Home » 2018 » November » 05 (page 3)

Daily Archives: November 5, 2018

فخر عالم دنیا کا چکر مکمل کرنے والے پہلے پاکستانی

پاکستانی گلوکار، اداکار اور میزبان فخرعالم نے اپنا ’مشن پرواز‘ مکمل کرلیا، جس کے بعد وہ دنیا کا چکر مکمل کرنے والے پہلے پاکستانی بن گئے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر تمام پاکستانیوں کو اس خوشخبری کا بتاتے ہوئے فخر عالم نے کہا کہ ’مشن پرواز مکمل ہوچکا ہے، میں نے 24 دنوں میں 22 ممالک کا سفر کیا اور ایک خواب مشن پرواز کو مکمل کیا، اس پر پاکستانیوں کو مبارک باد پیش کرتا ہوں۔

اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ ’10 اکتوبر کو امریکی ریاست فلوریڈا سے شروع ہونے والے مشن پرواز کو اسی مقام پر واپس آکر باضابطہ طور پر مکمل کرلیا ہے‘۔

انہوں نے پاکستانی قوم کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ ’پاکستان کا نام ہوابازی کی تاریخ میں لکھا جاچکا ہے‘۔

فخر عالم کی جانب سے مشن پرواز مکمل کرنے پر پاکستانیوں کی جانب سے انہیں مبارکباد پیش کی گئی جبکہ ان کے دوست اور قریبی ساتھیوں نے فلوریڈا پہنچ کر انہیں مبارک باد پیش کی اور ان کے ساتھ تصاویر بھی بنوائیں۔

واضح رہے کہ فخر عالم نے مشن پرواز کا آغاز 10 اکتوبر کو کیا تھا اور انہوں نے 22 ممالک میں اسٹاپ کیا۔

اس مشن کے دوران فخر عالم کو کچھ مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑا اور ویزے کی میعاد ختم ہونے پر روس میں انہیں حراست میں بھی لیا گیا تھا۔

روس پر حراست میں لیے جانے پر انہوں نے اپنے دوست فیصل قریشی کے ذریعے ایک پیغام میں پاکستانی حکومت سے مدد کرنے کی اپیل کی تھی، جس پر دفتر خارجہ نے نوٹس لیا تھا اور بعد ازاں روسی حکام سے رابطے کے بعد ان کے ویزے کی مدت بڑھا دی گئی تھی۔

دوسری جانب گورنر سندھ عمران اسمٰعیل نے فخر عالم کو مشن پرواز مکمل کرنے پر خراج تحسین پیش کیا۔

گورنر سندھ کا کہنا تھا کہ فخر عالم پاکستانی قوم کا فخر ہیں، مشکلات کی پرواہ کیے بغیر مشن پرواز مکمل کرکے انہوں نے پوری قوم کا سر فخر سے بلند کردیا ہے۔

یاد رہے کہ گلوکار اور اداکار فخر عالم نے 3 سال قبل 2015 میں امریکا میں جہاز اڑانے کا لائسنس حاصل کیا تھا اور وہ ’مشن پرواز‘ کو مکمل کرکے دنیا کے گرد چکر لگانے والے پہلے پاکستانی بن گئے ہیں۔

ہواوے میٹ 20 پرو کا نیا ریکارڈ‎

ہواوے کمپنی کے اسمارٹ فون میٹ 20 پرو نے پری آرڈرز کا نیا ریکارڈ بنالیا ہے۔ کمپنی کے دعوے کے مطابق یہ کمپنی کا اب تک کا بیسٹ سیلنگ فون بننے جا رہا ہے ۔ فون کو پری آرڈر کے لیے پیش کرنے کے بعد صرف ابتدائی دس دنوں میں ‏پی 20 پرو کی نسبت 40 فیصد زیادہ صارفین کو متوجہ کیا اور یوں یہ کمپنی کا سب سے زیادہ پری آرڈر کیے جانے والا فون بن گیا ہے۔ فون کی خصوصیات کا جائزہ لیا جائے تو اس فون میں کمپنی نے نئی ٹیکنالوجیز کو شامل کیا ہے۔ اوکٹا کور کرن 980 پروسیسر کے ساتھ اس فون میں 6 جی بی ریم اور 128 جی بی اسٹوریج دیا گیا ہے۔ یہ فون اینڈرائیڈ پائی آپریٹنگ سسٹم کے تحت کام کرتا ہے۔ فون کی پشت پر 40 میگا پکسل , 8 میگا پکسل اور 20 میگا پکسل کے تین سنسر شامل کیے گئے ہیں۔ سیلفی کیمرہ 24 میگا پکسل کا ہے۔فون کی بیٹری 4200 ملی ایمپیئر آورز کی ہے۔ آئی آر بلاسٹر اور اسٹیریو اسپیکرز کو بھی اس اسمارٹ فون کا حصہ بنایا گیا ہے۔ ہواوے کمپنی کے ترجمان کا کہنا ہے جن لوگوں نے ہواوے کمپنی پر اعتماد کرتے ہوئے اس فون کو پری آرڈر کیا ہے وہ جلد ہی اس جدت بھرے فون کو استعمال کرسکیں گے اور یہ فون ان کی امیدوں پر پورا اترے گا۔

