بین الاقوامی

امریکا کے بعد فرانس کا بھی خلائی فورس بنانے کا اعلان

پیرس: امریکا کے بعد فرانس نے بھی خلائی فورس بنانے کا اعلان کردیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا کے بعد فرانس نے بھی خلائی فورس بنانے کا اعلان کردیا ہے۔ فرانسیسی صدر میکخواں نے آرمی کے جوانوں سے خطاب میں کہا کہ فرانسیسی فضائیہ کو خلائی فورس بنانے کی اجازت دیدی ہے، فورس بنانے کا مقصد فرانس کی دفاعی صلاحیتوں میں اضافہ کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس فورس کی مدد سے فرانس کے سیٹلائٹ سسٹم کو بھی تحفظ ملے گا جب کہ یہ فورس اگلے سال ستمبر تک بنائی جائے گی۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکی ملٹری کو ’اسپیس فورس‘ خلائی فورس تشکیل دینے کا حکم دیا تھا۔ امریکی صدر کا کہنا تھا کہ خلا میں امریکی موجودگی کافی نہیں مکمل غلبہ چاہیے اور چاند پر امریکی جھنڈا لگانا کافی نہیں۔

امریکا کی جانب سے خلائی فورس بنانے کے اعلان کے بعد چین نے شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ امریکا خلا کو جنگی سرگرمیوں کا مرکز بنانے سے گریز کرے کیوں کہ خلا کو میدان جنگ بنانا پوری دنیا کے لیے تباہ کن ہوگا۔

برطانیہ نے ایرانی آئل ٹینکر کی رہائی کے لیے شرط رکھ دی

لندن/ تہران: برطانیہ نے ایران کی جانب سے ’منزل‘ کی مصدقہ نشاندہی کی شرط پر تحویل میں لیے گئے آئل ٹینکر کو رہا کرنے پر رضامندی ظاہر کردی ہے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق جبرالٹر کے پانیوں میں ایران کے آئل ٹینکر کو برطانوی بحریہ کی جانب سے تحویل میں لیے جانے پر پیدا ہونے والا تنازع اپنے منطقی انجام کو پہنچتا ہوا نظر آرہا ہے۔ برطانوی وزیر خارجہ نے اس حوالے سے اپنے ایرانی ہم منصب سے ٹیلی فونک گفتگو بھی کی۔

ایرانی وزیر خارجہ جاوید ظریف نے اپنے برطانوی ہم منصب پر واضح کیا کہ ہم کسی بھی ملک کے ساتھ تنازع نہیں چاہتے اور ہر قسم کے مسئلے کا پُرامن حل اولین ترجیح ہے، برطانیہ کے ساتھ خوشگوار دو طرفہ تعلقات کے خواہاں ہیں جس کے لیے آئل ٹینکر کی ضبطی کے مسئلے کو خوش اسلوبی سے حل کرنا چاہتے ہیں۔

برطانوی وزیر خارجہ جیرمی ہنٹ نے جوباً کہا کہ آئل ٹینکر میں موجود خام تیل ہمارا مسئلہ نہیں، ہم بس اتنی یقین دہانی چاہتے ہیں کہ یہ تیل شام کو سپلائی نہیں کیا جا رہا تھا جس کے لیے ایران بس آئل ٹینکر کی مصدقہ منزل بتائے تو آئل ٹینکر کو فوری طور پر رہا کردیا جائے گا۔

واضح رہے کہ ایرانی ٹینکر کو خام تیل شام لے جانے پر 4 جولائی کو برطانوی بحریہ نے تحویل میں لے لیا تھا، آئل ٹینکر گریس-1 کے کپتان اور چیف آفیسر کیخلاف مقدمہ بھی درج کیا گیا تھا بعد ازاں جبرالٹر پولیس کی جانب سے عملے کے چاروں ارکان کو ضمانت پر مشروط رہائی دی گئی تھی۔

