Home » 2019 » October » 06

Daily Archives: October 6, 2019

شمعون عباسی کی فلم ’دُرج‘ پر عائد پابندی ہٹانے کی درخواست

اداکار و پروڈیوسر شمعون عباسی نے سینسر بورڈ سے فلم ’دُرج‘ پر پابندی ختم کرنے کی درخواست کردی۔

فلم ’دُرج‘ پر حال ہی میں تمام سینسر بورڈ کی جانب سے پابندی عائد کی گئی تھی جس کی وجہ اب تک سامنے نہیں آسکی ۔

ہدایت کار شمعون عباسی نے سوشل میڈیا پر بتایا کہ فلم ’دُرج‘ بد قسمتی سے اس وقت پاکستان میں ریلیز نہیں کی جاسکے گی کیونکہ سینسر بورڈ کو فلم کے حوالے سے اعتراضات ہیں جس کی وجہ سے انہوں نے فلم کو پاکستان میں ریلیز کرنے کی اجازت نہیں دی۔

فوٹو: شمعون عباسی فیس بُک

سوشل میڈیا پر شمعون عباسی نے سینسر بورڈ سے درخواست کرتے ہوئے کہا کہ حکام ایک مرتبہ پھر فلم کا جائزہ لیں اور اس فیصلے پر نظر ثانی کریں، ہم اس پر کام کررہے ہیں اور اپنی پوری کوشش کر رہے ہیں اور اگر انہیں فلم میں کوئی نامناسب چیز نظرآتی ہے تو ہم ان کےکہنے کے مطابق اسے ہٹا سکتے ہیں، ہمیں اُمید ہے کہ وہ اس عمل کے ذریعے ہماری مدد کریں گے۔

دوسری جانب شمعون عباسی نے عالمی سطح پر فلم کی ریلیز کے حوالے سے بتایا کہ فلم ’دُرج‘ ناروے اور ڈنمارک میں ’گرین چِیلیز‘ کے بینر تلے 11 اکتوبر کو  سنیما گھروں کی زینت بنے گی۔

یاد رہے کہ فلم ’دُرج‘ کی ہدایات کاری بھی شمعون عباسی نے کی ہے اور اس کی کہانی بھی انہوں نے ہی لکھی ہے، فلم میں مرکزی کردار بھی شمعون عباسی نے ہی کیا ہے اور ان کے ساتھ دیگر کاسٹ میں مائرہ خان، شیری شاہ، نعمان جاوید اور دیگر اداکار شامل ہیں۔

آدم خور انسانوں کی کہانی پر مبنی فلم کو شمعون عباسی اور پروڈکشن ٹیم نے حقیقی رنگ دینے کے لیے کئی ماہ ریسرچ کی اور انہوں نے کافی وقت دنیا سے الگ تھلگ غاروں میں رہنے والے انسانوں کے ساتھ گزارا تاکہ اِن کے طرز زندگی کو صحیح روپ میں دکھا سکیں۔

فلم کے ٹریلرز کو اب تک یوٹیوب اور سوشل میڈیا پر لاکھوں افراد دیکھ چکے ہیں جب کہ مداحوں کو فلم کی ریلیز کا بے صبری سے انتظار ہے۔

واضح رہے کہ شمعون عباسی کی تجسس سے  پھرپور فلم ’دُرج‘ کو رواں سال 11 اکتوبر کو دنیا بھر میں جب کہ 18 اکتوبر کو پاکستان میں نمائش کے لیے پیش کیا جانا تھا اور فلم کو عالمی کانز فلم فیسٹیول میں بھی پیش کیا جانا تھا۔

رابرٹ ڈی نیرو پر جنسی ہراسانی کے الزام میں ­12 ملین ڈالر کا مقدمہ

لاس ویگاس: ہالی ووڈ کے آسکر ایوارڈ یافتہ اداکار رابرٹ ڈی نیرو پر ان کی سابق معاون گراہم چیز رابنسن نے جنسی طور پر ہراساں کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے 12 ملین ڈالر ہرجانے کا عدالتی دعویٰ دائر کردیا۔

گراہم چیز رابنسن نے الزام لگایا کہ رابرٹ ڈی نیرو نے کئی سال تک انہیں جنسی امتیازی سلوک اور ہراسانی کا نشانہ بنایا۔ مقدمے میں کہا گیا کہ 76 سالہ اداکار رابرٹ نے فون پر اس کے ساتھ غیر مہذب الفاظ استعمال کیے اور شراب نوشی کے بعد ڈرایا دھمکایا۔ چیز رابنسن نے کہا کہ رابرٹ دوسری خواتین کو بھی غیر منصفانہ اور امتیازی سلوک کا نشانہ بناچکے ہیں۔