ایلون مسک عمودی ٹیک آف کرنے والا طیارہ بنانے کے خواہشمند

کیا آپ ایسے سپرسونک طیارے میں سفر کرنا پسند کریں گے جو کہ کسی ہیلی کاپٹر کی طرح کسی بھی جگہ لینڈنگ یا ٹیک آف کی صلاحیت رکھتا ہو جبکہ اسے چلانے کے لیے روایتی ایندھن کی بجائے بجلی کی ضرورت ہو؟

اسپیس ایکس اور ٹیسلا جیسی کمپنی کے بانی ایلون مسک اسی طرح کے طیارے وی ٹی او ایل جیٹ کی تیاری کا اراہ رکھتے ہیں۔

ٹیسلا کے بانی نے ایک انٹرویو کے دوران بتایا کہ وہ اس طیارے کے ڈیزائن پر لگ بھگ ایک دہائی سے سوچ بچار کررہے ہیں۔

2 سال قبل ایلون مسک نے ایک تقریب کے دوران ایک الیکٹرک طیارے کی تیاری کی خواہش کا اظہار کیا تھا جو کہ ہوائی سفر کی صنعت میں انقلاب برپا کرسکے کیونکہ اس کی بدولت سفری اخراجات میں کمی کے ساتھ بڑے رن وے کی ضروری بھی ختم ہوسکے گی۔

دلچسپ بات بات یہ ہے کہ اسپیس ایکس ہی وہ کمپنی ہے جو ایسے مسافر بردار راکٹ کی تیاری پر بھی کام کررہی ہے جو کہ لوگوں کو ایک سے دوسرے شہر یا ملک تک پہنچانے کا کام کرے گا۔

رواں سال اپریل میں اسپیس ایکس کی صدر اور سی او او گیونی شاٹویل نے دعویٰ کیا تھا کہ ایسے راکٹ کو جو لوگوں کو دنیا کے کسی بھی حصے میں 60 منٹ یا ایک گھنٹے میں پہنچانے کی صلاحیت رکھتے ہوں گے، ایک دہائی کے اندر حقیقت بن جائیں گے۔

انہوں نے یہ بات ایک انٹرویو کے دوران بتاتے ہوئے مزید کہا کہ مریخ تک رسائی تو پہلا قدم ہے جس کے بعد مزید سولر سسٹمز کی کھوج کی جائے گی۔

ایلون مسک نے گزشتہ سال ایسے رات تیار کرنے کا اعلان کیا تھا اور ان کا کہنا تھا کہ اس طرح کے راکٹ سے زمین اور خلاءدونوں جگہ سفر کو آسان ترین بنادیں گے۔

یہ راکٹ عمودی ٹیک آف اور لینڈ کرسکیں گے، جبکہ بڑے شہروں میں لانچ پیڈز سے ٹیک آف کرسکیں گے۔

یہ راکٹ کراچی سے نیویارک کا سفر جس میں ابھی فضائی سفر کے دوران کم از کم 17 گھنٹے درکار ہوتے ہیں، 60 منٹ کے اندر طے کرسکیں گے۔

اسپیس ایکس کا مجوزہ راکٹ — فوٹو بشکریہ اسپیس ایکس
اسپیس ایکس کا مجوزہ راکٹ — فوٹو بشکریہ اسپیس ایکس

