- الإعلانات -

جموں: ہندو انتہا پسندوں کے کشمیریوں پر حملے، املاک نذر آتش کر دیں

سری نگر: مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں غاصب بھارتی فوج پر خودکش حملے کے بعد ہندو انتہاپسندوں نے پولیس کی سرپرستی میں جموں میں کشمیری مسلمانوں کی بڑے پیمانے پر املاک نذر آتش کردیں۔

دو روز قبل مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں کارخودکش حملے میں 45 سے زائد بھارتی سیکیورٹی اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے تھے۔

بھارتی سرکار اور میڈیا نے حملے کے فوری بعد بغیر کسی تحقیقات کے پاکستان پر الزام تراشی کا سلسلہ شروع کردیا ہے اور ساتھ ہی ہندو انتہا پسندوں نے مسلم دشمنی میں حد پار کرلی۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے علاقے جموں میں ہندو انتہا پسندوں نے دوسرے روز بھی کشمیری مسلمانوں پر قاتلانہ حملوں اور املاک کو نذر آتش کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جموں میں کرفیو کے باوجود پولیس کی سرپرستی میں ہندو انتہاپسندوں نے کشمیری مسلمانوں کے گھروں پر دھاوا بولا اور کئی املاک کو نذرآتش کیا۔

بھارتی کی کئی ریاستوں میں زیر تعلیم کشمیری طلباء کو بھی ہندوانتہاپسندوں کی جانب سے تشدد کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

بھارتی شہر ہریانہ اور ڈیرہ ڈوں میں زیرتعلیم کشمیری طلبا عامر حسین اور محمد سلیم نے کشمیر میڈیا سروس کو بتایا ہے کہ انہیں اور ان کے ساتھیوں کو بازار میں مارا پیٹا گیا۔

ادھر اترکھنڈ کی دیوبومی یونیورسٹی میں زیر تعلیم 50 کشمیری طلباء کو یونیورسٹی انتظامیہ نے ہاسٹل خالی کرکے واپس گھروں کو جانے کا حکم دیا ہے۔

Mirwaiz Umar Farooq

@MirwaizKashmir

“کرفیو‘‘ کے باوجود جموں اور بھارت کے مختلف شہروں میں مقیم کشمیری، طلباء، تاجر پیشہ افراد پر فرقہ پرست عناصر کی جانب سے جان لیوا حملےاورانکے مال و جائیداد کو نقصان پہنچانے کے واقعات انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ، ان لوگوں کو کوئی گزند پہنچی تو مقامی حکومتیں ذمہ دار ہونگی

1,667 people are talking about this

حریت کانفرنس کے رہنما میرواعظ عمر فاروق نے بھی انتہاپسندوں کی جانب سے کشمیریوں کی املاک کو نذر آتش کرنے اور کشمیری طلباء پر تشدد کے واقعات کی سخت مذمت کی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ “کرفیو‘‘ کے باوجود جموں اور بھارت کے مختلف شہروں میں مقیم کشمیری، طلباء، تاجر پیشہ افراد پر انتہاپسندوں کی جانب سے جان لیوا حملے اور ان کے مال و جائیداد کو نقصان پہنچانے کے واقعات انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کو کوئی نقصان پہنچا تو مقامی حکومتیں ذمہ دار ہوں گی۔

پاکستان کی جموں میں کشمیریوں اور طلباء پر حملے کی شدید مذمت

پاکستان نے ہندوانتہا پسندوں کی جانب سے مقبوضہ وادی کے علاقے جموں میں کشمیری مسلمانوں پر حملوں ، املاک کو نذر آتش کرنے اور بھارتی ریاستوں میں کشمیری طلباء پر تشدد کی شدید مذمت کی ہے۔

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

#Pakistan strongly condemns the Continuing attacks on Kashmiris, in the aftermath of the #Pulwamaattack in #IOK, including #Kashmiri students being systemically targeted in India as the state authorities stay complicit and inactive. #kashmirbleeds (1/2)

522 people are talking about this

ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹر محمد فیصل کا کہنا ہے کہ پلوامہ حملے کے بعد مقبوضہ وادی میں کشمیریوں اور بھارتی ریاستوں میں کشمیر طلباء کو منظم انداز میں نشانہ بنایا جارہا ہے اور اس ساری صورتحال پر بھارتی حکام خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں جس کی سخت مذمت کرتے ہیں۔

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

#Pakistan strongly condemns the Continuing attacks on Kashmiris, in the aftermath of the #Pulwamaattack in #IOK, including #Kashmiri students being systemically targeted in India as the state authorities stay complicit and inactive. #kashmirbleeds (1/2)

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

India must not use the #Pulwamaattack as a carteblanche to intensify its atrocities against innocent Kashmiris in IOK #kashmirbleeds (2/2)@unhcr @ohchr @amnesty

275 people are talking about this

انہوں نے مزید کہا کہ بھارت کو پلوامہ حملے کی آڑ میں مقبوضہ کشمیر میں نہتے کشمیریوں پر ظلم و بربریت میں شدت کو بند کرنا چاہیے۔

’بھارت کا سوشل میڈیا پر متضاد مواد کو جواز بنانا حقائق کے خلاف ہے‘

پاکستان کا سفارتی محاذ پر دوسرے روز بھی سفیریوں کو بریفنگ دینے کا عمل جاری ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کے غیر مستقل ممالک کے سفیروں کو سیکریٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ کی جانب سے بریفنگ دی گئی جس کا مقصد بھارت کے پلوامہ حملے کے بعد بے جا الزامات پر حقاق بیان کرنا تھا۔

View image on TwitterView image on Twitter

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

FS Tehmina Janjua shared Pakistan’s perspective with Ambassadors from non-permanent members of the #UNSC on unfounded allegations by Indian government following #PulwamaAttack
Indian claims based on contradictory and unverified social media content have no grounds

129 people are talking about this

سیکریٹری خارجہ نے بریفنگ میں کہا کہ بھارت کی جانب سے سوشل میڈیا پر متضاد مواد کو جواز بنانا حقائق کے خلاف ہے اور بھارت ہمیشہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے توجہ ہٹانے کی کوشش کرتا ہے۔

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

FS Tehmina Janjua shared Pakistan’s perspective with Ambassadors from non-permanent members of the #UNSC on unfounded allegations by Indian government following #PulwamaAttack
Indian claims based on contradictory and unverified social media content have no grounds

View image on TwitterView image on Twitter

Dr Mohammad Faisal

@ForeignOfficePk

Briefing Ambassadors, FS pointed towards known tactics of India to divert global attention from gross #HumanRightsViolations in #IoK.
FS emphasized continued importance of implementing #UNSC resolution on #Kashmir.@UN @ohchr @UNGA@antonioguterres @unhcr pic.twitter.com/N5LoEXsxIO

View image on TwitterView image on Twitter
99 people are talking about this

سیکریٹری خارجہ نے مطالبہ کیا کہ مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کی قراردادوں کی روشنی میں ہونا چاہیے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز جرمنی میں عالمی سیکیورٹی کانفرنس سے خطاب میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا تھا کہ کشمیر میں ہونے والے ظلم کا ردعمل بھارت میں بھی آسکتا ہے اور  میری چھٹی حس کہتی تھی کہ بھارت میں الیکشن سے قبل کوئی بڑا واقعہ ہوگا۔