بین الاقوامی

چین کاون چائلڈپالیسی تبدیل کرنے کا اعلان

بیجنگ: چین نے’ون چائلڈپالیسی‘ تبدیل کردی ، اب والدین کو دوسرا بچہ پیداکرنے کی بھی اجازت ہوگی جس کا اطلاق ابتدائی طورپر تین صوبوں میں کردیاگیاجبکہ دیگرصوبوں نے بھی محکمہ صحت سے رابطے شروع کردیے تاہم ابتدائی طورپر یہ واضح نہیں ہوسکاکہ کتنے وقفے کے بعد وہ دوسرا بچہ پیداکرسکتے ہیں۔چینی میڈ یا کے مطابق نیشنل پیپلز کانگریس کی مجلس قائمہ نے ون چائلڈ پالیسی میں تبدیلی کے لیے اصلاحات نافذ کرنے کا اعلان کردیا ہے، پالیسی میں تبدیلی کے لیے قائمہ کمیٹی میں چھ روز تک بحث جاری رہی۔بتایاگیاہے کہ کمیٹی نے بالآخر پالیسی کو مرحلہ وار ختم یا اس میں ترمیم کا فیصلہ کیا اور خاندانی منصوبہ بندی سے متعلق نئی پالیسی کو ابتدائی طور پر تین صوبوں میں نافذ کردیاگیا۔چین کے قومی ادارے برائے صحت اور خاندانی منصوبہ بندی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ملک میں خاندانی منصوبہ بندی سے متعلق نئی پالیسی کا اطلاق تین صوبوں، ڑی جیانگ، آنہوئی اور جیانگ شی میں کردیا گیا ہے، نئی پالیسی کے تحت اب ہر وہ خاندان جس میں میاں یا بیوی میں سے ایک اپنے والدین کی اکلوتی اولاد ہو تو وہ دو بچے پیدا کرسکیں گے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ مزید 9 صوبوں نے بھی نئی پالیسی کے اطلاق کیلئے اپنے پلان کو جمع کرادیا ہے۔یادرہے کہ چین میں 1979ئ سے ون چائلڈ پالیسی نافذ تھی جس کی وجہ سے 400 ملین بچوں کی پیدائش متاثرہوئی اور ملک کو انسانی وسائل کا بھی سامنا کرنا پڑرہاتھا،نوجوانوں کی آبادی میں اضافے کیلئے حکومت نے آخرکار آبادی پر کنٹرول کرنے کی پالیسی کو نرم کردیااورپالیسی میں اصلاحات لاتے ہوئے دو بچوں کے رکھنے کی اجازت دے دی گئی ہے، نئی پالیسی آئندہ چھ سال تک جاری رہے گی جبکہ اس سے ملک کی آبادی میں مزید ایک کروڑ تیس لاکھ بچوں کی آمد متوقع ہے۔

کوڑا اٹھانے والی لڑکی کی قسمت چمک گئی

بنکاک :تھائی لینڈ کی سترہ سالہ لڑکی پر قسمت کی دیوی مہربان ہو گئی کہ کوڑا چننے والی بن گئی ملکہ حسن قسمت جب مہربان ہو تو ایسا بھی ہوتا ہے ، تھائی لینڈ میں سترہ سالہ کوڑا چننے والی لڑکی کے سر پر ملکہ حسن کا تاج سجا دیا گیا۔ فاتح سترہ سالہ منٹ کانشتہ کوڑا چنا کرتی تھی۔
ملکہ حسن کا کہنا ہے کہ کوڑا چننے سے ملکہ حسن بننے کا سفر کٹھن رہا ، تھائی لینڈ کے لاکھوں دلوں کی دھڑکن بننے والی منٹ کانشتہ کو اپنے ماضی پرکوئی شرمندگی نہیں۔ – ملکہ حسن نے اپنی ماں کی قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے ملکہ حسن کے تاج سے سجے سرماں کے قدموں میں رکھ دیا۔ ملکہ حسن کی زندگی یقینا بہت سے لوگوں کے لئے ایک مثال ہے۔

