کھیل

پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کیلیے رسہ کشی شروع

کراچی: پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کیلیے رسہ کشی شروع ہو گئی تاہم اب تک 16 امیدوار میدان میں آ چکے ہیں۔

پی سی بی نے گزشتہ دنوں واجبات کی عدم ادائیگی پر ملتان سلطانز کا معاہدہ ختم کر دیا تھا، ڈرافٹ میں پلیئرز کا انتخاب بورڈ کی نگرانی میں ہوا، گزشتہ دنوں نئی فرنچائز کیلیے ٹینڈر بھی جاری کر دیا ہے۔

اس حوالے سے نمائندہ ’’ایکسپریس‘‘ کے ساتھ خصوصی بات چیت میں چیئرمین بورڈ احسان مانی نے کہا کہ پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم خریدنے میں اب تک16 پارٹیز نے دلچسپی دکھائی ہے، ہم اس ریسپانس سے بیحد خوش اور امید ہے کہ مناسب قیمت مل جائے گی۔ انھوں نے اس تاثر سے اتفاق نہیں کیا کہ فرنچائزز سے تنازعات کی وجہ سے پی ایس ایل کا مستقبل خدشات کی زد میں ہے ۔

احسان مانی نے کہا کہ لیگ کو کوئی خطرات لاحق نہیں ہیں، آئندہ سال 14 فروری سے پروگرام کے مطابق انعقاد ہوگا،انھوں نے کہا کہ امید ہے کہ تمام فرنچائزز جلد فیس جمع کرا دیں گی،اگر کسی نے ایسا نہیں کیا تو ہمارے پاس بینک گارنٹی تو موجود ہے جسے کیش کرا لیا جائے گا، اس سوال پر کہ ایک ٹیم نے گارنٹی جمع کرانے سے گریز کیا اس کا کیا ہوگا۔

چیئرمین پی سی بی نے کہا کہ مذکورہ فرنچائز نے بورڈ کو ایک ملین ڈالر دے دیے تھے جبکہ باقی رقم کے بھی چیک جمع کرا دیے ہیں، اس لیے کوئی مسئلہ نہیں ہوگا، انھوں نے کہا کہ ہم فرنچائزز کے تحفظات سے بخوبی واقف اور کوشش ہے کہ جائز مطالبات حل کیے جائیں، البتہ اس وقت میں یہ بتانے کی پوزیشن میں نہیں کہ کیا کر رہے ہیں۔

دوسری جانب ذرائع کے مطابق پی سی بی نے فرنچائزز کے مسائل پر حکومت کو اعتماد میں لے لیا،اسے امید ہے کہ انھیں15 سے 20 فیصد رقم کا ریلیف مل جائے گا، پنجاب حکومت سے کہا گیا ہے کہ وہ سیلز ٹیکس معاف کر دے جبکہ وفاقی حکومت سے جب تک ٹیموں کا خسارہ کم نہ ہو ود ہولڈنگ ٹیکس نہ لینے کی درخواست کر دی گئی، اگر ایسا ہو گیا تو فرنچائزز کے2 سے 3 ملین ڈالرز بچ جائیں گے۔

واضح رہے کہ 14 نومبر کو انوائس جاری ہونے کے باوجود پی ایس ایل فرنچائزز فیس کی ادائیگی سے گریزاں ہیں، ان کا مطالبہ ہے کہ بغیر ٹیکس کے رقم لی جائے مگر پی سی بی اسے تسلیم کرنے کوتیار نہیں، جاوید آفریدی اور سلمان اقبال پر مشتمل کمیٹی بورڈ حکام کے ساتھ مل کر اعلیٰ حکومتی شخصیات سے ملاقات کر کے ٹیکس کی معافی کیلیے درخواستیں کررہی ہے، اس وقت فرنچائزز کو26 فیصد ٹیکس ادا کرنا پڑتا ہے،16 فیصد سیلز ٹیکس پنجاب حکومت اور 10 فیصد ود ہولڈنگ ٹیکس وفاقی حکومت کو جاتا ہے۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ براڈکاسٹنگ رائٹس کی فروخت میں مزید بڈرز کو شامل کرنے کیلیے مختلف آپشنز پر غور جاری ہے، ان میں سے ایک انٹرٹینمنٹ چینلز کو بھی بڈنگ کی عمل میں شامل ہونے کی اجازت دینا ہے،اس حوالے سے حکومت سے بھی بات ہوگئی تاہم ابھی کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہوا۔

