Home » 2019

Yearly Archives: 2019

وزیراعظم نے کوئٹہ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا سنگ بنیاد رکھ دیا

کوئٹہ: وزیراعظم عمران خان نے کوئٹہ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا سنگ بنیاد رکھ دیا۔ 

وزیراعظم عمران خان نے کوئٹہ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا سنگ بنیاد رکھ دیا ہے، اس موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ سیکریٹری ہاؤسنگ نے منصوبے کے لیے جنون کے ساتھ کام کیا، ایک عام آدمی کی سب سے بڑی ضرورت چھت ہوتی ہے تاہم پاکستان میں تنخواہ دار طبقہ کا آمدن سے گھر نہیں بن سکتا، بدقسمتی سے پاکستان میں تنخواہ دار طبقے کے لیے وقت کے ساتھ ساتھ گھر بنانا مشکل ہوگیا ہے۔

گھربنانے سے 40 صنعتوں کو روزگار ملنا شروع ہوجائے گا

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان میں گھر کےلیے قرضہ لینا مشکل ہے، گھر بنانے کے لیے قرضوں کے حوالے سے اسمبلی میں قانون سازی کررہے ہیں جب کہ ہوسکتا ہے کہ پانچ سال بعد 50 لاکھ سے زیادہ گھر بن جائیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم کہتے ہیں مدینہ کی ریاست سب کے لیے ماڈل ہے، گھربنانے سے 40 صنعتوں کو روزگار ملنا شروع ہوجائے گا، چاہتے ہیں نوجوان سرکاری نوکریوں کے بجائے اپنا بزنس کریں۔

2  طرح کے نظام کی وجہ سے پاکستان عظیم ملک نہیں بن سکا

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان ایلیٹ کلاس کے لیے رہ گیاہے، 2  طرح کے نظام کی وجہ سے پاکستان عظیم ملک نہیں بن سکا، اللہ تعالیٰ جب ملک کا سربراہ بناتاہے وہ بہت بڑی ذمہ داری دیتا ہے تاہم ہماری حکومت بلوچستان کو اوپراٹھائے گی۔ انہوں نے کہا کہ بڑے بڑے ڈاکو پکڑے جارہے ہیں، پہلی دفعہ بڑے ڈاکوؤں کو پکڑا جارہا ہے ورنہ ہمیشہ غریب جیل میں جاتا ہے، 7 دن جیل میں گزارے وہاں صرف غریب آدمی تھا بڑے ڈاکو اسمبلی میں تھے۔

 تھوڑی دیر کے لیے ہم مشکل وقت سے گزر رہے ہیں

وزیراعظم نے کہا کہ ساڑھے 4 ہزار ارب ٹیکس کا پیسہ اکھٹا ہوتاہے اس میں سے 2 ہزارقرضے میں چلے جاتاہے، یہ قرضے بھی اتر جائیں گے اور ملک میں دولت آنا شروع ہوجائیگی تاہم تھوڑی دیر کے لیے ہم مشکل وقت سے گزر رہے ہیں۔

 ملک کو پچھلے 10 سال میں بے دردی سے لوٹا گیا

وزیراعظم نے کہا کہ یہ سب ڈرے ہوئے ہیں کہ عمران خان کی حکومت گراؤ ورنہ سب جیل میں چلے جائیں گے، ملک کو پچھلے 10 سال میں بے دردی سے لوٹا گیا، پی پی اور (ن) لیگ کی حکومتوں نے جو ملک سے کیا ہے وہ کوئی دشمن بھی نہ کرے جب کہ فضل الرحمان کہتا ہے کہ نہ خود کھیل رہا ہوں اور نہ کسی کو کھیلنے دوں گا۔

