کھیل

ایشین چیمئنز ٹرافی میں پاکستان ہاکی ٹیم کی شرکت کے امکانات روشن

لاہور: ایشین چیمئنز ٹرافی میں پاکستان ہاکی ٹیم کی عدم شرکت کا خطرہ ٹل گیا، اورپی ایچ ایف کی طرف سے مسقط میں ہوٹل بک کروا دیا گیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق آئندہ ماہ اومان کے دارالحکومت مسقط میں شیڈول ایشین چیمپئنز ٹرافی میں پاکستان ہاکی ٹیم کی شرکت کا دروازہ کھل گیا ہے، مالی مشکلات کا شکار پی ایچ ایف نے ایشیائی ایونٹ میں شرکت کے لئے قومی ہاکی ٹیم کے لئے مسقط میں ہوٹل بک کروادیا ہے۔

ذرائع کے مطابق پاکستان ہاکی فیڈریشن نے ہوٹل بکنگ کی ڈیڈ لائن کے آخری روز مسقط میں ہوٹل کروانے کے بعد ایشین ہاکی فیڈریشن کو بھی قومی ٹیم کی ایشین چیمپئنز ٹرافی میں شرکت کی تصدیق کردی ہے۔ ذرائع کے مطابق پاکستان کی 18 رکنی ٹیم ایشین چیمپئنز ٹرافی میں شرکت کرے گی۔ قومی سکواڈ میں سینئر کے ساتھ جونیئر کھلاڑیوں کو بھی صلاحیتوں کے اظہار کا موقع فراہم کیا جائے گا۔

سیکرٹری پی ایچ ایف شہباز احمد  بتایا کہ ایشین ٹرافی کے لئے نہ صرف ہوٹل بک کروا لیا ہے بلکہ کیمپ کے لئے کھلاڑیوں کا اعلان بھی بدھ تک کر دیا جائے گا۔

پاک، بھارت ٹاکرا اعصاب اور کوالٹی کا امتحان قرار

کراچی:  ایشیا کپ میں شائقین کرکٹ اور ماہرین کھیل کے بے تابی سے روایتی حریفوں پاکستان اور بھارت کے درمیان بدھ  19 ستمبر کو شیڈول مقابلے کا انتظار ہے، سابق کپتان رمیز راجہ کا کہنا ہے کہ یہ ٹاکرے اعصاب اور کوالٹی کا امتحان ہوتے ہیں۔

ہیڈ کوچ مکی آرتھر کے مطابق دباؤ میں پرفارم کرنے سے پلیئرز کی صلاحیتوں کا بھی اندازہ ہوجاتا ہے اور پلیئرز کو ان میچز سے بہت کچھ سیکھنے کو ملتا ہے ، ایشیا کپ میں پاکستان اور بھارت کی ٹیموں کا دو بار سامنا ہونے والا ہے اور اگر یہ دونوں ٹیمیں فائنل میں پہنچ گئیں تو پھر تیسرا میچ بھی شائقین کا منتظر ہوگا، پاک بھارت مقابلے کی شائقین کے نقطہ نظر سے دلچسپی اپنی جگہ لیکن میدان میں اترنے والے کھلاڑیوں پر ان میچوں میں کتنا دباؤ ہوتا ہے۔

اس کا اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے تاہم پاکستانی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کے خیال میں یہ پریشر میچز نوجوان کرکٹرز کو بہت کچھ سکھاتے ہیں، آرتھر کا کہنا ہے کہ یہ مواقع ان نوجوان کرکٹرز کو اپنی صلاحیتوں کے اظہار کا ذریعہ اور تجربہ فراہم کرتے ہیں ، آپ کو یہ بھی اندازہ ہوجاتا ہے کہ سخت دباؤ میں کونسے کرکٹرز مقابلہ کرسکتے ہیں اور کونسے کرکٹرز دباؤ برداشت نہیں کرسکتے،دوسری جانب سابق قومی کپتان رمیز راجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان میچزمیں کرکٹرز کے اعصاب اور کوالٹی کا امتحان ہوتا ہے۔