اچھی بات یہ ہے کہ ان کا کرایہ کسی عام پرواز جتنا ہی ہوگا۔

گیونی شاٹویل کے مطابق یہ ٹیکنالوجی ایک دہائی کے اندر لازمی طور پر تیار اور آپریشنل ہوگی۔

ان کا کہنا تھا ‘ ایسا ہوکر رہے گا اور میں نے ذاتی طور پر اس پر سرمایہ کاری کی ہے، میں بہت زیادہ سفر کرتی ہوں اور میں اپنے صارفین سے ریاض میں ملنے کے لیے صبح جاکر رات کو گھر واپس آنا پسند کروں گی’۔

کمپنی کے مطابق یہ راکٹ عام راکٹوں جتنا ہی بڑا ہوگا جو کہ زمین کے مدار میں سیٹلائیٹ لے جاسکے گا، اسی طرح انٹرنیشنل اسپیس اسٹیشن میں عملہ اور سامان پہنچانے کے ساتھ چاند پر بھی انسانوں کو لے جاسکے گا۔

18 ہزار میل فی گھنٹہ کی رفتار بی آر ایف نامی یہ راکٹ 80 سے 200 مسافروں کو لے جاسکیں گے اور اس کی پہلی مسافر بردار پرواز کے لیے کمپنی نے2024 کا منصوبہ بنایا ہے۔

