سا ئنس اینڈ ٹیکنالوجی

مائیکرو سافٹ نے پہلی بار ہیڈفون متعارف کرادیا

مائیکرو سافٹ نے اپنے سرفیس سیریز کی نئی ڈیوائسز کرادی ہیں اور پہلی بار اس کمپنی نے نوائز کینسلنگ ہیڈفونز بھی صارفین کے لیے پیش کردیئے ہیں۔

کمپنی کی جانب سے گزشتہ شب نیویارک میں ایک ایونٹ کے دوران سرفیس پرو 6 ٹیبلیٹ، سروفیس لیپ ٹاپ 2، سرفیس اسٹوڈیو 2 (ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر) اور ایک سرفیس ہیڈفون متعارف کرایا، جبکہ ونڈوز 10 اور آفس 365 کے بھی متعدد نئے فیچرز کا اعلان کیا۔

مائیکروسافٹ کے چیف پراڈکٹ آفیسر پانوس پنائے کا کہنا تھا کہ سرفیس پرو 6 گزشتہ ماڈل کے مقابلے میں 67 فیصد زیادہ طاقتور ہے اور اس کی قیمت 899 ڈالرز سے شروع ہوگی۔

فرفیس لیپ ٹاپ 2 کی قیمت 999 ڈالرز سے شروع ہوگی اور یہ دونوں ڈیوائسز 16 اکتوبر سے مختلف ممالک میں دستیاب ہوں گی۔

دونوں ڈیوائسز میں چند فیچرز اپ ڈیٹ اور نئے رنگوں کا اضافہ کیا گیا ہے، تاہم کوئی بڑا ری ڈیزائن یا یو ایس بی سی پورٹ کے اضافے کے خواہشمند افراد کو 2019 کا انتظار کرنا ہوگا۔

سرفیس پرو سکس میں ایٹ جنریشن انٹیل سی پی یو، 12.3 انچ ڈسپلے، ساڑھے 13 گھنٹے بیٹری لائف، ایس ایس ڈی کارڈ سے اسٹوریج کو ایک ٹی بی تک بڑھانے کی صلاحیت اور پہلی بار بلیک رنگ میں دستیابی جیسے فیچرز دیئے گئے ہیں۔

سرفیس لیپ ٹاپ 2 میں ایٹ جنریشن انٹیل سی پی یو، 13.5 انچ ٹچ ڈسپلے، گزشتہ ماڈل کے مقابلے میں 85 فیصد تیز اور انسٹنٹ آن اور ونڈوز ہیلو سپورٹ دی گئی ہے۔

 

مائیکرو سافٹ کا آل ان ون ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر سرفیس اسٹوڈیو 2 کی قیمت ساڑھے 3 ہزار ڈالرز سے شروع ہوگی تاہم اس کی دستیابی کی تاریخ کا فی الحال اعلان نہیں کیا گیا۔

اس میں 28 انچ کا ٹچ ڈسپلے، 2 ٹی بی ایس ایس ڈی، سیون جنریشن انٹیل سی پی یو، ڈی سی آئی، پی تھری، آکسائیڈ ٹرانسسٹر، نیکسٹ جنریشن پاسکل گرافکس، 13.5 ملین پکسلز اور ایکس باکس وائرلیس کنٹرولر کی بلٹ ان سپورٹ دی گئی ہے۔

تاہم ایونٹ میں سب سے بڑا سرپرائز کمپنی کی جانب سے پہلی بار نوائز کینسلنگ ہیڈفونز کو متعارف کرانا تھا۔

سرفیس ہیڈفون کی قیمت 350 ڈالرز رکھی گئی ہے جو کہ پہلے امریکا میں فروخت کے لیے پیش کیے جائیں گے۔

کمپنی کے مطابق یہ ہیڈفون ونڈوز 10، آئی او ایس، اینڈرائیڈ اور میک آپریٹنگ سسٹم سے مطابقت رکھتے ہیں اور جب صارف انہیں کان سے اتارے گا تو وہ فوری طور پر موسیقی کو روک دیں گے یا کالز میوٹ کردیں گے۔

