کھیل

ہاکی ورلڈ کپ؛ پاکستانی سفر کا آج جرمنی کیخلاف میچ سے آغاز

بھوبینشور:  مینز ہاکی ورلڈ کپ میں پاکستانی سفر کا ہفتے کو جرمنی کیخلاف میچ سے آغازہوگا۔

مجموعی طور پر پاکستان، ڈچ الیون اور جرمنی اب تک منعقدہ 13 ورلڈ کپ ٹرافیز میں سے 9 آپس میں بانٹ چکے ہیں۔ گروپ’جی‘ کا دوسرا مقابلہ نیدرلینڈز اورملائیشیا کے درمیان شیڈول ہے، جرمنی اور نیدرلینڈز جیسی مضبوط ٹیموں کی موجودگی میں اسے گروپ آف ڈیتھ بھی کہا جا رہا ہے۔

کالنگا اسٹیڈیم میں چار بارکی ورلڈ فاتح پاکستانی ٹیم کو 2 بار کی چیمپئن جرمنی کا چیلنج درپیش ہوگا، گرین شرٹس سردست اپنی رینکنگ میں کمترین 13ویں پوزیشن پر ہیں، ورلڈ کپ میں جرمنی سے 8 باہمی مقابلوں میں پاکستان نے 5 فتوحات کے ساتھ برتری لے رکھی ہے۔

ہیڈ کوچ توقیر ڈار نے میگا ایونٹ سے قبل لاہور میں قومی پلیئرز کو بھرپور تیاریاں کرائی ہیں، انھوں نے کہا کہ ہماری ٹیم متحد اور ایک مقصد کیلیے میدان میں اترے گی، پلیئرز نے کئی مشکلات کا سامنا کیا لیکن وہ ورلڈکپ اور مستقبل قریب میں آنے والے دیگر چیلنجز کیلیے بھی تیار ہیں، دوسری جانب جرمنی بھی اپنی ٹاپ پوزیشن واپس پانے کیلیے کوشاں ہے۔

علاوہ ازیں ایونٹ میں جمعے کو گروپ ’ بی ‘ کے ابتدائی میچز میں آسٹریلیا نے آئرلینڈ کو 2-1 سے شکست دے دی، فاتح ٹیم کیلیے گوورز اور برانڈ نے گیند کو جال کے سپرد کیا، آئرش ٹیم کا واحد گول اوڈونگ ہوئے کے نام رہا،انگلینڈ اور چین کا مقابلہ 2-2 سے برابر ہوگیا۔

محمد عباس نیوزی لینڈ کیخلاف تیسرے ٹیسٹ سے باہر

محمد عباس نیوزی لینڈ کیخلاف تیسرے ٹیسٹ میں شرکت نہیں کرپائیں گے۔

متحدہ عرب امارات میں جاری پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان 3 میچوں پر مشتمل ٹیسٹ سیریز 1-1 سے برابر ہے تاہم تیسرے اور فیصلہ کن میچ سے قبل ہی پاکستان کے لیے بری خبر سامنے آئی ہے، قومی ٹیم کے اہم پیسر محمد عباس انجری کے باعث اگلے میچ سے باہر ہوگئے ہیں۔

پریکٹس سیشن کے دوران کندھے کی انجری کا شکار ہونے والے پیسر نے کیویز کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ میں بھی دواﺅں کا سہارا لیتے ہوئے شرکت کی تھی، ڈاکٹرز نے رپورٹ سامنے آنے کے بعد محمد عباس کو 3 سے 4 ہفتوں تک آرام کا مشورہ دیا ہے، جس کی وجہ سے ان کی جنوبی افریقہ کیخلاف سیریز میں شرکت بھی مشکوک ہوگئی ہے۔

یاد رہے کہ یو اے ای میں پاکستان اور نیوزی لینڈ کے مابین سیریز میں محمد عباس 4 اننگز میں سے 3 میں کوئی وکٹ نہیں حاصل کرپائے، اس سے قبل آسٹریلیا کیخلاف 2 ٹیسٹ میچز میں 17 شکار کرنے میں کامیاب ہوئے تھے۔

