- الإعلانات -

برکس اعلامیے کے ذمہ داروں سے جواب طلبی ہونی چاہیے، سابق وزیر داخلہ

اسلام آباد:  سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار کا کہنا ہے کہ برکس کا آخری اجلاس چین میں ہوا جس میں پاکستان کے خلاف قرارداد تھی لیکن ہمارے سفارت کار سورہے تھے تاہم جو برکس اعلامیے کے ذمہ دار ہیں ان سے جواب طلبی ہونی چاہیے۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ میں دنیا میں ہمارے دوست کم اوردشمن زیادہ ہیں، دنیا سے کہتا ہوں کہ پاکستان کی عزت کرو، 17 تاریخ کو ڈرون حملہ ہوا کسی نے بھی مذمت نہیں کی، امریکی ڈرون حملے قابل قبول نہیں اور اس حوالے سے پارلیمنٹ کا موقف واضح رہا ہے۔ جس دن ڈرون حمہ ہوا اس دن وزیراعظم نے امریکی سفیرسے ملاقات کی تاہم اگر وزیر اعظم  ملک میں ہوتے تو اسمبلی میں معاملہ اٹھانے کے بجائے ان سے ہی پوچھتا۔

سابق وزیر داخلہ نے کہا کہ برکس اعلامیہ کے ذمے دارکون ہیں، برکس کا آخری اجلاس چین میں ہوا جس میں پاکستان کے خلاف قرارداد تھی جب کہ چین میں کانفرنس منعقد ہوئی اور ہمارے سفارت کار سورہے تھے۔ پاکستان کی سفارتکاری 24 گھنٹے کی نوکری ہے، ہمارے دشمن ایک سال سے پاکستان کی مخالفت میں لگے ہیں تو ہمارے سفارت کار کس مرض کی دوا ہیں، جو لوگ ذمہ دار تھے ان کی جواب طلبی ہونی چاہیے۔