یوتھ اولمپکس؛ پاکستان کا 7رکنی دستہ 2 اکتوبر کو روانہ ہوگا

بیونس آئرس:ارجنٹائن کے شہر بیونس آئرس میں 6 اکتوبر سے یوتھ اولمپکس کامیلہ سج رہا ہے جس میں پاکستان شوٹنگ، ریسلنگ اور ویٹ لیفیٹنگ میں حصہ لے رہا ہے۔ تین کھلاڑیوں سمیت سات رکنی دستہ ان مقابلوں میں شرکت کرے گا۔

ارجنٹائن کے شہر بیونس آئرس میں 6 اکتوبر سے یوتھ اولمپکس کامیلہ سج رہا ہے، پروگرام کے مطابق تین کھلاڑیوں، تین آفیشلز (کوچز) اور یوتھ ایمبسیڈر پر مشتمل پاکستان کا 7 رکنی دستہ ایونٹ میں شرکت کے لئے 2 اکتوبر کو روانہ ہوگا۔  شوٹنگ میں نوبییرا بابر کا انتخاب ہوا ہے، جو ائر پسٹل فورٹی کیٹگری میں اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کریں گی۔ گزشتہ سال ایشین چیمپئن شپ میں نوبیرا نے چوتھی پوزیشن حاصل کی تھی۔ ان کے کوچ خالد بن انوار کو یقین ہے کہ نوبیرا بہت باصلاحیت ہیں اور یوتھ اولمپکس میں میڈل جیت سکتی ہیں۔

ویٹ لیفیٹنگ کی 85 کلو گرام کیٹگری میں فرحان امجد سے میڈل کی امیدیں وابستہ کی گئی ہیں۔ اور ریسلنگ میں عنایت اللہ 65 کلو گرام ایونٹ میں ملک کے لیے میڈل لانے کی کوشش کریں گے۔ ان تینوں نوجوان کھلاڑیوں کا انتخاب ان گیمز کے لیے مقرر کردہ کوالیفیکیشن پوائنٹس پر ہوا ہے، اور ان کا اعلان آئی او سی نے خود کیا تھا۔

18 اکتوبر تک جاری رہنے والے  یوتھ اولمپکس میں انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی نے بیس بال پلئیر سید عاقب شیرازی کو یوتھ چینج میکر (یوتھ ایمبیسیڈر) مقرر کیا ہے۔  قومی دستے کو ائر ٹکٹ اور رہائش آرگنائزنگ کمیٹی فراہم کررہی ہے جب کہ کیمپ، یونیفارم کے اخراجات اور ڈیلی الاؤنس پاکستان اسپورٹس بورڈ دے رہا ہے۔

یوتھ اولمپکس میں پاکستانی دستے کی شرکت کے حوالے سے اولمپک ہاؤس لاہور میں ہونے والے اس اجلاس میں تمام انتظامات کو حتمی شکل دی گئی۔ ان گیمز میں مجموعی طور پر 37 کھیلوں میں 165 ممالک شریک ہیں۔

ایشیا کپ: پاکستان کے خلاف ہانگ کانگ کی ٹیم 116 رنز پر ڈھیر

ایشیا کپ کے دوسرے میچ میں ہانگ کانگ کی ناتجربہ کار ٹیم پاکستان کے خلاف پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے صرف 116 رنز پر ڈھیر ہوئی اور پاکستان کو ایک آسان ہدف دے دیا۔

دبئی انٹرنیشنل کرکٹ اسٹیڈیم میں کھیلے جارہے ایشیا کپ کے دوسرے میچ میں ہانگ کانگ کے کپتان انوشومن راتھ نے ٹاس جیت کر پہلے خود بیٹنگ کا فیصلہ کیا اور مطلوبہ نتائج حاصل کرنے میں ناکام رہے۔

ہانگ کانگ کے اوپنر نزاکت خان نے جارحانہ آغاز کیا اور کپتان کے ساتھ مل کر پہلی وکٹ میں 17 رنز بنائے تاہم انہیں شاداب خان نے رن آوٗٹ کرکے ان کے عزائم کو ناکام کردیا۔

انوشومن راتھ نے بابرحیات کے ساتھ مل کر دوسری وکٹ میں ہانگ کانگ کے اسکور کو 32 رنز تک پہنچایا اور 19 رنز کی انفرادی اننگز کھیل کر فہیم اشرف کی گیند پر سرفراز احمد کو کیچ دےبیٹھے جس کے بعد کارٹر 2 اور بابر حیات بھی 7 رنز بنا کر آوٗٹ ہوئے۔

