختار ہو، ہاتھ پھیلانے والا ملک آگے نہیں بڑھ سکتا، پیسے کمانا گناہ نہیں ہے، ناجائز طریقے سے پیسے کمانا گناہ ہے، ٹیکس چوری کرنا گناہ ہے، اسمگلنگ اور منی لانڈرنگ کی روک تھام کے لیے پالیسیاں لارہے ہیں، منی لانڈرنگ اور اسمگلنگ کو ایک طرح سے ہی دیکھیں گے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سرمایہ کاری کے لحاظ سے پاکستان ایک بہترین ملک ہے جہاں سی پیک سمیت دیگر منصوبوں پر سرمایہ کاری کی جاسکتی ہے، ہمیں سرمایہ کاروں کو محفوظ ماحول فراہم کرنا ہے، سرمایہ کاروں کو مجرموں کی طرح پیش کرنے والے ترقی نہیں کرسکتے۔ چین نے 30 سال میں ستر کروڑ افراد کو غربت سے نکالا، ملک سے غربت ختم کرنے کی پوری کوشش کریں گے۔ ہم برآمدات کو بڑھانے کے لیے بھرپور کوشش کریں گے۔

عمران خان نے مزید کہا کہ ہم تاجر برادری کے مسائل حل کرنے کی کوشش کررہے ہیں، ہم سرمایہ کاروں کے لیے آسانیاں پیدا کریں گے، ٹیکس پالیسی اور ٹیکس کلیکشن کو علیحدہ کردیاہے، وزیراعظم سیکریٹریٹ میں ایز آف ڈوئنگ بزنس ڈیسک بنے گا۔ جس کا مقصد سرمایہ کاروں کو مدد فراہم کرنا اورآسانیاں پیدا کرنا ہے۔ ہمیں سرمایہ کاروں سے مسلسل رابطے میں رہوں گا اور گاہے بگاہے ان سے تفصیلات حاصل کرتا رہوں گا۔

حکومت شہباز شریف کو چیئرمین پی اے سی بنانے پر رضامند

اسلام آباد: حکومت شہبازشریف کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا چیئرمین بنانے پر رضا مند ہوگئی ہے۔

چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے حوالے سے حکومت اور اپوزیشن کے درمیان مشاورت ہوئی جس میں حکومت اور اپوزیشن کے درمیان اس بات پر اتفاق کرلیا گیا ہے کہ قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف ہی چیئرمین پی اے سی ہوں گے۔

ذرائع کے مطابق حکومتی ٹیم، اپوزیشن سے ہونے والے مشاورت سے متعلق وزیراعظم کو آگاہ کرے گی جو اس حوالے سے حتمی فیصلہ کریں گے۔ حکومت اور اپوزیشن کے درمیان یہ فیصلہ بھی ہوا کہ مسلم لیگ (ن) کے دور کے آڈٹ پیراز کا جائزہ لینے کیلئے ذیلی کمیٹی بنائی جائے گی جس کا چیئرمین حکومت کے کسی نمائندے کو بنایا جائے گا۔

واضح رہے قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا چیئرمین نامزد کرنے کا اختیار اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کو دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگراپوزیشن اپنی ضد پر قائم ہے تو حکومت پیچھے ہٹ جاتی ہے،  شہباز شریف پر نیب کیسز ہونے کی وجہ سے حکومت انہیں چیئرمین پی اے سی بنانے پر تیار نہیں تھی تاہم اب انہیں جس پر اعتماد ہو اسے چیئرمین بنادیا جائے گا۔

Google Analytics Alternative