سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

گوگل آپ کی شخصیت کے کون کونسے راز جانتا ہے؟

نیویارک :ویسے تو سب پریشان رہتے ہیں کہ گوگل یا فیس بک صارفین کے ذاتی ڈیٹا کو کس حد تک اپنے پاس محفوظ کرتے ہیں ، کیا آپ بھی اس حوالے سے فکرمند ہیں؟ تو گوگل کی جانب سے اس حوالے سے ایڈ سیٹنگز کو تبدیل کیا گیا ہے جس میں صارفین اپنی مرضی سے ردوبدل کرسکتے ہیں۔

یہاں آپ جان سکتے ہیں کہ گوگل کے خیال میں آپ کے سامنے کس طرح کے اشتہارات کو دکھانا زیادہ فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے ، نیچے دیئے گئے لنک پر کلک کرنے پر ایڈ پرسنلائزیشن پیج پر چلے جائیں گے۔

تو نیچے متعدد ٹیب ہوں گے جن میں گوگل کے خیال میں آپ کو دلچسپی ہوسکتی ہے جن میں سے کچھ ٹھیک ہوں گے کچھ گوگل سوشل میڈیا یا دیگر عوامل کی بناءپر وہاں دکھاتا ہے، حالانکہ بیشتر سے اس شخص کو دلچسپی نہیں ہوتی۔

اس ری ڈیزائن ایڈ سیٹنگز سے آپ ان کیٹیگریز کو ٹرن آف کرسکتے ہیں جن کے اشتہارات آپ دیکھنا نہیں چاہتے یا چاہیں تو گوگل ایڈ پرسنلائزیشن کو بھی ٹرن آف کردیں۔

ایسا کرنے پر گوگل کی جانب سے آپ کو خبردار کیا جائے گا کہ اشتہارات تو اب بھی آپ کو نظر آئیں گے مگر اب ہوسکتا ہے کہ وہ آپ کے لیے زیادہ مفید نہ ہوں۔

موٹورولا ون پاور اسمارٹ فون کی تفصیلات لیک

موٹورولا کمپنی جلد موٹورولا ون پاور اسمارٹ فون پیش کرنے جا رہی ہے۔

فون سے متعلق لیکس سامنے آنا شروع ہوگئی ہیں جس کے مطابق اس اسمارٹ فون میں اینڈرائیڈ اوریو آپریٹنگ سسٹم ، 6.2 انچ ایچ ڈی پلس ڈسپلے ، قال کوم اسنیپ ڈریگن 636 پروسیسر ، 4 جی بی ریم اور 64 جی بی اسٹوریج دیا جائے گا۔فون کے کیمرہ سیٹ اپ میں پشت پر بارہ میگاپکسل اور 5 میگا پکسل کے دو کیمرے دیے جائیں گے۔فون کا فرنٹ کیمرہ 8 میگا پکسل کا ہوگا۔ اسمارٹ فون کے بیٹری 3780 ملی ایمپیئر آورز کی ہوگی۔ فون کی قیمت اور لانچنگ سے متعلق کوئی اعلان سامنے نہیں آیا ہے۔

فیس بک پر نیا فیچر متعارف

دنیا کی سب سے بڑی سوشل ویب سائٹ فیس بک نے صارفین کو زیادہ سے زیادہ اپنے دوستوں، اہل خانہ اور رشتہ داروں کی پوسٹس سے جوڑ کر رکھنے کی غرض سے ایک نیا فیچر متعارف کرادیا۔

اگرچہ فیس بک نے اسی کام کے غرض سے پہلے ہی ماضی میں شیئر کی گئی پوسٹس کو دیکھنے کے لیے ’آن دس ڈے‘ نامی فیچر متعارف کرا رکھا ہے۔

تاہم اب فیس بک نے اسی فیچر سے ملتا جلتا ایک اور فیچر’میموریز‘ کے نام سے متعارف کرادیا۔

فیس بک کا یہ فیچر اگرچہ گزشتہ ایک سال سے صارفین کو کبھی کبھی اپنے ہوم پیچ پر نظر آتا تھا یا پھر ہر سہ ماہی یا ہر ماہ کے آخر میں فیس بک کی جانب سے اس فیچر کو صارفین کے ساتھ شیئر کیا جاتا تھا۔

