قومی

سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کریں گے، عبدالرزاق داؤد

 اسلام آباد: وزیراعظم کے مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد نے کہا ہے کہ سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

اسلام آباد میں سرمایہ کاری بورڈ کے زیر اہتمام پاکستان سعودی عرب سرمایہ کاری کانفرنس ہوئی جس میں دونوں ممالک کے تاجروں، سرمایہ کاروں اور دیگر کاروباری شخصیات نے شرکت کی۔ کانفرنس میں پاکستان میں سعودی سرمایہ کاری کو فروغ دینے پر بات چیت کی گئی۔

وزیراعظم کے مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سعودی عرب کی سرمایہ کاری بہت اہم ہے اور دونوں ممالک کے تعلقات کا نیا باب شروع ہورہا ہے، کانفرنس میں فوڈ ، ٹرانسپورٹ، کیمیکل سمیت دیگر اہم شعبوں کی شخصیات شرکت کررہی ہیں، پاکستان سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کرے گا اور سرمایہ کاری کے بہترین مواقع پیش کرے گا، خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کے آزاد تجارتی معاہدے کیلئے بھی مختلف تجاوز زیر غور ہیں۔

سعودی وزیر تجارت ڈاکٹر ماجد القصبی نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب اور پاکستان کے اسٹریٹجک تعلقات خطے کیلیے اہم ہیں، باہمی روابط سے مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ ملے گا، مخلصانہ تعلقات پر وزیراعظم عمران خان کے مشکور ہیں اور پاکستان سے تعلقات ایک نئی جہت کو پہنچ رہے ہیں، دورے میں پاکستان کے ساتھ مختلف مسائل اور چیلنجز پر بات ہوئی اور دونوں ممالک درپیش چیلنجز سے مل کر نمٹ سکتے ہیں۔

کانفرنس میں سعودی وفد کی قیادت ’کونسل آف سعودی چیمبرز‘ کے نائب سربراہ عبداللہ مرزوق الشماری نے کی۔ کونسل آف چیمبرز 28 تجارتی و صنعتی چیمبرز پر مشتمل اہم ادارہ ہے۔

28 کھرب روپے کے معاہدوں کے بعد سعودی ولی عہد کا مزید سرمایہ کاری کا اعلان

وزیراعظم ہاؤس اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان کی جانب سے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے اعزاز میں عشائیہ دیا گیا جس سے خطاب میں سعودی ولی عہد نے کہا کہ یقین ہے وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں پاکستان بہت آگے بڑھےگا، پاکستان کا مستقبل روشن ہے۔

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ ولی عہد بننے کے بعد ان کا یہ ایشیا کا پہلا دورہ ہے اور وہ سب سے پہلے پاکستان آئے ہیں۔

تقریب سے وزیر اعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانیوں کے لیے آج ایک عظیم دن ہے ، سعودی ولی عہد اور ان کے وفد کا پاکستان میں خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی عرب ہمیشہ سے پاکستان کا دوست اور بھائی رہا ہے ، سعودی قیادت اور عوام ہمارے دلوں میں رہتے ہیں

عمران خان نے کہا کہ میرے لیے مکہ اور مدینے کا سفر سب سے بڑا اعزاز رہا ہے، سعودی عرب ہر ضرورت اور مشکل میں ہمارے ساتھ رہا ہے، ہمیں سیاحت کے شعبےمیں بہت کام کرناہے۔

عمران خان نے کہا کہ پیٹروکیمیکل اور معدنیات کے شعبے میں مفاہمت بہت زیادہ اہم ہے، پاکستان اور سعودی عرب اپنے تعلقات کو بلندیوں پر لے جارہے ہیں، پاکستان میں سیاحت کے بہت مواقع ہیں، سی پیک سے دنیا کی بڑی مارکیٹ سے روابط بڑھیں گے۔

عمران خان عشائیے کے موقع پر خطاب کررہے ہیں، محمد بن سلمان اور آرمی چیف بھی موجود ہیں — فوٹو: پی آئی ڈی

