Home » 2019 (page 30)

Yearly Archives: 2019

بھارت میں وزیراعظم عمران خان کی تصویر کے بل بورڈز نصب

امرتسر: بھارتی ریاست پنجاب کے شہر امرتسر میں وزیراعظم عمران خان کی تصویر والے بل بورڈز لگا دیے گئے۔

بھارتی شہر امرتسر میں وزیراعظم عمران خان کی تصاویر والے بل بورڈز لگادیئے گئے ہیں اور بل بورڈز پروزیراعظم کے ساتھ  بھارتی سیاست دان اور سابق کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو کی تصویر بھی آویزاں ہے۔

پاکستان اور بھارت کے درمیان کرتارپور راہداری کی کوششوں پر وزیراعظم عمران خان کے حق میں یہ بل بورڈز سکھ رہنما ہر پال سنگھ کی جانب سے لگائے گئے ہیں جس میں لکھا ہے کہ عمران خان اور نوجوت سنگھ سدھو کرتارپور کوریڈور کھولنے کے اصل ہیرو ہیں۔

واضح رہے کہ 9 نومبر کو پاکستان کی جانب سے کرتارپور میں دنیا کے سب سے بڑے گودوارے کی فقید المثال افتتاحی تقریب رکھی گئی ہے جس میں شرکت کے لیے سرحد پار سے نوجوت سنگھ سدھو سمیت دیگر اہم رہنماؤں کو بھی دعوت دی گئی ہے۔

قومی بچت اسکیموں کے شرح منافع میں 2 فیصد سے زائد کمی

اسلام آباد: قومی بچت اسکیموں کے شرح منافع میں 2 فیصد سے زائد کمی کردی گئی ہے جس کے بعد ایک لاکھ پر ماہانہ 1230 کے بجائے 1040 روپے ملیں گے۔

نیشنل سیونگز کی اسکیموں کے شرح منافع میں 2 فیصد سے زائد کمی کردی گئی ہے، بہبود سیونگ سرٹیفکیٹ اور پنشن بینیفٹ کی شرح منافع 14.76 سے کم کر کے 12.48 فیصد کر دی گئی ہے۔

منافع میں کمی کے  بعد اب ایک لاکھ پر ماہانہ 1230کے بجائے 1040 روپے، اسپیشل سیونگز سرٹیفکیٹ پر ہر چھ ماہ بعد 6350 کے بجائے 5500 روپے، ریگولر انکم سرٹیفکیٹ پر ہر ماہ 1080 کے بجائے 910 روپے اور  ڈیفینس سیونگز سرٹیفکیٹ اب دس سال کے بعد 340000 کے بجائے 276000 ملیں گے۔

ایک ماہ کے دوران مہنگائی کی شرح میں 11 فیصد اضافہ

اسلام آباد: اکتوبر کے دوران مہنگائی میں  اضافہ کی شرح (افراط زر) 1.82 فیصد رہی ہے جب کہ سالانہ بنیادوں پرگزشتہ سال اکتوبر کی نسبت مہنگائی بڑھنے کی شرح 11 فیصد سے زائد رہی ہے۔

وفاقی ادارہ شماریات کی جانب سے جاری کردہ اعدادوشمارکے مطابق ایک ماہ کے دوران مہنگائی کے بڑھنے کی شرح 1 اعشاریہ 82 فیصد رہی اور گزشتہ سال اکتوبر کی نسبت مہنگائی بڑھنے کی شرح 11 فیصد سے زائد رہی، جب کہ جولائی تا اکتوبر گزشتہ سال کی نسبت مہنگائی 10.32 فیصد بڑھی ہے۔

اعداد دو شمار کے مطابق ایک سال کے دوران گیس کی قیمتوں میں 55 فیصد اضافہ اور بجلی 10.44 فیصد مہنگی ہوئی، پٹرول 21 فیصد مہنگا ہوا، آٹا 12 فیصد، پیاز کی قیمت 131 فیصد ، دال مونگ 46 فیصد، دال ماش 32 فیصد، آلو 45 فیصد، سبزیاں 40 فیصد، چینی 35 فیصد، خوردنی تیل اور گھی 18 فیصد مہنگے ہوئے۔

50 ہزار یونٹ کی پیداواری صلاحیت کا حامل پلانٹ مکمل کر لیا، سی ای او کیا لکی موٹرز

کراچی: کیا لکی موٹرز کے سی او او محمد فیصل نے کہا ہے کہ 20 ارب روپے کی سرمایہ کاری کے ساتھ صرف ڈیڑھ سال میں 50ہزار یونٹ کی پیداواری صلاحیت کا حامل پلانٹ مکمل کر لیا گیا ہے۔

کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹری (کاٹی) میں منعقدہ تقریب سے خطاب کے دوران محمد فیصل نے کہا کہ 14 ماہ کے دوران ملک کے 11 شہروں میں 18 ڈیلرشپ دی جا چکی ہیں، پاکستان کی آٹوموبائل صنعت کو معیار کی نئی بلندیوں تک لے جانے کا عزم رکھتے ہیں۔

قبل ازیں صدر کاٹی شیخ عمر ریحان نے کہا کہ معیشت کی ترقی اور روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے لیے آٹو موبائل سیکٹر کی ترقی ناگزیر ہے، ہمیں امید ہے کہ KIAکی اس شعبے میں سرمایہ کاری سے نئے مواقع پیدا ہوں گے اور آٹو موبائل صنعت میں ایک صحت مند مسابقت کا آغاز ہوگا۔

اسلام آباد یونائیٹڈ اور ڈین جونز نے راہیں جدا کرلیں

لاہور: پی ایس ایل کی فرنچائز اسلام آباد یونائیٹڈ اور ڈین جونز نے راہیں جدا کرلیں اور اب پانچویں ایڈیشن کے لیے کسی نئے ہیڈ کوچ کا انتخاب کیا جائے گا۔

اپنے ویڈیو پیغام میں ڈین جونز کا کہنا ہے کہ فرنچائز مالکان سے بات چیت ہوئی، انہیں نئے ہیڈ کوچ کی تلاش ہے، میری کوچنگ میں ٹیم نے 2 ٹائٹلز اور 8 پلے آف میچز میں سے 6جیتے،اسلام آباد یونائیٹڈ کے ساتھ شاندار سفر میں کئی نوجوان کرکٹرز سامنے آئے جن کو بعد ازاں پاکستان کی نمائندگی کا بھی موقع ملا، فرنچائز کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں، میرے مستقبل کے حوالے سے اچھی خبر جلد سامنے آئے گی۔

یاد رہے کہ اسلام آباد یونائیٹڈ کی کوچنگ کے لیے قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ و سلیکٹر مصباح الحق کا نام گردش میں ہے، قومی ٹیم کے سابق ہیڈ کوچ مکی آرتھر کی جگہ کراچی کنگز کی کوچنگ ڈین جونز کے سپرد کئے جانے کا امکان ہے۔ معین خان کوئٹہ گلیڈی ایٹرز، عاقب جاوید لاہور قلندرز اور محمد اکرم پشاور زلمی کے کوچ برقرار رہیں گے، ملتان سلطانز کی منیجمنٹ بھی جوہان بوتھا کی جگہ کسی اور کو ذمہ داریاں سونپنے پر غور کرسکتی ہے۔

بابر اعظم بطور ٹی 20 کپتان فتح سے کھاتہ کھولنے میں ناکام

کینبرا:  بابراعظم بطورٹی20 کپتان فتح سے کھاتہ کھولنے میں ناکام رہے، وہ کہتے ہیں کہ ہمیں دوسرے میچ میں شکست پر شدید مایوسی ہوئی۔

بابر اعظم کا بطور ٹوئنٹی 20 کپتان آغاز اچھا نہیں رہا، پہلے میچ میں یقینی شکست کو بارش نے ٹال دیا تھا تاہم دوسرے مقابلے میں ان کی قیادت میں گرین شرٹس کو 7 وکٹ سے ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا، اس میں بڑا ہاتھ میزبان سائیڈ کے تجربہ کار بیٹسمین اسٹیون اسمتھ کا تھا جنھوں نے ناقابل شکست 80 رنز بنائے۔

بابراعظم کہتے ہیں کہ ہمیں اس ناکامی پر بہت زیادہ مایوسی ہوئی ہے، اسٹیون اسمتھ ہی دراصل ہم سے یہ میچ چھین لے گئے، انھوں نے بہت ہی عمدہ اننگز کھیلی ہے۔ انھوں نے اننگز کے آغاز میں گرنے والی وکٹوں پر بھی افسوس کا اظہار کیا، پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا مگر فخر زمان 2 اور مڈل آرڈر بیٹسمین صرف 6 رنز پر آؤٹ ہوگئے، جس کی بدولت ابتدائی 5 اوورز میں پاکستان کا اسکور 2 وکٹ پر 29 رنز تھا۔

