سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

پاکستان سمندری ہواﺅں کے خطرناک طوفان النینو کے زد میں

کراچی: پاکستان سمیت دنیا کے اکثر ممالک سمندری ہواﺅں کے خطرناک طوفان النینو کے زد میں ہیں۔ انٹرنیشنل پینل آن کلامیٹ چینج نے النینو طوفان کے خطرے سے آگاہ کر دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق انسانوں کی پھیلائی ہوئی تباہی کے اثرات اب موسمیاتی تبدیلیوں کی صورت میں ظاہر ہونا شروع ہو گئے ہیں۔امریکہ میں برف اور برفیلی ہواوں کا تباہ کن طوفان برپا ہے کسی خطے میں گرمی کی شدید لہر نے لوگوں کو پریشان کیے رکھا اور کہیں طویل خشک سالی کا راج طویل عرصے سے جاری ہے جبکہ پہاڑی علاقوں میں شدید دھند جان چھوڑنے کا نام نہیں لے رہی۔عالمی سائنسدانوں نے انکشاف کیا ہے کہ دنیا کے اکثر ممالک سمندروں میں چلنے والی خط استوا پرٹریڈ ہواوں کے کرنٹ النینو کے زیراثر ہیں جس سے امریکہ آسٹریلیا فلپائن سنگاپور سمیت جنوبی ایشیا کے موسم بر ی طرح تبدیل ہو چکے ہیں۔ انٹرنیشنل پینل آن کلائمیٹ چینج کی رپورٹ فائیو میں کہا گیا ہے کہ النینو طوفان سے پاکستان کے جنوبی علاقے خشک سالی اور شمالی علاقے بارشوں سے بری طرح متاثر ہونے کا امکان ہے۔ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ امریکہ کی طرح یہاں بھی حکومت خطرے کو بھانپ جاتی لیکن یہاں وزارت موسمیاتی تبدیلیاں اس سے لاعلم اور متعلقہ محکمے چین کی بانسری بجا رہے ہیں۔ رپورٹ میں خبر دار کیا گیا ہے کہ بحرہند پر بننے والے ہوائی غبارے سے سنگاپور بھارت اور کراچی سمیت ساحلی علاقوں میں گرمی کی شدید لہر آنے کا پھر خطرہ ہے۔

کائنات دو عظیم دھماکوں ( بگ بینگ) سے گزری ہے “امریکی ماہرِ طبیعیات”

نیویارک:  امریکی ماہرِ طبیعیات نے دعویٰ کیا ہے کہ کائنات دو عظیم دھماکوں ( بگ بینگ) سے گزری ہے اور دوسرے دھماکے کی وجہ سے کائنات کے پھیلاؤ میں غیرمعمولی اضافہ ہوا۔امریکا میں طبیعیات کے سائنسدان کے مطابق کائنات میں جابجا موجود تاریک مادہ (ڈارک میٹر) اسی عمل کی وجہ سے وجود میں آیا تھا جب کہ یہ دلچسپ نظریہ کہتا ہے کہ ایک ’’بگ بینگ‘‘ سے کائنات وجود میں آئی اور دوسرے لیکن کم شدت کے بگ بینگ سے کائنات میں سرد تاریک مادہ پیدا ہوا تھا۔ سائنسدان کے مطابق ہم جانتے ہیں کہ پہلے بگ بینگ میں ایک سیکنڈ کے کم وقفے کے لیے کائنات فوری طور پر پھیلی تھی جس کے بعد مادہ اور ضدِ مادہ اور دیگر تمام ذرات وجود میں آئے لیکن کائنات پھیلتے ہی ٹھنڈی ہوتی گئی اور کائناتی ذرات کے ٹکرانے اور آپس میں ردِ عمل کی رفتار سست پڑگئی تھی۔امریکی سائنسدان کا خیال ہے کہ کائنات کے پہلے پھیلاؤ کے بعد ایک اور دھماکا یا واقعہ ہوا تھا اور نظریئے کی رو سے کائنات مزید وسیع ہوئی اور ذرات کو مزید پھیلنے اور حرکت کی جگہ ملی جب کہ اسی وجہ سے کائنات میں تاریک مادہ وجود میں آیا تھا، اس طرح پہلے دھماکے سے کائنات میں مادے کی بھرمار ہوئی تو دوسرے دھماکے سے مادہ بننا بند ہوگیا اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ نئے نظریئے کی رو سے کائنات میں موجود پراسرار مادے کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے۔سائنسدان کے مطابق کائنات کی پیدائش کے صرف چند سیکنڈ کے بعد ہی دوسرا چھوٹا دھماکا ہوا تھا جس سے تاریک مادہ کثافت سے مزید ہلکا ہوگیا تھا اور آج بھی اسی ترتیب میں موجود ہے۔ سائنسدان کا کہنا ہے کہ ان کے نظریات کو تجربات کے ذریعے جانچا بھی جاسکتا ہے۔سائنسدان کے مطابق ان کا نظریہ کائنات کے مروجہ علوم کے تحت نہیں لیکن یہ ضرور ماننا پڑے گا کہ کائنات پر ان قوتوں کا راج نہیں جو ہم سوچتے ہیں جب کہ کائنات میں میں مجموعی طور پر 85 فیصد مادہ تاریک مادے پر مشتمل ہے جو دکھائی نہیں دیتا۔