واضح رہے کہ گزشتہ دنوں بورڈکی جانب سے ترمیمی اشتہار جاری کرتے ہوئے بڈز کی تاریخ آگے بڑھا کر7دسمبر کردی گئی تھی۔

دورہ جنوبی افریقہ میں دو وکٹ کیپرز بھیجنے کا فیصلہ

لاہور: پی سی بی نے دورہ جنوبی افریقہ میں قومی ٹیم کے ساتھ دو وکٹ کیپرز بھیجنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

جنوبی افریقہ کے  خلاف سیریز میں  قواعد کے تحت  15 رکنی ٹیم نے جانا ہے تاہم  چیئرمین پی سی بی احسان مانی کی طرف سے ایک اضافی کھلاڑی کی شمولیت کی اجازت  ملنے کی صورت میں رضوان 16ویں کھلاڑی کے طورپر  ٹیم میں شامل کیے جائیں گے۔

ذرائع کے مطابق قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے بھی رضوان کی شمولیت پر مثبت ردعمل کا اظہار کیاہے، سلیکٹرز محمد رضوان کی قومی اے ٹیم کی جانب سے بیٹنگ اور وکٹوں کے پیچھے کارکردگی سے بہت خوش ہیں، وہ اب تک 649 رنز کے ساتھ 20 کیچز بھی وکٹوں کے پیچھے پکڑ چکے ہیں،  محمد رضوان کی  فٹنس بھی بہت متاثر کن ہے، جس پر تمام سلیکٹرز انہیں ایک بارپھر ملک کی نمائندگی کا موقع دینے کے حق میں ہیں۔

پشاور سے تعلق رکھنے والے 26 سالہ وکٹ کیپر بلے باز بیٹنگ لائن میں بھی  خاصے کارآمد ثابت ہوسکتے ہیں۔ محمد رضوان نے پاکستان کی جانب سے واحد ٹیسٹ نیوزی لینڈ کے خلاف ہملٹن میں نومبر 2016 میں کھیلا تھا،جس میں وہ صرف 13 رنز تک محدود رہے، رضوان اب تک 25 ایک روزہ میچز اور 10 ٹی ٹوئنٹی میچز میں پاکستان کی نمائندگی بھی کرچکے ہیں۔ انہوں نے گزشتہ برس آسٹریلیا کے خلاف  آخری بار ون ڈے میچ کھیلا تھا۔

محمد رضوان ان دنوں قومی اے ٹیم کے ساتھ ایشیا ایمرجنگ کپ کے لیےاعلان کردہ قومی ایمرجنگ ٹیم کے بھی کپتان ہیں۔ پاکستانی ٹیم نے دورہ جنوبی  افریقہ میں ایک تین روزہ  پریکٹس میچ  ، تین ٹیسٹ، پانچ ون ڈے اور تین ٹوئنٹی میچز کھیلنا ہیں۔

جنوبی افریقا کے خلاف سیریز کے لیے محمد عامر کی واپسی کا امکان

لاہور:جنوبی افریقا کے خلاف اہم سیریز کے لیے فاسٹ بولر محمد عامر کی واپسی کا امکان ہے جب کہ محمد عباس کی شمولیت فٹنس سے مشروط ہوگی۔