دوسری طرف رابرٹ نے اس مقدمے پر کوئی موقف نہیں دیا ہے تاہم ان کے وکیل نے الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔ چیز رابنسن نے 2018  میں رابرٹ ڈی نیرو کی معاون کی حیثیت سے کام شروع کیا اور بعد میں ترقی کرتے ہوئے پروڈکشن کمپنی میں ان کے نائب کے عہدے تک پہنچیں۔

دوسری طرف رابرٹ ڈی نیرو کی کمپنی نے چیز رابنسن پر بھی 6 ملین ڈالر چوری کا الزام عائد کردیا ہے۔ رابنسن نے چوری کا الزام مسترد کرتے ہوئے کہا کہ رابرٹ نے ان کے خلاف جھوٹے الزامات عائد کیے ہیں جن کا مقصد ان کا کیریئر تباہ کرنا اور جنسی ہراسانی پر قانونی چارہ جوئی سے روکنا ہے۔

’طیفا ان ٹربل‘ میں مایہ کے بجائے ہانیہ ترجیح تھیں، علی ظفر

کراچی: گلوکار و اداکار علی ظفر نے انکشاف کیا ہے کہ ان کی فلم ’طیفا ان ٹربل‘ میں مرکزی کردار کے لیے مایہ علی کے بجائے ہانیہ عامر ان کی پہلی ترجیح تھیں۔

علی ظفر نے یوٹیوب کے ایک شو میں شرکت کی جہاں اُن سے مختلف سوالات پوچھے گئے۔ ایک سوال کے جواب میں علی ظفر نے انکشاف کیا کہ جب فلم ’طیفا ان ٹربل‘ کے لیے مایہ کا انتخاب کیا جا رہا تھا تب ہانیہ عامر بھی مضبوط امیدوار اور پہلی ترجیح تھیں حتیٰ کہ ہانیہ کا انتخاب تقریباً ہو گیا تھا لیکن کچھ وجوہات کی بنا پر اُن کی جگہ مایہ علی کو کاسٹ کیا گیا۔

شو کے میزبان کی جانب سے سوال پوچھا گیا کہ فلم ’ طیفا ان ٹربل ‘ کے سیکوئل میں کون سی اداکارہ اب مرکزی کردار ادا کریں گی کیوں کہ مایہ علی کو شہریار منور لے کر چلے گئے ہیں جس پر علی ظفر نے منفرد انداز میں جواب دیتے ہوئے کہا کہ کسی بھی اداکار کے لیے کسی بھی اداکارہ کو واپس لانا بھی ایک فن ہوتا ہے۔

گلوکار نے یہ بھی کہا کہ فلم کے سیکوئل میں مرکزی اداکارہ کا نام راز ہے کیوں کہ وہ کوئی بھی ہوسکتا ہے اور نہ صرف پاکستان بلکہ بیرون ملک سے بھی ہوسکتا ہے۔

یاد رہے کہ احسن رحیم کی ہدایت کاری میں بننے والی ایکشن اور کامیڈی سے بھرپور فلم ’طیفا ان ٹربل‘ گزشتہ سال جولائی میں پاکستان سمیت 24 ممالک میں نمائش کے لیے پیش کی گئی تھی۔ بہترین اداکاری اور عمدہ کہانی کی بدولت یہ فلم باکس آفس پر نیا ریکارڈ قائم کرنے میں کامیاب رہی تھی۔

دل کش موسیقی اور مسحور کن دھنوں سے سجے کوک اسٹوڈیو سیزن 12 کا پہلا پرومو جاری

 کراچی: دل آویز شاعری، مسحور کن دھنوں اور سُر و تال کی دھنک لیے کوک اسٹوڈیو کے سیزن 12 کا پہلا پرومو جاری کردیا گیا ہے۔

