سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

دنیا بھر میں انسٹا گرام کی سروس متاثر

کیلیفورنیا: تصاویر شیئرنگ کی سب سے بڑی سوشل میڈیا ویب سائٹ انسٹا گرام کی سروس دنیا بھر میں کچھ دیر کے لیے متاثر ہوگئی۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق انسٹا گرام کی ایپ اور ویب سائٹ کریش کرگئی جس سے صارفین کو انسٹا گرام استعمال کرنے میں ناکامی اور مشکلات کا سامنا رہا۔

عالمی میڈیا کے مطابق یورپ، امریکا، ایشیائی ممالک سمیت دنیا کے دیگر ممالک میں انسٹا گرام کی سروس متاثر ہوئی ہے۔ ایک ماہ میں یہ دوسرا واقعہ ہے کہ انسٹا گرام نامعلوم وجوہات کی بنا پر بند ہوئی اور بندش کی وجہ سرور میں خرابی کو قرار دیا جارہا ہے۔

عالمی سطح پر انسٹا گرام کی اینڈرائیڈ ایپ متاثر ہوئی تاہم آئی فون اس سے متاثر نہیں ہوا اور آئی فون کے صارفین بغیر کسی تعطل کے اسے استعمال کرتے رہے۔

اس ضمن میں ڈاؤن ڈٹیکٹر نامی ویب سائٹ کو انسٹا گرام کی بندش سے متعلق ہزاروں شکایات موصول ہوئیں، 39 فیصد شکایات نیوز فیڈ سے متعلق اور 35 فیصد لاگ انِ  نہ ہونے سے متعلق تھیں۔

دھوپ اور بارش سے بچانے والی ڈرون چھتری

ٹوکیو: جاپانی کمپنی نے ایک ایسی ڈرون چھتری تیاری کی ہے جسے ہاتھ میں تھامنے کی ضرورت نہیں رہتی اوروہ آپ کو دھوپ اور بارش سے بچاتے ہوئے ازخود آپ کے سرکے اوپررہتے ہوئے پرواز کرتی ہے۔

فری پیراسول نامی یہ چھتری ڈرون مصنوعی ذہانت اور کیمرے کے مدد سے پرواز کرتا ہے اور اسے جاپانی کمپنی آساہی پاورسروسز نے تیار کرکے اسے اڑن چھتری کا نام دیا ہے۔ یہ دھوپ اور بارش میں یکساں طور پر مفید ہے اور مکمل طور پر ہینڈز فری ہیں یعنی آپ اس کے تلے فون استعمال کرسکتے ہیں کا سامان اٹھاکر سفر کرسکتے ہیں۔

اس چھتری کا وزن قریباً 8 کلوگرام ہے اور فی الحال یہ 20 منٹ تک پرواز کرسکتا ہے۔ لیکن اس کے ڈیزائنر اس میں ایک کلوگرام وزن کم کرکے اس کا دورانیہ ایک گھنٹے تک بڑھانے پر غورکررہے ہیں۔ اگر تیز بارش ہو اور ہوا چل رہی ہو تو بھی وہ اس کی پرواز پر اثرانداز ہوسکتی ہے۔

جاپانی کمپنی کے مطابق فری پیری سول 2019 میں فروخت کے لیے پیش کیا جائے گا اوراس کی قیمت 28 ہزار روپے رکھی گئی ہے۔ واضح رہے کہ 2020 تک عالمی سطح پر ڈرون کی تجارت 100 ارب ڈالر تک جاپہنچے گی۔

سامسنگ گیلکسی اے 8 (2018) میں مسئلہ سامنے آگیا‎

سام سنگ کمپنی کے اسمارٹ فون گلیکسی اے 8 (2018) کے لاؤڈ اسپیکر میں مسائل سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں۔

صارفین کی جانب سے شکایات درج کرائی جارہی ہیں کہ کمپنی کی جانب سے جاری کردہ نئی سکیورٹی اپ ڈیٹ کو انسٹال کرنے کے بعد فون کے لاؤڈ سپیکر سے آواز کٹ اف ہو رہی ہے۔ سام سنگ کے کمیونٹی فورم پر درج کردہ شکایات کے مطابق لاؤڈ اسپیکر پر سنی جانے والے کسی بھی فون کال ، ویڈیو ، میوزک یا رنگ ٹون کے دوران مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جبکہ ہیڈ فون یا بلیوٹوتھ اسپیکرز میں ایسا کوئی مسئلہ درپیش نہیں۔ صارفین کا کہنا ہے ہارڈویئر اور فیکٹری ری سیٹ کے بعد بھی یہ مسئلہ ختم نہیں ہو رہا۔سامسنگ سپورٹ کی جانب سے متاثرہ ڈیوائسز کو ریپئیر کرنے کی سہولت دی گئی ہے۔

