Home » 2019 » October » 03

Daily Archives: October 3, 2019

برطانوی عدالت نے نظامِ حیدرآباد فنڈ کیس میں پاکستانی دعویٰ مسترد کردیا

لندن: برطانوی عدالت نے نظام آف حیدرآباد فنڈ کیس میں 2 مرکزی فریقین کے درمیان فیصلہ نظام آف حیدرآباد کے ورثاء کے حق میں سنا دیا۔  

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق برطانوی عدالت میں نظام آف حیدرآباد فنڈ کیس سے متعلق مقدمے کی سماعت ہوئی جس میں پاکستان اور بھارت کی جانب سے ساتویں نظام آف حیدرآباد عثمان علی خان کی جانب سے پاکستان کو بھیجے گئے ایک ملین پاؤنڈ پر ملکیت کے دعوے پر دلائل کا تبادلہ ہوا۔ فریقین کا موقف سننے کے بعد برطانوی عدالت نے فیصلہ نظام آف حیدر آباد کے ورثاء کے حق میں دے دیا۔

پاکستان اور بھارت نے نظام حیدرآباد دکن کی برطانیہ کے نیٹ ویسٹ بینک میں رکھوائی گئی رقم پر دعوے کے لیے 2012 سے  دعوے دائر کر رکھے تھے، جس میں نظام عثمان علی خان کے ورثا بھی بھارتی دعوے کے ساتھ شامل ہوگئے تھے۔ نظام حیدرآباد نے 1947 میں قیام پاکستان کے وقت 10 لاکھ 7 ہزار 940 پاؤنڈ پاکستان کو لندن بینک اکاؤنٹ میں رکھنے کے لئے دیئے تھے اور 70 برسوں میں سود کی وجہ سے اب اس کی مالیت 35 ملین پونڈ تک پہنچ گئی ہے۔

یہ کیس دوبارہ جون 2019 میں دائر کیا گیا تھا، کیس کے دو ہفتے کے ٹرائل کی صدارت جسٹس مارکوس سمتھ نے کی، دونوں جانب سے دلائل پیش کیے گئے ہیں۔ اس کیس میں برطانیہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر کے خلاف نظام کے ورثا بھارت اور بھارت کے صدر سمیت سات افراد نے اپنا موقف پیش کیا۔عدالتی فیصلے کے بعد یہ رقم نظام عثمان علی خان کے ورثا کو ملے گی جو کہ آٹھویں نظام پرنس مکرم جاہ ہیں۔

اس کیس میں پاکستان کا ہمیشہ سے یہ موقف رہا ہے کہ یہ رقم نظام حیدرآباد کی جانب سے پاکستان کےعوام کیلئے تحفہ تھی جو کہ اس وقت کے پاکستان کے ہائی کمشنر حبیب ابراہیم رحمت اللہ نے نیٹ ویسٹ بنک میں جمع کروائی تھی اور آج تک یہ رقم انہی کے اکاؤنٹ میں موجود ہے۔ عدالت نے رقم کو  نظام کے جانشین مکرم جاہ اور ان کے چھوٹے بھائی مفرخ جاہ کو منتقلی کے لیے انتظامات کرنے کا حکم بھی دیا۔

پاکستان 02 اکتوبر ، 2019ویب ڈیسک ملا عبدالغنی برادر کی سربراہی میں افغان طالبان کا وفد پاکستان پہنچ گیا

اسلام آباد: افغان امن عمل کے سلسلے میں ملا محمد برادر کی سربراہی میں طالبان کا اعلی سطحی وفد اسلام آباد پہنچ گیا ہے، جب کہ امریکی نمائندہ خصوصی برائے پاکستان و افغانستان زلمے خلیل زاد بھی پاکستان پہنچ چکے ہیں۔

طالبان کے ترجمان سہیل شاہین نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ سینئر رہنما ملا محمد برادر کی سربراہی میں اعلی سطح کا وفد آج پاکستان کا سرکاری دورہ کررہا ہے۔ طالبان نمائندے پاکستان کے اعلیٰ حکام سے ملاقاتیں کریں گے جس میں افغان امن عمل سمیت متعدد اہم امور پر بات چیت کی جائے گی۔

سہیل شاہین نے کہا کہ طالبان کو اس دورے کیلیے سرکاری طور پر مدعو کیا گیا ہے۔ افغان امن کے سلسلے میں طالبان اس سے پہلے تین ممالک روس ،چین اور ایران کا دورہ کرچکے ہیں جس کے بعد اب وہ چوتھے ملک پاکستان کا دورہ کررہے ہیں۔

واضح رہے کہ گزشتہ ماہ امریکا اور طالبان کے درمیان افغان امن معاہدے پر اتفاق ہوگیا تھا اور مذاکرات کامیاب ہونے والے تھے، تاہم پھر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے معاہدے پر دستخط کرنے سے انکار کردیا جس کے نتیجے میں پورا امن عمل متاثر ہوگیا۔

ریلیز سے قبل ’زندگی تماشا‘ عالمی ایوارڈ کے لیے نامزد

فلم ساز سرمد کھوسٹ کی فیچر فلم ’زندگی تماشا‘ کا ٹریلر 2 دن قبل ہی جاری کیا گیا تھا، جس نے ریلیز ہوتے ہی شائقین میں پذیرائی حاصل کرلی تھی۔

فلم کے جاری کیے گئے مختصر دورانیے کے ٹریلر سے فلم کی کہانی سمجھنا مشکل ہے، تاہم اندازہ ہوتا ہے کہ فلم کی کہانی انتہائی حساس اور اہم موضوع کے گرد گھومتی ہے۔