پاکستان میں پاپ موسیقی کو آسمان کی بلندی تک پہنچانے والے معروف میوزیکل بینڈ وائٹل سائنز کے سابق رکن روحیل حیات کوک اسٹوڈیو کا 12 واں سیزن لیکر موسیقی کے مداحوں کو اپنی دھنوں کے سحر میں جکڑنے کے لیے آرہے ہیں جس کا پہلا پرومو یوٹیوب پر جاری کردیا گیا ہے جسے صارفین میں بے پناہ مقبولیت حاصل ہوگئی ہے اور چند گھنٹوں میں ہی لاکھوں افراد نے پرومو کو دیکھا جب کہ پہلی قسط 11 اکتوبر کو جاری کی جائے گی۔

کوک اسٹوڈیو کے 12 ویں سیزن کے جاندار پرومو نے صارفین کی بے چینی میں مزید اضافہ کردیا ہے، دلکش اور جامع پرومو میں موسیقی کی اہمیت پر روشنی ڈالی گئی ہے اور ساتھ ہی اس سیزن میں سُر بکھیرنے والے تمام ہی گلوکاروں کو متعارف کرایا گیا ہے۔ پرومو دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ یہ سیزن مداحوں کے دل میں گھر کرلے گا۔

کوک اسٹوڈیو کے سیزن 12 کی کہکشاں کے خوش نما ستاروں میں عاطف اسلم، راحت فتح علی خان، حدیقہ کیانی، ابرارالحق، عائمہ بیگ، شجاع حیدر، علی سیٹھی، فرید آیاز، فریحہ پرویز، کاشف دن، نمرا رفیق، قراةالعین بلوچ، ریچل ویکاجی، ساحر علی بگا، صنم ماروی، شہاب حسین، عمیر جسوال، زیب بنگش، ذوئی ویکاجی شامل ہیں۔ روحیل حیات اس سے قبل کوک اسٹوڈیو کے ابتدائی 6 سیزن پروڈیوس کر چکے ہیں جنہیں عوام میں بے پناہ مقبولیت حاصل ہوئی تھیں۔

موسیقی کے دلدادہ افراد کا یہ دیرینہ مطالبہ تھا کہ روحیل حیات کو دوبارہ سے کوک اسٹوڈیو میں موقع دیا جائے جسے کوک اسٹوڈیو انتظامیہ نے شرف قبولیت بخشتے ہوئے روحیل حیات کو پھر سے مداحوں کے دلوں پر راج کرنے کا موقع دیا ہے۔ صارفین 12 ویں سیزن کے شاہکار گانوں کا بے چینی سے انتظار کرہے ہیں۔ روحیل روایتی اور جدید آلاتِ موسیقی کی تال میل سے سننے والوں کے دل کے تار چھیڑ دیتے ہیں۔

واضح رہے کہ کوک اسٹوڈیو کے 11 سیزن میں پہلے 6 روحیل حیات اس کے بعد 4 سیزن میوزیکل بینڈ اسٹرنگز اور ایک علی حمزہ نے پروڈیوس کیا ہے تاہم جو مقبولیت روحیل حیات کے سیزنس کو ملی اس سے اسٹرنگز اور علی حمزہ محروم رہے۔

ایل اوسی پارکرنیوالے لوگ بھارتی بیانیےکےہاتھوں میں کھیلیں گے، وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ کشمیریوں کی مددکیلئے لائن آف کنٹرول پارکرنیوالابھارتی بیانیےکےہاتھوں میں کھیل رہاہوگا۔

وزیراعظم عمران خان نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ آزادکشمیرکےعوام کے غم و غصہ کو سمجھتاہوں، وہ مقبوضہ وادی میں2ماہ سےاپنے کشمیری بھائیوں کوبھارت کےغیرانسانی کرفیو کی قید میں دیکھ رہےہیں۔

وزیراعظم عمران خان نے خبردار کیا کہ جو شخص کشمیریوں کی مددکیلئے آزاد کشمیر سے ایل اوسی پار کرے گا وہ بھارتی بیانیےکےہاتھوں میں کھیلے گا، چاہے اس کا مقصد کشمیریوں کو انسانی امداد کی فراہمی اور ان کی جدوجہد کی حمایت ہی کیوں نہ ہو۔ وزیراعظم نے کہا کہ اس سےبھارت کومقبوضہ وادی میں مظالم بڑھانے اور ایل اوسی پارحملےکابہانہ ملےگا۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ بھارت اپنے بیانیے کے ذریعے پاکستان پر “اسلامی دہشت گردی” کا الزام لگا کر ظالمانہ بھارتی قبضے کیخلاف اہل کشمیر کی جائز جدوجہد سے توجہ ہٹانے کی کوشش کرتا ہے۔

واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے اس سے پہلے بھی کہا تھا کہ ایل او سی پار کرنے والا شخص کشمیریوں اور پاکستان دونوں کا دشمن ہوگا۔

بھارت سفارتکاری اور مقبوضہ کشمیر میں نارمل حالات والے بھاشن اپنے پاس رکھے، پاکستان

اسلام آباد: ترجمان دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ بھارت سفارتکاری اور نارمل حالات کے بارے اپنے بھاشن اپنے پاس رکھے۔

دفترخارجہ کی جانب سے جاری بیان میں پاکستان نے بھارتی وزارت خارجہ کی وزیراعظم عمران خان کے کشمیر کے حوالے سے بیانات پر ردعمل کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی بیانات مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشت گردی کی عکاسی کرتے ہیں۔

ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹرمحمد فیصل نے کہا ہے کہ بھارتی جبر سے متاثر کشمیریوں کے لئے آواز اٹھانا ہماری عالمی اور اخلاقی ذمہ داری ہے، بھارت اپنی انتہاپسندانہ نظریات اور غالبانہ بالادستی کے خواب کے وجہ سے سچ کا سامنا کرنے سے گریزاں ہے، اور اپنے بالادستی پر مبنی طرز عمل کے برعکس خود کو ایک نارمل ریاست ثابت کرنا چاہتا ہے۔

پاکستان کا کہنا ہے کہ بھارت دنیا کو بتائے کہ ایک نارمل ریاست میں 80 لاکھ افراد محصور کیوں رکھے ہیں، دو ماہ سے زائد عرصے سے مقبوضہ کشمیر کے لاکھوں افراد کھلے پنجرے میں بند کرکے ‘ہر چیز ٹھیک ہے’ کا تاثر اور دعوی کس کو دکھانے کیلئے ہے؟ ۔

ترجمان کا کہناہے کہ کون سی نارمل ریاست میں سیاسی اور انتہاپسند جتھوں کو گائے ذبح کے نام پر تشدد کرکے قتل کرنے کی کھلی اجازت ہے؟ کس نارمل ریاست میں ‘گھر واپسی’ اور ‘لو جہاد’ کو ہوا دی جاتی ہے؟ بھارت سفارتکاری اور نارمل حالات کے حوالے سے اپنے بھاشن اپنے پاس ہی رکھے۔

گٹکا فروخت کرنے پر جائیداد ضبط کرنے کا قانون تیار، بل سندھ اسمبلی میں پیش

کراچی: سندھ حکومت نے گٹکا فروخت کرنے والوں کی جائیداد ضبط کرنے کا قانون تیار کرلیا اس حوالے سے اسمبلی میں بل پیش کردیا گیا۔

سندھ حکومت نے گٹکا، مین پوری اور دیگر نشہ آور اشیا کی تیاری، فروخت اور استعمال کرنے والوں کے خلاف انتہائی سخت قانون تیار کرلیا۔ اس قانون کی منظوری کے بعدان اشیاء کی فروخت اور استعمال کرنے والوں کو یہ کاروبار اور شوق بہت مہنگا پڑے گا۔ سندھ حکومت کی جانب سے جو مسودہ قانون تیار کیا گیا ہے وہ اپنی نوعیت کا منفرد قانون جس کی رو سے گٹکا مین پوری کی تیاری فروخت پر جائیداد ضبط کرلی جائے گی۔

مسودہ قانون میں کہا گیا ہے کہ سندھ بھر میں گٹکا مین پوری اور تمام نشہ آور اشیا کی فروخت و استعمال ناقابل معافی جرم ہوگا، گٹکا مین پوری اور نشہ آور چھالیہ کی امپورٹ، ایکسپورٹ اور ٹرانسپورٹ پر مکمل پابندی ہوگی۔ قانون کے مطابق گٹکا مین پوری کی تیاری فروخت میں استعمال ہونے والی جائیداد ضبط کرلی جائے گی جب کہ  مجوزہ قانون کے تحت اس کاروبار سے ہونے والی آمدن واثاثے بھی ضبط کیے جاسکیں گے۔

گٹکا، مین پوری، ماوا، تمباکو اور  چھالیہ کے استعمال، فروخت اور تیاری پر ایک سے 6 سال تک سزا ہوگی، گٹکا مین پوری کی تیاری فروخت پر دو سے دس لاکھ روپے جرمانہ کیا جائےگا، اس کاروبار کے خلاف کارروائیوں میں رکاوٹ ڈالنے پر دو سال سزا ہوگی، تعلیمی اداروں عوامی مقامات پبلک ٹرانسپورٹ میں گٹکا مین پوری کے استعمال پر ایک ماہ قید 45 ہزار روپے جرمانہ کیا جائے گا۔

