- الإعلانات -

اسپین میں 4 سال میں تیسری مرتبہ انتخابات کا اعلان

اسپین کے وزیراعظم پیدرو سانچیز نے 28 اپریل کو قبل از وقت انتخابات کا اعلان کیا ہے جس سے ملک میں جاری سیاسی اختلافات مزید بڑھنے کے امکانات ہیں۔

امریکی خبررساں ادارے ’اے پی ‘ کے مطابق اسپین کے وزیر اعظم پیدرو سانچیز نے پارلیمنٹ میں بجٹ مسترد کیے جانے کے بعد انتخابات کا اعلان کیا۔

خیال رہے کہ اسپین میں اقلیتی سوشلسٹ حکومت بننے کے بعد سے 4 سال میں یہ تیسرے انتخابات ہوں گے۔

پیدرو سانچیز نے کابینہ کے ہنگامی اجلاس کے بعد مونکولا پیلس سے ایک ٹی وی پیغام میں کہا کہ ’میں نے پارلیمنٹ تحلیل کرنے کی تجویز دی ہے اور 28 اپریل کو انتخابات کروائیں جائیں گے‘۔

انہوں نے اپنے تقریر کے دوران گزشتہ 8 ماہ کے دورِ اقتدار میں اپنی کوششوں کی نشاندہی بھی کی۔

46 سالہ وزیراعظم نے گزشتہ برس جون میں سابق وزیراعظم ماریانو راجوئے کے خلاف تحریک عدم اعتماد جیت کر اقتدار میں آئے تھے۔

سوشلٹ، سادگی مخالف اور خطے کی نیشنلسٹ جماعتوں کی اکثریت جو اس وقت ماریانو راجوئے کے خلاف متحد ہوئیں تھیں انہوں نے کیٹلونیا کی آزادی سے متعلق علیحدگی پسند رہنماؤں سے مذاکرات ختم کرنے پر گزشتہ ہفتے پیدور سانچیز کا ساتھ چھوڑ دیا تھا۔

پیدور سانچیز براہ راست کیٹلونیا کا نام لیے بغیرنے کہا کہ انہوں نے ملک کے علاقوں سے اس وقت تک مذاکرات جاری رکھے جب تک ان کے مطالبات آئین اور قانون کے مطابق تھے۔

انہوں نے کنزرویٹو کو مذاکرات کی حمایت نہ کرنے پر مورد الزام ٹھہرایا۔

اسپین کے وزیراعظم نے کہا کہ ’ بدقسمتی سے گزشتہ 8 ماہ کی حکومت میں ہمیں کنزرویٹو اپوزیشن کی حمایت حاصل نہیں ہوئی، صرف حکومت کے لیے نہیں بلکہ ہسپانوی حکومت کے لیے بھی‘۔

پاپولسٹ پارٹی کے رہنما پابلو کاساڈو نے پیدرو سانچیز کی جانب سے کیٹلونیا کے علیحدگی پسند افراد کے کچھ مطالبات پر اسے سوشلسٹ کی ’ ہار‘ قرار دیا تھا۔

اسپین کے وزیراعظم نے کہا کہ ’ہم یہ فیصلہ کریں گے کہ کیا اسپین ان جماعتوں کا یرغمال بن کے رہنا چاہتا ہے جو اسے تباہ کرنا چاہتے ہیں‘۔

یہ خیال کیا جارہا ہے کہ اپریل کے انتخاب میں کوئی واضح طور پر کامیاب نہیں ہوسکے گا۔

رائے عامہ کے مطابق سوشلسٹ پارٹی اس وقت باقی جماعتوں سے زیادہ مقبول ہے لیکن اس کے 2 اہم مخالفین پاپولسٹ ہارٹی اور سٹیزنز پارٹی کی جانب سے جنوبی اندولسیا کے علاقے میں کیے گئے اتحاد کو دہرایا جاسکتا ہے جہاں انہوں نے ووکس پارٹی کی مدد سے سوشلسٹس کو شکست دی تھی۔

ووکس رہنما سان تیاگو اباسکل نے ٹوئٹ کیا کہ ’ اسپین دوبارہ سے اپنے دشمنوں سے مضبوط ہے‘۔