- الإعلانات -

پاک چین تعلقات میں کوئی دراڑ نہیں ڈال سکتا، عالمی برادری افغانستان کو تنہاء نہ چھوڑیں، صدر عارف علوی کا پارلیمنٹ سے خطاب

اسلام آباد صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ پاک چین تعلقات میں کوئی دراڑ نہیں ڈال سکتا، عالمی برادری افغانستان کو تنہاء نہ چھوڑیں،پاکستان نے3 سالوں میں ندرونی وبیرونی محاذ پر بڑی کامیابیاں حاصل کیں، شفاف الیکشن کیلئے انتخابی اصلاحات کو متنازع نہ بنایا جائے، الیکٹرانک ووٹنگ میں پرانے بیلٹ کا نظام بھی شامل ہے، سمندرپارپاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینا ضروری ہے،
تفصیلات کے مطابق صدر مملکت عارف علوی نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میری گفتگو حال اور مستقبل کے حوالے سے ہے، گزشتہ 3 سالوں میں ملک وقوم میں بہت مثبت تبدیلیاں آئی ہیں، پاکستان کی معیشت ترقی کی جانب گامزن ہے، شورمچانے کی بجائے حقیقت تسلیم کرنی پڑے گی، پاکستان درست سمت کی جانب گامزن ہے، پاکستان میں بہت سی تبدیلیاں آئی ہیں، تیسرے پارلیمانی سال کی تکمیل پرمبارکباد پیش کرتا ہوں، شورمچانے کی بجائے حقیقت تسلیم کرنا پڑے گی، کورونا کے باعث دنیا بھرکی معیشتیں متاثر ہوئیں، کورونا کے دوران پاکستان کی معیشت مستحکم رہی، بہتر حکومتی پالیسیوں کی بدولت معیشت مستحکم رہی، حکومت نے تعمیراتی شعبے کو 36 ارب روپے کی سبسڈی دی، صبر کریں اورسنیں،عوام کو بات سمجھ آگئی ہے یہاں بھی سمجھنی چاہیے۔

اسلام آباد صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ پاک چین تعلقات میں کوئی دراڑ نہیں ڈال سکتا، عالمی برادری افغانستان کو تنہاء نہ چھوڑیں،پاکستان نے3 سالوں میں ندرونی وبیرونی محاذ پر بڑی کامیابیاں حاصل کیں، شفاف الیکشن کیلئے انتخابی اصلاحات کو متنازع نہ بنایا جائے، الیکٹرانک ووٹنگ میں پرانے بیلٹ کا نظام بھی شامل ہے، سمندرپارپاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینا ضروری ہے،
تفصیلات کے مطابق صدر مملکت عارف علوی نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میری گفتگو حال اور مستقبل کے حوالے سے ہے، گزشتہ 3 سالوں میں ملک وقوم میں بہت مثبت تبدیلیاں آئی ہیں، پاکستان کی معیشت ترقی کی جانب گامزن ہے، شورمچانے کی بجائے حقیقت تسلیم کرنی پڑے گی، پاکستان درست سمت کی جانب گامزن ہے، پاکستان میں بہت سی تبدیلیاں آئی ہیں، تیسرے پارلیمانی سال کی تکمیل پرمبارکباد پیش کرتا ہوں، شورمچانے کی بجائے حقیقت تسلیم کرنا پڑے گی، کورونا کے باعث دنیا بھرکی معیشتیں متاثر ہوئیں، کورونا کے دوران پاکستان کی معیشت مستحکم رہی، بہتر حکومتی پالیسیوں کی بدولت معیشت مستحکم رہی، حکومت نے تعمیراتی شعبے کو 36 ارب روپے کی سبسڈی دی، صبر کریں اورسنیں،عوام کو بات سمجھ آگئی ہے یہاں بھی سمجھنی چاہیے۔