ایک ایسی ویب سائٹ جس سے موبائل فون کریش ہوکر بند ہوجائے گا

نیویارک: گزشتہ سال سوشل میڈیا پر ایک ایسا ٹیکسٹ لوگوں کی توجہ کا مرکز رہا جسے کھولتے ہی موبائل فون کریش کرجاتا تھا لیکن اب ایک ایسی پراسرار ویب سائٹ نے سوشل میڈیا پر تہلکہ مچا دیا ہے جسے کھولتے ہی آپ کے موبائل کا ویب براؤزر یا پھر موبائل فون کریش ہوکر بند ہوجائے گا۔

اگر آپ آئی فون صارف ہیں تو خبردار رہیں کیونکہ ایک ایسی ویب سائٹ یا لنک بھی ہے جسے کھولتے ہی آپ کا موبائل کریش کرجائے گا اور آپ کو مجبورکرے گا کہ آپ اپنے موبائل کو ری بوٹ کریں۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق کریش سفاری ڈاٹ کام وہ ویب سائٹ ہے جسے کلر ویب سائٹ کا نام دیا جا رہا ہے اور جسے کھولتے ہی فون پر بے شمار نمبرز آنے لگتے ہیں اور فون کریش کرجاتا ہے۔ ایک اور ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ آئی فون سکس ایس اور آئی فون 5 ایس رکھنے والے صارفین کے لیے یہ ویب سائٹ زیادہ خطرناک ہے جب کہ گوگل کروم کے ذریعے اس ویب سائٹ کو کھولنے سے انیڈرائڈ موبائل کی رفتار بھی سست پڑ جاتی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ ویب سائٹ موبائل کو مستقل طور پر نقصان نہیں پہنچاتی تاہم آپ کو پریشان کردیتی ہے کیوں کہ اس کے بعد موبائل فون کو ری اسٹارٹ کرنا لازمی ہوجاتا ہے اسی لیے ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ اجنبی ویب سائٹ اور لنکس سے ہوشیار رہیں یہ آپ کے فون کو کریش کرسکتی ہیں۔ ٹویٹرپر سفاری کریش ڈاٹ کام کے بارے میں لوگوں کو متنبہ کرنے کے باوجود اب تک ایک لاکھ صارفین اس لنک پر کلک کر کے نقصان اٹھا چکے ہیں۔