ان ہیڈفونز کو اسکائپ کو ذہن میں رکھ کر ڈیزائن کیا گیا ہے جبکہ یہ بلیوٹوتھ ، ایکٹیو نوائز کینسلنشن اور کورٹانا پر 15 گھنٹے تک کام کریں گے۔

بلیوٹوتھ بند کرکے وائر موڈ آف اور نوائز کینسلشن ایکٹیو کرنے پر ان کی زندگہ 50 گھنٹے ہوگی، جبکہ یو ایس بی سی پورٹ چارجنگ کے لیے دی گئی ہے۔

کمپنی کے مطابق یہ ہیڈفون 2 گھنٹے سے بھی کم وقت پر مکمل چارج ہوجائیں گے۔

کیمیا کا نوبل انعام، فرانسس ہیملٹن، جارج اسمتھ اور سر گریگوری ونٹر کے نام

مائیکرو سافٹ نے اپنے سرفیس سیریز کی نئی ڈیوائسز کرادی ہیں اور پہلی بار اس کمپنی نے نوائز کینسلنگ ہیڈفونز بھی صارفین کے لیے پیش کردیئے ہیں۔

کمپنی کی جانب سے گزشتہ شب نیویارک میں ایک ایونٹ کے دوران سرفیس پرو 6 ٹیبلیٹ، سروفیس لیپ ٹاپ 2، سرفیس اسٹوڈیو 2 (ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر) اور ایک سرفیس ہیڈفون متعارف کرایا، جبکہ ونڈوز 10 اور آفس 365 کے بھی متعدد نئے فیچرز کا اعلان کیا۔

مائیکروسافٹ کے چیف پراڈکٹ آفیسر پانوس پنائے کا کہنا تھا کہ سرفیس پرو 6 گزشتہ ماڈل کے مقابلے میں 67 فیصد زیادہ طاقتور ہے اور اس کی قیمت 899 ڈالرز سے شروع ہوگی۔

فرفیس لیپ ٹاپ 2 کی قیمت 999 ڈالرز سے شروع ہوگی اور یہ دونوں ڈیوائسز 16 اکتوبر سے مختلف ممالک میں دستیاب ہوں گی۔

دونوں ڈیوائسز میں چند فیچرز اپ ڈیٹ اور نئے رنگوں کا اضافہ کیا گیا ہے، تاہم کوئی بڑا ری ڈیزائن یا یو ایس بی سی پورٹ کے اضافے کے خواہشمند افراد کو 2019 کا انتظار کرنا ہوگا۔

سرفیس پرو سکس میں ایٹ جنریشن انٹیل سی پی یو، 12.3 انچ ڈسپلے، ساڑھے 13 گھنٹے بیٹری لائف، ایس ایس ڈی کارڈ سے اسٹوریج کو ایک ٹی بی تک بڑھانے کی صلاحیت اور پہلی بار بلیک رنگ میں دستیابی جیسے فیچرز دیئے گئے ہیں۔

سرفیس لیپ ٹاپ 2 میں ایٹ جنریشن انٹیل سی پی یو، 13.5 انچ ٹچ ڈسپلے، گزشتہ ماڈل کے مقابلے میں 85 فیصد تیز اور انسٹنٹ آن اور ونڈوز ہیلو سپورٹ دی گئی ہے۔

مائیکرو سافٹ کا آل ان ون ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر سرفیس اسٹوڈیو 2 کی قیمت ساڑھے 3 ہزار ڈالرز سے شروع ہوگی تاہم اس کی دستیابی کی تاریخ کا فی الحال اعلان نہیں کیا گیا۔

