- الإعلانات -

عوام کے پیسے واپس نہ لے سکے تو ہمیں حکومت کا حق نہیں، فواد چوہدری

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ ہم عوام کے پیسے واپس نہ لے سکے تو پھر تحریک انصاف کو حکومت کا حق نہیں۔

قومی اسمبلی میں اظہارخیال کرتے ہوئے وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ سعد رفیق کی گرفتاری درخواست ضمانت منسوخ ہونے پر ہوئی، عدالت نے انہیں مکمل سنا پھر ضمانت منسوخ کی۔ پچھلے دس سال میں جس طرح ملک کوچلایا گیا وہ سب کے سامنے ہے، ملک سے چوری کیا گیا پیسا منی لانڈرنگ کرکے باہر بھیجا گیا اور منی لانڈرنگ میں ملوث لوگوں کو اہم عہدوں پر تعینات کیا گیا۔

وفاقی وزیرنے کہا کہ نیب آزاد ادارہ ہے اور ہمارے ماتحت نہیں ہے، نیب کا موجودہ موجودہ سیٹ اپ اسی وقت کا ہے جب یہ اقتدار میں تھے، چیئرمین نیب کا تقررکرنے والے بھی شاہد خاقان عباسی ہیں،  جب تک معاملہ دوسروں کے لیے چل رہا تھا تو وہ درست تھا، اب جب وہ اقتدار سے باہر نکلے اور ہاتھ ان پر پڑا تو قانون میں خامیاں یاد آگئی ہیں۔

فواد چوہدری نے کہا کہ انوکھے لاڈلے کھیلنے کو چاند مانگ رہے ہیں، پہلے ہی دن فروغ نسیم کی قیادت میں کمیٹی بنائی جو اپوزیشن سے بات کررہی ہے، کالج کے باہر بسیں روک کر ٹکٹ دینے والے کے پاس ہاؤسنگ سوسائٹیاں کیسے بنیں،سائیکل چلانے والے سے پوچھیں پیسا کہاں سے آیا تو جمہوریت کو خطرہ ہوجاتا ہے۔ خزانہ کیسے خرچ ہوا ہے آپ کو حساب دینا ہوگا اور دینا بھی چاہیے، اگر ہم ان سے عوام کے پیسے واپس نہ لے سکے تو پھر تحریک انصاف کو حکومت کا حق نہیں۔

وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ حکومت عوام کی خواہشات کی ترجمان ہے اور عوام احتساب چاہتے ہیں ، عوام چاہتے ہیں کہ 10سال میں لوٹ مار کا جو بازار گرم رہا اس کا حساب لیا جائے، چور کی داڑھی میں تنکا ہے، لگتا ہے ساری اپوزیشن کا اپنا خطرہ پڑا ہے، سب کو اپنے اپنے کرتوت یاد ہیں اس لیے گھبرائے ہوئے ہیں، اپوزیشن چاہتی ہے حکومت اس میں رکاوٹ ڈالے مگر ایسا نہیں ہوگا۔ پاکستان میں پہلی بار شفاف احتساب ہورہا ہے، وزیراعظم اس معاملے میں پرعزم ہیں، کوئی بھی کسی بھی پارٹی کا ہو اس کا حکومت پر کوئی کنٹرول نہیں۔