آہ شہید مولانا سمیع الحق۔ناقابلِ تلافی نقصان

مولانا سمیع الحق کی اچانک شہادت کی خبر نے اہل وطن کوصدمے سے دوچار کردیا۔ 82۔81 کی عمر میں ظالموں نے اْنہیں اتنی بے دردی سے شہید کیا یہ مذموم اور انسانیت کے نزدیک شرمناک کام ہمیں اگر دیکھنے کوکہیں ملتا ہے تو انسانیت کے خلاف جرائم کرنے والی تاریخوں کے صفحات میں ملتا ہے، گزرتے ہوئے لمحات جبکہ افغانستان انتخابات کے عمل سے گزررہا ہے اور وہاں غیر ملکی عناصرجن میں امریکی اور بھارتی معاشی تباہ کار اپنی سازشوں کی آخری کوششوں کو بروئے کار لارہے ہیں، ایسے وقت میں جب امریکا بھی تھک چکا ہے امریکا تسلیم کرچکا ہے کہ افغان طالبان اورپاکستان کو ‘علاقائی اسٹرٹیجک پارٹنرز’ کے طور پر شامل کیئے بغیر افغانستان میں امن قائم نہیں ہوسکتا خود امریکا پاکستان کی عملی مدد حاصل کیئے بغیر افغانستان سے اپنی افواج نہیں نکال سکتا ایسے میں مولانا سمیع الحق جیسی اہم شخصیت کو ‘سین’ سے ہٹادینے کی سازش نے معاملات کو اور گھمبیر کردیا ہے ۔ایک نظرمولانا شہید کی زندگی پرمولانا سمیع الحق 18 دسمبر 1937 اکوڑہ خٹک میں پیدا ہوئے ان کے والد محترم کا نام مولانا عبدالحق تھا انہوں نے1366 ہجری بمطابق سال 1946 میں دارلعلوم حقانیہ میں تعلیم شروع کی جس کی بنیاد ان کے والد محترم نے رکھی مولاناسمیع الحق نیفقہ’ اصول فقہ’عربی’ادب’ منطق’عربی صرف ونحو’ تفسیر اورحدیث کا علم حاصل کیا شہید مولانا کوعربی زبان پرمکمل عبور حاصل تھالیکن ساتھ پاکستان کی قومی زبان اردواوراپنی مادری زبان پشتو پر بھی ‘مولانا سمیع الحق کا شمار پاکستان کی اْن چند ممتاز شخصیات میں تھاجنہیں بیرون ملک بڑی قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا بہت کم لوگ جانتے ہیں کہ2013 جولائی میں اسلام آباد میں تعینات امریکی سفیر نیاپنی ذاتی خواہش پراکوڑہ خٹک کیدارلعلوم حقانیہ جاکرمولانا سمیع الحق سے خصوصی ملاقات کی تھی اوراْن سیافغانستان کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا یہ وہ زمانہ تھا جب افغانستان میں طالبان کی حکومت کا’وقتی خاتمہ ہوچکا تھا اور وہاں طالبان نے دوبارہ اپنے آپ کو منظم کرکے افغانستان کی سر زمین سے امریکیوں اور نیٹوافواج کے خلاف اعلان جنگ کیا ہوا تھا چونکہ افغانستان میں اْس وقت امریکی سرپرستی میں نیٹوافواج افغانستان میں اترچکی تھیں اور شہید مولانا سمیع الحق کھل کر ببانگ دہل طا لبان کی حمایت کررہے تھے امریکی سفیرنے اپنی اس ملاقات میں مولانا سمیع الحق سے کہا کہ وہ افغانستان کوخوشحال ملک بنانے کے لئیامریکا اورنیٹو افواج کی مدد کریں امریکا کو بخوبی علم تھا کہ مولانا سمیع الحق ہی وہ واحد ممتازشخصیت کے طور پراپنی ایک شہرت رکھتے ہیں طالبان مولانا سمیع الحق کو اپنا والی اوراپنا سرپرست سمجھتے ہیں اوریہ ایک درست بات تھی امریکی سفیر نیانتہائی مودبانہ انداز اختیار کرتے ہوئے سمیع الحق شہید سے التماس کی تھی کہ ‘ہمیں صرف ایک سال دیدیں ایک سال کے اندر افغانستان کودنیا کا خوشحال ترین ملک بنادیاجائے گا یہ سن کر مولانا نے امریکیوں کو جوجواب دیا وہ شائد ہی کوئی دے سکتا مولانا شہید نیدنیاوی حرص ولالچ سے ماوراء ہوکر ٹھوس دلائل سے امریکی سفیر پر واضح کردیا کہ ‘مسٹر ایکسی لینسی ‘افغانستان میں امریکا نے اپنے ٹروپس اتارکر تاریخ کی بہت بڑی غلطی کی ہے وہاں آزادی کے لئے ایک جنگ کا آغاز ہوچکا ہے یہ جنگ اْس وقت تک جاری رہے گی جب تک افغانستان کی سرزمین سے آخری غیر ملکی سپاہی چاہے اْس کا تعلق کسی بھی ملک سے ہو وہ واپس نہیں چلا جاتا’ حق کو پوری ایمانداری کے ساتھ دوسروں تک پہنچانا حق کی پہچان کا ایک خاص امتیازہوتا ہے، مولاناسمیع الحق اس اعتبار سے واقعی ایک جید حقیقی عالم دین تھے، وہ اسلام کے بنیادی اصولوں کے علمبردار تھے انسانیت کی بقاء اور تحفظ پر مکمل یقین رکھتے تھے ایک موقع پر جب طالبان نے پولیو کے حفاظتی قطروں کوغیر اسلامی قرار دیا اور ملک بھر میں پولیوورکروں پر قاتلانہ حملے ہونے شروع ہوئے تو شہید مولانا سمیع الحق نے 9 دسمبر2013 کوپولیو کے حفاظتی قطروں کی حمایت میں ایک فتوی جاری کیا اور اس فتوے کے مطابق مہلک بیماریوں کیخلاف حفاظتی قطریان کے خلاف بچاو میں مددگار ثابت ہوتے ہیں وہ کہتے تھے کہ یہ بات تحقیق سے ثابت ہوچکی ہے کہ دنیا نامی گرامی طبی ماہرین نے تحقیق کی ہے اور اس تحقیق میں کہا گیا ہے کہ ان بیماریوں سیبچاو کے قطرے کسی طورمضر نہیں ہیں مولانا پاکستانی مذہبی اسکالرز میں اعلیِ مقام رکھتے تھے نیک شہرت سیاست کے قائل تھے سیاسی سودا بازیوں سے ماوراء تھے مولانا دفاع پاکستان کونسل کے چیئرمین دارلعلوم حقانیہ کے سربراہ تھیمرحوم سینٹ کے رکن بھی رہے پاکستان کی قومی سیاست میں مرحوم کا کرداراعلی صلاحیتوں سے ہمیشہ ممتاز رہا شہید مولانا پاکستان کی قومی سلامتی پر اپنا ایک خالص موقف رکھتے تھے افغانستان میں امریکیوں سے برسرپیکار افغان طالبان کے رہنماوں کی اکثریت نے اپنی تعلیم ان ہی کی نگرانی میں دارلعلوم حقانیہ سے حاصل کی تھی یہی وجوہ تھی کہ طالبان ان کی بڑی عزت کرتے تھے مولانا سمجھتے تھے کہ افغانستان کے عوام کو اپنے ملک میں امن وامان کی جس قدر اشد ضرورت ہے پاکستان کے عوام بھی یہ چاہتے ہیں افغانستان میں مستقلاً اور فوری امن جلداز جلد قائم ہوجائے پاکستانی مغربی سرحد پارحقیقی ٰ امن کے قیام کے بعد اس خطہ میں بھی ترقی وخوشحالی کا یقینی دوردورہ ہو’دنیا کے ترقی یافتہ ممالک خصوصاً شرق البعید کے ترقی یافتہ ممالک کی طرح سے پاکستان اورافغانستان اپنے درمیان پیدا ہونے والی بے اعتمادیوں اوربدگمانیوں کے بلاوجہ کے اندیشوں اوروسوسوں کو فراموش کردیں تاکہ دونوں پڑوسی ممالک’ کثیر الجہتی سفارتی پہلوؤں‘ پر آگے بڑھ سکیں پرامن فضاء کاا یسا دوستانہ ماحول پروان چڑھا سکیں جو برادرانہ مسلم اقوام کے مابین نا ممکن نہیں ہوسکتا ‘ نیتیں ‘پرفیکٹ’ہوں تو یہ سب ہوسکتا ہے پاکستان نے ہمیشہ یہی کوشش کی ہے ا فغان عوام کی اکثریت مانتی ہے کہ اہل پاکستان نے افغان بھائیوں پر وارد ہونے والے کٹھن مصائب اور مشکل ترین حالات میں کل اُن کے لئے اپنے دیدہ ودل فرشِ راہ کیئے تھے جس کا واضح ثبوت یہ ہے کہ ہزاروں افغان خاندان پاکستان کے مختلف شہروں میں آج بھی امن وسکون کے ساتھ اپنی زندگیوں کے شب وروز بسرکررہے ہیں، ملی اخوت و محبتوں کا یہی وہ انمٹ اور ناقابل تسخیررشتہ ہے جس ملی رشتہ میں آج تک بھارت اپنی سی لاکھ مذموم کوششوں کے باوجودکوئی دراڑ ڈال نہ سکا اپنے تئیں بھارتی خفیہ ایجنسی ‘را’ نے لائق نفریں سازشیں توبہت کی ہیں لیکن ناکامی ہمیشہ اْس کے مقدرمیں رہی