ہم ملک لوٹنے والوں کو سزائیں دیں گے تاکہ یہ لوگوں کے لیے عبرت بنے

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ جس ملک میں 10 سالوں میں حکمرانوں نے قرضہ 6 سے 30 ہزار ارب کیا ہو وہاں آپ کو دشمنوں کی ضرورت نہیں، یہ بتا دوں کہ جو ان لوگوں نے اس ملک سے کیا ہے تاہم جتنی بھی دیر لگ جائے ہم نے ان کو سزائیں دیں گے اور سزائیں صرف اس لیے دینی ہیں تاکہ یہ لوگوں کے لیے عبرت بنے، آئندہ سے کوئی بھی آئے تو ملک لوٹتے ہوئے ڈرے۔

اس سے قبل وزیراعظم عمران خان جب کوئٹہ پہنچے تو وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے ان کا استقبال کیا جب کہ وزیراعظم نے ہزارہ برادری کے وفد سے بھی ملاقات کی اور شہدا کے لواحقین سے ہمدردی کا اظہار کیا۔

ماضی میں صوبے کے مسائل حل کرنے پر توجہ نہیں دی گئی، وزیراعلیٰ بلوچستان

کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کا کہنا ہے کہ ماضی میں نہ تو بلوچستان کے مسائل کی طرف توجہ دی گئی اور نہ ہی حل کرنے کی کوشش کی گئی۔

کوئٹہ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ منصوبے کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے حوالے سے وزیراعظم کی سنجیدگی پر مشکور ہیں، موقع ملا تو مل کر ماضی کے پیدا کردہ مسائل حل کریں گے، ماضی میں نہ تو بلوچستان کے مسائل کی طرف توجہ دی گئی اور نہ ہی حل کرنے کی کوشش کی گئی، حکمران اور سیاست دان وہ ہوتے ہیں جو ملکی مسائل کو حل کرتے ہیں۔

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے کہا کہ ملک میں جو خامیاں رہی ہیں ہم سب اس کا حصہ ہیں تاہم ماضی کے حل طلب صوبے کے مسائل حل کریں گے، اس ملک اور صوبے کو اللہ تعالیٰ نے بڑے وسائل دیے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک اور صوبے کو آگے لے جانے میں مشکلات آئیں گئی تاہم نیت صحیح ہو تو مشکلات حل ہوجائیں گی۔

وزیراعلیٰ بلوچستان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں بہت سے لوگ ایسے ہیں جن کے پاس چھت کے ساتھ روزگار نہیں ہے، اصل حکمران ملک کے مستقبل کیلئے پلاننگ کرتا ہے، صوبے کی بہتری کے لیے افواج بھی ہمارے ساتھ شریک ہیں، آج کا نوجوان ٹیکنالوجی سے وابستہ ہے اور معلومات رکھتاہے، موجودہ نسل میں ملک کو ترقی دینے کی مکمل صلاحیت ہے۔

سری لنکا میں گرجا گھروں اور ہوٹل دھماکوں میں 207 افراد ہلاک، کرفیو نافذ

کولمبو: سری لنکا کے 3 گرجا گھروں اور 3 ہوٹلوں میں ہونے والے 8 دھماکوں کے نتیجے میں 207 افراد ہلاک اور 400 سے زائد زخمی ہوگئے جب کہ ملک بھر میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔ 

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق سری لنکا کے دارالحکومت کولمبو سمیت مختلف شہروں میں گرجاگھروں اور ہوٹلوں میں 8 بم دھماکوں کے نتیجے میں 207 افراد ہلاک جب کہ 400 سے زائد زخمی ہوگئے۔ ہلاک ہونے والوں میں امریکی اور برطانوی شہریوں سمیت 35 غیر ملکی بھی شامل ہیں۔ ریسکیو اداروں نے زخمیوں کو اسپتال منتقل کیا جب کہ عوام سے خون کے عطیات دینے کی اپیل کی گئی ہے۔

سری لنکن صدر متھری پالا سری سینا نے عوام سے صبر و تحمل اور حکومت سے تعاون کرنے کی اپیل کرتے ہوئے صبح 6 بجے سے شام 6 بجے تک کرفیو نافذ کر دیا ہے جب کہ 22 اور 23 اپریل کو ملک بھر میں عام تعطیل کا اعلان کیا گیا ہے۔ حکام کے مطابق ملکی صدر نے یہ اقدام ممکنہ احتجاجی مظاہروں اور امن عامہ کی صورت حال پر قابو پانے کے لیے اُٹھایا ہے۔

سری لنکن حکام کے مطابق ملک کے مختلف علاقوں میں 8 مقامات پر بم دھماکے کیے گئے جن میں کولمبو کے 3 ہوٹلز اور ایک چرچ جب کہ باٹی کالوا اور کاٹوواپٹیا شہر میں بھی ایک ایک چرچ کو نشانہ بنایا گیا، ایسٹر کے تہوار کے باعث گرجا گھروں اور ہوٹلوں میں رش ہونے کی وجہ سے زیادہ جانی نقصان ہوا۔ اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے اور سیکیورٹی اداروں کو الرٹ کردیا گیا ہے۔

سری لنکن پولیس کے مطابق دھماکوں کی جگہ کو گھیرے میں لیکر شواہد جمع کر لیے ہیں، دھماکے کی نوعیت کا تعین کرنے کے لیے تحقیقات جاری ہیں۔ تاحال کسی شدت پسند جماعت نے دھماکوں کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔ پولیس کی مدد کے لیے حساس علاقوں میں فوج بھی موجود ہے۔

دوسری جانب سری لنکن وزیراعظم رانیل وکریمے سنگھے نے دھماکوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ مشکل کی اس گھڑی میں عوام اتحاد قائم رکھیں اور افواہیں پھیلانے سے گریز کریں۔

کولمبو میں ہونے والی دہشت گردی کی مذمت کرتے ہیں، پاکستان

پاکستان کی جانب سے سری لنکا میں دھماکوں اور دہشت گردی کی مذمت کی گئی ہے، ترجمان دفترخارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کے عوام اور حکومت سری لنکن عوام کے ساتھ کھڑے ہیں، ہم دہشت گردی کے خلاف سری لنکا کے ساتھ ہیں اور کولمبو میں ہونے والی دہشت گردی کی مذمت کرتے ہیں۔

سری لنکا دھماکے: عالمی برادری کا اظہار یکجہتی

مسیحی روحانی پیشوا پوپ فرانسس اور وزیر اعظم عمران خان سمیت عالمی برداری نے سری لنکا میں گرجا گھروں اور ہوٹلوں بم دھماکوں میں 150 سے زائد افراد کی ہلاکت پر گہرے دکھ و افسوس کا اظہار کیا ہے۔

پوپ فرانسس نے سری لنکا میں بم دھماکوں میں ہلاک ہونے والوں کے لواحقین سے گہرے دکھ و افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مجھے آج صبح ایسٹر کے موقع پر ہونے والے حملے کی افسوسناک خبر ملی جو اپنے ہمراہ دکھ و درد لے کر آئی۔

ویٹیکن میں ایسٹر پر روایتی خطاب میں انہوں نے کہا کہ میں حملے کا نشانہ بننے والی مسیحی برادری سے دلی ہمدردی کا اظہار کرتا ہوں، اس بھیانک واقعے کے متاثرین ہماری دعاؤں کا حصہ ہیں۔

وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے بھی حملے کی پرزور الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ میں ایسٹر کے موقع پر سری لنکا میں خوفناک دہشت گرد حملے اور اس کے نتیجے میں ہونے والے قیمتی جانوں کے ضیاع کی شدید ترین الفاظ میں مذمت اور متاثرین سے دلی ہمدردی و تعزیت کا اظہار کرتا ہوں۔