فلم کے ٹریلر میں عندیہ دیا گیا تھا کہ فلم میں مذہب اور سیاست کا لبادہ اوڑھے لوگ کس طرح اپنا مقاصد حاصل کرتے ہیں۔

فلم میں کچھ کرداروں کو بظاہر اچھے مگر چھپے ہوئے خراب کرداروں میں بھی دکھایا گیا تھا۔

فلم کا ٹریلر دو دن قبل ہی ریلیز کیا گیا تھا—اسکرین شاٹ
فلم کا ٹریلر دو دن قبل ہی ریلیز کیا گیا تھا—اسکرین شاٹ

ٹریلر میں ہی اگرچہ یہ عندیہ دیا گیا تھا کہ فلم کا انٹرنیشنل پریمیئر جنوبی کوریا میں ہونے والے ’بوسان فلم فیسٹیول‘ میں ہوگا جو کل سے شروع ہو رہا ہے۔

تاہم اب فلم کے آفیشل ٹوئٹر پر بتایا گیا کہ ’بوسان فلم فیسٹیول‘ میں نہ صرف فلم کی نمائش ہوگی بلکہ اسے اہم ایوارڈ کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے۔

ٹوئٹر پر بتایا گیا کہ فلم کو بوسان فیسٹیول میں دیے جانے والے ایوارڈ ’کم جیسوئک‘ کے لیے نامزد کیا گیا ہے جو دنیا بھر سے پیش کی جانے والی سب سے نمایاں فلم کو دیا جائے گا۔

فیسٹیول میں پاکستان کے علاوہ دیگر ممالک کی فلمیں بھی پیش کی جائیں گی، جن میں مختلف فلموں میں ایوارڈز دیے جائیں گے۔

ایمان سلیمان نے فلم میں اہم کردار ادا کیا ہے—اسکرین شاٹ
ایمان سلیمان نے فلم میں اہم کردار ادا کیا ہے—اسکرین شاٹ

اگرچہ ’زندگی تماشا‘ کو بوسان فلم فیسٹیول میں پیش کیا جائے گا، تاہم اسے پاکستان میں ریلیز کرنے کی تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا۔

تاہم خیال کیا جا رہا ہے کہ فلم کو رواں برس کے اختتام یا پھر 2020 کے آغاز میں ریلیز کیا جائے گا۔

فلم کی کہانی نرمل بانو نے لکھی ہے اور اسے سرمد کھوسٹ نے بنایا ہے، جنہوں نے اس سے قبل ’منٹو‘ بنائی تھی۔

فلم کی کاسٹ میں عارف حسین، سمیعہ ممتاز، علی قریشی اور ایمان سلیمان سمیت دیگر اداکار شامل ہیں۔

چونیاں میں بچوں سے زیادتی و قتل کا ملزم 15 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

لاہور: انسداد دہشت گردی عدالت نے چونیاں میں 4 بچوں سے زیادتی اور قتل کے ملزم سہیل شہزاد کو 15 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

چونیاں میں 4 بچوں سے زیادتی اور قتل کے گرفتار ملزم کو انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش کیا گیا،  سی ٹی ڈی نے ملزم سہیل شہزاد کو سخت سیکیورٹی میں انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش کیا، انسداد دہشت گردی عدالت کے جج عبدالقیوم خان نے ملزم کے جسمانی ریمانڈ کی درخواست پر سماعت کی، تفتیشی افسر اور ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل عبدالرئوف وٹو عدالت میں پیش ہوئے۔

عدالت نے تفتیشی افسر سے استفسار کیا کہ ملزم کا چہرہ ڈھانپنے کی کیا ضرورت ہے؟ جس پر تفتیشی افسر نے جواب دیا کہ ملزم کا چہرہ سیکیورٹی خدشات کی وجہ سے ڈھانپا گیا ہے۔ عدالت نے ملزم سے استفسار کیا کہ آپ کا کیا نام ہے؟ کیا آپ کچھ کہنا چاہتے ہیں؟ جس پر ملزم سہیل شہزاد نے جواب میں کہا کہ مجھے مارا نہ جائے۔

تفتیشی افسر نے عدالت میں مؤقف پیش کیا کہ  فیضان عرف مٹھو کو اغواء کر کے بد فعلی کے بعد قتل کیا گیا، جس کے بعد 1 ہزار 668  مشکوک افراد کے ڈی این اے ٹیسٹ کروائے گئے اور ملزم سہیل شہزاد کا ڈی این اے مقتول سے میچ ہوگیا۔ پراسکیوٹر جنرل عبدالرؤف نے عدالت سے استدعا کرتے ہوئے بیان دیا کہ آر پی او شیخوپورہ، ڈی پی او قصور اور ایس پی انویسٹی گیشن پر مشتمل جے آئی ٹی نے تحقیقات کی ہیں، اب تک کی تحقیقات سے ثابت ہوتا ہے کہ ملزم سہیل شہزاد ہی 4 بچوں سے زیادتی اور ان کے قتل میں ملوث ہے، عدالت سے درخواست ہے کہ مزید تحقیقات کے لئے ملزم کا 30 روزہ جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔

عدالت نے ملزم کا میڈیکل کرانے کا حکم دیتے ہوئے ملزم سہیل شہزاد کو 15 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

 