نوجوت سنگھ سدھو نے وزارت سے استعفیٰ دے دیا

چندی گڑھ: نوجوت سنگھ سدھو نے کانگریس کے صدر راہول گاندھی کو اپنی وزارت سے استعفیٰ پیش کردیا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر نوجوت سنگھ نے ایک ٹویٹ میں صوبائی وزارت سے مستعفی ہونے کا اعلان کیا جب کہ انہوں نے راہول گاندھی کے نام لکھے گئے استعفیٰ کاعکس بھی شیئر کیا۔ بقول سدھو انہوں نے اپنا استعفیٰ وزیراعلٰی پنجاب کو بھیجا تاہم وزیراعلیٰ ہاؤس کو تاحال استعفیٰ موصول نہیں ہوا۔

نوجوت سنگھ نے اپنے سادہ سے استعفیٰ میں مستعفی ہونے کی وجہ تحریر نہیں کی، کانگریس کی جانب سے استعفیٰ موصول ہونے کی تصدیق یا تردید نہیں کی گئی ہے جب کہ راہول گاندھی لوک سبھا انتخابات میں شکست فاش پرخود پارٹی صدارت سے استعفیٰ دے چکے ہیں اور تاحال صدارت سنبھالنے کو تیار نہیں۔

نوجوت سنگھ سدھو اپنے وزیراعلیٰ سے اختلاف کے باعث گزشتہ ماہ ہی وزارت بلدیات اور سیاحت و ثقافت سے دستبردار ہوگئے تھے تاہم راہول گاندھی سے ملاقات کے بعد معاملات طے پاگئے تھے جس کے بعد سدھو کو وزارت توانائی دی گئی تھی تاہم انہوں نے اپنی ذمہ داریاں نہیں سنبھالی تھیں۔

نوجوت سنگھ اور وزیراعلٰی پنجاب آرمیندرا سنگھ کے درمیان اختلافات اس وقت شدت اختیار کرگئے تھے جب لوک سبھا کے انتخابات میں نوجوت سنگھ کی اہلیہ نوجوت کور سدھو کو ٹکٹ نہیں دیا گیا تھا۔

افغانستان میں طالبان کا ہوٹل پر حملہ، 2 جنگجو اور 8 پولیس اہلکار ہلاک

کابل: افغانستان کے صوبے بادغیس کے ہوٹل میں طالبان جنگجوؤں کے حملے میں سیکیورٹی فورسز کے ساتھ گھمسان کی جھڑپ میں 8 پولیس اہلکار ہلاک اور 2 جنگجو مارے گئے۔

افغان میڈیا کے مطابق خود کش حملہ آورں کا ایک گروپ بادغیس کے قلعہ نو میں داخل ہوگیا اور ہوٹل کو دھماکے سے اُڑانے کی دھمکی دی تاہم وہاں موجود پولیس اہلکاروں نے حملہ آوروں پر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں دو خود کش بمبار دھماکا کرنے سے قبل ہی ہلاک ہوگئے۔

ہوٹل میں موجود دیگر طالبان جنگوؤں نے ساتھی خود کش بمبار کی ہلاکت کے بعد پوزیشن سنبھال لیں اور پولیس کے 8 اہلکاروں کو قتل اور 7 کو زخمی کر کے ہوٹل پر قابض ہوگئے تاہم افغان فوج نے ہوٹل میں کارروائی کرکے ہوٹل کو واگزار کروالیا۔

طالبان کی جانب سے حملے کی ذمہ داری قبول کرلی گئی ہے تاہم ترجمان طالبان کا دعویٰ ہے کہ حملہ بادغیس کے پولیس ہیڈ کوارٹر پر کیا گیا ہے جس میں افغان پولیس کو بڑے پیمانے پر جانی و مالی نقصان پہنچایا گیا۔