بابر کہتے ہیں کہ جب آغاز میں ہی وکٹیں گرجائیں تو صورتحال کافی مشکل ہوجاتی ہیں کیونکہ آپ کو دوبارہ سے خود کو سنبھالنا پڑتا ہے۔ یاد رہے کہ پاکستانی اننگز کو اصل سہارا لوئر آرڈر بیٹسمین افتخار احمد نے 34 بالز پر 62 رنز بناکر دیا۔ بابر اعظم نے بھی ٹیم کے مجموعے کو کچھ قابل بنانے کا کریڈٹ افتخار کو ہی دیا۔

دوسری جانب آسٹریلوی کپتان ایرون فنچ کا کہنا تھا کہ پورے میچ کے دوران ہماری کارکردگی کافی اچھی رہی، ہم باقاعدگی سے وکٹیں لیتے رہے، ہم جانتے تھے کہ پاور پلے میں کیسے پاکستان ٹیم کو نقصان پہنچانا ہے، ہمارے پاس اسٹیون اسمتھ جیسے کھلاڑی ہیں جوکہ دنیا کسی بھی بہتر بیٹسمین ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عمدہ کارکردگی پر مین آف دی میچ کا ایوارڈ حاصل کرنے والے اسمتھ کہتے ہیں کہ مجھے خوشی ہے کہ ٹیم کو فتح سے ہمکنار کیا تاہم اس کامیابی کی بنیاد آغاز میں بولرز نے رکھی تھی، میرے خیال میں یہ 170 رنز والی وکٹ تھی۔ سیریز کا آخری میچ جمعے کو پرتھ میں کھیلا جائے گا جس کے بعد دونوں ممالک کے درمیان 2 میچز کی ٹیسٹ سیریز کھیلی جائے گی۔

ٹاس کے موقع پر کپتان غلط فہمی کا شکار

پاکستان اور آسٹریلیا کے مابین کینبرا میں کھیلے جانے والے میچ میں ٹاس کے موقع پر کپتان غلط فہمی کا شکار ہوگئے، ایرون فنچ نے فضا میں سکہ اچھالا، بابر اعظم نے ٹیل پکارا، وہ ٹاس جیت بھی گئے، انھوں نے میزبان کپتان کیساتھ اس انداز میں ہاتھ ملایا جیسے ان کو مبارکباد دے رہے ہوں،ایرون فنچ نے کہا کہ کیا ٹاس ہم جیتے ہیں جس پر ان کو بتایا گیا کہ سکہ پاکستان کے حق میں پلٹا ہے۔

بابر اعظم نے پہلے بیٹنگ کا اعلان کیا، بہرحال کسی کیلیے پریشانی کی کوئی بات اس لیے نہیں تھی کہ فنچ پہلے بولنگ کرنا چاہتے تھے، پاکستان نے پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا،میزبان کپتان کا کہنا تھا کہ دوسری اننگز میں اوس پڑنے کا خدشہ محسوس کرتے ہوئے ہم چاہتے تھے کہ ہدف کا تعاقب کریں۔

افتخار پر غصہ، قیادت کا بوجھ بابراعظم کے مزاج پراثر انداز ہونے لگا

قیادت کا بوجھ بابراعظم کے مزاج پر اثرانداز ہونے لگا،آسٹریلیا کیخلاف دوسرے ٹی ٹوئنٹی میچ کے 16ویں اوور کی آخری گیند پر انھوں نے ایشٹن ایگر کی ایک گیند کو مڈوکٹ کی جانب کھیلتے ہوئے ففٹی مکمل کی لیکن دوسرا رن بناتے ہوئے ڈیوڈ وارنر کی ڈائریکٹ تھرو نے ان کو پویلین لوٹنے پر مجبور کردیا۔

کپتان غصے پر قابو نہ رکھ سکے اور ساتھی بیٹسمین افتخار احمد پر ناراضگی کا اظہار کیا،ان کا یہ تلخ رویہ کیمرے کی آنکھ نے محفوظ کرلیا،افتخار احمد نے بدلہ آسٹریلوی بولرز سے لیا اور 34 گیندوں پر 62کی اننگز کھیل کر ناقابل شکست رہے۔

تمباکو نوشی جسم کے ساتھ دماغ کے لیے بھی تباہ کن

کیا آپ اکثر مایوسی اور ذہنی بے چینی کا شکار رہتے ہیں؟ تو ہوسکتا ہے کہ اس کی وجہ آپ کے حالات نہیں بلکہ آپ کے ہاتھ میں موجود سیگریٹ ہو۔

درحقیقت تمباکو نوشی سے ذہنی صحت کے مسائل جیسے ڈپریشن اور منتشر ذہن (شیزوفرینیا) لاحق ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