عمران خان نے مزید کہا کہ سعودی سرمایہ کاری دونوں ملکوں کے مفاد میں ہے۔

یاد رہے کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان 2 روزہ دورے پر پاکستان پہنچے ہیں، وزیراعظم عمران خان، وفاقی کابینہ کے ارکان اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے نورخان ایئربیس پر ان کا پرتپاک استقبال کیا تھا۔

عالمی عدالت انصاف میں کلبھوشن یادیو کیس کی سماعت

دی ہیگ: پاکستان میں جاسوسی کے الزام میں گرفتار بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کے کیس کی عالمی عدالت میں سماعت ہوئی۔

عالمی عدالت انصاف کی جانب سے پیر کا دن بھارتی دلائل کے لیے مختص کیا گیا تھا لیکن  بھارتی وکلا کیس کے میرٹ پر بات کرنے کی بجائے قونصلر رسائی پر بات کرتے رہے۔ منگل کو پاکستانی وکلاء عالمی عدالت کے ججز کے سامنے اپنے دلائل پیش کریں گے۔

پاکستان اور بھارتی وکلاء کے دلائل کے بعد بحث و جرح کا آغاز ہوگا، 20 فروری کو بھارت جب کہ جمعرات 21 فروری کو پاکستانی وکیل بحث کریں گے۔ کلبھوشن یادیو کیس کی جرح کی مکمل کارروائی بین الاقوامی عدالتِ انصاف کی ویب سائٹ پر براہِ راست نشر کی جارہی ہے۔

دوسری جانب سماعت کے دوران  پاکستان کے وکیل جسٹس ریٹائرڈ تصدق حسین جیلانی کی طبیعت خراب ہوگئی ، جس پر انہیں ایمبولینس کے ذریعے اسپتال منتقل کردیا گیا۔

واضح رہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی ’را‘ کے جاسوس کلبھوشن یادیو کو مارچ 2016 میں بلوچستان سے گرفتار کیا گیا تھا، بھارتی نیوی کے حاضر سروس افسر نے پاکستان میں دہشت گردی کی متعدد کارروائیوں کا اعتراف کیا تھا جس پر پاکستان کی فوجی عدالت نے کلبھوشن کو سزائے موت سنائی جاچکی ہے۔

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کامیاب دورہ پاکستان کے بعد روانہ

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان پاکستان کے دو روزہ کامیاب دورے کے بعد واپس روانہ ہوگئے۔

اسلام آباد کے نور خان ایئربیس پر وزیر اعظم عمران خان، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، وفاقی وزرا سمیت دیگر اعلیٰ شخصیات نے سعودی ولی عہد کو الوداع کیا۔

پاکستان سے واپسی کے موقع پر سعودی ولی عہد کافی خوشگوار انداز میں نظر آئے اور عمران خان نے انہیں گلے لگا کر رخصت کیا۔

عمران خان اور محمد بن سلمان کی مشترکہ پریس کانفرنس

اس سے قبل ایئرپورٹ پر وزیر اعظم عمران خان اور سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے مشترکہ طور پر مختصر پریس کانفرنس بھی کی۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ سعودی ولی عہد کی جانب سے خود کو پاکستان کا سفیر کہنا اعزاز کی بات ہے اور سوشل میڈیا پر محمد بن سلمان کے بیان کو بے حد سراہا گیا۔

وزیر اعظم اور سعودی ولی عہد نے مشترکہ پریس کانفرنس کی—فوٹو: عمران خان فیس بک
وزیر اعظم اور سعودی ولی عہد نے مشترکہ پریس کانفرنس کی—فوٹو: عمران خان فیس بک

سعودی ولی عہد کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سعودی عرب میں قید پاکستانیوں کی رہائی پر سعودی ولی عہد کا شکر گزار ہوں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان پاکستان میں بہت مقبول ہیں اور اگر آپ یہاں انتخابات میں کھڑے ہوں تو مجھ سے زیادہ ووٹ لیں گے۔