وزیراعظم نے چیئرمین پی سی بی کو فری ہینڈ دے دیا

لاہور: وزیراعظم عمران خان نے احسان مانی کو فری ہینڈ دے دیا جب کہ پی سی بی کے معاملات میں ایک بار بھی مداخلت کی ضرورت محسوس نہیں کی۔

وزیراعظم اور پی سی بی کے چیف پیٹرن عمران خان دنیائے کرکٹ کا بہت بڑا نام اورکھیل کی باریکیوں کو بہت اچھی طرح سمجھتے ہیں، انھوں نے گورننگ بورڈ میں آئی سی سی کے سابق صدر احسان مانی کو نامزد کیا جو پی سی بی کی کمان سنبھال چکے ہیں، ابھی تک بہت بڑی تبدیلی تو دیکھنے میں نہیں آئی لیکن بتدریج معاملات پر غور کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ کو درست سمت میں گامزن کرنے کیلیے کام ضرور ہورہا ہے۔

ذرائع کے مطابق احسان مانی کو ذمہ داری سونپتے ہوئے عمران خان نے اپنے ویژن پر بات ضرور کی تھی لیکن بعدازاں انتظامی امور اور تقرریوں کے معاملے میں انھوں نے کبھی فون پر بھی مداخلت کی ضرورت محسوس نہیں کی، چیف پیٹرن نے بھرپور اعتماد کا اظہار کرنے کے بعد احسان مانی کو فری ہینڈ دے رکھا ہے۔

عمران خان کے ویژن کو پیش نظر رکھتے ہوئے پی سی بی میں شفافیت کا نعرہ لگانے والے چیئرمین خود کو بھی احتساب سے بالاتر نہیں سمجھتے، وہ اپنے اثاثہ جات کی تفصیل بورڈ کی ویب سائٹ پر ڈالنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

یاد رہے کہ انھوں نے پہلی پریس کانفرنس میں کیے گئے وعدے کے مطابق پی سی بی کی آمدنی اور اخراجات کی مکمل تفصیل ویب سائٹ پر جاری کر دی تھی، شاہ خرچیوں کی تفصیل سامنے لائے جانے پر سابق چیئرمین نجم سیٹھی نے قانونی محاذ بھی کھول رکھا ہے۔

علی ترین پی ایس ایل کی ’چھٹی ٹیم‘ خریدنے کے خواہاں

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے بیٹے علی ترین نے پاکستان سپر لیگ(پی ایس ایل) کی ’چھٹی ٹیم‘ خریدنے کی خواہش ظاہر کردی ہے۔

پاکستان سپر لیگ کے گزشتہ ایڈیشن میں نئی فرنچائز ملتان سلطانز کا اضافہ ہوا تھا لیکن مالی مسائل کے سبب فرنچائز مالکان مقررہ وقت پر ادائیگیوں سے قاصر رہے جس کے بعد پی سی بی نے شون پراپرٹی بروکرز کی زیر ملکیت فرنچائز کو ملکیت سے محروم کردیا اور ٹیم کے مالکانہ حقوق پی سی بی کو منتقل ہو گئے تھے۔

اب فرنچائز کے مالکانہ حقوق کی فروخت کے لیے ٹینڈر نوٹس جاری کر کے باقاعدہ فرنچائز کو فروخت کیا جائے گا تاہم اس وقت تک ٹیم کو ’چھٹی ٹیم‘ کے نام سے پکارا جائے گا۔

یاد رہے کہ پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کی بولی کے لیے پاکستان کرکٹ بورڈ نے 5.2ملین ڈالر سالانہ کی بنیادی رقم مختص تھی اور شون گروپ واحد فریق تھا جس نے بولی کے عمل میں حصہ لے کر فرنچائز اپنے نام کر کے اسے ’ملتان سلطان‘ کا نام دیا تھا۔