ان کا کہنا تھا کہ غم اور دکھ کی اس گھڑی میں پاکستان سری لنکا کے ساتھ ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی سری لنکا میں سفاکانہ حملوں کی پرزور مذمت کرتے ہوئے اپنی ٹوئٹ میں کہا کہ گرجا گھروں اور ہوٹلوں پر کیے گئے دھماکوں کے سلسلے میں 138 افراد کی ہلاکت پر امریکا، سری لنکا سے تعزیت کا اظہار کرتا ہے اور ہم سری لنکا کی مدد کے لیے تیار ہیں۔

برطانوی وزیر اعظم تھریسامے نے کہا کہ سری لنکا میں چرچوں اور ہوٹلوں پر شدت پسندی کی کارروائی ہولناک ہے اور اس مشکل وقت میں، میں تمام متاثرین سے دل کی گہرائیوں سے ہمدردی کا اظہار کرتی ہوں۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں ساتھ کھڑے ہونا ہو گا تاکہ اس بات کو یقینی بنا سکیں کہ کسی کو کبھی بھی خوف و دہشت کے سائے میں اپنی مذہبی رسومات کی ادائیگی نہ کرنا پڑی۔

ایک ماہ قبل خود دہشت گردی کا شکار ہونے والے نیوزی لینڈ نے بھی اس حملے کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے وحشیانہ طرز عمل قرار دیا۔

نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے کہا کہ ہم ہر طرح کی دہشت گردی کی مذمت کرتے ہیں اور 15مارچ کو ہماری سرزمین پر حملے سے ہمارا عزم مزید مضبوط ہوا ہے، سری لنکا میں ہوٹلوں اور چرچوں پر حملہ انتہائی دردناک ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ نیوزی لینڈ ہر طرز کی انتہا پسندی کو مسترد کرتا ہے اور مذہبی آزادی اور باحفاظت عبادت پر یقین رکھتا ہے، اس طرح کے واقعات کے خاتمے کے لیے مشترکہ کوششیں کرنا ہوں گی۔

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے بھی حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ خطے میں اس طرح کے ظلم کے لیے کوئی جگہ نہیں، بھارت، سری لنکا کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کرتا ہے۔

یورپی یونین کے کمیشن جین کلاڈ جنکر نے ان حملوں پر افسوس کا اظہار کیا جبکہ یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ فیڈریکا موغیرنی نے اس دنیا کے لیے برا دن قرار دیا۔

سجل علی کی بہن اوراداکارہ صبورعلی نے خودکشی کی خبروں پر خاموشی توڑدی

کراچی: نامورپاکستانی اداکارہ سجل علی کی بہن اور اداکارہ صبور علی نے خودکشی کی خبروں پر خاموشی توڑدی۔

اداکارہ صبور علی کے حال ہی میں اسپتال میں داخل ہونے کے بعد سوشل میڈیا پرافواہیں گردش کرنے لگیں کہ صبور علی نے اپنی زندگی کا خاتمہ کرنے کی کوشش کی  تاہم انہیں بروقت بچالیا گیا۔ صبور علی کی خودکشی کرنے کی خبر سوشل میڈیا پر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اوران کے مداح تشویش میں مبتلاہوگئے، تاہم صبور علی نے ان کے بارے میں گردش کرنے والی تمام افواہوں کی تردید کردی ہے۔

صبور علی نے اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر ایک طویل پوسٹ شیئر کی جس میں انہوں نے خودکشی سے متعلق تمام افواہوں کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ میری خودکشی کرنے کی خبروں میں کوئی سچائی نہیں۔ مجھےفوڈ پوائزننگ کے باعث اسپتال میں داخل کیاگیاتھا لیکن اب میں بالکل ٹھیک ہوں۔

صبور علی نے خودکشی سے متعلق افواہیں پھیلانے والوں سے درخواست کرتے ہوئے کہا کہ مہربانی کرکے غلط معلومات پر مبنی خبریں پھیلانا بندکریں، کیونکہ  اس طرح کی خبریں لوگوں کی زندگیوں پر بہت گہرا اثر ڈالتی ہیں۔