عمران خان نے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کا تعلق وسعت اختیار کررہا ہے، دونوں ممالک کے درمیان معاہدوں سے پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات مزید مستحکم ہوں گے۔

اس موقع پر سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں 2018 میں 5 فیصد ترقی ہوئی، پاکستان کے پاس دنیا کی بڑی معیشت بننے کی اہلیت ہے۔

سعودی ولی عہد نے کہا کہ پاکستان جیواسٹریٹیجک اعتبار سے اہم ملک ہے، آج کا دن روشن مستقبل کی شروعات ہے اور عمران خان کی قیادت میں پاکستان ترقی کررہا ہے۔

نواز شریف کو دل کی پیچیدہ بیماری ’’کورونری آرٹری‘‘ لاحق

لاہور: جناح اسپتال کے میڈیکل بورڈ نے سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ (ن) کے تاحیات قائد نواز شریف کو امراض قلب سمیت لاحق دیگر امراض اور علاج کے حوالے سے اپنی سفارشات تیار کرلی ہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے ذرائع کے حوالے سے بتایاگیا ہے کہ میڈیکل بورڈ نے نواز شریف کی امراض قلب کی ہسٹری ، اس سے قبل بننے والے میڈیکل بورڈز کی رپورٹس وسفارشات اور جناح اسپتال میں کیے گئے ٹیسٹوں کی رپورٹس کی روشنی میں مشاورت کی ۔

ذرائع کے مطابق نوازشریف کو دل کی پیچیدہ کورونری آرٹری کی بیماری لاحق ہے اور ان کے ذاتی معالج کے علاوہ پنجاب حکومت کے تمام تشکیل کردہ میڈیکل بورڈز نے بھی اس پیچیدہ بیماری کی تشخیص اور تصدیق کی ہے۔

ذرائع کے مطابق امراض قلب کے ساتھ ساتھ گردوں کی بیماری نے بھی نواز شریف کے علاج کو مزید پیچیدہ کردیا ہے جب کہ سفارشات میں کہا گیا ہے کہ نواز شریف کو لاحق امراض کا انتہائی احتیاط سے علاج کرنا ہو گا،بنیادی طور پر نواز شریف کی دل کی شریان اور گردوں کے مسائل بہتر انداز میں حل کرنے ہوں گے۔

جناح اسپتال کے میڈیکل بورڈ کی سفارشات ممکنہ طو رپر کل ( پیر) کے روز وزارت داخلہ کو ارسال کردی جائیں گی اور بعد ازاں پنجاب حکومت کو باضابطہ طور پر ان سفارشات سے آگاہ کیا جائے گا۔

پلوامہ حملے پر بھارتی بیان مسترد؛ بھارت ’میں نہ مانوں‘ کی رٹ سے باہر آئے، پاکستان

اسلام آباد: دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل نے پلوامہ حملے سے متعلق بھارتی وزارت خارجہ کے بیان کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کو کشمیری نوجوانوں کو ریاستی تشدد سے دبانے کی بجائے ’میں نہ مانوں‘ کی رٹ سے باہر آنا چاہیے۔

اپنے بیان میں ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ جیش محمد 2002 سے پاکستان میں کالعدم تنظیم ہے، حملے کے فوری بعد پاکستان پر الزامات لگائے گئے، تحقیقات کے بغیر پاکستان پر الزام تراشی بھارت کا پرانا وطیرہ ہے جو ماضی میں بھی ہمیشہ ناکام رہا ہے، اگر ویڈیو بیان بھارتی دعوے کی تصدیق کرتا ہے تو پھر بھارت کو کلبھوشن یادیو کے بیان کو بھی تسلیم کرنا ہو گا، کلبھوشن کا بیان تو رضاکارانہ طور پر ریکارڈ کیا گیا تھا جو بھارت کا حاضر سروس نیوی افسر ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان بھارت کے ساتھ معمول کے تعلقات کی بحالی چاہتا ہے، وزیراعظم عمران خان نے کہا تھا کہ بھارت امن کی طرف ایک قدم چلے تو ہم دو قدم چلنے کو تیار ہیں ، داخلی سیاسی فوائد حاصل کرنے کے لیے سیکیورٹی مسائل کا استعمال خطے کے امن کے مفاد میں نہیں، بھارت کشمیری نوجوانوں کو ریاستی تشدد سے دبانے کی بجائے میں نہ مانوں کی رٹ سے باہر آئے اور اسے اپنی انٹیلی جنس کی ناکامی پر توجہ دینا چاہیے۔