تحریک انصاف کی حکومت دھاندلی سے آئی اب اس کو جانا پڑے گا، بلاول

آزاد کشمیر: پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ تحریک انصاف کی حکومت دھاندلی سے آئی ہے لیکن اب اس کو ہرصورت جانا پڑے گا۔

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے میرپور آزاد کشمیر کا دورہ کیا جہاں ڈی ایچ کیو اسپتال میرپور میں زلزلے سے ہونے والے زخمیوں کی عیادت کی اور ان کی خیریت دریافت کی، میرپور کے مختلف علاقوں کا دورہ بھی کیا اور زلزلے سے متاثرہ خاندانوں سے ملاقات کی۔

بلاول بھٹو زرداری نے زلزلہ متاثرین سے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس میں حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت دھاندلی سے آئی ہے لیکن اب اس کو ہرصورت جانا پڑے گا، وزیراعظم کا کشمیر کا سفیر بننے کا مقصد یہ نہیں کہ صرف ایک تقریر یا ٹویٹ کریں، انہوں نے کشمیر کے ایشو پر 50 دن میں کتنے ممالک کا دورہ کیا ہے؟ پاکستان پیپلز پارٹی اور اپوزیشن نے کشمیر کے ایشو پر جوائنٹ سیشن کا کہا تھا۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی کا کشمیری بہن بھائیوں کے ساتھ ایک خاص رشتہ ہے، مقبوضہ کشمیر میں بہن بھائی قید میں ہیں، کشمیریوں کا حق ہے کہ ان کو تمام انسانی حقوق ملیں، ہماری پوری کوشش ہے ہم اپنے مقبوضہ کشمیر کے بہن بھائیوں کی آواز بلند کریں۔

بلاول بھٹو زرداری نے جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے دھرنے سے متعلق بات کرتے ہوئےکہا کہ پیپلزپارٹی دھرنا سیاست کے خلاف رہی ہے، اس ایشو پر مولانا فضل الرحمان سے بات کریں گے تاہم مولانافضل الرحمان کے دھرنے کا اخلاقی ساتھ دیتے رہیں گے۔