اداکارہ کا کہنا تھا کہ ذہنی بیماری اور موت ایسے موضوعات نہیں ہیں جن پر مذاق کیاجائے، اس طرح کی پوسٹ شیئر کرنے سے قبل ایک بار اس شخص کے بارے میں بھی سوچیں جن کے بارے میں آپ غلط افواہ پھیلارہے ہیں، اس کے علاوہ صبور علی نے ان تمام لوگوں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے انہیں نیک تمناؤں کے پیغامات بھیجے۔

واضح رہے کہ صبور علی کا شمار پاکستان کی نامور اداکاراؤں میں ہوتاہے وہ ’’عشق میں کافر‘‘،’’تیری میری کہانی‘‘،اور’’میرے خدایا‘‘جیسے ڈراموں میں کام کرچکی ہیں۔

نئی ٹیم کو عوامی توقعات پر پورا اترنا پڑے گا

وفاقی کابینہ میں تبدیلیوں کے بعد وزیر اعظم عمران خان نے تحریک انصاف کے سینئر اراکین، اتحادی جماعتوں اور حکومتی ٹیم میں آنے والے نئے اراکین سے بنی گالا میں واقع اپنی رہائش گاہ پر ملاقات کی جس میں انہیں لوگوں کو زیادہ سے زیادہ ریلیف دینے کی ہدایت دی گئی۔اجلاس کے بعدبریفنگ دیتے ہوئے وزیر اعظم کی نومنتخب معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ وزیر اعظم نے مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ کی زیر سربراہی قائم نئی معاشی ٹیم کو اہداف اور ذمے داریاں دی ہیں تاکہ ملک کو مشکلات سے نکالا جا سکے۔ انہوں نے بتایا کہ معاشی ماہرین کے لیے اہداف کے تعین کے ساتھ ساتھ دیگر وزارتوں کو بھی حکمت عملی وضع کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا گیا کہ وہ خصوصی طور پر رمضان میں عوام کو ریلیف فراہم کریں۔یہ اجلاس اپنی نوعیت کے اعتبار سے نہایت اہم تھاجس میں وزیر اعظم عمران خان نے ایک بار پھر تمام کابینہ اور نئے وزراء پر بھی واضح کردیا کہ سب کی کارکردگی کی مانیٹرنگ جاری رہے گی، نئی ٹیم مہنگائی کم کرے، نیا ہو یا پرانا عوام کا احساس نہ کرنیوالا کابینہ میں نہیں رہیگا، میری ٹیم کا جو فرد بھی عوام کی توقعات کے مطابق خدمت نہیں کریگا، اسے ہٹانے میں دیر نہیں لگاؤں گا،کوئی وزیرمستقل نہیں، عوام کو ریلیف یقینی بنائیں ،میں انہیں جوابدہ ہوں، اگر ادویات کی قیمتیں ہی300 گنا بڑھ جائیں تو باقی کیا بچتا ہے‘۔وزیراعظم کی اس تشویش سے ظاہر ہوتا ہے کہ انہیں عوام کے حالت زار کا مکمل احساس ہے اور وہ اپنی عوام کو اس سے نجات دلانے کے لئے کوئی بھی بڑا اقدام اٹھانے سے گریز نہیں کریں گے۔بلاشبہ عوام انہیں انکی جماعت کو اس لئے منتخب کیا تھا کہ ان کے درد کا درماں ہو پائے لیکن بدقسمتی سے حکومت عوام کی تواقعات سے کوسوں دور کھڑی ہے،اب بھی وقت ہے کہ حکومتی ٹیم دیانتداری سے عوامی مسائل کے حل کے لئے اپنی اپنی ذمہ داریوں کو احسن طریقے سے نبھائے۔