تاہم اب تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے صاحبزادے علی ترین نے فرنچائز کی ملکیت کے حصول میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم فرنچائز کی فروخت کے عمل میں حصہ لیں گے اور کوشش ہو گی کہ جنوبی پنجاب میں ٹیم آئی ہے تو ہمارے ہاتھ سے نہ جائے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم جنوبی پنجاب میں کرکٹ کے حوالے سے کافی کام کر رہے ہیں اور ہمارا پروگرام ہے کہ ہر ضلع میں ایک گراؤنڈ اور اکیڈمی بنانے کے ساتھ ساتھ کلب کرکٹ کو سپورٹ کریں اور اگر پی ایس ایل کی ٹیم بھی آ جاتی ہے تو ہمارے کام کو مزید تقویت ملے گی۔

علی ترین نے کہا کہ مجھے بچپن سے ہی کھیلوں کا شوق تھا اور اسکول میں بھی کھیلوں کی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتا تھا، ہمارے خاندان کا تعلق جنوبی پنجاب سے ہے تو اب ارادہ ہے کہ ملک کے اس حصے کے لیے کچھ کیا جائے۔

ٹیم کے نام کے حوالے سے سوال پر علی ترین نے کہا کہ ہم ملتان کا نام ہی برقرار رکھیں گے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں کریں گے۔

کیا یاسر تیسرے ٹیسٹ میں 82سال پرانا عالمی ریکارڈ توڑ پائیں گے؟

نیوزی لینڈ کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ میں عمدہ کارکردگی کی بدولت 82سال سے قائم عالمی ریکارڈ یاسر شاہ کی دسترس میں آ گیا اور وہ نیوزی لینڈ کے خلاف تیسرے ٹیسٹ میچ میں نیا عالمی ریکارڈ قائم کر سکتے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ میں 14وکٹوں کی بدولت یاسر شاہ کی 32 ٹیسٹ میچوں میں وکٹوں کی تعداد 195 ہو گئی اور انہیں 200وکٹوں کا سنگ میل عبور کرنے کے لیے محض پانچ وکٹیں درکار ہیں۔

اس کے ساتھ ہی تیز ترین 200وکٹیں لینے کا عالمی ریکارڈ یاسر کی دسترس میں آ گیا ہے اور وہ اگلے ٹیسٹ میچ میں یہ ریکارڈ اپنے نام کر سکتے ہیں۔

ٹیسٹ کرکٹ میں تیز ترین 200وکٹیں لینے کا عالمی ریکارڈ جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر کلیری گریمیٹ کے پاس ہے جنہوں نے 1936 میں صرف 36 ٹیسٹ میچوں میں یہ کارنامہ انجام دیا تھا۔

اگر یاسر اگلے ٹیسٹ میچ میں یہ ریکارڈ نہ بھی توڑ سکے تو بھی یہ ریکارڈ توڑنے کے لیے ان پاس مزید دو ٹیسٹ میچ ہوں گے۔

تاہم دلچسپ امر یہ کہ جب یاسر شاہ اس ریکارڈ کے حوالے سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ میں یہ تو جانتا ہوں کہ ریکارڈ میری دسترس میں ہے لیکن مجھے نہیں پتہ کہ یہ ’گریمیٹ‘ کون ہے۔

یاسر شاہ نے کہا کہ میں یہ ریکارڈ توڑنا چاہتا ہوں لیکن میں گریمیٹ کے بارے میں زیادہ نہیں جانتا۔ وہ کافی سال پہلے کھیلے تھے لیکن میں ریکارڈ کے بارے میں جانتا ہوں کیونکہ جب کبھی بھی میں ریکارڈ کی فہرست دیکھتا ہوں تو ان کا نام سب سے پہلے نظر آتا ہے۔

یاد رہے کہ ٹیسٹ کرکٹ میں تیز ترین 100 وکٹوں لینے والوں میں یاسر شاہ دوسرے نمبر پر موجود ہیں جہاں انہوں نے 17 ٹیسٹ میچوں میں یہ کارنامہ انجام دیا تھا۔

تیز ترین 100وکٹیں لینے کا عالمی ریکارڈ انگلیش کے جیارج لومین کے پاس ہے جنہوں نے 1896 میں 16ٹیسٹ میچوں میں 100وکٹیں مکمل کی تھیں۔