فیس بک پر صارفین کی معلومات موبائل کمپنیوں کو دینے کا الزام

رواں برس مارچ میں یہ اسکینڈل سامنے آیا تھا کہ دنیا کی سب سے بڑی سوشل ویب سائٹ فیس بک نے امریکا و برطانیہ میں کنسلٹنسی کا کام کرنے والی کمپنی ’ کیمبرج اینالاٹکا‘ (سی اے) کو 5 کروڑ صارفین کی ذاتی معلومات فراہم کی تھی۔

فیس بک کی جانب سے کیمبرج اینالاٹکا کو فراہم کی گئی معلومات زیادہ تر امریکی صارفین کی تھی، جسے 2016 میں امریکی انتخابات میں استعمال کیا گیا۔

اس اسکینڈل کے بعد فیس بک کے خلاف تحقیقات شروع کی گئی تھی اور کمپنی کے سربراہ مارک زکر برگ پہلی بار سینیٹ کے سامنے پیش ہوئے تھے، جس میں انہوں نے اعتراف کیا تھا کہ ان کی کمپنی نے ڈیٹا دیگر کمپنیوں کو فراہم کیا۔

لیکن اب ایک اور اسکینڈل سامنے آیا ہے، جس کے مطابق فیس بک نے لاتعداد فیس بک صارفین کا ڈیٹا موبائل، کمپیوٹر و دیگر اسمارٹ آلات تیار کرنے والی کمپنیوں کو فراہم کیا۔

امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق فیس بک نے موبائل، کمپیوٹر و دیگر اسمارٹ آلات تیار کرنے والی 60 کمپنیوں کو صارفین کا ڈیٹا غیر قانونی طریقے سے دیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ فیس بک نے یہ ڈیٹا 10 سال قبل اس وقت کمپنیوں کو دینا شروع کیا، جب کہ موبائل و کمپیوٹر تیار کرنے والی کمپنیاں فیس بک کی ایپلی کیشن بنانے کی منصوبہ بندی کر رہی تھیں۔

رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ فیس بک نے کمپنیوں کو یہ پیش کش کی کہ فیس بک ایپ کو بہتر سے بہتر بنانے کے لیے ان کے صارفین کا ڈیٹا استعمال کیا جائے۔

رپورٹ کے مطابق فیس بک نے جن کمپنیوں کو فیس بک صارفین کا ڈیٹا دیا ان میں بڑی بڑی کمپنیاں شامل ہیں، جن میں ’ایپل، سام سنگ، گوگل، بلیک بیری اور مائیکرو سافٹ‘ قابل ذکر ہیں۔

دوسری جانب فیس بک نے کہا ہے کہ انہوں نے ایک معاہدے اور رازداری کے تحت کمپنیوں کو ڈیٹا فراہم کیا۔

علاوہ ازیں سام سنگ، ایپل، مائیکرو سافٹ اور بلیک بیری سمیت دیگر کمپنیوں نے بھی معاملہ سامنے آنے کے بعد تاحال کوئی بیان جاری نہیں کیا۔

جون میں کئی سیاروں اور ایک بڑے سیارچے کو بغیر دوربین دیکھا جاسکے گا

واشنگٹن: ماہِ جون شوقیہ فلکیات دانوں کےلیے خاص اہمیت رکھتا ہے اور اس ماہ نہ صرف رات کا آسمان کئی سیاروں سے روشن ہوگا بلکہ اس مہینے اہم سیارچے (ایسٹیرائیڈز) بھی کسی دوربین کے بغیر برہنہ آنکھ سے دیکھے جاسکیں گے۔