تاہم اب اسے صارفین کی نیوز فیڈ میں ’آن دس ڈے‘ کی طرح فکس کردیا گیا ہے، اب صارف کسی وقت بھی اس فیچر کو کلک کرکے اپنی میموریز دیکھ سکیں گے۔

فوری طور پر اس فیچر کو تمام صارفین کے فیس بک پر شامل نہیں کیا گیا، تاہم جلد ہی یہ فیچر تمام صارفین کو اپنی نیوز فیڈ میں نظر آنے لگے گا۔

کمپنی کے مطابق اس فیچر کو متعارف کرانے کا مقصد صارفین کو زیادہ سے زیادہ اپنی ذات اور اہل خانہ سے متعلق چیزوں سے جوڑنا ہے۔

یہ فیچر تقریبا ’آن دس ڈے‘ جیسا ہی ہے، تاہم اس نئے فیچر کے ذریعے سوشل ویب سائٹ صارفین کو ماضی میں پوسٹ کی گئی ایسی مثبت پوسٹس تک رسائی دینے کی کوشش کرے گی، جو صارفین کی توجہ حاصل کرنے میں اہم کردار ادا کرسکیں۔

ڈنمارک میں چمگادڑ دوست اسٹریٹ لائٹس کی تنصیب

کوپن ہیگن: ڈنمارک کے ایک شہر زیودوک نائیکوپ میں عوام نے ایسی اسٹریٹ لائٹس نصب کی ہیں جو چمگادڑوں کی حرکات پر اثر انداز نہیں ہوتیں اور عام روشنیوں کے برخلاف یہ روشنیاں جانور دوست بھی ہیں۔

ایک سال قبل فلپس کمپنی نے ڈنمارک کے ایک سروے میں کہا تھا کہ خاص طور پر تیار کردہ سرخ ایل ای ڈی لائٹس چمگادڑوں کے برتاؤ اور اڑان پر کوئی منفی اثر نہیں ڈالتیں اور انہیں ان روشنیوں سے کوئی مشکل پیش نہیں آتی۔

چمگادڑوں کی کئی اقسام مکمل اندھیرے پر انحصار کرتی ہیں وہ سڑک پر پیلی سوڈیم روشنیوں اور سفید ایل ای ڈی سے دور بھاگتی ہیں۔ اس طرح انہیں اڑنے اور شکار کرنے میں مشکلات کا سامنا ہوتا ہے۔ دوسری جانب چھوٹے کیڑے روشنیوں کے گرد جمع رہتے ہیں اور چمگادڑیں وہاں سے دور رہتے ہوئے بھوکی رہتی ہیں اور ان کی آبادی بھی کم ہوسکتی ہے۔ چمگادڑوں کی آبادی کم ہونے سے قدرتی توازن متاثر ہوسکتا ہے اور یوں کیڑے مکوڑوں کی تعداد توقع سے بھی بڑھ جاتی ہے۔

اس نازک توازن کو مدنظر رکھتے ہوئے فلپس کمپنی نے 2017ء میں ایک تجربہ کیا تھا جو ہالینڈ کی مشہور جامعات کے تعاون سے انجام دیا گیا۔ اس میں کھمبوں مپر سفید، سرخ اور سبز ایل ای ڈی روشنیاں لگائی گئی تھیں۔ تینوں رنگوں کی روشنیاں اسی شدت پر تھیں جو ملک میں استعمال ہورہی ہیں۔

معلوم ہوا کہ چمگا دڑوں کو سرخ روشنیوں سے کوئی فرق نہیں پڑا اور وہ معمول کے تحت پرواز کرتی رہیں جبکہ سبز اور سفید روشنیوں سے انہیں تکلیف ہوئی۔ اس طرح سرخ روشنی کی طول موج (ویولینتھ) سے ان جانوروں کو کوئی الجھن نہیں ہوئی۔

