- الإعلانات -

سعودی عرب کا ایک طیارہ چین کے شہر ووہان سے سعودی طلبہ کو لے کر آج ریاض پہنچ رہا ہے

سعودی سرکاری ٹیلی وژن نے اتوار کے روز ایک سعودی سفارت کار کے حوالے سے بتایا ہے کہ مملکت نے نیو کورونا وائرس کے گڑھ چین کے شہر ووہان سے 10 سعودی طلبہ کو نکال لیا۔ تفصیلات کے مطابق چینی حکام نے اس حوالے سے خصوصی فضائی پرواز کی منظوری دے دی۔ اس پرواز کے ذریعے مذکورہ طلبہ کو سعودی عرب واپس لایا جا رہا ہے۔

یاد رہے کہ سعودی وزیر صحت توفیق الربیعہ کئی روز سے یہ موقف دہرا رہے ہیں کہ مملکت میں کورونا وائرس کا کوئی کیس رجسٹر نہیں ہوا۔ انہوں نے اپنی ٹویٹ میں مزید کہا کہ "کسی بھی کیس کے سامنے آنے کی صورت میں تیزی سے نمٹنے کے لیے ہم نے اپنی تیاری کی سطح بلند کر دی ہے”۔ الربیعہ نے مملکت میں تمام شہریوں اور مقیمین پر زور دیا کہ وہ وزارت صحت کی جانب سے جاری کی جانے والی طبی ہدایات پر عمل کریں اور کسی بھی قسم کی افواہوں پر کان نہ دھریں۔

سعودی وزارت صحت نے امراض سے تحفظ کے قومی مرکز کے تعاون سے سخت احتیاطی اور حفاظتی اقدامات کا تعین کیا ہے۔ اس کا مقصد نیو کورونا وائرس کے چین میں پھیل جانے کے بعد اسے مملکت پہنچنے سے روکنا ہے۔

وزارت صحت نے چین سے (براہ راست یا بالواسطہ) سعودی عرب آنے والے مسافروں کے معائنے کے لیے مملکت میں داخلے کے مقامات پر خصوصی پوائنٹس بنائے ہیں۔ ساتھ ہی اس بات کا پابند بنایا گیا ہے کہ کورونا سے متاثر کسی بھی شخص کے انکشاف کے فوری بعد اسے صوبے یا ضلع میں صحت عامہ کی انتظامیہ کے حوالے کر دیا جائے۔