19 جون کی رات ویسٹا سیارچہ زمین کی مخالف سمت میں ہوگا یعنی وہ سورج اور زمین کے درمیان میں ہوگا۔ ویسٹا کو بونا سیارہ بھی کہا جاتا ہے اور 19 جون کو یہ 326 میل وسیع سیارچہ زمین سے 10 کروڑ میل کے فاصلے پر ہوگا جو تاریک رات میں کسی دوربین کے بغیر صاف دکھائی دے گا اور اگلے کئی ماہ تک آسمان پر جگمگاتا رہے گا لیکن 19 جون کو ویسٹا کا واضح نظارہ ممکن ہوگا۔ ویسٹا سیارہ زحل کے بائیں جانب ہوگا اور اس کی دائیں جانب ایک اور سرخ ستارہ اینٹارس بھی موجود ہوگا۔

جون میں ہم موسمِ بہار سے موسمِ گرما کی جانب داخل ہوں گے جس کی تاریخ 21 جون ہے۔ اس پورے مہینے نظامِ شمسی کا سب سے بڑا سیارہ مشتری (جوپیٹر) پوری آب و تاب سے دکھائی دے گا جبکہ 22 سے 24 جون وہ چاند کے ساتھ ساتھ موجود ہوگا۔

اس مہینے سورج غروب ہونے کے بعد سیارہ زہرہ (وینس) بھی افق پر ہوگا اور اس کی سب سے زیادہ بلندی 6 جون کو ہوگی۔ پھر 10 جون کو تیار رہیں جیمنی جھرمٹ کے دو مشہور ستاروں کو دیکھنے کے لیے جن کے نام کیسٹر اور پولکس ہیں۔ 27 جون کو زحل (سیٹرن) بھرپور روشن ہوگا اور 26 درجے پر جھکا ہونے کی وجہ اس کے حلقے اور دائرے بہت خوبصورت اور واضح انداز میں نظر آئیں گے۔

اس مہینے مریخ بھی کسی سے پیچھے نہیں اور دھیرے دھیرے روشن ہوتے ہوئے 27 جولائی کو زمین سے قریب تر پہنچ جائے گا جبکہ فی الحال تین جون کو یہ ڈھلتے چاند کے پاس پہنچ چکا ہے۔

سام سنگ اورآئی فون کی جانب سے 3 کیمروں والے موبائل متعارف کرائے جانے کا امکان

یہ اطلاعات تو پہلے ہی آ چکی تھیں کہ اسمارٹ موبائل بنانے والی امریکی کمپنی ’آئی فون‘ بھی 3 کیمروں والا منفرد آئی فون متعارف کرانے سے متعلق سوچ رہی ہے۔

تاہم اب یہ خبر بھی سامنے آئی ہے کہ اسمارٹ فونز بنانے والی جنوبی کورین کمپنی سام سنگ بھی آئی فون کے ٹکر کا 3 کیمروں والا موبائل متعارف کرانے کے لیے کوشاں ہے۔

خیال رہے کہ اس وقت صرف چینی کمپنی ہیواوے نے ہی 3 کیمروں والے موبائلز پیش کیے ہیں۔

ہواوے نے سب سے پہلے فلیگ شپ پی 20 پرو متعارف کرایا تھا اور حال ہی میں اس کمپنی نے 4 کیمروں والا میٹ 10 لائٹ بھی متعارف کرا رکھا ہے۔

اب آئی فون اور سام سنگ بھی 3 بیک کیمرہ والے موبائل فون بنانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔

ٹیکنالوجی نشریاتی ادارے ’دی ورج‘ نے ایک اور نشریاتی ادارے کا حوالہ دیتے ہوئے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ آئی فون ایکس 10 کے اپڈیٹ ورژن میں ہی 3 کیمرے دینے کی منصوبہ بندی بنا رہی ہے۔

رپورٹ کے مطابق آئی فون گزشتہ برس متعارف کرائے گئے آئی فون ایکس کا اپڈیٹ ورژن آئی فون ایکس پلس کرائے گی، جس میں 3 بیک کیمرے ہوں گے۔

تاہم ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ یہ کیمرے کتنے میگا پکسل ہوں گے اور اس فون کو کب تک متعارف کرایا جائے گا۔

تاہم رپورٹ میں امکان ظاہر کیا گیا ہے کہ اس فون کو رواں برس کے آخر یا پھر 2019 کی شروعات میں متعارف کرایا جائے گا۔

دوسری جانب اسی رپورٓٹ میں یہ بھی بتایا گیا جنوبی کورین کمپنی سام سنگ بھی حریف کمپنی کے ٹکر کا 3 بیک کیمروں والا موبائل متعارف کرانے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے۔

