سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

فیس بک، انسٹا گرام اور واٹس ایپ کی سروس معطل

فیس بک انتظامیہ کا کہنا ہے کہ تکینکی خرابی پر قابو پا کر بڑی حد تک مسئلہ حل کر لیا گیا ہے ،نیٹ ورکنگ میں خرابی کے باعث مختلف مقامات پر صارفین کو فیس بک پر پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔

فیس بک سروس متاثر ہونے پر ترجمان فیس بک نے صارفین سے معذرت کی ہے۔

بائیو نک آنکھیں لاکھوں افراد کی بینائی بحال کرسکتی ہیں

مینی سوٹا…. بصارت بہت ہی گرانقدر نعمت ہے

جسے قدرت نے تقریباً تمام جانداروں کو عطا کررکھا ہے اور یہ بصارت ہی ہے جس کے سہارے انسان ، جانور، کیڑے مکوڑے سب ہی اپنی زندگی گزارتے ہیں۔ آئے دن بصریات کی سائنس ترقی کررہی ہے اور اسی ترقی کا نیا مرحلہ اس وقت سامنے آیا جب سائنسدانوں نے یہ دعویٰ کیا کہ انہوں نے ایک ایسی مصنوعی آنکھ تیار کرلی ہے جو روشنیوں میں کمی بیشی کا احساس کرسکتی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ اس مصنوعی آنکھ میں استعمال ہونے والا قرنیہ تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے تیا رکیا گیا ہے اور اسے تیار کرنے والوں کا کہناہے کہ آئندہ وہ مزید تجربات کرکے اس آنکھ کو اس قابل بنائیں گے جس سے وہ روشنی میں کمی بیشی کو زیادہ بہتر اور کم وقت میں سمجھ سکے اور انکے درمیان فرق کرسکے۔ ایسا ہوگیا تو چند مزید تجربات کے بعدایسی مصنوعی آنکھیں جنہیں بائیونک آئی کا نام دیا جارہا ہے کمرشل بنیادوں پر تیار ہونے لگیں گی جس سے ضعف بصارت ، اندھا پن اور موتیا کے لاکھوں مریض فائدہ اٹھاسکیں گے اور اس طرح بینائی کی کمزوری ایک قصہ پارینہ بن کر رہ جائیگی۔

یہ کانسیپٹ فون آپ کو ضرور پسند آئے گا

ایپل اور سام سنگ تو ابھی تک لچکدار اسمارٹ فون متعارف کرا نہیں سکے مگر ایک کمپنی ایک پورے اسمارٹ فون کو کلائی پر لپیٹنے کے لیے تیار ہے۔

زی ٹی ای کی ذیلی کمپنی نوبیا نے آئی ایف اے نمائش کے دوران ایسا کانسیپٹ فون نوبیا اے متعارف کرایا جسے ‘وئیر ایبل اسمارٹ فون’ قرار دیا گیا ہے۔

اور یہ فون دیکھنے میں واقعی زبردست ہے جس میں بہترین کیمرہ بھی دیا گیا ہے۔

فوٹو بشکریہ انگیجیٹ ڈاٹ کام
فوٹو بشکریہ انگیجیٹ ڈاٹ کام

اس فون کا لچکدار ڈسپلے دیکھنے میں رنگا رنگ اور اس میں ٹیکسٹ کو پڑھنا آسان ہے۔

اسے کسی بریسلیٹ کی طرح کلائی میں پہنا جاسکتا ہے یا کم از کم کانسیپٹ ماڈل کو تو ایسے ہی دکھایا گیا ہے۔

کمپنی کی جانب سے فی الحال اس ڈیوائس کے ڈسپلے کے سائز اور ریزولوشن کو ظاہر نہیں کیا گیا اور نہ ہی دیگر تفصیلات کو بیان کیا گیا ہے۔

تاہم اس کے مطابق رواں سال کی آخری سہ ماہی کے دوران اس حوالے سے مزید تفصیلات بیان کی جائیں گی۔

اس فون میں فور جی کنکٹیویٹی دی گئی ہے جس سے فون کالز کرنا اور موصول کرنا ممکن ہے، فٹنس کو ٹریک کیا جاسکتا ہے، تصاویر لی جاسکتی ہیں۔