سلمان خان کے گھر کا ایک اور فرد بالی ووڈ میں انٹری کیلیے تیار

ممبئی: بالی ووڈ میں متعدد اداکاراؤں کو متعارف کرانے والے سلومیاں اب ’دبنگ3‘ میں اپنی بھانجی علیزے کو متعارف کرانے جارہے ہیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق سلمان خان کی منہ بولی بہن الویرا اگنی ہوتری کی بیٹی علیزے اگنی ہوتری ’دبنگ3‘ کے ذریعے بالی ووڈ میں انٹری دینے جارہی ہیں۔ علیزے نے فلموں میں دھماکے دار انٹری کے لیے بالی ووڈ کی نامور کوریوگرافر سروج خان سے رقص کی تربیت بھی لینی شروع کردی ہے۔

سلمان خان اپنی بھانجی کے بالی ووڈ ڈیبیو کو لے کر کافی سنجیدہ ہیں اورعلیزے کی ڈانس پریکٹس دیکھنے وہ دن میں دو تین بار ڈانس کلا سز کا دورہ کرتے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق دبنگ سیریز کی پچھلی دونوں فلموں کی طرح ’دبنگ3‘ میں بھی اداکارہ سوناکشی سنہا مرکزی کردار میں نظر آئیں گی لہٰذا کہا جارہا ہے کہ علیزے فلم میں سیکنڈ لیڈ رول پلے کریں گی۔

سلمان خان بہت جلد فلم کی شوٹنگ شروع کریں گے ’دبنگ3‘ 27 مئی 2020 کو سینما کی زینت بنے گی۔

