بین الاقوامی

امریکی ریاستوں میں شدید برف باری، مختلف حادثات میں 7 افراد ہلاک

واشنگٹن: امریکا کی وسط مغربی ریاستوں میں شدید برف باری کے باعث مختلف حادثات میں 7 افراد ہلاک ہوگئے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا کی وسط مغربی ریاستیں شدید برفباری کی لپیٹ میں ہیں، میزوری، کینساس اور شکاگو میں برف باری کا سلسلہ جاری ہے، سینٹ لوئیس اور کولمبیا شہر میں ایک دن میں 26 سینٹی میٹر تک برف پڑچکی ہے جب کہ  کئی شہروں میں برف باری کا 100 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا۔

برف باری کی وجہ سے سینکڑوں پروازیں تاخیر کا شکار ہیں اور کئی شہروں میں فلائٹ آپریشن مکمل طور پر معطل ہے،  برف باری کی وجہ سے ٹریفک کا نظام شدید متاثر ہے جب کہ مختلف شہروں میں 700 سے قریب حادثات ہوئے جن میں 7 افراد ہلاک ہوگئے، ہیوی مشینری کی مدد سے سڑکیں صاف کرنے کا کام جاری ہے۔

چین میں کوئلے کی کان بیٹھنے سے 21 افراد ہلاک

بیجنگ: چین کے شمال مغربی صوبے میں کوئلے کی کان بیٹھنے سے 21 افراد ہلاک ہوگئے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق شمال مغربی صوبے شانسی میں کوئلے کی کان بیٹھنے سے 21 افراد ہلاک ہوگئے، حادثے کے وقت 87 افراد کان میں کام کررہے تھے جس میں سے 66 افراد کو بچالیا گیا، ریسکیو حکام کا کہنا ہے کہ ابتدائی طور پر 19 افراد ہلاک ہوئے تھے تاہم سرچ آپریشن کے دوران مزید 2 افراد کی لاشیں نکالی گئی ہیں۔

کوئلے کی کان میں کام کرنے والے ڈرائیور نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ کان بہت چھوٹی تھی جب کہ کان بیٹھنے کی وجہ سامنے نہیں آسکی اور حادثے کی تحقیقات جاری ہیں۔

واضح رہے کہ چین میں متعدد کوئلے کی کانیں نجی کمپنیاں چلارہی ہیں جہاں حفاظتی انتظامات نہ ہونے کے برابر ہیں جس کے باعث آئے دن بڑے حادثات رونما ہوتے رہتے ہیں۔

 

’ ٹرمپ نے پیوٹن کے ساتھ ملاقات کی تفصیلات خفیہ رکھیں‘

امریکی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے روسی صدر ویلادی میر پیوٹن کے ساتھ ہونے والی ملاقات کی تفصیلات چھپائی ہیں۔

واشنگٹن پوسٹ کی رپورٹ میں شائع ہونے والی رپورٹ میں وائٹ ہاؤس کے موجودہ اور سابقہ حکام کا حوالے دے کر بتایا گیا ہے کہ امریکی صدر نے ملاقات کے دوران موجود مترجم کو ہدایت کی کہ وہ ان کی پیوٹن کی ملاقات کے دوران ہونے والی گفتگو کسی کے سامنے ظاہر نہ کریں۔

اخبار کا اپنی رپورٹ میں کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ اور ویلادی میر پیوٹن کے درمیان ہونے والی ملاقات جولائی 2017 میں جرمنی کے ایک شہر ہمبرگ میں ہوئی تھی جس میں ان کے ہمراہ اس وقت کے سیکریٹری اسٹیٹ ریکس ٹرلسن بھی موجود تھے۔

واشنگٹن پوسٹ کی جانب سے دعویٰ کیا گیا کہ اس ملاقات کی تفصیلات ریکس ٹلرسن نے میڈیا کو بتائی تھیں لیکن ان کے بعد جب وائٹ ہاؤس کے مشیر اور اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے شیئر حکام نے مترجم سے مزید تفصیلات کے لیے رابطہ کیا تو اس نے وہ تفصیلات دینے سے انکار کردیا تھا۔

ادھر ٹرمپ انتظامیہ نے اخبار کے دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ 2017 میں روسی صدر کے ساتھ امریکی صدر کی ملاقات کی مکمل تفصیل کے بارے میں ریکس ٹلرسن نے فوراً میڈیا کو آگاہ کردیا تھا۔

