کھیل

سرفراز احمد جیسا جارح مزاج کپتان پاکستان ٹیم کی ضرورت ہے، شاہد آفریدی

لاہور: شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ سرفراز احمد ایک جارح مزاج کپتان ہیں اور ٹیم کو ایسے ہی قائد کی ضرورت ہے جب کہ میری نیک خواہشات ان کے ساتھ ہیں۔

پاکستان کے سابق کپتان بوم بوم شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ پاکستان ٹیم کو آگے بڑھنے کے لیے بہت زیادہ محنت کی ضرورت ہے، بلاشبہ سرفراز احمد ایک جارح مزاج کپتان ہیں اور ٹیم کو ایسے ہی قائد کی ضرورت ہے، میری نیک خواہشات ان کے ساتھ ہیں اور امید ہے کہ وہ جلد ہی ایسا اچھا کمبی نیشن تشکیل دے کر ٹیم کو دوبارہ پراعتماد بنائیں گے۔

آئی سی سی کو دیے گئے انٹریو میں شاہد آفریدی کا کہنا تھا کہ پاکستان کے لیے کھیلنا میرے لیے سب سے بڑا اعزاز ہے، کیریئر میں میری کارکردگی میں اتار چڑھاﺅ آتا رہا لیکن طویل کیریئر میں یہ ایک متوقع بات ہے، اتنے لمبے عرصے تک پاکستان کی نمائندگی کرنے پر اللہ تعالیٰ کا شکر گزار ہوں اگرچہ میں نے ایسا سوچا بھی نہیں تھا، کرکٹ میں خوشی سے زیادہ غم ہوتا ہے اور اس عرصے میں کئی مراحل سے گزرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ اس دوران میرے بھی کچھ خواب اور مقاصد تھے، میں اپنے آپ کو خوش قسمت تصور کرتا ہوں کہ میں اپنی کارکردگی سے کافی حد تک مطمئن ہوں اور لگتا ہے کہ میرا کوئی خواب سچ ہو گیا ہو۔

آفریدی کا کہنا تھا کہ ریٹائرمنٹ کے بعد زیادہ وقت اپنی فاﺅنڈیشن کے کام پر توجہ دوں گا جب کہ اس کے ساتھ ساتھ اپنے مداحوں کےلیے لیگز بھی کھیلوں گا۔

ناصر جمشید پر فرد جرم عائد

پی سی بی کا کہنا ہے کہ ناصر جمشید کے خلاف عدم تعاون کا الزام لگایا گیا ہے، ان پر اسپاٹ فکسنگ کا الزام عائد نہیں کیا گیا۔

پی سی بی کے مطابق کرکٹر شاہ زیب حسن کا کیس ٹربیونل کے حوالے کردیا گیا ہے۔

شہریار خان نے مشروط استعفیٰ وزیر اعظم ہاؤس بھجوادیا

ایک ایسے وقت میں جب ہر کوئی ’پاناما کیس‘ فیصلے کا منتظر ہے، پاکستان کرکٹ بورڈ میں تبدیلی کے راؤنڈ کی شروعات کی خبریں ہیں۔

اطلاعات ہیں کہ 83سالہ چیئر مین پی سی بی شہریار محمد خان نے اپنا استعفیٰ وزیر اعظم ہاؤس بھجوا دیا ہے، ساتھ ہی انہوں نے اس خواہش کا بھی اظہار کیا ہے کہ انہیں 30اپریل 2017ء تک کام کرنے دیا جائے،اس کی وجہ یہ ہے کہ شہریار خان چاہتے ہیں کہ دبئی میں 24تا 27اپریل ہونے والے آئی سی سی اجلاس میں بطور چیئرمین پی سی بی شرکت کرسکیں۔

نوابزادہ شہریار محمد خان سمجھتے ہیںکہ آئی سی سی اجلاس میں بھارتی سیریز کے حوالے سے قانونی چارہ جوئی اور بگ تھری پر ہونے والی گفتگو میں ان کی موجودگی اہم ثابت ہو گی۔

توقع یہی ہے کہ 24اپریل کو دبئی میں شروع ہونے والے آئی سی سی اجلاس میں شہریار خان ہی بحیثیت چیئر مین ،پی سی بی کے نمائندے ہوں گے۔

دوسری جانب اہم بات یہ ہے کہ مئی میں بحیثیت چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ عہدے سے سبکدوش ہو جا نے والے شہریار خان کی مدت ملازمت اس سال اگست میں ختم ہوگی، تاہم وہ پی سی بی گورننگ بورڈ میں شامل رہیں گے۔