کیا وہ باخبر نہیں کہ ملک کا کمزور طبقہ دو وقت کی روٹی نہیں کھا پا رہا، بچوں کی تعلیم جاری رکھنا مشکل ہو رہا ہے،ہسپتالوں میں علاج کی کیا سہولتیں ہیں اور ادویات کی قیمتیں کہاں سے کہاں جا پہنچی ہیں۔ ان سب معاملات کا آخر کون جوابدہ ہے۔ وزیراعظم کے حالیہ اقدامات سے معلوم ہوتاہے کہ انہیں غریب ہم وطنوں کے مسائل کا اداراک ہے اور وہ بنیادی عوامی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے آرزو مند ہیں۔ نئی ٹیم کا انتخاب اور اپنے نہایت قریبی ساتھی کو وزارت سے الگ کردینے کا فیصلہ اس سلسلے کہ اکڑی اور واضح ثبوت ہے۔پھر سب پر یہ بھی واضح کر دینا کہ کوئی لازمی نہیں جو کام نہیں کرے گا گھر جائے گا۔ مشیرخزانہ حفیظ شیخ سے ملاقات میں بھی انہوں نے اسی بھی بات پر زور دیا کہ وہ عوم کو ریلیف کے لئے بھر پورا قدام اٹھائیں۔ ملاقات میں انہوں نے وزیراعظم کو آئی ایم ایف حکام سے متعلق گفتگو پر اعتمادمیں لیا، ملاقات سے قبل میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مشیر خزانہ نے بتایا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کا عمل بھی تیز کیا جائے گا، پاکستان آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کا عمل آگے بڑھانا چاہتا ہے۔ادھر وزیراعظم نے وزیراعلیٰ پنجاب کو صوبائی وزرا کی مانیٹرنگ سخت کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہاکہ عوام کو ر یلیف فراہم کرنے کیلئے تمام ضرور ی اقدامات کئے جائیں۔ وزیر اعظم نے فی الحال وزیر اعلیٰ پنجاب کو کام جاری رکھنے کیلئے گرین سگنل د یدیا ہے۔ اقتصادی ٹیم کو تحریک انصاف، وزیراعظم عمران خان کے وژن، پاکستان کے قومی مفاد اور عوام کے مسائل پر تفصیلی تبادلہ خیال کرنے کے بعد انہیں کچھ اہداف دئیے گئے ہیں ، اقتصادی ٹیم کو وزیراعظم نے باور کرایا ہے کہ کس طریقے سے22 کروڑ عوام کی ہم سے جڑی توقعات کو پورا کرنا ہے، اور کس طرح انہیں بڑھتی ہوئی مہنگائی سمیت دیگر مشکلات سے نکالنے کیلئے حکمت عملی تیار کرنی ہے۔امید ہے کہ نئی اقتصادی ٹیم کو جوذمہ داریاں بھی سونپی گئی ہیں وہ عوامی توقعات پر پورا اترے گی۔
پاکستان کی جانب سے افغان عوام کے لئے ہسپتال کا تحفہ
پاکستان نے افغانستان کیساتھ انفرا اسٹرکچر کی بحالی کے لیے کیا گیا اپنا ایک اور وعدہ پورا کرتے ہوئے کابل میں دوسو بستروں پر مشتمل ہسپتال تعمیر کرنے کے بعد افغان حکام کے حوالے کردیا ہے۔ تعمیر کیا جانے والا یہ ہسپتال کابل کے علاقے دشت پرچی میں قائم کیا گیا ہے جس کا نام محمد علی جناح ہسپتال کابل رکھا گیا ہے۔مذکورہ ہسپتال کی تعمیر میں 2 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کی لاگت آئی جس میں جدید طرز کے علاج کی تمام تر سہولیات کے ساتھ مریضوں کے لیے تمام بنیادی سہولیات بھی مہیا ہوں گی۔