خیال رہے کہ چند روز قبل امریکی اخبار نیویارک ٹائمز نے ایک رپورٹ شائع کی تھی جس میں انکشاف کیا گیا تھا کہ فیڈرل بیورو آف انوسٹی گیشن (ایف بی آئی) نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور روس کے درمیان ’خفیہ تعلقات‘ کی تحقیقات شروع کردی۔

امریکی اخبار نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ اسی وجہ نے ایف بی آئی نے سابق ڈائریکٹر جیمز کومے کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا تھا۔

2016 میں ہونے والے امریکی انتخابات جن میں ڈونلڈ ٹرمپ کامیاب ہوئے تھے، کے بارے میں گمان ظاہر کیا جاتا ہے کہ امریکی صدارتی انتخابات پر اثر انداز ہونے کے لیے روس نے مداخلت کی تھی۔

علاوہ ازیں 2016 میں امریکی صدارتی انتخابات میں ٹرمپ کی کامیابی اور انتخابی مہم میں روسی مداخلت پر بھی تفتیش شروع کی گئی تھی اور کئی عہدیداروں کو باقاعدہ ٹرائل کا سامنا کرنا پڑا تھا اور متحدہ عرب امارات میں ٹرمپ اور روسی صدر پیوٹن کے معاونین کے درمیان ملاقات کا بھی انکشاف ہوا تھا۔

پیرس میں زوردار دھماکا، 4 افراد ہلاک اور 50 زخمی

پیرس: فرانس کے دارالحکومت کے وسط میں ایک بیکری میں زور دار دھماکے کے نتیجے میں کم از کم 4 افراد ہلاک اور 50 زخمی ہوگئے۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق شہر کا پوش علاقہ  ریو ڈی ٹریوس صبح سویرے زور دار دھماکے سے لرز اٹھا، بیکری میں گیس لیک ہونے کی وجہ سے دھماکا ہوا جس کے بعد عمارت میں آگ لگ گئی۔

دھماکے کی وجہ  سے اردگرد کی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے جب کہ قریب کھڑی گاڑیوں کو بھی شدید نقصان پہنچا، ابتدائی طور پر واقعے میں کم ازکم 4 افراد کے ہلاک اور 50 کے زخمی ہونے کی تصدیق کی گئی ہے جن میں سے 5 کی حالت تشویشناک بتائی جارہی ہے۔ ہلاک شدگان میں آگ بجھانے والے 2 اہلکار بھی شامل ہیں۔

واقعے کی اطلاع ملنے پر وزیر داخلہ جائے وقوعہ پر پہنچ گئے جہاں میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ 200 فائر فائٹرز آگ پر قابو پانے اور امدادی کارروائیوں میں حصہ لے رہے ہیں،  وزیر داخلہ نے شہریوں کو امدادی کارروائیوں کے سبب مذکورہ علاقے میں  نہ آنے کی اپیل کی ہے۔

سوشل میڈیا پر شیئر کی گئی تصاویر میں دھماکے سے ہونے والی تباہی کے مناظر دیکھے جاسکتے ہیں،  تصاویر میں  تباہ  ہونے والی گاڑیاں اور ٹوٹے ہوئے شیشے سڑک پر پھیلے ہوئے نظر آرہے ہیں۔

اسرائیلی جنگی طیاروں کا شام میں دمشق ائرپورٹ پر میزائل حملہ

دمشق: اسرائیلی جنگی طیاروں نے شام کے دارالحکومت دمشق میں بمباری کی ہے۔

شام کی سرکاری نیوز ایجنسی کے مطابق اسرائیلی فضائیہ نے شام کے دارالحکومت دمشق کے ہوائی اڈے پر کئی میزائل داغے ہیں۔ اسرائیلی جنگی طیاروں نے رات کے وقت یہ فضائی حملہ کیا جس میں دمشق ائرپورٹ کے ایک گودام کو نشانہ بنایا گیا۔

فضائی کارروائی میں کسی شخص کی ہلاک یا زخمی ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔ شام کے فضائی دفاعی نظام نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے کئی میزائلوں کو تباہ بھی کردیا ہے۔

واضح رہے کہ 25 دسمبر کو بھی اسرائیل نے شام پر ایک میزائل حملہ کیا تھا جس میں 3 شامی فوجی زخمی ہوگئے تھے۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی فائرنگ سے مزید 4 کشمیری شہید

سرینگر: مقبوضہ وادی میں قابض فوج کی فائرنگ کے نتیجے میں مزید 4 کشمیری نوجوان شہید جب کہ متعدد زخمی ہوگئے۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے ریاستی دہشت گردی کے دوران مزید 4 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا جب کہ متعدد زخمی ہوگئی، بھارتی فوج نے ترال کے علاقے میں سرچ آپریشن کے دوران محاصرہ کرکے نوجوانوں کو نشانہ بنایا۔