زیودوک نائیکوپ کا علاقہ نایاب چمگادڑوں کا مسکن ہے جن کی بقا ماحولیاتی توازن کے لیے بہت ضروری ہے اور اسی بنا پر اب یہاں ماحول دوست سرخ روشنیاں لگائی گئی ہیں۔ اب 89 ہاؤس سسٹین ایبل ہاؤسنگ کے نام سے اس پروجیکٹ کا آغاز ہوچکا ہے۔

گوگل کے پکسل 3 کی تصاویر سامنے آگئیں

گوگل کے پکسل اسمارٹ فونز کو بہترین اینڈرائیڈ ڈیوائس قرار دیا جاتا ہے اور اب کمپنی اپنے پکسل کے مزید 2 نئے فونز متعارف کرانے کی تیاریوں میں مصروف ہے۔

اگرچہ گوگل نے آفیشلی اس بات کا اعلان نہیں کیا کہ وہ رواں برس پکسل تھری اور پکسل تھری ایکس ایل متعارف کرانے کا ارادہ رکھتا ہے، تاہم اب ان موبائلز کی تصاویر اور تفصیلات لیک ہوکر سامنے آئی ہیں۔

لیک ہوکر سامنے آنے والی تصاویر میں فون کے ڈیزائن کو ابتدائی شکل میں دیکھا جاسکتا ہے۔

فوربز میں شائع ہونے والی تصاویر میں گوگل پکسل 3 اور گوگل پکسل 3 ایکس ایل کو بلیک کلر میں دکھایا گیا ہے۔

ان فونز کے حوالے سے سامنے آنے والی تفصیلات کے مطابق یہ دونوں فونز گوگل کے پہلے متعارف کرائے گئے پکسل فونز کا نہ صرف اپڈیٹ ورژن ہوں گے، بلکہ ان میں جدید اور بہترین ٹیکنالوجی کا استعمال بھی کیا جائے گا۔

پکسل فونز کی لیک ہونے والی تصاویر—فوٹو: فوربز میگزین
پکسل فونز کی لیک ہونے والی تصاویر—فوٹو: فوربز میگزین

تفصیلات کے مطابق پکسل 3 ایکس ایل کے فرنٹ پر 2 کیمرے ہوں گے، جب کہ بیک سائڈ پر ایک ہی کیمرہ ہوگا، جب کہ پکسل 3 میں فرنٹ اور بیک پر ایک ایک کیمرہ دیا جانے کا امکان ہے۔

گوگل نے ان پکسل فون کی ایل ای ڈی اسکرین جنوبی کورین کمپنی ایل جی تیار کرے گی، اس سے قبل یہ اطلاعات تھیں کہ گوگل پکسلز کی اسکرین سام سنگ تیار کرے گی۔

نشریاتی ادارے ٹی 3 کے مطابق گوگل اپنے ان نئے موبائلز میں پہلی بار اینڈرائڈ پی کا آپریٹنگ سسٹم متعارف کرائے گا۔

—فوٹو: ایکس ڈی ایل ڈویلپرز
—فوٹو: ایکس ڈی ایل ڈویلپرز

گوگل کے ان پکسل فونز کی خاص بات یہ ہوگی کہ ان کا کیمرہ ماضی کے پکسل فونز سے بہتر ہوگا۔

گوگل پکسل 3 کی اسکرین 3۔5 انچ ہوگی، جب کہ پکسل تھری ایکس ایل کی اسکرین 2۔6 انچ ہوگی۔

ممکنہ طور پر پکسل 3 کی قیمت 650 ڈالر یعنی پاکستانی 72 ہزار روپے سے زائد جب کہ پکسل 3 ایکس ایل کی قیمت 850 ڈالر یعنی پاکستانی 92 ہزار روپے سے زائد ہوگی۔

دونوں موبائل کو رواں برس اکتوبر میں متعارف کرائے جانے کا امکان ہے، کیوں کہ گوگل نے پکسل کے پہلے 2 فونز بھی اکتوبر 2016 جب کہ پکسل 2 اور پکسل ٹو ایکس ایل بھی اکتوبر 2017 میں متعارف کرائے تھے۔