اس میں 28 انچ کا ٹچ ڈسپلے، 2 ٹی بی ایس ایس ڈی، سیون جنریشن انٹیل سی پی یو، ڈی سی آئی، پی تھری، آکسائیڈ ٹرانسسٹر، نیکسٹ جنریشن پاسکل گرافکس، 13.5 ملین پکسلز اور ایکس باکس وائرلیس کنٹرولر کی بلٹ ان سپورٹ دی گئی ہے۔

تاہم ایونٹ میں سب سے بڑا سرپرائز کمپنی کی جانب سے پہلی بار نوائز کینسلنگ ہیڈفونز کو متعارف کرانا تھا۔

سرفیس ہیڈفون کی قیمت 350 ڈالرز رکھی گئی ہے جو کہ پہلے امریکا میں فروخت کے لیے پیش کیے جائیں گے۔

کمپنی کے مطابق یہ ہیڈفون ونڈوز 10، آئی او ایس، اینڈرائیڈ اور میک آپریٹنگ سسٹم سے مطابقت رکھتے ہیں اور جب صارف انہیں کان سے اتارے گا تو وہ فوری طور پر موسیقی کو روک دیں گے یا کالز میوٹ کردیں گے۔

ان ہیڈفونز کو اسکائپ کو ذہن میں رکھ کر ڈیزائن کیا گیا ہے جبکہ یہ بلیوٹوتھ ، ایکٹیو نوائز کینسلنشن اور کورٹانا پر 15 گھنٹے تک کام کریں گے۔

بلیوٹوتھ بند کرکے وائر موڈ آف اور نوائز کینسلشن ایکٹیو کرنے پر ان کی زندگہ 50 گھنٹے ہوگی، جبکہ یو ایس بی سی پورٹ چارجنگ کے لیے دی گئی ہے۔

کمپنی کے مطابق یہ ہیڈفون 2 گھنٹے سے بھی کم وقت پر مکمل چارج ہوجائیں گے۔

جاپان میں مزدوروں کی کمی دور کرنے کیلیے مستری روبوٹ تیار

ٹوکیو: جاپان میں کم شرح پیدائش اور مزدوروں کی شدید قلت کو دیکھتے ہوئے ایک مزدور روبوٹ تیار کرلیا گیا۔

جاپان نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ایڈوانسڈ انڈسٹریل سائنس اینڈ ٹیکنالوجی (اے آئی ایس ٹی) کے ماہرین نے بڑی مہارت سے ایک انسان نما مزدور روبوٹ تیار کیا ہے جو تعمیرات کے کام کرسکتا ہے۔ اس سے صاف ظاہر ہے کہ کم ازکم جاپان میں روبوٹ بہت تیزی سے انسانوں کی جگہ لے رہے ہیں۔ اس کی ایک سماجی وجہ یہ بھی ہے کہ جاپان میں روبوٹ بہت پسند اور قبول کیے جاتے ہیں۔

اس نئے روبوٹ کو ’ایچ آر پی فائیو پی‘ کا نام دیا گیا ہے جس میں موٹروں اور ایکچوایٹرز کو بڑھا کر انسانوں کی طرح لچک دار بنایا گیا ہے۔ اگرچہ یہ سست روی سے کام کرتا ہے لیکن اس میں غلطی کا امکان نہ ہونے کے برابر ہے لیکن وقت کے ساتھ ساتھ یہ روبوٹ تیزی سے کام کرنے کے قابل ہوگا تاہم اس سے امکان ضرور پیدا ہوا ہے کہ اگلے چند برس میں روبوٹ مستری عام ہوجائیں گے۔

روبوٹ کی ویڈیو میں اسے ایک تختہ اٹھاتے اور اسے ڈرل مشین کے ذریعے ایک مقام تک لگاتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔ اس طرح یہ بلڈنگ اور دفاتر سازی میں انسانوں کی مدد کرسکتا ہے اور آزادانہ طور پر بھی اپنا کام انجام دے سکتا ہے۔ اس سے قبل ہم کارسازی اور دیگر کارخانوں میں روبوٹس دیکھ چکے ہیں جو اسمبلی لائن پر مختلف کام انجام دیتے نظر آتے ہیں۔