بحرین کے اپوزیشن لیڈر کو جاسوسی کے الزام میں عمر قید کی سزا

ماناما: بحرین کی ایپلٹ کورٹ نے اپوزیشن لیڈر شیخ علی سلمان سمیت حزب اختلاف کے تین رہنماؤں کو قطر کے لیے جاسوسی کے مقدمے میں عمر قید کی سزا سنا دی۔

قطری خبر رساں ادارے الجزیرہ کے مطابق بحرین کی تین رکنی ایپلٹ کورٹ نے اپوزیشن جماعت الوفاق موومنٹ کے رہنما شیخ علی سلمان، شیخ حسن سلطان اور علی الاسود کو عمر قید کی سزا سنائی۔

رواں سال جون میں ہائیکورٹ نے تینوں رہنماؤں کی جاسوسی کے مقدمے میں رہائی کے احکامات جاری کیے تھے جس کے خلاف ایپلٹ کورٹ میں سماعت ہوئی۔

پبلک پراسیکیوٹر کے مطابق حکومت نے قطر سے تعلقات رکھنے پر پابندی عائد کر رکھی ہے جب کہ تین رکنی بینچ نے تینوں رہنماؤں کو ملک کے خلاف اقدامات کرنے پر سزا سنائی۔

سزا پانے والے تینوں اپوزیشن رہنما عمر قید کی سزا کے خلاف عدالت سے رجوع کا حق رکھتے ہیں۔

اپوزیشن لیڈر شیخ علی سلمان ایک دوسرے مقدمے میں 4 سال قید کی سزا بھی کاٹ رہے ہیں۔

یاد رہے کہ بحرین سمیت سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات نے 2017 میں قطر سے ہر قسم کے تعلقات ختم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے اپنے شہریوں کو قطر جانے اور کسی بھی قسم کے رابطے رکھنے پر پابندی عائد کردی تھی۔

بجلی چوری روکنے کے لیے اسمارٹ میٹر لگانے کا فیصلہ

اسلام آباد: بجلی چوری کی روک تھام کیلیے ملک بھر میں بجلی کے اسمارٹ میٹر لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

ملک میں بجلی چوری کی روک تھام کے لیے حکومت کے اقدامات جاری ہیں۔ اس ضمن میں وزارت توانائی نے ایشیائی ترقیاتی بینک کے تعاون سے ملک بھر میں بجلی کے اسمارٹ میٹر لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔ اسمارٹ میٹر لگانے کیلیے نوے کروڑ (900 ملین ) ڈالر درکار ہوں گے۔ اسمارٹ میٹرمنصوبے کے لیے  پاور ڈویژن نے ایشیائی ترقیاتی بینک سے رابطہ کیا ہے۔

وزارت توانائی کے ذرائع کے مطابق ایشیائی ترقیاتی بینک نے اسمارٹ میٹر پروگرام میں تعاون پر آمادگی ظاہر کی ہے۔ اس سے پہلے مسلم لیگ ن حکومت نے ایشیائی ترقیاتی بینک کے تعاون سے آئیسکو اور لیسکو کے لیے اسمارٹ میٹر منصوبہ شروع کیا تھا جو تیکنیکی مسائل کی وجہ سے بند کر دیا گیا تھا۔

اسمارٹ میٹر پروگرام سے ملک میں بجلی چوری کے روک تھام میں مدد ملے گی۔ حکومت کی جانب سے کنڈا سسٹم کے خاتمے کے لیے اے بی سی تاریں بچھانے کا منصوبہ بھی زیر غور ہے۔

 

سائبر حملے کا معاملہ: 10بینکوں نے بین الاقوامی ٹرانزیکشن روک دی

کراچی: بینکنگ حلقوں میں کریڈٹ اور ڈیبٹ کارڈ کے ڈیٹا کے پھیلنے سے متعلق خدشات کے پیش نظر تقریباً 10 بینکوں نے اپنے کارڈز پر تمام بین الاقوامی ٹرانزیکشن بلاک کردی۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان ( ایس بی پی ) کو مختلف کمرشل بینکوں کی جانب سے آگاہ کیا گیا تھا کہ ان کے صارفین کے اکاؤنٹس پر سائبر حملوں کے بعد حفاظتی اقدامات کے پیش نظر انہوں نے ڈیبٹ اور کریڈٹ کارڈ پر بین الاقوامی ادائیگیاں روک دی ہیں۔