ہوشربا مہنگائی پر وزیراعظم برہم، قیمتیں کنٹرول کرنے کی ہدایت

ملک کو سب سے اہم اوربڑا مسئلہ مہنگائی اور مضبوط معیشت کا درپیش ہے ۔ آئے دن پٹرولیم مصنوعات، اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے قدم بہ قدم مسائل ہی مسائل درپیش ہیں ۔ نوجوان نسل ذریعہ معاش کیلئے دھکے کھا رہے ہیں ۔ گیس اور بجلی کے بل ہی عوام کو سکھ کا سانس نہیں لینے دے رہے ۔ عوام مہنگائی کی چکی میں پس رہی ہے اس کا کوئی پرسان حال نہیں ۔ اسی وجہ سے وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بنیادی چیز کی وجہ سے زندگی کی رمق رہتی ہے یعنی آٹے ، گندم کا مسئلہ زیر بحث آیا اور آٹا مہنگا ہونے پر وزیراعظم نے باقاعدہ اظہار ناراضگی کیا اور کہاکہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ آٹے کی قیمت میں کسی صورت اضافہ نہ ہو ۔ نیز روزانہ استعمال ہونے والی اشیاء کی قیمتیں بھی کنٹرول کی جائیں ۔ وفاقی کابینہ نے وزیرِ اعظم عمران خان کو اقوام متحدہ کے اجلاس میں مظلوم کشمیروں کا مقدمہ بھرپور انداز میں پیش کرنے اور بھارتی حکومت کی جانب سے غیر قانونی اور ظالمانہ اقدامات کو بے نقاب کرنے پر مبارکباد پیش کی ہے ۔ وزیراعظم عمران خان کے کشمیر مشن کے دوران موثر سفارتکاری کے ذریعے تمام مقررہ اہداف حاصل ہوئے ہیں ۔ امریکہ کے حالیہ دورے کے دوران وزیراعظم کی مختلف عالمی رہنماءوں ،تھنک ٹینکس اور بین الاقوامی میڈیا کے ساتھ براہ راست اوربالواسطہ تقریباً سترملاقاتیں ہوئیں ۔ متعدد عالمی رہنمامقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی بگڑتی ہوئی صورتحال کے بارے میں جاننے کے لئے ان ملاقاتوں میں شریک ہوئے اور اس سلسلے میں پاکستان کے موقف کوسراہا ۔ وفاقی کابینہ نے گوادر بندرگاہ کو ٹیکسیشن سے مستثنیٰ قرار دینے ،ای کامرس پالیسی اور حلال فوڈ اتھارٹی کے قیام کےلئے بین الوزارتی کمیٹی کی تشکیل کی منظوری دیدی ، ای کامرس معیشت کی ترقی و استحکام اور خصوصا نوجوانوں کو نوکریوں کے مواقع فراہم کرنے کےلئے نہایت اہمیت کا حامل ہے،اجلاس میں اقتصادی رابطہ کمیٹی اور کابینہ کمیٹی برائے نجکاری کے فیصلوں کی توثیق بھی کی گئی ۔ کابینہ نے نیکٹا کو وزارتِ داخلہ کے ماتحت کرنے کے ضمن میں رولز آف بزنس میں ترمیم جبکہ سعودی پاک انڈسٹرئیل اینڈ ایگریکلچر انویسٹمنٹ کمپنی لمیٹڈ کی مدت میں آئندہ پچاس سال کی توسیع کرنے کی بھی منظوری دی ،گمشدہ بچوں کو ڈھونڈ کر والدین سے ملانے کیلئے آئندہ دو ہفتوں میں میرا بچہ الرٹ شروع کیا جائیگا ،وزیراعظم عمران خان نے’’میرابچہ الرٹ‘‘نامی نئی اپلیکیشن شروع کرنے کی ہدایت کی ہے تاکہ بچوں کے اغواء اورلاپتہ ہونے کے افسوسناک واقعات سے کامیابی کے ساتھ نمٹاجاسکے ۔ اپلیکیشن پر رجسٹرڈ کواءف اورمعلومات فوری طورپرآئی جی پولیس اور صوبے کے دیگراعلیٰ عہدیداروں تک پہنچ سکیں گی ۔ کسی بھی واقعے میں پیشرفت کی نگرانی اورمعلومات کےلئے میرابچہ الرٹ اپلیکیشن کو پاکستان سٹیزن پورٹل کے ساتھ منسلک کیاجائے گا ۔ کابینہ نے ڈینگی کا مرض پھیلنے، مصنوعی طور پر آٹے کی قیمت میں اضافے کی شکایت پر تشویش اورناراضگی کا اظہار کیا ۔ ڈینگی نے درجنوں افراد کی جان لی ، کیا انتظامیہ پہلے سو رہی تھی ،اسلام آباد اور پنجاب میں ڈینگی کی صورتحال کا ادراک پہلے کیوں نہیں کیا گیا;238; ڈینگی پر کنٹرول کےلئے ہر ممکن اقدامات اٹھائے جائیں اور اس کے ساتھ ساتھ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ مستقبل میں ڈینگی سے بچاءو کے لئے بروقت اقدامات کیے جائیں ۔ کابینہ نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا کہ حکومت کی جانب سے آٹے کی قیمت نہ بڑھانے کی باوجود بھی مصنوعی طور پر آٹے کی قیمت میں اضافے کی شکایت ملی ہے ۔ ان وجوہات کو دیکھنے کی ضرورت ہے، اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ملک میں آٹے کی قیمت کسی صورت نہ بڑھے اور اس سلسلے میں صوبوں کی مشاورت سے ضروری اقدامات اٹھائے جائیں ۔ روزمرہ کی اشیاکی قیمتوں کے حوالے سے رپورٹ ہفتہ وار بنیادوں پر پیش کی جائے ۔ کابینہ کو بتایا گیا کہ آئندہ دو ہفتوں میں ;34; میرا بچہ الرٹ;34; شروع کیا جا رہا ہے تاکہ گمشدہ بچوں کو ڈھونڈنے اور ان کو انکے والدین سے ملانے میں مدد مل سکے جن افراد کے پاس اینڈرائیڈ فون نہیں ہیں ان کی انٹرنیٹ تک رسائی کے لئے اقدامات کیے جا رہے ہیں ۔ کابینہ نے اقوام متحدہ جنرل اسمبلی کے اجلاس میں منظور کی جانے والی قرارداد نمبر521کی روشنی میں چینی زبان کو یو این ورلڈ ٹورازم آرگنائزیشن کی سرکاری زبان قرار دینے کی بھی منظوری دی ۔ کابینہ کو غیر ملکی پبلک ریلیشنزاداروں کی کارکردگی کے حوالے سے بھی بریفنگ دی گئی جن کی خدمات امریکہ میں پاکستان کے مفادات کے تحفظ کے سلسلے میں حاصل کی گئی ہیں ۔ متروکہ املاک بورڈ کی املاک کے حوالے سے کابینہ کوآئندہ اجلاس میں خصوصی طور پر بریفنگ دی جائے گی ۔

بھارت کی گیدڑ بھبکیاں وہ27فروری کو یاد رکھے

بھارت کا جنگی جنون حد سے تجاوز کرگیا ہے جو تھمنے کا نام نہیں لے رہا، کشیدگی کے باوجودبھارتی مسلح افواج کے اسپیشل آپریشنز ڈویژن نے پاکستانی سرحد کے قریب فوجی مشقیں کی ہیں جس سے دونوں ممالک کے درمیان جاری کشیدگی میں اضافے کا خدشہ ہے ۔ یہ مشقیں فرسٹ چیف آف کمانڈو آفیسر میجر جنرل اشوک کی سربراہی میں کی گئیں اور بھارت نے دعویٰ کیا ہے کہ کشیدہ تعلقات کے باوجود آئندہ بھی جاری رہیں گی ۔ بھارتی وزیرخارجہ نے دورہ امریکا کے موقع پر روس سے دفاعی میزائل نظام کی خریداری کے معاہدے کا دفاع کیا ہے، اس معاہدے پر بھارت کو امریکی پابندیوں کے خطرے کا سامنا ہے ۔ امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو سے ملاقات سے قبل صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے جے شنکر کا کہنا تھا کہ ہمارا ہمیشہ یہ موقف رہا ہے کہ فوجی سازوسامان کی خریداری ہماری آزادانہ حق ہے ۔ ہم یہ نہیں چاہیں گے کہ کوئی ملک ہ میں یہ بتائے کہ ہ میں روس سے کیا خریدنا چاہئے اور کیا نہیں خریدنا چاہئے اسی طرح ہم یہ بھی نہیں چاہیں گے کہ کوئی ملک ہ میں یہ بتائے کہ ہ میں امریکا سے کیا خریدنا چاہئے اور کیا نہیں خریدنا چاہئے ۔ جے شنکر نے واشنگٹن کے دورے کے موقع پر امریکی خدشات پر بات چیت کی تاہم روس سے ایس 400 میزائل نظام کی خریداری کے حتمی فیصلے کے بارے میں نہیں بتایا ۔ اُدھر بھارت نے ملکی سطح پر تیار کردہ برہموس سپرسونک کروز میزائل کا ا ڑیسہ کی چاندی پور ٹسٹ رینج سے تجربہ کیا ۔ دفاعی تحقیق وترقی کی تنظیم اوربرہموس ایئر واسپیس نے یہ تجربہ صبح 10 بجکر 20منٹ پرکیا ۔ تجربہ کے دوران میزائل نے اپنی مقررہ 290کلومیٹر کی دوری کو کامیابی کےساتھ طے کیا ۔ بھارت اور روس کے ذریعہ مشترکہ طورپر تیار کیا گیا برہموس میزائل فوج کے تینوں شعبوں میں شامل کیا جاچکا ہے ۔