ترکی پاکستان کو 34 ’ٹی-37 لڑاکا طیارے مفت فراہم کرے گا۔

اسلام آباد/انقرہ: پاکستان اور ترکی نے بدھ کو ایک تاریخی معاہدے پر دستخط کیے ہیں، جس کے تحت ترکی پاکستان کو 34 ’ٹی-37 لڑاکا و تربیتی طیارے اور سپیئر پارٹس‘ مفت فراہم کرے گا۔معاہدے پر دستخط انقرہ میں ’پاکستان-ترکی ہائی لیول ملٹری ڈائیلاگ گروپ‘ کے 11ویں اجلاس کے اختتام پر ہوئے۔پاکستانی وزارت دفاع کے ترجمان نریتا فرحان نے میڈیا کو بتایا کہ ٹی-37 جیٹ ٹرینر اور کامبیٹ طیارہ ہے اور ترکی نے پاکستان کی خواہش پر ایسے 34 طیارے اور سپئیر پارٹس فری دینے کا معاہدہ کیا ہے۔سیکریٹری دفاع لیفٹیننٹ جنرل (ر) محمد عالم خٹک نے دورے کے دوران پاکستان کی دفاعی صلاحیت اور موجودہ عالمی صورتحال میں اس کی مطابقت کو نمایاں کیا۔خٹک نے دونوں ملکوں کی دفاعی صنعت کے درمیان تعاون کو مزید وسعت دینے کی خواہش بھی ظاہر کی۔انہوں نے اجلاس کو نہایت کامیاب قرار دیتے ہوئے مذاکرات کے دوران دونوں جانب سے متفقہ خیالات سامنے آنے پر اطمینان بھی ظاہر کیا۔

نیپال میں پہلی مرتبہ خاتون صدر منتخب

کھٹمنڈو: گزشتہ مہینے تاریخی آئین منظور کرنے کے بعد نیپال کی پارلیمنٹ نے ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ ایک خاتون کو صدر منتخب کیا ہے۔

سابق وزیر دفاع بدھیا بندھاری کو صدر مملکت کے عہدے کیلئے 327 جبکہ ان کے حریف کل بہادر گورنگ کو 214 ووٹ ملے۔

حکمران کمیونسٹ پارٹی کی وائس چیئرپرسن بندھاری اب رام برن یادو کی جگہ ذمہ داریاں سنبھالیں گی۔ 240 سالہ پرانی ہندو بادشاہت ختم ہونے کے بعد یادو 2008 میں نیپال کے پہلے صدر منتخب ہوئے تھے۔

بندھاری نے لڑکپن میں بادشاہت ختم کرنے کے مطالبے کے ساتھ سیاست شروع کی اور بعد میں ساتھی کمیونسٹ مدن بندھاری سے شادی کی۔

تاہم، 1993 میں ایک حادثہ میں شوہر کے انتقال کے بعد بندھاری تیزی سے اوپر آئیں اور ہمدردی کا ووٹ جیت کر پارلیمنٹ پہنچیں۔

ابتدا میں صدر یادو کو صرف دو سال کیلئے عہدہ سنبھالنا تھا، لیکن ملک میں سیاسی کشیدگی کی وجہ سے نئے متفقہ آئین کو لانے میں تاخیر ہوئی۔

ملک کی پہلی خاتون سپیکر پارلیمنٹ ماگر کے بعد 54 سالہ بندھاری دوسری خاتون ہیں جو سینئر ترین عہدے تک پہنچیں۔

نئے آئین کے تحت پارلیمنٹ نے رواں مہینے نئے وزیر اعظم کے پی شرما اولی کو بھی منتخب کیا ہے۔

ماؤ باغیوں کی جانب سے اسلحہ ڈالنے اور سیاسی دھارے میں شامل ہونے کے بعد 2008 میں نئے آئین پر کام شروع ہوا تھا لیکن سیاسی کشیدگی کی وجہ سے تاخیر کا سامنا کرنا پڑا۔

