اداریہ کالم

بلوچستان میںٹیوب ویلوں کو سولرائز کرنے کامنصوبہ

وزیر اعظم شہباز شریف نے ملک کے جنوب مغربی صوبہ بلوچستان میں 27,000 ٹیوب ویلوں کو سولرائز کرنے کے لیے 197 ملین ڈالر سے زائد کے منصوبے کا اعلان کیا جس میں سے 70 فیصد مرکز ادا کرے گا جبکہ باقی رقم بلوچستان حکومت ادا کرے گی۔ یہ ایسا خطہ ہے جہاں کبھی کبھار بارشیں ہوتی ہیں جو ملک کے معاشی طور پر پسماندہ ترین علاقوں میں سے ایک ہے۔یہ اعلان، جسے شریف نے تاریخی قرار دیا، وزیر اعظم کے بلوچستان کے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے ایک روزہ دورے کے دوران سامنے آیا جہاں انہوں نے گورنر اور وزیر اعلی سے الگ الگ ملاقاتیں کیں تاکہ بجلی کی کٹوتی اور سیکورٹی کے خطرات سمیت دیگر امور پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔ ملک کی کل اراضی کا تقریبا 44 فیصد حصہ بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے، جس کی آبادی تقریبا 12 ملین نفوس پر مشتمل ہے۔ یہ خطہ پاکستان کے غریب ترین علاقوں میں سے ایک ہے اور ناقص سکیورٹی، ناہموار خطہ، پانی کی ناقابلِ بھروسہ فراہمی اور روزگار کے محدود مواقع سے لڑتا ہے۔پانی کی قلت کے باوجود، زراعت اور مویشی پالنے والے زیادہ تر منتشر آبادی کے لیے آمدنی کے بڑے ذرائع ہیں۔27,000 ٹیوب ویل جو بجلی سے چلتے ہیں، ان کے بجلی کے کنکشن ختم کر دیے جائیں گے اور کسانوں کو سولر کنکشن فراہم کیے جائیں گے۔گزشتہ دس سالوں میں، وزیر اعظم شہباز شریف نے بلوچستان کابینہ کے ارکان کو بتایا کہ وفاقی حکومت نے بلوچستان کے ٹیوب ویلوں کے لیے بجلی کے بلوں کی مد میں 500 ارب روپے ($ 1.8 بلین) ادا کیے، اس پر افسوس کا اظہار کیا کہ مرکز کو بھاری سبسڈی ادا کرنا پڑی کیونکہ صوبائی حکومت برداشت نہیں کر سکتی کہ حد سے زیادہ بل ادا کریں۔جب یہ ٹیوب ویل شمسی توانائی پر چلائے جائیں گے، تو(اوسط)کسان اپنی زمین کو زرخیز بنانے کے لیے پانی فراہم کرے گا۔ اور شمسی توانائی سے جو بجلی پیدا ہوتی ہے وہ بہت سستی ہے، یہ دنیا کی سب سے سستی بجلی ہے۔وزیر اعظم شہباز شریف نے 8 جولائی 2024 کو کوئٹہ میں بلوچستان کے زرعی ٹیوب ویلوں کو سولرائز کرنے کے معاہدے پر دستخط کرنے کے بعداصلاحات کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے اعلان کیا کہ اگر پاکستان نے سخت فیصلے نہ کیے تو ملک کو ایک بار پھر انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) کا دروازہ کھٹکھٹانا پڑے گا۔اگر ہم نے اصلاحات متعارف نہیں کروائیں اور سخت فیصلے نہ کیے تو ہمیں تین سال بعد دوبارہ آئی ایم ایف سے رجوع کرنا پڑے گا جب نیا قرضہ پروگرام ختم ہو جائے گا،اور یہ شرم کی بات ہو گی اگر ہمیں دوبارہ آئی ایم ایف کی مدد لینا پڑے۔ ہمیں رواں ماہ کے دوران آئی ایم ایف کا نیا پروگرام حاصل کرنا ہے اور پھر مل کر اپنے مسائل کے حل کے لیے دن رات محنت کریں گے۔