روز نیوز کا بڑا اعلان، اسلامی چینل کیلئے حکومت کیساتھ جوائنٹ وینچر کی پیشکش

روزنیوز نے سب سے بڑا اعلان کرتے ہوئے امت مسلمہ کیلئے ایک بڑی خبر دی ہے کہ روز نیوز وزیرا عظم پاکستان عمران خان ترکی کے صدر طیب اردگان اور ملائیشیاء کے مہاتیر محمد کی جانب سے جو انگریزی ٹی وی چینل لانچ کرنے کا اعلان کیا ہے ،اس اسلامی چینل کیلئے حکومت کے ساتھ جوائنٹ وینچر کرنے کیلئے تیار ہیں ،اور روز نیوز اس مبارک سفر میں اپنی خدمات پیش کرنے کا بھی اعلان کرتا ہے،نیز روز نیوز اس سفر میں وزیر اعظم پاکستان کے ساتھ شانا بشانہ چلنے کا بھی خواہش مند ہے اور یہ بات کسی عزاز سے کم نہ ہوگی کہ روز نیوزاور حکومت کا اس سلسلے میں جوائنٹ وینچر ہو جائے،اس بات کا اعلان پاکستان گروپ آف نیوز پیپرز کے چیف ایڈیٹر اور روز نیو زکے چیئرمین ایس کے نیازی نے اپنے معروف پروگرام’’سچی بات‘‘ میں کیا انہوں نے مزید کہا کہ روز نیوز اور ہمارا ایجوکیشن چینل 72ملکوں میں دیکھا جاتا ہے،روز نیوز پر پانچ وقت اذان نشر کی جاتی ہے،عمران خان گفتار کے غازی بن گئے ،انہوں نے دنیا کو اپنا گرویدہ کر لیا ہے،عمران خان کردار کے غازی بنیں گے تو لوگوں کے حالا ت بہتر ہو نگے،پاکستان گروپ آف نیوز پیپرز کے چیف ایڈیٹر اور روز نیوز کے چیئرمین ایس کے نیازی نے اپنے پروگرام ’’سچی بات‘‘ میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اسلامو فوبیا کیخلاف چینل کیلئے روز نیوز کی سکرین دینے کیلئے تیار ہوں ،عمران خان بہت ایماندار آدمی ہیں ، ان کا ویڑن قائداعظم کا ویڑن ہے،عمران خان پاکستان کی خدمت کرنا چاہتے ہیں ، انہوں نے جنرل اسمبلی میں کلمہ حق کہا،روز نیوز پر کبھی بھی بھارتی مواد یا اشتہارات نشر نہیں کیے گئے،اسلامی چینل کیلئے حکومت کیساتھ جوائنٹ وینچر کرنے کیلئے تیار ہیں ،ہم نے اعلان کر دیا ہے، حکومت چاہے تو کل سے ہی پروگرام شروع کرنے کیلئے تیار ہیں ،عمران خان نے جنرل اسمبلی میں طیب اردوان سے بھی بہتر تقریر کی،عمران خان نے صبر اور تحمل کے ساتھ جذبات میں آئے بغیر تمام ایشوز پر بات کی،دنیا میں کہیں بھی مسلمانوں پر مظالم کو برداشت نہیں کیا جا سکتا،2005کے زلزلے اور سیلابوں میں بھی پاک فوج نے امدادی کارروائیاں کیں ،نیب کو سیاست میں ملوث نہیں کرنا چاہیے ، اسے آزدانہ کام کرنے دینا چاہیے،نیب کو چاہیے کہ کاروباری افراد کے ساتھ نرم رویہ رکھے،مولانا فضل الرحمان سمجھدار ہیں ، وہ بھی کشمیر کو سنجیدہ مسئلہ سمجھتے ہیں ، وہ امن پسند آدمی ہیں ،توقع ہے مولانا فضل الرحمان کوئی آزادی مارچ کا احتجاج کی طرف نہیں جائیں گے، سابق ڈی جی نیب انور شہزاد بھٹی نے پروگرام ’’سچی بات ‘‘ ایس کے نیازی کیساتھ میں گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ حکومت کے کئی وزراء نیب کے نام پر روزانہ ٹی وی پر دہشت پھیلاتے ہیں ،حکومتی وزراء کے بیانات سے عوام میں غلط تاثر جاتا ہے،پاکستان کی معیشت کو استحکام کی سخت ضرورت ہے،نیب نے اگر سلیکٹو کیسز دیکھنے ہیں تو سمجھیں نیب کا کام ختم ہو گیا ہے،سابق سفیر بیگم عابدہ حسین نے پروگرام ’’سچی بات ‘‘ ایس کے نیازی کیساتھ میں گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ عمران خان کی تقریر بڑی موثر تھی، انہوں نے کشمیر کا بھر پور مقدمہ پیش کیا،وزیراعظم عمران خان نے جو وعدے کیے تھے ان پر وہ پورا نہیں اتر رہے، اسلامی انگلش چینل کی نشریات کیلئے روز نیوز کی سکرین پیش کرنا احسن قدم ہے،اینکر پرسن منیب فاروق نے پروگرام ’’سچی بات ‘‘ ایس کے نیازی کیساتھ میں گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ اسلامی انگلش چینل کیلئے روز نیوز چینل کی کاوش شاندار ہے،وزیراعظم نے اسلامو فوبیا کے حوالے سے نہایت اہم باتیں کیں ،اسلامی انگلش چینل کے ذریعے اسلام کا حقیقی پیغام دنیا تک پہنچانا چاہیے،کچھ فیصلوں میں تاخیراو رکچھ میں جلد بازی نے معیشت کو نقصان پہنچایا ،عمران خان کو ٹیم کے مسائل رہے ہیں ،ایک نا اہل وزیر دوسری وزارت کیلئے کیسے اہل ہو سکتا ۔

