پاکستان خاص خبریں

کاشتکاروں کو جدید مشینری کی فراہمی یقینی بنائی جائے وزیر زراعت پنجاب سید حسین جہانیاں گردیزی

کاشتکاروں کو جدید مشینری کی فراہمی یقینی بنائی جائے وزیر زراعت پنجاب سید حسین جہانیاں گردیزی

دھان کے مرکزی علاقوں کا سروے کرکے کاشتکاروں کو مڈھوں کی تلفی کے لئے جدید مشینری کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔آلودگی سے پاک زراعت کو فروغ دینے کے لئے کاشتکاروں کو آگاہی فراہم کی جائے ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر زراعت سید حسین جہانیاں گردیزی نے فصلوں کی باقیات کی تلفی کے متعلق اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں سیکرٹری زراعت احمد عزیز تارڑ اور سموگ کی روک تھام کے لئے قائم جوڈیشل واٹر اینڈ انوائرمنٹ کمیشن کے نمائندگان مس حنا حفیظ اللہ اسحاق اور سید کمال علی حیدرنے خصوصی شرکت کی۔اس موقع پر صوبائی وزیر زراعت کو بریفنگ دیتے ہوئے ڈائریکٹر جنرل زراعت توسیع ڈاکٹر انجم علی نے بتایا کہ امسال اب تک دھان کے باقیات کو آگ لگانے کے2269 واقعات رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ گزشتہ برس 3224 واقعات کو رپورٹ کیا گیا تھا۔امسال دھان کے زیرکاشت8733 ایکڑ رقبے پر مڈھوں کو جلائے جانے کے واقعات ہوئے جبکہ گزشتہ سال کے دوران 11619 ایکڑ رقبے پر آگ لگائی گئی تھی۔انھوں نے مزید کہا کہ معزز ہائی کورٹ کے احکامات کی روشنی میں امسال دھان کی باقیات کو آگ لگانے والے702 افرادکے خلاف ایف آئی آرز کا اندراج عمل میں لایا گیا جبکہ گزشتہ سال 1503 ایف آئی آرز کا اندرراج عمل میں لایا گیا۔کاشتکاروں کو آگاہی پیدا کرنے کے لئے صوبہ میں گاؤں کی سطح پر22727 کمیٹیاں قائم کی گئی ہیں اورمساجد سے اعلانات بھی کروائے جا رہے ہیں۔ اس موقع پر ڈائریکٹر زرعی اطلاعات محمد رفیق اختر نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ کاشتکاروں کی آگاہی کے لئے پرنٹ،الیکٹرانک اور سوشل میڈیا کا موثراستعمال کیا جا رہا ہے۔اب تک محکمہ زراعت کاشتکاروں کی آگاہی کے لئے1 لاکھ سے زائد لٹریچر کی کاپیاں بھی تقسیم کی گئی ہیں۔صوبائی وزیر زراعت کوڈائریکٹر جنرل فیلڈ محمد اکرم نے بریف کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ زراعت اب تک1075ہیپی سیڈرز کاشتکاروں کو فراہم کر چکا ہے۔اس موقع پر وزیر زراعت نے ہیپی سیڈرز کی استعداد کار کو ریورس انجنئیرنگ کے ذریعے مزید بہتر بنانے کی ہدایت کی۔ سیکرٹری زراعت پنجاب احمد عزیز تارڑنے کہا کہ دھان کے مڈھوں کی تلفی کا حل میکنائزیشن کے استعمال میں ہے۔سیکرٹری زراعت نے ڈائریکٹر جنرل زراعت فیلڈ کو دھان کے علاقہ جات میں درکار ہیپی سیڈرزکی تعداد اور فنڈز کے متعلق رپورٹ جمع کروانے کی ہدایت کی۔اس موقع پر صوبائی وزیر زراعت نے جوڈیشل واٹراینڈ انوائرمنٹ کمیشن کو دھان کی باقیات کو آگ لگانے والے افراد کو لینڈ ہولڈنگ کے حساب سے جرمانے کی تجویز دی تاکہ چھوٹے کاشتکاروں کو ریلیف مل سکے۔اس موقع پر جوڈیشل کمیشن کے نمائندگان نے کہا کہ وہ قصور،چیچہ وطنی اور ساہیوال کے علاقوں کا دورہ کرکے دستیاب پانی میں آرسینگ کی مقدار کا بھی جائزہ لے رہے ہیں تاکہ سموگ کے کنٹرول کے ساتھ صاف پانی کی دستیابی کو ان علاقوں میں یقینی بنایا جائے۔اجلاس میں ڈائریکٹر جنرل زراعت توسیع ڈاکٹر محمد انجم علی،ڈائریکٹر جنرل زراعت اصلاح آبپاشی ملک محمد اکرم،ڈائریکٹر جنرل زراعت فیلڈ محمد اکرم،ڈائریکٹر جنرل زراعت ریسرچ محمد نواز خان میکن،ڈائریکٹر جنرل زراعت کراپ رپورٹنگ عبدالقیوم اور ڈائریکٹر زرعی اطلاعات پنجا ب محمد رفیق اختر سمیت دیگر اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔
٭

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے