- الإعلانات -

ای سگریٹ کا ایک خوفناک روپ

ای سگریٹ کو سگریٹ کے نعم البدل کے طور پیش کیا جاتا ہے اورماہرین کا خیال ہے کہ یہ شاید کم خطرناک ہے لیکن جسم کے اندر جا کر یہ مضر نیکوٹین کتنا نقصان دہ ہے یہ تو الگ بحث ہے لیکن ای سگریٹ کا ایک خوفناک روپ اس وقت سامنے آیا جب امریکا میں ایک نوجوان کے سگریٹ پینے کے دوران اچانک دھماکے سے وہ سگریٹ پھٹ گیا جس سے اس کی گردن کی ہڈی بری طرح متاثر ہوئی۔ امریکی ریاست کولوراڈو کے علاقے کولو کے رہائشی 29 سالہ نوجوان کیپلز ای سگریٹ سے لطف اندوز ہورہا تھا کہ اچانک اس میں دھماکا ہوا جس نے اس کے چہرے کو بری طرح جھلسا دیا، نوجوان کے دانت ٹوٹ گئے اور اس دھماکے سے لگنے والے جھٹکے سے اس ک ی گردن کے نیچے والی ریڑھ کی ہڈی بری طرح متاثر ہوئی جس کے باعث وہ چلنے کے قابل نہیں رہا۔ نوجوان کو اسپتال میں سرجری کے لیے لے جایا گیا جہاں ڈاکٹرز کا کہنا تھا کہ وہ ابھی یقین سے نہیں کہ سکتے کہ یہ نوجوان دوبارہ اپنے پاو¿ں پر کھڑا ہوسکے گا یا نہیں۔ کیپلز نامی نوجوان کی بہن کا کہنا تھا کہ وہ اپنے کام پر بریک کے دوران ای سگریٹ پینے میں مصروف تھا کہ اچانک سگریٹ دھماکے سے پھٹ گیا جس سے کیپلز کو بری طرح متاثر کیا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ای سگریٹ کے فنکشن میں خرابی سے ہونے والے نقصان کا یہ پہلا واقعہ نہیں بلکہ رواں ماہ کے اوائل میں ا?رکناس نامی ایک نوجوان کے ای سگریٹ پینے کے دوران دھماکا ہوگیا تھا جس نے اس کے دانت، ہونٹوں اور چہرے کو بری طرح جھلسا دیا جب کہ اکتوبر میں کنساس میں ای سگریٹ ایک شخص کے ہاتھ میں پھٹ گئی جس سے اس کا ہاتھ جھلس گیا تھا۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ای سگریٹ میں لگی اوسط درجے کی بیٹری زیادہ گرم ہوجانے کی وجہ سے دھماکے کا باعث بن سکتی ہے۔