پاکستان نے سری لنکا کو شکست دے کر ون ڈے سیریز اپنے نام کر لی

کراچی: پاکستان نے تیسرے اور آخری مقابلے میں سری لنکا کو 5 وکٹوں سے شکست دے کرتین میچوں کی سیریز 0-2 سے جیت لی۔ اس فتح کے ساتھ ہی قومی ٹیم کی ون ڈے سیریز میں کامیابی کا جمود ٹوٹ گیا اور گرین شرٹس نے سال کی پہلی ون ڈے سیریز کی ٹرافی پر قبضہ جما لیا۔

نیشنل اسٹیڈیم کراچی میں کھیلے گئے میچ میں پاکستان نے سری لنکا کا 298 رنز کا ہدف 5 وکٹوں کے نقصان پر حاصل کرلیا، ہدف کے تعاقب میں عابد علی، فخرزمان اور حارث سہیل نے نصف سنچریاں بنا کر ٹیم کی کامیابی میں اہم کردار ادا کیا۔ فخر زمان اور عابد علی پر مشتمل گرین شرٹس کی نئی جوڑی نے عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے 123 رنز کا اوپننگ اسٹینڈ فراہم کیا، امام الحق کی جگہ ٹیم میں شامل ہونے والے عابد علی نے اپنا انتخاب درست ثابت کرتے ہوئے 74 رنز کی باری کھیلی، انہوں نے جارحانہ انداز اپناتے ہوئے صرف 37 گیندوں پر نصف سنچری مکمل کی ، ان کی اننگز میں 10 دلکش چوکے بھی شامل تھے جب کہ فخرزمان نے بھی نصف سنچری بنائی، وہ 76 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے ، ان کی اننگز میں 1 چھکا اور 7 چوکے شامل تھے۔

بابر اعظم مجموعے میں 31 رنز کا اضافہ کر کے چلتے بنے جس کے بعد کپتان سرفراز احمد اور حارث سہیل کے مابین 55 رنز کی پارٹنر شپ قائم ہوئی تاہم آؤٹ آف فارم کپتان سرفراز احمد ایک بار پھر ناکام رہے اور 22 رنز پر بولڈ ہوگئے، دوسری جانب حارث سہیل ذمہ دارانہ بیٹنگ کرتے ہوئے ٹیم کو کامیابی کے قریب لے آئے لیکن فتح سے چند قدم کی دوری پر وہ افتخار احمد کا ساتھ چھوڑ گئے۔انہوں نے 56 رنز بنائے جس میں 3 چوکے اور ایک چھکا شامل تھا۔ افتخار احمد نے وننگ شارٹ کھیلا اور ٹیم کو 10 گیندوں قبل فتح سے ہمکنار کرادیا۔ وہ 28 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے جب کہ وہاب ریاض نے بھی ایک رن بنا کر کامیابی میں اپنا حصہ ڈالا۔سری لنکا کی جانب سے پرادیپ نے 2، کمارا، ڈی سلوا اور جے سوریا نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔

قبل ازیں سری لنکن کپتان نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کا فیصلہ کیا تو مہمان ٹیم نے مقررہ اوورز میں 9 وکٹوں پر 297 رنز بنائے۔ گناتھلاکا اور فرنانڈو نے اننگز کا آغاز کیا لیکن محمد عامر نے تیسرے ہی اوور میں فرنانڈو کو پویلین واپس بھیج دیا وہ صرف 4 رنز بناسکے جس کے بعد کپتان تھری مانے نے گناتھلاکا کے ساتھ ملکر 88 رنز کی شراکت داری قائم کی ،تھریمانے 36 رنز پر آؤٹ ہوئے۔

گناتھلاکا نے انجلو پریرا کے ساتھ ملکر تیسری وکٹ کے لیے 50 رنز کی شراکت قائم کی لیکن پریرا 13 رنز پر شنواری کا شکار بن گئے تاہم گناتھلاکا نے ذمہ دارنہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے سنچری مکمل کی جس میں ایک چھکا اور 12 چوکے شامل تھے۔