پی سی بی کی سلیکشن کمیٹی نے جنوبی افریقا کے دورے کے لیے ٹیم کی تشکیل پر مشاورت کا آغاز کردیاہے، ٹیم کا باقاعدہ اعلان اگلے ہفتے کیا جائے گا۔
ذرائع کے مطابق محمد عامر کو بلال آصف کی جگہ اس اہم ٹور کے لیے موقع دینے پر غور کیا جارہا ہے،شان مسعود کو تیسرے اوپنر کی حیثیت سے ٹیم کا حصہ بنایا جارہاہے، ٹیم میں کپتان سرفراز احمد، امام الحق، محمد حفیظ، بابر اعظم،حارث سہیل اور اظہر علی اپنی جگہ برقر ار رکھنے میں کامیاب رہیں گے۔ سعد علی، حسن علی، میرحمزہ، فہیم اشرف، شاہین شاہ آفریدی، اسد شفیق اور یاسر شاہ بھی ممکنہ کھلاڑیوں میں شامل ہوسکتے ہیں۔
محمد عباس کی شمولیت فٹنس سے مشروط ہوگی تاہم سلیکٹرز کو یقین ہے کہ محمد عباس فٹنس مسائل پر قابو پانے میں کامیاب ہوجائیں گے۔
پاکستانی ٹیم نے جنوبی افریقا کے خلاف 3 ٹیسٹ، 5 ون ڈے اور 3 ٹی 20 میچز پر مشتمل سیریز کھیلے گی، پہلا ٹیسٹ 26 دسمبر سے شیڈول ہے، اس سے پہلے 19 دسمبر کو پریکٹس میچ رکھا گیا ہے۔

معین خان نے ورلڈ کپ 2019 میں پاکستان کو فیورٹ قرار دیدیا

لاہور: معین خان نے ورلڈ کپ میں پاکستان کو فیورٹ قرار دیدیا۔

پاکستان کرکٹ کی سب سے بڑی ویب سائٹ www.cricketpakistan.com.pk کے سلیم خالق کوخصوصی انٹرویو میں معین خان نے کہاکہ انگلینڈ میں آئندہ سال شیڈول ورلڈکپ میں پاکستان کی ٹائٹل فتح کے امکانات روشن ہیں، انگلش کنڈیشنز میں گرین شرٹس کا ریکارڈ اچھا رہا ہے، وہاں بڑی تعداد میں موجود پاکستانی تارکین وطن بھی ٹیم کا حوصلہ بڑھانے کیلیے آتے ہیں، چیمپئنز ٹرافی فتح کی وجہ سے گرین شرٹس کا اعتماد بھی بلند ہوگا، ایونٹ میں پاکستان فیورٹ ہے۔

ایک سوال پر انھوں نے کہا کہ سرفراز احمد کو میگا ایونٹ تک قومی ٹیم کی قیادت کرنا چاہیے، کھیل میں اتار چڑھاؤ آتے ہیں لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ کسی کھلاڑی کی صلاحیتیں ختم ہو گئیں،میں سرفراز کو اس وقت سے سپورٹ کررہا ہوں جب وہ قومی انڈر19ٹیم میں بھی شامل نہیں ہوئے تھے، میں ہر اس کھلاڑی کی حوصلہ افزائی کرتا ہوں جو پاکستان کیلیے اچھا ہو،  قومی ٹیم سرفراز احمد کی قیادت میں ایک یونٹ بن کر کھیل رہی ہے، وکٹ کیپر نے ماضی میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا، مستقبل میں بھی ان سے اچھی امیدیں وابستہ ہیں۔

معین خان نے کہا کہ ہر ٹور میں ٹیم کے ساتھ دوسرا وکٹ کیپر رکھنے کی ضرورت نہیں ہوتی، اس سے سرفراز احمد پر دباؤ بڑھے گا، خاص طور پر مختصر دورے پر تو اس کی قطعی ضرورت نہیں، یقینی طور پر محمد رضوان ہی سرفراز احمد کے جانشین ہیں، ان کو گاہے بگاہے اسکواڈ کے ساتھ رکھا جاسکتا ہے تاکہ مستقبل کیلیے تیار ہو سکیں۔