ہسپتال کے افتتاح کیلئے وفاقی وزیر پارلیمانی امور علی محمد خان کو بطور مہمان خصوصی مدعو کیا گیا تھا جنہوں نے ہسپتال کا افتتاح کیا۔ہسپتال کے انتظام کو باقاعدہ طور پر پاکستان کی جانب سے افغان حکومت کے سپرد کیا گیا ہے۔اس موقع پر علی محمد خان نے کہا کہ جناح ہسپتال افغانستان میں صحت کے شعبے میں اہم کردار ادا کرے گا۔ انہوں نے افغانستان میں وزیراعظم پاکستان عمران خان کا پیغام پہنچایا جس میں ان کا کہنا تھا کہ پاکستان افغان عوام کی فلاح کے لیے ہر ممکن قدم اٹھانے کا سلسلہ جاری رکھے گا۔ پاکستان ایک مستحکم، محفوظ، ترقی یافتہ، پرامن اور خودمختار اسلام جمہوریہ افغانستان دیکھنے کا خواہشمند ہے۔ افغان وزیرِ صحت ڈاکٹر فیروز الدین فیروز نے جناح ہسپتال کی تعمیر پر پاکستان کے ساتھ اظہارِ تشکر کیا۔پاکستان افغانستان عوام کے لئے صحت کے شعبے میں بہت کچھ کررہا ہے۔ جس میں لوگار میں تعمیر کیا گیا 100 بستروں والا نائب امین اللہ خان ہسپتال اور جلال آباد میں نشتر کڈنی سینٹر بھی شامل ہیں۔پاکستان پڑوسی ملک میں انفرا اسٹرکچر کی بحالی کے لیے ایک ارب ڈالر سے زائد خرچ کررہا ہے، جس کے تحت بیشتر منصوبے مکمل کر لیے گئے ہیں مذکورہ ہسپتال اس سلسلے کی ایک کڑی ہے،جس سے جہاں افغان عوام کوعلاج معالجے کے لئے پڑوسی ممالک کا رخ کرنے کی بجائے گھر میں سہولت دستیاب ہو گی وہاں دونوں ممالک کے عوام کے درمیان رابطے بڑھانے میں بھی مدد ملے گی ۔
بھارت:مسلمان قیدی کو جبری ہندو بنانے کی کوشش
بھارتی دارالحکومت نئی دہلی میں موجود بدنام زمانہ تہاڑ جیل انتظامیہ نے مسلمان قیدی کے جسم پر ہندؤں کے مذہبی نشان اوم بنا کرانہیں ہندو قرار دیے دیا ہے۔تہاڑ جیل کو بھارت کا سب سے محفوظ ترین اور آئیڈیل جیل بھی مانا جاتا ہے، جہاں کئی ہائی پروفائل قیدیوں کو بھی رکھا جاتا ہے۔تاہم اس جیل میں ہائی پروفائل قیدیوں سمیت عام قیدیوں اور خصوصی طور پر اقلیتی کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے قیدیوں کیساتھ نامناسب رویے کی شکایات سامنے آتی رہتی ہیں۔اگلے روز ایک مسلمان قیدی کے ساتھ جو کچھ ہواوہ انتہائی شرمناک ہے۔مسلمان قیدی شبیر کے ورثاء نے دہلی کی مقامی کورٹ میں جیل سپرنٹنڈٹ کے خلاف شکایت درج کرائی ہے۔درخواست میں بتایا گیا ہے کہ جیل انتظامیہ نے انکے ساتھ وحشت ناک سلوک کرتے ہوئے ان کے جسم پر ہندؤں کا مذہبی نشان اوم بناکر از خود انہیں ہندو بھی قرار دے دیا ہے قیدی نے الزام عائد کیا کہ جیل انتظامیہ نے انہیں دودن تک کھانا بھی نہیں دیا اور جیل میں موجود سب ہی افراد کو بتایا گیا کہ شبیر ہندو بن چکے ہیں۔یہ معاملہ بین الاقومی توجہ کا حامل ہے کہ کس طرح بھارت میں جبری طور پرمذہب تبدیل کرایا جا رہا ہے۔