واضح رہے کہ امریکا اور افغان طالبان کے درمیان امن مذاکرات کا سلسلہ چین تک جا پہنچا ہے جہاں فریقین 11 سالہ جنگ کے خاتمے کے لیے روٹ میپ کے تعین کے لیے اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔

افغانستان میں پرتشدد واقعے میں امریکی فوجی ہلاک

کابل: افغانستان میں پرتشدد واقعے میں ایک امریکی فوجی ہلاک ہوگیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق نیٹو نے امریکی فوجی کی ہلاکت کی تصدیق کردی تاہم واقعے کی تفصیلات نہیں بتائیں کہ وہ علاقے اور کیسے مارا گیا۔ کسی عسکری تنظیم نے بھی اس فوجی کی ہلاکت کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔

رواں سال افغانستان میں امریکی فوجیوں کی ہلاکتوں کی تعداد 10 ہوگئی ہے۔ گزشتہ ماہ بھی طالبان کے ایک حملے میں دو امریکی فوجی ہلاک ہوئے تھے۔ 2018 میں افغانستان میں مختلف حملوں میں 12 امریکی فوجی مارے گئے تھے۔

ایک طرف تو امریکا اور طالبان کے درمیان جنگ بندی کے لیے مذاکرات جاری ہیں، دوسری طرف حالیہ عرصے میں افغانستان میں طالبان کے حملوں میں بھی اضافہ ہوگیا ہے۔

رواں ہفتے منگل کو ایک انٹرویو میں امریکی نمائندہ خصوصی برائے افغانستان زلمے خلیل زاد نے کہا تھا کہ امریکا اور طالبان کے درمیان مذاکرات میں 4 میں سے تین نکات پر اتفاق ہوگیا جن میں جنگ بندی، بین الافغان مذاکرات، افغانستان سے امریکی اتحادی افواج کا انخلا اور افغان سرزمین کی امریکا اور اتحادیوں کے خلاف استعمال نہ کرنے کی یقین دہانی شامل ہیں۔

صومالیہ کے ہوٹل میں خود کش حملہ، سیاست دانوں اور صحافیوں سمیت 26 افراد ہلاک

کیسمایو: صومالیہ میں ایک ہوٹل پر خود کش حملے اور فائرنگ کے نتیجے میں صحافیوں اور سیاست دانوں سمیت 26 افراد ہلاک اور 50 سے زائد زخمی ہو گئے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق شورش زدہ صومالیہ کے ہوٹل میں اس وقت خودکش حملہ کیا گیا جب وہاں مختلف سیاسی جماعتوں کے قائدین کا اہم اجلاس جاری تھا اور اس موقع پر سخت سیکیورٹی کے باوجود بارود سے بھری کار کو ہوٹل کے مرکزی دروازے پر ٹکرا کر دہشت گرد اندر داخل ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

درجن سے زائد دہشت گردوں نے ہوٹل کے اندر گھس کر اندھا دھند فائرنگ کی اس دوران صومالیہ کی فوج نے بھی ہوٹل کا گھیراؤ کرلیا اور 3 گھنٹے کی گھمسان کی جنگ کے بعد ہوٹل کو دہشت گردوں کے قبضے سے واگزار کر والیا تاہم اس دوران دو طرفہ فائرنگ سے 26 افراد ہلاک اور 50 سے زائد زخمی ہو گئے۔

خود کش حملے اور فائرنگ سے کینیا کے 2 صحافی بھی ہلاک ہوئے جو سیاسی قائدین کے اجلاس کی کوریج کے لیے ہوٹل میں موجود تھے، اس کے علاوہ صومالیہ میں ہونے والے صدارتی انتخاب کے ایک امیدوار بھی لقمہ اجل بن گئے جب کہ دیگر ہلاک ہونے والوں میں امریکی، برطانوی، کینیڈی شہری کے علاوہ کینیا اور تنزانیہ کے باشندے بھی شامل ہیں۔