واٹس ایپ صارفین اپنا ڈیٹا فیس بک کے ساتھ شیئر کرنے پر مجبور

ٹوکیو: مشہور سوشل میڈیا ”فیس بک“ نے واٹس ایپ صارفین کا ڈیٹا حاصل کرنے کی تیاری شروع کر دی ہے اور قوی امکان ہے کہ آئندہ چند دنوں میں واٹس ایپ صارفین کو اپنا ڈیٹا فیس بک کے ساتھ شیئر کرنے پر مجبور کر دیا جائے جس کے باعث بہت سے صارفین مایوس نظر آ رہے ہیں۔ 2 سال قبل جب فیس بک نے واٹس ایپ کو خریدا تو بہت سے لوگوں کا خیال تھا کہ فیس بک اپنی میسنجر ایپلی کیشن کیلئے واٹس ایپ کو بند کر دے گا یا پھر ان دنوں سروسز کو ایک ہی سروس میںبدل دے گا تاہم ایسا نہ ہوا اور واٹس ایپ صارفین کے تمام خدشات دور ہو گئے لیکن اب ایسا لگتا ہے کہ واٹس ایپ نے اپنی پرائیویسی پالیسی میں تبدیلی کا فیصلہ کر لیا ہے جس کے تحت تمام صارفین کا ڈیٹا ان کے فیس بک اکاﺅنٹ کے ساتھ بھی شیئر کیا جائے گا۔ یعنی واٹس ایپ کے ہر صارف کا ڈیٹا اس کے فیس بک اکاﺅنٹ کیساتھ شیئر ہو گا اور ایسا کرنے کی وجہ واٹس ایپ کے استعمال کو بہتر بنانا بتایا جا رہا ہے۔ تاحال یہ آپشن واٹس ایپ صارفین کو مہیا نہیں کی گئی تاہم ایک ڈویلپر نے واٹس ایپ کے ”بیٹا“ ورژن میں یہ آپشن ڈھونڈ نکالی ہے اور اس کا سکرین شاٹ بھی اپ لوڈ کیا ہے۔

پاکستان کا پہلا شمسی ہوائی جہاز”شمسی ون”

لاہور : پاکستان کا پہلا شمسی ہوائی جہاز فضاءمیں اڑان بھرنے کے لئے تیار ہو گیا ہے اور اسے شمسی ون کا نام دیا گیا ہے میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان ایک جوہری ملک ہونے کے ساتھ ساتھ اب ٹیکنالوجی کے انقلاب کی جانب بھی رواں دواں ہے شمسی ہوائی جہاز کا یہ ماڈل یونیورسٹی آف مینجمنٹ اینڈ ٹیکنالوجی میں ڈیزائن کیا گیا ہے جہاں پر دو طلبہ عبدالمتین اور سید محمد جنید نے برسون سے اس آئیڈیا پر کام کیا ۔دونوں طلباء کا کہنا ہے کہ یہ تجربہ 100 فیصد کامیاب رہا اور یہ یقین ہے کہ سولر ایمپلس ( Impulse) کی طرح اصلی ہوائی بنایا جا سکتا ہے اس جہاز کو شمس ون کا نام دیا گیا ہے اور دن رات بغیر کسی ایندھن کے محو پرواز رہ سکتا ہے اور صرف بیٹری میں شمسی توانائی جمع کر کے پرواز کرے گا ۔

فیس بک کے بانی مارک زکربرگ کے زندگی کا ایک اور پہلو

فیس بک کے بانی مارک زکربرگ دنیا کے امیرترین افراد میں سے ایک ہیں مگر ان کے ملبوسات کی الماری دیکھ کر اس بات پر یقین کرنا مشکل ہوجائے گا۔

جی ہاں مارک زکربرگ نے پیر کو اپنے ملبوسات کی الماری کی ایک تصویر فیس بک پر شیئر کی اور ثابت کیا کہ یہ ارب پتی شخص محض ملتے جلتے رنگ کی ٹی شرٹس کو خریدنے اور پہننے کا عادی ہے۔

انسان کے سر کا ٹرانسپلانٹ 2017 تک ہوگا ممکن” چینی سائنس دان کادعوی”