تیسرا ون ڈے؛ ویسٹ انڈیز کا ٹاس جیت کر بیٹنگ کا فیصلہ

گیانا: ویسٹ انڈیز نے پاکستان کے خلاف تیسرے اور فیصلہ کن ون ڈے میں ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ویسٹ انڈیز کے شہر پروویڈنس میں کھیلے جارہے فیصلہ کن معرکے میں ویسٹ انڈین کپتان جیسن ہولڈر نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا ہے۔ پاکستان کی جانب سے گزشتہ میچ کے فاتح اسکواڈ کو برقرار رکھا گیا جب کہ ویسٹ انڈیز نے الزاری جوزف کی جگہ ویرا سیمی پرمال کو شامل کیا گیا ہے۔

واضح رہے ویسٹ انڈیز نے آخری مرتبہ 1991 میں پاکستان کو ون ڈے سیریز میں شکست دی تھی۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ پاکستان ویسٹ انڈیز کے خلاف 26 سالہ ریکارڈ کا دفاع کرے گا یا ویسٹ انڈیز اس ریکارڈ کو مزید طویل ہونے سے روکے گا۔

یونس خان کی سب سے بڑی خوبی’ پاکستانیت‘ ہے، رمیز راجا

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور مایہ ناز کرکٹ کمنٹیٹر رمیز راجا کا کہنا ہے کہ ان کی نظر میں یونس خان پاکستان کے سرفہرست کرکٹرز میں شامل ہیں، یونس خان کی سب سے بڑی خوبی ان کی ’’پاکستانیت‘‘ ہے۔

سابق ٹیسٹ اوپنررمیز راجا کا کہنا ہے کہ قوی امید ہے یونس خان ٹیسٹ کرکٹ میں 10 ہزار رنز کا سنگ میل جس سے وہ محض 23رنز کی دوری پر ہیں، ویسٹ انڈیز کے خلاف پہلے ہی ٹیسٹ میں عبور کرلیں گے۔

رمیز راجا نے ساتھ ہی اس خواہش کا اظہار بھی کیا کہ یونس خان اور کھیلیں اور اسی طرح رنز بناتے رہیں، کیوں کہ جب وہ بیٹنگ کرتے ہیں تو کمنٹری کر نے کا لطف دوبالا ہو جاتا ہے۔

بابراعظم نے ریکارڈ بک الٹ پلٹ دی

گیانا: پاکستان کرکٹ ٹیم کے نوجوان بیٹسمین بابر اعظم نے ریکارڈ بک الٹ پلٹ دی وہ کرکٹ ہسٹری میں کم ترین اننگز میں 5 سنچریز بنانے والے دوسرے بیٹسمین بن گئے ہیں جب کہ وہ 25 اننگز میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے بیٹسمین بھی بن گئے ہیں۔ 

بابراعظم نے ویسٹ انڈیز کے خلاف دوسرے ون ڈے میں ناقابل شکست سنچری بناتے ہوئے نہ صرف ٹیم کی فتح میں اہم کردار ادا کیا بلکہ کئی ریکارڈز بھی اپنے نام کیے۔ 125 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلنے کے بعد وہ 25 اننگز میں 5 سنچریز بنانے والے دوسرے بیٹسمین بن گئے ہیں۔

جنوبی افریقہ کے کوانٹن ڈی کاک 19 اننگز میں یہ سنگ میل عبور کرکے فہرست میں ٹاپ پر موجود ہیں۔ بابر اعظم 25 اننگز میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے بیٹسمین بھی بن گئے ہیں، گزشتہ روز سنچری کے ساتھ ہی ون ڈے میں ان کا مجموعی اسکور 1306 رنز ہو گیا ہے جو کہ ایک روزہ کرکٹ کی تاریخ میں نیا ریکارڈ ہے۔

22 سالہ بیٹسمین ویسٹ انڈیز کے خلاف چوتھی سنچری بنا کر کالی آندھی کے خلاف سب سے زیادہ سنچریز بنانے والے بیٹسمینوں کی فہرست میں دوسرے نمبر پر آ گئے ہیں۔

ٹیم کو ضرورت ہے، یونس خان ریٹائرمنٹ واپس لیں، عامر سہیل

پاکستان ٹیسٹ ٹیم کے سابق کپتان عامر سہیل کا کہنا ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ سے یونس خان کا ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ درست نہیں ہے، ان کے خیال میں 39سال کے یونس ابھی مزید دو تین سال کھیل سکتے ہیں۔