دوسری جانب روبوٹک تھری ڈی پرنٹرز بھی حیرت انگیز کام کررہے ہیں جسے آٹومیشن کا ایک نیا روپ کہا جاسکتا ہے۔ تاہم اے آئی ایس ٹی نے کہا ہے کہ وہ انسانوں کی ضرورت کم سے کم کرتے ہوئے خودمختار روبوٹس سے کام کرانا چاہتے ہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ جاپان میں مزدوروں کی کمی ہے لیکن جو مزدور ہیں وہ بہت مہنگے بھی ہیں۔

اس ضمن میں امریکی کمپنی بوسٹن ڈائنامکس نے اٹلس نامی روبوٹ بنایا ہے جو بہت سے کاموں کے ساتھ ساتھ پیٹھ کے بل پلٹ بھی سکتا ہے تاہم اے آئی ایس ٹی کا کہنا ہے کہ وہ روبوٹ سے کم درجے کے کام لینا چاہتے ہیں۔

دنیا میں پہلی بار 5 جی ہوم انٹرنیٹ سروس متعارف

موبائل فونز نیٹ ورک پر جدید ترین فائیو جی ٹیکنالوجی کی تیاری پر کافی عرصے سے کام کیا جارہا ہے اور اکثر ماہرین اسے طویل عرصے تک عام صارفین تک پہنچتے نہیں دیکھ رہے، مگر ایک ملک میں کم ازکم گھروں میں فائیو جی براڈ بینڈ سروس متعارف کرا دی گئی ہے۔

امریکا میں ویریزون نامی کمپنی نے گزشتہ سال نومبر میں اعلان کیا تھا کہ وہ فائیو جی ہوم انٹرنیٹ سروس ایک سال کے اندر متعارف کرائے گی اور اب اس پر علمدرآمد شروع ہوگیا ہے۔

اس کمپنی نے 4 شہروں ہوسٹن، انڈیانا پولس، لاس اینجلس اور سکرامنٹو کے رہائشیوں کے لیے فائیو جی سروس کی فراہمی کا آغاز یکم اکتوبر سے شروع کردیا ہے۔

صارفین اب 300 ایم بی پی ایس کی اوسط رفتار تک وائی فائی اسپیڈ تک رسائی حاصل کرسکیں گے جبکہ زیادہ سے زیادہ رفتار 1 جی بی پی ایس تک ہوگی۔

خیال رہے کہ فورجی وائی فائی کی عالمی سطح پر اوسط رفتار 14.03 ایم بی پی ایس ہے جبکہ پاکستان میں یہ اسپیڈ اوسطاً 13.56 ایم بی پی ایس ہے۔

فی الحال یہ سروس موبائل فونز کے لیے دستیاب نہیں کیونکہ اس ٹیکنالوجی پر کام کرنے والے اسمارٹ فونز اب تک سامنے ہی نہیں آئے، جوکہ 2019 میں کسی وقت متعارف کرائے جائیں گے۔

فائیو جی کیا ہے؟

شٹر اسٹاک فوٹو
شٹر اسٹاک فوٹو

آج کل وائرلیس فور جی ایل ٹی ای ٹیکنالوجی کو اکثر موبائل نیٹ ورکس پر استعمال کیا جارہا ہے، جو کہ انتہائی تیز وائرلیس کمیونیکشن ڈیٹا ٹرانسمنٹ کرنے کے لیے فراہم کرتے ہیں۔ اس کے مقابلے میں فائیو جی نیٹ ورک کو گھروں پر انٹرنیٹ کی فراہمی کے لیے استعمال کیا جاسکے گا جبکہ اس کی رفتار آنے والے دور کی ٹیکنالوجیز کے لیے بھی موزوں ہوگی، جیسے ڈرائیور لیس کار سسٹم میں ڈیٹا کے لیے درکار اسپیڈ وغیرہ۔