رپورٹ کے مطابق سام سنگ ایس 10 کو بھی رواں برس کے آخر یا پھر آئندہ برس کے آغاز میں متعارف کرائے جانے کا امکان ہے۔

سام سنگ کے حوالے سے بھی یہ واضح نہیں ہے کہ اس کے تینوں کیمرے کتنے میگا پکسل ہوں گے۔

تاہم امکان ہے کہ تین میں سے ایک کیمرہ 40 میگا پکسل جب کہ دوسرا 25 اور تیسرا 16 میگا پکسل ہوگا۔

  گیلیکسی ایس 9 کے لیے نئی آگمینٹڈ ریئلٹی ایموجیز پیش‎

سام سنگ کمپنی کی جانب سے گیلیکسی ایس 9 اور گلیکسی ایس 9 پلس اسمارٹ فونز کے لئے 18 نئی تھری ڈی ایموجیز جاری کردی گئی ہیں اس طرح اب اسمارٹ فون میں کل تھری ڈی ایموجیز کی تعداد 36 ہوگئی ہے۔

نئی ایموجیز کو اسمارٹ فون کے ایپ اسٹور سے انسٹال کیا جا سکتا ہے ۔ ایموجیز کو استعمال کرنے کے لیے انھیں گیلری ایپ سے کاپی پیسٹ کیا جاسکے گا اس کے علاوہ کی بورڈ سے ڈائریکٹ بھی بھیجا جا سکے گا۔ سام سنگ کمپنی آنے والے مہینوں میں 18 مزید ایموجیز جاری کرنے کا ارادہ رکھتی ہے جس کے بعد یہ تعداد 54 تک جا پہنچے گی۔

نوجوان تیزی سے فیس بک کا استعمال ترک کر رہے ہیں، تحقیق

سان فرانسسكو: نوجوانوں میں فیس بک ترک کرنے کے رجحان میں 2015ء سے تیزی سے کمی واقع ہورہی ہے جب کہ انسٹا گرام اور اسنیپ چیٹ کے استعمال میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔ 

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا میں کی گئی تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ 2015ء کے مقابلے میں فیس بک کی مقبولیت میں کمی واقع ہوئی ہے اور نوجوانوں میں فیس بک کو ترک کر کے سماجی رابطے کی دیگر ویب سائٹس کو استعمال کرنے کا رجحان دیکھا گیا ہے۔ نوجوانوں کی اولین پسند فیس بک کے بجائے اب یوٹیوب، انسٹاگرام اور اسنیپ چیٹ ہیں۔

امریکا کے نجی تحقیقاتی ادارے پیو ریسرچ سینٹر (Pew Research Center) کی جانب سے کیے گئے اس سال کے سروے میں حیران کن اعداد و شمار سامنے آئے ہیں۔ 2015ء میں اسی ادارے کی جانب سے کیے گئے سروے کے تقابلی جائزے سے پتا چلا کہ نوجوانوں میں فیس بک کا استعمال 71 فیصد سے گھٹ کر 51 فیصد رہ گیا ہے جب کہ نوجوانوں میں انسٹا گرام کی مقبولیت 52 فیصد سے بڑھ کر 72 فیصد اور اسنیپ چیٹ کی 41 فیصد سے بڑھ کر 69 فیصد ہوگئی ہے۔

Social Media

نوجوانوں میں فیس بک ترک کرنے کے رجحان کی تصدیق اس سے قبل فروری میں کی جانے والی ایک تحقیق سے بھی ہوئی تھی جس کے اعداد و شمار کے مطابق 12 سے 17 سال کی عمر کے نوجوانوں میں فیس بک کے استعمال میں 10 فیصد کمی دیکھی گئی تھی۔ موجودہ صورت حال کو دیکھتے ہوئے ریسرچ کمپنی کا دعویٰ ہے کہ آئندہ برس تک فیس بک کو 2.1 ملین صارفین سے محروم ہونے کا امکان ہے۔

واضح رہے کہ 2016ء میں ہونے والے امریکا کے صدارتی انتخاب کے دوران فیس بک صارفین کا ڈیٹا استعمال ہونے پر سماجی رابطے کی اس کامیاب ویب سائٹ کو مشکلات کا سامنا رہا ہے جب کہ یوٹیوب انسٹا گرام اور اسنیپ چیٹ کی مقبولیت میں اضافہ ہو رہا ہے۔

Google Analytics Alternative