گناتھلاکا نے وکٹ کیپر بیٹسمین منود بھنوکا کے ساتھ ملکر اسکور بورڈ کو آگے بڑھایا اور دونوں کے درمیان 74 رنز کی قیمتی پارٹنرشپ قائم ہوئی تاہم 225 کے مجموعے پر بھنوکا رن آؤٹ ہوگئے، انہوں نے 36 رنز بنائے جس میں 2 چھکے بھی شامل تھے جس کے بعد جے سوریا 3 رنز کا اضافہ کر کے کیچ تھما بیٹھے، سری لنکا کی چھٹی وکٹ گناتھلاکا کی صورت میں گری جو محمد عامر کی گیند پر بولڈ ہوگئے، گناتھلاکا نے ایک چھکے اور 16 چوکوں کی مدد سے 133 رنز بنائے جس کے بعد ڈی سلوا 10، سنداکن صفر اور شاناکا 43 رنز بنا کر پویلین لوٹے، مہمان ٹیم نے مقررہ اوورز میں 9 وکٹوں پر 297 بنائے۔

پاکستان کی جانب سے محمد عامر نے سب سے زیادہ 3 وکٹیں حاصل کیں جب کہ عثمان شنواری، وہاب ریاض، شاداب خان اور محمد نواز کے ایک ایک وکٹ آئی۔

 

اتحادوقت کی ضرورت

عمران خان کی جنرل اسمبلی میں کی گئی تقریر کو ملک بھر کے ہر طبقے نے سراہا ہے اور اس کے چرچے اب تک جاری ہیں ۔ سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کے بعد ایک طویل عرصہ گزرنے کے بعد عالمی فورم پر کسی نے اسلام ، دہشت گردی اور کشمیر کے بارے میں حقائق بیان کئے ہیں اور کسی کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے بڑی جراَت مگر دانش کے ساتھ پاکستان کو درپیش مسائل پر موثر انداز میں اظہار خیال کیا ۔ خصوصاً مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے ان کا خطاب خاصی اہمیت کا حامل تھا اور انہوں نے دلائل اور برہان کے ساتھ کشمیر کا مسئلہ اٹھایا اور عالمی دنیا پر اس متنازعہ مسئلہ کی اہمیت اجاگر کرنے کے ساتھ ساتھ انہوں نے اس حوالے سے بھارت کی ہٹ دھرمی اور مودی سرکار کا مکروہ چہرہ بھی بے نقاب کیا ان کے اس خطاب سے محصور، مجبور اور مقہور کشمیریوں اور پاکستانیوں کو بڑا حوصلہ ملا ۔ اقوام عالم کے اس پلیٹ فارم پر ایک طویل عرصہ بعد کسی پاکستانی رہنما نے بھرپور انداز میں کشمیر کا مقدمہ پیش کیا اور دنیا کو باور کرایا کہ گزشتہ سات دہائیوں سے معصوم کشمیریوں پر بھارت نے مظالم کے جو پہاڑ توڑ رکھے ہیں اور تاحال یہ سلسلہ جاری ہے اور ساتھ ہی انہوں نے اس عہد کا بھی اعادہ کیا کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کے کے حقوق کے حصول کےلئے آخری حد تک جائیں گے ۔ ایسے ہی کسی موقع کےلئے اسد اللہ خان غالب نہ کہا تھا