یاسر شاہ نے کہا کہ میں اپنی ٹیم کی فتح میں کردار ادا کرنے پر بہت خوش ہوں، یہ میرا کام اور ذمے داری ہے کہ میں زیادہ سے زیادہ وکٹیں لے کر اپنی ٹیم کو فتح سے ہمکنار کراؤں۔

یاسر شاہ نے میچ میں 14وکٹیں لے سابق کپتان اور موجود وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا 36سال پرانا قومی ریکارڈ برابر کردیا جنہوں نے 1982 میں سری لنکا کے خلاف میچ میں 116رنز کے عوض 14وکٹیں لی تھیں۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان کا ریکارڈ برابر کرنا میرے لیے بہت اعزاز کی بات ہے، ان کے ساتھ میرا نام آنا بڑی بات ہے اور میں اس حوالے سے ان کے پیغام کا منتظر ہوں۔

یاسر نے تسلیم کیا کہ نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز سے قبل والدہ کے انتقال کے سبب وہ بہت فکرمند اور بے چین تھے۔

لیگ اسپنر نے کہا کہ میرے لیے یہاں آنا بہت مشکل تھا۔ میں شدید تناؤ کا شکار تھا کیونکہ ماں کے بغیر ہم کچھ بھی نہیں۔ میں جب بھی میچ کھیلنے جاتا تو والدہ سے کہتا کہ وہ دعا کریں کہ میں میچ میں 5وکٹیں لوں جس پر وہ کہتیں کہ صرف پانچ کیوں؟ 10 یا 15 کیوں نہیں؟۔

’میں یہ کارکردگی اور اعزاز اپنی والدہ کے نام کرتا ہوں‘۔

ٹیم کے شاندار کم بیک پر مکی آرتھر بھی خوشی سے نہال

لاہور: دبئی ٹیسٹ میں قومی ٹیم کے شاندار کم بیک پر ہیڈ کوچ مکی آرتھر بھی خوشی سے نہال ہوگئے۔

دبئی میں پریس کانفرنس کے دوران کوچ مکی آرتھر نے کہا کہ ابوظبی میں مسلسل اچھی کارکردگی اور حاوی رہنے کے بعد آخری ایک گھنٹے میں خراب کھیل کی وجہ سے شکست پر سخت مایوسی ہوئی تھی،وہاں سے روانگی کیلیے بس پر سوار ہونے سے قبل ٹیم میٹنگ میں کھلاڑیوں کو تحریک دلائی اور اہداف سیٹ کیے تھے،پلیئرز میں صلاحیتیں موجود اور مجھے ان پر یقین ہے،اعتماد واپس لانے کی ضرورت تھی جو دبئی میں حاصل ہوگیا اور اب اگلے میچ میں کام آئے گا۔

مکی آرتھر نے کہا کہ کوچنگ اسٹاف کیلیے اس سے بڑی خوشی کی بات نہیں ہوتی کہ کھلاڑی اپنی صلاحیتوں کے مطابق کھیل پیش کرنے کے قابل ہوجائیں۔پاکستان ٹیم نے فتح کے اس سفر میں سب کچھ درست کیا، پہلی اننگز میں ذمہ دارانہ بیٹنگ اور بڑا اسکور اور پھر بولرز نے بہترین کارکردگی کی بدولت حریف کو کم ٹوٹل تک محدود رکھا،مسلسل دباؤ برقرار رکھتے ہوئے ہم نے اننگز سے فتح حاصل کی،ایک ناقابل یقین ناکامی کے صدمے سے سنبھل کر شاندار کم بیک بڑا خوش آئند ہے۔

ایک سوال پر آرتھر نے کہا کہ یاسر کی پہلی اننگز میں 8 وکٹیں میرے کوچنگ کیریئر کی بہترین لیگ اسپن بولنگ تھی،انھیں ٹیم میں اپنے کردار کا اندازہ ہے،انجری کے بعد ردھم میں آتے ہی ان کی کارکردگی میں بھی نکھار آتا گیا، وہ ابوظبی کے فیصلہ کن ٹیسٹ میں بھی ہمارا ٹرمپ کارڈ ہونگے۔