فوٹو بشکریہ انگیجیٹ ڈاٹ کام
فوٹو بشکریہ انگیجیٹ ڈاٹ کام

اس کے کیمرے سے ویڈیو کالز بھی کی جاسکتی ہیں تاہم اس کے رزلٹ کا انحصار آپ کے ہاتھ کی حرکت پر ہوگا۔

کمپنی کی جانب سے فی الحال اسے صارفین کے لیے تیار کرنے کے حوالے سے بھی کوئی اعلان نہیں کیا گیا ہے تاہم کانسیپٹ ماڈل کو ٹیسٹ ضرور کیا جائے گا۔

ٹوئٹر میں فیس بک جیسے فیچرز کی آزمائش

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر میں فیس بک جیسے 2 نئے فیچرز کی آزمائش شروع کردی گئی ہے جو صارفین کو چیٹ میں مددگار ثابت ہوگا۔

ان میں سے ایک فیچر ریپلائی تھریڈ اور دوسرا آن لائن ہونے کے اسٹیٹس کا عندیہ دینے والا پریزنس نامی فیچر ہے۔

ریپلائی تھریڈ فیس بک جیسا ہے جس میں کسی میسج پر دوست کا ردعمل یعنی جواب پر ریپلائی دوسرے جوابات سے الگ ہوگا اور ان میں کلر کوڈ بھی ہوگا۔

ٹوئٹر کی پراڈکٹ ہیڈ سارہ حیدر کے مطابق اس وقت پرپل رنگ اوریجنل ٹوئیٹ جبکہ نیلا رنگ آپ کی جانب اشارہ کرتا ہے۔

اسی طرح پریزنس نامی فیچر یہ بتاتا ہے کہ اس وقت آپ کا دوست آن لائن ہوگا یا نہیں، اس مقصد کے لیے پروفائل پکچر کے گرد سبز سرکل بنا ہوگا جیسے فیس بک پر آن لائن آئی ڈی میں ہوتا ہے۔

اس سرکل کی بدولت آپ کو علم ہوجائے گا کہ دوست آن لائن ہے اور اس سے بات کی جاسکتی ہے۔

سارہ حیدر کے مطابق یہ فیچرز لوگوں کو ایک دوسرے سے بات چیت کا احساس دلانے کے لیے ہیں، جو فی الحال ابتدائی مرحلے پر ہیں۔

ان فیچرز میں آن لائن کا بتانے والے فیچر پر صارفین نے یہ یقین دہانی مانگی ہے کہ وہ اسے ٹرن آف کرسکیں گے۔

مائیکرو سافٹ کا اسکائپ کو ایک بار پھر ری ڈیزائن کرنے کا اعلان

مائیکرو سافٹ کی جانب سے متعدد بار ویڈیو کالنگ ایپ اسکائپ کو ری ڈیزائن کیا جاچکا ہے اور اب ایک بار پھر ایسا کیا جارہا ہے۔

گزشتہ سال مائیکرو سافٹ کی جانب سے اسکائپ کو مکمل طور پر ری ڈیزائن کرکے اسنیپ چیٹ جیسے اسٹوری فیچر ہائی لائٹ کو شامل کیا گیا تھا۔

مگر اب کمپنی نے اس فیچر کو اسکائپ سے نکال کر اس ایپ کو ایک بار پھر آسان بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔

اسکائپ کے ڈائریکٹر آف ڈیزائن پیٹر سکلمین کے مطابق صارفین کی اکثریت کے لیے کالنگ مشکل اور ہائی لائٹس کا استعمال سمجھ سے بالاتر تھا، تو ہمارے لیے ایک قدم پیچھے آکر اپلیکشن کو آسان بنانا ضروری تھا۔

نیا موبائل ڈیزائن — فوٹو بشکریہ مائیکرو سافٹ
نیا موبائل ڈیزائن — فوٹو بشکریہ مائیکرو سافٹ

مائیکرو سافٹ کی جانب سے اب اسکائپ کے ڈیزائن میں اس بات پر توجہ دی جارہی ہے جس کی وجہ سے لوگ اسے استعمال کرتے ہیں یعنی کالنگ، ویڈیو کاللز اور میسجنگ۔

کمپنی کی جانب سے ایسے فیچرز کو نکال دیا جائے گا جو کہ کوئی استعمال نہیں کرتا جبکہ یوزر انٹرفیس کو سادہ کیا جائے گا۔