ڈیجیٹل سیکیورٹی ویب سائٹ کریبسن سیکیورٹی ڈاٹ کام کے مطابق تقریباً 10 پاکستانی بینکوں کے 8 ہزار اکاؤنٹ ہولڈرز کا ڈیٹا ہیکرز کی مارکیٹ میں فروخت کیا گیا۔

اس حوالے سے اسٹیٹ بینک کے ترجمان اعلیٰ عابد قمر نے ڈان کو بتایا کہ اکاؤنٹ ڈیٹا کی چوری سے متعلق رپورٹ کی اس وقت تصدیق نہیں کی جاسکتی اور جب تک چوری شدہ مبینہ ڈیٹا کو اکاؤنٹس سے رقم کی چوری کے لیے استعمال نہیں کیا جاتا اس رپورٹ کو درست نہیں کہہ سکتے۔

تاہم انہوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ کچھ بینکوں نے حفاظتی اقدامات کے پیش نظر اپنے کارڈز پر بین الاقوامی ادائیگیاں روک دی ہیں اور اس بارے میں اسٹیٹ بینک کو آگاہ کردیا گیا ہے۔

دوسری جانب ایک بڑے پاکستانی بینک کی جانب سے اپنے صارفین کو پیغامات بھیجے گئے کہ ’تکنیکی بنیادوں‘ پر 3 نومبر سے آن لائن بینکنگ سروس کو عارضی طور پر معطل کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ 27 اکتوبر کو بینک اسلامی کی جانب سے پہلی مرتبہ سائبر حملے کو رپورٹ کیا گیا تھا اور بینک نے کہا تھا کہ بین الاقوامی ادائیگیوں کے کارڈز سے 26 لاکھ روپے چوری ہونے کے بعد انہوں نے اس طرح کی ٹرانزیکشن روک دی ہیں اور صرف پاکستان میں اے ٹی ایم کارڈز پر باہمی تصدیق شدہ ادائیگی ہوسکتی ہے۔

اس سائبر حملے کے اگلے روز اسٹیٹ بینک نے تمام بینکوں کو ہدایت دی تھیں کہ وہ کارڈ آپریشن سے متعلق انفارمیشن ٹیکنالوجی نظام پر سیکیورٹی اقدامات کو یقینی بنائیں، اس کے علاوہ مستقبل کے چیلینجز سے نمٹنے کے لیے اسے مسلسل اپ ڈیٹ کریں۔

اسٹیٹ بینک نے بینکوں کو ہدایت دی تھی کہ کارڈ کارڈ آپریشنز سے متعلق نظام اور ٹرانزیکشن کی ریئل ٹائم مانیٹرنگ کو یقینی بنانے اور مربوط ادائیگیوں، سوئچ آپریٹرز اور میڈیا سروس فراہم کرنے والوں کے ساتھ فوری رابطے کو یقینی بنائیں۔

اس سارے معاملے پر کراچی کے ایک ٹریول ایجنٹ عابد بلوچ کا کہنا تھا کہ ’یہ ان صارفین کے لیے ایک سنگین مسئلہ ہے جو بیرون ملک میں مقیم ہیں، وہ بلوں کی ادائیگیاں کیسے کریں گے اور وہ ان سروسز کی ادائیگی بھی کس طرح کریں گے جو وہ پہلے ہی حاصل کرچکے ہیں‘۔

ان کا کہنا بینکوں کو اپنے کارڈ کی ادائیگیوں کے حوالے سے دیگر آپشن کو ضرور استعمال کرنا چاہیے کیونکہ ’ اگر میں یورپ یا امریکا میں پاکستانی بینک کے ڈیبٹ کارڈ کے ساتھ ہوں اور اچانک تمام ادائیگیاں رک جائیں تو یہ میرے لیے بہت خطرناک ہوسکتا ہے‘۔

تاہم مسلسل سفر کرنے والے شخص ناظم علی کا کہنا تھا کہ وہ کبھی بھی ایک ڈیبٹ کارڈ پر یقین نہیں رکھتے کیونکہ اگر ایک کارڈ بلاک یا گم جائے تو ان کے پاس دوسرے کا آپشن موجود ہوتا ہے، اس کے علاوہ وہ نقد رقم کو بھی استعمال کرتے ہیں۔

Google Analytics Alternative