کنچت شاہ نے ہانگ کانگ کی ٹیم کو سنبھالنے کی کوشش کی اور اعزاز خان کے ساتھ مل کر چھٹی وکٹ کی شراکت میں اسکور کو 97 رنز تک پہنچا دیا تاہم اعزاز خان نے سب سے زیادہ 27 رنز بنا کر ان کا ساتھ چھوڑ دیا،فوری بعد اسکاٹ مکینزی اور تنویر افضل صفر پر پویلین لوٹ گئے جنہیں عثمان خان نے آوٗٹ کیا۔

کنچت شاہ جب 26 رنز بنا کر آوٗٹ ہوئے تو ہانگ کانگ کا اسکور 99 رنز تھا تاہم احسان نواز اور احمد ندیم نے مجموعے کو 116 رنز تک پہنچایا۔

کانگ کانگ کی جانب سے آخری آؤٹ ہونے والے بلے باز احسان نواز تھے جو 9 رنز بنا کر رن آوٗٹ ہوئے جبکہ احمد ندیم نے بھی آؤٹ ہوئے بغیر 9 رنز بنائے۔

پاکستان کی جانب سے عثمان خان نے سب سے زیادہ 3 وکٹیں حاصل کیں، حسن علی اور شاداب خان نے 2 اور فہیم اشرف نے ایک کھلاڑی کو آوٗٹ کیا۔

قبل ازیں ٹاس جیتنے کے بعد ہانگ کانگ کے کپتان انوشمن راتھ کا کہنا تھا کہ کل کا میچ دیکھا تھا، اور آج اسی پچ پر بہتر کھیل پیش کرنے کی کوشش کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حال ہی میں اپنی ایک روزہ کرکٹ کی بین الاقوامی حیثیت کھونے کے بعد یہاں تک پہنچنا ہمارا حق تھا، ہم نے ماضی میں بھی بڑی ٹیموں کو شکست دی ہے اور امید ہے کہ ہم یہ دوبارہ کر سکتے ہیں۔

پاکستان کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ وہ بھی اس وکٹ پر پہلے بیٹنگ کرنے کے خواہشمند تھے، تاہم اب ہانگ کانگ کو کم سے کم اسکور پر آؤٹ کرنے کی کوشش کی جائے گی

پاکستانی ٹیم میں سرفراز احمد (کپتان)، امام الحق، بابر اعظم، فخرزمان، شعیب ملک، آصف علی، شاداب خان، فہیم اشرف، محمد عامر، حسن علی اور عثمان خان شنواری شامل ہیں۔

ہانگ کانگ کی ٹیم کپتان انشومن راتھ، بابر حیات، نزاکت خان، تنویر افضل، اعزاز خان، کرسٹوفر کارٹر، ندیم احمد، اسکاٹ مکینزی، احسان خان احسان نواز اور کنچت شاہ پر مشتمل ہے۔

ٹیم کی تیاریوں کے حوالے سے متحدہ عرب امارات روانگی سے قبل کپتان سرفراز احمد نے دعویٰ کیا تھا کہ ٹیم کی تیاری مکمل ہے اور ایونٹ میں بھرپور کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کی کوشش کریں گے۔

سرفراز احمد نے بتایا تھا کہ متحدہ عرب امارات میں ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کو ترجیح دی جائے گی، اور زیادہ سے زیادہ مجموعہ بنانے کی کوشش کی جائے گی جبکہ پہلے باؤلنگ کی صورت میں حریف ٹیم کو کم سے کم اسکور پر آؤٹ کرنے کی کوشش کریں گے.

ادھر ہانگ کانگ کی ٹیم بھی باصلاحیت کھلاڑیوں پر مشتمل ہے اور اس نے کوالیفائنگ ٹورنامنٹ میں متحدہ عرب امارات کو اعصاب شکن مقابلے میں شکست دے کر ایشیا کپ میں شامل ہونے کا اعزاز حاصل کیا تھا.