فوٹو: بی جی آر
فوٹو: بی جی آر

ہیواوے کا ڈوئل کیمرا بجٹ فون ’آنر پلے‘ متعارف

چینی کمپنی ہیواوے نے اپنے برانڈ ’آنر‘ کا ڈوئل کیمرا بجٹ فون ’آنر پلے‘ متعارف کرادیا۔

’آنر پلے‘ کی خاص بات یہ ہے کہ اسے گیمنگ فون قرار دیا جا رہا ہے، کیوں کہ اس کی ایل سی ڈی اور گرافکس میں جدید ٹیکنالوجی کا استمال کیا گیا ہے۔

کمپنی کا دعویٰ ہے کہ ’آنر پلے‘ کی ایل سی ڈی اور گرافکس کا رزلٹ دیگر فونز کے مقابلے میں 60 فیصد بہتر جب کہ توانائی کا استعمال 40 فیصد کم ہوگا۔

کمپنی کے مطابق ’آنر پلے‘ میں جی پی یو ٹربو نامی نئی گیمنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کیا گیا ہے، جس کی مدد سے فون کی اسکرین اور گرافکس سمیت اس کا رزلٹ بہتر بنایا گیا ہے۔

—فوٹو: گزمو چائنا
—فوٹو: گزمو چائنا

ساتھ ہی کمپنی نے یہ بھی اعلان کیا کہ ’آنر‘ اپنے پہلے متعارف کرائے گئے فونز ’آنر 10، ویو 10، آنر لائٹ 9، اور آنر 7‘ کے اپڈیٹ ورژنز میں اس ٹیکنالوجی کا استعمال کرے گی۔

3۔6 انچ اسکرین کے حامل آنر پلے میں کرن کا ہسلیکون کرن 970 کا پراسیسر دیا گیا ہے، جب کہ اس میں 6 جی بی ریم دی گئی ہے۔

آنر پلے میں اسٹوریج بڑھانے کی صلاحیت 64 جی بی تک بڑھائی جا سکتی ہے۔

ہیواوے کے برانڈ کے اس بجٹ فون میں بیک پر ڈوئل کیمرے دیے گئے ہیں، جس میں سے ایک 16 میگا پکسل جب کہ دوسرا 2 میگا پکسل ہے۔

16 میگا پکسل کے فرنٹ کیمرا کے حامل اس موبائل کی بیٹری 3500 ایم اے ایچ رکھی ہے، جب کہ اس کی رقم انتہائی مناسب رکھی ہے۔

آنر پلے کی قیمت 375 امریکی ڈالر یعنی پاکستانی 25 ہزار روپے سے زائد ہے۔

کمپنی نے فوری طور پر اسے آن لائن فروخت کے لیے پیش کیا ہے، جب کہ رواں برس اگست تک اسے دنیا بھر کی مارکیٹس میں بھی فروخت کے لیے پیش کیا جائے گا۔

مائیکرو سافٹ کا گیم اسٹریمنگ سروس متعارف کرانے کا اعلان

سافٹ ویئر، موبائل و کمپیوٹر آلات بنانے والی امریکی کمپنی مائیکرو سافٹ نے سونی کی طرح آن لائن گیم اسٹریمنگ سروس متعارف کرانے کا اعلان کردیا۔

خیال رہے کہ مائیکرو سافٹ سے قبل جاپانی ملٹی نیشنل کمپنی سونی نے آن لائن گیم اسٹریمنگ سروس متعارف کرا رکھی ہے۔

سونی کی گیم اسٹریمنگ سروس ’پلے اسٹیشن‘ میں 650 سے زائد گیمز موجود ہیں، تاہم یہ گیم اسٹریمنگ متعدد موبائل فونز سمیت ٹیبلیٹس اور لیپ ٹاپ پر نہیں چلتی۔

مائیکرو سافٹ نے سونی کی گیم اسٹریمنگ سے بہتر گیم اسٹریمنگ سروس متعارف کرانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے انجنیئرز ایسی اسٹریمنگ سروس بنانے میں مصروف ہیں، جو ہر طرح کی ڈیوائسز پر چلے گی۔