سرفراز احمد جتنی محنت کرتے ہیں اتنی قدروتعریف نہیں ہوتی، مکی آرتھر

میڈیا سے بات چیت کے دوران انھوں نے کہا کہ دبئی ٹیسٹ میں کپتان نے نہ صرف بولنگ میں تبدیلیوں اور فیلڈ سیٹ کرنے سمیت بہترین فیصلے کیے بلکہ بطور وکٹ کیپر بھی انتہائی مستعد نظر آئے،کیچنگ  اور اسٹمپنگ کرنے کے ساتھ وکٹ کے آس پاس سے گزرنے والی گیندوں پر بھی وہ تیزی سے جھپٹتے ہیں،سرفرازکا بیٹنگ آرڈر میں نمبر بھی ایسا ہے کہ مشکل وقت میں کئی اننگز ٹیم کے کام آجاتی ہیں،  یواے ای میں ہی فخرزمان کے ساتھ ان کی شراکت ایک مثال ہے، جنوبی افریقہ کیخلاف آئندہ سیریز کے حوالے سے بھی میری ان کے ساتھ طویل گفتگو ہورہی ہے۔

مکی آرتھر نے کہا کہ لوگ میرے اور سرفراز احمد کے درمیان اختلافات کی باتیں نجانے کیوں کرتے ہیں، وہ بطور بڑے حوصلے والے کرکٹر اور بطور کپتان مسلسل بہتری کی طرف گامزن ہیں، ان کی خدمات کو سراہنا چاہیے۔

شاندار باؤلنگ پر یاسر نے شین وارن کا بھی دل جیت لیا

سڈنی: سابق آسٹریلین کرکٹر شین وارن نے قومی لیگ اسپنر یاسر شاہ کی تعریفوں کے پل باندھتے ہوئے مستقبل کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا ہے۔

پاکستانی اسپنر نے نیوزی لینڈ کے خلاف پہلی اننگز میں 8 اور دوسری اننگز میں 6 وکٹیں لیتے ہوئے مجموعی طور پر 184رنز کے عوض 14وکٹیں حاصل کیں جس کی بدولت پاکستان نے میچ میں مہمان ٹیم کو اننگز اور 16رنز سے شکست دی۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کرتے ہوئے سابق مایہ ناز لیگ اسپنر شین وارن نے نیوزی لینڈ کے خلاف شاندار باؤلنگ اسپیل کرانے پر یاسر شاہ کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پہلی اننگز میں زبردست باؤلنگ کراتے ہوئے بہترین اسپیل کیا، یہ بہت بہترین تھا۔ جب میں آپ کو اسپن کے جال میں پھنساتے ہوئے دیکھتا ہوں تو بہت خوشی ہوتی ہے، اس طرح صبر کے ساتھ باؤلنگ کرواتے رہو۔

شین وارن واحد کرکٹر نہیں جنہوں نے یاسر شاہ کی باؤلنگ کو سراہا بلکہ بھارت سمیت دنیا بھر کے کرکٹر اور ماہرین نے عمدہ اسپیل پر لیگ اسپنر کو سراہا۔

سابق بھارتی کرکٹر محمد کیف اور عظیم بلے باز وی وی ایس لکشمن بھی یاسر شاہ کی تعریف کیے بنا نہ رہ سکے اور انہیں مبارکباد دی۔

محمد کیف نے کہا کہ یاسر شاہ کے عمدہ اسپیل کے آگے کیوی بلے بازوں کے پاس آوٹ ہونے کے علاوہ کوئی راستہ ہی نہیں تھا، یاسر شاہ ایک خاص لیگ اسپنر ہیں اور انھیں ابھی مزید بہت کچھ حاصل کرنا ہے۔

ہاکی ورلڈکپ کی افتتاحی تقریب میں شاہ رخ اور مادھوری کی شاندار پرفارمنس

بھونیشور: ہاکی ورلڈکپ کی رنگارنگ افتتاحی تقریب میں بالی ووڈ کنگ شاہ رخ خان، دھک دھک گرل مادھوری ڈکشٹ اور موسیقار اے آر رحمان نے جلوے بکھیر دیئے۔

