بین الاقوامی

سعودی عرب میں تیل کی پائپ لائنوں پر دہشت گردوں کا حملہ

ریاض: سعودی عرب میں تیل کی تنصیبات اور پائپ لائنوں پر دہشت گردوں نے بارود بردار ڈرون سے حملہ کر دیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق سعودی عرب کے مشرقی صوبے میں واقع بندرگاہ ينبع البحر میں تیل کے دو پمپنگ اسٹیشن کو دہشت گردوں نے نشانہ بنایا ہے، ان پمپنگ اسٹیشن سے تیل سپلائی کیا جاتا ہے۔ حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا البتہ پمپنگ اسٹیشن کے ایک حصے میں معمولی سی آگ بھڑک اُٹھی تھی۔

پمپنگ اسٹیشن میں لگی آگ کو جلد ہی بجھا دیا گیا جب کہ پلانٹ کو تاحکم ثانی بند کردیا گیا ہے، ماہرین پمپنگ اسٹیشن کے تمام حصوں کے معائنے کے بعد کلیرنس دیں گے جس کے بعد پمپنگ اسٹیشن کو کھول دیا جائے گا۔

سعودی عرب کے وزیر توانائی خالد الفالح نے میڈیا کو بتایا کہ تیل کی تنصیبات کو ڈرون سے نشانہ بنایا گیا جس کے لیے ڈرون میں بارود بھرا گیا تھا۔ ڈرون کو تحویل میں لے لیا گیا ہے اور تحقیقات کا آغاز کردیا گیا ہے۔

دوسری جانب دو روز قبل خلیج عمان میں سعودی عرب کے دو تیل بردار بحری جہازوں پر حملہ کیا گیا تھا، ان میں سے ایک جہاز سعودی عرب سے امریکا کو تیل فراہم کرنے پر مامور تھا۔ جس پر امریکا اور سعودیہ نے ایران پر شک کا اظہار کرتے ہوئے مشترکہ تحقیقات کا اعلان کیا تھا۔

 

سری لنکا میں مسلم کش فسادات میں ایک مسلمان شہید، متعدد زخمی

کولمبو: سری لنکا میں مسلم کش فسادات کے دوران پرتشدد کارروائیوں میں ایک مسلمان کے شہید ہونے کی تصدیق کردی گئی ہے جب کہ متعدد زخمی ہیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق مسلمان دکاندار کی ایک فیس بک پوسٹ سے شروع ہونے والے فسادات میں ایک مسلمان کے شہید ہونے کی تصدیق کردی گئی ہے جب کہ متعدد زخمی ہیں، سیکڑوں مسلمانوں نے تھانوں میں پناہ لے رکھی ہے, مساجد، مسلمانوں کی املاک و کاروبار کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا ہے۔ ملک کے کئی حصوں میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔

پولیس نے 45 سالہ مسلمان دکاندار کو چھریوں کے وار کر کے قتل کرنے کے الزام میں 2 افراد کو گرفتار کرلیا، جن میں سنہائی بدھ مت کمیونیٹی کے پرچاری امیت ویراسنگھے اور کرپشن کیخلاف جدوجہد کرنے والے خود ساختہ لیڈر نمل کمارا شامل ہیں جب کہ 13 دیگر افراد کو بلوے اور ہنگامہ آرائی پر حراست میں لیا گیا ہے۔

سری لنکا حکومت کے مسلمان وزیر رؤف حکیم نے مسلمان کی شہادت کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ مشتعل افراد نے ایک مسلمان شخص کو شمال مغربی علاقے میں بہیمانہ تشدد کر کے شہید کیا۔ حملے مسیحی کمیونٹی اور سری لنکن کی اکثریتی سنہالی آبادی کی جانب سے کیے گئے۔

گزشتہ روز شروع ہونے والے مسلم کش فسادات کے بعد حکومت نے شمال مغربی علاقے کے کئی اضلاع میں کرفیو نافذ کردیا تھا جب کہ ان علاقوں میں افواہوں کی روک تھام کے لیے سوشل میڈیا پر پابندی عائد کردی گئی تھی۔ ایسٹر کے موقع پر چرچوں اور ہوٹلوں میں خود کش حملوں میں 250 افراد کی ہلاکت کے بعد مسلمان آبادیوں پر حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔

جرمنی میں دو مختلف مقامات سے تیر لگی 5 لاشیں برآمد

برلن: جرمنی میں ایک گیسٹ ہاؤس سے 3 افراد کی تیر لگی لاشیں برآمد ہونے کے بعد ان میں سے ایک کے گھر سے مزید 2 خواتین کی تیر لگی لاشیں ملی ہیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق گزشتہ روز علی الصبح گیسٹ ہاؤس کے کمرے سے 53 سالہ مرد اور 2 خواتین کی لاشیں ملی تھیں، خواتین کی عمریں 33 اور 30 سال تھیں۔ تینوں لاشوں پر تیر پیوست تھے اور کمرے سے دو کمانیں بھی ملیں۔

پولیس کو تحقیقات کے دوران گیسٹ ہاؤس سے ملنے والے لاشوں میں ایک خاتون کے گھر واقع ویٹینگن سے مزید 2 خواتین کی لاشیں ملی ہیں، ان لاشوں پر بھی تیر پیوست ہوئے تھے۔ پولیس نے پانچوں لاشوں کو پوسٹ مارٹم کے لیے بھیج دیا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ پراسرار لاشوں کی تحقیقات جاری ہیں اور حیران کن طور پر ایک ہی طریقے سے قتل ہونے والے پانچوں افراد کا کوئی تعلق سامنے نہیں آیا ہے اور پانچوں کی رہائش الگ الگ صوبوں سے ہیں لیکن یہ واضح نہیں ہوسکا کہ تینوں افراد کیوں اور کس حیثیت سے گیسٹ ہاؤس میں قیام پذیر تھے۔

سیکیورٹی فورسز کے سرچ آپریشن میں 16 طالبان جنگجو ہلاک

کابل: افغانستان میں سیکیورٹی فورسز کے سرچ آپریشن کے دوران 16 طالبان جنگجو مارے گئے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق افغانستان کے صوبے فراہ میں مسلح طالبان جنگجوؤں نے پولیس چیک پوسٹوں کو نشانہ بنایا تاہم پولیس نے افغان فوج کی مدد سے حملہ آور جنگجوؤں کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کردیا جس کے بعد علاقے میں مشترکہ سرچ آپریشن کا آغاز کیا گیا۔

افغان حکومت نے صوبے فراہ میں افغان افواج اور پولیس کے مشترکہ سرچ آپریشن کے دوران 16 طالبان جنگجوؤں کی ہلاکت اور 21 کے زخمی ہونے کا دعویٰ کیا ہے، سرچ آپریشن میں ایک افغان فوجی ہلاک اور 2 زخمی بھی ہوئے جب کہ 2 بارودی سرنگوں کو بھی ناکارہ بنایا گیا۔

طالبان نے فراہ میں سرچ آپریشن کے دوران جنگجوؤں کی ہلاکت کے افغان حکومت کے دعوے کو مسترد کردیا ہے تاہم پولیس چیک پوسٹوں پر حملے کے ناکام ہونے پر بھی کسی قسم کا تبصرہ نہیں کیا۔

دوسری جانب چین اور ایران کے نمائندہ خصوصی برائے افغانستان نے گزشتہ روز تہران میں ایک اہم ملاقات کی اور افغانستان سمیت خطے میں قیام امن کی کوششوں سے متعلق تبادلہ خیال کیا، دونوں رہنماؤں نے افغانستان امن مذاکرات میں اپنا کردار ادا کرنے پر اتفاق کرتے ہوئے مذاکرات کی رفتار پر اطمینان کا اظہار کیا۔

سری لنکا میں مسلم کش فسادات کے بعد کرفیو نافذ

کولمبو: سری لنکا کے بعض علاقوں میں مسلم کش فسادات کے بعد کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے اور سوشل میڈیا پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق سری لنکا کے بعض اضلاع میں مسلم کش فسادات پھوٹ پڑے جس کے دوران مسلمانوں کی املاک کو نذر آتش کیا گیا اور مساجد کو بھی نقصان پہنچایا گیا۔ مسلمان شہریوں نے تھانوں میں پناہ لے رکھی ہے۔