وسطی ایشیا کے علاقائی اقتصادی تعاون کے مطابق صوبہ بلوچستان کے مخصوص معاملے میں پاکستان کی کل تکنیکی شمسی اور ہوا کی صلاحیتیں بالترتیب 2,900 GW اور 340 GW ہیں۔مزید برآں، بلوچستان میں 5-10 سالوں میں 14 GWسے زیادہ قابل تجدید توانائی کو کم لاگت والے راستوں کے ذریعے لاگو کرنے کی صلاحیت ہے، بشمول 9,500 – 11,500MWp کے PVیوٹیلیٹی سکیل پلانٹس۔ چائنا اکنامک نیٹ (CEN) نے رپورٹ کیا کہ بلوچستان کا جغرافیہ، شعاع ریزی اور محل وقوع اسے قابل تجدید ذرائع کے حوالے سے پاکستان کے سب سے زیادہ امکانات والے صوبوں میں سے ایک بناتا ہے۔ سولر جنریشن کے ساتھ جوڑ بنانے والے ڈی سینٹرلائزڈ مائیکرو گرڈ کا استعمال دیہی باشندوں کے لیے بجلی کی قابل اعتماد رسائی کو بڑھانے کے لئے کیا جا سکتا ہے جبکہ مائیکرو گرڈز عام طور پر صرف بنیادی الیکٹریفیکیشن(اعلیٰ معیار کی روشنی اور موبائل فون کی چارجنگ)فراہم کرتے ہیں، یہ ایک سے زیادہ گھرانوں کے لیے طویل مدت میں نمایاں طور پر کم قیمت پر ایسا کرنے کے قابل ہے،چینی حکومت کے تعاون سے بلوچستان حکومت نے 12 تعلیمی اداروں، کمپیوٹر لیبز اور ہسپتالوں میں سولرائزیشن کے منصوبے مکمل کیے ہیں، ان میں شمسی توانائی کی جدید سہولیات کو بڑھایا ہے۔ پاکستان کی شمسی صلاحیت 2022 تک 1.24میگا واٹ تک پہنچ گئی جو کہ 2021 سے17فیصد اضافے کے ساتھ، شمسی توانائی کے حصص کو مزید بڑھانے کے لئے تجویز کردہ اقدامات کے ساتھ۔ پاکستان کی سولر انرجی مارکیٹ میں 2023سے 2028تک 49.68 فیصد کی سی اے جی آر سے بڑھنے کا امکان ہے۔ بلوچستان، شمسی اور ہوا کی وسیع صلاحیتوں کے ساتھ، 5-10سالوں کے اندر 14 گیگا واٹ سے زیادہ قابل تجدید توانائی، خاص طور پر پی وی یوٹیلیٹی سکیل پلانٹس کا استعمال کر سکتا ہے۔ چائنا اکنامک نیٹ نوٹ کرتا ہے کہ ڈی سینٹرلائزڈ مائیکرو گرڈز اور سولر جنریشن کے ساتھ دیہی علاقوں تک بجلی کی قابل اعتماد رسائی کو بڑھانے کےلئے ایک سرمایہ کاری مثر ذریعہ پیش کرتے ہیں۔
پاکستان میں روزمرہ زندگی پر مہنگائی کے اثرات
پاکستان اس وقت معاشی بحران سے دوچار ہے جس کی تعریف آسمان کو چھوتی مہنگائی سے ہے۔ قیمتوں میں اضافہ، بہت سے ضروری سامانوں میں، تمام آمدنی والے گروپوں کے شہریوں پر تباہ کن اثرات مرتب کیے ہیں۔ پاکستانیوں کے لئے روزمرہ کی زندگی بقا کے لئے تیزی سے مایوس کن جدوجہد بن چکی ہے۔کم آمدنی والے خاندانوں کے لئے، مہنگائی نے انتہائی بنیادی ضروریات کی قیمت کو بھی پہنچ سے باہر کر دیا ہے۔ گندم کے آٹے، چاول اور کوکنگ آئل جیسے اسٹیپلز کی قیمتیں بڑھ گئی ہیں، بہت سے لوگوں کو مشکل انتخاب کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔ رپورٹس بہت زیادہ ہیں کہ والدین کھانا چھوڑتے ہیں تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ ان کے بچوں کے پاس کھانے کےلئے کچھ ہے جبکہ دوسرے خود کو دائمی بیماریوں کے لیے اہم ادویات کے متحمل ہونے سے قاصر پاتے ہیں۔ مایوسی واضح ہے کیونکہ سبسڈی والے کھانے پینے کے اسٹالوں پر لوگوں کی قطاریں لمبی ہوتی ہیں، اور لوگوں کی بڑھتی ہوئی تعداد خیراتی اداروں کا رخ کرتی ہے یا سڑکوں پر بھیک مانگتی ہے۔درمیانی آمدنی والے گھرانوں نے، جب کہ شدید ترین اثرات سے کسی حد تک تکیہ حاصل کیا ہے، ان کا معیار زندگی تیزی سے گرتا ہوا دیکھا ہے۔ انہیں تعلیم، صحت کی دیکھ بھال، اور یہاں تک کہ تفریحی سرگرمیوں کے حوالے سے سخت انتخاب کا سامنا ہے۔ والدین بچوں کو پرائیویٹ اسکولوں سے نکال رہے ہیں جن کی وہ مزید استطاعت نہیں رکھتے، جب کہ معمول کے طبی معائنے اور غیر فوری علاج تاخیر کا شکار ہو جاتے ہیں یا اخراجات بڑھتے ہی منسوخ ہو جاتے ہیں۔مہنگائی بڑھنے کے ساتھ، تنخواہیں بڑی حد تک جمود کا شکار رہتی ہیں، جس سے قوت خرید میں کمی آتی ہے۔ چونکہ ان کی مقررہ آمدنی کا زیادہ حصہ ضروریات کے ذریعہ استعمال ہوتا ہے، خاندانوں کو غیر ضروری سمجھی جانے والی کسی بھی چیز کو کم کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے، جس سے غیر متوقع اخراجات یا ہنگامی حالات کے لئے بہت کم گنجائش باقی رہ جاتی ہے۔ یہ صورتحال ان لوگوں میں عدم تحفظ اور ناامیدی کے احساس کو فروغ دے رہی ہے جو کبھی مالی طور پر مستحکم سمجھے جاتے تھے۔مہنگائی کے اس بحران کا نفسیاتی نقصان کافی ہے۔ ذہنی صحت پر اثر پڑ رہا ہے، اور مایوسی کے بڑھتے ہوئے احساس میں حصہ ڈال رہا ہے۔ ان کے خوابوں کو ان کی گرفت سے پھسلتے ہوئے دیکھنے کی مایوسی عوامی غصے کی بڑھتی ہوئی سطح سے عیاں ہے۔افراط زر کا اثر صرف افراد تک محدود نہیں ہے۔ کاروبار اور مجموعی معیشت کو بھی نقصان پہنچا۔بہت سے چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباروں کےلئے مواد اور نقل و حمل کی لاگت بڑھنے سے زندہ رہنا مشکل ہو رہا ہے۔ بڑھتی ہوئی لاگتیں صارفین تک پہنچائی جا رہی ہیں، جس سے افراط زر مزید بلند ہو رہا ہے۔حکومت نے مہنگائی کے مسئلے سے نمٹنے کےلئے کچھ اقدامات کیے ہیں جیسے کہ شرح سود میں اضافہ اور ٹارگٹڈ سبسڈی کی پیشکش۔ تاہم ان کا اثر آج تک محدود ہے۔ دیرپا، ساختی حل کی ضرورت ہے پائیدار اقتصادی ترقی کو فروغ دینا، حکومتی اخراجات کو کنٹرول کرنا اور سب سے زیادہ کمزوروں کےلئے سماجی تحفظ کے جال میں سرمایہ کاری اہم اقدامات ہیں۔پاکستان میں جاری مہنگائی کا بحران اس کے شہریوں کی فلاح و بہبود اور مستقبل کے امکانات کیلئے ایک بنیادی چیلنج ہے۔ یہ ایک پیچیدہ مسئلہ ہے جس کیلئے حکومت اور اسٹیک ہولڈرز کی جانب سے فوری، جامع اور مستقل کارروائی کی ضرورت ہے تاکہ استحکام بحال ہو اور پاکستانی عوام کو امید ملے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

güvenilir kumar siteleri