شریک حیات کے موبائل فون کی جاسوسی سے متعلق دلچسپ تحقیق

لندن:  کسی کے فون کی چوری چھپے تلاشی لینا یا پیغامات پڑھنا غیر اخلاقی سمجھاجاتا ہے لیکن ایک تحقیق میں انکشاف ہواہے کہ 20 فیصد مرد اور 25 فیصد خواتین اپنے شریک حیات کے فون پر موجود تصویروں، ویڈیوز اور میسج کو چھپ کر دیکھتے ہیں۔ ہالینڈ میں کی گئی اس تحقیق میں 132 لوگوں سے سوالات کئے گئے جس دوران اکثریت کا کہنا تھا کہ وہ اپنے شریک حیات کا جھوٹ پکڑنے کیلئے ایسا کرتے ہیں اور دلچسپ بات یہ ہے کہ اکثریت کا شک درست ثابت ہوا۔ خواتین کی 71 فیصد تعداد نے بتایا کہ انہیں خاوند پر شک کی صورت میں موبائل فون سے اس کے شواہد مل گئے جبکہ 50 فیصد سے زائد مردوں نے کہا کہ ان کے ساتھ ایسا ہوچکا ہے۔ چالیس فیصد خواتین کا کہنا تھا کہ ان کے خواند کے فون پر کوئی پاسورڈ نہیں لگایا گیا تھا جبکہ 33 فیصد مردوں کا کہنا تھا کہ بیوی کے فون پر پاس ورڈ نہیں لگا ہوا تھا۔ جن لوگوں کو شریک حیات کا پاس ورڈ معلوم تھا انہوں نے بتایا کہ یہ انہیں پہلے کسی وقت بات چیت میں معلوم ہوگیا تھا۔ پچاس فیصد سے زائد لوگوں نے بتایا کہ فون کی تلاشی لینے سے ان کے شکوک و شبہات کی تصدیق ہوگئی۔ یہ تحقیق انٹرنیٹ سکیورٹی کمپنی ایواسٹ نے کی۔

نیویارک پولیس کے وفد کا دورہِ پاکستان

اسلام آباد: نیو یارک سٹی پولیس ڈیپارٹمنٹ کے دو افسر معلومات کا تبادلہ کرنے کیلئے آٹھ روزہ دورے پر منگل کو پاکستان پہنچ گئے۔
امریکی حکومت کے فنڈ شدہ اس پروگرام کا مقصد دونوں ملکوں کی پولیس فورس کے درمیان مثبت اور کارآمد تعلقات کو بڑھانا ہے۔
این وائی پی ڈی کے کمیونٹی افیئرز بیورو کے عدیل رانا اور ایلوس وکلج نے پاکستان نیشنل پولیس شہدا کی یادگار پر پھول چڑھائے اور اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے کے سپانسر شدہ ’انٹرنیشنل کرمنل انوسٹیگیشن ٹریننگ اسسٹنٹ پروگرام‘ کے بارے میں گفتگو کی۔
رانا نے کہا کہ بطور پاکستانی نڑاد امریکی وہ پاکستان آ کر اور کمیونٹی پولیسنگ پر مقامی پولیس حکام سے گفتگو اور تجربات شیئر کرنے پر بہت خوش ہوئے۔
این وائی پی ڈی میں مسلمان افسروں کی سوسائٹی کے صدر رانا کے مطابق، انٹریکٹیو کمیونٹی کی وجہ سے انہیں جرائم سے نمٹنے میں تحریک ملتی ہے۔
توقع ہے کہ رانا وکلج دوسری قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں سے بھی ملیں گے۔
وکلج نے بتایا کہ انہیں مختلف برادریوں سے دیرپا تعلقات قائم کرنے اور رابطوں میں رکاوٹ ختم کرنے میں کھیل بہترین ذریعہ لگا۔
’میں رواں ہفتہ پاکستانی پولیس افسروں اور طالب علموں کے ساتھ کرکٹ کھیلنے کا منتظر ہوں‘۔
خیال رہے کہ ستمبر میں برطانوی حکومت نے کراچی پولیس کی صلاحیتوں میں اضافے کیلئے تربیت فراہم کرنے کی ہامی بھری تھی۔