مقامی انتظامیہ نے فسادات پر قابو پالینے کے لیے متاثرہ اضلاع میں کرفیو نافذ کردیا ہے اور افواہوں کی روک تھام کے لیے سوشل میڈیا پر پابندی لگادی گئی ہے۔ پولیس نے درجنوں افراد کو حراست میں لے لیا ہے تاہم زیر حراست افراد کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ تازہ فسادات کا آغاز چیلاو نامی قصبے کے ایک مسلمان دکاندار کی فیس بک پوسٹ کے بعد ہوا جس میں اس نے لکھا کہ بہت ہنسو مت، ایک روز تم سب لوگ رو گے۔ اس فیس بک پوسٹ کو مقامی مسیحی باشندوں نے دھمکی سمجھا اور مسلمان دکاندار کو تشدد کا نشانہ بنایا۔

قبل ازیں مشتعل کیتھولک عیسائی گروہ نے مسلمان رکشہ والے سے معمولی تلخ کلامی کے بعد رکشے کو آگ لگادی تھی اور مسلمانوں کی املاک کو نذر آتش کردیا تھا۔ ایسٹر دھماکوں کے بعد مسلمان آبادیوں پر حملوں کا سلسلہ تاحال جاری ہے۔

واضح رہے کہ ایسٹر کے موقع پر سری لنکا کے 3 چرچوں اور 3 ہوٹلوں پر خود کش دھماکے میں 250 سے زائد افراد ہلاک اور 500 سے زائد زخمی ہوگئے تھے۔ دھماکے کی ذمہ داری داعش نے قبول کی تھی اور خود کش بمبار مقامی شہری تھے۔

آبنائے ہرمز کے نزدیک سعودی عرب کے تیل بردار بحری جہازوں پر حملہ

ریاض: خلیجی ممالک سے دنیا بھر کو تیل کی فراہمی کے لیے استعمال ہونے والی واحد گذر گاہ آبنائے ہرمز کے نزدیک سعودی عرب کے 2 تیل بردار بحری جہازوں کو نشانہ بنایا گیا۔

سعودی خبر رساں ادارے کے مطابق آبنائے ہرمز کے نزدیک متحدہ عرب امارات کی بندرگاہ الفجیرہ میں 2 سعودی بحری جہازوں کو نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں جہازوں کو نقصان پہنچا تاہم تمام عملہ محفوظ ہے، دونوں جہاز تیل کی ترسیل پر مامور تھے اور ان میں سے ایک بحری جہاز امریکا کو تیل کی فراہمی کے لیے اپنے روٹ پر تھا۔

متحدہ عرب امارات اور ایران کی جانب سے سعودی بحری جہازوں پر حملے کے واقعے کی تفصیلات جاری کی تھیں تاہم اب تک حملہ آوروں اور حملے کی نوعیت سے میڈیا کو آگاہ نہیں کیا گیا ہے، سعودی وزیر تیل خالد الفالح نے سعودی جہازوں کو نشانہ بنانے کو تیل کی بین الاقوامی ترسیل کو نقصان پہنچانے کی ایک کوشش قرار دیا۔

متحدہ عرب امارات نے الفجیرہ بندرگاہ پر سعودی عرب کے تیل بردار بحری جہازوں پر حملے کی تحقیقات کا آغاز کردیا ہے تاہم ابتدائی طور پر حملہ آوروں سے متعلق کچھ پتہ نہیں چل سکا ہے۔ سعودی بحری جہازوں پر حملے وقت الفجیرہ بندرگاہ پر دھماکوں کی بھی آوازیں سنی گئی تھیں اور کہا جا رہا ہے کہ 4 بحری جہازوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

