- الإعلانات -

پکڑ دھکڑ اور حساب کتاب بند کرکے آگے کی بات کی جائے، آصف زرداری

اسلام آباد: پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین آصف زرداری کا کہنا ہے کہ حکومت کے ساتھ بیٹھ کر معاشی پالیسی پر بات کرنے کو تیار ہیں۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے سابق صدر آصف علی زرداری کا کہنا تھا کہ اگر بجٹ اتنا ہی اچھا ہے تو غریب کیوں رو رہا ہے اور ہر انڈسٹری سے کیوں اشتہار آرہا ہے کہ ہمیں بچاؤ، اس کا مطلب کچھ تو گڑبڑ ہے، حکومت نے بجٹ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہیں بڑھائیں تو ٹیکس بھی بڑھا دیا۔

آصف زرداری کا کہنا تھا کہ آج ہم کل کوئی اور ، جموریت میں یہ سلسلہ چلتا رہتا ہے ، پاکستان ہے تو ہم سب ہیں اور اگر پاکستان نہیں تو ہم کچھ نہیں ہیں، بی بی شہید کی شہادت کے بعد سندھ میں پاکستان کے خلاف نعرے لگے جس پر میں نے آواز لگائی کہ پاکستان کھپے اور اپنے 5 سالہ دور میں کسی سیاستدان پر ہاتھ نہیں ڈالا، حکومت چیئرمین نیب کو بلیک میل کررہی ہے۔

سابق صدر نے کہا کہ پکڑ دھکڑ سے پارٹی کا نقصان نہیں ہوتا، عام لوگ خوفزدہ ہوتے ہیں کہ ، آصف زرداری پکڑے جاسکتے ہیں توہمارا کیا بنے گا، پکڑ دھکڑ اور حساب کتاب بند کیاجائے، آگے کی بات کی جائے، جو طاقتیں حکومت کو لے کر آئیں انہیں بھی سوچنا چاہیے اور ایسا نہ ہو سیاسی قوتوں کے ہاتھ سے معاملات نکل جائیں، کل عوام اور پورا ملک کھڑا ہوجائے پھر کوئی پارٹی نہیں سنبھال سکے گی۔

بعدازاں پارلیمنٹ ہاؤس میں بلاول بھٹو زرداری کے ہمراہ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے آصف زرداری نے کہا کہ مشرف دور میں ایم کیو ایم کو کروڑوں روپے دیئے گئے انہوں نے خون بہا دیئے، اس وقت کہا گیا کہ ہتھیار لیں، خون بہائیں، ریڑھیاں توڑیں، پورے ملک نے دیکھا ایم کیو ایم نے کیا کیا، ہم نے کبھی ہتھیاروں کو ہاتھ نہیں لگایا، پورا سندھ لڑ پڑے تو یہ ویسے ہی تھوڑے تھے، مجھ سے پارلیمنٹ نے اختیارات نہیں مانگے تھے، لیکن میں نے پارلیمان کو طاقت دی، رضا ربانی کو بلاکر ازخود اختیارات دیئے کیونکہ میں چھوٹی ذہنیت کا آدمی نہیں۔

آصف زرداری نے کہا کہ اگر ہم باہر نہ نکلے تو کوئی اور نکلے گا، بلاول کی پالیسی سخت، میری نرم ہے، مجھ پر جتنے مقدمات بنالیں کوئی پروا نہیں، عوام کی فکر ہے، موجودہ حکومت کو نکالنے کیلئے سیاسی قوتوں کو آگے آنا ہوگا، وہ آگے نہیں آئیں گی تو کوئی اور آئے گا، باہر سے آئے ہوئے وزیر خزانہ کو ملکی معیشت کا علم ہی نہیں۔

حسین اصغر کو قرضہ انکوائری کمیشن کا سربراہ لگانے سے متعلق سوال کے جواب میں آصف زرداری نے کہا کہ ہمیں اوپر سے نیچے تک سب پر اعتراض ہے، میرے حوصلے بلند ہیں، باہر والے پتہ نہیں کیوں تھک گئے، بجٹ اور حکومت کے خلاف تمام فیصلے اے پی سی میں ہوں گے، میری ذاتی رائے یہی ہے کہ عمران حکومت کو جانا چاہیے، اصل سوچنے کی بات یہ ہے کہ ان کے بعد کون آئے گا، اچھا ہوا اپوزیشن کے دباؤ پر پروڈکشن آرڈر جاری کر دیئے، اسپیکر کمزور ہیں،ان کے پاس اختیارہی نہیں۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کے متعلق فیصلے اے پی سی میں ہوں گے اور اے پی سی سے اچھے فیصلے ہی سنائیں گے۔