دوسری جانب سیکریٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ نے پاکستان میں تعینات غیر ملکی سفرا کو بریفنگ کے دوران کہا کہ بھارت میں جان بوجھ کر پاکستان مخالف جذبات کو ہوا دی جارہی ہے، بھارت پاکستان پر بے بنیاد الزامات لگا رہا ہے، پاکستان پر بغیر تحقیقات اور بنا شواہد الزام تراشیاں بھارت کا پرانا رویہ ہے، بھارتی الزام تراشیاں اور جارحانہ رویہ خطے کے امن کے لیے نقصان دہ ہے۔

نوازشریف کی طبعیت ٹھیک ہے، پرنسپل علامہ اقبال میڈیکل کالج

لاہور: پرنسپل علامہ اقبال میڈیکل کالج  عارف تجمل کا کہنا ہے کہ نوازشریف کی طبعیت ٹھیک ہے اور ان کی ادویات میں کوئی ردوبدل نہیں کی گئی ہے۔

علامہ اقبال میڈیکل کالج کے پرنسپل عارف تجمل نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی صحت سے متعلق میڈٰیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ نوازشریف کی طبعیت ٹھیک ہے، وہ پہلے سے جو دوا استعمال کررہے صرف ان کی خوراک میں ردوبدل کی گئی ہے، ان کی ادویات میں تبدیلی نہیں لانی پڑی جب کہ نواز شریف کے کچھ ٹیسٹ ہوچکے ہیں لیکن ان کی رپورٹس کے متعلق معلومات نہیں دیکھ سکتا۔

پروفیسر عارف تجمل کا کہنا تھا کہ کسی رپورٹ کے بارے میں کارڈیالوجسٹ بہتر آگاہ کرسکتے ہیں، نواز شریف کا پرانے ڈیٹا سمیت پی آئی سی اور سروسز کا ڈیٹا موصول ہوگیا ہے، میڈیکل بورڈ نے تمام میڈیکل ہسٹری کا جائزہ لے لیا ہے، ممکن ہے کہ کل تک میڈیکل بورڈ اپنی حتمی رائے دے گا۔ انہوں نے کہا کہ مریض کو علاج کی ضرورت ہے، ہم ان کا علاج کررہے ہیں، اسپتال کے وارڈز میں کسی مریض کو مشکل سامنا نہیں ہے۔

العزیزیہ ریفرنس، مناسب ہوگا کہ نوازشریف کی میڈیکل رپورٹ دیکھ کرآگے بڑھیں، اسلام آباد ہائیکورٹ

اسلام آباد: نمائندہ پنجاب نے کہا کہ اسپیشل میڈیکل بورڈ کی سفارشات پرنوازشریف کو جناح اسپتال منتقل کیا گیا، جناح اسپتال میں مختلف امراض کے علاج کی سہولت موجود ہے۔

جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اخترپرمشتمل اسلام آباد ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے العزیزیہ ریفرنس میں نواز شریف کی سزا کے خلاف اپیلوں اوردرخواست ضمانت پرسماعت کی۔