اسی طرح ڈیسک ٹاپ پر چیٹس، کالز، کانٹیکٹس اور نوٹیفکیشنز کو بائیں جانب ٹاپ پر منتقل کردیا جائے گا تاکہ نیوی گیشن کو مرکزی حیثیت دی جاسکے۔

کمپنی کے مطابق ہم دیکھتے ہیں کہ لوگوں کے فیڈ بیک کو سنتے ہیں اور اسکائپ کو اس کے مطابق ہر ممکن حد تک بہتر بنانے کی کوشش کرتے ہیں۔

مائیکرو سافٹ کی جانب سے گزشتہ سال اسکائپ کو مکمل ری ڈیزائن صارفین کو زیادہ پسند نہیں آیا تھا اور اب جاکر کمپنی اسنیپ چیٹ جیسی تبدیلیوں کو ختم کررہی ہے۔

سوشل میڈیا سے دور رہ کر صحتمند اور خوش رہنے کی مہم شروع

لندن: ماہرین نے کہا ہے کہ سوشل میڈیا سے دور رہ کر ڈپریشن کو ختم کرکے اپنی نیند کو بہتر بنایا جاسکتا ہے۔ اسی بنا پر ایک غیر سرکاری تنظیم نے ’اسکرول فری ستمبر‘ مناتے ہوئے عوام کو فیس بک، ٹویٹر اور انسٹا گرام سے ایک ماہ تک دور رہنے کی ترغیب دی ہے۔

اسکرول فری ستمبر میں صرف برطانیہ میں 3 لاکھ 20 ہزار افراد نے اس مہم میں حصہ لینے کا وعدہ کیا  ہے اور انہوں نے یکم ستمبر سے سوشل میڈیا کو ایک ماہ کے لیے خیرباد کہہ دیا ہے۔ یہ مہم رائل سوسائٹی فار پبلک ہیلتھ (آرایس پی ایچ) نے چلائی ہے۔ تنظیم کے ماہرین نے یہاں تک کہا ہے کہ سوشل میڈیا سے پرہیز خود سگریٹ نوشی جیسی عادتِ بد ترک کرنے جیسا ہی عمل ہے۔

بین الاقوامی سطح پر #ScrollFreeSeptember کا ہیش ٹیگ مشہور ہورہا ہے جس میں لوگ 30 دن کے لیے فیس بک، انسٹا گرام اور ٹویٹر کا استعمال نہیں کریں گے۔ ماہرین نے کہا ہے کہ اس سے عوام کی ذہنی اور دماغی صحت پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔

scroll free september

آر ایس بی ایچ نے اس ضمن میں کئی اہم پروگرام اور طریقے پیش کیے ہیں مثلاً سوشل میڈیا ایپس کو مکمل طور پر ایک ماہ کے لیے بند کرنا یا کام اور تعلیم کے وقت ان کا استعمال ترک کرنا اور رات کے وقت سوشل میڈیا سے دور رہنے جیسے طریقے شامل ہیں۔

آر ایس بی ایچ نے برطانوی ذرائع کے حوالے سے کہا ہے کہ سوشل میڈیا کی آمد سے خود برطانیہ میں 18 سال تک کی بچیوں کی جانب سے خود کو اذیت اور زخمی کرنے کے واقعات میں دگنا اضافہ ہوا ہے، اس کی وجہ سوشل میڈیا کا دباؤ اور ڈپریشن بھی ہے۔

ماہرین نے اسمارٹ فون اور ڈپریشن کے درمیان تعلق کو بھی واضح کیا ہے اور اسی بنا پر سوشل میڈیا سے دور رہنا یا اس کا محدود استعمال بہت مفید ثابت ہوسکتا ہے۔

ایپل کی نئی اسمارٹ واچ کیسی ہوگی؟

ایپل کے آئی فونز کو اسمارٹ فونز کی دنیا کا بادشاہ قرار دیا جاتا ہے مگر اس کی اسمارٹ واچ کو بھی گھڑیوں کی دنیا میں یہی حیثیت حاصل ہے۔

اور 12 ستمبر کو نئے آئی فونز کے ساتھ یہ کمپنی نئی ایپل واچ 4 بھی متعارف کرانے والی ہے۔

نائن ٹو فائیو میک نے آئی فون ایکس ایس ماڈلز کے ساتھ ساتھ نئی اسمارٹ واچ کی تصویر بھی لیک کی ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ اب کی بار یہ او ایل ای ڈی ڈسپلے کے ساتھ ہوگی۔