نوجوانوں کی شہادت کے بعد ضلع پلوامہ کے علاقے ترال میں بھارتی فورسز کے خلاف مظاہرے پھوٹ پڑے جس پر بھارتی فورسز کی جانب سے فائرنگ، لاٹھی چارج، اور پیلٹ گنز کا استعمال کیا گیا جس کے نتیجے میں متعدد کشمیری زخمی ہوگئے۔

نوجوانوں کی شہادت اور مظاہروں کے بعد کٹھ پتلی انتظامیہ نے ضلع پلوامہ کے مختلف علاقوں میں انٹرنیٹ سروس بھی معطل کردی ہے۔

واضح رہے کہ 2018 کے دوران مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے ظلم و بربریت کی نئی داستانیں رقم کرتے ہوئے 375 کشمیریوں کو شہید کیا تھا کہ جب کہ سال نو کے آغاز پر بھی نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران قابض بھارتی فوج نے فائرنگ کر کے 2 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا تھا۔

نئی پاکستانی قیادت سے جلد ملاقات کا منتظرہوں، ڈونلڈ ٹرمپ

واشنگٹن: امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ نئی پاکستانی قیادت سے جلد ملاقات کا منتظرہوں۔

امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ نے کابینہ اجلاس کے دوران صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا پاکستان سے اچھے تعلقات چاہتا ہے جب کہ نئی پاکستانی قیادت سے جلد ملاقات کا منتظرہوں۔

صدرٹرمپ کا کہنا تھا کہ سوویت یونین نے افغانستان سے آنے والے دہشتگردوں کو ختم کرنے کے لئے وہاں حملہ کیا لیکن افغانستان میں لڑتے لڑتے سوویت یونین خود دیوالیہ ہوگیا۔ انہوں نے کہا سوویت یونین کا فیصلہ درست تھا لیکن افغان جنگ سخت تھی۔ امریکی صدر نے مزید کہا کہ اس خطے میں پاکستان بھی موجود ہے، پاکستان کو لڑنا چاہیے اورامریکا طالبان سے مذاکرات کررہا ہے۔

دوسری جانب امریکی صدرنے ایشین ری ایشورینس انیشی ایٹو ایکٹ پردستخط کرکے قانون کا درجہ دے دیا۔ نئے قانون کے تحت امریکی حکومت سیکیورٹی اوراقتصادی مفادات کوبڑھاوا دینے پررقم خرچ کرے گی۔

واضح رہے کہ 2 ماہ قبل امریکی صدر نے پاکستان پر الزام تراشی کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان نے امریکا کے لیے کوئی ایک کام بھی نہیں کیا بلکہ پاکستان نے اسامہ بن لادن کو پناہ دینے میں بھی مدد کی۔

افغانستان میں طالبان کے پولیس چیک پوسٹ پرحملے میں 20 اہلکار ہلاک

کابل: افغانستان میں طالبان جنگجوؤں نے پولیس چیک پوسٹ پر حملہ کرکے 20 اہل کاروں کو ہلاک کردیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق افغانستان کے ضلع سید آباد کے علاقے سرائے پل پر واقع پولیس چیک پوسٹ پر طالبان نے دھاوا بول کر 20 اہل کاروں کو ہلاک کردیا، دہشت گردوں کے حملے میں 23 پولیس اہلکار زخمی بھی ہوئے۔

پولیس چیک پوسٹ پر حملے کی اطلاع  پر افغان پولیس کی مزید نفری بھی جائے وقوع پر پہنچ گئی، دہشت گردوں اور پولیس کے درمیان 6 گھنٹے گھمسان کی لڑائی جاری رہی جس کے بعد افغان طالبان واپس جانے پر مجبور ہوئے۔

افغان پولیس کا کہنا ہے کہ افغان طالبان تین جانب سے پولیس چیک پوسٹ پر حملہ آور ہوئے، شدید جھڑپ کے بعد طالبان کو پسپا ہونے پر مجبور کردیا گیا۔ جھڑپ میں کئی طالبان جنگجو بھی مارے گئے جنہیں حملہ آور اپنے ہمراہ لے گئے۔

افغان طالبان کی جانب سے پولیس چیک پوسٹ پر حملے اور جھڑپ سے متعلق خبروں کی تردید یا تصدیق نہیں کی گئی تاہم اس علاقے میں طالبان کی نقل و حرکت کافی عرصے سے جاری ہیں۔

Google Analytics Alternative