واضح رہے کہ ایران سے کشیدگی کے بعد امریکا نے طیارے بردار بحری بیڑا اور بی-52 فائٹر جیٹ طیاروں کو قطر میں اپنی فوجی کیمپ میں پہنچانے کے بعد خلیج فارس میں تناؤ میں اضافہ ہو گیا ہے۔

امریکا کی خلیجی ممالک میں موجودگی ’خطرہ‘ نہیں ’ہدف‘ ہے، ایرانی کمانڈر

تہران: پاسداران انقلاب کے کمانڈر نے کہا ہے کہ امریکی افواج کی خلیجی ملک میں موجودگی ہمارے لیے دھمکی یا خطرہ نہیں بلکہ ہمارا ہدف ہے جسے ہم آسانی سے نشانہ بناسکتے ہیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق پاسداران انقلاب کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ قطر میں امریکی بحری بیڑے اور جیٹ فائٹر بی-52 طیاروں کی موجودگی ایران کے لیے خطرہ نہیں بلکہ ہدف ہے جسے ہم آسانی سے نشانہ بناسکتے ہیں۔

پاسداران انقلاب کی جانب سے بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب امریکا نے اپنے جیٹ فائٹرز طیارے بی-52 قطر میں اپنے فوجی کیمپ منتقل کیے اور طیارے بردار ایک بحری بیڑا بھی قطر کے لیے روانہ کیا ہے۔ امریکا نے یہ اقدامات ایران کی جانب سے عالمی جوہری معاہدے کی بعض شقوں سے دستبرادی کے بعد اُٹھائے۔

ایران اور امریکا کے درمیان تناؤ سے خلیجی ممالک میں کشیدگی کی صورت حال پیدا ہوگئی ہے اور گزشتہ روز آبنائے ہرمز کے نزدیک متحدہ عرب امارات کی بندرگاہ الفجیرہ پر دو تیل بردار سعودی بحری جہازوں پر حملہ کیا گیا، تاہم حملہ آوروں کا معلوم نہیں ہوسکا ہے۔ ایران کئی بار آبنائے ہرمز کو بند کرنے کی دھمکی دے چکا ہے۔

سعودی عرب میں پولیس مقابلے کے دوران 8 دہشت گرد ہلاک

ریاض: سعودی عرب میں پولیس کی چھاپہ مار ٹیم اور دہشت گردوں کے درمیان جھڑپ میں 8 دہشت گرد مارے گئے۔

سعودی خبر رساں ایجنسی کے مطابق سعودی عرب کے شہر القطیف میں دہشت گردوں کی موجودگی کی اطلاع پر پولیس نے چھاپہ مارا جس پر ملزمان نے پولیس پارٹی پر فائرنگ کردی، پولیس کی جوابی کارروائی میں آٹھوں دہشت گرد مارے گئے۔

پولیس ترجمان کا کہنا ہے کہ دہشت گردوں کو ہتھیار ڈالنے کا کہا گیا تھا لیکن ملزمان نے پولیس پارٹی پر فائرنگ کردی، پولیس مقابلے میں تمام پولیس اہلکار محفوظ رہے جب کہ کسی شہری کے زخمی ہونے کی بھی اطلاع نہیں۔ یہ ایک کامیاب ترین سرچ آپریشن تھا۔

پولیس  ترجمان کا مزید کہنا تھا کہ مقابلے میں مارے گئے تمام دہشت گرد ریاست مخالف سرگرمیوں اور دہشت گردی کے مقدمات میں پولیس کو مطلوب تھے اور ایک خفیہ ٹھکانے پر چھپے ہوئے تھے۔ دہشت گردوں کی تلاش میں اس سے قبل بھی چھاپہ مار کارروائی کی گئی تھی لیکن ملزمان فرار ہوگئے تھے۔

پولیس کی جانب سے ملزمان کی شناخت اور تصاویر تاحال جاری نہیں کی گئی ہیں۔ قبل ازیں وزارت داخلہ کے ایک تفتیشی دفتر پر بھی دہشت گردوں نے حملہ کردیا تھا جسے سیکیورٹی فورسز نے ناکام بناتے ہوئے چاروں حملہ آوروں کو مار دیا تھا۔

 

Google Analytics Alternative