صومالیہ کی ریاست جوبالند کے صدر احمد محمد کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ کیسمایو کے ہوٹل کو شدت پسندوں سے آزاد کروالیا گیا ہے، درجنوں افراد کو محفوظ مقام پر منتقل کیا گیا جب کہ اس دوران مقابلے میں جماعت الشباب سے تعلق رکھنے والے 4 حملہ آور بھی مارے گئے۔

نیپال اور بھارت میں مون سون بارشوں نے تباہی مچادی، 28 افراد ہلاک

کھٹمنڈو/دسپور: نیپال میں شروع ہونے والا مون سون بارشوں کا سلسلہ اپنی تمام تر تباہ کاریوں کے ساتھ  بھارت میں داخل ہوگیا جس کے نتیجے میں مجموعی طور پر 28 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق نیپال میں مون سون کی بارشوں نے بڑے پیمانے پر تباہی مچادی۔ لینڈ سلائڈنگ، بل بورڈز گرنے اور دیگر واقعات میں 17 افراد ہلاک ہوگئے جب کہ 50 سے زائد زخمی ہیں۔ کھٹمندو کی شاہراہیں تالاب کا منظر پیش کررہی ہیں اور نہروں میں طغیانی کا خطرہ پیدا ہوگیا ہے۔

Nepal Rain

نیپال میں ریسکیو اداروں نے بارش کے پانیوں میں پھنسے 5 ہزار سے زائد افراد کو محفوظ مقام تک پہنچایا جب کہ کھٹمنڈو کے تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔ بارشوں کے باعث بے گھر ہونے والے افراد کے لیے عارضی پناہ گزین کیمپ قائم کردیئے گئے ہیں جہاں طبی امداد بھی فراہم کی جا رہی ہے۔

مون سون بارشوں کا سلسلہ نیپال کے سرحد سے ملحقہ بھارتی ریاست آسام میں داخل ہوگیا جہاں کرنٹ لگنے اور لینڈ سلائڈنگ سے 11 ہلاکتیں ہوئیں جب کہ درجنوں افراد زخمی ہوگئے۔ بھارتی ریاستوں آسام اور اروناچل میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

Nepal Rain 2

دونوں ممالک کے محکمہ موسمیات نے عوام کو متنبہ کیا ہے کہ مزید دو دنوں تک بارشوں کا سلسلہ جاری رہے گا اس لیے تمام تر احتیاطی تدابیر کو اپناتے ہوئے بلا ضرورت گھروں سے باہر نہ نکلیں۔

ترکی کو روس سے ایس-400 میزائل کی پہلی کھیپ موصول

انقرہ: روس نے امریکی دھمکیوں کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے ایس-400 دفاعی میزائل نظام کی پہلی کھیپ ترکی کے حوالے کردی ہے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق ترکی کو روس کے ایس-400 میزائل نظام کی پہلی کھیپ موصول ہوگئی ہے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی پر اس معاہدے سے علیحدہ ہونے کے لیے شدید دباؤ ڈالا تھا اور خطرناک نتائج کا سامنا کرنے کی دھمکی بھی دی تھی۔

روس کا کہنا ہے کہ ایس-400 میزائل سسٹم کی پہلی کھیپ انقرہ کے میورتد ایئر بیس پہنچادی ہے جب کہ معاہدے کے تحت آہستہ آہستہ باقی کھیپ بھی بھیج دی جائے گی، ترک وزارت دفاع کی جانب سے بھی میزائل کی پہلی کھیپ کی آمد کی تصدیق کی گئی ہے۔

واضح رہے کہ امریکی صدر نے ترکی کو روس سے ایس-400 میزائل کی خریداری پر خبردار کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر ترکی باز نہ آیا تو امریکا ترکی سے ایف-35 اسٹیلتھ طیاروں کی خریداری کا معاہدہ منسوخ کردے گا، اس معاہدے کے تحت امریکا کو ترکی کے پائلٹس کو تربیت بھی دینا تھی۔

Google Analytics Alternative