بھارتی ریاست اڑیسہ کے شہر بھونیشور کے کالنگا اسٹیڈیم میں ہاکی ورلڈکپ کی رنگارنگ تقریب میں بالی ووڈ اسٹار شاہ رخ خان، ڈانسنگ کوئین مادھوری ڈکشٹ اور معروف موسیقار اے آر رحمان نے اپنی پرفارمنس سے رنگ بکھیر دیئے۔ فنکاروں کی شاندار پرفارمنس نے حاضرین کو بھی خوب محظوظ کیا۔

عالمی کپ ہاکی کے نئے حکمران بننے کی جنگ بدھ سے شروع ہوگی، میگا ایونٹ میں دنیا بھر سے 16 ٹیمیں ٹائٹل کے حصول کے لئے پنجہ آزمائی کریں گی، عالمی چیمپئن آسٹریلیا کی ٹیم میگا ایونٹ میں ٹائٹل کا دفاع کریگی، اس مرتبہ میگا ایونٹ میں 4 مزید ٹیموں کا اضافہ کیا گیا ہے جن میں کینیڈا، فرانس، چین اور آئرلینڈ شامل ہیں۔

اس سے قبل عالمی کپ 2014ء میں 12 ٹیموں نے شرکت کی تھی، 14ویں عالمی کپ میں شرکت کرنے والی 16 ٹیموں کو چار مختلف پولز میں تقسیم کیا گیا ہے، پول اے میں ارجنٹائن، نیوزی لینڈ، اسپین اور فرانس کو رکھا گیا ہے، پول بی میں دفاعی چیمپئن آسٹریلیا، انگلینڈ، آئرلینڈ اور چین کو رکھا گیا ہے، پول سی میں بیلجیئم، میزبان بھارت، کینیڈا اور جنوبی افریقہ کو رکھا گیا ہے جب کہ پول سی میں ہالینڈ، جرمنی، ملائیشیا اور پاکستان کو رکھا گیا ہے۔

میگا ایونٹ کے ابتدائی روز 2 میچز کھیلے جائیں گے، دونوں میچز پول سی کی ٹیموں کے درمیان کالنگا اسٹیڈیم میں کھیلے جائیں گے، اس سلسلے کا پہلا میچ بیلجیئم اور کینیڈا کی ٹیموں کے درمیان کھیلا جائے گا جب کہ اسی روز دوسرا میچ میزبان بھارت اور جنوبی افریقہ کے درمیان شیڈول ہے۔

عالمی کپ میں شرکت کرنے والی 16 ٹیموں میں سے پول میچز کے بعد 8 ٹیمیں میگا ایونٹ کے کوارٹر فائنل مرحلے کے لئے کوالیفائی کریں گی، میگا ایونٹ کا کوارٹر فائنل مرحلہ 12 دسمبر سے شروع ہوگا، کوارٹر فائنل مرحلے کے بعد 4 ٹیمیں سیمی فائنل کوالیفائی کریں گی، عالمی کپ کے دونوں سیمی فائنلز 15 دسمبر کو کھیلے جائیں گے، میگا ایونٹ کی 2 فائنلسٹ ٹیموں کے درمیان فائنل اور تیسری پوزیشن کے لئے میچ 16 دسمبر کو کھیلا جائے گا۔

قومی ٹیم 8 سال بعد میگا ایونٹ میں شرکت کررہی ہے، 2010 میں پاکستان نے آخری بار بھارت میں ہی ورلڈکپ کھیلا تھا جس میں اس نے آخری پوزیشن پائی تھی جب کہ 2014 میں قومی ٹیم ورلڈکپ میں جگہ بنانے میں ناکام رہی تھی، اب ایک بارپھر گرین شرٹس بھرپور تیاری کے ساتھ ہمسایہ ملک میں موجود ہے، پاکستانی ٹیم اپنا پہلا میچ یکم دسمبر کو جرمنی کے خلاف کھیلے گی۔

Google Analytics Alternative