امریکی جنگی بحری جہاز کی چینی جزائر کے پاس گشت,کشیدگی میں اضافہ

بیجنگ:مریکا نے جنوبی چین کے سمندر میں چین کی جانب سے قائم کئے جانے والے مصنوعی جزیروں کے پاس ایک جنگی بحری جہاز روانہ کیا ہے جس پر چین نے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے مشورہ دیا ہے کہ امریکا کسی بھی مہم سے باز رہے۔ یوایس ایس لیسن نامی امریکی بحری جہاز اس وقت چینی جزائر سے صرف 12 ناٹیکل میل کے فاصلے سے گزرا ہے جہاں چین نے سمندر سے زمین واگزار کرا کر مصنوعی جزیرے (اسپراٹیلز) تعمیر کیے ہیں۔ جہاز کئی گھنٹوں تک اس مقام پر موجود رہا اور یہ سب امریکی بحریہ کی جانب سے سمندر میں ا?زادانہ گشت ( فریڈم ا?ف نیوی گیشن) منصوبے کے تحت کیا جارہا ہے۔ چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ’ متعلقہ اداروں‘ پر نظر رکھی جارہی ہے اور خبردار کیا ہے کہ جہاز چینی حکومت سے اجازت لیے بغیر ’ غیرقانونی طورپر چینی جزیرے کی حدود میں داخل ہوا ہے، اگر جان بوجھ کر اشتعال دلایا گیا تو چین اس کا جواب دینے کا حق رکھتا ہے اور اپنے سمندر اور اس کی فضا پر نظر رکھتے ہوئے ضرورت کے تحت اقدامات اٹھائیں جائیں گے۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ چین کی سلامتی اور خودمختاری کو چیلنج کرنا خطرناک ہوسکتا ہے۔ دوسری جانب امریکی دفاع کے افسران کا کہنا ہے کہ اگلے ہفتے خطے کے اضافی گشت کیے جائیں گے اور یہ اسپراٹیلز کے ان علاقوں میں کئے جائیں گے جو کبھی ویت نام اور فلپائن نے تعمیر کیے تھے اور یہ صرف چین کے لیے ہی مخصوص نہیں۔ دوسری جانب وائٹ ہاو¿س ترجمان جوش ارنسٹ نے کہا ہے کہ چین پر یہ واضح کردیا گیا ہے کہ جنوبی چینی سمندر ایک اہم تجارتی راستہ ہے اور ا?زاد تجارت میں یہ عالمی اہمیت کا راستہ ہے۔

قبلے کے رخ کا تعین کرنے کے لئے انوکھی جائے نماز تیار

انقرہ: ترکی میں ماہرین نے قبلے کی سمت کا تعین کرنے والی جائے نماز متعارف کرادی۔ ترکی میں ماہرین نے لوگوں کی سہولت کے لیے ایک ایسی جائے نماز متعارف کرائی ہے جو قبلے کی سمت بتانے میں مددگارثابت ہوگی۔ اس جدید جائے نماز کو جیسے ہی نماز کے لیے رکھا جائے تو یہ خود بہ خود ہی قبلہ رخ ہوکر روشن ہوجائے گی جب کہ اس کی اہم خصوصیت یہ بھی ہے کہ اسے عام جائے نماز کی طرح باآسانی فولڈ بھی کیا جاسکتا ہے۔ جائے نماز کو بنانے والے انجینئرز کا کہنا ہے کہ یہ جائے نماز خصوصاً ایسے لوگوں کے لیے کارآمد ہے جو سفر کے دوران نماز کی ادائیگی کے لیے قبلے کے رخ کا تعین کرنے کے لیے پریشانی کا شکار ہوتے ہیں۔

Google Analytics Alternative