پاکستان میں کب تک آنے کی امید ہے؟

شٹر اسٹاک فوٹو
شٹر اسٹاک فوٹو

پاکستان میں 2019 میں جدید ترین 5 جی براڈ بینڈ ٹیکنالوجی متعارف کرانے کا عندیہ دیا گیا ہے۔ یہ عندیہ وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے گزشتہ ماہ اے پی پی کو دیئے گئے ایک انٹرویو کے دوران دیا۔ انہوں نے اشارہ دیا کہ فائیو جی سروس کو پاکستان میں اگلے سال متعارف کرایا جاسکتا ہے جس سے غیرملکی سرمایہ کاری بڑھانے میں مدد ملے گی۔

چینی لیزر سیٹلائٹ جو آبدوزوں کیلئے بھی ’موت کا پروانہ‘ بن سکتا ہے

بیجنگ: چینی ماہرین ایک ایسے سیٹلائٹ پر کام کررہے ہیں جو لیزر استعمال کرتے ہوئے سمندری سطح کے نیچے چھپی دشمن کی آبدوزوں کا سراغ لگا سکتا ہے۔

اس منصوبے کو پروجیکٹ گوان لین کا نام دیا گیا ہے۔ چینی خبررساں اداروں کے مطابق مجوزہ سیٹلائٹ طاقتور لیزر سے مسلح ہوگا اور اسے خصوصاً پانی سے 500 میٹر گہرائی میں آبدوزوں کی شناخت کےلیے تیار کیا گیا ہے۔ دوسری جانب سیٹلائٹ کو سمندری تحقیق کےلیے بھی استعمال کیا جاسکے گا۔

لفظ گوان لین کا مطلب ’بڑی لہروں پر نظر رکھنے والا‘ کے ہیں۔ اس ضمن میں ایک تجربہ گاہ بھی قائم کی گئی ہے۔ تاہم ویب سائٹ کے مطابق، منصوبے کا مقصد چینی سمندروں کی نگرانی ہے۔ کہا جارہا ہے کہ سیٹلائٹ کی تیاری میں 20 سے زائد ادارے دن رات مصروف ہیں۔

ایک سائنسداں ’سونگ ژیاقوانگ‘ کے مطابق سیٹلائٹ سے سمندروں کو ذیادہ شفافیت سے دیکھا جاسکے گا اور اس طرح ہر شے تبدیلی سے دوچار ہوگی۔ اگرچہ عام روشنی سمندر کی 200 میٹر گہرائی تک پہنچتی ہے لیکن لیزر کی طاقت اس کے بہت اندر تک دیکھ سکتی ہے۔

لیزر آبدوز سے ٹکرائے گی اور واپس سیٹلائٹ تک آئے گی ۔ اس کے بعد ڈیٹا کو آبدوز کی تھری ڈی شکل، جسامت، رفتار اور دیگر معلومات کو افشا کرنے کےلیے استعمال کیا جاسکے گا۔ اس ضمن میں روس اور امریکہ نے بھی بہت کام کیا ہے۔ امریکی ادارے ڈارپا نے اس ضمن میں ایک آلہ بنایا تھا جو سمندری پانی کی 200 میٹر گہرائی تک دیکھ سکتا تھا۔

امریکی اور خود چینی ماہرین کا بھی خیال ہے کہ لیزر کے ذریعے 500 میٹر گہرائی تک کسی آبدوز کو دیکھنا ممکن نہیں لیکن بعض چینی ماہرین نے کہا ہے کہ اس کےلیے ایک بالکل نئی ٹیکنالوجی وضع کی گئی ہے جس کی کوئی خاص تفصیل جاری نہیں کی گئی۔

خیال ہے کہ سیٹلائٹ پر مختلف رنگوں اور شدت کی لیزر ہوگی اور ایک مائیکروویو ریڈار بھی نصب ہوگا۔ یہ سب مل کر اس ٹیکنالوجی کو قابلِ اعتبار بنائیں گے اور سمندری ٹارگٹ کا بہتر اندازہ لگانا ممکن ہوسکے گا۔