پاکستان آنے کیلیے تیار پلیئرز کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرزنے ترجیح دی

معین خان کا کہنا ہے کہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کیلیے اسکواڈ کا انتخاب کرتے ہوئے ان غیر ملکی کرکٹرز کو ترجیح دی جو پاکستان آنے کیلیے تیار ہوں۔ فرنچائز کے ہیڈ کوچ نے کہا کہ اس بار میں نے بڑا ٹھوس موقف اختیار کرتے ہوئے بورڈ کو رائے دی کہ جو غیر ملکی کرکٹرز ہمارے ملک اور لیگ کی قدر نہیں کرتے انھیں پی ایس ایل فور کیلیے ڈرافٹ کا حصہ نہیں ہونا چاہیے، کوئٹہ کے زیادہ تر کھلاڑی پاکستان میں کھیلنے کیلیے تیار ہو جائینگے، ابھی واٹسن سے بات نہیں ہوئی، امید ہے کہ دیگر پلیئرز کو دیکھتے ہوئے وہ بھی انکار نہیں کرینگے۔

ورلڈکپ 2015 کے دوران کسینو واقعہ کو غلط رنگ دیا گیا،معین خان

معین خان کا کہنا ہے کہ ورلڈکپ 2015 کے دوران کسینو واقعہ کو غلط رنگ دیا گیا، میںکسینو گیا تھا اور اس حقیقت سے کبھی انکار نہیں کیا، اگر آپ کسی غیر قانونی سرگرمی میں ملوث نہیں ہوتے تو وہاں جانے میں کوئی خرابی نہیں، معاملے کو غیر ضروری طور پر اچھالا گیا، حقائق سے قطعی طور پر لاعلم لوگوں نے بھی باتیں کرکے جلتی پر تیل ڈالا، یہ سب کچھ ماضی بن چکا تاہم مجھے افسوس ضرور ہے کہ واقعے کو غلط رنگ دیا گیا۔

بھارت میں انتخابات کے بعد باہمی کرکٹ بحال ہونے کی امید ظاہر

معین خان نے بھارت میں انتخابات کے بعد باہمی کرکٹ بحال ہونے کی امید ظاہر کر دی، انھوں نے کہا کہ شائقین کا روایتی حریفوں کے مقابلے دیکھنے سے محروم رہنا بڑے افسوس کی بات ہے، امید ہے کہ پڑوسی ملک میں انتخابات کے بعد نئی حکومت آنے پر کرکٹ مقابلے بھی بحال ہو جائینگے۔

ہاکی ورلڈ کپ؛ پاکستانی سفر کا آج جرمنی کیخلاف میچ سے آغاز

بھوبینشور:  مینز ہاکی ورلڈ کپ میں پاکستانی سفر کا ہفتے کو جرمنی کیخلاف میچ سے آغازہوگا۔

مجموعی طور پر پاکستان، ڈچ الیون اور جرمنی اب تک منعقدہ 13 ورلڈ کپ ٹرافیز میں سے 9 آپس میں بانٹ چکے ہیں۔ گروپ’جی‘ کا دوسرا مقابلہ نیدرلینڈز اورملائیشیا کے درمیان شیڈول ہے، جرمنی اور نیدرلینڈز جیسی مضبوط ٹیموں کی موجودگی میں اسے گروپ آف ڈیتھ بھی کہا جا رہا ہے۔

کالنگا اسٹیڈیم میں چار بارکی ورلڈ فاتح پاکستانی ٹیم کو 2 بار کی چیمپئن جرمنی کا چیلنج درپیش ہوگا، گرین شرٹس سردست اپنی رینکنگ میں کمترین 13ویں پوزیشن پر ہیں، ورلڈ کپ میں جرمنی سے 8 باہمی مقابلوں میں پاکستان نے 5 فتوحات کے ساتھ برتری لے رکھی ہے۔