یہ بات برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

یہ تو پہلے سے کہا جارہا تھا کہ تمباکو نوشی ذہنی صحت کے مسائل کے شکار افراد میں زیادہ عام ہوتی ہے، مگر یہ واضح نہیں تھا کہ تمباکو نوشی ان امراض کا سبب ہے یا ذہنی صحت متاثر ہونے پر لوگ اس عادت کا شکار ہوجاتے ہیں۔

برسٹل یونیورسٹی کی اس تحقیق میں اس کا جواب حاصل کرنے کی کوشش کی گئی اور محققین کا کہنا تھا کہ ہم نے دریافت کیا کہ ایسے شواہد موجود ہیں جو دونوں چیزوں کی جانب اشارہ کرتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ سیگریٹ نوشی کے نتیجے میں سنگین جسمانی امراض کے شکار ہونے کے بارے میں تو لوگ پہلے ہی جانتے ہیں، مگر اس نئی تحقیق میں ذہنی صحت پر روشنی ڈالی گئی ہے، چاہے وہ ذہنی امراض کا شکار ہوں یا نہ ہوں۔

طبی جریدے جرنل سائیکولوجیکل میڈیسین میں شائع تحقیق میں 5 لاکھ کے قریب افراد کا جائزہ لیتے ہوئے دیکھا گیا کہ تمباکو نوشی سے ڈپریشن اور شیزوفرینیا کا خطرہ کس حد تک بڑھ سکتا ہے۔

محققین کے مطابق وہ یہ تو ثابت نہیں کرسکے کہ سیگریٹ نوشی ڈپریشن یا شیزوفرینیا کا باعث ہے مگر ایسے شواہد ملے ہیں جو ان دونوں کے درمیان تعلق ثابت کرتے ہیں۔

تحقیق میں یہ بھی دریافت کیا گیا کہ ان ذہنی امراض کے شکار افراد میں تمباکو نوشی شروع کرنے کا امکان بھی زیادہ ہوتا ہے، تاہم اس عادت کے نتیجے میں ذہنی صحت متاثر ہونے کے شواہد زیادہ مضبوط تھے۔

محققین کا ماننا تھا کہ نکوٹین دماغی ریسیپٹرز ڈوپامائن اور سیروٹونین پر منفی اثرات مرتب کرتا ہے۔

ڈوپامائن ایسا قدرتی کیمیکل ہے لوگوں کے جذبات کو ریگولیٹ کرتا ہے جبکہ سیروٹونین کو خوشی کا کیمیکل بھی کہا جاتا ہے۔

تحقیق کے دوران ایسے جینز کو دیکھا گیا جو ماضی میں تمباکو نوشی شروع کرنے والے افراد سے جوڑے گئے۔

اس کے بعد محققین نے 2 الگ جینیاتی ڈیٹابیس کو استعمال کیا جو شیزوفرینیا اور ڈپریشن کے ہزاروں افراد کا تھا، تاکہ جان سکیں تمباکو نوشی سے منسلک جینز اس عوارض کا خطرہ کس حد تک بڑھاتے ہیں۔

نتائج سے ثابت ہوا کہ تمباکو نوشی شروع کرنا اور بہت زیادہ تمباکو نوشی ڈپریشن اور شیزوفرینیا کا خطرہ بہت زیادہ بڑھاتے ہیں، مثال کے طور پر جو افراد 15 سال تک روزانہ 20 سیگریٹ پیتے رہے اور پھر 17 سال تک اس سے دور رہے، ان میں تمباکو نوشی سے ہمیشہ دور رہنے والوں کے مقابلے میں شیزوفرینیا اور ڈپریشن کا شکار ہونے کا خطرہ دوگنا زیادہ ہوگا۔

اس سے قبل رواں ماہ کے آغاز میں برسٹل یونیورسٹی کی ہی ایک اور تحقیق میں خبردار کیا گیا تھا کہ تمباکو نوشی آپ کے چہرے کو جوانی میں ہی بوڑھا بھی کرسکتی ہے۔

برسٹل یونیورسٹی کی تحقیق میں یوکے بائیو بینک کے 2 گروپس کو دیکھا گیا جس میں ایک گروپ میں شامل ایک لاکھ 80 ہزار سے زائد افراد نے کبھی تمباکو نوشی نہیں کی تھی جبکہ ڈیڑھ لاکھ کا دوسرا گروپ ایسے لوگوں پر مشتمل تھا جو سابق یا اب بھی سیگریٹ پینے کے عادی تھے۔

تحقیق کے دوران سائنسدانوں نے 18 ہزار عادات کو سرچ کیا اور ان کا موازنہ ان دونوں گروپس کے ساتھ کیا۔