بیجنگ:  طبی سائنس اگرچہ اس وقت تاریخ کے جدید ترین دور سے گزر رہی ہے اور ہر گزرتا لمحہ اس میں حیرت انگیز تبدیلیاں اور ایجادات لیکر آرہا ہے لیکن ابھی تک انسانی سر کے ٹرانسپلانٹ کا کوئی آپریشن سامنے نہیں آسکا تھا تاہم اب ایک چینی سائنس دان نے دعوی کیا ہے کہ اس نے بندر کے سر کا کامیاب ٹرانسپلانٹ کیا ہے اور وہ جلد انسان کے سر بھی ٹرانسپلانت کرنے میں کامیاب ہوجائیں گے۔
چینی سائنس دان سرگیو کینا ویرو نے ایک سال قبل ہی اعلان کردیا تھا کہ ریڈھ کی ہڈی کے خرابی سے معذور ہوجانے والے افراد کو دوبارہ اپنے پاؤں پر کھڑا کرنے کے لیے وہ انسانی سر کا آپریشن کریں گے اور اس کے بعد سے انہوں نے شب وروز اس ہر جنوبی کوریا اور چین میں کام شروع کردیا اور اس کے لیے انہوں نے سب سے پہلے چوہے کا انتخاب کیا اور اس کے سر کا کامیاب آپریشن کیا اور چوہا ٹرانسپلانٹ کے 20 گھنٹے کے بعد ہی حرکت کرنے لگا۔ سرگئی نے اب ایک بندر کا کامیاب ہیڈ ٹرانسپلاتٹ کیا ہے جس کے بارے میں ان کا کہنا ہے کہ اس آپریشن کے دوران ڈونر اور مریض دونوں کے جسموں کو انتہائی کم درجہ حرارت پر رکھا جاتا ہے اور پھر انتہائی تیز چاقو سے چیر کرکاٹ لیا جاتا ہے اور اسے مریض کے سر پر لگا دیا جاتا ہے۔
سرگئی کا کہنا ہے کہ آپریشن کے دوران مریض کو 4 ماہ کے کوما میں رکھا جائے گا تاہم بندر کے سر کے ٹرانسپلانٹ میں انہیں بہت مختصر وقت کے لیے بے ہوش کیا گیا اور وہ بندر اب مکمل طور پر صحت مند ہے۔ سرگئی کی ٹیم کا کہنا ہے کہ سرجری کے دوران بندر کی ریڈھ کی ہڈی نہیں بلکہ صرف خون کی فراہمی کے نظام کو جوڑا گیا ہے جبکہ بندر کو 20 گھنٹوں کے لیے بے ہوش کیا گیا۔
کچھ سائنس دانوں نے سرگئی کی اس پیشرفت پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا ہے کہ اور کہا ہے کہ انہوں نے اس آپریشن کی تفصیلات نہیں پیش کیں تاہم اگر وہ اسے کسی سائنس میگزین میں شائع کردیں تو پھر اس میں دلچسپی لی جا سکتی ہے۔ ان سب تحفظات کے باوجود سرگئی نے انسان کے سر کے پہلے ٹرانسپلانٹ کے لیے دسمبر 2017 کی تاریخ مقرر کردی ہے اور دیکھنا یہ ہے کہ وہ اس میں کس حد تک کامیابی حاصل کرپاتے ہیں۔

چھپکلی کے ڈر اور خوف ہمیشہ ہمیشہ کے لیے ختم

ایمسٹر ڈیم: دنیا میں کروڑوں لوگ ایسے ہیں جو مختلف جانوروں سے انجانے خوف میں مبتلا رہتے ہیں ان جانوروں میں چھکلیاں بھی شامل ہیں لیکن اب سائنسدانوں نے ایسی دوائی تیارکرلی ہے جسے استعمال کرنے کے بعد لوگ چھپکلی کو ہاتھوں سے بھی پکڑ سکتے ہیں۔اس سلسلے کی نئی ریسرچ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ بعض مخصوص نوعیت کی جذباتی یادداشتوں کو محض تبدیل کرنا ہی ممکن نہیں بلکہ انھیں سرے سے ختم بھی کیا جا سکتا ہے۔ یہ کارنامہ ایمسٹرڈیم یونیورسٹی کی نفسیات کی پروفیسر میرل کائنڈت نے انجام دیا ہے۔ جن کی یہ تحقیق گزشتہ ماہ بائیلوجیکل سائیکاٹری جرنل میں شائع ہوئی ہے۔ انھوں نے ایک ایسی دوا تجویز کی ہے جسے مخصوص طریقے سے استعمال کر کے چھپکلی اور اس قسم کے ڈر اور خوف ہمیشہ ہمیشہ کے لیے ختم کیے جاسکتے ہیں۔

Google Analytics Alternative