سینتالیس ٹیسٹ میچوں میں 5سنچریوں کی مدد سے 4780رنز اسکور کرنے والے عامر سہیل کے مطابق دورۂ ویسٹ انڈیز کے بعد مصباح الحق کی جگہ قیادت یونس خان کے سپرد کر کے وکٹ کیپر سرفراز احمد پر ٹیسٹ ٹیم کی قیادت کا اضافی بوجھ ڈالنے کے بجائے اسے بہتر انداز میں تیار کرنا چاہیے۔

پچاس سالہ سابق کپتان نے یونس خان کے ٹیم کو چھونے کا ذمہ دار ٹیسٹ کپتان مصباح الحق کو قرار دیتے ہوئے کہا کہ یونس خان کے اس طرح ٹیم کو چھوڑ کر چلے جا نے سے ٹیسٹ ٹیم متاثر ہوگی۔

عامر سہیل نے مزید کہا کہ کامیابیوں کے اعتبار سے ضرور مصباح کو سراہا جانا چاہیے، لیکن ٹیم بنانے میں مصباح الحق کا کوئی کردار نہیں۔

انہوں نے کہا کہ 2015ء میں مصباح نے ون ڈے ٹیم کی قیادت چھوڑی تو ٹیم ساتویں نمبر پر تھی، اب وہ ٹیسٹ ٹیم کو چھٹے نمبر پر چھوڑ کر جا رہے ہیں، موجودہ ٹیم میں نہ اوپنرز کے مستقبل کا پتہ ہے نہ بولنگ اٹیک مؤثر ہاتھوں میں ہے۔

سابق کپتان ورلڈ کپ کے بعد ون ڈے ٹیم کی قیادت اظہر علی کو دئیے جانے اور مصباح الحق کی جانب سے ان کے حق میں دئیے جانے والے بیان پر سخت نالاں ہیں۔

سابق چیف سلیکٹر اور ڈائریکٹر گیم ڈیولپمنٹ پی سی بی رہنے والے عامر سہیل نے کہا کہ وہ مصباح الحق کی بہت عزت کرتے ہیں، لیکن یہ وہ چند باتیں ہیں جن میں مصباح الحق نے پی سی بی کا ساتھ دے کر قومی ٹیم کو نقصان پہنچایا۔

عامر سہیل کی نگاہ میں یہ ایک کامیاب کپتان کا فارمولہ نہیں، یونس خان کے حوالے سے اپنی بات کا دفاع کرتے ہوئے سابق کپتان کا مؤقف ہے کہ 115ٹیسٹ میچوں میں 34سنچریوں کیساتھ 9977رنز کسی کارنامے سے کم نہیں ،یہی وجہ ہے کہ یونس پاکستان کا اب نمبر’ون‘ بیٹسمین ہے،اسے ہمیں یوں ہی رخصت کر نے کے بجائے اس کے تجربے سے فائدہ اٹھانا چاہیے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ گزشتہ چار سال کے عرصے میں یونس خان کے 14سنچریاں بنانے سے پتہ چلتا ہے کہ ابھی ان میں کچھ کرنے کا جذبہ موجود ہے، درست فیصلہ ہوگا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ یونس خان سے ریٹائرمنٹ واپس لینے کے لیے کہے اور پاکستان کرکٹ کے بہتر مفاد میں اسے ٹیسٹ ٹیم کی قیادت سونپی جائے۔

پاکستان بلائنڈ ورلڈ کپ 2018 کے فائنل کی میزبانی کرے گا

لاہور: پاکستان بلائنڈ ورلڈ کپ 2018 کے فائنل اور متعدد میچز کی میزبانی کرے گا۔

بلائنڈ کرکٹ ورلڈ کپ 2018 کا فائنل اور متعدد میچز پاکستان میں کھیلے جائیں گے۔ پاکستان بلائنڈ کرکٹ کونسل کے چیرمین سید سلطان شاہ نے کہا ہے ورلڈ کپ 2018 کے میچز کی میزبانی پاکستان اور دبئی میں کریں گے، ورلڈ کپ میں پاکستان کے علاوہ بھارت، سری لنکا ، بنگلا دیش، نیپال، آسٹریلیا، جنوبی افریقہ اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں شریک ہوں گی۔

سید سلطان شاہ نے کہا کہ بھارت، سری لنکا، بنگلا دیش اور نیپال نے پاکستان میں میچز کھیلنے کی تصدیق کردی ہے جب کہ دیگر ممالک آسٹریلیا، جنوبی افریقہ اور ویسٹ انڈیز کے میچز دبئی میں کھیلے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ایونٹ کے انعقاد سے دنیا کو مثبت پیغام جائے گا اور اس سے انٹرنیشنل کھیلوں کی بحالی کی راہ ہموار ہو گی۔

Google Analytics Alternative