گٹکا مین پوری کے خلاف مجوزہ قانون کے تحت جرائم ناقابل ضمانت ہوں گے، مجوزہ قانون کے تحت پولیس سب انسپکٹر کی سطح کا افسر مصدقہ اطلاع پر گٹکا مین پوری کے خلاف کسی بھی عمارت کی تلاشی لے سکے گا، گٹکا مین پوری کی تیاری فروخت پر پولیس کو دروازہ توڑ آپریشن کا اختیار ہوگا اور پولیس گٹکا مین پوری کے خلاف کاروائی کے دوران سامان مشینری ضبط کرسکے گی۔

سندھ اسمبلی میں بل متعارف، ایک ہفتے میں مزید بہتر بناکر پیش کیا جائے گا

دریں اثنا سندھ اسمبلی کے اجلاس کے دوران ہفتے کو صوبے میں گٹکے، مین پوری کی تیاری، اس کے ذخیرہ کرنے، فروخت اور کھانے پر پابندی کا بل متعارف کردایا گیا۔ بل کو متعلقہ سلیکٹ کمیٹی کے سپرد کردیا گیا ہے۔

اسپییکر آغا سراج درانی نے کہا کہ جب تک بل نہیں پاس ہوتا آپ سب لوگ میں سے کوئی بھی کوئی گٹکا نہیں کھا سکتا۔ اسپیکر نے ہدایت دی کہ سلیکٹ بل کو ایک ہفتے میں مزید بہتر بنا کر ایوان میں پیش کرے۔

جعلی اکاؤنٹس کے بعد اب بیوہ خاتون کا کروڑوں روپے مالیت کا پلاٹ سامنے آگیا

کراچی: بے نامی اکاؤنٹس کے بعد اب ایک خاتون کی کروڑوں روپے مالیت کی بے نامی جائیداد کا انکشاف ہوا ہے۔

آئے روز کسی نہ کسی غریب فرد کے نام بنے جعلی اکاؤنٹ سے اربوں روپے کی منتقلی کا انکشاف ہوتا ہے رہتا ہے، جعلی بینک اكاؤنٹس كی وبا ابھی رکی نہیں کہ اب کراچی میں بے نامی جائیداد کا بھی انکشاف ہوا ہے، اور اس حوالے سے نیب کمبائن انوسٹی گیشن ٹیم نے شاہ فیصل کالونی کی رہاشی بیوہ خاتون کو نوٹس بھیج دیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ آپ کا کراچی کے پوش علاقے میں کروڑوں روپے مالیت کا پلاٹ ہے، جس کی تحقیقات کے لئے اسلام آباد طلب کیا گیا ہے۔

کراچی کے علاقے شاہ فیصل کی رہائشی بیوہ خاتون کا کہنا ہے کہ انہیں نیب اسلام آباد کی جانب سے ایک نوٹس موصول ہوا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ ان کا کراچی کے پوش علاقے میں 320 گز کا پلاٹ ہے جس کی مالیت 80 کروڑ سے بھی زائد ہے۔

خاتون کا کہنا ہے کہ میں بیوہ ہوں اور اس وقت اپنے بھائی کے گھر مقیم ہوں، نیب نے نوٹس میں مجھے اسلام آباد طلب کیا ہے جب کہ میرے پاس اسلام آباد جانے کا کرایہ بھی نہیں، اگر نیب نے مجھ سوالات یا تحقیقات کرنی ہے تو مجھے کرایہ دیا جائے، اگر میرا کوئی پلاٹ ہوتا تو میں کراچی کی غریب بستی میں رہائش پذیر نہ ہوتی۔

دوسری جانب نیب ذرائع نے بتایا ہے کہ خاتون کے نام پرکراچی کے مہنگے علاقے میں تین سو بیس گز کا پلاٹ ہے، پلاٹ کڈنی ہل پارک کی زمین پر چائنہ کٹنگ کرکے نکالا گیا اور اسے گرفتار سابق ڈی جی پارکس لیاقت قائم خانی کے دور میں الاٹ کیا گیا، پلاٹ کی موجودہ مالیت اسی کروڑ سے زائد ہے۔

Google Analytics Alternative