سماعت کے دوران وکیل نوازشریف نے کہا کہ ابھی تک ڈاکٹرزکی طرف سے کوئی حتمی رپورٹ جاری نہیں کی گئی۔ پنجاب حکومت کے نمائندے نے عدالت کو بتایا کہ اسپیشل میڈیکل بورڈ کی سفارشات پرنوازشریف کو جناح اسپتال منتقل کیا گیا، جناح اسپتال میں مختلف امراض کے علاج کی سہولت موجود ہے، جناح اسپتال میں 24 گھنٹے علاج کی سہولیات میسرہیں، جناح اسپتال میں نوازشریف کے مختلف ٹیسٹ کیے جارہے ہیں۔

عدالت نے استفسارکیا کہ نوازشریف کے طبی معائنے کیلئے میڈیکل بورڈ کس کی ہدایت پر بنے جس پر نمائندہ پنجاب نے کہا کہ اسپیشل بورڈ کے علاوہ کسی میڈیکل بورڈ کی تشکیل میں میں ہوم ڈیپارٹمنٹ کا عمل دخل نہیں۔ جسٹس محسن اخترنے استفسار کیا کہ مریض کو طبی سہولیات دی جارہی ہیں یا نہیں، کیا نواز شریف کو جناح اسپتال میں علاج پراعتراض ہے۔ خواجہ حارث نے کہا کہ نواز شریف سے میری ملاقات نہیں ہوئی، انہیں بالکل اعتراض ہوگا، پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں دل کے امراض کا علاج ہوسکتا ہے، جناح اسپتال دل کے امراض کا اسپیشل اسپتال نہیں۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے ریمارکس دیئے کہ مناسب ہوگا کہ رپورٹ کودیکھ کر آگے بڑھیں ۔ خواجہ حارث نے کہا کہ ہوم ڈیپارٹمنٹ پنجاب کے پاس رپورٹ آگئی ہوگی۔ جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیئے کہ چارمختلف بورڈزکی رپورٹ ریکارڈ پرآچکی ہیں۔ جسٹس محسن اختر کیانی نے ریمارکس دیئے کہ نوازشریف کی جوبھی کنڈیشن ہوگی وہ ڈاکٹرزبہتربتا سکتے ہیں۔

نمائندہ پنجاب حکومت نے کہا کہ ابھی حتمی طورپرکچھ نہیں کہہ سکتا کہ رپورٹس کب آئیں گی ، قیدی کو 15 فروری کو جناح اسپتال منتقل کیا گیا، قیدی کی میڈیکل انوسٹی گیشن ہورہی ہیں جو اس کا بنیادی حق ہے، ابھی تک جناح اسپتال کی میڈیکل رپورٹ سامنے نہیں آئی، ڈاکٹرز جو بھی تجویزکریں گے اس پر عمل کیا جائے گا، جناح اسپتال کے متعلقہ وارڈ کو سب جیل کا درجہ دیا گیا ہے۔

خواجہ حارث نے کہا کہ جیل میں صحت بگڑسکتی ہے، علاج کے لیے سزا معطلی کی استدعا ہے جس پر جسٹس محسن اختر کیانی نے ریمارکس دیئے کہ اس کا مطلب ہے کہ آپ مشروط طورپرسزا معطلی چاہتے ہیں اوراگراسپتال کی رپورٹ آنا باقی ہے تو یقینا آپ اس کی روشنی میں باقی دلائل دینا چاہیں گے۔

سماعت کے دوران اسپتال کے وارڈ کوسب جیل کا درجہ دینے سے متعلق نوٹیفکیشن عدالت میں پیش کیا گیا جس پرعدالت نے کہا کہ رپورٹ آجانے پراس کودیکھ لیں گے۔

طبی بنیادوں پردرخواست ضمانت کی سماعت 20 فروری جب کہ العزیزیہ اورفلیگ شپ ریفرنس کے خلاف اپیلوں کی سماعت 2 اپریل تک جب کہ العزیزیہ میں نواز شریف کی مرکزی اپیل اورسزا بڑھانے کی نیب کی اپیل پرسماعت 9 اپریل تک ملتوی کردی گئی۔

Google Analytics Alternative