امریکی ریاست کیلیفورنیا میں 12 جون سے ہونے والے دنیا کے سب سے بڑے گیمنگ ایکسپو ‘دی الیکٹرانک انٹرٹینمنٹ ایکسپو‘ (ای 3) کے آغاز سے قبل کی جانے والی پریس کانفرنس میں مائیکرو سافٹ گیم کے سربراہ فل اسپینسر کے مطابق ان کی کمپنی جلد گیم اسٹریمنگ سروس متعارف کرائے گی۔

پریس کانفرنس کے دوران فل اسپینسر نے گیم اسٹریمنگ سروس کو متعارف کرانے کی حتمی تاریخ نہیں بتائی، تاہم عندیہ دیا کہ آئندہ برس تک اسے متعارف کرایا جائے گا۔

ان کے مطابق مائیکرو سافٹ کی گیم اسٹریمنگ سروس نہ صرف کمپیوٹرز و ہر طرح کے لیپ ٹاپ اور ٹیبلیٹس پر چلے گی، بلکہ وہ موبائل فونز پر بھی چلے گی۔

اس موقع پر مائیکرو سافٹ نے اپنی آنے والی معروف ویڈیو گیمز کے ٹریلر بھی جاری کیے۔

مائیکرو سافٹ کی جانب سے آنے والی 15 ویڈیو گیمز کے ٹریلر جاری کیے گئے۔

دو لاکھ ٹریلین حسابات فی سیکنڈ لگانے والا، دنیا کا طاقتورترین سپرکمپیوٹر

واشنگٹن: امریکا نے دنیا کا اب تک کا طاقت ور ترین سپر کمپیوٹر منظر عام پر پیش کردیا ہے جو ایک سیکنڈ میں دو لاکھ ٹریلین حسابی سوالات حل کرسکتا ہے۔

امریکی محکمہ توانائی کے زیر انتظام اوک رِج نیشنل لیبارٹری (او آر این ایل) نے دنیا کا طاقتور ترین سپر کمپیوٹر مکمل کرنے کا اعلان کیا ہے جو اسی ادارے کے 2012 کے 27 پی ٹا فلاپس کمپیوٹر سے بھی 8 گنا زائد تیز رفتار اور طاقت ور ہے۔

حیرت انگیز طور پر سائنس دان اس کمپیوٹر کے حریص ہیں کیونکہ سائنسی تحقیق کے لیے درکار بلند کمپیوٹنگ قوت صرف ایسے سپرکمپیوٹر ہی فراہم کرسکتے ہیں۔  اس وقت موسمیات، کائناتی علوم، بایو کیمسٹری، مصنوعی ذہانت اور دیگر علوم میں بہت زیادہ ڈیٹا پیدا ہورہا ہے جسے سمجھنا اور اس سے نتیجہ نکالنا عام کمپیوٹروں کے بس کی بات نہیں۔

اسی بنا پر سائنس داں ایک جانب تو کسی بیماری کو سمجھنے کے لیے اس کا پورا ڈیٹا پروسیس کرتے ہیں تو دوسری جانب فلکیات داں کائنات کی گتھیوں کو سلجھانے کے لیے سپرکمپیوٹر استعمال کرتے ہیں۔

اسی لیے دنیا بھر میں جدید ترین سپرکمپیوٹروں کی دوڑ جاری ہے جن میں چین، جاپان، برطانیہ اور یورپ وغیرہ طاقتور ترین سپر کمپیوٹروں پر کام کررہے ہیں۔

یہ کمپیوٹر اوک رج لیبارٹری کے ٹائٹن منصوبے کا حصہ ہے جسے سمّٹ کا نام دیا گیا ہے۔  اس میں 4608 سرورز ہیں اور ہر سرور میں دو عدد 22 کور آئی بی ایم پاور نائن پروسیسر لگے ہیں جبکہ گرافکس کےلیے جدید ترین کارڈز اور پروسیسرز الگ سے لگائے گئے ہیں۔ اس کی میموری 10 پی ٹا بائٹ کی ہے اور ڈیٹا کو سنبھالنے کےلیے خاص بینڈ وڈتھ دی گئی ہے۔

ماہرین کا خیال ہے کہ اس کمپیوٹر سے جینیاتی تحقیق اور بیماریوں کو سمجھنے میں بھی مدد لی جاسکے گی۔

Google Analytics Alternative