;242;دیکھنا تقریر کی لذت کہ جو اس نے کہا

میں نے یہ سوچا کہ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے

پاکستان اور بھارت دونوں ایٹمی قوتیں ہیں اور کشمیر دونوں کے درمیان ایک سلگتا ہوا پوائنٹ ہے جس کے باعث دونوں ملکوں کے درمیان کچھ بھی ہوسکتا ہے جس میں ایٹمی جنگ کا خطرہ بھی شامل ہے ۔ جنرل اسمبلی کے مذکورہ اجلاس میں چین اور ترکی نے واضح طور پر کشمیریوں کو حق خود ارادیت دئیے جانے پر زور دیا جبکہ ملائشیا سمیت بعض دیگر ممالک نے کشمیر کے متنازعہ مسئلہ کو حل کرنے کی ضرورت پر زوردیا ہے ۔ وزیر اعظم عمران خان کا خطاب بلاشبہ بھرپور اور موثر کن تھا مگر بعض عوامل ایسے بھی ہوتے ہیں جن میں عمل کی اشد ضرورت ہوتی ہے ۔ ہمارا مقابلہ بھارت جیسے عیار اور مکار دشمن سے ہے جس کےلئے ہ میں بیرونی اور خصوصا اندرونی طور پر اتحاد کی اشد ضرورت ہے اور اس کے بغیر ہم بھارت کی گھناءونی سازشوں کا منہ توڑ جواب نہ دے سکیں گے ، اس حوالے سے حکومت وقت کا اپوزیشن کو اعتماد میں لینے کی اشد ضرورت ہے ۔ قومی اسمبلی میں اس وقت 342نشستیں ہیں جن میں 177موجودہ مخلوط حکومت کی ہیں جبکہ باقی نشستیں اپوزیشن کے پاس ہیں جو حکومتی اراکین کی طرح عوام کے منتخب کردہ نمائندے ہیں اور ان میں وہ نمائندے بھی شامل ہیں جو ماضی کی حکومتوں میں شامل رہے ہیں اور بعض تو ایسے بھی ہیں جو وزارتوں ، وزارت عظمیٰ اور صدارت کے عہدہ جلیلہ پر بھی فائز رہ چکے ہیں جس کے باعث ان کے باہر کے ممالک کی اعلیٰ شخصیات سے بھی تعلقات تھے اورہیں ۔ دوسری طرف انہیں ملک کے اندر اپنے اپنے حلقہ انتخاب میں عوامی سطح پر بھی حمایت حاصل ہے اور قائد اعظم محمد علی جناح;231; کے مطابق کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے جس کے مطابق پاکستان صرف حکومت کا ہی نہیں پورے پاکستان کا مسئلہ ہے جس کےلئے حکومت اور اپوزیشن کا ایک پیج پر ہونا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے ۔ اس حوالے سے پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف کا ٹویٹر پیغام خوش آئند ہے جس میں انہوں نے واضح طور پر کہا ہے کہ حکومت اور اپوزیشن مسئلہ کشمیر کے معاملے پر متحد ہیں اور کشمیریوں کی سیاسی، اخلاقی اور سفارتی مدد پر ہ میں کوئی تقسیم نہیں کر سکتا ۔ یہ کہہ کر انہوں نے حکومت کو ایک دعوت فکر دی ہے کہ اب گیند حکومت کے کورٹ میں اور حکومت کو بھی دانشمندی کا ثبوت دینا چاہیے یہ بجا کہ وزیر اعظم عمران خان کی جنرل اسمبلی میں تقریر سے یہ مسئلہ عالمی سطح پر اجاگر ضرور ہوا مگر 70سالہ پرانا مسئلہ صرف ایک تقریر سے حل نہیں ہو سکتا اس کےلئے بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے اور یہ اہم ترین کام صرف اکیلے حکومت نہیں کرسکتی ۔ اپوزیشن لیڈرکے مذکورہ بیان کی روشنی میں حکومت کو چاہیے کہ وہ اپوزیشن کو اس مسئلہ پر اعتماد میں لے اور دو قدم آگے بڑھ کر اپوزیشن سے بات کرے اور اس کے سیاسی تجربوں سے فائدہ اٹھائے اورانہیں اپنا ہمنوا بنائے اور ایسے وفود تشکیل دے جن میں مخالف سیاستدانوں بھی شامل ہوں جو بیرونی دنیا کو کشمیر میں ہونے والے بھارتی مظالم، چیرہ دستیوں ،اس کی ہٹ دھرمی اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے دنیا کو آگاہ کرے ۔ اس سے دنیا بھر میں ایک اچھا تاثر جائے گا اور بیرونی دنیا یہ سمجھ پائے گی کہ مسئلہ کشمیر پر حکومت ، اپوزیشن اور عوام متحد ہیں جو مسئلہ کشمیر کےلئے نیک فعال ہوگا ۔ جہاں تک حکومت مخالف سیاستدانوں کے مبینہ کرپشن مقدمات کا تعلق ہے تو ایک سال سے زیادہ کا عرصہ گزر جانے کے بعد حکومت کسی بھی کرپٹ سیاستدان سے کوئی رقم واپس کرانے میں کامیاب نہیں ہوسکی ۔ بعض معلومات اور بیانات کے مطابق میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری سمیت گرفتار سیاستدانوں میں کوئی بھی حکومت کے ساتھ این آر او کرنے کےلئے تیار نہیں ۔ یہاں ہم یہ کہنے میں حق بجانب ہیں کہ سیاستدانوں کے خلاف مبینہ کرپشن مقدمات کو پس پشت ڈال کر ہ میں پوری قوت مسئلہ کشمیر پر مرکوز کرنے چاہیے اگر حکومت نے گرفتار کرنا ہی ہے تو ان کے فرنٹ مینوں کو حراست میں لے کر مقدمات چلائے اور جرم ثابت ہونے پر قرار واقعی سزادے اسی طرح جن سرکاری عہدیداروں کرپشن کیسز ہیں ان پر بھی قانون کے مطابق کارروائی کی جائے اور ان سے لوٹی ہوئی رقم واپس لی جائے ۔ اس وقت پاکستان کو کئی چیلنجز کا سامنا ہے جو اس بات کا متقاضی ہے کہ حکومت اپوزیشن اور فوج کا اتحاد بہت ضروری ہے نہ کہ ایک دوسرے پر الزامات لگا کر تفریق پیدا کی جائے جو کسی بھی طرح قابل ستائش نہیں جب کہ اتحاد کی فضا میں نہ صرف ہم درپیش چیلنجز کا پامردی کے ساتھ مقابلہ کر سکیں گے بلکہ مسئلہ کشمیر کو بھی حل کرانے میں بھی کامیاب ہوجائیں گے ۔

ہم وزیر اعظم عمران خان سے کہیں گے کہ جس طرح وہ اہم معاملات میں یوٹرن لیتے رہے ہیں اس معاملے میں بھی یوٹرن لیں اور اپوزیشن کو اعتماد میں لیں جو یقینا سود مند ثابت ہوگا اور اگر وہ چاہیں تو محترمہ بشریٰ بی بی سے بھی مشورہ کر سکتے ہیں کیونکہ ماضی میں ہم نے دیکھا ہے کہ بعض معاملات میں قابل احترام بی بی نے آپ کو مفید مشوروں سے نوازا ہے اور اس معاملے میں بھی ان کا مشورہ مفید رہے گا ۔ اللہ نہ کرے کہ آپ نے جو جنرل اسمبلی میں تاریخی خطاب کیا ہے وہ بھی ذوالفقار علی بھٹو کے خطاب کی طرح رائیگاں نہ ہو ۔

Google Analytics Alternative