ہیڈ کوچ توقیر ڈار نے میگا ایونٹ سے قبل لاہور میں قومی پلیئرز کو بھرپور تیاریاں کرائی ہیں، انھوں نے کہا کہ ہماری ٹیم متحد اور ایک مقصد کیلیے میدان میں اترے گی، پلیئرز نے کئی مشکلات کا سامنا کیا لیکن وہ ورلڈکپ اور مستقبل قریب میں آنے والے دیگر چیلنجز کیلیے بھی تیار ہیں، دوسری جانب جرمنی بھی اپنی ٹاپ پوزیشن واپس پانے کیلیے کوشاں ہے۔

علاوہ ازیں ایونٹ میں جمعے کو گروپ ’ بی ‘ کے ابتدائی میچز میں آسٹریلیا نے آئرلینڈ کو 2-1 سے شکست دے دی، فاتح ٹیم کیلیے گوورز اور برانڈ نے گیند کو جال کے سپرد کیا، آئرش ٹیم کا واحد گول اوڈونگ ہوئے کے نام رہا،انگلینڈ اور چین کا مقابلہ 2-2 سے برابر ہوگیا۔

محمد عباس نیوزی لینڈ کیخلاف تیسرے ٹیسٹ سے باہر

محمد عباس نیوزی لینڈ کیخلاف تیسرے ٹیسٹ میں شرکت نہیں کرپائیں گے۔

متحدہ عرب امارات میں جاری پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان 3 میچوں پر مشتمل ٹیسٹ سیریز 1-1 سے برابر ہے تاہم تیسرے اور فیصلہ کن میچ سے قبل ہی پاکستان کے لیے بری خبر سامنے آئی ہے، قومی ٹیم کے اہم پیسر محمد عباس انجری کے باعث اگلے میچ سے باہر ہوگئے ہیں۔

پریکٹس سیشن کے دوران کندھے کی انجری کا شکار ہونے والے پیسر نے کیویز کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ میں بھی دواﺅں کا سہارا لیتے ہوئے شرکت کی تھی، ڈاکٹرز نے رپورٹ سامنے آنے کے بعد محمد عباس کو 3 سے 4 ہفتوں تک آرام کا مشورہ دیا ہے، جس کی وجہ سے ان کی جنوبی افریقہ کیخلاف سیریز میں شرکت بھی مشکوک ہوگئی ہے۔

یاد رہے کہ یو اے ای میں پاکستان اور نیوزی لینڈ کے مابین سیریز میں محمد عباس 4 اننگز میں سے 3 میں کوئی وکٹ نہیں حاصل کرپائے، اس سے قبل آسٹریلیا کیخلاف 2 ٹیسٹ میچز میں 17 شکار کرنے میں کامیاب ہوئے تھے۔

وزیراعظم نے چیئرمین پی سی بی کو فری ہینڈ دے دیا

لاہور: وزیراعظم عمران خان نے احسان مانی کو فری ہینڈ دے دیا جب کہ پی سی بی کے معاملات میں ایک بار بھی مداخلت کی ضرورت محسوس نہیں کی۔

وزیراعظم اور پی سی بی کے چیف پیٹرن عمران خان دنیائے کرکٹ کا بہت بڑا نام اورکھیل کی باریکیوں کو بہت اچھی طرح سمجھتے ہیں، انھوں نے گورننگ بورڈ میں آئی سی سی کے سابق صدر احسان مانی کو نامزد کیا جو پی سی بی کی کمان سنبھال چکے ہیں، ابھی تک بہت بڑی تبدیلی تو دیکھنے میں نہیں آئی لیکن بتدریج معاملات پر غور کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ کو درست سمت میں گامزن کرنے کیلیے کام ضرور ہورہا ہے۔