مائیکرو سافٹ کا نیا لیپ ٹاپ اور ٹیبلیٹ متعارف کروانے کا امکان

مائیکرو سافٹ کی جانب سے ایک نیا ٹیبلیٹ اور لیپ ٹاپ 2 اکتوبر (منگل) کو متعارف کرایا جارہا ہے۔

نیویارک میں ایک ایونٹ کے دوران سرفیس لیپ ٹاپ 2 اور سرفیس پرو سکس ٹو ان ون ٹیبلیٹ متعارف کرائے جانے کا امکان ہے۔

اور مختلف لیکس کے مطابق یہ دونوں جدید یو ایس بی سی پورٹ سے محروم ہوں گے۔

جرمن سائٹ ون فیوچر نے دعویٰ کیا ہے کہ سرفیس لیپ ٹاپ 2 یا سرفیس پرو سکس دونوں میں یہ پورٹس نہیں دی جائیں گی۔

اس کے برعکس مائیکرو سافٹ منی ڈسپلے پورٹ اور سرفیس کنکٹر کومبو کو ڈیوائس کو ڈسپلے سے کنکٹ یا چارجنگ کے لیے برقرار رکھے گی۔

اگر یہ رپورٹ درست ثابت ہوتی ہے تو یہ کافی حیران کن اقدام ہوگا کیونکہ توقع کی جارہی تھی کہ مائیکرو سافٹ کی جانب سے یو ایس بی ٹائپ سی پورٹ کو نئی ڈیوائسز میں متعارف کرایا جائے گا۔

سرفیس لیپ ٹاپ 2 میں 8 جی بی ریم، انٹیل آئی فائی کور پراسیسر اور 128 جی بی اسٹوریج دیئے جانے کا امکان ہے جو صارفین کے لیے اچھی خبر ہے کیونکہ اس سے قبل سرفیس لیپ ٹاپ میں محض 4 جی بی ریم ہی دی گئی تھی۔

دوسری جانب سرفیس پرو سکس کا بیس ماڈل 4 جی بی ریم اور انٹیل کور ایم تھری پراسیسر سے لیس ہوگا۔

ان دونوں ڈیوائسز کا اس بار سیاہ رنگ میں بھی دستیاب ہونے کا امکان ہے۔

ایپل کے مہنگے ترین آئی فونز میں بڑا مسئلہ سامنے آگیا

آئی فون ایکس ایس (10 ایس) اور آئی فون ایکس ایس میکس (10 ایس میکس) ایپل کے ٹیکنالوجی کے لحاط سے جدید ترین اور مہنگے ترین فونز ہیں مگر انہیں خریدنے والوں کو اس وقت ایک بڑی مشکل کا سامنا ہے۔

درحقیقت ایپل کے متعدد نئے آئی فونز نے چارج ہونے سے ‘انکار’ کردیا۔

یہ وہ بات ہے جس کی شکایت متعدد صارفین نے ایپل سپورٹ کمیونٹیز، ریڈیٹ، میک ریومرز، ٹوئٹر اور یوٹیوب میں کی ہے جبکہ یوٹیوب کے مقبول ترین ٹیک چینیل نے دکھایا ہے کہ یہ مسئلہ کیسے پھیل رہا ہے۔

صارفین کا کہنا ہے کہ ان کے آئی فونز اس وقت تک چارج نہیں ہوتے جب تک اسکرین ایکٹیو نہ ہو، اس کے لیے انہیں لائٹننگ کیبل نکال کر فون کو دوبارہ چارجنگ کے لیے ری پلگ کرنا پڑتا ہے۔

آسان الفاظ میں آئی فون ایکس ایس یا آئی فون ایکس ایس میکس اس وقتچارج نہیں ہوتے جب وہ وال چارجر پر اسٹینڈبائی موڈ پر چارج ہورہے ہوں، ان میں بیشتر فونز منجمند ہوجاتے ہیں اور دوبارہ ری سیٹ کرنا پڑتے ہیں۔

