کالم

سیلابوںمیں ترقی یافتہ ممالک اور بھارت کا کردار

ijaz ahmad

با وثوق حکومتی ذرائع کے مطابق وطن عزیز میں حالیہ سیلابوں اور با رشوں کی وجہ سے 30 ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔ بد قسمتی سے1500 کے قریب قیمتی جانیں ضا ئع ہوئیں اور غریب کسانو ں کی 15 لاکھ جانور لقمہ اجل بن گئے ۔ ان تمام حالات کو قابو کرنے اور سر دوبارہ تعمیر میں کئی سال لگے گیں کیونکہ انکو سنبھالنا کوئی آسان کام نہیں۔اگر تجزیہ کیا جائے تو سیلاب اور حد سے زیادہ بارشوں کے کئی وجوہات ہوسکتے ہیں ۔ ان میں تیل ، گیس اور کوئلے کا ٹرانسپورٹ اور صنعتوںمیں استعمال اور اسکے نتیجے میں زہریلے گیس کاربن ڈائی آکسائیڈ کا اخراج اور اخراج کی صورت میں گلیشیر کا پگھل جانا اورنتیجے میں سیلابوں اور حد سے زیادہ نقصانی با رشوں کا برسنا شامل ہے ۔ علاوہ ازیں جنگلات کا بڑے پیمانے پرکٹاﺅ ، سیلابی اور با رشی پانی کے راہ اوربہاﺅ کے راستوں میں رہائشی علاقوں کی تعمیر اور اسکے علاوہ دیگر اور بھی بہت وجوہات ہیں۔ مگر ان سب میں زیادہ خطرناک ٹرانسپورٹ کے گا ڑیوں اور صنعتوں میںتیل کا استعمال ہے جسکے نتیجے میں کاربن ڈائی آکسائیڈ کا ا خراج ہے۔ اگر ہم تجزیہ کریں تو اس وقت پاکستان میں، دنیا کے185 ممالک کے مقابلے میں سب سے زیادہ یعنی 7253گلیشیر اور بر ف کے بڑے تو دے ہیں۔ گلیشیر کے ماہرین کا کہنا ہے کہ عالمی سطح پر گاڑیوں اور صنعتی ترقی کی وجہ سے گیسوں کے اخراج اور زیادہ درجہ حرارت کے نتیجے میں کوہ ہمالیہ کے 40 فیصد گلیشیر ز پگھل کر دریائی پانی کی شکل میں ضائع ہو چکے ہیں۔اور بد قسمتی سے ان گلیشیرز میں 85 فی د سال 2000 سے 2020 تک ختم ہو چکے ہیں۔اب سوال یہ ہے کہ عالمی سطح پر وہ کونسے عوامل ہیں اور وہ کونسے ممالک ہیں جو پاکستان یا پاکستان جیسے کئی ترقی پذیر ممالک میں اس قسم کے تباہی اور بر بادی کے ذمہ دار ہیں۔اگر ہم تجزیہ کریں تو امریکہ پوری دنیا کا 20 فیصد تیل استعمال کر رہا ہے ۔ چین دنیا کا 14 فیصد ، بھارت اور جاپان 5 فیصد تیل، ٹرانسپورٹ اور صنعتی ترقی میں استعمال کر رہا ہے۔ جسکے جلنے اور استعمال سے زہریلا گیس کا ربن ڈائی آکسائیڈ ان گلیشیر کے پگھلنے طوفانوں ، با رشوں اور سیلاب کی شکل میں تباہی اور بر بادی کا سبب بنتے ہیں۔ جب اسکے بر عکس پاکستان دنیا کا 0.5فیصد تیل استعمال کر رہاہے جو نہ جلنے کے برابر ہے۔اگر ترقی یافتہ ممالک تیل کو کم سے کم استعمال کریںاور سا تھ متبادل ذرائع توانائی استعمال کریں تو پھر کوئی وجہ نہیں کہ سیلاب اور انکی تباہ کاریوں پر قابونہ پایا جا سکے۔ساتھ ساتھ اگر ترقی پذیر ممالک جنگلات کا رقبہ بڑھائیں تو پھر اس قسم کے آفات پر آسانی سے قابو پایا جاسکتا ہے۔ اس وقت پاکستان میں تقریباً 4 فیصد رقبے پر جنگلات ہیںجو بہت کم ہیں۔یہ جنگلات پاکستان کے کم ازکم 20 فیصد رقبے پر ہونا چاہئیں تاکہ ما حول میں گاڑیوں اور صنعتی ترقی کی وجہ سے پیدا شدہ کاربن ڈائی آکسائیڈ گیس ، گلیشیر سُکڑنے اور اسکے نتیجے میں پیدا شدہ بے تحاشا با ر شوں اور سیلاب پر قابو پایا جائے۔ ماہرین کے مطابق ایک مکمل درخت سال میں 24 کلوگرام کاربن ڈائی آکسائیڈ جذب کرتا ہے اور اتنی مقدار میں آکسیجن کو چھوڑتا ہے جو ماحول کو خوشگوار بنانے میں کلیدی کر دار اداکرتا ہے ۔ جس سے گلیشیر کے پگھلنے کے رفتار سست ہو کرسیلاب اور بارش کی تباہ کاری کم کرنے میں حد سے زیادہ مدد مل سکتی ہے۔اس وقت وطن عزیز میں سورج سے لاکھوں میگا واٹ بجلی ، ہوا سے 50ہزار میگاواٹ اور پانی سے ایک لاکھ میگا واٹ ما حول دوست بجلی بنائی جا سکتی ہے ۔ خوش قسمتی سے پاکستان عالمی سطح پر سورج کی بہترین روشنی کے لحا ظ سے تیسرا بڑا ملک ہے ۔ زیادہ تجزیہ نگا روں کی یہ بھی رائے ہے کہ پاکستان میں موجودہ قدرتی آفات امریکہ کے ہارپ ٹیکنالوجی کی وجہ سے ہے ۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم دوسروں پر الزام کے بجائے یا امریکہ اوریا کسی اور ملک کی طرف سے شرارت کے تدارک اور کھوج لگانے کےلئے ایسے آلات لگائیں جس سے ہمیں وقت سے پہلے اس قسم کی سازش کا پتہ چل سکے۔ دراصل بات یہ ہے کہ موجودہ اور ماضی قریب میں اس قسم کے قدرتی آفات پاکستان میں ترقی یافتہ ممالک کی گاڑیوں میں تیل جلنے اور صنعتی کی وجہ سے ہورہا ہے اور ہم انکے ٹیکنالوجی کی ترقی کو تیل اور گیس کے استعمال کو قدرتی آفات کی شکل میں بھگت رہے ہیں۔اس وقت جب پاکستان انتہائی ناگفتہ بہہ حالات کا سامنا کر رہے ہے امریکہ اور دوسرے ترقی یافتہ ممالک پاکستان کو زیادہ سے زیادہ امداد دیں۔پاکستان کے اعلیٰ حکام سے بھی درخواست ہے کہ وہ کہ وہ اس تباہی سے تدارک کےلئے ٹھوس حکمت عملی بنائیں ۔ اور جن جن لوگوں نے دریاﺅں یا پانی کے بہاﺅ کے راستوں میں رہائشی پلا ٹس، پلازے اور ہو ٹل بنائیں ہیں انکے خلاف سخت سے سخت بھر پور اقدمات ہونے چاہئیں۔کیونکہ ان آفات کے نقصانات میں قدرت سے زیادہ انسانوں کی بد انتظامی اور غلط منصوبہ بندی شامل ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