نتائج سے انکشاف ہوا کہ جو لوگ تمباکو نوشی کرتے ہیں یا کرتے رہے ہیں، ان کے چہرے کی عمر بہت تیزی سے بڑھتی ہے اور وہ قبل از وقت ہی بوڑھا محسوس ہونے لگتا ہے جبکہ اس عادت سے پھیپھڑوں کے افعال خراب ہوتے ہیں اور جلد کے کینسر کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔

محققین کا کہنا تھا کہ ہم نے ایسا طریقہ کار تجویز کیا ہے جو کہ بہت زیادہ تمباکو نوشی کے اثرات کو جاننے میں مدد دیتا ہے، ہزاروں عادات کو دیکھنے کے بعد یہ دریافت کیا گیا کہ یہ عادت کس طرح اثرات مرتب کرتی ہے۔

ہارٹ اٹیک اور فالج سے تحفظ دینے والی آسان عادت

یہ بات متعدد تحقیقی رپورٹس میں سامنے آچکی ہے کہ جاگنگ یا دوڑنا جسم اور صحت کے لیے متعدد فوائد کا باعث بنتی ہے اور گزشتہ سال ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ دوڑنے سے ذہنی صحت کو بہتر بنانے میں مدد دیتی ہے، جبکہ ایک اور تحقیق کے مطابق جسمانی سرگرمی عمر کے اضافے کے اثرات کو سست کردیتی ہے۔

مگر یہ واضح نہیں تھا کہ دوڑنے اور مختلف امراض سے موت کے خطرے میں کمی کے درمیان تعلق کیا ہے اور یہ بھی معلوم نہیں تھا کہ زیادہ دوڑنا کس حد تک تحفظ فراہم کرسکتا ہے۔

ان سوالات کے جوابات جاننے کے لیے آسٹریلیا کی وکٹوریہ یونیورسٹٰ، سڈنی یونیورسٹی اور دیگر تدریسی اداروں نے تحقیق کا آغاز کیا۔

اس مقصد لیے محققین نے حالیہ تحقیقی رپورٹس اور مقالوں وغیرہ کا تجزیہ کیا اور دوڑنے اور موت کے خطرے کے درمیان ممکنہ تعلق کو دریافت کرنے کی کوشش کی۔

اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے برٹش جرنل آف اسپورٹس میڈیسین میں شائع ہوئے۔

2 لاکھ سے زائد افراد پر ہونے والی 14 تحقیقی رپورٹس کا تجزیہ کیا گیا، جن میں ساڑھے 5 سال سے 35 سال کے عرصے تک اس عادت کے رضاکاروں پر مرتب ہونے والے طبی اثرات کا جائزہ لیا گیا تھا اور اس عرصے میں 25 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے۔

نئی تحقیق کے محققین نے دریافت کیا کہ دوڑنے کا کوئی بھی وقت کسی بھی وجہ سے موت کا خطرہ 27 فیڈد تک کم کرسکتا ہے اور ان نتائج کا اطلاق مردوں اور خواتین دونوں پر ہوتا ہے۔

تحقیقی ٹیم نے یہ بھی دریافت کیا کہ اس عادت سے خون کی شریانوں سے جڑے امراض جیسے ہارٹ اٹیک یا فالج سے موت کا خطرہ 30 فیصد جبکہ کینسر سے موت کا خطرہ 23 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

درحقیقت یہ ان افراد کے لیے بھی فائدہ مند عادت ہے جو ہفتے میں ایک بار یا بہت کم دوڑتے ہیں، جبکہ وہ لوگ جو ہفتہ بھر میں 50 منٹ سے بھی کم وقت تک جاگنگ کرتے ہیں، ان میں بھی ان امراض کا خطرہ کم ہوتا ہے۔

محققین کا کہنا تھا کہ عالمی ادارہ صحت نے کم از کم 150 منٹ کی ہلکی نوعیت کی جسمانی سرگرمیوں یا 75 منٹ کی سخت جسمانی سرگرمیوں کا مشورہ دے رکھا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس نئے تجزیے سے عندیہ ملتا ہے کہ اس سے کم وقت تک جاگنگ بھی صحت کے لیے فائدہ مند ثابت ہوسکتی ہے اور ایسے کوئی شواہد نہیں ملے کہ بہت زیادہ وقت تک دوڑنے سے اضافی طبی فوائد حاصل ہوتے ہیں۔

محققین کے مطابق یہ تحقیق مشاہداتی ہے مگر ان کا ماننا تھا کہ دوڑنا صحت کو مدد فراہم کرتا ہے اور لوگوں کو اس عادت کو اپنالینا چاہیے۔

Google Analytics Alternative