یاد رہے کہ پاکستان اور ہانگ کانگ ایک روزہ کرکٹ میں اس سے قبل 2 مرتبہ مدمقابل آچکے ہیں، دونوں ہی مرتبہ گرین شرٹس کامیاب ہوئے تھے۔

انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے ہانگ کانگ کے ایشیا کپ میں میچز کو بین الاقوامی میچز کا درجہ دیا ہوا ہے۔

خیال رہے کہ ایشیا کپ کا آغاز گزشتہ روز بنگلہ دیش اور سری لنکا کے درمیان میچ سے ہوا جہاں بنگلہ دیش نے مشفق الرحیم کے شاندار 144 رنز کی بدولت سری لنکا کو 137 رنز سے شکست دے دی تھی.

پاکستان، ہانگ کانگ اور بھارت ایک ہی گروپ میں ہیں، جبکہ گرین شرٹس ایشیا کپ کے ابتدائی مرحلے میں اپنا دوسرا میچ بھارت کے خلاف 19 ستمبر کو کھیلیں گے.

ایشیا کپ میں بھارت کی من مانی

دبئی: ایشیا کپ کرکٹ ٹورنامنٹ میں بھارت نے اپنا اثرورسوخ استعمال کرتے ہوئے سپر 4 مرحلے میں پاکستان کے ساتھ اپنے میچ کے سوا گرین شرٹ کے دیگر میچز ابوظہبی میں طے کردیئے۔

ٹورنامنٹ کے لیے گروپ ”اے“ میں پاکستان، بھارت اور کوالیفائر ہانگ کانگ کو رکھا گیا ہے،گروپ ”بی“ میں بنگلہ دیش، سری لنکا اور افغانستان کی ٹیمیں شامل ہیں، دونوں گروپس میں سے سرفہرست 2،2ٹیموں کو سپر فور مرحلے میں جگہ ملے گی جہاں ہر ٹیم کو دیگر 3سے ایک ایک بار مقابل ہونا ہے۔

ٹاپ 2سائیڈز فائنل کھیلیں گی، سپر 4 مرحلے میں کس ٹیم کو پہلے کس کے ساتھ اور کہاں کھیلنا ہے اس کا فیصلہ گروپ اسٹیج کے اختتام پر پوائنٹس ٹیبل کی بنیاد پر ہوگا۔  سپر 4 مرحلے میں 21، 23اور 26ستمبر کو بیک وقت 2،2میچز کھیلے جائیں گے، ایک مقابلہ دبئی تو دوسرا ابوظہبی میں جاری رہے گا۔

ذرائع کے مطابق بھارتی کرکٹ بورڈ نے اپنا اثرورسوخ استعمال کرتے ہوئے سپر 4 مرحلے میں پاکستان کے اپنے سوا دیگر میچز ابوظہبی میں کروانے کا فیصلہ کرلیا ہے، پوائنٹس پوزیشن کچھ بھی ہو، گرین شرٹس کو اسی وینیو پر کھیلنا پڑے گا۔

ذرائع کے مطابق سیکیورٹی معاملات کی وجہ سے ایشیا کپ نیوٹرل وینیو پر کروانے والے بھارتی بورڈ کا کہنا ہے کہ بطور میزبان انہیں میچز کے وینیوز کا فیصلہ کرنے کا حق حاصل ہے۔

بابر اعظم نیچرل کھیل پیش کرنے کے لیے پراعتماد

دبئی:بابر اعظم بھارت کیخلاف میچ میں نیچرل کھیل کا مظاہرہ کرنے کے خواہاں ہیں۔

دبئی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے بابر اعظم نے کہا ہے کہ ویرات کوہلی ایک میچ ونر بیٹسمین ہیں، بھارتی ٹیم میں ان کی عدم موجودگی کا فائدہ اٹھائیں گے،روایتی حریف کیخلاف میچ کا کوئی اضافی دبائو لینے کے بجائے اپنے نیچرل کھیل کا مظاہرہ کریں گے، نوجوان بیٹسمین نے کہا کہ روایتی حریف کیخلاف ہمارا میچ انتہائی دلچسپ ہوتا ہے، ویرات کوہلی کی عدم موجودگی میں ہمیں روہت شرما اور مہندرا سنگھ دھونی پر قابو پانا ہوگا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ایشیا کپ میں ممکنہ طور پر بھارت کیساتھ فائنل سمیت 3میچ ہوسکتے ہیں، دونوں ملکوں میں باہمی سیریز تو ہونہیں رہی،اس صورتحال میں روایتی حریفوں کے مابین زیادہ مقابلے ایک بڑا موقع اور چیلنج ہوں گے، شائقین اور کھلاڑی سب ان میچز سے لطف اندوز ہوں گے۔