ذرائع کے مطابق احسان مانی کو ذمہ داری سونپتے ہوئے عمران خان نے اپنے ویژن پر بات ضرور کی تھی لیکن بعدازاں انتظامی امور اور تقرریوں کے معاملے میں انھوں نے کبھی فون پر بھی مداخلت کی ضرورت محسوس نہیں کی، چیف پیٹرن نے بھرپور اعتماد کا اظہار کرنے کے بعد احسان مانی کو فری ہینڈ دے رکھا ہے۔

عمران خان کے ویژن کو پیش نظر رکھتے ہوئے پی سی بی میں شفافیت کا نعرہ لگانے والے چیئرمین خود کو بھی احتساب سے بالاتر نہیں سمجھتے، وہ اپنے اثاثہ جات کی تفصیل بورڈ کی ویب سائٹ پر ڈالنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

یاد رہے کہ انھوں نے پہلی پریس کانفرنس میں کیے گئے وعدے کے مطابق پی سی بی کی آمدنی اور اخراجات کی مکمل تفصیل ویب سائٹ پر جاری کر دی تھی، شاہ خرچیوں کی تفصیل سامنے لائے جانے پر سابق چیئرمین نجم سیٹھی نے قانونی محاذ بھی کھول رکھا ہے۔

علی ترین پی ایس ایل کی ’چھٹی ٹیم‘ خریدنے کے خواہاں

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے بیٹے علی ترین نے پاکستان سپر لیگ(پی ایس ایل) کی ’چھٹی ٹیم‘ خریدنے کی خواہش ظاہر کردی ہے۔

پاکستان سپر لیگ کے گزشتہ ایڈیشن میں نئی فرنچائز ملتان سلطانز کا اضافہ ہوا تھا لیکن مالی مسائل کے سبب فرنچائز مالکان مقررہ وقت پر ادائیگیوں سے قاصر رہے جس کے بعد پی سی بی نے شون پراپرٹی بروکرز کی زیر ملکیت فرنچائز کو ملکیت سے محروم کردیا اور ٹیم کے مالکانہ حقوق پی سی بی کو منتقل ہو گئے تھے۔

اب فرنچائز کے مالکانہ حقوق کی فروخت کے لیے ٹینڈر نوٹس جاری کر کے باقاعدہ فرنچائز کو فروخت کیا جائے گا تاہم اس وقت تک ٹیم کو ’چھٹی ٹیم‘ کے نام سے پکارا جائے گا۔

یاد رہے کہ پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کی بولی کے لیے پاکستان کرکٹ بورڈ نے 5.2ملین ڈالر سالانہ کی بنیادی رقم مختص تھی اور شون گروپ واحد فریق تھا جس نے بولی کے عمل میں حصہ لے کر فرنچائز اپنے نام کر کے اسے ’ملتان سلطان‘ کا نام دیا تھا۔

تاہم اب تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے صاحبزادے علی ترین نے فرنچائز کی ملکیت کے حصول میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم فرنچائز کی فروخت کے عمل میں حصہ لیں گے اور کوشش ہو گی کہ جنوبی پنجاب میں ٹیم آئی ہے تو ہمارے ہاتھ سے نہ جائے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم جنوبی پنجاب میں کرکٹ کے حوالے سے کافی کام کر رہے ہیں اور ہمارا پروگرام ہے کہ ہر ضلع میں ایک گراؤنڈ اور اکیڈمی بنانے کے ساتھ ساتھ کلب کرکٹ کو سپورٹ کریں اور اگر پی ایس ایل کی ٹیم بھی آ جاتی ہے تو ہمارے کام کو مزید تقویت ملے گی۔

علی ترین نے کہا کہ مجھے بچپن سے ہی کھیلوں کا شوق تھا اور اسکول میں بھی کھیلوں کی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتا تھا، ہمارے خاندان کا تعلق جنوبی پنجاب سے ہے تو اب ارادہ ہے کہ ملک کے اس حصے کے لیے کچھ کیا جائے۔

ٹیم کے نام کے حوالے سے سوال پر علی ترین نے کہا کہ ہم ملتان کا نام ہی برقرار رکھیں گے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں کریں گے۔

Google Analytics Alternative