یوٹیوب چینیل میں ایک ویڈیو میں 8 آئی فون ایکس ایس اور آئی فون ایکس ایس میکس ماڈلز کو ایپل کے اسٹینڈرڈ چارجر سے کنکٹ کیا گیا، جن میں سے صرف 2 ہی درست طریقے سے چارج ہوسکے۔

دیگر فونز اس وقت تک چارج نہیں ہوئے جب تک اسکرین کو دوبارہ ایکٹیو نہیں کیا گیا، جبکہ ایک فون نے کسی بھی صورت میں چارج ہونے سے انکار کردیا اور کئی منٹ تک فریز رہا۔

ایپل لاکھوں آئی فونز فروخت کرتی ہے تو اس مسئلے کو کتنے صارفین نے متاثر کیا ہے، یہ لگ بھگ ناممکن ہے مگر اب تک سیکڑوں شکایات ضرور سامنے آچکی ہیں۔

اس کا حل بھی کچھ زیادہ خاص نہیں، ایک تو اوپر درج کیا جاچکا ہے (جس سے عندیہ ملتا ہے کہ لائٹننگ پورٹ ہارڈوئیر میں خامی ہے)، جبکہ ایک متبادل وائرلیس چارجر کا استعمال ہے۔

مگر یہ بھی مثالی حل نہیں کیونکہ وائرلیس چارجنگ کے لیے وقت کافی درکار ہوتا ہے جبکہ بیٹری لائف جلد ختم ہونے لگتی ہے۔

ایپل سپورٹ کمیونیٹیز کے مطابق ایپل ٹیک سپورٹ اس مسئلے سے آگاہ ہے مگر کمپنی کی جانب سے فی الحال کوئی آفیشل بیان سامنے نہیں آیا ہے۔

گوگل سرچ میں چھپی یہ دلچسپ گیم کھیلی آپ نے؟

اگر تو انٹرنیٹ پر سرچنگ کے دوران بیزاری محسوس ہورہی ہے تو گوگل سرچ میں چھپی گیم آپ کو ضرور پسند آئے گی۔

گوگل اکثر اپنے سرچ انجن میں دلچسپ فیچرز چھپا دیتا ہے اور ایسا برسوں سے ہورہا ہے۔

اور ایسی ہی ایک ٹیکسٹ بیسڈ ایڈونچر گیم آپ اپنے براﺅزر پر کھیل سکتے ہیں۔

ریڈیٹ کے ایک صارف نے اس گیم کو دریافت کیا جو کہ ڈویلپر کنسول میں چھپی ہوئی ہے۔

اس مقصد کے لیے گوگل پر text adventure لکھ کر سرچ کریں اور اس کے بعد Control+Shift+J کلک کریں تو یہ گیم اوپن ہوجائے گی۔

یہ گیم کچھ ایسی ہوگی — اسکرین شاٹ
یہ گیم کچھ ایسی ہوگی — اسکرین شاٹ

یہ گیم کروم، فائرفوکس اور مائیکرو سافٹ ایج پر کھیلی جاسکتی ہے۔

ڈویلپر کنسول میں آپ سے سب سے پہلے پوچھا جائے گا کہ کیا یہ گیم کھیلنا پسند کریں گے، جس پر yes ٹائپ کرکے انٹر بٹن دبانا ہوگا۔

اس کے بعد گیم آپ کو بتائے کہ ارگرد کیا ہورہا ہے اور اشیاءاور لوگوں سے انٹرایکٹ اور کمروں کے درمیان حرکت کا کہے گی۔

اس گیم کے آغاز پر گوگل لوگو کا G اوپر نظر آئے گا اور اس گیم کو مکمل ہونے میں 30 سے 60 منٹ درکار ہوں گے۔

Google Analytics Alternative