بابر اعظم نے کہا کہ فی الحال پوری توجہ ہانگ کانگ کیخلاف  میچ پر مرکوز ہے،ایونٹ میں شریک تمام ٹیمیں مضبوط ہیں، پہلے میچ میں بھی کامیابی کیلیے بہتر کرکٹ کھیلنا ہوگی، گزشتہ میچز میں ٹاپ آرڈر اچھا پرفارم کرتی رہی ہے لیکن مڈل آرڈر کو بھی جب موقع ملا، اچھی کارکردگی دکھائی،آصف علی اور شعیب ملک نے عمدہ اننگز کھیلی ہیں، ڈریسنگ روم کا ماحول شاندار ہے،نوجوان کھلاڑیوں میں بڑی ہم آہنگی ہے،سب ایک دوسرے کو اعتماد دیتے ہیں،سینئرز سرفراز احمد، شعیب ملک اور محمد حفیظ بھی بھرپور حوصلہ افزائی کرتے ہیں، ایشیا کپ میں عمدہ کارکردگی دکھائیں گے۔

بیٹسمین نے کہا کہ یواے ای میں میری کارکردگی اچھی رہی ہے،اسی اعتماد کو لیکر میدان میں اترتا ہوں،اس بار بھی کریز پر زیادہ سے زیادہ قیام کرتے ہوئے ٹیم کیلیے رنز بنانے کی کوشش کروں گا۔

 

آسٹریلوی کرکٹر نے مجھے ’ اسامہ ‘ کہہ کر پکارا، معین علی

لندن: انگلش آل رائونڈر معین علی کہنا ہے کہ 2015 کی ایشز سیریز میں ایک کینگرو کرکٹر نے انھیں ’اسامہ‘ کہہ کر پکارا۔

انگلش اسپننگ آل رائونڈر معین علی نے اپنی آٹوبائیوگرافی میں انکشاف کیا ہے کہ 2015 کی ایشز سیریز کے کارڈف میں کھیلے گئے میچ میں ایک آسٹریلوی کھلاڑی نے انھیں’اسامہ‘ کہہ کر پکارا تھا۔

اس مقابلے میں معین نے پہلی اننگز میں 77 رنز بنانے کے ساتھ پانچ وکٹیں بھی لی تھیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ذاتی طور پر یہ میچ میرے لیے پرفارمنس کے لحاظ تو کافی اچھا رہا مگر اس دوران فیلڈ میں ایک آسٹریلوی کھلاڑی نے مجھے اسامہ کہہ کر بلایا جس پر مجھے شدید غصہ آیا، مجھے یقین نہیں آیا کہ کوئی مجھے اس طرح بھی کہہ کر بلاسکتا ہے ،میں کبھی بھی کرکٹ فیلڈ میں اتنے غصے میں نہیں آیا جتنا شدید غصہ مجھے تب آیا تھا۔

معین علی کہتے ہیں کہ انھوں نے اس واقعے کے بارے میں کوچ ٹریوربیلس کو بھی آگاہ کیا تھا جوکہ خود ایک آسٹریلوی ہیں اور انھوں نے اس وقت کے کینگرو کوچ ڈیرن لی مین کے سامنے بھی یہ واقعہ اٹھایا، جس پر مذکورہ پلیئر سے جواب طلبی کی گئی مگر اس نے صاف انکار کردیا بلکہ اس کا کہنا تھا کہ اس نے فقط پارٹ ٹائمر کہہ کر بلایا ہے۔ معین علی کہتے ہیں کہ دونوں الفاظ میں زمین آسمان کا فرق اور انھیں اسے سننے میں کوئی غلطی نہیں ہوئی تھی۔

