- الإعلانات -

فیصل آباد چیمبر کی شاہد خاقان عباسی کو نیا وزیر اعظم منتخب ہونے پر مبارکباد

ٹیکسٹائل کو ملکی معیشت میں کلیدی اہمیت حاصل ہے،نجینئر محمد سعید شیخ

فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری نے شاہد خاقان عباسی کو نیا وزیر اعظم منتخب ہونے پر مبارکباد دی ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ معیشت کے استحکام اور ملک کیلئے قیمتی زرمبادلہ کمانے والے ٹیکسٹائل سیکٹر کے مسائل کے حل کیلئے فوری طور پر ٹیکسٹائل کی الگ وزارت قائم کی جائے اور اس کے لیے وزیر بھی فیصل آباد سے ہی لیا جائے ۔صدر انجینئر محمد سعید شیخ نے کہا کہ ٹیکسٹائل کو ملکی معیشت میں کلیدی اہمیت حاصل ہے ۔ یہ شعبہ ملک کیلئے 10 ارب ڈالر سالانہ کمانے کے علاوہ 38 فیصد افراد کو روزگار بھی مہیا کر رہا ہے ۔ مگر اس کی سماجی اور معاشی اہمیت کے باوجود گزشتہ کئی سالوں سے اس اہم وزارت کیلئے کوئی وزیر مقرر ہی نہیں کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ وزیر نہ ہونے کی وجہ سے اس اہم ترین شعبہ کے مسائل کا اضافہ ہو ااور اس کے نتیجہ میں مقامی برآمدات میں بھی کمی ریکارڈ کی گئی اور یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس شعبے کو ٹھوس بنیادوں پر استوار کرنے کیلئے فوری طور پر ٹیکسٹائل کا وزیر مقرر کیا جائے اور یہ وزیر فیصل آباد سے ہی ہونا چاہیے جو ٹیکسٹائل کے مسائل کو سمجھتا ہو اور انہیں حل کرنے کا جذبہ اور سوچ بھی رکھتا ہو۔ انجینئر محمد سعید شیخ نے مزید کہا کہ ٹیکسٹائل کی برآمدات میں کمی کی ایک بڑی وجہ برآمد کنندگان کو انکم ٹیکس ، سیلز ٹیکس اور ری بیٹ کلیموں کی عدم ادائیگی ہے ۔اس لیے نئے وزیر اعظم کو اس صورتحال کا از خود جائزہ لیتے ہوئے وزارت خزانہ کو دو ٹوک الفاظ میں واضح ہدایات جاری کرنی چاہیں کہ برآمد کنندگان کو ان کے ری فنڈ کلیم فوری اور ترجیحی طور پر ادا کئے جائیں۔ انہوں نے واضح کیا کہ یہ انکم ٹیکس اور سیلز ٹیکس کے ری فنڈ برآمد کنندگان کے ہیں ان پر حکومت کا کوئی حق نہیں اس لیے ان کی ادائیگی میں تاخیر انتہائی تکلیف دہ ہے ۔صدر فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کی طرف سے 180 ارب روپے کے ٹیکسٹائل پیکج کے اعلان کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے اس سلسلہ میں یکم جنوری سے 30 جون2017 تک اس پیکج کے تحت 60 بلین روپے جاری کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کیا تھا مگر یہ مدت مکمل ہونے کے باوجود ابھی تک اس کے تحت مختص کی گئی پوری رقم ادا نہیں کی جا سکی۔اس لئے اس کے بقایا جات کی فوری ادائیگی کی جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ نئے وزیر اعظم کو اس پیکج کے تحت بقیہ رقم کی ادائیگی کیلئے فنڈ جاری کرنے کیلئے یکم جولائی 2017 سے 30 جون 2018 تک کیلئے نیا نوٹیفکیشن بھی فوری طورپر جاری کرنا چاہیے ۔ مزید برآں وزیر اعظم کو اس سلسلہ میں برآمد کنندگان کو ادائیگیوں کی ذاتی طور پر مانیٹرنگ کرنی چاہیے تاکہ نہ صرف ان کے مالی مسائل حل ہوں بلکہ اس کے نتیجہ میں قومی برآمدات میں بھی اضافہ کیا جا سکے ۔