درحقیقت اب کی بار ایپل واچ ایج ٹو ایج ڈسپلے کے ساتھ پہلے کے مقابلے میں 15 فیصد بڑی ہوگی۔

فوٹو بشکریہ نائن ٹو فائیو میک
فوٹو بشکریہ نائن ٹو فائیو میک

ویسے تو ایپل واچ کو 3 برسوں سے اپ ڈیٹ کرکے پیش کی جارہا ہے مگر اس بار وہ پہلے کے مقابلے میں مختلف ہوگی، بلکہ کچھ حلقے تو اسے نئے آئی فونز کے مقابلے میں اس سال زیادہ اہم ڈیوائس قرار دے رہے ہیں۔

جیسے نیا ڈیزائن جو کہ اینالاگ کلاک فیس کے ساتھ ہوگا جبکہ اس گھڑی سے یو وی ریٹنگ جاننا بھی ممکن ہوگا۔

ڈیوائس میں اس کے کراﺅن اور سائیڈ بٹن میں ایک نیا سوراخ بھی نظر آرہا ہے اور یہ واضح نہیں کہ اس نئے ٹول کا مقصد کیا ہے۔

ایپل واچ تھری کی طرح اس بار میں بھی ایل ٹی ای سپورٹ دی جائے گی۔

مختلف افواہوں کی جانب سے ایپل کی جانب سے آئی پیڈ پرو کی نئی سیریز بھی متعارف کرائے جانے کا امکان ہے جو کہ آئی فون ایکس جیسے ڈیزائن کے ساتھ ہوگی، یعنی ہوم بٹن کو ایج ٹو ایج ڈسپلے کے لیے ختم کردیا جائے گا۔

تاہم آئی پیڈ پرو کو 12 ستمبر کی بجائے رواں سال کے آخر میں کسی وقت متعارف کرایا جائے گا۔

آسٹریلیا: سمندری چٹانوں کو بچانے کیلئے اسٹارفش کلنگ روبوٹ متعارف

آسٹریلیا کے سائنس دانوں نے سمندری چٹانوں (گریٹ بیریئر ریف) کو تباہ کرنے والے اسٹار فش کو شکار کرنے کی صلاحیت رکھنے والے سب میرین روبوٹ متعارف کرا دیا۔

کوئنز لینڈ یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی (کیو یو ٹی) کے سائنس دانوں کا کہنا تھا کہ گوگل کے مالی تعاون سے تخلیق کیا گیا ‘رینجربوٹ’ نامی روبوٹ آسٹریلیا کے شمال مشرقی ساحل میں واقع دنیا کے وسیع ترین ورثے کے لیے بطور ‘روبو ریف پروٹیکٹر’ کام کرے گا۔

رینجر بوٹ کی بیٹری لائف 8 گھنٹے ہے اور کمپیوٹر وژن کی صلاحیت کے باعث وہ چٹانوں پر مشتمل علاقوں کی نگرانی کرے گا جو اس سے پہلے ممکن نہیں تھا۔

روبوٹ بنانے والے کیو یو ٹی کے پروفیسر میتھیو ڈنبیبن کا کہنا تھا کہ ‘رینجر بوٹ سمندر کے اندر کام کرنے والا دنیا کا پہلا روبوٹک نظام ہے جس کو خاص طور پر کورل ریف کے ماحولیات کو سامنے رکھ کر ترتیب دیا گیا ہے’۔

پروفیسر میتھیو ڈنبیبن نے روبوٹ کی تیاری کے مراحل کی مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ‘رئیل ٹایم نیوی گیشن کے لیے صرف روبوٹ وژن، مشکلات سے بچاؤ کے طریقہ کار اور سائنس مشنز کو استعمال کرتے ہوئے تیار کیا گیا ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘کئی فنکشنز کا حامل یہ سمندری ڈرون کوریل ریف کو کوریل بلیچنگ سمیت پانی کے معیار، آلودگی اور گدلے پن جیسے وسیع مسائل کی نگرانی کرسکتا ہے’۔

پروفیسر نے کہا کہ سوفٹ ویئر روبوٹ کو اسٹارفش کو غیرفعال کرنے کے قابل بنا دے گا جو کورل کو کھاجاتا ہے اور نقصان دہ انجکشن کو بھی فعال کرتا ہے اور یہ انجکشن ریف کی دیگر پیداوار کے لیے بھی نقصان دہ ہے۔

Google Analytics Alternative