ادھر انگلش آل رائونڈر کا یہ انکشاف سامنے آنے کے بعد کرکٹ آسٹریلیا نے معاملے کی تحقیقات کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ایسی چیزیں کسی بھی صورت قبول نہیں کی جاسکتیں جبکہ خود انگلش بورڈ کا کہنا تھا کہ وہ فوری طور پر اس چیز پر کوئی بھی کمنٹس نہیں کرنا چاہتے۔

ایشیا کپ؛ بنگلا دیش نے سری لنکا کو 137 رنز سے شکست دے دی

دبئی: ایشیا کپ کے پہلے میچ میں بنگلا دیش نے سری لنکا کو 137 رنز سے شکست دے دی۔ 

ایشیا کپ کا میلہ دبئی میں سج گیا، پہلے ایک روزہ میچ میں بنگلا دیش کی پوری ٹیم سری لنکا کے خلاف آخری اوور میں 261 رنز پر آؤٹ ہوگئی اور فتح کے لیے سری لنکن ٹیم کو 262 رنز کا ہدف دیا۔

جواب میں سری لنکا کی جانب سے اپل تھرانگا اور کوسل مینڈس نے اننگز کا آغاز کیا لیکن مینڈس دوسرے ہی اوور میں بغیر کوئی رنز بنانے کے بعد مستفیض الرحمان کا شکار بن گئے جب کہ تھرنگا نے 27 رنز کی جارحانہ اننگز کھیلی مگر تیسرے ہی اوور میں مشرفی مرتضیٰ نے انہیں پویلین بھیج دیا۔

بنگلادیش کی طرح سری لنکا کا ٹاپ آرڈر بھی کارکردگی دکھانے میں ناکام رہا اور 38 رنز پر ہی 4 کھلاڑی پویلین واپس لوٹ گئے، کوشل پریرا 11 اور دھنانجایا ڈی سلوا بغیر کوئی رنز بنائے آؤٹ ہوئے جب کہ کپتان اینجلو میتھیوز بھی صرف 16 رنز کے مہمان ثابت ہوئے اور داسن شناکا 7 رنز ہی بناسکے جس کے بعد پوری ٹیم محض 124 رنز پر آل آؤٹ ہوگئی اور ٹیم کو بہت بڑے مارجن 137 رنز سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

قبل ازیں بنگلا دیش نے ٹاس جیت کر سری لنکا کے خلاف بیٹنگ کا فیصلہ کیا تو سری لنکا کے لاستھ مالنگا نے پہلے ہی اوور میں بنگال ٹائیگر کے دو کھلاڑیوں لٹن داس اور شکیب الحسن کو پویلین لوٹنے پر مجبور کردیا۔ بنگلا دیش کو دھچکا اس وقت لگا جب دوسرے ہی اوور میں تین کے مجموعی اسکور پر اوپننگ بلے باز گیند لگنے سے زخمی ہوگئے اور انہیں ریٹائرڈ ہرٹ ہونا پڑا۔

مشفق الرحیم نے  محمد متھن کے ساتھ مل کر 131 رنز کی اہم شراکت قائم کی، متھن 2 چھکوں اور 5 چوکوں کی مدد سے 63 رنز کی انتہائی اہم اننگز کھیل کر آؤٹ ہوئے جس کے بعد ٹیم نے تجربہ کار بلے باز محمد اللہ سے امید جوڑی کہ وہ مشفق الرحیم کے ساتھ مل کر اسکور بورڈ کو آگے بڑھائیں گے مگر وہ صرف ایک رنز کے مہمان ثابت ہوئے اور مصدق حسین بھی ایک ہی رنز بناسکے۔

کھلاڑیوں کے پویلین لوٹنے کے باوجود مشفق الرحیم نے ہمت نہیں ہاری اور اپنی ذمہ دارانہ اننگز کو جاری رکھا، وہ 4 چھکوں اور 11 چوکوں کی مدد سے 144 رنز کی یادگار اننگز کھیل کر آؤٹ ہوئے۔ سری لنکا کی جانب سے لیستھ ملنگا نے 4 اور ڈی سلوا نے 2 وکٹیں حاصل کیں۔

پاکستانی ٹیم اتوار کو پہلا میچ ہانگ کانگ کے خلاف کھیلے گی جب کہ قومی ٹیم کا بھارت کے ساتھ مقابلہ 19 ستمبر کو ہوگا۔

Google Analytics Alternative