نیب کا نوڈیرو میں بھٹوہاؤس پر چھاپہ، آصف زرداری کا قریبی ساتھی گرفتار

نوڈیرو: نیب کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے  بھٹو ہاؤس میں چھاپے کے دوران سابق صدر آصف زرداری کے قریبی ساتھی کو گرفتار کرلیا۔

جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں اہم پیش رفت ہوئی ہے،نیب جے آئی ٹی نے نوڈیرو میں کارروائی کرتے ہوئے بھٹو ہاؤس کے انچارج عبدالندیم بھٹو کو گرفتار کر لیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ عبدالندیم بھٹو نے جعلی بینک اکائونٹس سے رقم نکلوائی تھی جب کہ بھٹو ہاؤس کاانچارج سابق صدر آصف علی زرداری کا قریبی ساتھی بتایا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں نیب کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے تفتیش کا دائرہ بڑھا دیا ہے ۔

پاکستان سے رہائی پانے والا بھارتی پائلٹ دوبارہ سری نگر ایئربیس پر تعینات

پاکستان سے رہائی پانے والے بھارتی پائلٹ ونگ کمانڈر ابھی نندن ورتھمان کو انڈین ایئر فورس (آئی اے ایف) نے دوبارہ سری نگر میں قائم فرنٹ لائن ایئربیس پر تعینات کردیا۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق بھارتی حکام نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ ابھی نندن کو سری نگر لے جایا جاچکا ہے۔

اس کے علاوہ یہ بھی اطلاعات سامنے آئی ہیں کہ پاکستانی پائلٹ کے ہاتھوں شکست کھانے والے بھارتی پائلٹ کو آئی اے ایف فوج کے تیسرے بڑے اعزاز ’ویر چکرا‘ کے لیے نامزد کرے گی۔

خیال رہے کہ رواں برس 27 فروری کو فضائی لڑائی کے دوران پاکستانی طیاروں نے بھارتی پائلٹ ابھی نندن کے طیارے کو مار گرایا تھا لیکن طیارہ زمین سے ٹکرانے سے قبل انہوں نے خود کو بحفاظت باہر نکال لیا تھا جس کے بعد پاکستان سیکیورٹی فورسز نے انہیں گرفتار کر لیا تھا۔

پاکستان نے خیرسگالی کے جذبے کے تحت گرفتار بھارتی پائلٹ کو رہا کرنے کا فیصلہ کیا تھا جنہیں واہگہ پر بھارتی حکام کے حوالے کر دیا گیا تھا۔

بھارتی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ابھی نندن کے سری نگر سے مغربی سرحد کی کسی دوسری ایئربیس منتقلی کا حکم نامہ بھی جاری کردیا گیا تاہم یہ حکم نامہ معمول کی کارروائی ہے۔

خیال رہے کہ واہگہ کے ذریعے بھارت پہنچنے کے بعد ونگ کمانڈر ابھی نندن کو بھارتی سیکیورٹی ایجنسیاں اپنے ساتھ لے گئی تھیں جنہوں نے پائلٹ کو 2 ہفتوں تک اپنی نگرانی میں رکھا۔

بعدازاں ابھی نندن 4 ہفتوں کے لیے چھٹیوں پر چلے گئے تھے، تاہم واپسی پر ان کی تعیناتی کا حکم نامہ بھی جاری کردیا گیا۔

ادھر بھارتی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ایک میڈیکل بورڈ ابھی نندن کا معائنہ کرے گا جس کے بعد ان کے طیارہ اڑانے کے بارے میں فیصلہ کیا جائے گا، جیسا کہ پائلٹ کی خواہش ہے۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کی رپورٹ میں بھارتی بیانیہ جاری کیا گیا جس میں بتایا گیا کہ ابھی نندن نے پاکستان کا ایف 16 طیارہ گرایا، تاہم اس میں اس بات کی وضاحت نہیں کی گئی کہ آخر ابھی نندن پاکستانی کی تردید پر لب کشائی کیوں نہیں کر رہے۔

Google Analytics Alternative